چھٹی کے دن بابر ستار کی پریس ریلیز آتی ہے،مداخلت کا ثبوت دیں:فیصل واوڈا

battery low

Minister (2k+ posts)
اسلام آباد: سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا ہے کہ عدلیہ میں مداخلت کا ثبوت ہے تو پیش کریں، ورنہ ابہام بڑھ رہا ہے۔

نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ چھٹی کے دن جسٹس بابر ستار کی جانب سے پریس ریلیز آتی ہے، 30 اپریل کو میں نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے ججز کو خط لکھا، کوریئر بھی کیا، خط رجسٹرار آفس میں موصول کروایا ، جج بننے سے پہلے جسٹس ستار نے اس وقت کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کو رپورٹ کیا۔ اس کی کوئی قانونی چیز ہو گی جو ہمیں نہیں مل رہی ، آرٹیکل 19 اے کے تحت ہر پاکستانی انفارمیشن لے سکتا ہے، اب ابہام بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک سال پہلے کیوں نہیں بتایا ۔ ایک سال بعد آپ نے پھر الزام لگایا ۔ اب آپ کو شواہد دینا پڑیں گے۔ میں کہہ دوں کہ جج نے کہہ دیا کہ قتل کر دو، کوئی ثبوت تو نہیں ہے ۔ کوڈ آف کنڈکٹ کے تحت ججز کو اللہ سے ڈرنے والا، اچھی زبان ، محتاط اور الزامات سے دور دور تک تعلق نہیں ہونا چاہیے۔ جواب نہیں آ رہا، اس سے ابہام بڑھ رہا ہے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ شواہد یا ثبوت کے بغیر عدالت نہیں کارروائی کرتی ۔ اسی حساب سے اگر مداخلت کا کوئی ثبوت ہے تو ہمیں دے دیں ۔ اگر ریکارڈ کا حصہ نہیں تو پھر پریشانی ہو گی۔ اطہر من اللہ بہت اصول پسند آدمی ہیں ۔ وہ نہ حماقت کرتے ہیں نہ کرنے دیں گے ۔ میرا گمان ہے جسٹس من اللہ کسی سے ڈرتے نہیں۔ نہ کسی سے ملتے ہیں۔ وہ کسی سیاسی جماعت کے نمائندے سے بھی نہیں ملتے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ پندرہ دن گزر گئے، ہمیں ریکارڈ نہیں مل رہا ۔ پاکستان کسی کے باپ کا نہیں ہے ۔ جو میرے لیے ہو گا وہ سب کے لیے ہو گا ۔ آپ نے سوشل میڈیا پر نوٹس لیا ، آپ کو دیگر معاملات، کراچی میں ریپ کا نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ کل پنجاب میں ریپ کے بعد قتل ہونے والوں کا بھی نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ جسٹس منصور علی شاہ نے خود احتسابی کی بات کی ہے تو ہمیں خوش ہونا چاہیے۔


