شریف خاندان کی ناجائز تجاوزات

خداداد

Senator (1k+ posts)
‎مجھے اپنے ہائی سکول کے دنوں میں شریف خاندان کے ماڈل ٹاؤن والے آبائی گھر سے ملحقہ پلاٹ اور سامنے والے پارک پر غیر قانونی تجاوزات کی توڑ پھوڑ اچھی طرح یاد ہے۔

یہ نوّے کی دہائی میں پیپلز پارٹی کا دوسرا دورِ حکومت تھا۔ ایک سہ پہر سکول سے واپسی پر جب ہم طالب علموں نے پولیس کی بہت زیادہ نفری کو قطار در قطار ماڈل ٹاؤن ایچ بلاک کی طرف مارچ کرتے دیکھا تو تجسّس کے ہاتھوں مجبور بہت سے طلبأ ان کے پیچھے چل دیے۔ جب پاکستان کے سابقہ وزیر اعظم کے گھر کے سامنے پہنچے تو وہاں کا منظر ہی عجیب تھا۔ ہر طرف شور شرابہ اور چیخ و پکار تھی۔ گھر کے سامنے سے گزرنے والی سڑک جسے وزارت عظمیٰ کے دور میں آہنی پھاٹک اور جنگلے لگا کر عوام کے لیے بند کر دیا گیا تھا اب کھل چکی تھی۔

سرکاری اہلکار بلڈوزر ایکسکیویٹر اور دیگر ڈیمولیشن مشینری لیے گھر کے صدر دروازے سے ملحقہ تعمیرات کو منہدم کرنے میں مصروف تھے۔ گھر کے اندر سے خواتین وحضرات کے چلّانے کی آوازیں مشینری کی اونچی آوازوں کے باوجود سنی جا سکتی تھیں۔ شاید یہ چلّانے والے سب گھر کے ملازمین ہوں کیونکہ وہ گھر کی بیرونی دیوار کے انتہائی قریب سے توڑ پھوڑ کرنے والے مشین آپریٹرز پر چلّا رہے تھے۔ جتنی تیزی سے دیواریں اور جنگلے گرانے کا کام کیا جا رہا تھا اتنی ہی سرعت سے ملبے سے لدے ڈمپر اس ملبے کو ٹھکانے لگانے میں مصروف تھے۔

اور دیکھتے ہی دیکھتے سابقہ وزیر اعظم پاکستان کے گھر سے ملحقہ ناجائز تجاوزات کو منہدم کر کے اس ملبے کو ماڈل ٹاؤن کے ڈاکخانے سے ملحقہ خالی پلاٹ میں ڈھیر کر دیا گیا جو آنے والے کئی سالوں تک وہاں سے گزرنے والے لوگوں کو عبرت کی داستان سناتا رہا۔

لیکن عبرت کی یہ داستان شاید صرف عوام کے لیے تھی۔ ملک کی اشرافیہ اس قدر ڈھیٹ ہو چکی ہے کہ اس طرح کی کسی بھی بات میں شرمندگی محسوس کرنے کی بجائے ڈھٹائی سے اسے اپنے خلاف سازش قرار دے کر اس وقت کا انتظار شروع کر دیتے ہیں جب اقتدار دوبارہ ان کے ہاتھ آئے اور یہ اپنے خلاف تادیبی کاروائی کرنے والوں سے بدلہ لینے کے ساتھ ساتھ پہلے سے زیادہ بد عنوانی کر سکیں۔

‬‎‎‫شریف خاندان نے بھی یہی کیا۔ جونہی یہ دوبارہ اقتدار میں آئے انہوں نے اپنے والد کے گھر سے ملحقہ پلاٹ پر دوبارہ قبضہ کر لیا۔ گھر کی عقبی اور سامنے والی سڑک کو دوبارہ جنگلے لگ گئے اور گھر کے سامنے والا کئی کنال کا پلاٹ بھی عوام کی بجائے حکمران خاندان کے گھر تشریف لانے والے مہمانوں کی کار پارکنگ کے لیے استعمال ہونے لگا۔ عوام کو مرعوب کرنے کے لیے شیر کا ایک بہت بڑا مجسمہ بھی صدر دروازے کے قریب آویزاں کر دیا گیا جیسے یہ شیر ان ناجائز تجاوزات کی حفاظت پر مامور ہو۔

حالات نے ایک بار پھر پلٹا کھایا اور اس بار سارا خاندان سعودی مہمان بنا۔ ماڈل ٹاؤن والے گھر کو ایک بار پھر تجاوزات سے پاک کیا گیا اور ایک بار پھر اس گھر پر ویرانی چھا گئی۔ اگرچہ اس وقت یہ گھر شریف خاندان کی رہائش گاہ کی بجائے پارٹی کے دفتر کے طور پر استعمال ہو رہا تھا۔

قدرت نے ایک اور موقع دیا اور یہ خاندان ایک بار پھر پنجاب کی خدمت پر مامور ہوا۔ ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ ماضی کے تلخ تجربات سے کچھ سبق سیکھا جاتا لیکن جس چیز کے خمیر میں ہی سیدھا ہونا نہ ہو وہ پورے سو سال کے بعد بھی ٹیڑھی ہی رہتی ہے۔ جلا وطنی کے سالوں میں نئی نسل جوان ہو گئی اور اس بار ماڈل ٹاؤن ایچ بلاک ہی کا ایک گھر حمزہ شہباز کی ملکیت بنا۔ جب باپ صوبے کا وزیر اعلیٰ ہو تو گھر کے آگے پیچھے کی سڑکیں بلاک کرنے سے کون روک سکتا ہے؟ چنانچہ چھوٹے نے بھی وہی کیا جس کی اسے اپنے بڑوں سے تربیت ملی۔

