Mullah Omar has spoken: What is he implying?

sakoon

Politcal Worker (100+ posts)




http://www.oneindia.com/feature/mullah-omar-has-spoken-what-is-he-implying-1807185.html


Mullah Omar has spoken: What is he implying?



15-1436948188-mullahomar.jpg


For the Taliban which is battling a host of splits, the message from its supreme one eyed commander comes as a blessing in disguise. An annual message on the eve of Eid termed the peace talks as legitimate, thus ending months of speculation whether he was dead or alive. The leader who has not been in public domain since 2001 was rumoured to be dead. However his statements about the peace talks puts and end to this speculation.

What Mullah Omar means to the Taliban?

The Taliban is undergoing troubled times in Afghanistan. It may take a week to count the number of splits the outfit has undergone. More importantly it has been losing very heavily to the al-Khorasan which is the Afghanistan form of the ISIS. There was no word on Mullah Omar for very long. Indian intelligence agencies always maintained that Mullah Omar was very much alive, but also raised doubts about his capabilities due to his age. His statements ahead of Eid terming the talks as legitimate aims at ending the confusion within the Taliban.

Moreover it also would give a ray of hope for the fading hopes of its fighters who have been waging a battle without the leadership of a charismatic leader. Mullah Omar for the Taliban is what Osama Bin Laden was to the al-Qaeda and Abu Bakr al-Baghdadi is to the ISIS.

The Taliban peace talks:

Talks have been taking place between Afghanistan and the Taliban. While it has been hailed by many as a breakthrough, there are many who have expressed their voice of dissent. The members of the Afghan High Peace Council have been holding talks with the Taliban at Murree in Pakistan in a bid to put an end to the fight in Afghanistan. While the US, China and Islamabad have termed these talks as a major break-through, voices of dissent came from within the Taliban.

There is a faction within the Taliban who have set up an office in Qatar and say that only they are entitled to carry out peace talks. They have rejected the talks being undertaken by the Taliban at Murree in Paksitan and even questioned those involved in it. Experts say that these voices of dissent came about as there was no official word from Mullah Omar. He has remained quiet and this has led to dissent. However with him now terming the talks at Murree as legitimate it is likely to put an end to the dissent within the Taliban.

Unified Taliban is a stronger Taliban:


A unified Taliban is never a good sign for India. The Taliban if it manages to install a government or even be part of it would prove to be problematic for India. The Taliban is extremely grateful to Pakistan for a variety of reasons. One of the main reasons for gratitude is that the ISI played a major role in keeping Mullah Omar safe all these years. Several persons in the Indian intelligence and other agencies have maintained that the ISI knows where Mullah Omar is. Carlotta Gall, author of book, The Wrong Enemy: America in Afghanistan also pointed out during her investigation that the ISI knows where Mullah Omar is while also adding that many had dreamt of a Taliban flag flying at Afghanistan again. In the Indian context a split up Taliban would mean that the group is weak. It also indicated that the various factions that had split from the Taliban had blamed Pakistan directly for this mess. However if these groups unite then the situation could get problematic.

Taliban was desperate to showcase Mullah Omar:


In a desperate bid to tell the world that Mullah Omar was alive, the Taliban had recently published a 5,000 word biography. The Taliban goes on to write that Mullah Omar is a man of courage who never loses his temper. He does not have a home or a bank account. He has a special sense of humour and treats everyone as equal. He has no superiority complex and treats all as equals, the Taliban also writes. The Taliban said that he is being tracked every single day and that is why he is not out in the open. Despite being tracked every single day, he never fails to perform his duties. All the tracking has not changed his daily routine and he follows and inspects Jihadi activities against the infidel foreign invaders the Taliban says while also adding that his favourite weapon is the RPG-7.
 
Last edited by a moderator:

Pakistan Tiger

MPA (400+ posts)
Khawarjee (ISIS, Daish, Taliban, Al Qaida, Al Shabab, Houthi, Hizb Ullah, Shitan Aziz Firqa, Gullu Qadri Firqa) ka jo yaar h, Islam or Pakistan ka Gaddar h.
 

Saad Saadi

Minister (2k+ posts)
Khawarjee (ISIS, Daish, Taliban, Al Qaida, Al Shabab, Houthi, Hizb Ullah, Shitan Aziz Firqa, Gullu Qadri Firqa) ka jo yaar h, Islam or Pakistan ka Gaddar h.

Tum Taliban ko Khawarji Kho ya Muslim Such Yeh Hai wo Aik Strong Force hain Jise Na USA khatam Kr saka hai Na Pak Army kr sake gi
 

Pakistan Tiger

MPA (400+ posts)
Tum Taliban ko Khawarji Kho ya Muslim Such Yeh Hai wo Aik Strong Force hain Jise Na USA khatam Kr saka hai Na Pak Army kr sake gi

Tek kaha Kharji fitna majood rahy ga, akhar Dajjal ny Khawarjion sy zahoor lena h. Akhari Khawarjee Ameer Dajjal hu ga. Hazrat Essa AS or Imam Mehdi AS Khawarjion ko complete defeat dy kar eliminate karien gie.
 

Piyasa

Minister (2k+ posts)
ملّا عمر صاحب نے ديش جيسے خطرے کے بارے ميں کچھ نہيں کہا؟ ايک تو سامنے آتے نہيں اور اوپر سے ديش کی مخالفت بھی نہيں۔ اب ملک کی محبّت کہاں گئئ؟
 

Ibrahim92

MPA (400+ posts)
Apny banay huay TALIBAN say jo marzi jab marzi chaha likhwa k biyan dilwa dia :lol: Aur woh bhi Computer printed :lol:

Aur issey thooop dia Taliban k naaam pay (serious)
 

Ibrahim92

MPA (400+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.

aur yeh PAIGHAM likha kiss nay hay ! wohi jinhain iss paigham say faida honna hay :lol:
 

Nauman Ghauri

Councller (250+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.

Hai koi Nariedera Modi ko drip laganay wala?
 

Ibrahim92

MPA (400+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.

Aap k khalifa sahib aaj kal kidher chupay huway hain?