انہوں نے کہا کہ اگر شواہد نہیں ہیں، سب زبانی ہے تو پھر مسئلہ ہے ۔ سستی روٹی پر حکم امتناع، نسلہ ٹاور کی شنوائی نہیں ۔ ریکوڈک پر اربوں ڈالر کا نقصان ہوا، کس قانون کے تحت زرداری کو 14 سال جیل ہوئی؟۔ بلیک لا ڈکشنری کے تحت تنخواہ نہ لینے پر نواز شریف کو سزا دی ، پی آئی اے اسٹے آرڈر، سستی روٹی اسٹے آرڈر کب تک ایسا چلتا رہے گا۔ سیاست دان اگر دہری شہریت نہیں رکھ سکتا تو جج کیسے دہری شہریت کے ساتھ بیٹھے ہیں؟۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ پاکستان اور پاکستانیوں کی قسمت کے فیصلے کر رہے ہیں ۔ 90 فیصد ادارہ رہ گیا ہے جس میں ڈسپلن باقی ہے۔ ہمارے لیے پاکستان اہم ہے۔ بارڈر پر فوجی اور پولیس والے جانیں دیں گے، کہاں آئین میں لکھا ہے؟۔ آئین اور قانون میں کہاں لکھا ہے کہ جنہوں نے قربانیاں دیں ان کا تمسخر اڑایا جائے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ امید ہے کہ جواب جلد آئے گا ۔ محاذ آرائی سے دُور رہیں ۔ ان کاموں کا کوئی فائدہ نہیں ۔ اپنی ذات نہیں سارے پاکستان کے لیے سوشل میڈیا پر پابندی لگائیں، صرف اپنے لیے نہیں ۔ میری پگڑیاں اچھالی گئیں، اب پاکستان کی جو پگڑی اچھالے گا ان کی پگڑیوں کا فٹ بال بنائیں گے۔ اداروں کو نشانہ بنانا بند کریں کافی ہو گیا ۔ فوج نہیں ہو گی تو پاکستان بھی نہیں بچے گا ۔ شہادتوں کی وجہ سے ہم یہاں بیٹھے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ضمانتیں آپ دیتے ہیں۔ بہت کچھ جانتا ہوں، بہت کچھ سمجھتا ہوں، راز ہیں ،شواہد ہیں اور میرا ہوم ورک ہے۔ میرا گمان ہے کہ اطہر من اللہ شہ سرخیوں کے لیے فیصلہ نہیں کرتے۔ رات کے اندھیروں میں کسی سے نہیں ملتے ۔ اطہر من اللہ جیسے تاریخی جج سے ایسی غلطی نہیں ہو سکتی۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ اگر جج بننے سے پہلے کا ہے اور ریکارڈ نہیں ہے تو پھر سوالات ہوں گے۔ سپریم جوڈیشل کونسل کو مداخلت کرنا ہو گی۔ مجھے اعتراض نہیں کہ وہ میڈیا پر تجزیہ دیتے تھے، دہری شہریت ہو تو مجھے کوئی ایشو نہیں ۔ اگر الزام لگانے والے کے پاس ثبوت نہیں تو اداروں پر الزام نہ لگائیں ۔ خدا کی قسم اٹھا کر کہتا ہوں کہ جسٹس منصور شاہ اور عائشہ احد کے سامنے بیٹھ کر آپ کا سینہ چوڑا ہو جاتا ہے ۔

Source

اسلام آباد: سابق وفاقی وزیر سینیٹر فیصل واوڈا نے خبردار کیا ہےکہ اب الزام لگانے اور پگڑی اچھالنے والوں کی ڈبل پگڑی اچھالیں گے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ بار بار انٹیلی جنس اداروں کا نام لیا جارہا ہے، اب الزام لگانے سے کام نہیں چلے گا، اب اگر کسی نے پگڑی اچھالی تو پگڑی کی فٹبال بنائیں گے اور ڈبل پگڑی اچھالیں گے۔

انہوں نے کہا کہ آئین و قانون میں کہاں لکھا ہے کہ جنہوں نے قربانی دی ان کا تمسخر اڑایا جائے، بس بہت ہوگیا اداروں کا نشانہ بنانا بند کریں، اگر اداروں کی کہیں دخل اندازی ہے تو ثبوت دیں ہم آپ کے ساتھ کھڑے ہوں گے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ججز کو الزامات سے دور ہونا چاہیے، اسلام آباد ہائیکورٹ کو خط لکھے 15 دن ہوگئے لیکن جواب نہیں آیا، کوئی کاغذ اور ثبوت نہیں آرہا جس کی وجہ سے لوگوں میں شک پیدا ہو رہا ہے، امید ہے جلد جواب آئے گا اور جواب لیں گے۔



فیصل واوڈا نے مزید کہا کہ اگر ممبر اسمبلی دوہری شہریت نہیں رکھ سکتا تو جج کیوں رکھے، اگر اسمبلی قانون بناتی ہے تو ہمیں یہ قانون بھی بنانے ہوں گے، سوشل میڈیا کے قوانین بنائیں لیکن سب کے لیے بنائیں، ہمیں کاغذ پر کارروائی اور ثبوت چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایک کنسورشیم (جماعت) ہے جو انتشاری ٹولے کو لے کر چل رہی ہے، ماں بہن بیٹی کے معاملے پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔

بانی پی ٹی آئی کے کل ویڈیو لنک پر عدالت پیش ہونے کے معاملے پر فیصل واوڈا نےکہا اس پر کچھ نہیں کہوں گا۔


