۔۔کیا سارے مسلمان ایک برابر نہیں ؟

jani1

Chief Minister (5k+ posts)
بھئی ہم نے تو بڑھاپے میں شادی کے نْقصان کا سنا تھا
ویسے راز کی بات ، میرے تقریبا چھ کزنز نے سید زادیوں سے شادیاں کی ہیں۔۔

کسی کو کوئی نقصان نہیں ہوا۔۔
ساروں کے ہاں اچھے بچے پیدا ہوئے۔۔

ہاں تھوڑی بہت چوں چراں کس گھر پر نہیں ہوتی ہے۔۔​
 
Last edited:

sequencers

MPA (400+ posts)
بھئی ہم نے تو بڑھاپے میں شادی کے نْقصان کا سنا تھا
ویسے راز کی بات ، میرے تقریبا چھ کزنز نے سید زادیوں سے شادیاں کی ہیں۔۔

کسی کو کوئی نقصان نہیں ہوا۔۔
ساروں کے ہاں اچھے بچے پیدا ہوئے۔۔

ہاں تھوڑی بہت چوں چراں کس گھر پر نہیں ہوتی ہے۔۔
Imran Niazi married a Syed Zadi, Syeda Bushra Pinki Maneka and because of this marriage, Syed Asim Saleem Bajwa is resigning from his post as SAPM (Syed Assistant to PM).
 

Spartacus

Chief Minister (5k+ posts)
"No one born equal but this is the system where the person born make the person equal or more equal "

Spartacus - The controversial
 

sequencers

MPA (400+ posts)
"No one born equal but this is the system where the person born make the person equal or more equal "

Spartacus - The controversial
Not all Pakistanis are equal. Those wearing the army uniform are the Brahmins / Syeds of Pakistan. No fire/law can touch these Brahmins. That's why no one can bring Asim Saleem Bajwa to the court. One of them, Musharraf was tried, but Raheel Shareef Brahmin helped his ex boss to escape.
 

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)

جانی! یار آپ اچھے بھلے سمجھدار اور عقلمند انسان ہو . ابن صباح کے ان گمراہ پیروکاروں کو جو حضرت علی کرم الله وجہ، تین دوسرے خلفائے راشدین، اہل بیت اور کئی صحابہ رضوان الله علیہ اجمعین کو شہید کرنے کے مجرم ہیں کی لغویات پر کیوں دیھان دے کر اپنا وقت ضائع کرتے ہو؟؟ اگر ایک چور نے چوری نہیں کی تو ہر وقت کا سیاپا اور پیٹنا پٹانا کیسا؟؟؟
اسلام کے خلاف اپنے آباء کے کیے ہوۓ جرائم پر مسلمانان عالم کے غضب سے بچنے کے لیے نام نہاد "سید" بن جانا ہی ان کی سب سے بڑی ڈھال ہے اور
یہ ایسی بکواسیات پچھلے چودہ سو سال سے کرتے چلے آ رہے ہیں اور صور پھونکے جانے تک کرتے رہیں گے
ہم مسلمانوں کی راہنمائی کے لیے ہمارے آقا حضور پاک صلی الله علیہ وسلم کا آخری خطبہ ہی کافی ہے لہذا

No worries.... Just ignore this misguided aulaad of ibn e sabah.
If you wanna clear your concept on this...... I would suggest you to google Dr. Israr's videos on the subject, they are to the point and are crystal clear. No aghera waghera in them.
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
اسلام میں حیثیت "تقوی" پر مبنی ہے جس کی بنیاد کسی کے ساتھ نہیں ہے۔


(Qur'an 49:13) يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن ذَكَرٍ وَأُنثَىٰ وَجَعَلْنَاكُمْ شُعُوبًا وَقَبَائِلَ لِتَعَارَفُوا ۚ إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِندَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ ۚ إِنَّ اللَّهَ عَلِيمٌ خَبِيرٌ
ا ے لوگو ہم نے تمہیں ایک ہی مرد اور عورت سے پیدا کیا ہے اور تمہارے خاندان اور قومیں جو بنائی ہیں تاکہ تمہیں آپس میں پہچان ہو بے شک زیادہ عزت والا تم میں سے الله کے نزدیک وہ ہے جو تم میں سے زیادہ پرہیزگار ہے بے شک الله سب کچھ جاننے والا خبردار ہے

