Pakistan is my home & my country: Azan Sami S/o Adnan Sami

Status
Not open for further replies.

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
مغل صاحب۔۔۔ آپ نے یہ کیسے گمان کرلیا کہ میں قرآن یا اسلام کو جانے بوجھے بغیر اس پر تنقید کرتا ہوں۔۔۔۔ آپ مسلمان ہیں، یقیناً اسلام کو ہی دنیا کا واحد سچا مذہب سمجھتے ہوں گے۔۔۔
میں آپ سے محض دو سادہ سے سوالات پوچھتا ہوں، اگر ہوسکے تو ان کا جواب دینے کی کوشش کریں۔۔

آپ کیسے یہ جج کرتے ہیں کہ ایک مذہب سچا ہے اور دوسرا مذہب جھوٹا ہے؟

سچے نبی اور جھوٹے نبی میں کیا فرق ہے؟ کیسے پتا چلتا ہے کہ ایک نبی سچا ہے اور دوسرا جھوٹا۔۔۔؟

azeezam zinda rood sb, isse pehle ke main aap ke sawalaat ki taraf aaon kia aap mujhe ye bataana gawaara karen ge keh aap khud khudaa ke baare main kia khayaalaat rakhte hen aur kyun?

regards and all the best.
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)

جی ہاں .. . . بندہ صادق اور امین ہونا چاہیے اور پہلے گزرے صادقین اور امین بندوں کے خلاف کوئی بات نہ کرے

شاہ جی۔۔ آپ نے کہا اگر بندہ سچا ہو، صادق اور امین ہو اور پہلے گزرے صادقین اور امین بندوں کے خلاف کوئی بات نہ کرے تو یہ سچے پیغمبر کی نشانی ہے۔۔۔

میں آپ کو ایک موقع اور دیتا ہوں کہ آپ اپنے الفاظ پر غور کرلیں، کوئی ردوبدل کرنی ہے تو کرلیں، کیونکہ میں جو سوال پوچھنے والا ہوں، اس کے بعد مجھے قوی یقین ہے کہ آپ الٹ بازی لگائیں گے۔۔۔

یہ عقیدہ تو کچھ کچھ ہندوانہ اور یہودیوں کا ہے
آپ کی مذاہب کے بارے میں معلومات کافی محدود ہیں۔۔ یہودیت ابراہیمی مذہب ہے اور اس کا خدا مسلمانوں سے ملتا جلتا ہے۔۔ یہودیت کے مابعدالطبیعات عقائد بھی تقریباً مسلمانوں جیسے ہیں۔۔۔ اور ہندوؤں کا / کے بھگوان بھی تقریباً دیگر مذاہب کے خداؤں جیسے ہیں، یعنی ہندوؤں کے نزدیک انہوں نے لوگوں کی طرف اپنا پیغام، ضابطہ حیات بھیجا ہے، جو گیتا میں لکھا ہے، مزید ہندوؤں کا بھگوان ان کی دعائیں، منتیں مرادیں بھی سنتا ہے۔۔
جبکہ سائنس کا خدا ایسا نہیں ہے، وہ ایک طرح سے لاتعلق فورس ہے، اس دنیا میں کیا ہورہا ہے، اسے اس سے کچھ غرض نہیں۔۔ عام طور پر جو خدا کے ایسے تصور پر یقین رکھتے ہیں، انہیں ڈی اِسٹ کہا جاتا ہے اور اس عقیدے کو ڈی اِزم کہا جاتا ہے۔۔گوگل پر ڈی اِزم کے بارے میں سرچ کریں آپ کو اس نظریے کی تفصیل مل جائے گی۔۔
Deism.
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)
azeezam zinda rood sb, isse pehle ke main aap ke sawalaat ki taraf aaon kia aap mujhe ye bataana gawaara karen ge keh aap khud khudaa ke baare main kia khayaalaat rakhte hen aur kyun?

regards and all the best.
Mughal Sb... I am agnostic...
 

karachiwala

Chief Minister (5k+ posts)
عدنان سمیع نے بھارت میں رہنے کا فیصلہ کرکے کچھ غلط نہیں کیا، ہر انسان کا حق ہے کہ وہ جہاں دل چاہے رہے ۔ یہ ضروری نہیں کہ قسمت اور اتفاق نے آپ کو جس خطے میں پیدا کردیا، آپ بس وہیں چپک کر رہ جائیں۔۔۔ چھوٹے ذہنوں کے لوگوں نے مذہب کے ساتھ ساتھ حب الوطنی سے بھی اپنے ذہنوں کو زنگ آلود کررکھا ہے، یہ بونی مخلوق چاہتی ہے کہ عدنان سمیع اپنی زندگی ان کی مرضی کے مطابق گزارے۔۔ انسان کیلئے سب سے اہم اس کی زندگی ہے، اگر وہ کسی کو نقصان پہنچائے بغیر اپنی مرضی سے، اپنے طریقے سے اپنی زندگی جیتا ہے تو کسی کو اس پر اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔۔۔
when you target your birth country that is NOT fine. in order get sympathies of endians adnan motan ridicules Pakistan so who is a dwarf here? may be you are also from his tribe?
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
Mughal Sb... I am agnostic...
Dear zinda rood, it is very important for humanity to think rationally not only logically. Rational thinking and logical thinking are two different things. Rational thinking is purpose based complete thinking regarding something using logic to connect all logical points which play any part in a particular subject matter. Logic is simply about giving short to the point reason to the question why. Rationality on the other hand is supposed to takes all questions into consideration about something eg what, how, when, where and why etc etc.

A subject matter or an issue can be discussed as a whole or as a part. For example, in case of talking about a bike, if a person has no idea what a bike is then there is little point in discussing with that person about its pedals or seat or frame or chain or sprockets or break pads or tyres or rims or valve or fork etc etc. Not because it is totally useless but because this will take a very, very long time to explain to the person the whole thing and its purpose. That way vitally important information will be left till the last, so that is why it is wrong way of discussing something that way. Moreover the person could feel bored due to time it will take for discussing the bits in detail. On the other hand if one talks to the person about a thing as a whole objectively then a person could see the point in discussion because one knows the purpose why we are discussing the thing or the issue.

Likewise if we will discuss detail of deen of islam or single verses of the quran then we will soon get bored because we will have no idea why we are discussing all this or what is the end objective of all this exercise. This is why whenever we want to learn about something we first look at the whole thing as a single block. We talk about it as to what it is or why we need it etc etc or how it works to do what we expect it to do etc etc. For example, take a bike we can talk about it as to what it is and why do we need it. Once we realise what bike is and why we need it only then we become interested in knowing about it more and more and that is when detail study is called for.

Likewise what we need to discuss is a proper way of life for humanity to live by. Why do we need to do that? Because as we know from our own life experiences as informed individuals we can clearly see there are problems with ways of life we have invented and adopted to live by. What are the problems? I don't think we need to go into detail of that because we can see it on our tv screens as to what is going on all around in our world all the time. This forces us to come up with a better possible way of life if not the best.

Human beings have most powerful brains and along with that appropriate senses and bodies. They all seem to be very good for learning and doing things but they are not as powerful and good as they need to be for figuring out a way of life we are looking for. This is why despite being capable of establishing and accomplishing a lot that we can by ourselves we are still almost at the same stage of our development and progress as we were when we came about. In short we are still living like animals in a jungle as we used to.

Why we have failed to invent and adopt the best possible way of life for ourselves so far? Is there a real chance that we human beings will be able to do that in future? No, not at all. Why not? This is why the question, what should our way of life be and why? This is where in comes the quran and deen of islam and all that it is about eg God and revelation etc etc. This defines the context of our discussion unless you can put it in a better way. In my understanding the way of life is the real issue for humanity to discuss about and all other discussions are a waste of time unless they are in this context.

regards and all the best.
 