Source
https://twitter.com/x/status/1790733498573017193 https://twitter.com/x/status/1790716777732956512 https://twitter.com/x/status/1790762337265152056 https://twitter.com/x/status/1790770306316919003 https://twitter.com/x/status/1790918055075230095 https://twitter.com/x/status/1791076887831212275 https://twitter.com/x/status/1790820381869125929
 
Last edited by a moderator:

Realpaki

Senator (1k+ posts)
yeh kusron wali skal ka kis k kehnay per kis ka agent banta phrta hey. Yeh voda agent bana hoa hey agents ka. "tu samjhey na samjhey main tera agent"
 

khan_11

Chief Minister (5k+ posts)
خدارا اس بھانڈ اور فوج کے ٹاؤٹ کو کوئی خاموش کرائے جتنا یہ بولتا ہے اس کے خلاف اور اس کے آقاؤں کے خلاف مزید نفرت میں اضافہ ہو رہا ہے عوام کو چاہیئے اس کو سننا بند کر دیں اور جس پروگرام میں یہ آئے اس اینکر کا بھی بائیکاٹ کریں
 

Munawarkhan

Chief Minister (5k+ posts)
30 minute of press conference just to threaten Athar Minallah & character assassination of Babar Sattar.
what an imbecile, hope they call him for contempt



اسلام آباد: سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا ہے کہ عدلیہ میں مداخلت کا ثبوت ہے تو پیش کریں، ورنہ ابہام بڑھ رہا ہے۔

نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ چھٹی کے دن جسٹس بابر ستار کی جانب سے پریس ریلیز آتی ہے، 30 اپریل کو میں نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے ججز کو خط لکھا، کوریئر بھی کیا، خط رجسٹرار آفس میں موصول کروایا ، جج بننے سے پہلے جسٹس ستار نے اس وقت کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کو رپورٹ کیا۔ اس کی کوئی قانونی چیز ہو گی جو ہمیں نہیں مل رہی ، آرٹیکل 19 اے کے تحت ہر پاکستانی انفارمیشن لے سکتا ہے، اب ابہام بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک سال پہلے کیوں نہیں بتایا ۔ ایک سال بعد آپ نے پھر الزام لگایا ۔ اب آپ کو شواہد دینا پڑیں گے۔ میں کہہ دوں کہ جج نے کہہ دیا کہ قتل کر دو، کوئی ثبوت تو نہیں ہے ۔ کوڈ آف کنڈکٹ کے تحت ججز کو اللہ سے ڈرنے والا، اچھی زبان ، محتاط اور الزامات سے دور دور تک تعلق نہیں ہونا چاہیے۔ جواب نہیں آ رہا، اس سے ابہام بڑھ رہا ہے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ شواہد یا ثبوت کے بغیر عدالت نہیں کارروائی کرتی ۔ اسی حساب سے اگر مداخلت کا کوئی ثبوت ہے تو ہمیں دے دیں ۔ اگر ریکارڈ کا حصہ نہیں تو پھر پریشانی ہو گی۔ اطہر من اللہ بہت اصول پسند آدمی ہیں ۔ وہ نہ حماقت کرتے ہیں نہ کرنے دیں گے ۔ میرا گمان ہے جسٹس من اللہ کسی سے ڈرتے نہیں۔ نہ کسی سے ملتے ہیں۔ وہ کسی سیاسی جماعت کے نمائندے سے بھی نہیں ملتے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ پندرہ دن گزر گئے، ہمیں ریکارڈ نہیں مل رہا ۔ پاکستان کسی کے باپ کا نہیں ہے ۔ جو میرے لیے ہو گا وہ سب کے لیے ہو گا ۔ آپ نے سوشل میڈیا پر نوٹس لیا ، آپ کو دیگر معاملات، کراچی میں ریپ کا نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ کل پنجاب میں ریپ کے بعد قتل ہونے والوں کا بھی نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ جسٹس منصور علی شاہ نے خود احتسابی کی بات کی ہے تو ہمیں خوش ہونا چاہیے۔