بسم الله الرحمن الرحيم

ادارہ الفرقان برائے نشر واشاعت
furqan-small2.jpg
پیش کرتا ہے:
مولانا امیر المومنین ابوبکر الحسینی القرشی البغدادی
حفظہ اللہ کا بیان
بعنوان:
﴿انفِرُوا خِفَافًا وَثِقَالًا
’’نکلو چاہے تم ہلکے ہو یا بوجھل ‘‘
إن الحمد لله نحمده ونستعينه ونستغفره، ونعوذ بالله من شرور أنفسنا وسيئات أعمالنا، من يهده الله فلا مضل له، ومن يضلل فلا هادي له.
وأشهد أن لا إله إلا الله وحده لا شريك له، وأشهد أن محمدًا عبده ورسوله.
"بلاشبہ تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں، ہم اسی کی حمد بیان کرتے ہیں، اور ہم اسی سے مدد طلب کرتے ہیں، اور ہم اسی سے بخشش طلب کرتے ہیں۔ ہم اللہ تعالی سے اپنے نفسوں کی شرارتوں اور اپنے برے اعمال کی پناہ مانگتے ہیں۔ جسے اللہ ہدایت دیدے اسے کوئی گمراہ کرنے والا نہیں اور جسے اللہ گمراہ کردے اسے کوئی ہدایت دینے والا نہیں۔
اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں ہے ، وہ اکیلا ہے اس کا کوئی شریک نہیں ہے، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد (ﷺ) اس کے بندے اور اس کے رسول ہیں ۔ اما بعد ؛"
اللہ عزوجل نے فرمایا:
﴿كُتِبَ عَلَيْكُمُ الْقِتَالُ وَهُوَ كُرْهٌ لَّكُمْ
’’(مسلمانو) تم پر (اللہ کے رستے میں) قتال فرض کردیا گیا ہے وہ تمہیں ناگوار ہے۔‘‘ (البقرة : 216)
ارشاد باری تعالی ہے:
﴿فَلْيُقَاتِلْ فِي سَبِيلِ اللَّهِ الَّذِينَ يَشْرُونَ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا بِالْآخِرَةِ وَمَنْ يُقَاتِلْ فِي سَبِيلِ اللَّهِ فَيُقْتَلْ أَوْ يَغْلِبْ فَسَوْفَ نُؤْتِيهِ أَجْرًا عَظِيمًا
’’پس ان (مؤمنوں) کو اللہ کی راہ میں (دین کی سربلندی کے لئے) لڑنا چاہئے جو آخرت کے عوض دنیوی زندگی کو بیچ دیتے ہیں، اور جو کوئی اللہ کی راہ میں جنگ کرے، خواہ وہ قتل ہو جائے یا غلبہ پائے تو ہم عنقریب اس کو عظیم اجر عطا فرمائیں گے۔‘‘(النساء : 74)
اللہ تعالی نے فرمایا:
﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا مَا لَكُمْ إِذَا قِيلَ لَكُمُ انفِرُوا فِي سَبِيلِ اللَّـهِ اثَّاقَلْتُمْ إِلَى الْأَرْضِ ۚ أَرَضِيتُم بِالْحَيَاةِ الدُّنْيَا مِنَ الْآخِرَةِ ۚ فَمَا مَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا فِي الْآخِرَةِ إِلَّا قَلِيلٌ (38) إِلَّا تَنفِرُوا يُعَذِّبْكُمْ عَذَابًا أَلِيمًا وَيَسْتَبْدِلْ قَوْمًا غَيْرَكُمْ وَلَا تَضُرُّوهُ شَيْئًا ۗ وَاللَّـهُ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ(39).
’’اے ایمان والو! تمہیں کیا ہو گیا ہے کہ جب تم سے کہا جاتا ہے کہ تم اللہ کی راہ میں (ہجرت وجہاد کے لئے) نکلو تو تم زمین میں دھنس جاتے جاتے ہو، کیا تم آخرت کے بدلے دنیا کی زندگی پر راضی ہو گئے ہو؟ سو دنیوی زندگی کا سازوسامان آخرت (کے مقابلہ) میں کچھ بھی نہیں مگر بہت ہی کم (حیثیت رکھتا) ہے۔ اگر تم (ہجرت وجہاد کے لئے) نہ نکلو گے تو وہ تمہیں دردناک عذاب میں مبتلا فرمائے گا اور تمہاری جگہ (کسی) اور قوم کو لے آئے گا اور تم اسے کچھ بھی نقصان نہیں پہنچا سکو گے، اور اللہ ہر چیز پر قادر ہے۔‘‘(التوبة : 38-39)
اللہ سبحانہ کا ارشاد ہے :
﴿وَلَوْ يَشَاءُ اللَّـهُ لَانتَصَرَ مِنْهُمْ وَلَـٰكِن لِّيَبْلُوَ بَعْضَكُم بِبَعْضٍ ۗ وَالَّذِينَ قُتِلُوا فِي سَبِيلِ اللَّـهِ فَلَن يُضِلَّ أَعْمَالَهُمْ (4) سَيَهْدِيهِمْ وَيُصْلِحُ بَالَهُمْ (5) وَيُدْخِلُهُمُ الْجَنَّةَ عَرَّفَهَا لَهُمْ (6).
’’اور اگر ﷲ چاہتا تو ان سے (بغیر جنگ) انتقام لے لیتا لیکن اس نے چاہا کہ تمہاری آزمائش ایک (کو) دوسرے سے (لڑوا کر) کرے۔ اور جو لوگ اللہ کی راہ میں مارے گئے ان کے عملوں کو ہرگز ضائع نہ کرے گا۔ وہ عنقریب ان کو سیدھے رستے پر چلائے گا اور ان کی حالت درست کر دے گا۔ اور (بالآخر) انہیں جنت میں داخل فرما دے گا جس سے انہیں شناسا کر رکھا ہے۔‘‘ (محمد : 4-6)
اے مسلمانو!
اے : اللہ کو رب ، اسلام کو دین اور محمد ﷺ کو نبی ورسول ماننے پر راضی ہونے والو!
اے لا الہ الا اللہ اور محمد رسول ﷺ کی گواہی دینے والو!
تمہیں عمل کے بغیر قول کچھ فائدہ نہیں دے گا۔ عمل کے بغیر کوئی ایمان نہیں ہے۔
پس جو کہتا ہے کہ میرا رب اللہ ہے۔ اگر وہ سچا ہے تو اس پر لازم ہے کہ وہ اس اللہ عزوجل کی اطاعت کرے جس نے قتال کو فرض قرار دیا ہے۔ یعنی اللہ تعالی نے اپنے اوپر ایمان لانے والوں پر قتال کو فرض قرار دیا ہے اور ان کو حکم دیا ہے کہ وہ اس کی راہ میں جہاد کریں۔ اب جو اس کے حکم کو مانے گا تو اسے جزا دینے کا وعدہ کیا ہے اور جو اس حکم کی نافرمانی کرے گا تو اسے سزا دینے کا وعدہ فرمایا ہے۔
اور جوکہتا ہے کہ محمدﷺ میرے نبی ہے تو اگر وہ اپنے دعوی میں سچا ہے تو اس پر لازم ہے کہ وہ آپﷺ کی پیری کریں، جنہوں نے فرمایا :
(والذي نفس محمدٍ بيده لولا أن أشق على المسلمين ما قعدتُ خلاف سرية تغزو في سبيل الله أبدًا، ولكني لا أجد سعة فيتبعوني، ولا تطيب أنفسهم فيتخلفون بعدي، والذي نفس محمد بيده لوددتُ أن أغزو في سبيل الله فأُقتل، ثم أغزو فأُقتل، ثم أغزو فأُقتل)
’’ اس ذات کی قسم ! جس کے ہاتھ میں میں محمد(ﷺ) کی جان ہے اگر مجھے مسلمانوں پر بھاری پڑنے کا خطرہ نہ ہوتا تو میں اللہ کی راہ میں جہاد کرنے کے لیے جانے والے کسی بھی دستے سے پیچھے نہیں بیٹھتا ۔ لیکن میرے پاس (اتنی )وسعت نہیں ہے کہ (میں سب کو سواریاں مہیا کرتااور) وہ میرے پیچھے چلتے اور ان کے دلوں کو میرے چلے جانے کے بعد پیچھے رہنے سے رنج نہ ہوتا۔ اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں محمد(ﷺ) کی جان ہے۔ میری آروز ہے کہ میں اللہ کی راہ میں لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔ پھر لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔ پھر لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔‘‘
تو اے مسلمان ! تو اپنے رب کے اس حکم پر عمل کرنے سے کہاں ہے ؟ اللہ تعالی نے صرف ایک آیت میں روزے کا حکم دیا ہے جبکہ جہاد وقتال کا حکم بیسیوں آیات میں دیا۔
اے مسلمان! تو جس نبیﷺ کی پیروی کرنے کا دعوی کرتا ہے ، اس نبی ﷺ نے اپنی ساری زندگی اللہ کی راہ میں مجاہد اور دشمنوں کیخلاف قتال کرتے ہوئے بسر کردی ۔ جنگ میں آپﷺ کے آگے چار دانٹ ٹوٹ گئے۔ آپﷺ کی پیشانی پر زخم لگے۔ آپﷺ کے رخسار میں دو کڑیاں پیوست ہوگئیں۔ آپﷺ کے سر پر جنگی ہیلمنٹ ٹوٹ گیا۔ آپﷺ کے چہرے سے خون بہا۔ آپﷺ پر میری جان اور میرے ماں باپ اور تمام لوگ قربان ہوں۔
اے مسلمان!
اے اللہ اور اس کے رسول ﷺ سے محبت کے دعویدار!
اگر تو واقعی اس محبت کے دعوی میں سچا ہے تو اپنے محبوب کی اطاعت کرتے ہوئے اس کی راہ میں قتال کر اور اپنے حبیب ﷺ کی پیروی کر ، یہاں تک کہ تجھے موت نہ آئے مگر اس حال میں کہ تو اللہ کی راہ میں مجاہد ہوں۔
﴿الم (1) أَحَسِبَ النَّاسُ أَن يُتْرَكُوا أَن يَقُولُوا آمَنَّا وَهُمْ لَا يُفْتَنُونَ (2) وَلَقَدْ فَتَنَّا الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ ۖ فَلَيَعْلَمَنَّ اللَّـهُ الَّذِينَ صَدَقُوا وَلَيَعْلَمَنَّ الْكَاذِبِينَ (3) أَمْ حَسِبَ الَّذِينَ يَعْمَلُونَ السَّيِّئَاتِ أَن يَسْبِقُونَا ۚ سَاءَ مَا يَحْكُمُونَ (4) مَن كَانَ يَرْجُو لِقَاءَ اللَّـهِ فَإِنَّ أَجَلَ اللَّـهِ لَآتٍ ۚ وَهُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيمُ (5) وَمَن جَاهَدَ فَإِنَّمَا يُجَاهِدُ لِنَفْسِهِ ۚ إِنَّ اللَّـهَ لَغَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ(6). (العنكبوت : 1-6)
’’الف، لام، میم۔ کیا لوگ یہ خیال کئے ہوئے ہیں کہ صرف یہ کہنے سے کہ ہم ایمان لے آئے ہیں چھوڑ دیئے جائیں گے اور ان کی آزمائش نہ کی جائے گی۔ اور بیشک ہم نے ان لوگوں کو (بھی) آزمایا تھا جو ان سے پہلے تھے سو یقیناً اللہ ان لوگوں کو ضرور (آزمائش کے ذریعے) جان لے گا جو (اپنے ایمان میں) سچے ہیں اور جھوٹوں کو (بھی) ضرور جان لے گا۔ کیا جو لوگ برے کام کرتے ہیں یہ گمان کئے ہوئے ہیں کہ وہ ہمارے قابو سے باہر نکل جائیں گے؟ کیا ہی برا ہے جو وہ (اپنے ذہنوں میں) فیصلہ کرتے ہیں۔ جو شخص اللہ کی ملاقات کی اُمید رکھتا ہو اللہ کا (مقرر کیا ہوا) وقت ضرور آنے والا ہے۔ اور وہ سننے والا اور جاننے والا ہے۔اور جو شخص بھی جہاد کرے گا تو وہ اپنے ہی لئے جہاد کرتا ہے۔ اور بیشک اللہ تو سارے جہانوں سے بے پروا ہے۔ ‘‘
﴿انفِرُوا خِفَافًا وَثِقَالًا وَجَاهِدُوا بِأَمْوَالِكُمْ وَأَنفُسِكُمْ فِي سَبِيلِ اللَّـهِ ۚ ذَٰلِكُمْ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ
’’تم ہلکے اور گراں بار (ہر حال میں) نکل کھڑے ہو۔ اور اللہ کے رستے میں اپنے مالوں اور اپنی جانوں کے ساتھ جہاد کرو۔ یہی تمہارے حق میں بہتر ہے بشرطیکہ تم سمجھو۔‘‘(التوبة : 41)
اے مسلمانو! بیشک اللہ تعالی کی سنت ودستور یہ ہے کہ حق وباطل کے درمیان جنگ تاقیامت جاری رہے۔
﴿وَلَن تَجِدَ لِسُنَّةِ اللَّـهِ تَبْدِيلًا.
’’اور آپ ﷲ کے دستور میں ہرگز کوئی تبدیلی نہیں پائیں گے۔‘‘(الفتح : 23)
اللہ تعالی نے اپنے بندوں کو اس جنگ کے ذریعے آزمائش میں ڈالا ہے تاکہ وہ پاک کو خبیث سے، سچے کو جھوٹے سے اور مومن کو منافق سے چھانٹ کر الگ کردے۔
﴿وَلَنَبْلُوَنَّكُمْ حَتَّىٰ نَعْلَمَ الْمُجَاهِدِينَ مِنكُمْ وَالصَّابِرِينَ وَنَبْلُوَ أَخْبَارَكُمْ.
’’ اور ہم ضرور تمہاری آزمائش کریں گے یہاں تک کہ تم میں سے (ثابت قدمی کے ساتھ) جہاد کرنے والوں اور صبر کرنے والوں کو معلوم کریں اور تمہاری خبریں آزمالیں۔‘‘(محمد : 31)
اللہ تعالی نے اپنی راہ میں تم پر جہاد کرنے کو فرض اس لیے کیا اور تمہیں اپنے دشمنوں سے قتال کرنے کا حکم اس لیے دیا ہے تاکہ وہ تمہارے گناہ معاف کردے، تمہارے درجات کو بلند کرے، تم میں سے شہیدوں کا انتخاب کرے ، مومنین کو چھانٹ کر الگ کرے اور کافروں کو تباہ کرے۔
﴿وَلَـٰكِن لِّيَبْلُوَكُمْ﴾،
’’ لیکن وہ تمہاری آزمائش کرنا چاہتا ہے۔‘‘(المائدة: 48)
﴿وَتِلْكَ الْأَيَّامُ نُدَاوِلُهَا بَيْنَ النَّاسِ وَلِيَعْلَمَ اللَّـهُ الَّذِينَ آمَنُوا وَيَتَّخِذَ مِنكُمْ شُهَدَاءَ ۗ وَاللَّـهُ لَا يُحِبُّ الظَّالِمِينَ (140) وَلِيُمَحِّصَ اللَّـهُ الَّذِينَ آمَنُوا وَيَمْحَقَ الْكَافِرِينَ (141) أَمْ حَسِبْتُمْ أَن تَدْخُلُوا الْجَنَّةَ وَلَمَّا يَعْلَمِ اللَّـهُ الَّذِينَ جَاهَدُوا مِنكُمْ وَيَعْلَمَ الصَّابِرِينَ (142).
