بھارت :انسانیت سوز واقعہ،ہوم ورک نہ کرنے پر ٹیچر نے طالب علم کی جان لے لی

Student-feedback-on-blog.jpg


بھارت میں انسانیت سوز واقعہ، ہوم ورک کیوں نہیں کیا؟ اُستاد کے بہیمانہ تشدد نے طالبعلم کی جان لے لی، پولیس نے استاد کو حراست میں لے لیا۔

تفصیلات کے مطابق یہ دلخراش واقعہ بھارتی راجھستان کے گاؤں کولاسر میں پیش آیا، کلاس ٹیچر نے ساتویں جماعت کے طالبعلم کو ہوم ورک نہ کرنے پر شدید تشدد کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں طالبعلم ہلاک ہو گیا۔

بچے کے والد اوم پرکاش کی جانب سے مقامی پولیس اسٹیشن میں واقعہ کی شکایت درج کرائی گئی، درخواست میں والد کا کہنا تھا کہ واقعہ کے روز اسکول ٹیچر نے فون کر کے بیٹے گنیش کے ہوم ورک نہ کرنے کی شکایت کی اور کہا کہ میں نے اس کی پٹائی لگائی ہے جس سے وہ بے ہوش ہوگیا ہے، بیٹے کی حالت سے بے خبر والد غم سے نڈھال ہو گیا اور ٹیچر سے پوچھا کہ وہ بے ہوش ہے یا مرگیا ہے؟ جس پر سفاک ٹیچر نے کہا کہ وہ مرنے کا ڈرامہ کررہا ہے۔

باپ اوم پرکاش نے پولیس کو بتایا کہ جب وہ سکول پہنچا تو اس کی بیوی بھی اسکول میں موجود تھی، انہیں بتایا گیا کہ گنیش کو بے ہوشی کی حالت میں اسپتال لے جایا گیا ہے۔

بچے کے والد نے مزید بتایا کہ بدترین تشدد کے باعث گنیش بُری طرح زخمی ہوا، اسے پرائیوٹ اسپتال لے جایا گیا جہاں ڈاکٹرز نے بچے کو مردہ قرار دے دیا۔

دوسری جانب اسکول بچے، جو واقعہ کے چشم دید گواہ تھے، انہوں نے بیان دیا کہ ملزم منوج نے اسے بے رحمی سے لاتوں اور گھونسوں سے مارا جبکہ اسے بارہا زمین پر بھی پٹخا، اس بہیمانہ تشدد کی تاب نہ لاتے ہوئے بچہ بے ہوش ہو گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ٹیچر منوج کمار کے خلاف دفعہ 302 کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا ہے، جبکہ فوری کارروائی کرتے ہوئے ٹیچر کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

پولیس کے مطابق موت کی وجوہات جاننے کے لئے بچے کا پوسٹ مارٹم بھی کیا گیا ہے۔
 
Advertisement
Sponsored Link