Last edited:

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)
شاہ جی۔۔ آپ نے کہا اگر بندہ سچا ہو، صادق اور امین ہو اور پہلے گزرے صادقین اور امین بندوں کے خلاف کوئی بات نہ کرے تو یہ سچے پیغمبر کی نشانی ہے۔۔۔

میں آپ کو ایک موقع اور دیتا ہوں کہ آپ اپنے الفاظ پر غور کرلیں، کوئی ردوبدل کرنی ہے تو کرلیں، کیونکہ میں جو سوال پوچھنے والا ہوں، اس کے بعد مجھے قوی یقین ہے کہ آپ الٹ بازی لگائیں گے۔۔۔




آپ کی مذاہب کے بارے میں معلومات کافی محدود ہیں۔۔ یہودیت ابراہیمی مذہب ہے اور اس کا خدا مسلمانوں سے ملتا جلتا ہے۔۔ یہودیت کے مابعدالطبیعات عقائد بھی تقریباً مسلمانوں جیسے ہیں۔۔۔ اور ہندوؤں کا / کے بھگوان بھی تقریباً دیگر مذاہب کے خداؤں جیسے ہیں، یعنی ہندوؤں کے نزدیک انہوں نے لوگوں کی طرف اپنا پیغام، ضابطہ حیات بھیجا ہے، جو گیتا میں لکھا ہے، مزید ہندوؤں کا بھگوان ان کی دعائیں، منتیں مرادیں بھی سنتا ہے۔۔
جبکہ سائنس کا خدا ایسا نہیں ہے، وہ ایک طرح سے لاتعلق فورس ہے، اس دنیا میں کیا ہورہا ہے، اسے اس سے کچھ غرض نہیں۔۔ عام طور پر جو خدا کے ایسے تصور پر یقین رکھتے ہیں، انہیں ڈی اِسٹ کہا جاتا ہے اور اس عقیدے کو ڈی اِزم کہا جاتا ہے۔۔گوگل پر ڈی اِزم کے بارے میں سرچ کریں آپ کو اس نظریے کی تفصیل مل جائے گی۔۔
Deism.

صادق اور امین کی پہلی شرط ہے رسول ہونے کے لئے
اس کے بعد سچے دین یا رسول کی نشانیاں جیسے جیسے بندے کا ایمان بڑھتا ہے ، نظر آتی جاتیں ہیں
آپ اپنا سوال پوچھیں میں صادق اور امین کی شرط پر قائم ہوں
.
.
.
ڈی ازم کے رد کی آیات قرآن میں موجود ہیں تفسیر میں یہی لکھا تھا کہ یہود کچھ کچھ اس عقیدے پر ہیں کہ خدا اب لا تعلق ہے . خیر جو بھی اس عقیدے پر ہو ہماری بلا سے
 

ramdev

Councller (250+ posts)
Of course as sooner or later Ch@dis are again going to be our subjects after a brief pause of around quarter to 200 years. This period may be taken as a break-time. 1000-years rule will resume.
great dream of terrorist beggars.......
jao bhikh mango 100 years tak
😂 😂 😂 😂
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)
Dear zinda rood, it is very important for humanity to think rationally not only logically. Rational thinking and logical thinking are two different things. Rational thinking is purpose based complete thinking regarding something using logic to connect all logical points which play any part in a particular subject matter. Logic is simply about giving short to the point reason to the question why. Rationality on the other hand is supposed to takes all questions into consideration about something eg what, how, when, where and why etc etc.

A subject matter or an issue can be discussed as a whole or as a part. For example, in case of talking about a bike, if a person has no idea what a bike is then there is little point in discussing with that person about its pedals or seat or frame or chain or sprockets or break pads or tyres or rims or valve or fork etc etc. Not because it is totally useless but because this will take a very, very long time to explain to the person the whole thing and its purpose. That way vitally important information will be left till the last, so that is why it is wrong way of discussing something that way. Moreover the person could feel bored due to time it will take for discussing the bits in detail. On the other hand if one talks to the person about a thing as a whole objectively then a person could see the point in discussion because one knows the purpose why we are discussing the thing or the issue.

Likewise if we will discuss detail of deen of islam or single verses of the quran then we will soon get bored because we will have no idea why we are discussing all this or what is the end objective of all this exercise. This is why whenever we want to learn about something we first look at the whole thing as a single block. We talk about it as to what it is or why we need it etc etc or how it works to do what we expect it to do etc etc. For example, take a bike we can talk about it as to what it is and why do we need it. Once we realise what bike is and why we need it only then we become interested in knowing about it more and more and that is when detail study is called for.

Likewise what we need to discuss is a proper way of life for humanity to live by. Why do we need to do that? Because as we know from our own life experiences as informed individuals we can clearly see there are problems with ways of life we have invented and adopted to live by. What are the problems? I don't think we need to go into detail of that because we can see it on our tv screens as to what is going on all around in our world all the time. This forces us to come up with a better possible way of life if not the best.

Human beings have most powerful brains and along with that appropriate senses and bodies. They all seem to be very good for learning and doing things but they are not as powerful and good as they need to be for figuring out a way of life we are looking for. This is why despite being capable of establishing and accomplishing a lot that we can by ourselves we are still almost at the same stage of our development and progress as we were when we came about. In short we are still living like animals in a jungle as we used to.

Why we have failed to invent and adopt the best possible way of life for ourselves so far? Is there a real chance that we human beings will be able to do that in future? No, not at all. Why not? This is why the question, what should our way of life be and why? This is where in comes the quran and deen of islam and all that it is about eg God and revelation etc etc. This defines the context of our discussion unless you can put it in a better way. In my understanding the way of life is the real issue for humanity to discuss about and all other discussions are a waste of time unless they are in this context.

regards and all the best.

مغل صاحب۔۔ میں نے آپ سے دو سادہ سے سوالات پوچھے ہیں۔۔ لمبی چوڑی بحث تو بعد کی بات ہے، آغاز تو ہمیشہ سادہ سوالوں سے ہوتا ہے، کیا آپ اپنے اندر ان سوالوں کے جواب دینے کی ہمت / سکت پاتے ہیں۔۔۔ اگر نہیں تو کوئی بات نہیں۔ ہم اپنی بحث یہیں ختم کرسکتے ہیں۔۔۔
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)

صادق اور امین کی پہلی شرط ہے رسول ہونے کے لئے
اس کے بعد سچے دین یا رسول کی نشانیاں جیسے جیسے بندے کا ایمان بڑھتا ہے ، نظر آتی جاتیں ہیں
آپ اپنا سوال پوچھیں میں صادق اور امین کی شرط پر قائم ہوں .