قرآن پاک بار بار ہر فرد کو اپنے طرز عمل کا ذمہ دار ٹھہراتا ہے۔ ایک شخص کے اعمال دوسرے کو متاثر نہیں کرسکتے ہیں ، نہ ہی مثبت اور نہ ہی منفی۔ کیا ان کا کوئی فرد اسلام کی مساوات کی روح کے خلاف جانا چاہتا ہے ، اور اس کی بجائے جہلیہ رواج کا عکاس ہوگا جس میں لوگوں کا خیال تھا کہ وہ اپنے خاندانی روابط کی بنا پر ان کے تقویٰ کی مخالفت میں بچائے جائیں گے۔ قرآن مجید نے واضح طور پر اعلان کیا ہے کہ قیامت کے دن افراد سے خاندانی رابطہ منقطع ہوجائے گا۔


(Qur'an 6:94) وَلَقَدْ جِئْتُمُونَا فُرَادَىٰ كَمَا خَلَقْنَاكُمْ أَوَّلَ مَرَّةٍ وَتَرَكْتُم مَّا خَوَّلْنَاكُمْ وَرَاءَ ظُهُورِكُمْ ۖ وَمَا نَرَىٰ مَعَكُمْ شُفَعَاءَكُمُ الَّذِينَ زَعَمْتُمْ أَنَّهُمْ فِيكُمْ شُرَكَاءُ ۚ لَقَد تَّقَطَّعَ بَيْنَكُمْ وَضَلَّ عَنكُم مَّا كُنتُمْ تَزْعُمُونَ
اور البتہ تم ہمارے پاس ایک ایک ہو کر آ گئے ہو جس طرح ہم نے تمہیں پہلی دفعہ پیدا کیا تھا اور جو کچھ ہم نے تمہیں دیا تھا وہ اپنے پیچھے ہی چھوڑ آئے ہو اور تمہارے ساتھ ان کی سفارش کرنے والوں کو نہیں دیکھتے جنہیں تم خیال کرتے تھے کہ وہ تمہارے معاملےمیں شریک ہیں تمہارا آپس میں قطع تعلق ہو گیا ہے اور جو تم خیال کرتے تھے وہ سب جاتا رہا

اور پھر اللہ تعالیٰ فرماتا ہے۔


(Qur'an 2:48) وَاتَّقُوا يَوْمًا لَّا تَجْزِي نَفْسٌ عَن نَّفْسٍ شَيْئًا وَلَا يُقْبَلُ مِنْهَا شَفَاعَةٌ وَلَا يُؤْخَذُ مِنْهَا عَدْلٌ وَلَا هُمْ يُنصَرُونَ
اوراس دن سے ڈرو جس دن کوئی شخص کسی کے کچھ بھی کام نہ آئے گا اور نہ ان کے لیے کوئی سفارش قبول ہو گی اورنہ اس کی طرف سے بدلہ لیا جائے گا اور نہ ان کی مدد کی جائے گی

اور ایک بار پھر


(Qur'an 2:123) وَاتَّقُوا يَوْمًا لَّا تَجْزِي نَفْسٌ عَن نَّفْسٍ شَيْئًا وَلَا يُقْبَلُ مِنْهَا عَدْلٌ وَلَا تَنفَعُهَا شَفَاعَةٌ وَلَا هُمْ يُنصَرُونَ
اوراس دن سے ڈرو جس دن کوئی بھی کسی کے کام نہ آئے گا اور نہ اس سے بدلہ قبول کیا جائے گا اور نہ اسے کوئی سفارش نفع دے گی اور نہ وہ مدد دیے جائیں گے

قرآن واضح طور پر بیان کرتا ہے کہ کسی بھی شخص کا اثر کسی دوسرے پر نہیں پڑے گا۔


(Qur'an 6:164) لْ أَغَيْرَ اللَّهِ أَبْغِي رَبًّا وَهُوَ رَبُّ كُلِّ شَيْءٍ ۚ وَلَا تَكْسِبُ كُلُّ نَفْسٍ إِلَّا عَلَيْهَا ۚ وَلَا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَىٰ ۚ ثُمَّ إِلَىٰ رَبِّكُم مَّرْجِعُكُمْ فَيُنَبِّئُكُم بِمَا كُنتُمْ فِيهِ تَخْتَلِفُونَ
کہہ دو کیا اب میں الله کے سوا اور کوئی رب تلاش کروں حالانکہ وہی ہر چیز کا رب ہے اور جو شخص کوئی گناہ کرے گاتو وہ اسی کے ذمہ ہے اور ایک شخص دوسرے کا بوجھ نہیں اٹھائے گا پھر تمہارے رب کے ہاں ہی سب کو لوٹ کر جانا ہے سو جن باتو ں میں تم جھگڑتے تھے وہ تمہیں بتلاد ے گا