’’اور یہ دن ہیں جنہیں ہم لوگوں کے درمیان پھیرتے رہتے ہیں، اور اس سے یہ بھی مقصود ہے کہ اللہ اہلِ ایمان کو جان لے اور تم میں سے بعض کو شہداء منتخب کرے ، اور اللہ ظالموں کو پسند نہیں کرتا۔ اور یہ بھی مقصود ہے کہ اللہ ایمان والوں کو (چھانٹ کر) خالص (مومن) بنا دے اور کافروں کو نابود کر دے۔ کیا تم یہ سمجھتے ہو کہ تم (یونہی بے آزمائش) جنت میں چلے جاؤ گے؟ حالانکہ ابھی اللہ نے تم میں سے جہاد کرنے والوں کو معلوم نہیں کیا ہے اور نہ ہی صبر کرنے والوں کو جانچا ہے۔‘‘(آل عمران : 140-142)
اے مسلمانو!
تم میں سے جو سمجھتا ہے کہ وہ یہود ونصاری اور کافروں کے ساتھ پرامن بقائے باہمی کے ساتھ رہ سکتا ہے اس حال میں کہ وہ اپنے دین اور توحید پر بھی قائم ہو ؛ تو اس نے اللہ تعالی کے اس فرمان کو واضح طور پر جھٹلادیا ہے جس میں اللہ تعالی نے فرمایا کہ
﴿وَلَن تَرْضَىٰ عَنكَ الْيَهُودُ وَلَا النَّصَارَىٰ حَتَّىٰ تَتَّبِعَ مِلَّتَهُمْ.
’’یہود ونصاری تم سے (اس وقت تک) ہرگز خوش نہیں ہوں گے جب تک تم ان کی ملت (ودین) کی پیروی اختیار نہ کرلو۔‘‘(البقرة2 : 120)
﴿وَلَا يَزَالُونَ يُقَاتِلُونَكُمْ حَتَّىٰ يَرُدُّوكُمْ عَن دِينِكُمْ إِنِ اسْتَطَاعُوا.
’’وہ (کافر) تم سے لڑتے رہینگے یہاں تک کہ اگر وہ استطاعت رکھیں تو وہ تم کو تمہارے دین سے پھیر ( کر مرتد بنا)دیں‘‘ (البقرة 2 : 217)
﴿مَّا يَوَدُّ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ وَلَا الْمُشْرِكِينَ أَن يُنَزَّلَ عَلَيْكُم مِّنْ خَيْرٍ مِّن رَّبِّكُمْ ۗ وَاللَّـهُ يَخْتَصُّ بِرَحْمَتِهِ مَن يَشَاءُ ۚ وَاللَّـهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ.
’’اہل کتاب میں سے کافر اور مشرکین نہیں چاہتے ہیں کہ تم پر تمہارے پروردگار کی طرف سے کوئی بھلائی نازل ہو۔ اور اللہ جسے چاہتا ہے اپنی رحمت سے مختص کردیتاہے اور اللہ بڑے فضل والا ہے۔ ‘‘ (البقرة2 : 105)
سو یہ کافروں کا مسلمانوں کے ساتھ تاقیامت یہی معاملہ رہے گا کیونکہ اللہ کی سنت ودستور کبھی تبدیل نہیں ہوتا ہے۔ کافروں کیخلاف قتال اور ہجرت وجہاد کا سلسلہ تاقیامت جاری رہے گا۔ رسول اللہﷺ نے فرمایا:
(لا تنقطع الهجرة حتى تنقطع التوبة، ولا تنقطع التوبة حتى تطلع الشمس من مغربها)
’’ ہجرت اس قت تک منقطع نہیں ہوگی جب تک توبہ منقطع نہ ہوجائے اور توبہ اس وقت منقطع ہوگی جب سورج مغرب سے طلوع ہوگا۔‘‘
آپ ﷺ نے فرمایا:
(الخيل معقود في نواصيها الخير إلى يوم القيامة الأجر والمغنم)
’’قیامت تک گھوڑے کی پیشانی کے ساتھ خیر و برکت بندھی رہے گی (یعنی آخرت میں) ثواب اور (دنیا میں) مال غنیمت ملتا رہے گا۔‘‘
آپ ﷺ نے فرمایا:
(لا تزال طائفة من أمتي يقاتلون على الحق، ظاهرين إلى يوم القيامة، فينزل عيسى ابن مريم، فيقول أميرهم تعال صلِّ لنا، فيقول: لا؛ إن بعضكم على بعض أمراء. تكرمة هذه الأمة).
’’میری امت کا ایک گروہ حق پر قتال کرتا رہے گا، روز قیامت تک غالب رہے گا، پس عیسی بن مریم علیہ السلام نازل ہوں گے، ان (مسلمانوں) کا امیر کہے گا: آیئے ہمیں نماز پڑھایئے تو عیسی علیہ السلام کہیں گے: نہیں، اس امت کو اللہ کی جانب سے دی گئی (عزت و)تکریم کی بنا پر تم ایک دوسرے پر امیر ہو۔‘‘
اے مسلمانو!
کوئی یہ نہ سمجھے کہ ہم جو جنگ لڑرہے ہیں وہ صرف دولت اسلامیہ کی جنگ ہے بلکہ یہ تمام مسلمانوں کی جنگ ہے۔ دنیا بھر میں موجود ہر مسلمان کی جنگ ہے۔ دولت اسلامیہ تو اس جنگ میں پہلے سرے پر ہے۔ یہ اہل ایمان کی اہل کفر کیخلاف جنگ ہے ۔ پس دنیا بھر میں موجود مسلمانوں کو اس جنگ کے لیے نکلنا چاہیے اور ہر بالغ مسلمان پر یہ جنگ واجب ہے۔ جو نہیں نکلے گا یا پیچھے رہے گا تو اللہ تعالی اس پر غضبناک ہوگا اور اسے دردناک عذاب دے گا۔
﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا لَقِيتُمُ الَّذِينَ كَفَرُوا زَحْفًا فَلَا تُوَلُّوهُمُ الْأَدْبَارَ (15) وَمَن يُوَلِّهِمْ يَوْمَئِذٍ دُبُرَهُ إِلَّا مُتَحَرِّفًا لِّقِتَالٍ أَوْ مُتَحَيِّزًا إِلَىٰ فِئَةٍ فَقَدْ بَاءَ بِغَضَبٍ مِّنَ اللَّـهِ وَمَأْوَاهُ جَهَنَّمُ ۖ وَبِئْسَ الْمَصِيرُ (16).
’’اے ایمان والو! جب تمہارا میدان جنگ میں کافروں سے مقابلہ ہو تو پھران سے پیٹھ نہ پھیرنا۔ اور جو شخص اس دن ان سے پیٹھ پھیرے گا، سوائے اس کے جو جنگ (ہی) کے لئے کوئی داؤ چل رہا ہو یا اپنے (ہی) کسی لشکر سے جاملنا چاہتا ہو، تو واقعتاً وہ اللہ کے غضب کے ساتھ پلٹا اور اس کا ٹھکانا دوزخ ہے، اور وہ (بہت ہی) برا ٹھکانا ہے۔‘‘(الأنفال : 15-16)
﴿إِلَّا تَنفِرُوا يُعَذِّبْكُمْ عَذَابًا أَلِيمًا وَيَسْتَبْدِلْ قَوْمًا غَيْرَكُمْ وَلَا تَضُرُّوهُ شَيْئًا.
’’اگر تم (جہاد کے لئے) نہ نکلو گے تو وہ تمہیں دردناک عذاب دے گا اور تمہاری جگہ (کسی) اور قوم کو لے آئے گا اور تم اسے کچھ بھی نقصان نہیں پہنچا سکو گے۔‘‘(التوبة : 39)
﴿وَمَن جَاهَدَ فَإِنَّمَا يُجَاهِدُ لِنَفْسِهِ ۚ إِنَّ اللَّـهَ لَغَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ.
’’اور جو شخص بھی جہاد کرے گا تو وہ اپنے نفس کے لئے جہاد کرے گا۔ اور بیشک اللہ تو سارے جہانوں سے بے نیاز ہے۔ ‘‘(العنكبوت : 6)
جو مسلمان بھی دولت اسلامیہ کی طرف ہجرت کرنے یا اپنی جگہ پر رہتے ہوئے ہی ہتھیار اٹھانے کی استطاعت رکھتا ہے تو اس کے لیے کوئی عذر نہیں۔ اس وجہ سے کہ اللہ تعالی نے اسے ہجرت وجہاد کا حکم دیا اور قتال کو اس پر فرض قرار دیا۔
ہم دنیا بھر میں کہیں بھی رہنے والے مسلمانوں کو دولت اسلامیہ کی طرف ہجرت کرنے یا پھر وہ جہاں کہیں بھی ہے، وہی قتال کرنے کے لیے نکلنے کی منادی کرتے ہیں۔
یہ مت سمجھنا کہ ہم یہ منادی کسی کمزوری یا عاجزی کی وجہ سے لگارہے ہیں۔ ہم تو اللہ کے فضل سے طاقتور ہیں اور ہم طاقتور اللہ کے ساتھ ہیں ، اس کے ساتھ ایمان لانے کے ساتھ، صرف اس سے مدد مانگنے کے ساتھ، اس کی طرف رجوع کرنے کے ساتھ، اس سے پناہ مانگنے کے ساتھ ،صرف اس وحدہ لاشریک لہ پر توکل کرنے کے ساتھ اور اس کے ساتھ اچھا گمان رکھنے کے ساتھ طاقتور ہیں۔
اس وجہ سے کہ یہ معرکہ رحمن کے اولیاء اور شیطان کے اولیاء کے درمیان ہے۔ اللہ تعالی ضرور بالضرور اپنے سپاہیوں کی مدد کرے گا، اپنے بندوں کو زمین کا وارث بنائے گا اور اپنے دین کی حفاظت کرے گا۔ اگر چہ دن بدلتے رہینگے اور کبھی ایک ڈول اِن پر اور کبھی اُن پر پڑے گا اور دونوں فریقین کو زخم لگیں گے۔
اے مسلمان ! ہم تمہیں جہاد کے لیے نکلنے کی منادی کسی کمزوری یا عاجزی کی وجہ سے نہیں لگارہے ہیں بلکہ تمہاری خیر خواہی چاہتے ہوئے اور تم پر شفقت کرتے ہوئے لگارہے ہیں ۔ ہم تو صرف تمہیں یاد دہانی کرارہے ہیں تاکہ تم اللہ کے غضب ، اس کے عذاب اوراس کی سزا سے بچ سکو۔ نیز دنیا وآخرت کے اس خیر وبھلائی سے تم محروم نہ رہ سکو ، جس کو اللہ کی راہ میں جہاد کرنے والے مجاہدین سمیٹ رہے ہیں کہ گناہوں کو معاف کروانا، نیکیاں حاصل کرنا، درجات کو بلند کروانا، اللہ تعالی کاتقرب حاصل کرنا اور نبیوں ،صدیقوں، شہداء اور صالحین کی رفاقت کو پانا۔
ہم تمہیں منادی اس لیے لگارہے ہیں تاکہ تم ذلت ورسوائی ،کمزوری، تابعداری ، بیکار، فراغت اور غربت کی زندگی سے نکل کر عزت، شرف ، خود مختاری اور فراخی والی زندگی کی طرف آجاؤ۔
﴿وَأُخْرَىٰ تُحِبُّونَهَا ۖ نَصْرٌ مِّنَ اللَّـهِ وَفَتْحٌ قَرِيبٌ.
’’اور ایک (نعمت تمہیں) اور (دے گا) جسے تم بہت چاہتے ہو، (وہ) اللہ کی جانب سے مدد اور جلد ملنے والی فتح ہے۔‘‘(الصف : 13)
اے مسلمانو!
اسلام ایک دن بھی سلامتی کا دین نہیں تھا۔ اسلام تو قتال کا دین ہے۔ تمہارے نبیﷺ کو دونوں جہانوں کے لیے رحمت بناکر تلوار کے ساتھ مبعوث کیا گیا تھا اور آپ ﷺ کو حکم دیا گیا کہ قتال کرتے رہو یہاں تک کہ صرف ایک اللہ کی عبادت کی جائے۔ اسی وجہ سے آپ ﷺ نے اپنی قوم کے مشرکین کو مخاطب کرکے فرمایا تھا:
(جئتكم بالذبح)
’’میں تمہیں ذبح کرنے کے لیے آیا ہوں۔‘‘
آپ ﷺ نے عرب وعجم، گورے اور کالے سے قتال کیا۔ آپ ﷺ خود کئی غزوں میں نکلے اور آپﷺ نے کئی معرکیں لڑے۔ مگر آپ ﷺ جنگ میں ایک دن بھی سست نہیں پڑے۔ یہاں تک کہ روم سے قتال کرنے کے لیے آپﷺ تبوک کی طرف اس حال میں نکلے کہ آپﷺ کی عمر ساٹھ 60 برس سے تجاوز کرچکی تھی۔ آپﷺ نے وفات بھی اس حال میں پائی کہ آپﷺ اسامہ رضی اللہ عنہ کا لشکر تیار کررہے تھے۔ آپﷺ کی آخری وصیتوں میں سے ایک وصیت یہ تھی ۔
(انفذوا بعث أسامة)
’’ اسامہ! کے لشکر کو روانہ کرو۔‘‘
آپ ﷺ کے بعد آپ کے صحابہ کرام اور تابعین بھی نہ نرم پڑیں اور نہ ہی انہوں نے کسی مصلحتوں اور سمجھوتے کو اختیار کیا یہاں تک کہ وہ زمین کے مالک بن گئے اور مشرق ومغرب کو فتح کرلیا۔ تلوار کی دھار پر قومیں ان کے سامنے جھک گئیں اور ممالک ان کے تابعدار ہوگئے۔یہی حال ان کے نقش قدم پر چلنے والوں کا تاقیامت ہوگا۔
آپ ﷺ نے قرب قیامت ہونے والی جنگوں کے بارے میں ہمیں بتاتے ہوئے بشارت دی اور ہم سے وعدہ کیا کہ ہم ہی اس میں کامیاب ہونگے۔ آپﷺ صادق المصدوق ہے۔
آج ہم ان جنگوں کے آثار کو دیکھ رہے ہیں اور ان سے اٹھنے والے کامیابی کی ہواؤں کو سونگھ رہے ہیں۔اگرچہ صلیبی اس وقت یہ دعوی کررہے ہیں کہ وہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنانے سے گریز کررہے ہیں اور صرف عسکریت پسندوں کو نشانہ بنانے پر اکتفاء کررہے ہیں ؛ عنقریب تم خود دیکھوگے کہ یہ ہر جگہ پر تمام مسلمانوں کو نشانہ بنائینگے۔
اگر چہ صلیبیوں نے آج صلیبی ممالک میں رہنے والے مسلمانوں کا گھیراؤ کرنے، ان کی نگرانی کرنے ، ان کو گرفتار کرنے اور ان سے تفیش کرنے کا سلسلہ شروع کررکھا ہے ؛ عنقریب تم خود دیکھوگے کہ یہ تم کو اغواء کرتے ہوئے قتل یا قیدی یا تم کو جلاوطنی کا شکار کرینگے اور اپنے بیچ صرف ان کو رہنے دینگے جو اپنے دین سے پھیرتے ہوئے ان کی ملت ودین کو اختیار کرچکے ہونگے۔
﴿فَسَتَذْكُرُونَ مَا أَقُولُ لَكُمْ ۚ وَأُفَوِّضُ أَمْرِي إِلَى اللَّـهِ
’’پس تم عنقریب یاد کرو گے (وہ باتیں)جو میں تم سے کہہ رہا ہوں، اور میں اپنا معاملہ اللہ کے سپرد کرتا ہوں۔‘‘(غافر : 44)