فرض کریں آج کے دور میں اگر کوئی سچا شخص یہ دعویٰ کرے کہ میں اللہ کا پیغمبر ہوں تو کیا اس پر ایمان لے آنا چاہیے؟؟ اگر نہیں تو کیوں نہیں۔۔۔؟؟؟
 

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)

اب مکریں نہیں
آپ نے خود کہا تھا کہ اگر کوئی شخص کہے کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا تو وہ جھوٹ بول رہا ہوتا ہے
چینی کہاوت
آج کے زمانے میں کسی کا یہ کہنا کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا یا کبھی کوئی برائی نہیں کی ، بہت مشکل ہے
. . . . . . . . .
فرض کریں کہ آج کے دور میں کوئی ایسا شخص آتا ہے جس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا اور وہ آ کر نبوت کا دعوا کر دیتا ہے تو پھر اس شخص کا اور ہمارے آخری رسول کا اختلاف پیدا ہو جائے گا
اور جیسا کہ میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ وقت کے ساتھ ساتھ مجھے دین اسلام کی حقانیت کے ثبوت ملتے رہتے ہیں اس لئے میں اس شخص کو نبوت کے دعوے کے بعد اور بھی بہت کچھ ثابت کرنا ہو گا تاکہ اس شخص میں اور ہمارے رسول پاک میں سے اختلاف کا فیصلہ ہو سکے
.
ویسے آج کل کوئی آدمی نبوت کا دعوا نہیں کرتا بلکے زیادہ تر فراڈیے حضرات مسلمانوں کا نجات دھندہ یعنی امام مہدی ہونے کا دعوا کرتے ہیں


فرض کریں آج کے دور میں اگر کوئی سچا شخص یہ دعویٰ کرے کہ میں اللہ کا پیغمبر ہوں تو کیا اس پر ایمان لے آنا چاہیے؟؟ اگر نہیں تو کیوں نہیں۔۔۔؟؟؟
 

muhammadadeel

Chief Minister (5k+ posts)

اب مکریں نہیں
آپ نے خود کہا تھا کہ اگر کوئی شخص کہے کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا تو وہ جھوٹ بول رہا ہوتا ہے
چینی کہاوت
آج کے زمانے میں کسی کا یہ کہنا کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا یا کبھی کوئی برائی نہیں کی ، بہت مشکل ہے
. . . . . . . . .
فرض کریں کہ آج کے دور میں کوئی ایسا شخص آتا ہے جس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا اور وہ آ کر نبوت کا دعوا کر دیتا ہے تو پھر اس شخص کا اور ہمارے آخری رسول کا اختلاف پیدا ہو جائے گا
اور جیسا کہ میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ وقت کے ساتھ ساتھ مجھے دین اسلام کی حقانیت کے ثبوت ملتے رہتے ہیں اس لئے میں اس شخص کو نبوت کے دعوے کے بعد اور بھی بہت کچھ ثابت کرنا ہو گا تاکہ اس شخص میں اور ہمارے رسول پاک میں سے اختلاف کا فیصلہ ہو سکے
.
ویسے آج کل کوئی آدمی نبوت کا دعوا نہیں کرتا بلکے زیادہ تر فراڈیے حضرات مسلمانوں کا نجات دھندہ یعنی امام مہدی ہونے کا دعوا کرتے ہیں


بکواس مت کر مکرو غیلض
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)

اب مکریں نہیں
آپ نے خود کہا تھا کہ اگر کوئی شخص کہے کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا تو وہ جھوٹ بول رہا ہوتا ہے
چینی کہاوت
آج کے زمانے میں کسی کا یہ کہنا کہ اس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا یا کبھی کوئی برائی نہیں کی ، بہت مشکل ہے
. . . . . . . . .
فرض کریں کہ آج کے دور میں کوئی ایسا شخص آتا ہے جس نے کبھی جھوٹ نہیں بولا اور وہ آ کر نبوت کا دعوا کر دیتا ہے تو پھر اس شخص کا اور ہمارے آخری رسول کا اختلاف پیدا ہو جائے گا
اور جیسا کہ میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ وقت کے ساتھ ساتھ مجھے دین اسلام کی حقانیت کے ثبوت ملتے رہتے ہیں اس لئے میں اس شخص کو نبوت کے دعوے کے بعد اور بھی بہت کچھ ثابت کرنا ہو گا تاکہ اس شخص میں اور ہمارے رسول پاک میں سے اختلاف کا فیصلہ ہو سکے
.
ویسے آج کل کوئی آدمی نبوت کا دعوا نہیں کرتا بلکے زیادہ تر فراڈیے حضرات مسلمانوں کا نجات دھندہ یعنی امام مہدی ہونے کا دعوا کرتے ہیں



شاہ جی۔۔۔ میں نے پہلے ہی کہا تھا کہ آپ میرے سوال پوچھتے ہی الٹ قلابازی لگائیں گے اور ویسا ہی ہوا۔۔۔

آپ نے خود کہا کہ صادق اور امین ہونا سچے نبی کی نشانی ہے۔۔۔ اب میں نے پوچھا ہے کہ اگر کوئی سچا شخص یہ کہے کہ میں خدا کا پیغمبر ہوں تو اس پر کیوں ایمان نہیں لانا چاہیے۔۔۔ آپ دلیل دیتے ہوئے یہ نہیں سوچ رہے کہ جو دلیل آپ میرے فرضی سوال میں پیش کئے گئے نبی کو جھوٹا ثابت کرنے کیلئے دے رہے ہیں، وہی دلیل آپ کے چودہ سو سال پہلے گزرے نبی پر بھی بعینہ ویسے ہی لاگو ہورہی ہے۔۔۔ یعنی آپ میرے مفروضہ نبی کو ہی نہیں اپنے نبی کو بھی کاذب قرار دے رہے ہیں۔۔۔ اگر سمجھ نہیں آئی تو اپنی دلیل دوبارہ پڑھیں۔۔۔
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)

مغل صاحب۔۔ میں نے آپ سے دو سادہ سے سوالات پوچھے ہیں۔۔ لمبی چوڑی بحث تو بعد کی بات ہے، آغاز تو ہمیشہ سادہ سوالوں سے ہوتا ہے، کیا آپ اپنے اندر ان سوالوں کے جواب دینے کی ہمت / سکت پاتے ہیں۔۔۔ اگر نہیں تو کوئی بات نہیں۔ ہم اپنی بحث یہیں ختم کرسکتے ہیں۔۔۔
azeezam zinda rood sb, kyunkeh aap agnostic hen aur main musalmaan hun lihaaza ham dono main bunyaadi ikhtilaaf hai, yani hamaari bunyaad aik nahin hai. issi liye jab ham aage baat karen ge to us ki samajh kisi ko bhi nahin aaye gi. lihaaza ham ko baat shuroo se shuroo karni ho gi ta keh aik to hamaara ikhtilaaf sab ke saamne khul ker aa jaaye aur doosra sab ko ye maloom ho sake keh kis ka logic rationally drust hai maqsad ke ehtbaar se.

hamaari behs ye hai keh ham main se kon insaanu ko sab se behtrareen raasta bataa sakta hai is duniya main jeene ka, kyun aur kaise. mera kehna ye hai quraan insaanu ko is duniya main jeene ka behtareen raasta bataata hai jis ko woh deene islam ka naam deta hai.

is baare main aap kehte hen quraan ghalat baaten karta hai aur main kehta hun quraan theek baaten karta hai magar aap ko quraan ko theek tarah se samajh ker padhne ka ilm hi nahin hai warna aap quraan ke baare main aise daawe na karte. aap ka kaam hai aap quraan ko apni ilmi quwwat se ghalat saabit karen imaandaari se aur mera kaam hai quraan ko drust saabit karna issi bunyaad per.

rahe aap ke sawalaat to un ka jawaab bahot asaan hai. duniya main jitne bhi nazriye hen woh sab ke sab aapas main mutasaadam hen yani takraate hen. aisi soorat main ye baat teh hai keh sab ke sab to drust nahin ho sakte. magar is ka ye matlab bhi nahin hai keh sab ke sab 100% ghalat hen. balkeh is baat ka poora poora imkaan hai un main se koi aik theek bhi ho sakta hai.

ye baat apni jaga drust hai keh main umar ke taqaaze ki wajah se qadre mazoor hun magar agar aap thoda bardasht ka muzahira karen ge haqeeqat ko jaanane ke liye to baat ban hi jaaye gi.

khair ye aik bunyaadi rule hai rule of judgement main se keh mutazaad nazriyaat sab ke sab drust nahin ho sakte. maslan agar main aik bayaan doon keh main ne aap ko theek das baje falan park main dekha hai aur phir doosra bayaan doon ke main ne aap ko ussi waqt kisi dukaan main dekha hai to ye mumkin hi nahin hai keh mere dono bayaan sach ho saken. dono ke jhoote hone ka poora poora imkaan hai aur aik bayaan ke sache hone ka bhi.

