پی ٹی آئی خواتین سے متعلق نازیبا زبان،مولاناطارق جمیل کی فضل الرحمن پرتنقید

maulanahsh.jpg


معروف مذہبی اسکالر مولانا فضل الرحمان نے سربراہ جے یو آئی (ف) مولانا فضل الرحمان کے تحریک انصاف کی خواتین کارکنان سے متعلق استعمال کی گئی نازیبا زبان پر کی مذمت کی اور ان کے رویے پر تنقید کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق مولانا طارق جمیل نے ایک ٹوئٹ کیا جس میں سربراہ جے یو آئی ف مولانا فضل الرحمان پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایک عالم دین کے لیے (جو علماء اور لوگوں کا مقتدی بھی ہو ) اسلامی اور شرعی تعلیمات کے منافی الفاظ کا استعمال بہت ہی نا مناسب ہے، خاص طور پر عوامی اجتماعات میں اسکی رعایت رکھنی چاہیے۔

دوسری جانب مسلم لیگ ضیاء کے سربراہ اعجازالحق نے بھی مولانا فضل الرحمان کی شدید مذمت کی ہے، اعجاز الحق نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان نے انتہائی بیہودہ زبان استعمال کی ہے جس کی میں مذمت کرتا ہوں۔

یاد رہے کہ سربراجے یو آئی ف کے سربراہ نے ایک عوامی جلسے میں پی ٹی آئی سے منسلک خواتین کارکنان سے متعلق انتہائی نازیبا خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اخلاق سے گرے ہوئے الفاظ استعمال کیے تھے۔


مذکورہ جلسے میں مولانا کی جانب سے استعمال کیے گئے الفاظ پر مذہبی، سیاسی، صحافتی اور تقریباً تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے تنقید کی اور مولانا کے الفاظ کو غلط کہا۔
 

samisam

Chief Minister (5k+ posts)
باقی جو صحافی یا مولوی یا سیاسی لیڈر بھی اس فضلے لونڈے باز ممیسئے اور گنا چوپنے والے نطفہ حرام گشتی کے بچے کی اس غلیظ زبان کی مزمت نہیں کررہا
ہر وہ بندہ جو بھی اسکی مزمت نہیں کررہا وہ بندہ کسی گشتی کا بچہ ہے سرٹیفائڈ طوائف نسل اور گشتی کا بچہ ہے
 

samkhan

Chief Minister (5k+ posts)

اس ابلیس کو مولانا کہنے پر سرکاری طور پر پابندی عائد کر دی جانی چاہیے
ابلیس پر پابندی تو الله نے نہیں لگائی، حکومت پاکستان کیسے لگا سکتی ہے؟
 

KPKInsafian

MPA (400+ posts)
maulanahsh.jpg


معروف مذہبی اسکالر مولانا فضل الرحمان نے سربراہ جے یو آئی (ف) مولانا فضل الرحمان کے تحریک انصاف کی خواتین کارکنان سے متعلق استعمال کی گئی نازیبا زبان پر کی مذمت کی اور ان کے رویے پر تنقید کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق مولانا طارق جمیل نے ایک ٹوئٹ کیا جس میں سربراہ جے یو آئی ف مولانا فضل الرحمان پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ایک عالم دین کے لیے (جو علماء اور لوگوں کا مقتدی بھی ہو ) اسلامی اور شرعی تعلیمات کے منافی الفاظ کا استعمال بہت ہی نا مناسب ہے، خاص طور پر عوامی اجتماعات میں اسکی رعایت رکھنی چاہیے۔

دوسری جانب مسلم لیگ ضیاء کے سربراہ اعجازالحق نے بھی مولانا فضل الرحمان کی شدید مذمت کی ہے، اعجاز الحق نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان نے انتہائی بیہودہ زبان استعمال کی ہے جس کی میں مذمت کرتا ہوں۔

یاد رہے کہ سربراجے یو آئی ف کے سربراہ نے ایک عوامی جلسے میں پی ٹی آئی سے منسلک خواتین کارکنان سے متعلق انتہائی نازیبا خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اخلاق سے گرے ہوئے الفاظ استعمال کیے تھے۔


مذکورہ جلسے میں مولانا کی جانب سے استعمال کیے گئے الفاظ پر مذہبی، سیاسی، صحافتی اور تقریباً تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے تنقید کی اور مولانا کے الفاظ کو غلط کہا۔
Qasmay yai bachpan sai lai kar ab tak buht barha gaandhoo raha hai.
 

samisam

Chief Minister (5k+ posts)
ایک خنزیر اور خارش زدہ کتے کے ملاپ سے پیدا ہوئے نطفہ حرام گشتی کے بچے لعنتی بے غیرت لونڈے باز ممیسئے اور گنا چوپنے کے شوقین اپنے ساتھ روازانہ تین چار بار بد فعلی کرواکے اپنی کھرک مٹانے والاحرامی فضلے کے گٹر سے اور کیاتوقع ہو سکتی ہے اس حرام کے نطفے لونڈے باز کی یہی اوقات ہے یہ خنزیرئ نسل کا کتا پچھواڑے سے بھونکتا ہے ُاور مونہہ سے ہگتا ہے
 

samisam

Chief Minister (5k+ posts)
It's a pity, no other cleric has condemned the foul tirade of Fazlurahman. Well done Molana Tariq Jameel for doing the needful.
ہر وہ مولوی یا عالم جو بھی اس خنزیر فضلے کے اس توہین آمیز بیان اور بکواس بھونکنے کی مزمت نہیں کرتا وہ بھی لازمی کسی گشتی کا بچہ اور حرام کا نطفہ ہی ہے
 
Sponsored Link