اے مسلمانو!
یہود ونصاری اور کفار تم سے کبھی راضی نہیں ہوسکتے اور تمہارے خلاف قتال کرنا نہیں چھوڑسکتے یہاں تک کہ تم ان کی ملت (ومذہب) کو اختیار کرلو اور اپنے دین سے مرتد ہوجاؤ۔
یہ بات تمہارے پروردگار کا کلام کہہ رہا ہے اور اس کی خبر تمہارے نبی صادق المصدوق ﷺ نے دی ہے۔
امریکہ اور اس کے اتحادی ، صلیبی ، شیعہ ، سیکولر ، ملحد اور مرتدین یہ دعوی کرتے ہیں کہ ان کا یہ اتحاد اور ان کی یہ جنگ کمزوروں ومظلوموں کی مدد کے لیے، مسکینوں کی نصرت کے لیے، متاثرین کی امداد کرنے کے لیے ، مصیبت زدوں کی مدد کرنے کے لیے، غلامی کو آزادی دلوانے کے لیے، بیگناہوں اور پر اپن رہنے والوں کو بچانے اور ان کے خون کو محفوظ بنانے کے لیے ہے۔
وہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ حق ، بھلائی اور عدل والے گروہ میں ہیں اور مسلمانوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہوکر باطل ، برائی اور ظلم کیخلاف جنگ لڑرہے ہیں۔
بلکہ وہ تو یہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ یہ جنگ اسلام اور مسلمانوں کے دفاع کے لیے لڑرہے ہیں۔
آگاہ رہو! یہ جھوٹ بولتے ہیں اور اللہ اور اس کے رسول ﷺ نے جو کہا وہی سچ ہے۔
ا ے مسلمانو!
جو طواغیت تمہارے ملکوں پر حرمین، یمن، شام ، عراق ، مصر ، مراکش ، خراسان ، قوقاز، ہندستان، افریقہ اور دیگر ملکوں پر حکمرانی کررہے ہیں ، وہ سب کے سب یہود اور صلیبیوں کے اتحادی ہیں بلکہ وہ ان کے غلام ونوکر اور ان کے پیرے دار کتوں سے زیادہ کچھ نہیں ہیں ۔ یہودی اور صلیبی جن افواج کو تیار کررہے ہیں، ٹریننگ اور اسلحہ دیں رہے ہیں وہ سب تمہاری نسل کشی کرنے ، تمہیں کمزور بناتے ہوئے یہود اور صلیبیوں کا غلام بنانے، تمہیں تمہارے دین سے پھیرنے، تم کو اللہ کی راہ سے روکنے، تمہارے ملکوں کے ذخائر لوٹنے اور تمہارے اموال کو غصب کرنے کے لیے ہیں۔
یہ ساری حقیقت اب کھل کر دن دیہاڑے سورج کی روشنی کی طرح عیاں ہوچکی ہے اور اس کا انکار صرف وہی کرے گا جس کا نور اللہ تعالی نے مٹادیا ہو ، جس کو بصیرت سے اندھا کردیا ہو اور جس کے دل پر مہر لگادی ہو۔
آج جزیرۃ (خلیج) کے حکام کے طیارے یہودیوں کو کیوں نشانہ نہیں بنارہے ہیں جو ہمارے رسول ﷺ کے جائے معراج (مسجد اقصی) کو پامال کررہے ہیں اور اہل فلسطین مسلمانوں کو روزانہ بدترین مصیبتوں وعذابوں سے دوچار کررہے ہیں۔
آل سلول (آل سعود) اور ان کے اتحادی ان ایک ملین مسلمانوں کی مدد کرنے سے کہاں ہیں، جنہیں برما میں ان کی پوری نسل کے ساتھ ملیامیٹ کیا جارہا ہے ؟
ان کی حمیت نصیریوں کے باردی ڈرموں اورتوپوں کی بابت کہاں چلی گئی ہیں ، جب وہ مسلمانوں کے گھروں کو ان میں رہنے والے بچوں، عورتوں اور کمزوروں کے سروں پر حلب، ادلب، حماۃ ، حمص اور دمشق وغیرہ میں نشانہ بنارہے ہیں۔
الجزیرۃ کے حکمرانوں کی غیرت ان خواتین کی بابت کہاں ہیں، جنہیں شام وعراق اور مسلمانوں کے دیگر ملکوں میں روزانہ عصمت دری کا نشانہ بنایا جارہا ہے؟
مکہ اور مدینہ کے حکمران چین اور بھارت کے مسلمانوں کی مدد سے کہاں ہیں، جنہیں ہندو روزانہ جلانے، قتل کرنے، عصمت دری کرنے، چیر پھاڑنے، لوٹنے، غصب کرنے اور قیدی بنانے سمیت مختلف جرائم کا نشانہ بنارہے ہیں۔
وہ انڈونیشیا، قوقاز، افریقہ ، خراسان اور دیگر تمام جگہوں پر مدد کرنے سے کہاں ہیں؟
الجزیرۃ کے حکمران بے نقاب ہوچکے ہیں ، ان کے برے ارادے ظاہر ہوچکے ہیں، وہ اپنی قانونی حیثیت کھوبیٹھے ہیں اور مسلم عوام تک ان کی خیانتوں سے واقف ہوچکی ہے۔ اب ان کی حقیقت کھل کر سامنے آگئی ہیں اور اب ان کی صلاحیتیں ان کے یہودی وصلیبی آقاؤں کے لیے ختم ہوچکی ہیں۔ اس لیے اب ان کی جگہ صفوی روافضہ اور ملحد کردیوں کو تبدیل کرکے لایا جارہا ہے۔ آل سلول (آل سعود) نے جب محسوس کیا کہ ان کے آقاؤں نے ان کو چھوڑدیا ہے اور ان کو گیلے جوتوں کی طرح پھینک کر ان کی جگہوں پر اوروں کو لایا جارہا ہے تو انہوں نے یمن میں (شیعی حوثی) روافضہ پر اپنی خودساختہ جنگ شروع کی ۔ یہ فیصلہ کن طوفان نہیں ہے بلکہ یہ اللہ کے حکم سے جھگڑنے والے کا اپنی موت سے پہلے آخری سانسوں میں ٹانگیں مارنا ہے۔ یہودیوں کے اتحادی اور صلیبیوں کے غلام سلولی (آل سعود) کبھی نہیں چاہتے ہیں کہ مسلمانوں پر ان کے رب کی طرف سے کوئی بھلائی نازل ہو۔
آل سلول کئی دہائیوں تک دنیا میں عمومی طور پر اور فلسطین میں خصوصی طور مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کو کوئی اہمیت نہیں دیتے تھے۔ پھر کئی برس تک وہ عراق میں اہل سنت کیخلاف جنگ میں (شیعی) روافضیوں کے اتحادی بنے رہے ۔پھر کئی برس تک شام میں قتل وغارت گری اور تباہی پھیلانے والے ڈرموں (کی بمباری) کا نظارہ کرتے رہے اور نصیریوں کے ہاتھوں مسلمانوں کے قتل ، ان کو جلانے، ان کو قیدی بنانے، ان کی عزتوں کو لوٹنے ، ان کے اموال کو چرانے اور ان کے گھروں کو تباہ ہونے کے مناظر دیکھ کر لطف اندوز اورخوشی ولذت محسوس کرتے رہے ۔ پھر آج جاکر وہ یمن میں شیعی روافضیوں کیخلاف اہل سنت کا دفاع کرنے کا دعوی کرتے ہیں۔
خبردار! یہ جھوٹے ہیں اور ناکام ونامراد ہیں۔ (یمن میں) یہ سب کچھ اس لیے کررہے ہیں تاکہ اپنے یہودی اور صلیبی آقا کے سامنے اپنے وجود (اورویلیو) کو دوبارہ ثابت کرنے کی کوشش کرسکے اور مسلمانوں کو اس دولت اسلامیہ سے روکنے کی کوشش کرسکے جس کی آواز دنیا بھر میں اونچی ہوچکی ہے اور اس کی حقیقت تمام مسلمانوں کے سامنے واضح ہوچکی ہے۔ جس کی وجہ سے تمام مسلمان آہستہ آہستہ دولت اسلامیہ کے گرد اکھٹے ہونا شروع ہوگئے ہیں۔
یہ تو وہمی طوفان ہے جس کا آغاز اس وقت کیا گیا جب روافضیوں کی آگ نے ان کے عرشوں کو جھلسادیا تھا اور وہ پیش قدمی کرتے ہوئے جزیرۃ العرب میں ہمارے اہل خانہ تک پہنچ چکے تھے، جس کانتیجہ یہ نکل رہا تھا کہ الجزیرۃ میں عام مسلمانوں نے دولت اسلامیہ کے اردگرد جمع ہونا شروع کردیا تھا کیونکہ دولت اسلامیہ ان کا دفاع کررہی ہے۔ اس چیز نے آل سلول اور الجزیرۃ کے حکام کو خوف میں مبتلا کردیا اور ان کے قلعوں کو ہلا کر رکھ دیا۔ یہ ان کے خودساختہ طوفان (آپریشن) کی اصل حقیقت ہے اور یہی (طوفان آپریشن) اللہ کے حکم سے ان کے ختم ہونے کا سبب بنے گا۔ ان کے اختتام کا وقت قریب ہے۔ ان شاء اللہ ۔ آل سلول اور جزیرۃ کے حکمران نہ اہل جنگ ہیں اور نہ ہی وہ جنگ پر صبر رکھتے ہیں بلکہ وہ تو عیاشی ، طبلے بجانے، بدکاری ، نشے، ڈانس اور تقریبات (میں کھانے پینے) والے ہیں جو اپنی حفاظت کا بندوبست یہودیوں اور صلیبیوں سے کرانے کے عادی ہوچکے ہیں اور ان کے دلوں میں ذلت ورسوائی اور ایجنٹ گری رچ بس چکی ہے۔
اے دنیابھر میں موجود مسلمانو!
اب وقت آگیا ہے کہ تم اس جنگ کی حقیقت کو پہچانو اور اور اپنے ملکوں کی حکمرانوں کی طرف دیکھو کہ وہ کس سمت میں کھڑے ہیں اور کس گروہ کی طرف نسبت رکھتے ہیں۔
اے اہل سنت ! اب وقت آگیا ہے کہ تم جان لو کہ صرف تم ہی اصل نشانہ ہو اور جنگ صرف تمہارے خلاف اور تمہارے دین کیخلاف ہے۔
اب وقت آگیا ہے کہ تم اپنے دین اور جہاد کی طرف واپس پلٹو تاکہ اپنی عزت وشرف ، اپنے حقوق اور اپنی خودمختاری کو دوبارہ پاسکو۔
اے مسلمانو! اب وقت آگیا ہے کہ تم جان لو کہ تمہارے لیے کوئی امن ، کوئی خود مختاری، کوئی شرف، اور کوئی حقوق نہیں ہے سوائے خلافت کے سائے تلے ۔
ہمیں بہت افسوس ہوتا ہے اور ہمارے دل غم سے کانپ اٹھتے ہیں جب ہم دیکھتے ہیں کہ اہل سنت کی خواتین، ان کے بچے اور ان کے خاندان عراق میں ان علاقوں کی طرف پناہ گزین ہونے کے لیے رخ کرتے ہیں جو روافضیوں اور ملحد کردیوں کے زیر کنٹرول ہیں۔ پھر وہ ان کے دروازوں پر توہین وتذلیل اور دربدری کی ٹھوکرے کھاتے ہیں ۔ ولا حول ولا قوۃ الا باللہ
ان مسلمانوں کی ہونے والی تذلیل اور دربدی کا گناہ وہ طواغیت کے مددگار علمائے سوء اٹھائینگے جو جہنم کے دروازوں کے داعیان ہیں اور جنہوں نے ان مسکینوں پر معاملہ خلط وملط کرتے ہوئے ان کو یہ تصور دیا کہ دولت اسلامیہ ہی برائی کا سبب اور آزمائش کی وجہ ہے۔ اگر یہ (دولت اسلامیہ والے) نہ ہوتے تو تم امن وامان، خوشحالی اور سلامتی سے رہ رہے ہوتے ۔ یہ علمائے سوء ان کو یہ تصور دیتے ہیں کہ صلیبی، روافضہ(شیعہ)، ملحدین اور مرتدین تو بھلائی، عدل ،رحمت اور شفقت کرنے والے ہیں اور یہی تو مسلمانوں کا دفاع کرنے والے پرامن پسند ہیں۔ واقعی ! یہ دھوکے والے سال ہیں ۔
اے عراق میں اہل سنت!
بالخصوص انبار میں ہمارے اہل خانہ!
تم یہ یقین رکھو کہ تمہارا اپنے علاقوں اور گھروں کو چھوڑ کر روافضہ اور ملحد کردیوں کے علاقوں کی طرف جانے اور ملک میں دربدری کا شکار ہونے کو دیکھ کر ہمارے دل خون کے آنسو روتے ہیں۔ اگر تمہارے بعض رشتے دار صلیبیوں کے دوست اور اللہ کے دین سے جنگ کرنے والے مرتدین ہیں تو ہم ان کے جرموں کی سزا تم کو نہیں دینگے۔ اس لیے تم اپنے علاقوں میں واپس لوٹ آؤ اور اپنے گھروں کو لازم پکڑو۔ اللہ تعالی کے بعد تم دولت اسلامیہ میں اپنے اہل خانہ کے پاس پناہ لو۔ اللہ کے حکم سے تم وہاں نرم مسکن اور محفوظ پناہ گاہ پاؤگے۔ تم ہمارے اہل خانہ ہو اور ہم تمہارا اور تمہاری عزتوں واموال کا دفاع کرینگے ۔ ہم تمہاری عزت وکرامت چاہتے ہیں اورتمہاری امن وسلامتی اور جہنم سے نجات چاہتے ہیں۔
پس اللہ کے بعد دولت اسلامیہ کی طرف رجوع کرو ۔ اب تم کس چیز کا انتظار کررہے ہو۔ (شیعی) روافضیوں کی حقیقت دن سے بھی زیادہ واضح ہوچکی ہے اور آج تم دیکھ ہی رہے ہو کہ بغداد ودیگر علاقوں میں وہ ہر اس شخص کو ذبح کررہے ہیں جو اہل سنت کی طرف نسبت رکھتا ہے۔ ان شیعوں کے ہاتھوں سے اہل سنت کے مرتدین ــ صحوات، پولیس اور فوج میں موجود ــ ان کے اپنے اتحادی، ان کے مددگار، ان کے ساتھی اور ان کے کتے بھی محفوظ نہیں رہ سکے ، جو دولت اسلامیہ کے علاقوں میں شریعت کی حکمرانی سے بھاگنے کی وجہ سے ذلت ورسوائی کے ساتھ دربدری کی ٹھوکریں کھارہے ہیں اور خوف کا شکار ہوکر ہر وقت انتظار کررہے ہیں کہ (کب ان کی باری آتی ہے اور شیعی ) روافضی ان کی پکڑ کرتے ہیں۔
دوسری طرف مسلمان دولت اسلامیہ کے علاقوں میں اللہ کے فضل کے ساتھ اپنی عزت وکرامت کے ساتھ پر امن اور فراخی والی زندگی گزاررہے ہیں ۔ وہ اپنے کاموں ، اور اپنے معاشی وتجارتوں کے لیے آ جارہے ہیں اور اپنے رب کی شریعت کی حکمرانی تلے نعمتوں سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔ وللہ الحمد
پس اے مسلمانو ! اللہ کے بعد اپنی مملکت کی طرف واپس پلٹو۔
ہم روافضہ اور صلیبیوں کی صفوں میں باقی رہ جانے والے فوج، پولیس اور صحوات کو ایک مرتبہ پھر دعوت دیتے ہیں کہ وہ اللہ کے آگے توبہ کریں، مسلمانوں کیخلاف کافروں کی مدد کرنا چھوڑدیں۔ شاید کہ اللہ تعالی ان کی توبہ قبول کرتے ہوئے ان کو معاف فرمادے اور وہ جہنم سے بچ جائیں۔ پس تم توبہ کرنے میں جلدی کرو کیونکہ توبہ کا دروازہ اس وقت تک بند نہیں ہوگا جب تک سورج مغرب سے طلوع نہیں ہوجاتا ۔ توبہ کرو شایدکہ تم وقت کے ہاتھ سے نکل جانے سے پہلے اپنی آخرت کی فکر کرلو۔ تم دنیا تو ضائع کر بیٹھے ہو مگر دنیا کے ساتھ آخرت کو دوسرے لوگوں کی دنیا کی خاطر ضائع مت کرو۔ توبہ کرلو ، قبل اس کے کہ مجاہدین کے ہاتھ تم تک پہنچ جائے اور پھر اس وقت تمہارے لیے کوئی توبہ نہیں ہے اور تم دنیا وآخرت کو ضائع کرچکے ہوگے۔
توبہ کرو، واپس پلٹ آؤ اور اپنے اہل خانہ کی طرف لوٹ آو۔ تم ہمیں اپنے ساتھ رحم دل پاؤ گے۔ تمہاری توبہ ہمیں تمہارے قتل یا تم کو جلاوطن کرنے سے زیادہ محبوب ہیں۔ توبہ کرو اور یاد رکھو کہ ہم تم کو کمزوری سے یہ دعوت نہیں دیں رہے ہیں۔ ہم تم کو اس حال میں توبہ کی دعوت دیں رہے ہیں جب ہماری تلواریں تمہاری گردنوں سے صرف دو کمان یا اس سے بھی کم فاصلے پر رہ گئی ہے ۔ اگر تم توبہ کروگے تو تم ہم سے خیر واحسان کے سوا کچھ نہیں پاؤگے۔
اے دولت اسلامیہ کے سپاہیو!
ثابت قدم رہو، بیشک تم ہی حق پر ہو۔ صبر سے مدد طلب کرو کیونکہ کامیابی صبر کے ساتھ ہی ہے۔ غلبہ اسی کے لیے ہے جو صبر کرتا ہے۔ پس صبر کرو ۔ صلیبی زوال پذیر ہورہے ہیں اور روافضی (شیعہ) لڑکھڑارہے ہیں جبکہ یہودی خوف کے مارے کانپ رہے ہیں۔ اللہ کے فضل سے تمہارا دشمن ماضی کی نسبت آج زیادہ کمزور ہوچکا ہے اور دن بدن کمزور سے کمزور تر ہوتا چلا جارہا ہے۔ الحمدللہ
جبکہ تم اللہ کے فضل سے طاقتور ہوچکے ہو اور اس پر کوئی فخر نہیں۔ تم اللہ کے فضل سے طاقتور سے طاقتور ہوتے چلے جارہے ہو۔ پس صبر کرو اور دونوں کامیابیوں (فتح یا شہادت) میں سے ایک کامیابی یقینی ہے۔ یہ ایک ہی جان ہے ، پس اسے اللہ کی راہ میں سستا کرتے ہوئے قربان کرو۔
﴿إِنَّ اللَّـهَ اشْتَرَىٰ مِنَ الْمُؤْمِنِينَ أَنفُسَهُمْ وَأَمْوَالَهُم بِأَنَّ لَهُمُ الْجَنَّةَ ۚ يُقَاتِلُونَ فِي سَبِيلِ اللَّـهِ فَيَقْتُلُونَ وَيُقْتَلُونَ ۖ وَعْدًا عَلَيْهِ حَقًّا فِي التَّوْرَاةِ وَالْإِنجِيلِ وَالْقُرْآنِ ۚ وَمَنْ أَوْفَىٰ بِعَهْدِهِ مِنَ اللَّـهِ ۚ فَاسْتَبْشِرُوا بِبَيْعِكُمُ الَّذِي بَايَعْتُم بِهِ ۚ وَذَٰلِكَ هُوَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ.
’’بیشک اﷲ نے مومنوں سے ان کی جانیں اور ان کے مال، ان کے لئے جنت کے عوض خرید لئے ہیں، (اب) وہ اللہ کی راہ میں قتال کرتے ہیں، سو وہ قتل کرتے ہیں اور قتل بھی کئے جاتے ہیں۔ یہ تورات اور انجیل اور قرآن میں سچا وعدہ ہے جس کا پورا کرنااسے ضروری ہے اور الله سے زیادہ وعدہ پورا کرنے والا کون ہے۔ جو سودا تم نے اس سے کیا ہے بس اس سے خوش رہو اور یہ بڑی کامیابی ہے۔‘‘(التوبة : 111)
میں اپنی گفتگو کو عقیدہ کے کاٹنے والے شیروں کی تعریف کیے بغیر ختم نہیں کروں گا۔
بغداد کے شمال اور اس کے جنوب میں موجود خلافت کے سپاہی ، جنہوں نے انگاروں کو ہاتھوں میں تھاما ہوا ہے، جو چٹانوں سے بھی زیادہ سخت ہیں اور جو (شیعی ) روافضیوں کی ناکوں کو ان کے ہی علاقوں اور قلعوں میں روزانہ خاک میں ملارہے ہیں۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ اللہ ہی تم کو اجر سے نوازے۔
بلاشبہ تم سے ہر ایک کو ہم ایک ہزار کے برابر سمجھتے ہیں۔ اگر مسلمان تمہاری کارروائیوں اور تمہارے کارناموں سے ناواقف ہیں ؛ تو تمہارے لیے یہی کافی ہے کہ اللہ تعالی سے زمین اور آسمان میں کوئی چیز مخفی نہیں ہے۔
میں توحید کے بہادروں ، اسلام کے ہیروز اور دلیر مجاہدین انصار ومہاجرین کی تعریف کرتا ہوں جو شمال میں اہل سنت کے قلعے سمجھے جانے والے سخت بیجی میں موجود ہیں، اور جو خوددار کرکوک میں کفری ملتوں کے مسلمانوں کیخلاف تشکیل دیئے جانے والے (عالمی)اتحاد سے مقابلہ کرنے میں مصروف ہیں، جنہوں نے ثابت کردیا کہ دولت اسلامیہ کے قدم سب سے بھاری قدم ہیں اور اس کی آواز سب سے بلند آواز ہے۔ انہوں نے اپنے خون اور اپنے چیتھڑوں کو اس پر دلائل کے طور پر پیش کیا اور اپنی جانوں کو اسلام کے دفاع کے لیے سستا کرکے قربان کیا، جنہوں نے امریکہ، یورپ ، آسٹریلیا اور کینیڈا میں موجود یہودیوں اور صلیبیوں کو ایسا بنادیا ہے کہ وہ راتوں کو اس حال میں سوتے ہیں کہ ان کے دل غیظ وغضب سے بھرے ہوتے ہیں، عاجزی نے ان کے کندھوں کو چور چور کردیا ہے اور رعب نے ان کی نیندیں حرام کردی ہیں۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔
تم نے ثابت کردیا کہ مسلمان کبھی بھی شکست سے دوچار نہیں ہوتے ہیں جب تک وہ اس کتاب (قرآن) اور تلوار کو تھامے رکھتے ہیں، جن دونوں کے ساتھ ہمارے نبی ﷺ کو مبعوث کیا گیا۔ پس تم ثابت قدم رہو۔ تم پر میری جان قربان ہو۔ ثابت قدم رہو ، پس عراق میں (شیعی ) روافضہ اور اس کے اتحادیوں پر تمہاری کارروائیوں سے صرف صلیبی ہی زوال پذیر اور خلافت کی بنیادیں مضبوط نہیں ہورہی ہیں بلکہ شام اور یمن میں نصیری اور حوثیوں کا بھی خاتمہ ہورہا ہے۔
میں انبار میں الولاء والبراء کے شیروں اور جھپٹا مارنے والوں کی تعریف کرتا ہوں ، جنہوں نے مرتدین کے محفوظ قلعوں کو منہدم کردیا اور انہیں ذلت ورسوائی کے مختلف جام پلاتے ہوئے ان کو چیر پھاڑا اور انہیں دربدری کا شکار کردیا ؛جنہوں نے انبار کو مرتدین کی آنکھوں اور (شیعی) روافضہ کی گردنوں سے نکالتے ہوئے چھین لیا اور امریکہ اور اس کے اتحادیوں کی ناک خاک آلود کرکے اس کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔اللہ تم کو اجر دے۔ اللہ تم کو اجر دے۔
تم نے دنیا کو یہ اسباق ذہن نشین کرادیئے ہیں کہ عزت صرف اللہ ، اس کے رسول اور مومنین کے لیے ہیں۔ ثابت قدم رہو۔ اللہ تم کو اجر دے۔ ان شاء اللہ اگلی ملاقات گاہ (ہدف) کربلاء وبغداد ہے۔
میں عزت وخوددار سیناء میں موجود خلافت کے شیر موحدوں کی تعریف کرتا ہوں ، جنہوں نے پرامن پسند جدوجہد کے ساتھ کفر کیا، عزت وشرف اور مردانگی کے راستے کو اختیار کیا، ذلت وعاجزی کو ٹھکرادیا اور اپنے خون وجان کو دین کے لیے وقف کردیا۔اللہ ہی تم کو اجر دے ۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ تم کو اللہ ہی کافی ہے اور وہی تمہارا شمار ان لوگوں میں کریں، جن کے بارے میں اس نے فرمایا :
﴿رِجَالٌ صَدَقُوا مَا عَاهَدُوا اللَّـهَ عَلَيْهِ.
’’کتنے ہی ایسے جواں مرد ہیں کہ جنہوں نے اللہ سے کیا ہوا عہد کو سچ کر دکھایا۔ ‘‘(الأحزاب : 23)
ہم اللہ سبحانہ وتعالی سے دعا گوہیں کہ عنقریب ہم تم کو بیت المقدس میں دیکھیں۔ اللہ کے ہاں تمہارے اجر کو اکٹھا کرنے کے لیے یہی کافی ہے کہ تم سے خوف ورعب کے مارے یہودیوں کی نیندیں حرام ہیں۔
میں الرقہ ، موصل ، حلب ، دجلہ ، الفرات، الجزیرۃ ، البرکہ ، الخیر ، حمص اور حماہ میں موجود خلافت کے شیر مجاہدین کی تعریف کرتا ہوں۔ اللہ تعالی تم کو اجر سے نوازے ۔ تم جنگوں کو برپا کررہے ہو اور اسلام کی عزت واپس لارہے ہو۔ پس صبر کرو ، ثابت قدم رہو اور اپنی احتیاط کو اختیار کرو۔ اللہ کے دشمن جھاگ کی طرح اکھٹے ہورہے ہیں ، گرج رہے ہیں اور اہل موصل کو دھمکیاں دیں رہے ہیں۔ لیکن ہم سمجھتے ہیں کہ وہ موصل سے پہلے الرقہ اور حلب کیخلاف اکھٹے ہو(کر یلغار کر)نا چاہتے ہیں۔ پس احتیاطی تدابیر اختیار کرو۔
میں دمشق اور دیالی میں موجود خلافت کے شیروں کی تعریف کرتا ہوں ، جو صبر کرنے والے ، ڈٹ جانے والے اور پلٹ کر جھپٹنے والے ہیں۔ اللہ تم کو اجر دے۔ اللہ تم کو اجر سے نوازے۔ وہ امت کبھی شکست خوردہ نہیں ہوسکتی ہے جس میں تم جیسے موجود ہو۔
میں لیبیا، الجزائر اور تونس میں خلافت کے سپاہی ہیروز اور بہادروں کی تعریف کرتا ہوں۔ اللہ تم کو اجر دے ۔ ثابت قدمی اختیار کرو اور صبرو کرو کیونکہ آخری نتیجہ وانجام اللہ کے حکم سے تمہارے ہی لیے ہیں۔
میں خراسان اور مغربی افریقہ میں موجود دولت اسلامیہ کے سپاہی مجاہدین کی تعریف کرتا ہوں، ہم ان کو بیعت کرنے پر مبارکباد دیتے ہیں، ہم اللہ تعالی سے دعا کرتے ہیں کہ وہ ان کو ثابت قدمی عطا کرے، ان کو فتح نصیب کرے اور انہیں استحکام بخشے۔ اللہ تعالی ہی ان کو اجر دے۔
میں یمن میں موجود خلافت کے سپاہیوں کی تعریف کرتا ہوں ۔ ہم ان کو (زبردست جہادی کارروائیوں کے ساتھ ہونےوالے) ان کے آغازی اقدام پر مبارکباد دیتے ہیں اور ہم ان سے مزید کا انتظار کررہے ہیں۔ اللہ تعالی ان کو اجر دے۔
اس موقع پر میں دنیا بھر کے طاغوتوں کی جیلوں میں اسیر مسلمان قیدیوں کو ذکر کرنا نہیں بھولوں گا اور ان سے کہتا ہوں :
ہم نے تمہیں کبھی ایک دن بھی نہیں بھلایا ہے اور نہ ہی ہم کبھی تم کو بھلائینگے۔ ان شاء اللہ
ہم اللہ کے حکم سے اپنی توانائی لگاتے ہوئے پوری جدوجہد کرینگے اور کوئی موقع نہیں جانے دینگے یہاں تک ہم تمہارے آخر تک سب کو اللہ کے حکم سے رہا نہ کرالیں۔ پس صبر کرو اور ثابت قدم رہو۔
بالخصوص ان طالب علموں کو جو آل سلول (آل سعود) اور اس کے مددگاروں ــ اللہ ان کو ذلیل کرے ــ کی جیلوں میں قید ہیں۔
اے اللہ! کتاب کو نازل کرنے والے، جلد حساب لینے والے! اے اللہ ! ان (اتحادی)جتھوں کو شکست سے دوچار کردے ۔ اے اللہ ان کو ہزیمت دے اور ان پر زلزلہ برپا کردے۔ اے اللہ! ہمیں ان پر کامیابی عطا فرمادے۔
اے اللہ ! تو ہی امریکہ اور اس کے اتحادی صلیبیوں ، یہودیوں، (شیعی)روافضیوں ، مرتدین اور ملحدین کی پکڑ فرما۔ اے ہمارے رب ! ان کے اموال کو غارت کردے اور ان کے دلوں کو سخت فرمادے کہ یہ نہیں ایمان لیکر آئے یہاں تک کہ دردناک عذاب کو دیکھ نہ لیں۔
ہمارے پروردگار!ہمارے گناہوں کو اور ہم سے اپنے معاملات میں سرزد ہونے والی بے اعتدالیوں کو معاف فرمادے اور ہمارے قدموں کو جمادے اور کافر قوم پر ہمیں فتح عطا کردے۔
ہماری آخری بات یہ ہے کہ تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے۔
*** *** ***
 

