کوئٹہ : 200 سے زائد لڑکیوں کی نازیبا ویڈیو اسکینڈل ملزموں کو قید کی سزا

quetta-case-court-pn.jpg


بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے علاقے قائد آباد میں 200 سے زائد لڑکیوں کی نازیبا ویڈیو اسکینڈل کے دو ملزمان کو عدالت نے چھ، چھ سال قید سنا دی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق قائد آباد کے علاقے میں نازیبا ویڈیو سکینڈل کیس میں جوڈیشل مجسٹریٹ عدالت نے ملزمان ہدایت اللہ اور خلیل کو چھ برس قید کے ساتھ 5،5 لاکھ روپے جرمانہ ادا کرنے کا حکم بھی دیا۔

جوڈیشل میجسٹریٹ نے سیکشن 22 کے تحت ملزمان کو سزائیں سنائیں۔ یاد رہے کہ دسمبر 2021 میں کوئٹہ میں 200 سے زائد لڑکیوں کو ملازمت کا جھانسہ دینے اور نشے کا عادی بنا کر اُن کی برہنہ ویڈیوز بنائی گئیں تھیں۔

اس واقعہ کے بعد انہیں بلیک میل کر کے متعدد بار اس گروہ نے زیادتی بھی کی۔ پولیس نے شکایات سامنے آنے کے بعد سابق کونسلر ہدایت خلجی نامی ملزم کو گرفتار کیا جس نے دورانِ تفتیش اعتراف کیا تھا کہ اُس نے بلوچستان یونیورسٹی کی طالبات کے ساتھ یہ گھناؤنا کام شروع کیا۔

ملزم نے یہ بھی اعتراف کیا کہ تعلقات کا استعمال کرتے ہوئے دیگر لڑکیوں کو سرکاری ملازمت کا جھانسہ دیا اور لالچ میں لاکر لڑکیوں کو اپنی جنسی درندگی کا نشانہ بنایا۔
 

aqibarain

Minister (2k+ posts)
in some non muslim country this man would be killed off by inmates but this guy will be out of jail in 3 years and back in business..
islam jindabad.
Pakistan paindabad...
pak phauj chutarabad...
 

Jazbaati

Minister (2k+ posts)
Where are the mullahs now? They cry about women attending PTI jalsas but are silent on such a huge crime. These rapists should be put to death, not locked up for a few months.
 

Bebabacha

Senator (1k+ posts)
Six years only what a joke... He should be castrated permanently, after that throw him in dark hole for life
 

Eyeaan

Chief Minister (5k+ posts)
6 years for numerous rapes and half a dozen other criminal charges?
Are these judges insane or compromised?
I feel certain that these judges were heavily bribed by the rapist.
 
Sponsored Link