یہ صرف شریف خاندان ہی کا نہیں بلکہ ہماری ساری اشرافیہ کا مسئلہ ہے۔ بلکہ اگر اسے مشغلہ کہا جائے تو بہتر ہے کہ یہ خاندان اپنے مشغلے کے طور پر عوام کا استحصال کرتے ہیں۔ انہیں عوام پر اپنی طاقت کی دھونس جما کر ذہنی آسودگی حاصل ہوتی ہے۔ ماڈل ٹاؤن کے ڈاکخانے سے ملحقہ پلاٹ میں اپنے آبائی گھر کا ملبہ بکھرا دیکھ کر انہیں کیا عبرت حاصل ہو؟ انہیں تو شاید بار بار قدرت سے سبق لینے کی عادت ہو گئی ہے۔ ایسا سبق جو ہر بار ان کے سروں کے اوپر سے گزر جاتا ہے۔
 
Last edited:

PkRevolution

Chief Minister (5k+ posts)
یہ ڈھیٹ حکمران ہیں، شرافت تو ان کے نام کی حد تک ہی ہے۔ باقی ان بدمعاشوں سے بڑا بدمعاش شاید ھندوستان کا مودی ہی ہے۔
 

samkhan

Chief Minister (5k+ posts)
سارا مسئلہ عوام کا ہے. جب عوام انکی ان حرکتوں پر بار بار انہیں اپنے سر پر مسلط کرتی رہے گی، انکے آگے پیچھے پھرتی رہے گی تو عوام اور قانون کہ ساتھ یہی ہونا ہے جو نواز گنجے اور دوسرے لوگ کرتے ہیں
 

خداداد

Senator (1k+ posts)
یہ ڈھیٹ حکمران ہیں، شرافت تو ان کے نام کی حد تک ہی ہے۔ باقی ان بدمعاشوں سے بڑا بدمعاش شاید ھندوستان کا مودی ہی ہے۔
اصل بدمعاش ہمیشہ اپنی بدمعاشی طاقتور طبقے کو دکھاتے ہیں اور کمزور لوگوں سے ہمدردی کرتے ہیں۔ برصغیر کی تاریخ میں سلطانہ ڈاکو اور جگّا جٹ کی زندہ مثالیں موجود ہیں۔ اسی طرح انگریزی ادب میں رابن ہُڈ کا کرردار موجود ہے۔ یہ ہمارے حکمران بدمعاش نہیں بلکہ کمینے اور گھٹیا کردار ہیں۔ ان کا زور صرف کمزوروں پر چلتا ہے۔ اپنے سے طاقتور کے یہ تلوے چاٹتے ہیں۔
 

ranaji

President (40k+ posts)
سارا مسئلہ عوام کا ہے. جب عوام انکی ان حرکتوں پر بار بار انہیں اپنے سر پر مسلط کرتی رہے گی، انکے آگے پیچھے پھرتی رہے گی تو عوام اور قانون کہ ساتھ یہی ہونا ہے جو نواز گنجے اور دوسرے لوگ کرتے ہیں
Iss baar Heera Mandi ki aulaad ECP naay iss Nooray Butt ko apni haraam kaari ki qeemat wasool karr ke hakoomat dilai hai ECP ke ke bharvay abb inki asaason ki tafseel website saay hatta karr dobaara apni khandani PIMP GEERI parr aa gaiy hain sabb saay pehlay inn bharvon aur haraam khoron ko ibratnaak anjaam dainay ki zarooratt hai
 

خداداد

Senator (1k+ posts)
سارا مسئلہ عوام کا ہے. جب عوام انکی ان حرکتوں پر بار بار انہیں اپنے سر پر مسلط کرتی رہے گی، انکے آگے پیچھے پھرتی رہے گی تو عوام اور قانون کہ ساتھ یہی ہونا ہے جو نواز گنجے اور دوسرے لوگ کرتے ہیں
عوام کو کیوں الزام دیتے ہو بھائی۔ عوام کے ووٹ کا تو گزشتہ الیکشن میں مذاق اڑایا گیا ہے۔ عمران کو لاہور میں اس حلقے سے ہرایا گیا ہے جہاں نون لیگ والے صبح سے شام تک پولنگ سٹیشنز سے غائب رہے اور عمران کو ووٹ دینے والوں کا یہ حال تھا کہ ایک انتہائی بوڑھی عورت کو جب اس کی دو پوتیاں سہارا دے کر پولنگ سٹیشن لائیں تو لوگوں نے لڑکیوں کو ملامت کی۔ جواب میں لڑکیوں نے بتایا کہ آج ہماری دادی کئی سال کے بعد گھر سے باہر نکلی ہیں۔ ہم نے لاکھ انہیں سمجھایا لیکن یہ بضد تھیں کہ خواہ میں تم لوگوں کے سہارے ہی چل کر جاؤں لیکن میں عمران کو ووٹ ضرور دوں گی۔

سیاست اشرافیہ کا کلب بن چکی ہے۔ اور یہ راتوں رات نہیں ہوا۔ یہ سلسلہ انیس سو سینتالیس سے جاری ہے۔ اقتدار میں صرف ان کو لایا جاتا ہے جو باہر والوں کے وفادار ہوں۔