اور ایک بار پھر ، اللہ اس کو دہراتا ہے: قرآن ، 53: 38-39


(Qur'an 53:38-39) أَلَّا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَىٰ - وَأَن لَّيْسَ لِلْإِنسَانِ إِلَّا مَا سَعَىٰ
وہ یہ کہ کوئی کسی کا بوجھ نہیں اٹھائے گا - اور یہ کہ انسان کو وہی ملتا ہے جو کرتا ہے۔

نیز: قرآن ، 6:70


(Qur'an 6:70) وَذَرِ الَّذِينَ اتَّخَذُوا دِينَهُمْ لَعِبًا وَلَهْوًا وَغَرَّتْهُمُ الْحَيَاةُ الدُّنْيَا ۚ وَذَكِّرْ بِهِ أَن تُبْسَلَ نَفْسٌ بِمَا كَسَبَتْ لَيْسَ لَهَا مِن دُونِ اللَّهِ وَلِيٌّ وَلَا شَفِيعٌ وَإِن تَعْدِلْ كُلَّ عَدْلٍ لَّا يُؤْخَذْ مِنْهَا ۗ أُولَـٰئِكَ الَّذِينَ أُبْسِلُوا بِمَا كَسَبُوا ۖ لَهُمْ شَرَابٌ مِّنْ حَمِيمٍ وَعَذَابٌ أَلِيمٌ بِمَا كَانُوا يَكْفُرُونَ
اور انہیں چھوڑ دو جنہوں نے اپنے دین کو کھیل اور تماشا بنا رکھا ہے اور دنیاکی زندگی نے انہیں دھوکہ دیا ہے اور انہیں قرآن سے نصیحت کرتا تاکہ کوئی اپنے کیے میں گرفتار نہ ہو جائے کہ اس کے لیے الله کے سوا کوئی دوست اور سفارش کرنے والا نہ ہوگا اور اگر دنیا بھر کا معاوضہ بھی دے گا تب بھی اس سے نہ لیا جائے گا یہی وہ لوگ ہیں جو اپنے کیے میں گرفتار ہوئے ان کے پینے کے لیے گرم پانی ہوگا اور ان کے کفر کے بدلہ میں دردناک عذاب ہو گا

لہذا کسی سیّد کو غیر سیّد پر کو فوقیت یا فضیلت نہیں۔

Read more: https://www.siasat.pk/forums/threads/marriage-of-syed-girl-with-non-syed-boy.53411/post-323897

 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کا آخری خطبہ
یہ خطبہ ذوالحجہ کے نویں روز 10 بجے کو '' کوہ عرفات کی وادی '' (مکہ میں) میں ہوا۔ تعریف کرنے اور خدا کا شکر ادا کرنے کے بعد آپؐ نے کہا: "اے لوگو ، مجھے غور سے سنو ، کیوں کہ میں نہیں جانتا کہ اس سال کے بعد ، میں پھر کبھی آپ کے درمیان رہوں گا۔ لہذا سنو جو میں آپ کو بہت احتیاط سے کہہ رہا ہوں اور ان الفاظ کو ان لوگوں کے پاس لے جاؤ جو یہاں موجود نہیں ہیں۔

اے لوگو ، جس طرح تم اس ماہ ، اس دن ، اس شہر کو مقدس سمجھتے ہو ، اسی طرح ہر مسلمان کی جان و مال کو ایک مقدس امانت سمجھتے ہو۔ آپ کے سپرد کردہ سامان، ان کے جائز مالکان کو واپس کردو ۔ کسی کو تکلیف نہ دو تاکہ کوئی آپ کو تکلیف نہ دے۔ یاد رکھو کہ تم واقعی اپنے پروردگار سے ملاقات کرو گے اور وہ تمہارے اعمال کا حساب دے گا۔ خدا نے سود لینے سے منع کیا ہے ، لہذا اب واجب الادا تمام سود معاف کیا جاتا ہے ۔ تاہم ، اصل رقم آپ کے رکھنے کے لئے ہے۔ آپ کو کسی بھی طرح کی عدم مساوات کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔ خدا نے فیصلہ دیا ہے کہ اس میں کوئی سود نہیں ہوگا اور عباس ابن عبد المطلب (رسول اللہ کے چچا) کو واجب الادا اب سارا سود ختم کردیا گیا ہے ...