انہوں نے کہا کہ اگر شواہد نہیں ہیں، سب زبانی ہے تو پھر مسئلہ ہے ۔ سستی روٹی پر حکم امتناع، نسلہ ٹاور کی شنوائی نہیں ۔ ریکوڈک پر اربوں ڈالر کا نقصان ہوا، کس قانون کے تحت زرداری کو 14 سال جیل ہوئی؟۔ بلیک لا ڈکشنری کے تحت تنخواہ نہ لینے پر نواز شریف کو سزا دی ، پی آئی اے اسٹے آرڈر، سستی روٹی اسٹے آرڈر کب تک ایسا چلتا رہے گا۔ سیاست دان اگر دہری شہریت نہیں رکھ سکتا تو جج کیسے دہری شہریت کے ساتھ بیٹھے ہیں؟۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ پاکستان اور پاکستانیوں کی قسمت کے فیصلے کر رہے ہیں ۔ 90 فیصد ادارہ رہ گیا ہے جس میں ڈسپلن باقی ہے۔ ہمارے لیے پاکستان اہم ہے۔ بارڈر پر فوجی اور پولیس والے جانیں دیں گے، کہاں آئین میں لکھا ہے؟۔ آئین اور قانون میں کہاں لکھا ہے کہ جنہوں نے قربانیاں دیں ان کا تمسخر اڑایا جائے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ امید ہے کہ جواب جلد آئے گا ۔ محاذ آرائی سے دُور رہیں ۔ ان کاموں کا کوئی فائدہ نہیں ۔ اپنی ذات نہیں سارے پاکستان کے لیے سوشل میڈیا پر پابندی لگائیں، صرف اپنے لیے نہیں ۔ میری پگڑیاں اچھالی گئیں، اب پاکستان کی جو پگڑی اچھالے گا ان کی پگڑیوں کا فٹ بال بنائیں گے۔ اداروں کو نشانہ بنانا بند کریں کافی ہو گیا ۔ فوج نہیں ہو گی تو پاکستان بھی نہیں بچے گا ۔ شہادتوں کی وجہ سے ہم یہاں بیٹھے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ضمانتیں آپ دیتے ہیں۔ بہت کچھ جانتا ہوں، بہت کچھ سمجھتا ہوں، راز ہیں ،شواہد ہیں اور میرا ہوم ورک ہے۔ میرا گمان ہے کہ اطہر من اللہ شہ سرخیوں کے لیے فیصلہ نہیں کرتے۔ رات کے اندھیروں میں کسی سے نہیں ملتے ۔ اطہر من اللہ جیسے تاریخی جج سے ایسی غلطی نہیں ہو سکتی۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ اگر جج بننے سے پہلے کا ہے اور ریکارڈ نہیں ہے تو پھر سوالات ہوں گے۔ سپریم جوڈیشل کونسل کو مداخلت کرنا ہو گی۔ مجھے اعتراض نہیں کہ وہ میڈیا پر تجزیہ دیتے تھے، دہری شہریت ہو تو مجھے کوئی ایشو نہیں ۔ اگر الزام لگانے والے کے پاس ثبوت نہیں تو اداروں پر الزام نہ لگائیں ۔ خدا کی قسم اٹھا کر کہتا ہوں کہ جسٹس منصور شاہ اور عائشہ احد کے سامنے بیٹھ کر آپ کا سینہ چوڑا ہو جاتا ہے ۔


Source
 

wasiqjaved

Chief Minister (5k+ posts)
Loyal German Shepherd
Screenshot-20240515-073457.jpg
 

crankthskunk

Chief Minister (5k+ posts)
As Kutte ki nasal se pocho, Nawaz Sharif kia job karraha tha UAE!! Why he had haqama!! We all know it facilitated him in money laundering. Which country allows its PM to work in a shitty job overseas while still PM of the country!!

If it is not written in the constitution that Army and Police personnel would die to protect Pak, it is written in their oath. They still violate their oaths everyday. But crooks like him don't see that, just because this traitor is paid by them, he is there to spew lies as he wishes. Ridiculous.
 

merapakistanzindabad

MPA (400+ posts)
اسلام آباد: سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا ہے کہ عدلیہ میں مداخلت کا ثبوت ہے تو پیش کریں، ورنہ ابہام بڑھ رہا ہے۔

نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ چھٹی کے دن جسٹس بابر ستار کی جانب سے پریس ریلیز آتی ہے، 30 اپریل کو میں نے اسلام آباد ہائیکورٹ کے ججز کو خط لکھا، کوریئر بھی کیا، خط رجسٹرار آفس میں موصول کروایا ، جج بننے سے پہلے جسٹس ستار نے اس وقت کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کو رپورٹ کیا۔ اس کی کوئی قانونی چیز ہو گی جو ہمیں نہیں مل رہی ، آرٹیکل 19 اے کے تحت ہر پاکستانی انفارمیشن لے سکتا ہے، اب ابہام بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک سال پہلے کیوں نہیں بتایا ۔ ایک سال بعد آپ نے پھر الزام لگایا ۔ اب آپ کو شواہد دینا پڑیں گے۔ میں کہہ دوں کہ جج نے کہہ دیا کہ قتل کر دو، کوئی ثبوت تو نہیں ہے ۔ کوڈ آف کنڈکٹ کے تحت ججز کو اللہ سے ڈرنے والا، اچھی زبان ، محتاط اور الزامات سے دور دور تک تعلق نہیں ہونا چاہیے۔ جواب نہیں آ رہا، اس سے ابہام بڑھ رہا ہے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ شواہد یا ثبوت کے بغیر عدالت نہیں کارروائی کرتی ۔ اسی حساب سے اگر مداخلت کا کوئی ثبوت ہے تو ہمیں دے دیں ۔ اگر ریکارڈ کا حصہ نہیں تو پھر پریشانی ہو گی۔ اطہر من اللہ بہت اصول پسند آدمی ہیں ۔ وہ نہ حماقت کرتے ہیں نہ کرنے دیں گے ۔ میرا گمان ہے جسٹس من اللہ کسی سے ڈرتے نہیں۔ نہ کسی سے ملتے ہیں۔ وہ کسی سیاسی جماعت کے نمائندے سے بھی نہیں ملتے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ پندرہ دن گزر گئے، ہمیں ریکارڈ نہیں مل رہا ۔ پاکستان کسی کے باپ کا نہیں ہے ۔ جو میرے لیے ہو گا وہ سب کے لیے ہو گا ۔ آپ نے سوشل میڈیا پر نوٹس لیا ، آپ کو دیگر معاملات، کراچی میں ریپ کا نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ کل پنجاب میں ریپ کے بعد قتل ہونے والوں کا بھی نوٹس لینا چاہیے تھا ۔ جسٹس منصور علی شاہ نے خود احتسابی کی بات کی ہے تو ہمیں خوش ہونا چاہیے۔


انہوں نے کہا کہ اگر شواہد نہیں ہیں، سب زبانی ہے تو پھر مسئلہ ہے ۔ سستی روٹی پر حکم امتناع، نسلہ ٹاور کی شنوائی نہیں ۔ ریکوڈک پر اربوں ڈالر کا نقصان ہوا، کس قانون کے تحت زرداری کو 14 سال جیل ہوئی؟۔ بلیک لا ڈکشنری کے تحت تنخواہ نہ لینے پر نواز شریف کو سزا دی ، پی آئی اے اسٹے آرڈر، سستی روٹی اسٹے آرڈر کب تک ایسا چلتا رہے گا۔ سیاست دان اگر دہری شہریت نہیں رکھ سکتا تو جج کیسے دہری شہریت کے ساتھ بیٹھے ہیں؟۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ پاکستان اور پاکستانیوں کی قسمت کے فیصلے کر رہے ہیں ۔ 90 فیصد ادارہ رہ گیا ہے جس میں ڈسپلن باقی ہے۔ ہمارے لیے پاکستان اہم ہے۔ بارڈر پر فوجی اور پولیس والے جانیں دیں گے، کہاں آئین میں لکھا ہے؟۔ آئین اور قانون میں کہاں لکھا ہے کہ جنہوں نے قربانیاں دیں ان کا تمسخر اڑایا جائے۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ امید ہے کہ جواب جلد آئے گا ۔ محاذ آرائی سے دُور رہیں ۔ ان کاموں کا کوئی فائدہ نہیں ۔ اپنی ذات نہیں سارے پاکستان کے لیے سوشل میڈیا پر پابندی لگائیں، صرف اپنے لیے نہیں ۔ میری پگڑیاں اچھالی گئیں، اب پاکستان کی جو پگڑی اچھالے گا ان کی پگڑیوں کا فٹ بال بنائیں گے۔ اداروں کو نشانہ بنانا بند کریں کافی ہو گیا ۔ فوج نہیں ہو گی تو پاکستان بھی نہیں بچے گا ۔ شہادتوں کی وجہ سے ہم یہاں بیٹھے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ضمانتیں آپ دیتے ہیں۔ بہت کچھ جانتا ہوں، بہت کچھ سمجھتا ہوں، راز ہیں ،شواہد ہیں اور میرا ہوم ورک ہے۔ میرا گمان ہے کہ اطہر من اللہ شہ سرخیوں کے لیے فیصلہ نہیں کرتے۔ رات کے اندھیروں میں کسی سے نہیں ملتے ۔ اطہر من اللہ جیسے تاریخی جج سے ایسی غلطی نہیں ہو سکتی۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ اگر جج بننے سے پہلے کا ہے اور ریکارڈ نہیں ہے تو پھر سوالات ہوں گے۔ سپریم جوڈیشل کونسل کو مداخلت کرنا ہو گی۔ مجھے اعتراض نہیں کہ وہ میڈیا پر تجزیہ دیتے تھے، دہری شہریت ہو تو مجھے کوئی ایشو نہیں ۔ اگر الزام لگانے والے کے پاس ثبوت نہیں تو اداروں پر الزام نہ لگائیں ۔ خدا کی قسم اٹھا کر کہتا ہوں کہ جسٹس منصور شاہ اور عائشہ احد کے سامنے بیٹھ کر آپ کا سینہ چوڑا ہو جاتا ہے ۔