allahkebande

Minister (2k+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.

بسم الله الرحمن الرحيم

ادارہ الفرقان برائے نشر واشاعت
furqan-small2.jpg
پیش کرتا ہے:
مولانا امیر المومنین ابوبکر الحسینی القرشی البغدادی
حفظہ اللہ کا بیان
بعنوان:
﴿انفِرُوا خِفَافًا وَثِقَالًا
’’نکلو چاہے تم ہلکے ہو یا بوجھل ‘‘
إن الحمد لله نحمده ونستعينه ونستغفره، ونعوذ بالله من شرور أنفسنا وسيئات أعمالنا، من يهده الله فلا مضل له، ومن يضلل فلا هادي له.
وأشهد أن لا إله إلا الله وحده لا شريك له، وأشهد أن محمدًا عبده ورسوله.
"بلاشبہ تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں، ہم اسی کی حمد بیان کرتے ہیں، اور ہم اسی سے مدد طلب کرتے ہیں، اور ہم اسی سے بخشش طلب کرتے ہیں۔ ہم اللہ تعالی سے اپنے نفسوں کی شرارتوں اور اپنے برے اعمال کی پناہ مانگتے ہیں۔ جسے اللہ ہدایت دیدے اسے کوئی گمراہ کرنے والا نہیں اور جسے اللہ گمراہ کردے اسے کوئی ہدایت دینے والا نہیں۔
اور میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں ہے ، وہ اکیلا ہے اس کا کوئی شریک نہیں ہے، اور میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد (ﷺ) اس کے بندے اور اس کے رسول ہیں ۔ اما بعد ؛"
اللہ عزوجل نے فرمایا:
﴿كُتِبَ عَلَيْكُمُ الْقِتَالُ وَهُوَ كُرْهٌ لَّكُمْ
’’(مسلمانو) تم پر (اللہ کے رستے میں) قتال فرض کردیا گیا ہے وہ تمہیں ناگوار ہے۔‘‘ (البقرة : 216)
ارشاد باری تعالی ہے:
﴿فَلْيُقَاتِلْ فِي سَبِيلِ اللَّهِ الَّذِينَ يَشْرُونَ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا بِالْآخِرَةِ وَمَنْ يُقَاتِلْ فِي سَبِيلِ اللَّهِ فَيُقْتَلْ أَوْ يَغْلِبْ فَسَوْفَ نُؤْتِيهِ أَجْرًا عَظِيمًا
’’پس ان (مؤمنوں) کو اللہ کی راہ میں (دین کی سربلندی کے لئے) لڑنا چاہئے جو آخرت کے عوض دنیوی زندگی کو بیچ دیتے ہیں، اور جو کوئی اللہ کی راہ میں جنگ کرے، خواہ وہ قتل ہو جائے یا غلبہ پائے تو ہم عنقریب اس کو عظیم اجر عطا فرمائیں گے۔‘‘(النساء : 74)
اللہ تعالی نے فرمایا:
﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا مَا لَكُمْ إِذَا قِيلَ لَكُمُ انفِرُوا فِي سَبِيلِ اللَّـهِ اثَّاقَلْتُمْ إِلَى الْأَرْضِ ۚ أَرَضِيتُم بِالْحَيَاةِ الدُّنْيَا مِنَ الْآخِرَةِ ۚ فَمَا مَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا فِي الْآخِرَةِ إِلَّا قَلِيلٌ (38) إِلَّا تَنفِرُوا يُعَذِّبْكُمْ عَذَابًا أَلِيمًا وَيَسْتَبْدِلْ قَوْمًا غَيْرَكُمْ وَلَا تَضُرُّوهُ شَيْئًا ۗ وَاللَّـهُ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ(39).
’’اے ایمان والو! تمہیں کیا ہو گیا ہے کہ جب تم سے کہا جاتا ہے کہ تم اللہ کی راہ میں (ہجرت وجہاد کے لئے) نکلو تو تم زمین میں دھنس جاتے جاتے ہو، کیا تم آخرت کے بدلے دنیا کی زندگی پر راضی ہو گئے ہو؟ سو دنیوی زندگی کا سازوسامان آخرت (کے مقابلہ) میں کچھ بھی نہیں مگر بہت ہی کم (حیثیت رکھتا) ہے۔ اگر تم (ہجرت وجہاد کے لئے) نہ نکلو گے تو وہ تمہیں دردناک عذاب میں مبتلا فرمائے گا اور تمہاری جگہ (کسی) اور قوم کو لے آئے گا اور تم اسے کچھ بھی نقصان نہیں پہنچا سکو گے، اور اللہ ہر چیز پر قادر ہے۔‘‘(التوبة : 38-39)
اللہ سبحانہ کا ارشاد ہے :
﴿وَلَوْ يَشَاءُ اللَّـهُ لَانتَصَرَ مِنْهُمْ وَلَـٰكِن لِّيَبْلُوَ بَعْضَكُم بِبَعْضٍ ۗ وَالَّذِينَ قُتِلُوا فِي سَبِيلِ اللَّـهِ فَلَن يُضِلَّ أَعْمَالَهُمْ (4) سَيَهْدِيهِمْ وَيُصْلِحُ بَالَهُمْ (5) وَيُدْخِلُهُمُ الْجَنَّةَ عَرَّفَهَا لَهُمْ(6).
’’اور اگر ﷲ چاہتا تو ان سے (بغیر جنگ) انتقام لے لیتا لیکن اس نے چاہا کہ تمہاری آزمائش ایک (کو) دوسرے سے (لڑوا کر) کرے۔ اور جو لوگ اللہ کی راہ میں مارے گئے ان کے عملوں کو ہرگز ضائع نہ کرے گا۔ وہ عنقریب ان کو سیدھے رستے پر چلائے گا اور ان کی حالت درست کر دے گا۔ اور (بالآخر) انہیں جنت میں داخل فرما دے گا جس سے انہیں شناسا کر رکھا ہے۔‘‘ (محمد : 4-6)
اے مسلمانو!
اے : اللہ کو رب ، اسلام کو دین اور محمد ﷺ کو نبی ورسول ماننے پر راضی ہونے والو!
اے لا الہ الا اللہ اور محمد رسول ﷺ کی گواہی دینے والو!
تمہیں عمل کے بغیر قول کچھ فائدہ نہیں دے گا۔ عمل کے بغیر کوئی ایمان نہیں ہے۔
پس جو کہتا ہے کہ میرا رب اللہ ہے۔ اگر وہ سچا ہے تو اس پر لازم ہے کہ وہ اس اللہ عزوجل کی اطاعت کرے جس نے قتال کو فرض قرار دیا ہے۔ یعنی اللہ تعالی نے اپنے اوپر ایمان لانے والوں پر قتال کو فرض قرار دیا ہے اور ان کو حکم دیا ہے کہ وہ اس کی راہ میں جہاد کریں۔ اب جو اس کے حکم کو مانے گا تو اسے جزا دینے کا وعدہ کیا ہے اور جو اس حکم کی نافرمانی کرے گا تو اسے سزا دینے کا وعدہ فرمایا ہے۔
اور جوکہتا ہے کہ محمدﷺ میرے نبی ہے تو اگر وہ اپنے دعوی میں سچا ہے تو اس پر لازم ہے کہ وہ آپﷺ کی پیری کریں، جنہوں نے فرمایا :
(والذي نفس محمدٍ بيده لولا أن أشق على المسلمين ما قعدتُ خلاف سرية تغزو في سبيل الله أبدًا، ولكني لا أجد سعة فيتبعوني، ولا تطيب أنفسهم فيتخلفون بعدي، والذي نفس محمد بيده لوددتُ أن أغزو في سبيل الله فأُقتل، ثم أغزو فأُقتل، ثم أغزو فأُقتل)
’’ اس ذات کی قسم ! جس کے ہاتھ میں میں محمد(ﷺ) کی جان ہے اگر مجھے مسلمانوں پر بھاری پڑنے کا خطرہ نہ ہوتا تو میں اللہ کی راہ میں جہاد کرنے کے لیے جانے والے کسی بھی دستے سے پیچھے نہیں بیٹھتا ۔ لیکن میرے پاس (اتنی )وسعت نہیں ہے کہ (میں سب کو سواریاں مہیا کرتااور) وہ میرے پیچھے چلتے اور ان کے دلوں کو میرے چلے جانے کے بعد پیچھے رہنے سے رنج نہ ہوتا۔ اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں محمد(ﷺ) کی جان ہے۔ میری آروز ہے کہ میں اللہ کی راہ میں لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔ پھر لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔ پھر لڑو پھر قتل کردیا جاؤ۔‘‘
تو اے مسلمان ! تو اپنے رب کے اس حکم پر عمل کرنے سے کہاں ہے ؟ اللہ تعالی نے صرف ایک آیت میں روزے کا حکم دیا ہے جبکہ جہاد وقتال کا حکم بیسیوں آیات میں دیا۔
اے مسلمان! تو جس نبیﷺ کی پیروی کرنے کا دعوی کرتا ہے ، اس نبی ﷺ نے اپنی ساری زندگی اللہ کی راہ میں مجاہد اور دشمنوں کیخلاف قتال کرتے ہوئے بسر کردی ۔ جنگ میں آپﷺ کے آگے چار دانٹ ٹوٹ گئے۔ آپﷺ کی پیشانی پر زخم لگے۔ آپﷺ کے رخسار میں دو کڑیاں پیوست ہوگئیں۔ آپﷺ کے سر پر جنگی ہیلمنٹ ٹوٹ گیا۔ آپﷺ کے چہرے سے خون بہا۔ آپﷺ پر میری جان اور میرے ماں باپ اور تمام لوگ قربان ہوں۔
اے مسلمان!
اے اللہ اور اس کے رسول ﷺ سے محبت کے دعویدار!
اگر تو واقعی اس محبت کے دعوی میں سچا ہے تو اپنے محبوب کی اطاعت کرتے ہوئے اس کی راہ میں قتال کر اور اپنے حبیب ﷺ کی پیروی کر ، یہاں تک کہ تجھے موت نہ آئے مگر اس حال میں کہ تو اللہ کی راہ میں مجاہد ہوں۔
﴿الم (1) أَحَسِبَ النَّاسُ أَن يُتْرَكُوا أَن يَقُولُوا آمَنَّا وَهُمْ لَا يُفْتَنُونَ (2) وَلَقَدْ فَتَنَّا الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ ۖ فَلَيَعْلَمَنَّ اللَّـهُ الَّذِينَ صَدَقُوا وَلَيَعْلَمَنَّ الْكَاذِبِينَ (3) أَمْ حَسِبَ الَّذِينَ يَعْمَلُونَ السَّيِّئَاتِ أَن يَسْبِقُونَا ۚ سَاءَ مَا يَحْكُمُونَ (4) مَن كَانَ يَرْجُو لِقَاءَ اللَّـهِ فَإِنَّ أَجَلَ اللَّـهِ لَآتٍ ۚ وَهُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيمُ (5) وَمَن جَاهَدَ فَإِنَّمَا يُجَاهِدُ لِنَفْسِهِ ۚ إِنَّ اللَّـهَ لَغَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ(6). (العنكبوت : 1-6)
’’الف، لام، میم۔ کیا لوگ یہ خیال کئے ہوئے ہیں کہ صرف یہ کہنے سے کہ ہم ایمان لے آئے ہیں چھوڑ دیئے جائیں گے اور ان کی آزمائش نہ کی جائے گی۔ اور بیشک ہم نے ان لوگوں کو (بھی) آزمایا تھا جو ان سے پہلے تھے سو یقیناً اللہ ان لوگوں کو ضرور (آزمائش کے ذریعے) جان لے گا جو (اپنے ایمان میں) سچے ہیں اور جھوٹوں کو (بھی) ضرور جان لے گا۔ کیا جو لوگ برے کام کرتے ہیں یہ گمان کئے ہوئے ہیں کہ وہ ہمارے قابو سے باہر نکل جائیں گے؟ کیا ہی برا ہے جو وہ (اپنے ذہنوں میں) فیصلہ کرتے ہیں۔ جو شخص اللہ کی ملاقات کی اُمید رکھتا ہو اللہ کا (مقرر کیا ہوا) وقت ضرور آنے والا ہے۔ اور وہ سننے والا اور جاننے والا ہے۔اور جو شخص بھی جہاد کرے گا تو وہ اپنے ہی لئے جہاد کرتا ہے۔ اور بیشک اللہ تو سارے جہانوں سے بے پروا ہے۔ ‘‘
﴿انفِرُوا خِفَافًا وَثِقَالًا وَجَاهِدُوا بِأَمْوَالِكُمْ وَأَنفُسِكُمْ فِي سَبِيلِ اللَّـهِ ۚ ذَٰلِكُمْ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُمْ تَعْلَمُونَ
’’تم ہلکے اور گراں بار (ہر حال میں) نکل کھڑے ہو۔ اور اللہ کے رستے میں اپنے مالوں اور اپنی جانوں کے ساتھ جہاد کرو۔ یہی تمہارے حق میں بہتر ہے بشرطیکہ تم سمجھو۔‘‘(التوبة : 41)
اے مسلمانو! بیشک اللہ تعالی کی سنت ودستور یہ ہے کہ حق وباطل کے درمیان جنگ تاقیامت جاری رہے۔
﴿وَلَن تَجِدَ لِسُنَّةِ اللَّـهِ تَبْدِيلًا.
’’اور آپ ﷲ کے دستور میں ہرگز کوئی تبدیلی نہیں پائیں گے۔‘‘(الفتح : 23)
اللہ تعالی نے اپنے بندوں کو اس جنگ کے ذریعے آزمائش میں ڈالا ہے تاکہ وہ پاک کو خبیث سے، سچے کو جھوٹے سے اور مومن کو منافق سے چھانٹ کر الگ کردے۔
﴿وَلَنَبْلُوَنَّكُمْ حَتَّىٰ نَعْلَمَ الْمُجَاهِدِينَ مِنكُمْ وَالصَّابِرِينَ وَنَبْلُوَ أَخْبَارَكُمْ.
’’ اور ہم ضرور تمہاری آزمائش کریں گے یہاں تک کہ تم میں سے (ثابت قدمی کے ساتھ) جہاد کرنے والوں اور صبر کرنے والوں کو معلوم کریں اور تمہاری خبریں آزمالیں۔‘‘(محمد : 31)
اللہ تعالی نے اپنی راہ میں تم پر جہاد کرنے کو فرض اس لیے کیا اور تمہیں اپنے دشمنوں سے قتال کرنے کا حکم اس لیے دیا ہے تاکہ وہ تمہارے گناہ معاف کردے، تمہارے درجات کو بلند کرے، تم میں سے شہیدوں کا انتخاب کرے ، مومنین کو چھانٹ کر الگ کرے اور کافروں کو تباہ کرے۔
﴿وَلَـٰكِن لِّيَبْلُوَكُمْ﴾،
’’ لیکن وہ تمہاری آزمائش کرنا چاہتا ہے۔‘‘(المائدة: 48)
﴿وَتِلْكَ الْأَيَّامُ نُدَاوِلُهَا بَيْنَ النَّاسِ وَلِيَعْلَمَ اللَّـهُ الَّذِينَ آمَنُوا وَيَتَّخِذَ مِنكُمْ شُهَدَاءَ ۗ وَاللَّـهُ لَا يُحِبُّ الظَّالِمِينَ (140) وَلِيُمَحِّصَ اللَّـهُ الَّذِينَ آمَنُوا وَيَمْحَقَ الْكَافِرِينَ (141) أَمْ حَسِبْتُمْ أَن تَدْخُلُوا الْجَنَّةَ وَلَمَّا يَعْلَمِ اللَّـهُ الَّذِينَ جَاهَدُوا مِنكُمْ وَيَعْلَمَ الصَّابِرِينَ (142).
’’اور یہ دن ہیں جنہیں ہم لوگوں کے درمیان پھیرتے رہتے ہیں، اور اس سے یہ بھی مقصود ہے کہ اللہ اہلِ ایمان کو جان لے اور تم میں سے بعض کو شہداء منتخب کرے ، اور اللہ ظالموں کو پسند نہیں کرتا۔ اور یہ بھی مقصود ہے کہ اللہ ایمان والوں کو (چھانٹ کر) خالص (مومن) بنا دے اور کافروں کو نابود کر دے۔ کیا تم یہ سمجھتے ہو کہ تم (یونہی بے آزمائش) جنت میں چلے جاؤ گے؟ حالانکہ ابھی اللہ نے تم میں سے جہاد کرنے والوں کو معلوم نہیں کیا ہے اور نہ ہی صبر کرنے والوں کو جانچا ہے۔‘‘(آل عمران : 140-142)
اے مسلمانو!
تم میں سے جو سمجھتا ہے کہ وہ یہود ونصاری اور کافروں کے ساتھ پرامن بقائے باہمی کے ساتھ رہ سکتا ہے اس حال میں کہ وہ اپنے دین اور توحید پر بھی قائم ہو ؛ تو اس نے اللہ تعالی کے اس فرمان کو واضح طور پر جھٹلادیا ہے جس میں اللہ تعالی نے فرمایا کہ
﴿وَلَن تَرْضَىٰ عَنكَ الْيَهُودُ وَلَا النَّصَارَىٰ حَتَّىٰ تَتَّبِعَ مِلَّتَهُمْ.
’’یہود ونصاری تم سے (اس وقت تک) ہرگز خوش نہیں ہوں گے جب تک تم ان کی ملت (ودین) کی پیروی اختیار نہ کرلو۔‘‘(البقرة2 : 120)
﴿وَلَا يَزَالُونَ يُقَاتِلُونَكُمْ حَتَّىٰ يَرُدُّوكُمْ عَن دِينِكُمْ إِنِ اسْتَطَاعُوا.
’’وہ (کافر) تم سے لڑتے رہینگے یہاں تک کہ اگر وہ استطاعت رکھیں تو وہ تم کو تمہارے دین سے پھیر ( کر مرتد بنا)دیں‘‘ (البقرة 2 : 217)
﴿مَّا يَوَدُّ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ وَلَا الْمُشْرِكِينَ أَن يُنَزَّلَ عَلَيْكُم مِّنْ خَيْرٍ مِّن رَّبِّكُمْ ۗ وَاللَّـهُ يَخْتَصُّ بِرَحْمَتِهِ مَن يَشَاءُ ۚ وَاللَّـهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ.
’’اہل کتاب میں سے کافر اور مشرکین نہیں چاہتے ہیں کہ تم پر تمہارے پروردگار کی طرف سے کوئی بھلائی نازل ہو۔ اور اللہ جسے چاہتا ہے اپنی رحمت سے مختص کردیتاہے اور اللہ بڑے فضل والا ہے۔ ‘‘ (البقرة2 : 105)
سو یہ کافروں کا مسلمانوں کے ساتھ تاقیامت یہی معاملہ رہے گا کیونکہ اللہ کی سنت ودستور کبھی تبدیل نہیں ہوتا ہے۔ کافروں کیخلاف قتال اور ہجرت وجہاد کا سلسلہ تاقیامت جاری رہے گا۔ رسول اللہﷺ نے فرمایا:
(لا تنقطع الهجرة حتى تنقطع التوبة، ولا تنقطع التوبة حتى تطلع الشمس من مغربها)
’’ ہجرت اس قت تک منقطع نہیں ہوگی جب تک توبہ منقطع نہ ہوجائے اور توبہ اس وقت منقطع ہوگی جب سورج مغرب سے طلوع ہوگا۔‘‘
آپ ﷺ نے فرمایا:
(الخيل معقود في نواصيها الخير إلى يوم القيامة الأجر والمغنم)
’’قیامت تک گھوڑے کی پیشانی کے ساتھ خیر و برکت بندھی رہے گی (یعنی آخرت میں) ثواب اور (دنیا میں) مال غنیمت ملتا رہے گا۔‘‘
آپ ﷺ نے فرمایا:
(لا تزال طائفة من أمتي يقاتلون على الحق، ظاهرين إلى يوم القيامة، فينزل عيسى ابن مريم، فيقول أميرهم تعال صلِّ لنا، فيقول: لا؛ إن بعضكم على بعض أمراء. تكرمة هذه الأمة).
’’میری امت کا ایک گروہ حق پر قتال کرتا رہے گا، روز قیامت تک غالب رہے گا، پس عیسی بن مریم علیہ السلام نازل ہوں گے، ان (مسلمانوں) کا امیر کہے گا: آیئے ہمیں نماز پڑھایئے تو عیسی علیہ السلام کہیں گے: نہیں، اس امت کو اللہ کی جانب سے دی گئی (عزت و)تکریم کی بنا پر تم ایک دوسرے پر امیر ہو۔‘‘
اے مسلمانو!
کوئی یہ نہ سمجھے کہ ہم جو جنگ لڑرہے ہیں وہ صرف دولت اسلامیہ کی جنگ ہے بلکہ یہ تمام مسلمانوں کی جنگ ہے۔ دنیا بھر میں موجود ہر مسلمان کی جنگ ہے۔ دولت اسلامیہ تو اس جنگ میں پہلے سرے پر ہے۔ یہ اہل ایمان کی اہل کفر کیخلاف جنگ ہے ۔ پس دنیا بھر میں موجود مسلمانوں کو اس جنگ کے لیے نکلنا چاہیے اور ہر بالغ مسلمان پر یہ جنگ واجب ہے۔ جو نہیں نکلے گا یا پیچھے رہے گا تو اللہ تعالی اس پر غضبناک ہوگا اور اسے دردناک عذاب دے گا۔
﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا لَقِيتُمُ الَّذِينَ كَفَرُوا زَحْفًا فَلَا تُوَلُّوهُمُ الْأَدْبَارَ (15) وَمَن يُوَلِّهِمْ يَوْمَئِذٍ دُبُرَهُ إِلَّا مُتَحَرِّفًا لِّقِتَالٍ أَوْ مُتَحَيِّزًا إِلَىٰ فِئَةٍ فَقَدْ بَاءَ بِغَضَبٍ مِّنَ اللَّـهِ وَمَأْوَاهُ جَهَنَّمُ ۖ وَبِئْسَ الْمَصِيرُ(16).
’’اے ایمان والو! جب تمہارا میدان جنگ میں کافروں سے مقابلہ ہو تو پھران سے پیٹھ نہ پھیرنا۔ اور جو شخص اس دن ان سے پیٹھ پھیرے گا، سوائے اس کے جو جنگ (ہی) کے لئے کوئی داؤ چل رہا ہو یا اپنے (ہی) کسی لشکر سے جاملنا چاہتا ہو، تو واقعتاً وہ اللہ کے غضب کے ساتھ پلٹا اور اس کا ٹھکانا دوزخ ہے، اور وہ (بہت ہی) برا ٹھکانا ہے۔‘‘(الأنفال : 15-16)
﴿إِلَّا تَنفِرُوا يُعَذِّبْكُمْ عَذَابًا أَلِيمًا وَيَسْتَبْدِلْ قَوْمًا غَيْرَكُمْ وَلَا تَضُرُّوهُ شَيْئًا.
’’اگر تم (جہاد کے لئے) نہ نکلو گے تو وہ تمہیں دردناک عذاب دے گا اور تمہاری جگہ (کسی) اور قوم کو لے آئے گا اور تم اسے کچھ بھی نقصان نہیں پہنچا سکو گے۔‘‘(التوبة : 39)
﴿وَمَن جَاهَدَ فَإِنَّمَا يُجَاهِدُ لِنَفْسِهِ ۚ إِنَّ اللَّـهَ لَغَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ.
’’اور جو شخص بھی جہاد کرے گا تو وہ اپنے نفس کے لئے جہاد کرے گا۔ اور بیشک اللہ تو سارے جہانوں سے بے نیاز ہے۔ ‘‘(العنكبوت : 6)
جو مسلمان بھی دولت اسلامیہ کی طرف ہجرت کرنے یا اپنی جگہ پر رہتے ہوئے ہی ہتھیار اٹھانے کی استطاعت رکھتا ہے تو اس کے لیے کوئی عذر نہیں۔ اس وجہ سے کہ اللہ تعالی نے اسے ہجرت وجہاد کا حکم دیا اور قتال کو اس پر فرض قرار دیا۔
ہم دنیا بھر میں کہیں بھی رہنے والے مسلمانوں کو دولت اسلامیہ کی طرف ہجرت کرنے یا پھر وہ جہاں کہیں بھی ہے، وہی قتال کرنے کے لیے نکلنے کی منادی کرتے ہیں۔
یہ مت سمجھنا کہ ہم یہ منادی کسی کمزوری یا عاجزی کی وجہ سے لگارہے ہیں۔ ہم تو اللہ کے فضل سے طاقتور ہیں اور ہم طاقتور اللہ کے ساتھ ہیں ، اس کے ساتھ ایمان لانے کے ساتھ، صرف اس سے مدد مانگنے کے ساتھ، اس کی طرف رجوع کرنے کے ساتھ، اس سے پناہ مانگنے کے ساتھ ،صرف اس وحدہ لاشریک لہ پر توکل کرنے کے ساتھ اور اس کے ساتھ اچھا گمان رکھنے کے ساتھ طاقتور ہیں۔
اس وجہ سے کہ یہ معرکہ رحمن کے اولیاء اور شیطان کے اولیاء کے درمیان ہے۔ اللہ تعالی ضرور بالضرور اپنے سپاہیوں کی مدد کرے گا، اپنے بندوں کو زمین کا وارث بنائے گا اور اپنے دین کی حفاظت کرے گا۔ اگر چہ دن بدلتے رہینگے اور کبھی ایک ڈول اِن پر اور کبھی اُن پر پڑے گا اور دونوں فریقین کو زخم لگیں گے۔
اے مسلمان ! ہم تمہیں جہاد کے لیے نکلنے کی منادی کسی کمزوری یا عاجزی کی وجہ سے نہیں لگارہے ہیں بلکہ تمہاری خیر خواہی چاہتے ہوئے اور تم پر شفقت کرتے ہوئے لگارہے ہیں ۔ ہم تو صرف تمہیں یاد دہانی کرارہے ہیں تاکہ تم اللہ کے غضب ، اس کے عذاب اوراس کی سزا سے بچ سکو۔ نیز دنیا وآخرت کے اس خیر وبھلائی سے تم محروم نہ رہ سکو ، جس کو اللہ کی راہ میں جہاد کرنے والے مجاہدین سمیٹ رہے ہیں کہ گناہوں کو معاف کروانا، نیکیاں حاصل کرنا، درجات کو بلند کروانا، اللہ تعالی کاتقرب حاصل کرنا اور نبیوں ،صدیقوں، شہداء اور صالحین کی رفاقت کو پانا۔
ہم تمہیں منادی اس لیے لگارہے ہیں تاکہ تم ذلت ورسوائی ،کمزوری، تابعداری ، بیکار، فراغت اور غربت کی زندگی سے نکل کر عزت، شرف ، خود مختاری اور فراخی والی زندگی کی طرف آجاؤ۔
﴿وَأُخْرَىٰ تُحِبُّونَهَا ۖ نَصْرٌ مِّنَ اللَّـهِ وَفَتْحٌ قَرِيبٌ.
’’اور ایک (نعمت تمہیں) اور (دے گا) جسے تم بہت چاہتے ہو، (وہ) اللہ کی جانب سے مدد اور جلد ملنے والی فتح ہے۔‘‘(الصف : 13)
اے مسلمانو!
اسلام ایک دن بھی سلامتی کا دین نہیں تھا۔ اسلام تو قتال کا دین ہے۔ تمہارے نبیﷺ کو دونوں جہانوں کے لیے رحمت بناکر تلوار کے ساتھ مبعوث کیا گیا تھا اور آپ ﷺ کو حکم دیا گیا کہ قتال کرتے رہو یہاں تک کہ صرف ایک اللہ کی عبادت کی جائے۔ اسی وجہ سے آپ ﷺ نے اپنی قوم کے مشرکین کو مخاطب کرکے فرمایا تھا:
(جئتكم بالذبح)
’’میں تمہیں ذبح کرنے کے لیے آیا ہوں۔‘‘
آپ ﷺ نے عرب وعجم، گورے اور کالے سے قتال کیا۔ آپ ﷺ خود کئی غزوں میں نکلے اور آپﷺ نے کئی معرکیں لڑے۔ مگر آپ ﷺ جنگ میں ایک دن بھی سست نہیں پڑے۔ یہاں تک کہ روم سے قتال کرنے کے لیے آپﷺ تبوک کی طرف اس حال میں نکلے کہ آپﷺ کی عمر ساٹھ 60 برس سے تجاوز کرچکی تھی۔ آپﷺ نے وفات بھی اس حال میں پائی کہ آپﷺ اسامہ رضی اللہ عنہ کا لشکر تیار کررہے تھے۔ آپﷺ کی آخری وصیتوں میں سے ایک وصیت یہ تھی ۔
(انفذوا بعث أسامة)
’’ اسامہ! کے لشکر کو روانہ کرو۔‘‘
آپ ﷺ کے بعد آپ کے صحابہ کرام اور تابعین بھی نہ نرم پڑیں اور نہ ہی انہوں نے کسی مصلحتوں اور سمجھوتے کو اختیار کیا یہاں تک کہ وہ زمین کے مالک بن گئے اور مشرق ومغرب کو فتح کرلیا۔ تلوار کی دھار پر قومیں ان کے سامنے جھک گئیں اور ممالک ان کے تابعدار ہوگئے۔یہی حال ان کے نقش قدم پر چلنے والوں کا تاقیامت ہوگا۔
آپ ﷺ نے قرب قیامت ہونے والی جنگوں کے بارے میں ہمیں بتاتے ہوئے بشارت دی اور ہم سے وعدہ کیا کہ ہم ہی اس میں کامیاب ہونگے۔ آپﷺ صادق المصدوق ہے۔
آج ہم ان جنگوں کے آثار کو دیکھ رہے ہیں اور ان سے اٹھنے والے کامیابی کی ہواؤں کو سونگھ رہے ہیں۔اگرچہ صلیبی اس وقت یہ دعوی کررہے ہیں کہ وہ عام مسلمانوں کو نشانہ بنانے سے گریز کررہے ہیں اور صرف عسکریت پسندوں کو نشانہ بنانے پر اکتفاء کررہے ہیں ؛ عنقریب تم خود دیکھوگے کہ یہ ہر جگہ پر تمام مسلمانوں کو نشانہ بنائینگے۔
اگر چہ صلیبیوں نے آج صلیبی ممالک میں رہنے والے مسلمانوں کا گھیراؤ کرنے، ان کی نگرانی کرنے ، ان کو گرفتار کرنے اور ان سے تفیش کرنے کا سلسلہ شروع کررکھا ہے ؛ عنقریب تم خود دیکھوگے کہ یہ تم کو اغواء کرتے ہوئے قتل یا قیدی یا تم کو جلاوطنی کا شکار کرینگے اور اپنے بیچ صرف ان کو رہنے دینگے جو اپنے دین سے پھیرتے ہوئے ان کی ملت ودین کو اختیار کرچکے ہونگے۔
﴿فَسَتَذْكُرُونَ مَا أَقُولُ لَكُمْ ۚ وَأُفَوِّضُ أَمْرِي إِلَى اللَّـهِ
’’پس تم عنقریب یاد کرو گے (وہ باتیں)جو میں تم سے کہہ رہا ہوں، اور میں اپنا معاملہ اللہ کے سپرد کرتا ہوں۔‘‘(غافر : 44)
اے مسلمانو!
یہود ونصاری اور کفار تم سے کبھی راضی نہیں ہوسکتے اور تمہارے خلاف قتال کرنا نہیں چھوڑسکتے یہاں تک کہ تم ان کی ملت (ومذہب) کو اختیار کرلو اور اپنے دین سے مرتد ہوجاؤ۔
یہ بات تمہارے پروردگار کا کلام کہہ رہا ہے اور اس کی خبر تمہارے نبی صادق المصدوق ﷺ نے دی ہے۔
امریکہ اور اس کے اتحادی ، صلیبی ، شیعہ ، سیکولر ، ملحد اور مرتدین یہ دعوی کرتے ہیں کہ ان کا یہ اتحاد اور ان کی یہ جنگ کمزوروں ومظلوموں کی مدد کے لیے، مسکینوں کی نصرت کے لیے، متاثرین کی امداد کرنے کے لیے ، مصیبت زدوں کی مدد کرنے کے لیے، غلامی کو آزادی دلوانے کے لیے، بیگناہوں اور پر اپن رہنے والوں کو بچانے اور ان کے خون کو محفوظ بنانے کے لیے ہے۔
وہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ حق ، بھلائی اور عدل والے گروہ میں ہیں اور مسلمانوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہوکر باطل ، برائی اور ظلم کیخلاف جنگ لڑرہے ہیں۔
بلکہ وہ تو یہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ یہ جنگ اسلام اور مسلمانوں کے دفاع کے لیے لڑرہے ہیں۔
آگاہ رہو! یہ جھوٹ بولتے ہیں اور اللہ اور اس کے رسول ﷺ نے جو کہا وہی سچ ہے۔
ا ے مسلمانو!
جو طواغیت تمہارے ملکوں پر حرمین، یمن، شام ، عراق ، مصر ، مراکش ، خراسان ، قوقاز، ہندستان، افریقہ اور دیگر ملکوں پر حکمرانی کررہے ہیں ، وہ سب کے سب یہود اور صلیبیوں کے اتحادی ہیں بلکہ وہ ان کے غلام ونوکر اور ان کے پیرے دار کتوں سے زیادہ کچھ نہیں ہیں ۔ یہودی اور صلیبی جن افواج کو تیار کررہے ہیں، ٹریننگ اور اسلحہ دیں رہے ہیں وہ سب تمہاری نسل کشی کرنے ، تمہیں کمزور بناتے ہوئے یہود اور صلیبیوں کا غلام بنانے، تمہیں تمہارے دین سے پھیرنے، تم کو اللہ کی راہ سے روکنے، تمہارے ملکوں کے ذخائر لوٹنے اور تمہارے اموال کو غصب کرنے کے لیے ہیں۔
یہ ساری حقیقت اب کھل کر دن دیہاڑے سورج کی روشنی کی طرح عیاں ہوچکی ہے اور اس کا انکار صرف وہی کرے گا جس کا نور اللہ تعالی نے مٹادیا ہو ، جس کو بصیرت سے اندھا کردیا ہو اور جس کے دل پر مہر لگادی ہو۔
آج جزیرۃ (خلیج) کے حکام کے طیارے یہودیوں کو کیوں نشانہ نہیں بنارہے ہیں جو ہمارے رسول ﷺ کے جائے معراج (مسجد اقصی) کو پامال کررہے ہیں اور اہل فلسطین مسلمانوں کو روزانہ بدترین مصیبتوں وعذابوں سے دوچار کررہے ہیں۔
آل سلول (آل سعود) اور ان کے اتحادی ان ایک ملین مسلمانوں کی مدد کرنے سے کہاں ہیں، جنہیں برما میں ان کی پوری نسل کے ساتھ ملیامیٹ کیا جارہا ہے ؟
ان کی حمیت نصیریوں کے باردی ڈرموں اورتوپوں کی بابت کہاں چلی گئی ہیں ، جب وہ مسلمانوں کے گھروں کو ان میں رہنے والے بچوں، عورتوں اور کمزوروں کے سروں پر حلب، ادلب، حماۃ ، حمص اور دمشق وغیرہ میں نشانہ بنارہے ہیں۔
الجزیرۃ کے حکمرانوں کی غیرت ان خواتین کی بابت کہاں ہیں، جنہیں شام وعراق اور مسلمانوں کے دیگر ملکوں میں روزانہ عصمت دری کا نشانہ بنایا جارہا ہے؟
مکہ اور مدینہ کے حکمران چین اور بھارت کے مسلمانوں کی مدد سے کہاں ہیں، جنہیں ہندو روزانہ جلانے، قتل کرنے، عصمت دری کرنے، چیر پھاڑنے، لوٹنے، غصب کرنے اور قیدی بنانے سمیت مختلف جرائم کا نشانہ بنارہے ہیں۔
وہ انڈونیشیا، قوقاز، افریقہ ، خراسان اور دیگر تمام جگہوں پر مدد کرنے سے کہاں ہیں؟
الجزیرۃ کے حکمران بے نقاب ہوچکے ہیں ، ان کے برے ارادے ظاہر ہوچکے ہیں، وہ اپنی قانونی حیثیت کھوبیٹھے ہیں اور مسلم عوام تک ان کی خیانتوں سے واقف ہوچکی ہے۔ اب ان کی حقیقت کھل کر سامنے آگئی ہیں اور اب ان کی صلاحیتیں ان کے یہودی وصلیبی آقاؤں کے لیے ختم ہوچکی ہیں۔ اس لیے اب ان کی جگہ صفوی روافضہ اور ملحد کردیوں کو تبدیل کرکے لایا جارہا ہے۔ آل سلول (آل سعود) نے جب محسوس کیا کہ ان کے آقاؤں نے ان کو چھوڑدیا ہے اور ان کو گیلے جوتوں کی طرح پھینک کر ان کی جگہوں پر اوروں کو لایا جارہا ہے تو انہوں نے یمن میں (شیعی حوثی) روافضہ پر اپنی خودساختہ جنگ شروع کی ۔ یہ فیصلہ کن طوفان نہیں ہے بلکہ یہ اللہ کے حکم سے جھگڑنے والے کا اپنی موت سے پہلے آخری سانسوں میں ٹانگیں مارنا ہے۔ یہودیوں کے اتحادی اور صلیبیوں کے غلام سلولی (آل سعود) کبھی نہیں چاہتے ہیں کہ مسلمانوں پر ان کے رب کی طرف سے کوئی بھلائی نازل ہو۔
آل سلول کئی دہائیوں تک دنیا میں عمومی طور پر اور فلسطین میں خصوصی طور مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کو کوئی اہمیت نہیں دیتے تھے۔ پھر کئی برس تک وہ عراق میں اہل سنت کیخلاف جنگ میں (شیعی) روافضیوں کے اتحادی بنے رہے ۔پھر کئی برس تک شام میں قتل وغارت گری اور تباہی پھیلانے والے ڈرموں (کی بمباری) کا نظارہ کرتے رہے اور نصیریوں کے ہاتھوں مسلمانوں کے قتل ، ان کو جلانے، ان کو قیدی بنانے، ان کی عزتوں کو لوٹنے ، ان کے اموال کو چرانے اور ان کے گھروں کو تباہ ہونے کے مناظر دیکھ کر لطف اندوز اورخوشی ولذت محسوس کرتے رہے ۔ پھر آج جاکر وہ یمن میں شیعی روافضیوں کیخلاف اہل سنت کا دفاع کرنے کا دعوی کرتے ہیں۔