اپنے دین کی حفاظت کے لئے شیطان سے بچو۔ اس نے ساری امید کھو دی ہے کہ وہ کبھی بھی بڑی چیزوں میں آپ کو گمراہ کرنے میں کامیاب ہوجائے گا ، لہذا چھوٹی چھوٹی چیزوں میں اس کے پیچھے چلنے سے بچو۔
اے لوگو ، یہ سچ ہے کہ آپ کو اپنی خواتین کے حوالے سے کچھ حقوق حاصل ہیں ، لیکن ان کا آپ پر بھی حق ہے۔ یاد رکھنا کہ آپ نے انہیں صرف خدا کی امانت میں اور اس کی اجازت سے اپنی بیویاں بنا لیا ہے۔ اگر وہ آپ کے حق کی پاسداری کرتی ہیں تو پھر ان کا حق ہے کہ انہیں کھلایا جائے اور مہربانی سے لباس پہنائے جائیں۔ اپنی خواتین کے ساتھ اچھا سلوک کرو اور ان کے ساتھ نرم سلوک کرو کیونکہ وہ آپ کے شراکت دار اور پرعزم مددگار ہیں۔ اور یہ آپ کا حق ہے کہ وہ کسی سے بھی دوستی نہیں کریں جس کی آپ کو منظوری نہیں دیتے

اے لوگو ، میری سنو بات سنو ، خدا کی عبادت کرو ، رمضان کے مہینے میں روزہ، روزانہ پانچ نماز پڑھو اور زکوٰة میں اپنا مال دو۔ اگر آپ استطاعت رکھتے ہو تو حج کرو۔


ساری انسانیت آدم اور حوا سے ہے ، کسی عرب کو غیر عرب پر کوئی فوقیت حاصل نہیں ہے اور نہ ہی کسی عرب پر کسی عرب کو کوئی برتری حاصل ہے۔ کسی گورے کو بھی کالی رنگ پر فوقیت حاصل نہیں ہے اور نہ ہی کسی سیاہ فام کو سفید رنگ سے کوئی برتری حاصل ہے سوائے تقویٰ اور نیک عمل کے۔ یہ سیکھیں کہ ہر مسلمان ہر مسلمان کا بھائی ہے اور مسلمان ایک بھائی چارہ ہیں۔ کسی مسلمان کے لئے کسی بھی چیز کو جائز نہیں سمجھا جاۓ گا جو کسی مسلمان ملکیت ہو جب تک کہ وہ اسے آزادانہ طور پر اور اپنی مرضی سے نہ دیا جائے۔ لہذا ، اپنے آپ پر ظلم نہ کرو۔

یاد رکھنا ، ایک دن آپ خدا کے حضور حاضر ہوں گے اور اپنے اعمال کا جواب دیں گے۔ لہذا خبردار ، میرے جانے کے بعد راستبازی سے مت بھٹکنا۔

اے لوگو ، میرے بعد کوئی نبی یا رسول نہیں آئے گا اور کوئی نیا ایمان پیدا نہیں ہوگا۔ لہذا ، لوگو ، اچھی طرح سے استدلال کریں اور ان الفاظ کو سمجھیں جو میں آپ کو سناتا ہوں۔ میں اپنے پیچھے دو چیزیں چھوڑ دیتا ہوں ، قرآن اور میری مثال سنت اور اگر آپ ان پر عمل کریں گے تو آپ کبھی بھی گمراہ نہیں ہوں گے۔

وہ سب جو میری بات سنتے ہیں وہ میری باتوں پر دوسروں کو اور پھر دوسروں کو بھی سنائیں۔ اور آخری الفاظ میری بات کو ان لوگوں سے بہتر سمجھ سکتے ہیں جو براہ راست میری بات سنتے ہیں۔ اے اللہ ، میرے گواہ رہو کہ میں نے آپ کا پیغام آپ لوگوں تک پہنچایا ہے۔
 
Last edited:

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
In Islam the Status is based on "Taqwa" not based on relationship with anybody

In Islam the Status is based on "Taqwa" not based on relationship with anybody:

'A'isha, the wife of Allah's Apostle (may peace be upon him), reported that the Quraish were concerned about the woman who had committed theft during the lifetime of Allah's Apostle (may peace be upon him), in the expedition of Victory (of Mecca). They said: Who would speak to Allah's Messenger (may peace be upon him) about her? They (again) said: Who can dare do this but Usama b Zaid, the loved one of Allah's Messenger (may peace be upon him)? She was brought to Allah's Messenger (may peace be upon him) and Usama b. Zaid spoke about her to him (interceded on her behalf). The colour of the face of Allah's Messenger (may peace be upon him) changed, and he said: Do you intercede in one of the prescribed punishments of Allah? He (Usama) said: 'Messenger of Allah, seek forgiveness for me. When it was dusk. Allah's Messenger (may peace be upon him) stood up and gave an address. He (first) glorified Allah as He deserves, and then said: Now to our topic. This (injustice) destroyed those before you that when any one of (high) rank committed theft among them, they spared him, and when any weak one among them committed theft, they inflicted the prescribed punishment upon him. By Him in Whose Hand is my life, even if Fatima daughter of Muhammad were to commit theft, I would have cut off her hand. He (the Holy Prophet) then commanded about that woman who had committed theft, and her hand was cut off. 'A'isha (further) said: Hers was a good respentance, and she later on married and used to come to me after that, and I conveyed her needs (and problems) to Allah's Messenger (may peace be upon him).
[Sahih Muslim, Book# 017, Hadeeth# 4188]
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
کچھ لوگوں نے ہندؤں سے متاثر ہو کر طرح طرح کے عقیدے گھڑ لیے ہیں- کچھ لوگوں نے ہندؤں کی طرح تعزیے نکالنے شروع کر دئیے، کچھ نے مزاروں پر ہندؤں کی طرح ڈھول باجے اور ناچ گانے شروع کر دے ، کچھ نے ہندؤں کی ذات بات کے نظام سے متاثر ہو کر اعلی ذات کا عقیدہ گھڑ لیا- اسلام میں ان خرافات کی کوئی گنجائش نہیں- اللہ کی نظر میں وہ بلند مرتبے والا ہے جو تقویٰ رکھتا ہے۔


(Qur'an 49:13) يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن ذَكَرٍ وَأُنثَىٰ وَجَعَلْنَاكُمْ شُعُوبًا وَقَبَائِلَ لِتَعَارَفُوا ۚ إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِندَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ ۚ إِنَّ اللَّهَ عَلِيمٌ خَبِيرٌ
ا ے لوگو ہم نے تمہیں ایک ہی مرد اور عورت سے پیدا کیا ہے اور تمہارے خاندان اور قومیں جو بنائی ہیں تاکہ تمہیں آپس میں پہچان ہو بے شک زیادہ عزت والا تم میں سے الله کے نزدیک وہ ہے جو تم میں سے زیادہ پرہیزگار ہے بے شک الله سب کچھ جاننے والا خبردار ہے

ابو نضرہ کہتے ہیں: مجھے اس آدمی نے بیان کیا جس نے ایام تشریق کے وسط میں رسول اللہ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کا خطبہ سنا تھا، آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا:لوگو! تمہارا رب بھی ایک ہے اور تمہارا باپ بھی ایک ہے، خبردار! کسی عربی کو کسی عجمی پر اور کسی عجمی کو کسی عربی پر، کسی گورے کو کسی کالے پر اور کسی کالے کو کسی گورے پر کوئی فضیلت حاصل نہیں ہے، مگر تقویٰ کے ساتھ۔ کیا میں نے اللہ کا پیغام تم تک پہنچا دیا ہے؟ صحابہ نے کہا: اللہ کے رسول نے اللہ کا پیغام پہنچادیا۔ پھر آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے پوچھا: آج کون سا دن ہے؟ صحابہ نے کہا: آج حرمت والا دن ہے۔ آپ نے پوچھا: یہ کون سا مہینہ ہے۔ صحابہ نے عرض کیا: یہ حرمت والا مہینہ ہے۔ پھر آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے دریافت فرمایا: یہ کون سا شہر ہے؟ صحابہ نے کہا: یہ حرمت والا شہر ہے۔ آپ نے فرمایا: اللہ تعالیٰ نے تمہارے خون، مال اور عزت کو ایک دوسرے پر اسی طرح حرام کردیا ہے، جیسے اس ماہ میں اور اس شہر میں اس دن کی حرمت ہے۔ کیا میں نے اللہ کا پیغام تم لوگوں تک پہنچا دیا؟ صحابہ نے کہا: اللہ کے رسول نے پیغام پہنچادیا ہے۔ آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: جو لوگ یہاں موجود ہیں، وہ یہ باتیں ان لوگو ں تک پہنچادیں، جو یہا ں موجود نہیں ہیں۔
Musnad Ahmed – 4568-Islam360
 
Last edited:

desan

Prime Minister (20k+ posts)
Don't we have enough problems to look for even more.

