بیوی اور 3 بیٹیوں کو کیوں قتل کیا؟ خودکشی کی کوشش کرنیوالے والدکےانکشافات

biwish.jpg


کراچی کے علاقے ملیر شمس کالونی میں قتل کی لرزہ خیز واردات سامنے آگئی ، گھر کے سربراہ نے بیوی اور 3 بیٹیوں کو تیز دھارے آلے سے قتل کردیا، گھر کے سربراہ کی خودکشی کی کوشش کی، زخمی قاتل نے اعتراف جرم کرلیا۔

رپورٹ کے مطابق بچیوں اور ماں کے گلے کٹے ہوئے تھے، مکان کی پہلی منزل پر یہ واقعہ پیش آیا، نیچے موجود والدہ کا کہنا تھا کہ اوپر مکان سے شور شرابے اور رونے کی آوازیں آرہی تھیں۔

پولیس حکام کے مطابق شوہر نے بیوی اور تین بیٹیوں کو چھری کی مدد سے قتل کیا جس کے بعد اس نے خودکشی کی کوشش کی اور خود کو زخمی کرلیا، مقتولین میں ہما اور ان کی تین بیٹیاں، فاطمہ، نمرہ اور نیہا شامل ہیں۔

جائے واردات سے آلہ قتل چھری برآمد ہوگیا ہے، کرائم سین یونٹ اور فارنزک ٹیمیں موقع پر پہنچ ئی ہیں اور مزید شواہد جمع کرلیے گئے ہیں۔

شمسی سوسائٹی میں بیوی اور 3 بیٹیوں کو قتل کرنے والے ملزم فواد نے پولیس کو بیان ریکارڈ کرا دیا۔ جس میں اُس نے بتایا کہ دوسروں سے قرض لے کر اپنا بزنس شروع کیا، اور پھر اُس میں نقصان اٹھانا پڑا جس کی وجہ سے قرض کے بوجھ تلے دب گیا تھا۔

ملزم نے بتایا کہ معاشی پریشانی کی وجہ سے اکثر بیوی سے اُس کا جھگڑا ہوتا تھا جس کی وجہ سے بچیاں پریشان ہوتی تھیں، نقصان کے بعد سرمایہ داروں اپنی رقم کی واپسی کا تقاضہ کررہے تھے لیکن پیسے نہ ہونے کی وجہ سے ملزم فواد بہت زیادہ ڈپریشن میں رہتا تھا اور بیوی سے جھگڑے معمول بن گئے تھے۔

ایس ایس پی ملیر نے مزید بتایا کہ وقوعہ سے کچھ دیر قبل بھی میاں بیوی کے درمیان جھگڑا ہوا تھا اور اس کی بڑی بیٹی نے کہا کہ ’آپ لوگوں کے جھگڑے کے باعث ہم بھی پریشان رہتے ہیں‘، دو چھوٹی بیٹیاں وقوعہ کے وقت چارپائی پر سورہی تھیں۔

ملزم نے پولیس کو بتایا کہ ’اہلیہ جیسے ہی واش روم گئی تو اُس نے سب سے پہلے اپنی بیٹیوں کو قتل کیا اور تصاویر انویسٹر ز کو بھیج کر خودکشی کا پیغام بھیجا، پھر باتھ روم سے واپسی پر بیوی کو قتل کرکے اپنے آپ کو بھی ختم کرنے کی کوشش کی‘۔

ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ ملزم کی حالت جیسے ہی کچھ بہتر ہوئی تھی تو پولیس نے فوری اس کا بیان ریکارڈ کیا تاہم بیان ریکارڈ کرانے کے دورن اس کی حالت دوبارہ خراب ہوگئی۔ ڈاکٹرز اس کی جان بچانے کی کوششیں کررہے ہیں ، اگر مقتولہ کے اہل خانہ چاہیں گے تو پولیس ان کی مدعیت میں ضرور مقدمہ درج کرے گی ورنہ سرکاری مدعیت میں مقدمہ درج کیا جائے گا۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ایڈیشنل آئی جی سے رپورٹ طلب کرلی اور ہدایت دی ہے کہ جلد ازجلد تحقیقات کی جائیں۔
 

Young_Blood

Minister (2k+ posts)
Pakistan ko kisi ke nazar nahi lagi, Pakistani apne amaal bhugat rahe hein, inho ne imaan ka raasta chor dia, inho ne her wo galat kaam karna start ker dia jis se inhein faieda ho chahey dosra mur jaey, khud gard qoum bun chuki hai, aik mazdoor se le ker aala ohdey per bhaitha jhoot bolta hai, corruption karta hai, aur iss system ka sattya naas karne wala sirf aur sirf aik idaara hai, wo hai Pakistan ke Judiciary,, agar adalat mein insaf milta to kabhi b hamara muaashra aaj iss haal per na pohanchta,, hamare judges duniya k sab se ziada corrupt judges hein, dur pok hein, andhe hein, gooney hein,behre hein, pakistan ke history mein sirf aik poweful insan ko latkaya gaya ,, uss k alawa aaj tak kisi b powerful insan ko na latkaya gaya na he kaal kothri mein phainka gaya..
ye begining hai, aagey aagey dekhein hota hai kya, pakistan mein la qaooniyat apni hadoo ko touch kare ge,, log aik dosre ko noch dalein gay,, apne fesle khud karein gay.
 

Kavalier

Chief Minister (5k+ posts)
Yeh jo poverty hai mulk main iss ki wajah bhi corrupt politicians aur officials hain…..

Pata nahi kis din samjo gay k politicians ki corruption shayad itni bhi nhi k jitna ount k mounh mayn zeera. Dunya k tamaam politician aur mulkon mayn itni corruption ho hi jati hay chahay jitni try karlayn. Yahan farq hay fouj ki corruption ka, mulk k har 100 rupees mayn say 80/85 tou fouj lay jati hay, baqi k 15 rupees say salaries bhi do, tooti phooti development bhi karo aur uss mayn say jo bach jaye usmayn corruption bhi karo.
Asal maslay k taraf koi nhi aata k iss mulk ko agar theek karna hay tou iski badmash idaron ko qabu karna hoga, there is no other way aur badmashon ko qabu karnay k liye sabko 1 hona hoga, warna woh 75 saal ki trha inko apas mayn laratay rehayn gay aur khud hakim banay rehayn gay. Kal ko PTI ko apni B team banaya howa tha aur baqio ko ragar rehay thay, ajj PDM ko bagahl bacha bana liya hay aur PTI ko ragra hay, yeh aisay hi chalta rehayga jab tk 1 point agenda pay na betha jayen sari parties aur wo 1 point hay civilian supremacy.
 
Sponsored Link