پاکستانیوں کی یہ روح کانپ دینے والی حالت،قصور وار کون ؟؟؟

3rd_Umpire

Chief Minister (5k+ posts)

۔76 سالوں سے قابض کمپنی نے نواز-زرداری کو ملک حوالے کر دیا
پاکستانیوں کے اس حالت کا قصو وار کون ؟ کمپنی یا چور حکمران ؟

CompanyRGVPoster.jpg
 
Last edited:

M_Shameer

MPA (400+ posts)
ویڈیو میں دو بھکاری ماں باپ تین بدحال بچوں کے ساتھ روکھی سوکھی روٹی کھا رہے ہیں۔ ان تینوں بچوں کی بدحالی کے پہلے ذمہ دار ان کے بھکاری والدین ہیں۔ جب بھکاری ماں باپ کو پتا تھا کہ ان کی اوقات خود اپنی روٹی کمانے کی نہیں تو کس بل بوتے پر انہوں نے تین بچے پیدا کردیئے۔

کسی بھی معاشرے میں بچوں کی اچھی یا بری حالت کے پہلے ذمہ دار ان کے ماں باپ ہوتے ہیں، ریاست کا کردار بعد میں آتا ہے۔ کیونکہ والدین بچوں کو پیدا کرنے سے پہلے اس بات سے بخوبی آگاہ ہوتے کہ وہ کس قسم کے معاشرے میں رہ رہے ہیں اور ان کی اپنی حالتِ زار کیسی ہے۔ پاکستان میں بچے تھوڑے سے بڑے ہوتے ہیں ، ابھی وہ کمانے بھی نہیں لگتےکہ ان کی شادی کردی جاتی ہے، وہ خود بھکاری ہوتے ہیں اور آگے سے پانچ سات بھکاری اور پیدا کردیتے ہیں۔ کوئی بھی قوم اپنی حالتِ زار کی خود ذمہ دار ہوتی ہے۔ لوگوں کے رویے ان کی تقدیر بنتے ہیں۔ پاکستان میں لوگ دھڑا دھڑ بچے پیدا کرکے خود اپنی معاشی حالت کا بیڑا غرق کرتے ہیں اور پھر حکومت کو کوستے ہیں۔

ہر اس بچے کو اپنے ماں باپ کا گریبان پکڑنا چاہئے جس کواس کے والدین نے بچپن میں پوری خوراک نہیں دی، اچھی تعلیم نہیں دی اور ضروریاتِ زندگی کا سامان نہیں دیا۔
 

3rd_Umpire

Chief Minister (5k+ posts)
ویڈیو میں دو بھکاری ماں باپ تین بدحال بچوں کے ساتھ روکھی سوکھی روٹی کھا رہے ہیں۔ ان تینوں بچوں کی بدحالی کے پہلے ذمہ دار ان کے بھکاری والدین ہیں۔ جب بھکاری ماں باپ کو پتا تھا کہ ان کی اوقات خود اپنی روٹی کمانے کی نہیں تو کس بل بوتے پر انہوں نے تین بچے پیدا کردیئے۔

کسی بھی معاشرے میں بچوں کی اچھی یا بری حالت کے پہلے ذمہ دار ان کے ماں باپ ہوتے ہیں، ریاست کا کردار بعد میں آتا ہے۔ کیونکہ والدین بچوں کو پیدا کرنے سے پہلے اس بات سے بخوبی آگاہ ہوتے کہ وہ کس قسم کے معاشرے میں رہ رہے ہیں اور ان کی اپنی حالتِ زار کیسی ہے۔ پاکستان میں بچے تھوڑے سے بڑے ہوتے ہیں ، ابھی وہ کمانے بھی نہیں لگتےکہ ان کی شادی کردی جاتی ہے، وہ خود بھکاری ہوتے ہیں اور آگے سے پانچ سات بھکاری اور پیدا کردیتے ہیں۔ کوئی بھی قوم اپنی حالتِ زار کی خود ذمہ دار ہوتی ہے۔ لوگوں کے رویے ان کی تقدیر بنتے ہیں۔ پاکستان میں لوگ دھڑا دھڑ بچے پیدا کرکے خود اپنی معاشی حالت کا بیڑا غرق کرتے ہیں اور پھر حکومت کو کوستے ہیں۔

ہر اس بچے کو اپنے ماں باپ کا گریبان پکڑنا چاہئے جس کواس کے والدین نے بچپن میں پوری خوراک نہیں دی، اچھی تعلیم نہیں دی اور ضروریاتِ زندگی کا سامان نہیں دیا۔
جبکہ تیری عیّاشی کا کارن رنڈی خانے میں پھدی فروشی کی کمائی ہے، اور تم جیسے حرامی رنڈی خانے کی سیڑھیوں پر بیٹھ کر پیھے لبنے کی دیوٹی کرتا رہتا ہے،،اور وہیں بیٹھ بیٹھ کر ہاتھ پاؤں ہلائے بغیر دارُو، اور چرغے کی عیّاشی کرتا رہتا ہے
LAHORE:
At least 16 persons committed suicide reportedly due to poor economic conditions and family disputes in the provincial capital in January.


 
Last edited:

atensari

(50k+ posts) بابائے فورم
پاکستان میں اضافی گندم کا بحران ثابت کرتا ہے دنیا میں وسائل کی کمی نہیں ہے. ہر بھوکے کی حصے کی روٹی کسی ذخیرہ اندوز کے گودام میں قید ہے. ہر بے گھر کے حصے کا گھر کسی بنک کے خفیہ کھاتے میں پڑا ہے. غریب کے بچے کی تعلیم اور علاج کے پیسے امیر کے بچے عیاشی میں اجاڑ رہے ہیں