rahee ye baat keh khudaa ke kisi sache paighambar ke sache hone ka saboot kia hai? yahee keh us ko jo kuchh khudaa ne bataaya hai us ko logoon ke saamne pesh ker ke sacha saabit kare. paighambar ke dawe ko sacha saabit karna paighambar ka kaam nahin hai khudaa ka kaam hai jis ka woh paighambar hai ya hone ka dawa karta hai.

doosre lafzoon main hakoomat ka kaam hai apne kaarinde ko apna karinda saabit kare mutalqa logoon ke saamne aur hakoomati karinde ka kaam hai keh woh jo kuchh us ko hakoomat ne diya hai is maqsad ke liye usse un ke saamne rakh de. ab logoon ka kaam hai us ki apni taraf se achhi tarah se jaanch padtaal aur chhaan phatak ker len apne itminaan ke liye.

khudaa ne apna paighambarun ko duniya main is liye bhaija hai ta keh woh logoon ko us ke maqsade takhleeq se waaqif karen aur logoon ko saath milaa ker us ki mumlikat main us ka nizaam qaaim karen ta keh us ka maqsade takhleeq poora ho sake.

ye maqsade takhleeq kaise poora ho sakta hai? jaise khudaa ne apne kalaam main bataaya hai yahee wajah hai deene islam woh raasta hai jis per chal ker insaan khudaa ke maqsade takhleeq ko poora kar sakte hen. ye maqsad aur kisi bhi tarah poora ho hi nahin sakta. yahee wajah hai quraan ko theek tarah se samajhna insaanu ke liye az bas laazmi hai ta keh woh deene islam ko theek tarah se samajh saken aur us ko theek tarah se apnaa ker khudaa ke maqsad ko poora ker saken.

khudaa ke paighambar ke sache hone ka pakka saboot ye hai keh jo raasta woh bataata hai logon ko is duniya main behtareen tareeqe se jeene ka usse behtar raasta log kabhi bhi bataa hi nahin sakte. is liye keh aisa raasta bataane ke liye is duniya ka mukaamal ilm darkaar hai jo khudaa ke siwaa kisi ke paas hai hi nahin.

yahee wajah hai main ne aap se yahee poochha hai keh kia aap deene islam se behtar raasta logoon ko bataa sakte hen is duniya main behtareen tareeqe se jeene ka. aap hi nahin duniya ke sab insaan mil ker bhi aisa nahin ker sakte. ye baat insaan ke bas ki hai hi nahin hai.

yahee wajah hai quraan per ehtaraaz se pehle us ko theek tarah se samajhna laazmi hai taa keh saheeh maanu main pata chal sake quraan main koi ghalati hai ya nahin hai.

main ne quraan aur deene islam per bahot kuchh is forum per likha hai aur share kiya hai aap ko aur deegar logoon ko chhaiye woh us ko ghor se padhen aur samajhne ki koshish karen. Allah kare ga baat samajh main aa jaaye gi aur masla hal ho jaaye ga.

meri baat cheet logoon se debate jeetne ke liye nahin hoti un ko baat samjhaane ke liye hoti hai. is ki wajah ye hai sab insaan unjaan peda hote hen is duniya main aur issi duniya main aik doosre se hi maloomaat aur ilm seekhte hai. jis tarah main doosrun ko kuchh baaten sikhaane ki koshish karta hun issi tarah mujhe bhi to logoon hi ne sikhaaya hai. insaan her shai se seekhta hai agar cheezun per dhiyaan de.

regards and all the best.
 
Last edited:

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)

میں نے کہا تھا نا ؟ کہ بندہ صادق اور امین ہونا چاہیے اور دوسرا اس کا پہلے گزرے ہوئے صادقین اور امانت داروں سے کوئی اختلاف نہ ہو . . . . یہ نبی ہونے کی پہلی شرط ہے
تو اب کوئی شخص آ کر نبوت کا دعوا کرتا ہے تو فورا ہی اس کا ہمارے نبی سے اختلاف پیدا ہو جاتا ہے کہ وہ کہہ گئے ہیں کہ وہ آخری نبی ہیں
میرے خیال میں اب آج کے زمانے میں کوئی نبوت کا دعوے دار پیدا ہو جاتا ہے تو اس کو جھوٹا قرار دینے کے لئے میں نے کافی دلیل دے دی ہے . . . . ہاں نا ماننا آپ کا حق ہے
. . . . . . . . .. . . . . . . . . . .
اور جب آپ ہمارے نبی کے بارے میں پوچھنا چاہتے ہیں تو نبوت کی پہلی شرط یعنی صادق اور امین ہونا انہوں نے پوری کر دی تھی .. . . یعنی انہوں نے لوگوں سے پہلے پوچھا کہ کیا میں ایک صادق اور امین شخص نہیں ہوں . . . لوگوں نے تصدیق کی تو انہوں نے آگے تبلیغ کی
لیکن آپ یہ نہ سمجھیں کہ ان کی نبوت کی دلیل صرف صادق اور آمین ہونا تھی
میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ میری زندگی ان کی نبوت کے ثبوت کو دیکھنے سے بھری پڑی ہے
جتنے ثبوت بولیں گے دے دوں گا

شاہ جی۔۔۔ میں نے پہلے ہی کہا تھا کہ آپ میرے سوال پوچھتے ہی الٹ قلابازی لگائیں گے اور ویسا ہی ہوا۔۔۔

آپ نے خود کہا کہ صادق اور امین ہونا سچے نبی کی نشانی ہے۔۔۔ اب میں نے پوچھا ہے کہ اگر کوئی سچا شخص یہ کہے کہ میں خدا کا پیغمبر ہوں تو اس پر کیوں ایمان نہیں لانا چاہیے۔۔۔ آپ دلیل دیتے ہوئے یہ نہیں سوچ رہے کہ جو دلیل آپ میرے فرضی سوال میں پیش کئے گئے نبی کو جھوٹا ثابت کرنے کیلئے دے رہے ہیں، وہی دلیل آپ کے چودہ سو سال پہلے گزرے نبی پر بھی بعینہ ویسے ہی لاگو ہورہی ہے۔۔۔ یعنی آپ میرے مفروضہ نبی کو ہی نہیں اپنے نبی کو بھی کاذب قرار دے رہے ہیں۔۔۔ اگر سمجھ نہیں آئی تو اپنی دلیل دوبارہ پڑھیں۔۔۔
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)

میں نے کہا تھا نا ؟ کہ بندہ صادق اور امین ہونا چاہیے اور دوسرا اس کا پہلے گزرے ہوئے صادقین اور امانت داروں سے کوئی اختلاف نہ ہو . . . . یہ نبی ہونے کی پہلی شرط ہے
تو اب کوئی شخص آ کر نبوت کا دعوا کرتا ہے تو فورا ہی اس کا ہمارے نبی سے اختلاف پیدا ہو جاتا ہے کہ وہ کہہ گئے ہیں کہ وہ آخری نبی ہیں
میرے خیال میں اب آج کے زمانے میں کوئی نبوت کا دعوے دار پیدا ہو جاتا ہے تو اس کو جھوٹا قرار دینے کے لئے میں نے کافی دلیل دے دی ہے . . . . ہاں نا ماننا آپ کا حق ہے
. . . . . . . . .. . . . . . . . . . .
اور جب آپ ہمارے نبی کے بارے میں پوچھنا چاہتے ہیں تو نبوت کی پہلی شرط یعنی صادق اور امین ہونا انہوں نے پوری کر دی تھی .. . . یعنی انہوں نے لوگوں سے پہلے پوچھا کہ کیا میں ایک صادق اور امین شخص نہیں ہوں . . . لوگوں نے تصدیق کی تو انہوں نے آگے تبلیغ کی
لیکن آپ یہ نہ سمجھیں کہ ان کی نبوت کی دلیل صرف صادق اور آمین ہونا تھی
میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ میری زندگی ان کی نبوت کے ثبوت کو دیکھنے سے بھری پڑی ہے
جتنے ثبوت بولیں گے دے دوں گا


