عمران خان کو ڈیل آفر نہیں کی جا رہی، پارٹی کے مزید ٹکڑے ہونگے، فیصل واوڈا

1vavavballanwhoaga.png


سابق وفاقی وزیر اور تحریک انصاف کے منحرف رہنما فیصل واوڈا نے ایک اور بڑا انکشاف کردیا,انہوں نے کہا چیئرمین پی ٹی آئی نے ان لوگوں پراعتماد کیا جن پر نہیں کرنا چاہئے تھا، وہ خود کو بند گلی میں لے گئے ہیں اور نوازشریف کو انتخابات پلیٹ پر رکھ کر دے دیے گئے۔

آج نیوز کے پروگرام ’روبرو‘ میں بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے منحرف رہنما فیصل واوڈا کا کہنا تھا کہ بد نصیبی ہے کہ اپنے ہاتھ سے اپنی گھر کو آگ لگا دی گئی، چیئرمین پی ٹی آئی خود کو بند گلی میں لے گئے ہیں اور انہیں پارٹی سربراہی چھوڑنی پڑگئی، جب کہ انتخابات پلیٹ پر رکھ کر نوازشریف کو دے دیئے گئے ہیں۔


فیصل واوڈا کا کہنا تھا کہ چیئرمین پی ٹی آئی ہی تحریک انصاف ہے، اور تحریک انصاف ہی چیئرمین پی ٹی آئی ہیں۔ ان کی قیادت میں پوری پارٹی متحد تھی، لیکن اب بہت سارے دھڑوں میں تقسیم ہو چکی ہے، عمران خان نے ان لوگوں پراعتماد کیا جن پر نہیں کرنا چاہئے تھا۔

فیصل ووڈا نے کہا استحکام پاکستان اور پرویز خٹک کی پارٹی کے بعد پی ٹی آئی کے مزید ٹکڑے ہوں گے، وکلا کے اندر پانچ گروپ ہیں۔ ’پھر بیگم صاحبہ ہیں، پھر بہنیں ہیں ، پھر ورکرز ہیں، پھر جو سیاستدان ہیں۔


فیصل ووڈا نے کہا کہ الیکشن میں پی ٹی آئی کے بعد بلے کا نشان نہیں ہوگا فیصل ووڈا کا کہنا تھا ان میں سے کچھ اپنی جماعتیں بنائیں گے کچھ دوسری جماعتوں میں چلے جائیں گے۔

پی ٹی آئی دور میں وزیر رہنے والے فیصل ووڈا کا کہنا تھا عمران خان ڈیل کا انتظار کر رہے ہیں لیکن انہیں کوئی ڈیل آفر نہیں کی جا رہی, چیئرمین پی ٹی آئی وہ سبق بھول گئے جو ہمیں سکھایا تھا، وہ کہتے تھے کہ اپنے فیصلے پر کھڑے رہو، تاریخی فیصلوں سے ملک تاریکی میں ڈوب رہا ہے، نوجوانوں کی سربراہی 80 سالہ شخص نہیں کرسکتا۔


فیصل واوڈا نے کہا کہ 9 مئی کو گولی چلتی تو کہا جاتا کہ اپنے لوگوں پر گولی چلائی گئی، 9مئی کے واقعات سے ملک میں بدامنی پیدا ہونی تھی، لیکن اداروں نے تحمل کا مظاہرہ کیا، اس تحمل کو کمزوری نہیں سمجھنا چاہئے تھا، کچھ لوگ پریس کانفرنس کرکے بھی آزاد نہیں ہوسکتے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے پاکستان تحریک انصاف کو انٹراپارٹی الیکشن کروانے کے حکم نامے کے بعد پارٹی کل 2 دسمبر کو انٹراپارٹی انتخابات کروانے جا رہی ہے۔

تحریک انصاف کے انٹراپارٹی انتخابات کیلئے کاغذاتِ نامزدگی کی وصولی کے عمل کا آغاز کر دیا گیا۔ بانی چیئرمین کے نامزد کردہ امیدوار برائے چیئرمین بیرسٹر گوہر علی خان نے بھی اپنے کاغذاتِ نامزدگی جمع کرا دیے۔

چیئرمین کے امیدوار بیرسٹر گوہر علی کے کاغذات ریٹرننگ افسر سردار مصروف خان ایڈووکیٹ نے وصول کیے ۔سینیئر مرکزی رہنما احمد اویس بیرسٹر گوہر علی خان کے تجویز کنندہ ہیں اور مرکزی سیکرٹری اطلاعات رؤف حسن چیئرمین کے انتخاب کیلئے بیرسٹر گوہر علی خان کے تائید کنندہ ہیں۔
 

Azpir

MPA (400+ posts)
عمران خان بچ گیا تو خیبر پختون خواہ اور بلوچستان بچ جائیں گے ۔ ورنہ اس دفعہ ٹوٹے ہوں گے۔ فوجیوں کی حکمرانی اور عیاشیوں کے لیے صرف پنجاب ہی رہ جائے گا۔
Akhri sans tak balochi or pakhtun larain ge to protect Pakistan with or without Army. Don't say these bagiyana words. Pakistan paindabad !