Parliament attack case: ATC postpones verdict in PM Khan's acquittal plea

Bilal Raza

Prime Minister (20k+ posts)


Islamabad: An anti-terrorism court in Islamabad on Thursday postponed the announcement of its reserved verdict over the petition for acquittal of Prime Minister Imran Khan in a case related to the 2014 attacks on Parliament House and Pakistan Television (PTV), GNN reported.

Judge Raja Jawad Abbas said that several of the accused in the case had filed petitions for acquittal before Imran Khan and it is unlikely to decide the matter leaving other petitions in pending.

The judge further stated that other accused persons including Ejaz Chaudhry, Asad Umar, and Jahangir Tareen have withdrawn their applications, and even arrest warrants were issued for several accused individuals in their absence.

Most of the defendants are being represented by Faisal Chaudhry advocate, he added.

ATC judge Raja Javad Abbas remarked that several other persons had filed their applications seeking acquittal in the same case, and it was not possible to announce the verdict just for PM Imran Khan while leaving others.

To these remarks, PM Imran’s lawyer Babar Awan pleaded with the court to hear arguments on behalf of those persons who were appearing in the courtroom for their acquittal.

The judge deferred the hearing for a break till 11:30 AM.

On Aug 31, 2014, PTI and Pakistan Awami Tehreek (PAT) workers marched towards the Parliament House and Prime Minister House and clashed with police deployed at Constitution Avenue.

Police later invoked the anti-terrorism act against then PTI chief Imran and party leaders including President Alvi, Asad Umar, Shah Mehmood Qureshi, Shafqat Mehmood and Raja Khurram Nawaz for inciting violence during the 2014 sit-in.



 
Advertisement

naveed

Chief Minister (5k+ posts)
انسداد دہشت گردی کی عدالت (اے ٹی سی)نے پی ٹی وی اور پارلیمنٹ حملہ کیس میں وزیراعظم عمران خان کی بریت کی درخواست پر فیصلہ مؤخر کر دیا ہے۔



انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج راجہ جواد عباس حسن نے معاملے کی سماعت کی۔ جج نے ریمارکس دیے کہ کئی ملزمان ہیں جنہوں نے عمران خان سے پہلے بریت کی درخواستیں دیں۔

عدالت نے کہا ممکن نہیں کہ دیگر ملزمان کی بریت کی درخواستوں کو چھوڑ کر عمران خان کی درخواست پر فیصلہ سنائیں۔

ریمارکس میں کہا گیا کہ اعجاز چودھری، اسد عمر، جہانگیر ترین سمیت متعدد ملزمان نے بریت کی درخواستیں واپس لیں جب کہ کئی ملزمان کی عدم حاضری پر تو ان کے وارنٹ گرفتاری بھی جاری کیے گئے۔

جج کا کہنا تھا کہ یہ سینکڑوں کارکنوں سے متعلق کیس ہے اور زیادہ کارکنان کی پیروی فیصل چودھری کر رہے ہیں۔

وزیراعظم کے وکیل بابر اعوان نے استدعا کی کہ جو ملزمان عدالت آ رہے ہیں ان کی درخواستوں پر بحث سن لیں۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج راجہ جواد عباس حسن نے سماعت میں آج ساڑھے گیارہ بجے تک وقفہ کر دیا ہے۔

واضح رہے کہ 2014 میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی) کے دھرنے کے دوران مشتعل افراد نے پی ٹی وی ہیڈ کوارٹرز پر دھاوا بولا تھا۔

حملے میں ملوث ہونے کے الزام میں تقریباً 70 افراد کے خلاف تھانہ سیکریٹریٹ میں پارلیمنٹ ہاؤس، پی ٹی وی اور سرکاری املاک پر حملوں اور کار سرکار میں مداخلت کے الزامات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ مقدمے میں انسداد دہشت گردی سمیت دیگر دفعات بھی شامل ہیں۔

ایف آئی آر میں عمران خان اور ڈاکٹر طاہر القادری پر اسلام آباد کے ریڈ زون میں توڑ پھوڑ اور سرکاری ٹی وی پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) پر حملے سیمت سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس ایس پی) اسلام آباد عصمت اللہ جونیجو کو زخمی کرنے کا الزام لگایا گیا ہے۔

 
Sponsored Link

Latest Blogs Featured Discussion اردوخبریں