شاہ جی۔۔ میرے سوال کے جواب میں آپ نے فرمایا کہ سچے نبی کی نشانی یہ ہے کہ وہ صادق اور امین ہو، یعنی سچ بولتا ہو اور امانتدار ہو۔۔۔۔
سنیریو یہ ہے کہ ایک آدمی ہے جو پہلے آتا ہے اور وہ بظاہر سچا اور امانتدار ہے، وہ دعویٰ کرتا ہے کہ وہ خدا کا پیغمبر ہے۔۔۔ آپ اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کی پیغیمبری پر ایمان لے آتے ہیں۔۔۔ (ظاہراً اس لئے کہہ رہا ہوں کہ باطن میں جھانکنے کا کوئی ذریعہ نہیں)۔۔۔۔ پھر یوں ہوتا ہے کہ (فرض کرلیں) اس کے کچھ زمانوں بعد ایک اور شخص آتا ہے جو ظاہراً سچا بھی ہے اور امانتدار بھی اور وہ بالکل ویسا ہی دعویٰ کرتا ہے کہ وہ خدا کا پیغمبر ہے۔۔ مگر آپ کہتے ہیں کہ اس پر آپ ایمان نہیں لاسکتے، آپ اس کو جھوٹا قرار دیتے ہیں۔۔۔ یعنی آپ اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری کو جھٹلادیتے ہیں اور اس کو خدا کا پیغمبر ماننے سے انکار کردیتے ہیں۔۔ مگر مسئلہ یہ ہے کہ جو شخص پہلے آیا تھا اور جس نے وہی دعویٰ کیا تھا، اس کو پیغمبر ماننے کا دعویٰ بھی تو اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری ہی تھی، تو دوسرے کیس میں ظاہراً سچائی اور امانتداری کو رد کرنے کا مطلب یہ ہے کہ پہلے کیس میں بھی ظاہراً سچائی اور امانتداری رد ہوگئی، کیونکہ پیمانہ دونوں کیسز میں ایک ہے، اگر ایک کیس میں پیمانہ رد ہوتا ہے تو دوسرے کیس میں اپنے آپ ہوجاتا ہے۔۔۔ نتیجہ یہ ہے کہ آپ بہ الفاظ دیگر یہ کہہ رہے ہیں کہ دونوں ہی جھوٹے ہیں۔۔۔
یا پھر یہ ہوسکتا ہے کہ آپ پیمانہ بدل لیں اور ظاہراً سچائی اور امانتداری کی بجائے کوئی اور پیمانہ طے کرلیں، پھر آگے گفتگو ہوسکتی، وگرنہ یہاں تک تو آپ دلیلاً پہلے اور دوسرے دونوں کو جھوٹا قرار دے رہے ہیں۔۔
 

Zinda_Rood

Senator (1k+ posts)
azeezam zinda rood sb, kyunkeh aap agnostic hen aur main musalmaan hun lihaaza ham dono main bunyaadi ikhtilaaf hai, yani hamaari bunyaad aik nahin hai. issi liye jab ham aage baat karen ge to us ki samajh kisi ko bhi nahin aaye gi. lihaaza ham ko baat shuroo se shuroo karni ho gi ta keh aik to hamaara ikhtilaaf sab ke saamne khul ker aa jaaye aur doosra sab ko ye maloom ho sake keh kis ka logic rationally drust hai maqsad ke ehtbaar se.

hamaari behs ye hai keh ham main se kon insaanu ko sab se behtrareen raasta bataa sakta hai is duniya main jeene ka, kyun aur kaise. mera kehna ye hai quraan insaanu ko is duniya main jeene ka behtareen raasta bataata hai jis ko woh deene islam ka naam deta hai.

is baare main aap kehte hen quraan ghalat baaten karta hai aur main kehta hun quraan theek baaten karta hai magar aap ko quraan ko theek tarah se samajh ker padhne ka ilm hi nahin hai warna aap quraan ke baare main aise daawe na karte. aap ka kaam hai aap quraan ko apni ilmi quwwat se ghalat saabit karen imaandaari se aur mera kaam hai quraan ko drust saabit karna issi bunyaad per.

rahe aap ke sawalaat to un ka jawaab bahot asaan hai. duniya main jitne bhi nazriye hen woh sab ke sab aapas main mutasaadam hen yani takraate hen. aisi soorat main ye baat teh hai keh sab ke sab to drust nahin ho sakte. magar is ka ye matlab bhi nahin hai keh sab ke sab 100% ghalat hen. balkeh is baat ka poora poora imkaan hai un main se koi aik theek bhi ho sakta hai.

ye baat apni jaga drust hai keh main umar ke taqaaze ki wajah se qadre mazoor hun magar agar aap thoda bardasht ka muzahira karen ge haqeeqat ko jaanane ke liye to baat ban hi jaaye gi.

khair ye aik bunyaadi rule hai rule of judgement main se keh mutazaad nazriyaat sab ke sab drust nahin ho sakte. maslan agar main aik bayaan doon keh main ne aap ko theek das baje falan park main dekha hai aur phir doosra bayaan doon ke main ne aap ko ussi waqt kisi dukaan main dekha hai to ye mumkin hi nahin hai keh mere dono bayaan sach ho saken. dono ke jhoote hone ka poora poora imkaan hai aur aik bayaan ke sache hone ka bhi.

rahee ye baat keh khudaa ke kisi sache paighambar ke sache hone ka saboot kia hai? yahee keh us ko jo kuchh khudaa ne bataaya hai us ko logoon ke saamne pesh ker ke sacha saabit kare. paighambar ke dawe ko sacha saabit karna paighambar ka kaam nahin hai khudaa ka kaam hai jis ka woh paighambar hai ya hone ka dawa karta hai.

doosre lafzoon main hakoomat ka kaam hai apne kaarinde ko apna karinda saabit kare mutalqa logoon ke saamne aur hakoomati karinde ka kaam hai keh woh jo kuchh us ko hakoomat ne diya hai is maqsad ke liye usse un ke saamne rakh de. ab logoon ka kaam hai us ki apni taraf se achhi tarah se jaanch padtaal aur chhaan phatak ker len apne itminaan ke liye.

khudaa ne apna paighambarun ko duniya main is liye bhaija hai ta keh woh logoon ko us ke maqsade takhleeq se waaqif karen aur logoon ko saath milaa ker us ki mumlikat main us ka nizaam qaaim karen ta keh us ka maqsade takhleeq poora ho sake.

ye maqsade takhleeq kaise poora ho sakta hai? jaise khudaa ne apne kalaam main bataaya hai yahee wajah hai deene islam woh raasta hai jis per chal ker insaan khudaa ke maqsade takhleeq ko poora kar sakte hen. ye maqsad aur kisi bhi tarah poora ho hi nahin sakta. yahee wajah hai quraan ko theek tarah se samajhna insaanu ke liye az bas laazmi hai ta keh woh deene islam ko theek tarah se samajh saken aur us ko theek tarah se apnaa ker khudaa ke maqsad ko poora ker saken.

khudaa ke paighambar ke sache hone ka pakka saboot ye hai keh jo raasta woh bataata hai logon ko is duniya main behtareen tareeqe se jeene ka usse behtar raasta log kabhi bhi bataa hi nahin sakte. is liye keh aisa raasta bataane ke liye is duniya ka mukaamal ilm darkaar hai jo khudaa ke siwaa kisi ke paas hai hi nahin.

