انٹر نیشنل بھکاری

Shah Shatranj

Chief Minister (5k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
 

ahameed

Chief Minister (5k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .

لیکن اپنی تصویر نہیں لگائی تو فائدہ کیا؟
بارہ ہزار بھی آپ کو دیئے ، لیکن اس پر اپنی تصویر نہیں لگائی تو آپ تو یہی سمجھیں گے کہ بلاول نے دیئےہیں ???
 

Onlypakistan

Chief Minister (5k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
TUMAREY BAP KUNJAR ZARDARI AUR NOORA AGAR LOOTI HOI DOLAT WAPIS KER DAE TO BEEK KI ZAROORAT HI NAI MAGAR TUM BEGHAIRAT AESA KIYU KERO GAE.
 

boss

Senator (1k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .


جتنے تھریڈ تو آج کل بنا رہا ہے اس سے زیادہ اپنی ہمشیرہ نالہ لئی کے لیے بنایا کرتا تھا
وہ گندے مسیج یاد ہے نا



اس بیچاری کی کوئی خبر تو دے آج کل کس کے گندے میسجز پکڑتی ہے مطلب دیکھتی ہے



Ayesha-Gulalai-640x401.jpg
 

Diesel

Chief Minister (5k+ posts)
baysharam.. to bi apne dono bapoo ki tara beghairat ha.. agar tere bapoo mein tori ghairat hoti to jo qarze apni terms liye tay , kamaz kam jate jate wo qarza lota daite.. onho na apne fake accounts and offshore companies mein wo qarze transferred kia.. tere zardari n noore na is qoom ko bikari banaya..
 

Cape Kahloon

Chief Minister (5k+ posts)
Jab Daku daka dal ker mulki khazana lot ker lay jain oor do waqat khanay kay leay be kuch na chor ker jain tu pher Bheek mangne parte ha.
Ek daku tu London ja ker chup geya ha oor dosra Karachi main underground hu geya ha.
 

INDUS1

MPA (400+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
 

scolfeild

Minister (2k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
1696468178-Yawning_funny_pictures__252810_2529.jpg
 

Cape Kahloon

Chief Minister (5k+ posts)

جتنے تھریڈ تو آج کل بنا رہا ہے اس سے زیادہ اپنی ہمشیرہ نالہ لئی کے لیے بنایا کرتا تھا
وہ گندے مسیج یاد ہے نا

Ess nay thorahay pessoon kay leay bohot zeada zilat kamai oor politics sey be out hu ge.

اس بیچاری کی کوئی خبر تو دے آج کل کس کے گندے میسجز پکڑتی ہے مطلب دیکھتی ہے



Ayesha-Gulalai-640x401.jpg
 

INDUS1

MPA (400+ posts)
SHAH SHATRANJ BHAI, kia aap kay iss mazmoom say IMRAN KHAN ki izzat main koi kami aayee hai? Ya NAWAAZ SHAREEF YA MARYAM ki IZZAT bahaal ho gayee hai? bilkul bhi nahee. IMRAN KHAN aaj bhi IMAANDAAR hai aur NAWAAZ AUR MARRYAM aaj bhi CHOR hain. Aap jitna marzi zor laga lain, JAB tak Allah aur awaam IMRAN kay saath hain aap kuch bhi nahi kar saktey.
 

Salazar67

Chief Minister (5k+ posts)
Oi Gandowah of Heera Mundee and Dalal of a prostitute of Jati Mujrah or 100 billion dallars chore Jahil ul muthlick kunjur Nawaz Lohaar Modi tuttay bazz khanzeer Shah of Tawaif. Chup tay ree maa d.
 

Danish99

Senator (1k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
Weldone,carry on this shetrol of Bhakaari Khan and his herami puppies.I really amuse listening their cries after the shetrol.
 

