اسٹبلشمنٹ کا ایک اور ناکام تجربہ شہباز سپیڈ

Dastgir khan19

Minister (2k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
 

samisam

Chief Minister (5k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
یار قلندری آج تو پھٹے چک دئیے
 

samkhan

Chief Minister (5k+ posts)
289558734_5647073511981619_6539437443981683586_n.jpg
 

surfer

Chief Minister (5k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
But you do realise that PPP is also part of this govt?
In fact, Zardari nominated Shahbaz for PM slot....so some blame is also on PPP...
 

samisam

Chief Minister (5k+ posts)
But you do realise that PPP is also part of this govt?
In fact, Zardari nominated Shahbaz for PM slot....so some blame is also on PPP...
ایک زرداری سب پر بھاری زرداری نے اس کی کسی کتے والی کراکے اپنے اگلے پچھلے سارے بدلے لے لئے
 

Hunter1

Senator (1k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
fikr not PLMN PPP JUIF MQM SUUB AIK SAATH URA KR RAKH DETEA JAIN GY
 

Bubber Shair

Chief Minister (5k+ posts)
کتنے ہی تجربے پہلے ناکام ہوتے رہے جیسے کوکین مارگلہ، جادوگر سیاں اور گوبر کا کیڑا (بزدار) وغیرہ
 

Melanthus

Chief Minister (5k+ posts)
کتنے ہی تجربے پہلے ناکام ہوتے رہے جیسے کوکین مارگلہ، جادوگر سیاں اور گوبر کا کیڑا (بزدار) وغیرہ
The experiment by Gen Jilani and Gen Zia was the worst in history of Pakistan.people say Gen Ayub was Bhutto’s mentor too but there is no comparison between Bhutto and Sharifs.Bhutto was a highly educated man.He studied at world’s top universities.He would have made it to the top on his own.Nawaz and Showbaz are duffers.Their caliber is no higher than a local councillor.The experiment by Gen Zia damaged Pakistan beyond repair.The lohars not only looted the country they destroyed all institutions.They destroyed the fabric of society.
 

ahameed

Chief Minister (5k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
فکر نہ کریں، عوام سب سمجھتی ھے کہ زرداری اور شہباز برابر کے مجرم ہیں
 

A.jokhio

Minister (2k+ posts)

تقدیر بھی کتنی ظالم ہوتی ہے انسان کو وہاں لا کر مارتی ہے جہاں اس کی اوقات دنیا کے سامنے کھل جاتی ہے . نوے کی دھائی کا ھٹ مین اور پولیس انکاونٹرز کا گاڈ فادر شہباز شریف جسے یاد کر کے اٹھانوے کے اس بھیانک ترین وقت کی یاد آ جاتی ہے جب پنجاب پیپلز پارٹی کے کارکنوں کی قتل گاہ بنا ہوا تھا . شہباز سپیڈ کے مظالم کے نیچے دب کر پنجاب سے آدھی پیپلز پارٹی ختم ہو گئی تھی . اس کے بعد بھی شہباز سپیڈ کا دور قتلوں سی کم نہ ہوا سلمان تاثیر مارا گیا اور جب ہاتھ کھل گیا تب اہل وطن نے شہباز سپیڈ کے اندر کا وہ فرعون دیکھا جس کی مثال نہیں ملتی لاہور کو اپنے باپ کی جاگیر ثابت کرنے اور دہشت پھیلانے کے لیے ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی . یوسف رضا گیلانی نے اپنے پہلے خطاب میں خود کو قوم کا خادم کہ دیا تو شہباز سپیڈ خادم سے اتنا متاثر ہوا کہ نام کے ساتھ ہی خادم اعلیٰ لگا لیا . اسٹبلشمنٹ کے ایما پر شہباز شریف پیٹ چاک کرنے اور سڑکوں پر گھسیٹنے کے نعرے لگاتے رہے اور پانچ سال تک پیپلز پارٹی کی حکومت کو مفلوج رکھا
نون لیگ کو جب دو ہزار تیرہ میں حکومت ملی تو ان کے پاس ملکی معاشی سمت ٹھیک کرنے کا بھرپور موقع تھا جو اسحاق ڈار کی انجنئرنگ کی نذر ہو گیا اور الٹا ملک قرضوں کے بوجھ تلے ایسا دھنسا کہ آج اس کا دیوالیہ نکل چکا ہے . تقدیر بھی کتنی ظالم ہے یہ اپنے اصل مجرموں کو کٹہرے میں لائی ہے جو ملکی دیوالیہ کے ذمہ دار ہیں . اب پوری قوم دیکھے شہباز سپیڈ کی قابلیت . جس معاشی انجنئرنگ سے اسحاق ڈار نے ملک کا دیوالیہ نکالا اب اس کا کوئی حل ان کے پاس نہیں . نون لیگ کے پاس موقع تھا کہ وہ اس دیوالیے کا بوجھ نہ اٹھاتے لیکن شہباز شریف تو اسٹبلشمنٹ کا ذاتی ملازم ہے اس میں نہ کرنے کی جرات کہاں . اس نے بھی خوشی خوشی جرنیلوں کا کیا دھرا اپنے سر اٹھا لیا . شہباز شریف سب کو مذاق سمجھتا ہو گا کہ جیسے ہی اسے حکومت ملے گی آسمان سے ڈالر برسیں گے لیکن پاکستان کے دشمن بھی پچھلے پچاس سال سے اسی وقت کی تلاش میں ہیں جب پاکستان نیلام ہو گا اب وہ اپنی سالوں کی محنت ضایع کریں گے کیا ؟ آئی ایم ایف سے معاہدہ بہت مشکل ہے اب ذہنی طور پر دیوالیے کے لیے خود کو تیار کر لینا چاہئیے
اب باقی نون لیگ ایک طرف ہے نون لیگ کا کارکن شہباز سپیڈ کا بوجھ اٹھانے کے لیے تیار نہیں نون لیگ کے رہنما شریف خاندان کا بوجھ اٹھانے کو تیار نہیں لیکن شہباز شریف بہت سستا بکا ہے . شہباز شریف نے نون لیگ کو لنڈے کے بھاؤ جرنیلوں کو بیچا ہے . قیمت یہ تھی دو کیسوں میں ضمانتیں اور دو پاس پورٹ . اسٹبلشمنٹ آج بھی اس کے ساتھ کتے والی کر رہی ہے نہ بھائی کو واپس آنے کی اجازت ہے اور نہ ہی بھتیجی کو پاس پورٹ کا کوئی وسیلہ ملا ہے لیکن پھر بھی پاکستان کی تاریخ کے ہولناک دیوالیے کا بوجھ شہباز شریف اٹھاۓ گا . تقدیر نے نون لیگ کو ایک پل میں عرش سے لا کر فرش پر پٹک دیا ہے . اب جو عوامی رد عمل عمران نیازی کے حصے آنا تھا اس کا شکار شریف خاندان بننے جا رہا ہے . اگر شہباز سپیڈ کے پاس معیشت کا کوئی حل نہیں تھا تو اسے حکومت نہیں لینا چاہئیے تھی اپنے ساتھ یہ ملک کو بھی ڈبوئیں گے
Zardari is biggest failure of establishment experience