yahee wajah hai main ne aap se yahee poochha hai keh kia aap deene islam se behtar raasta logoon ko bataa sakte hen is duniya main behtareen tareeqe se jeene ka. aap hi nahin duniya ke sab insaan mil ker bhi aisa nahin ker sakte. ye baat insaan ke bas ki hai hi nahin hai.

yahee wajah hai quraan per ehtaraaz se pehle us ko theek tarah se samajhna laazmi hai taa keh saheeh maanu main pata chal sake quraan main koi ghalati hai ya nahin hai.

main ne quraan aur deene islam per bahot kuchh is forum per likha hai aur share kiya hai aap ko aur deegar logoon ko chhaiye woh us ko ghor se padhen aur samajhne ki koshish karen. Allah kare ga baat samajh main aa jaaye gi aur masla hal ho jaaye ga.

meri baat cheet logoon se debate jeetne ke liye nahin hoti un ko baat samjhaane ke liye hoti hai. is ki wajah ye hai sab insaan unjaan peda hote hen is duniya main aur issi duniya main aik doosre se hi maloomaat aur ilm seekhte hai. jis tarah main doosrun ko kuchh baaten sikhaane ki koshish karta hun issi tarah mujhe bhi to logoon hi ne sikhaaya hai. insaan her shai se seekhta hai agar cheezun per dhiyaan de.

regards and all the best.
مغل صاحب۔۔ آپ سے گزارش ہے کہ اگر آپ اپنے بیانیے کو تھوڑا مختصر رکھا کریں تو بحث کرنے میں آسانی رہے گی، آپ جانتے ہیں، ہم سب یہاں مصروف زندگی سے وقت نکال کر آتے ہیں۔۔۔ خیر آپ نے فرمایا کہ نظریات اکثر متضاد ہوتے ہیں اور کوئی بھی نظریہ 100 فیصد غلط نہیں ہوسکتا۔۔۔ مگر آپ یہاں یہ نظر انداز کرگئے کہ ہم جس بارے میں بات کررہے ہیں، وہاں 100 فیصد سچ یا 100 فیصد جھوٹ کا سوال ہے۔۔ ایک شخص جو پیغمبری کا دعوے دار ہے وہ یا 100 فیصد سچا ہے یا 100 فیصد جھوٹا، ایسا تو ہو نہیں سکتا کہ وہ ساٹھ فیصد سچا ہے اور چالیس فیصد جھوٹا۔ اور جو مذہب کا سوال ہے، وہ بھی تقریباً یہی ہے کہ سوال تو یہ ہے کہ مذہب خدا کی طرف سے ہے یا انسانوں نے بنایا ہے۔۔۔ باقی آپ نے جو پیغمبر کے سچے ہونے کے دلائل دیئے کہ وہ ایسا طریقہ بتاتا ہے جو غلط ہوہی نہیں سکتا، یہ تو محض اعتقاد کی حد تک ہے، جو پیغمبر کو مانتے ہیں، وہ اس کے طریقے کو درست قرار دیتے ہیں اور جو نہیں مانتے، وہ اس کے طریقے کو غلط کہتے ہیں اور یہ زندگی گزارنے کا طریقہ وغیرہ یہ ریاضی کی طرح سوال تو ہے نہیں کہ جھٹ سے صحیح غلط کا پتا لگا لیا، یہ معروضی موضوعات ہیں اور زیادہ تر انسانی رائے پر منحصر ہوتے ہیں۔۔۔
آپ کسی احمدی سے بات کریں، وہ اپنے پیغمبر حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام کو سچا پیغمبر / مسیح موعود بتائے گا اور کہے گا کہ اس کا بتایا گیا طریقہ ہی دنیا کا بہترین طریقہ ہے۔۔ تو کیا میں حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام پر ایمان لے آؤں۔۔۔۔؟؟؟؟
 

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)

میں نے لکھا کہ صادق اور امین ہونا پہلی نشانی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ اور بھی لوازمات ہیں جو سچا نبی پورا کرتا ہے
یہ ٹھیک ہے کہ ہم کسی کے باطن میں نہیں جھانک سکتے لیکن سچے رسول کی تعلیمات اپنے آپ میں دلیل ہوتی ہیں
ہمارے دین کا یہ دعوا ہے کہ اس میں ہر چیز کا جواب موجود ہے میں نے خود کئی ایسی باتوں کو ملاحضہ کیا ہے جو جدید سائنس بھی نہیں جانتی ، کچھ پر میں تحقیق کر رہا ہوں
مثلا میں اسی فورم پر کئی بار دعوا کر چکا ہوں کہ بڑھاپے جیسی بیماری کا علاج اسلام بہت پہلے دے چکا ہے . . . وہ الگ بات ہے کہ کسی نے تفصیل نہیں پوچھی
.
قصہ مختصر یہ کہ سچا نبی آپ کو آپ کے چنیدہ میدان میں نامعلوم کا جواب دے کر آپ کی تشفگی کرتا ہے
اور ہمارے نبی پر نازل ہوئی کتاب میں ہر سوال کا جواب موجود ہے
جیسے جیسے میری سمجھ اور عقل بڑھ رہی ہے مجھے جواب ملتے جا رہے ہیں
.
اب آج کے زمانے میں کوئی ہے جو ہر سوال کا جواب دینے کا دعوا کر سکے؟