Husaink

Prime Minister (20k+ posts)
دربار کپتانیہ میں بادشاہ نیازی تشریف لا چکا تھا .. اور اس کے درباری اس کی مداح میں قلابے ملا رہے تھے ایک بولا یہ کپتان کی عظمت ہے جو اب تک آسمان زمیں پر نہیں گرا ورنہ دنیا کہ سائنسدان تو اس بات کی پیشگوئی کر چکے تھے آسمان گر جاۓ گا ... دوسرا بولا یہ بھی کپتان کی وجہ سے ہے کہ کوئی ستارہ ٹوٹ کر زمیں پر نہیں گرا وگرنہ اس بات کے خطرات میں اضافہ ہو چکا تھا کہ زمیں پر تارہ ٹوٹ کر گر سکتا ہے .... ایک نے تو تمام حدیں پار کر دیں بولا کپتان کی وجہ سے سورج کی روشنی برقرار ہے وگرنہ تو ہر سو اندھیرا چھانے والا تھا ... یہ سب درباری کپتان کی عظمت کے ہوائی قلعے تعمیر کرتے تھے جب کہ حقیقت میں دربار کے سامنے لوگ خود پر پٹرول چھڑک کر خود کو آگ لگا کر خود کشیاں کر رہے تھے . ملک میں قیامت برپا تھی اور کپتان شاہی بھاشنوں کے علاوہ اور کچھ عوام کی بھلائی کا کام نہ کر سکا تھا بس اس کا پسندیدہ کام بھیک مانگنا تھا
کپتان کو خیال آیا کہ اس کو بھیک مانگنے میں بہت تجربہ حاصل ہے اور اس ملک کے لوگ ٹیکس سے زیادہ خیرات دیتے ہیں تو کیوں نہ اپنی سرپرستی میں ایک بھیک مانگنے کا سرکاری ادارہ قائم کر دیا جاۓ . اس سے ملکی خزانے میں بھی اضافہ ہو گا اور نوجوانوں کو روزگار بھی ملے گا . یوں اس نے بھکاری فورس کے نام سے ایک سرکاری ادارہ قائم کرنے کا اعلان کر دیا . اس نے منادی کرا دی کہ وہ ایک کروڑ نوکریاں دینے جا رہا ہے اور ملک میں صوفیت کا اضافہ کرنے کے لیے اس نیک کام میں اسے نوجوان درکار ہیں جو چوکوں چوراہوں پر بیٹھ کر ہاتھ میں تسبیح گھماتے ہوے بھیک مانگیں گے . کپتان کا ارادہ سن کر اس کے حواریوں کی آنکھوں میں خوشی کے آنسو آ گۓ یہ انسانی تاریخ میں پہلی دفع ہوا تھا کہ کسی رحمدل بادشاہ نے عوام کا درد سمجھتے ہوے سرکاری بھکاری فورس بنانے کا اعلان کیا تھا . اس کے ساتھ ساتھ کپتان نے بھیک مانگنے کے اصولوں پر کتاب لکھنے کا فیصلہ کیا اور اس ملک میں بھیک مانگنے کو بطور پیشہ متعارف کروا دیا . کپتان کی اس کوشش سے ملکی خزانے میں روزانہ اربوں روپوں کا اضافہ ہونے لگا . دیکھتے ہی دیکھتے بھکاری فورس نے اس ملک کا خزانہ نکوں نک بھر دیا اور ملکی ترقی یافتہ بن گیا .
یہ شطرنجی لیاری والی چھترول کے بعد ہی ذہنی توازن کھو بیٹھا تھا جب دورہ پڑتا ہے سیدھا جوتے کھانے ادھر آ جاتا ہے
 

Modest

Chief Minister (5k+ posts)
Shatranji jiyale ko bhi ihsas programme se 12000 rupay mile hai lekin os par tasweer Zardari ki lagi thi.
Wah bay peoply begharton idhir bhi kameengi dikha di
 

sangeen

Minister (2k+ posts)

جتنے تھریڈ تو آج کل بنا رہا ہے اس سے زیادہ اپنی ہمشیرہ نالہ لئی کے لیے بنایا کرتا تھا
وہ گندے مسیج یاد ہے نا



اس بیچاری کی کوئی خبر تو دے آج کل کس کے گندے میسجز پکڑتی ہے مطلب دیکھتی ہے



Ayesha-Gulalai-640x401.jpg

Oh this milf.... she once showed her uncovered assets.... and man those assets were realy beyond means...
 

ILUIK

MPA (400+ posts)
Weldone,carry on this shetrol of Bhakaari Khan and his herami puppies.I really amuse listening their cries after the shetrol.

shit roll
آپ کے لیڈران کھا رہے ہیں
ان کا مونہہ سونگھہ اور چیک کر