Source

اسلام آباد: سابق وفاقی وزیر سینیٹر فیصل واوڈا نے خبردار کیا ہےکہ اب الزام لگانے اور پگڑی اچھالنے والوں کی ڈبل پگڑی اچھالیں گے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سینیٹر فیصل واوڈا نے کہا کہ بار بار انٹیلی جنس اداروں کا نام لیا جارہا ہے، اب الزام لگانے سے کام نہیں چلے گا، اب اگر کسی نے پگڑی اچھالی تو پگڑی کی فٹبال بنائیں گے اور ڈبل پگڑی اچھالیں گے۔

انہوں نے کہا کہ آئین و قانون میں کہاں لکھا ہے کہ جنہوں نے قربانی دی ان کا تمسخر اڑایا جائے، بس بہت ہوگیا اداروں کا نشانہ بنانا بند کریں، اگر اداروں کی کہیں دخل اندازی ہے تو ثبوت دیں ہم آپ کے ساتھ کھڑے ہوں گے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ججز کو الزامات سے دور ہونا چاہیے، اسلام آباد ہائیکورٹ کو خط لکھے 15 دن ہوگئے لیکن جواب نہیں آیا، کوئی کاغذ اور ثبوت نہیں آرہا جس کی وجہ سے لوگوں میں شک پیدا ہو رہا ہے، امید ہے جلد جواب آئے گا اور جواب لیں گے۔



فیصل واوڈا نے مزید کہا کہ اگر ممبر اسمبلی دوہری شہریت نہیں رکھ سکتا تو جج کیوں رکھے، اگر اسمبلی قانون بناتی ہے تو ہمیں یہ قانون بھی بنانے ہوں گے، سوشل میڈیا کے قوانین بنائیں لیکن سب کے لیے بنائیں، ہمیں کاغذ پر کارروائی اور ثبوت چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایک کنسورشیم (جماعت) ہے جو انتشاری ٹولے کو لے کر چل رہی ہے، ماں بہن بیٹی کے معاملے پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔

بانی پی ٹی آئی کے کل ویڈیو لنک پر عدالت پیش ہونے کے معاملے پر فیصل واوڈا نےکہا اس پر کچھ نہیں کہوں گا۔


Source
Establishment ne apna palto kutta bhonkne kelie chor dia medan mein!!!!! ab doosre kutte kakar ka entezaar hae bhonkne ka!!!!
 

Wake up Pak

Prime Minister (20k+ posts)
It appears that this establishment's dog is facing disqualification for the second time, that's why he has been barking today.
"Dubai Leaks"
 

ranaji

(50k+ posts) بابائے فورم
چند زانیوں شرابیوں حرامئ جرنیلوں کو اپنی زاتی گشتیاں سپلائی کرکے سیاست میں آکر ایک دوٹکے کے ٹٹ پونجئے سے ارب پتی بنے ہوئے اس کنجر واڈکے کو کتنے انچ کا ثبوت چاہئے نو انچ یا دس انچ اور اینل اور اورل دو کافی رہیں گے یا گھر کے لئے بھی ضرورت ہے