شاہ جی۔۔ میرے سوال کے جواب میں آپ نے فرمایا کہ سچے نبی کی نشانی یہ ہے کہ وہ صادق اور امین ہو، یعنی سچ بولتا ہو اور امانتدار ہو۔۔۔۔
سنیریو یہ ہے کہ ایک آدمی ہے جو پہلے آتا ہے اور وہ بظاہر سچا اور امانتدار ہے، وہ دعویٰ کرتا ہے کہ وہ خدا کا پیغمبر ہے۔۔۔ آپ اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کی پیغیمبری پر ایمان لے آتے ہیں۔۔۔ (ظاہراً اس لئے کہہ رہا ہوں کہ باطن میں جھانکنے کا کوئی ذریعہ نہیں)۔۔۔۔ پھر یوں ہوتا ہے کہ (فرض کرلیں) اس کے کچھ زمانوں بعد ایک اور شخص آتا ہے جو ظاہراً سچا بھی ہے اور امانتدار بھی اور وہ بالکل ویسا ہی دعویٰ کرتا ہے کہ وہ خدا کا پیغمبر ہے۔۔ مگر آپ کہتے ہیں کہ اس پر آپ ایمان نہیں لاسکتے، آپ اس کو جھوٹا قرار دیتے ہیں۔۔۔ یعنی آپ اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری کو جھٹلادیتے ہیں اور اس کو خدا کا پیغمبر ماننے سے انکار کردیتے ہیں۔۔ مگر مسئلہ یہ ہے کہ جو شخص پہلے آیا تھا اور جس نے وہی دعویٰ کیا تھا، اس کو پیغمبر ماننے کا دعویٰ بھی تو اس کی ظاہراً سچائی اور امانتداری ہی تھی، تو دوسرے کیس میں ظاہراً سچائی اور امانتداری کو رد کرنے کا مطلب یہ ہے کہ پہلے کیس میں بھی ظاہراً سچائی اور امانتداری رد ہوگئی، کیونکہ پیمانہ دونوں کیسز میں ایک ہے، اگر ایک کیس میں پیمانہ رد ہوتا ہے تو دوسرے کیس میں اپنے آپ ہوجاتا ہے۔۔۔ نتیجہ یہ ہے کہ آپ بہ الفاظ دیگر یہ کہہ رہے ہیں کہ دونوں ہی جھوٹے ہیں۔۔۔
یا پھر یہ ہوسکتا ہے کہ آپ پیمانہ بدل لیں اور ظاہراً سچائی اور امانتداری کی بجائے کوئی اور پیمانہ طے کرلیں، پھر آگے گفتگو ہوسکتی، وگرنہ یہاں تک تو آپ دلیلاً پہلے اور دوسرے دونوں کو جھوٹا قرار دے رہے ہیں۔۔
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
مغل صاحب۔۔ آپ سے گزارش ہے کہ اگر آپ اپنے بیانیے کو تھوڑا مختصر رکھا کریں تو بحث کرنے میں آسانی رہے گی، آپ جانتے ہیں، ہم سب یہاں مصروف زندگی سے وقت نکال کر آتے ہیں۔۔۔ خیر آپ نے فرمایا کہ نظریات اکثر متضاد ہوتے ہیں اور کوئی بھی نظریہ 100 فیصد غلط نہیں ہوسکتا۔۔۔ مگر آپ یہاں یہ نظر انداز کرگئے کہ ہم جس بارے میں بات کررہے ہیں، وہاں 100 فیصد سچ یا 100 فیصد جھوٹ کا سوال ہے۔۔ ایک شخص جو پیغمبری کا دعوے دار ہے وہ یا 100 فیصد سچا ہے یا 100 فیصد جھوٹا، ایسا تو ہو نہیں سکتا کہ وہ ساٹھ فیصد سچا ہے اور چالیس فیصد جھوٹا۔ اور جو مذہب کا سوال ہے، وہ بھی تقریباً یہی ہے کہ سوال تو یہ ہے کہ مذہب خدا کی طرف سے ہے یا انسانوں نے بنایا ہے۔۔۔ باقی آپ نے جو پیغمبر کے سچے ہونے کے دلائل دیئے کہ وہ ایسا طریقہ بتاتا ہے جو غلط ہوہی نہیں سکتا، یہ تو محض اعتقاد کی حد تک ہے، جو پیغمبر کو مانتے ہیں، وہ اس کے طریقے کو درست قرار دیتے ہیں اور جو نہیں مانتے، وہ اس کے طریقے کو غلط کہتے ہیں اور یہ زندگی گزارنے کا طریقہ وغیرہ یہ ریاضی کی طرح سوال تو ہے نہیں کہ جھٹ سے صحیح غلط کا پتا لگا لیا، یہ معروضی موضوعات ہیں اور زیادہ تر انسانی رائے پر منحصر ہوتے ہیں۔۔۔
آپ کسی احمدی سے بات کریں، وہ اپنے پیغمبر حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام کو سچا پیغمبر / مسیح موعود بتائے گا اور کہے گا کہ اس کا بتایا گیا طریقہ ہی دنیا کا بہترین طریقہ ہے۔۔ تو کیا میں حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام پر ایمان لے آؤں۔۔۔۔؟؟؟؟
azeezam zinda rood sb, sab se pehle meri post ko kindly dobaara ghor se padhen main ne ye nahin kahaa keh koi bhi nazriye 100% ghalat nahin ho sakta. main aik musallam rule of judgement samjhaa rahaa hun keh jab koi do nazriyaat ya bayanaat apas main mutasaadam hun to kia nataaij nakaale jaa sakte hen.

aik ye nateeja nikalta hai keh aapas main mutazaad baaten dono hi ghalat ho sakti hen aur doosra ye nateeja nikalta hai keh dono main se koi aik hi drust ho sakti hai, yani dono ka ghalat hona laazmi nahin hai. rahee ye baat keh aapas main mutazaad bayanaat main se koi kitna ghalat hai ya kitna saheeh hai woh aik alag baat hai jo aage chal ker pata chalayee ja sakti hai us ki sources per baat ker ke.

aap ye bhi request ker rahe hen main apni post ko chhota rakhun. main aap ki ye request poori kerne se qaasir hun is liye keh jab bhi kisi issue per baat hoti hai to us ko munaasib had tak samajhna ya samjhaana padhta hai warna baat ko samajhne main diqqat pesh aati hai.

ab aate hen aap ki doosri baat ki taraf. meri samajh ke mutaabiq aap ye keh rahe hen keh way of life aik mafrooza hota hai jis ka sach ya jhoot hona 2+2=4 ki tarah ayaan nahin ho sakta.

quraan per mabni deene islam 2+2=4 hi ki tarah hai. ye alag bat hai keh ham insaan us ko us tarah samajhne ki khud main ehliyat peda na ker sake hun. is baat ko yun samjhen keh aap aik chhota bacha hen aur aap ke abbaa jaan aap ko ye bataa rahe hen beta 2+2=4. ab aap ko apne abbaa jaan ki baat tabhi samajh main aaye gi jab aap is baat ko samajhne ke lavel tak khud ko pohnchaayen ge warna nahin. kuchh aisa hi maamla khudaa aur bande ke beech bhi hai. issi wajah se jo insaan khud ko is qaabil nahin karte keh woh khudaa ki baatun ko samajh saken woh un batun ko samajh hi nahin sakte.

Q1)ab sawaal peda hota hai log khud ko is qaabil kaise karen keh woh khudaa ki baatun ko theek tarah se samajhne ka ehal ho saken?

Q2)ye kaise pata chal sakta hai keh quraan ki baaten maths hi ki tarah hen?

A1) log khud ko kisi bhi baat ko samajhne ka ehal kaise karte hen? aapas main interaction se aur mojood cheezun ke saath tajarbaat se. her insaan jo taleem yaafta hota hai us ko apni taleem mukammal karne ke liye tamaam intermediary stages se guzarna padta hai warna woh alaa taleem tak pohnch hi nahin sakta. bilkul issi tarah khudaa ki kitaab ko samajhne ka ehal banane ke liye logoon ko un tamaam stages se guzarna padta hai jo us ko samajh sakne ke liye laazmi hen.

A2)sab se pehle ye baat jaan lijiye keh quraan is liye diya gayaa hai ta keh log is ki guidelines per mabni aik behtraeen insaani mashra qaaim karen miljul ker aapas main aik doosre ko persuade ya convince ker ke aik dosre ki madad se. doosre lafzoon main quraan khudaa ki taraf se insaanu ko diya gayaa aik bluprint hai aik behtareen insaani maashra tameer karne ke liye. aisa samjhen ye aik naqsha hai aik building tameer karne ke liye. albatta ye imaarat eent gaare ki nahin hai insaani maashre ki imaarat hai.

ab sawaal peda hota hai insaani maashre ki imaarat tameer karne ke liye kia kia material darkaar hai. sab se pehle aik drust ideology jis ke mutaabiq aik drust insaani maashra tayaar kiya jaaye. agar ideology hi ghalat ho gi to maashra bhi ghalat hi tameer ho ga.

is ki misaal aap yun samjhen keh aap ne apne aik ghar main electric wiring karwaani hai. electrician aap ke ghar main aa ke aap ke ghar ka moina kare ga aur dekhe ga yahaan wiring kaise ho sakti hai. us ke mutaabiq woh apna naqsha tayaar kare ga. ab naqsha tayaar karne ke baad us ko dobaara achhi tarah se check kare ga keh kahin koi ghalati to nahin ho gayee wiring circuit paper per draw karte karte. jab woh mutmain ho ga to us naqshe ke mutaabiq woh jaa ker ghar main wiring ker de ga aur jab us ka kaam mukammal ho jaaye ga to aap ke ghar main roshni aa jaaye gi.

bilkul issi tarah ham ne quraan ko samajh ker padhna hai taa keh ham ko maloom ho sake quraan ham ko drust insaani maashra qaaim karne ka kia naqsha deta hai aur aaya woh naqsha hamare liye drust hai ya nahin. jab ham mutmain ho jaayen keh behtareen insaani maashra banaane ke liye ye naqsha bilkul drust hai tab ham us per amal ker ke waisa maashra bana sakte hen warna nahin.