Sectarianism is the wedge that could divide this nation as we are witnessing in the the middle east.

There appear to be some Disguised Sanghis on this forum who are also trying to incite this hatred.
 
Last edited:

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
Don't we have enough problems to look for even more.

Sectarianism is the wedge that could divide this nation as we are witnessing in the the middle east.

(Qur'an 6:153) وَأَنَّ هَـٰذَا صِرَاطِي مُسْتَقِيمًا فَاتَّبِعُوهُ ۖ وَلَا تَتَّبِعُوا السُّبُلَ فَتَفَرَّقَ بِكُمْ عَن سَبِيلِهِ ۚ ذَ‌ٰلِكُمْ وَصَّاكُم بِهِ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ
اور بے شک یہی میرا سیدھا راستہ ہے سو اسی کا اتباع کرواور دوسرے راستوں پر مت چلو وہ تمہیں الله کی راہ سے ہٹا دیں گے تمہیں اسی کا حکم دیا ہے تاکہ تم پرہیزگار ہو جاؤ

تفریق کی ایک بڑی وجہ مسلمانوں میں پائے جانے والے عقائد کی وسیع رینج ہے۔ ہمارے پاس ایک ہی قرآن اور ایک ہی نبی ﷺ کے باوجود ، مسلمان آج بھی مختلف عقائد رکھتے ہیں۔ یہ کیوں ہے؟ اگر ہم سب ہی ہر معاملے میں قرآن و سنت کا ذکر کر رہے ہیں تو پھر کیوں اختلاف ہے۔ اللہ تعالٰی فرماتے ہیں۔


(Qur'an 4:59) يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا أَطِيعُوا اللَّهَ وَأَطِيعُوا الرَّسُولَ وَأُولِي الْأَمْرِ مِنكُمْ ۖ فَإِن تَنَازَعْتُمْ فِي شَيْءٍ فَرُدُّوهُ إِلَى اللَّهِ وَالرَّسُولِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ۚ ذَ‌ٰلِكَ خَيْرٌ وَأَحْسَنُ تَأْوِيلًا
اے ایمان والو الله کی فرمانبرداری کرو اور رسول کی فرمانبرداری کرو اور ان لوگوں کی جو تم میں سے حاکم ہوں پھر اگر آپس میں کوئی چیز میں جھگڑا کرو تو اسے الله اور اس کے رسول کی طرف پھیرو اگر تم الله اور قیامت کے دن پر یقین رکھتے ہو یہی بات اچھی ہے اور انجام کے لحاظ سے بہت بہتر ہے

تو واقعی اے نیک بھائی ، سوچئے کہ اگر ہر مسلمان نے اس آیت پر عمل کیا ہوتا، تو کیا ان میں کوئی اختلاف ہوتا ؟ نہیں ، سوائے اس کے کہ فقہ کے معاملات میں ، جیسے نماز۔ لیکن ہمارے عقائد اور طریقہ کار ایک ہوں ، تو ایسا کیوں نہیں ہے؟ اس کی وجہ یہ ہے کہ بہت سارے مسلمان آج ہر مسئلے کو اللہ (سبحانہ و تعالٰی) اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف نہیں لوٹاتے ، بلکہ وہ اپنے مقامی امام یا والدین سے پوچھتے ہیں یا اسے اپنے پیر و مرشد کے حوالے کرتے ہیں۔

سب سے پہلے جس چیز کے بارے میں تمام انبیاء نے درست کرنے کی کوشش کی وہ تھی، عقائد کی اصلاح کی جائے، جہاد یا اسلامی ریاست کے قیام کی کوشش سے پہلے ، پہلی چیز مسلمان کے عقائد کو پاک کرنا ہے ۔ تو ہم عقائد کی اصلاح سے پہلے کیسے اتحاد کر سکتے ہیں

 
Last edited:
Sponsored Link

Featured Discussion Latest Blogs اردوخبریں