ab aap khud se sawaal karen keh kia aap ne kabhi quraan ko is context main theek tarah se samajhne ke liye padha hai apni zindagi main? aap ki baatun se mujhe ye andaaza huwa hai keh aap ne abhi tak quraan ko yun nahin padha hai. main ye jaanta hun aap ne islamic literature bahot padha hai is liye keh jo malumaat aap dete hen islam ke baare main woh aik mukammal unjaan aadmi de hi nahin sakta.

ye mat sochen main aap ko sirf sikhaa rahaa hun balkeh main aap se seekh bhi rahaa hun. issi liye main aap ki posts ko appreciate bhi karta hun. mujhe aap ke logic per ehtaraaz nahin hai haan ideologically app ki rationality pe ehtaraaz zaroor hai. aap ki ye baat bilkul drust hai keh khudaa ka kalaam 100% drust hona chahiye warna woh kudaa ka kalaam ho hi nahin sakta. issi liye to baat chali thi keh ye kaise pata chale keh khudaa ka kalaam 100 % drust hai?

ye baat bhi yaad rakhen khudaa ke sache paighambar ka khataaon se paak hona zaroori nahin hai kyunkeh woh insaan hota hai lihaaza usse ghalati ho sakti hai magar koi aisi ghalati nahin jisse us ke khudaa ke kalaam ko logoon tak theeh theek pohnchaane main harf aata ho. quraan ke mutaabiq deene islam ki bunyaad kisi insaani shakhsiyat per nahin hai na kabhi thi. lihaaza aap khudaa aur khudaa ke paighmbar ko apni apni jaga per rakhen.

regards and all the best.
 
Last edited:

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
سوال تو یہ ہے کہ مذہب خدا کی طرف سے ہے یا انسانوں نے بنایا ہے۔۔۔ باقی آپ نے جو پیغمبر کے سچے ہونے کے دلائل دیئے کہ وہ ایسا طریقہ بتاتا ہے جو غلط ہوہی نہیں سکتا، یہ تو محض اعتقاد کی حد تک ہے، جو پیغمبر کو مانتے ہیں، وہ اس کے طریقے کو درست قرار دیتے ہیں اور جو نہیں مانتے، وہ اس کے طریقے کو غلط کہتے ہیں اور یہ زندگی گزارنے کا طریقہ وغیرہ یہ ریاضی کی طرح سوال تو ہے نہیں کہ جھٹ سے صحیح غلط کا پتا لگا لیا، یہ معروضی موضوعات ہیں اور زیادہ تر انسانی رائے پر منحصر ہوتے ہیں۔۔۔
آپ کسی احمدی سے بات کریں، وہ اپنے پیغمبر حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام کو سچا پیغمبر / مسیح موعود بتائے گا اور کہے گا کہ اس کا بتایا گیا طریقہ ہی دنیا کا بہترین طریقہ ہے۔۔ تو کیا میں حضرت امام مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام پر ایمان لے آؤں۔۔۔۔؟؟؟؟
azeezam zinda rood sb, yahaan per aap do sawalaat uthaa rahe hen. aik ye keh kia khudaa mojood hai? doosra ye keh kia us ne insaanu se kabhi baat ki bhi hai ya nahin?

1)khudaa ke wajood ke baare main inkaar mumkin hi nahin hai. is liye keh agar kuchh bhi nahin tha to phir ye sab kuchh kahaan se aa gaaya? ye is baat ka pakka saboot hai kuchh to tha jis ki wajah se sab kuchh wajood main aaya hai.

sainsdaan to ye bhi kehte hen keh khudaa to bahot hi pecheeda hasti hai magar kainaat to kisi simple shai ki wajah se wajood main ayee hai.

mera sawaal aise sansdaanu se ye hai agar kainaat kisi simple shai se wajood main ayee hai to woh simple shai kitni simple ho sakti hai? jab aap is baat ko saheeh tarah se is ke mantaqi anjaam ki taraf le jaayen ga to pata chale ga woh simple shai khudaa se simple ho hi nahin sakti is liye keh us main woh tamaam properties maanani hi padti hen jo khudaa ki zaat main maani jaati hen.

misaal ke tor per khud se poochhen, kia woh shai simple ho sakti hai jo hamesha se mojood ho ya hamesha mojood reh sake? kia hamesha se mojood hona ya rehna koi asaan aur simple baat hai? agar nahin hai to khudaa ka simple hone kyun laazmi hai?

woh shai kaise simple ho sakti hai jis ke kaamoon se us ki aqalmandi aur samajhdaari ka izhaar hota ho? bilkul hi nahin. issi tarah deegar aise sawalaat uthaate jaayen khud hi pata chal jaaye ga aise logoon ka aisa kehna ya maanana ghalat kyun hai. sawaal hi peda nahin hota koi atheist khudaa ke wajood ki kisi bhi tarah kaamyab argument se nafi ker sake.

baaz ka ye kehna hai keh ye kaainaat hamesha se hi mojood hai. agar ye kaainaat hamesha se mojood hoti to is main taghaiyaraat mumkin hi na the. yani ye jaisi pehle din se thi waisi hi rehni chahiye thi. kyunkeh is main tabdeeliyan hamaare saamne hen lihaaza ye jab se hai tab se tabdeel hoti rahee hai aur hoti rahe gi. ab jo shai apni zaat main yun tabdeel hoti hai woh permanent kaise ho sakti hai? issi tarah agar ham kaainaat per is tarah ke sawalaat uthaate jaayen to nateeja yahee nakalta hai keh kaainaat bazaate khud khudaa ke attributes nahin rakhti na rakh sakti hai. yahee wajah hai kisi ka khudaa ke wajood ka inkaar karna bilkul hi ghalat baat hai.

ab agar khudaa ke wajood ko tasleem ker liya jaaye to phir swalaat peda hote hen keh khudaa ne ye kaainaat kyun banayee hai? isse ke banaane se khudaa ka maqsad kia tha? woh maqsad poora kaise ho sakta hai? waghera waghera.

ab aise sawalaat ke jawabaat insaan khud kabhi bhi nahin de sakta hai is liye keh ye to khudaa ke apne bataaye baghair maloom hi nahin kiye jaa sakte. yahee wajah hai khudaa ne insaanu tak khud apni baaten pohnchaayin aur issi ka naam wahee hai. khudaa ne insaanu ko baar baar apne mutaliq bataaya aur aakhari baar us ne apne aakhari rasool yani muhammadurrasoolullah ke zariye bataaya.

quraan ke baad hamen koi kitaab nahin milti jo quraan ki tarah logoon ko khudaa ki baaten bataaye. yahee nahin quraan se pehle waali koi aik khudaa ki kitaab bhi ab is duniya main mojood nahin hai. lihaaza is waqt duniya main agar koi khudaa ki kitaab mojood hai to woh sirf aur sirf quraan hi hai. baaqi jin kitaabun ko khudaa ki taraf mansoob kiya jaata hai jab aap un ko padhen to khud hi zahir ho jaat hai woh insaanu ki apni likhi hui kitaaben hen jin main log khudaa ke mutaliq baaten kerte hen. sirf quraan hi aisi kitab hai jis main khud khudaa baat ker rahaa hai deegar her shai ke mutaliq.

aik aur baat ye bhi jaan len main quraan ko mazhabi kitaab nahin samajhta. aisa kyun hai agar aap poochhen ge to main bataa dun ga.

meanwhile regards and all the best.
 
Last edited:
Status
Not open for further replies.
Sponsored Link

Latest Blogs Featured Discussion