خبردار! یہ جھوٹے ہیں اور ناکام ونامراد ہیں۔ (یمن میں) یہ سب کچھ اس لیے کررہے ہیں تاکہ اپنے یہودی اور صلیبی آقا کے سامنے اپنے وجود (اورویلیو) کو دوبارہ ثابت کرنے کی کوشش کرسکے اور مسلمانوں کو اس دولت اسلامیہ سے روکنے کی کوشش کرسکے جس کی آواز دنیا بھر میں اونچی ہوچکی ہے اور اس کی حقیقت تمام مسلمانوں کے سامنے واضح ہوچکی ہے۔ جس کی وجہ سے تمام مسلمان آہستہ آہستہ دولت اسلامیہ کے گرد اکھٹے ہونا شروع ہوگئے ہیں۔
یہ تو وہمی طوفان ہے جس کا آغاز اس وقت کیا گیا جب روافضیوں کی آگ نے ان کے عرشوں کو جھلسادیا تھا اور وہ پیش قدمی کرتے ہوئے جزیرۃ العرب میں ہمارے اہل خانہ تک پہنچ چکے تھے، جس کانتیجہ یہ نکل رہا تھا کہ الجزیرۃ میں عام مسلمانوں نے دولت اسلامیہ کے اردگرد جمع ہونا شروع کردیا تھا کیونکہ دولت اسلامیہ ان کا دفاع کررہی ہے۔ اس چیز نے آل سلول اور الجزیرۃ کے حکام کو خوف میں مبتلا کردیا اور ان کے قلعوں کو ہلا کر رکھ دیا۔ یہ ان کے خودساختہ طوفان (آپریشن) کی اصل حقیقت ہے اور یہی (طوفان آپریشن) اللہ کے حکم سے ان کے ختم ہونے کا سبب بنے گا۔ ان کے اختتام کا وقت قریب ہے۔ ان شاء اللہ ۔ آل سلول اور جزیرۃ کے حکمران نہ اہل جنگ ہیں اور نہ ہی وہ جنگ پر صبر رکھتے ہیں بلکہ وہ تو عیاشی ، طبلے بجانے، بدکاری ، نشے، ڈانس اور تقریبات (میں کھانے پینے) والے ہیں جو اپنی حفاظت کا بندوبست یہودیوں اور صلیبیوں سے کرانے کے عادی ہوچکے ہیں اور ان کے دلوں میں ذلت ورسوائی اور ایجنٹ گری رچ بس چکی ہے۔
اے دنیابھر میں موجود مسلمانو!
اب وقت آگیا ہے کہ تم اس جنگ کی حقیقت کو پہچانو اور اور اپنے ملکوں کی حکمرانوں کی طرف دیکھو کہ وہ کس سمت میں کھڑے ہیں اور کس گروہ کی طرف نسبت رکھتے ہیں۔
اے اہل سنت ! اب وقت آگیا ہے کہ تم جان لو کہ صرف تم ہی اصل نشانہ ہو اور جنگ صرف تمہارے خلاف اور تمہارے دین کیخلاف ہے۔
اب وقت آگیا ہے کہ تم اپنے دین اور جہاد کی طرف واپس پلٹو تاکہ اپنی عزت وشرف ، اپنے حقوق اور اپنی خودمختاری کو دوبارہ پاسکو۔
اے مسلمانو! اب وقت آگیا ہے کہ تم جان لو کہ تمہارے لیے کوئی امن ، کوئی خود مختاری، کوئی شرف، اور کوئی حقوق نہیں ہے سوائے خلافت کے سائے تلے ۔
ہمیں بہت افسوس ہوتا ہے اور ہمارے دل غم سے کانپ اٹھتے ہیں جب ہم دیکھتے ہیں کہ اہل سنت کی خواتین، ان کے بچے اور ان کے خاندان عراق میں ان علاقوں کی طرف پناہ گزین ہونے کے لیے رخ کرتے ہیں جو روافضیوں اور ملحد کردیوں کے زیر کنٹرول ہیں۔ پھر وہ ان کے دروازوں پر توہین وتذلیل اور دربدری کی ٹھوکرے کھاتے ہیں ۔ ولا حول ولا قوۃ الا باللہ
ان مسلمانوں کی ہونے والی تذلیل اور دربدی کا گناہ وہ طواغیت کے مددگار علمائے سوء اٹھائینگے جو جہنم کے دروازوں کے داعیان ہیں اور جنہوں نے ان مسکینوں پر معاملہ خلط وملط کرتے ہوئے ان کو یہ تصور دیا کہ دولت اسلامیہ ہی برائی کا سبب اور آزمائش کی وجہ ہے۔ اگر یہ (دولت اسلامیہ والے) نہ ہوتے تو تم امن وامان، خوشحالی اور سلامتی سے رہ رہے ہوتے ۔ یہ علمائے سوء ان کو یہ تصور دیتے ہیں کہ صلیبی، روافضہ(شیعہ)، ملحدین اور مرتدین تو بھلائی، عدل ،رحمت اور شفقت کرنے والے ہیں اور یہی تو مسلمانوں کا دفاع کرنے والے پرامن پسند ہیں۔ واقعی ! یہ دھوکے والے سال ہیں ۔
اے عراق میں اہل سنت!
بالخصوص انبار میں ہمارے اہل خانہ!
تم یہ یقین رکھو کہ تمہارا اپنے علاقوں اور گھروں کو چھوڑ کر روافضہ اور ملحد کردیوں کے علاقوں کی طرف جانے اور ملک میں دربدری کا شکار ہونے کو دیکھ کر ہمارے دل خون کے آنسو روتے ہیں۔ اگر تمہارے بعض رشتے دار صلیبیوں کے دوست اور اللہ کے دین سے جنگ کرنے والے مرتدین ہیں تو ہم ان کے جرموں کی سزا تم کو نہیں دینگے۔ اس لیے تم اپنے علاقوں میں واپس لوٹ آؤ اور اپنے گھروں کو لازم پکڑو۔ اللہ تعالی کے بعد تم دولت اسلامیہ میں اپنے اہل خانہ کے پاس پناہ لو۔ اللہ کے حکم سے تم وہاں نرم مسکن اور محفوظ پناہ گاہ پاؤگے۔ تم ہمارے اہل خانہ ہو اور ہم تمہارا اور تمہاری عزتوں واموال کا دفاع کرینگے ۔ ہم تمہاری عزت وکرامت چاہتے ہیں اورتمہاری امن وسلامتی اور جہنم سے نجات چاہتے ہیں۔
پس اللہ کے بعد دولت اسلامیہ کی طرف رجوع کرو ۔ اب تم کس چیز کا انتظار کررہے ہو۔ (شیعی) روافضیوں کی حقیقت دن سے بھی زیادہ واضح ہوچکی ہے اور آج تم دیکھ ہی رہے ہو کہ بغداد ودیگر علاقوں میں وہ ہر اس شخص کو ذبح کررہے ہیں جو اہل سنت کی طرف نسبت رکھتا ہے۔ ان شیعوں کے ہاتھوں سے اہل سنت کے مرتدین ــ صحوات، پولیس اور فوج میں موجود ــ ان کے اپنے اتحادی، ان کے مددگار، ان کے ساتھی اور ان کے کتے بھی محفوظ نہیں رہ سکے ، جو دولت اسلامیہ کے علاقوں میں شریعت کی حکمرانی سے بھاگنے کی وجہ سے ذلت ورسوائی کے ساتھ دربدری کی ٹھوکریں کھارہے ہیں اور خوف کا شکار ہوکر ہر وقت انتظار کررہے ہیں کہ (کب ان کی باری آتی ہے اور شیعی ) روافضی ان کی پکڑ کرتے ہیں۔
دوسری طرف مسلمان دولت اسلامیہ کے علاقوں میں اللہ کے فضل کے ساتھ اپنی عزت وکرامت کے ساتھ پر امن اور فراخی والی زندگی گزاررہے ہیں ۔ وہ اپنے کاموں ، اور اپنے معاشی وتجارتوں کے لیے آ جارہے ہیں اور اپنے رب کی شریعت کی حکمرانی تلے نعمتوں سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔ وللہ الحمد
پس اے مسلمانو ! اللہ کے بعد اپنی مملکت کی طرف واپس پلٹو۔
ہم روافضہ اور صلیبیوں کی صفوں میں باقی رہ جانے والے فوج، پولیس اور صحوات کو ایک مرتبہ پھر دعوت دیتے ہیں کہ وہ اللہ کے آگے توبہ کریں، مسلمانوں کیخلاف کافروں کی مدد کرنا چھوڑدیں۔ شاید کہ اللہ تعالی ان کی توبہ قبول کرتے ہوئے ان کو معاف فرمادے اور وہ جہنم سے بچ جائیں۔ پس تم توبہ کرنے میں جلدی کرو کیونکہ توبہ کا دروازہ اس وقت تک بند نہیں ہوگا جب تک سورج مغرب سے طلوع نہیں ہوجاتا ۔ توبہ کرو شایدکہ تم وقت کے ہاتھ سے نکل جانے سے پہلے اپنی آخرت کی فکر کرلو۔ تم دنیا تو ضائع کر بیٹھے ہو مگر دنیا کے ساتھ آخرت کو دوسرے لوگوں کی دنیا کی خاطر ضائع مت کرو۔ توبہ کرلو ، قبل اس کے کہ مجاہدین کے ہاتھ تم تک پہنچ جائے اور پھر اس وقت تمہارے لیے کوئی توبہ نہیں ہے اور تم دنیا وآخرت کو ضائع کرچکے ہوگے۔
توبہ کرو، واپس پلٹ آؤ اور اپنے اہل خانہ کی طرف لوٹ آو۔ تم ہمیں اپنے ساتھ رحم دل پاؤ گے۔ تمہاری توبہ ہمیں تمہارے قتل یا تم کو جلاوطن کرنے سے زیادہ محبوب ہیں۔ توبہ کرو اور یاد رکھو کہ ہم تم کو کمزوری سے یہ دعوت نہیں دیں رہے ہیں۔ ہم تم کو اس حال میں توبہ کی دعوت دیں رہے ہیں جب ہماری تلواریں تمہاری گردنوں سے صرف دو کمان یا اس سے بھی کم فاصلے پر رہ گئی ہے ۔ اگر تم توبہ کروگے تو تم ہم سے خیر واحسان کے سوا کچھ نہیں پاؤگے۔
اے دولت اسلامیہ کے سپاہیو!
ثابت قدم رہو، بیشک تم ہی حق پر ہو۔ صبر سے مدد طلب کرو کیونکہ کامیابی صبر کے ساتھ ہی ہے۔ غلبہ اسی کے لیے ہے جو صبر کرتا ہے۔ پس صبر کرو ۔ صلیبی زوال پذیر ہورہے ہیں اور روافضی (شیعہ) لڑکھڑارہے ہیں جبکہ یہودی خوف کے مارے کانپ رہے ہیں۔ اللہ کے فضل سے تمہارا دشمن ماضی کی نسبت آج زیادہ کمزور ہوچکا ہے اور دن بدن کمزور سے کمزور تر ہوتا چلا جارہا ہے۔ الحمدللہ
جبکہ تم اللہ کے فضل سے طاقتور ہوچکے ہو اور اس پر کوئی فخر نہیں۔ تم اللہ کے فضل سے طاقتور سے طاقتور ہوتے چلے جارہے ہو۔ پس صبر کرو اور دونوں کامیابیوں (فتح یا شہادت) میں سے ایک کامیابی یقینی ہے۔ یہ ایک ہی جان ہے ، پس اسے اللہ کی راہ میں سستا کرتے ہوئے قربان کرو۔
﴿إِنَّ اللَّـهَ اشْتَرَىٰ مِنَ الْمُؤْمِنِينَ أَنفُسَهُمْ وَأَمْوَالَهُم بِأَنَّ لَهُمُ الْجَنَّةَ ۚ يُقَاتِلُونَ فِي سَبِيلِ اللَّـهِ فَيَقْتُلُونَ وَيُقْتَلُونَ ۖ وَعْدًا عَلَيْهِ حَقًّا فِي التَّوْرَاةِ وَالْإِنجِيلِ وَالْقُرْآنِ ۚ وَمَنْ أَوْفَىٰ بِعَهْدِهِ مِنَ اللَّـهِ ۚ فَاسْتَبْشِرُوا بِبَيْعِكُمُ الَّذِي بَايَعْتُم بِهِ ۚ وَذَٰلِكَ هُوَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ.
’’بیشک اﷲ نے مومنوں سے ان کی جانیں اور ان کے مال، ان کے لئے جنت کے عوض خرید لئے ہیں، (اب) وہ اللہ کی راہ میں قتال کرتے ہیں، سو وہ قتل کرتے ہیں اور قتل بھی کئے جاتے ہیں۔ یہ تورات اور انجیل اور قرآن میں سچا وعدہ ہے جس کا پورا کرنااسے ضروری ہے اور الله سے زیادہ وعدہ پورا کرنے والا کون ہے۔ جو سودا تم نے اس سے کیا ہے بس اس سے خوش رہو اور یہ بڑی کامیابی ہے۔‘‘(التوبة : 111)
میں اپنی گفتگو کو عقیدہ کے کاٹنے والے شیروں کی تعریف کیے بغیر ختم نہیں کروں گا۔
بغداد کے شمال اور اس کے جنوب میں موجود خلافت کے سپاہی ، جنہوں نے انگاروں کو ہاتھوں میں تھاما ہوا ہے، جو چٹانوں سے بھی زیادہ سخت ہیں اور جو (شیعی ) روافضیوں کی ناکوں کو ان کے ہی علاقوں اور قلعوں میں روزانہ خاک میں ملارہے ہیں۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ اللہ ہی تم کو اجر سے نوازے۔
بلاشبہ تم سے ہر ایک کو ہم ایک ہزار کے برابر سمجھتے ہیں۔ اگر مسلمان تمہاری کارروائیوں اور تمہارے کارناموں سے ناواقف ہیں ؛ تو تمہارے لیے یہی کافی ہے کہ اللہ تعالی سے زمین اور آسمان میں کوئی چیز مخفی نہیں ہے۔
میں توحید کے بہادروں ، اسلام کے ہیروز اور دلیر مجاہدین انصار ومہاجرین کی تعریف کرتا ہوں جو شمال میں اہل سنت کے قلعے سمجھے جانے والے سخت بیجی میں موجود ہیں، اور جو خوددار کرکوک میں کفری ملتوں کے مسلمانوں کیخلاف تشکیل دیئے جانے والے (عالمی)اتحاد سے مقابلہ کرنے میں مصروف ہیں، جنہوں نے ثابت کردیا کہ دولت اسلامیہ کے قدم سب سے بھاری قدم ہیں اور اس کی آواز سب سے بلند آواز ہے۔ انہوں نے اپنے خون اور اپنے چیتھڑوں کو اس پر دلائل کے طور پر پیش کیا اور اپنی جانوں کو اسلام کے دفاع کے لیے سستا کرکے قربان کیا، جنہوں نے امریکہ، یورپ ، آسٹریلیا اور کینیڈا میں موجود یہودیوں اور صلیبیوں کو ایسا بنادیا ہے کہ وہ راتوں کو اس حال میں سوتے ہیں کہ ان کے دل غیظ وغضب سے بھرے ہوتے ہیں، عاجزی نے ان کے کندھوں کو چور چور کردیا ہے اور رعب نے ان کی نیندیں حرام کردی ہیں۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔
تم نے ثابت کردیا کہ مسلمان کبھی بھی شکست سے دوچار نہیں ہوتے ہیں جب تک وہ اس کتاب (قرآن) اور تلوار کو تھامے رکھتے ہیں، جن دونوں کے ساتھ ہمارے نبی ﷺ کو مبعوث کیا گیا۔ پس تم ثابت قدم رہو۔ تم پر میری جان قربان ہو۔ ثابت قدم رہو ، پس عراق میں (شیعی ) روافضہ اور اس کے اتحادیوں پر تمہاری کارروائیوں سے صرف صلیبی ہی زوال پذیر اور خلافت کی بنیادیں مضبوط نہیں ہورہی ہیں بلکہ شام اور یمن میں نصیری اور حوثیوں کا بھی خاتمہ ہورہا ہے۔
میں انبار میں الولاء والبراء کے شیروں اور جھپٹا مارنے والوں کی تعریف کرتا ہوں ، جنہوں نے مرتدین کے محفوظ قلعوں کو منہدم کردیا اور انہیں ذلت ورسوائی کے مختلف جام پلاتے ہوئے ان کو چیر پھاڑا اور انہیں دربدری کا شکار کردیا ؛جنہوں نے انبار کو مرتدین کی آنکھوں اور (شیعی) روافضہ کی گردنوں سے نکالتے ہوئے چھین لیا اور امریکہ اور اس کے اتحادیوں کی ناک خاک آلود کرکے اس کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔اللہ تم کو اجر دے۔ اللہ تم کو اجر دے۔
تم نے دنیا کو یہ اسباق ذہن نشین کرادیئے ہیں کہ عزت صرف اللہ ، اس کے رسول اور مومنین کے لیے ہیں۔ ثابت قدم رہو۔ اللہ تم کو اجر دے۔ ان شاء اللہ اگلی ملاقات گاہ (ہدف) کربلاء وبغداد ہے۔
میں عزت وخوددار سیناء میں موجود خلافت کے شیر موحدوں کی تعریف کرتا ہوں ، جنہوں نے پرامن پسند جدوجہد کے ساتھ کفر کیا، عزت وشرف اور مردانگی کے راستے کو اختیار کیا، ذلت وعاجزی کو ٹھکرادیا اور اپنے خون وجان کو دین کے لیے وقف کردیا۔اللہ ہی تم کو اجر دے ۔ اللہ ہی تم کو اجر دے۔ تم کو اللہ ہی کافی ہے اور وہی تمہارا شمار ان لوگوں میں کریں، جن کے بارے میں اس نے فرمایا :
﴿رِجَالٌ صَدَقُوا مَا عَاهَدُوا اللَّـهَ عَلَيْهِ.
’’کتنے ہی ایسے جواں مرد ہیں کہ جنہوں نے اللہ سے کیا ہوا عہد کو سچ کر دکھایا۔ ‘‘(الأحزاب : 23)
ہم اللہ سبحانہ وتعالی سے دعا گوہیں کہ عنقریب ہم تم کو بیت المقدس میں دیکھیں۔ اللہ کے ہاں تمہارے اجر کو اکٹھا کرنے کے لیے یہی کافی ہے کہ تم سے خوف ورعب کے مارے یہودیوں کی نیندیں حرام ہیں۔
میں الرقہ ، موصل ، حلب ، دجلہ ، الفرات، الجزیرۃ ، البرکہ ، الخیر ، حمص اور حماہ میں موجود خلافت کے شیر مجاہدین کی تعریف کرتا ہوں۔ اللہ تعالی تم کو اجر سے نوازے ۔ تم جنگوں کو برپا کررہے ہو اور اسلام کی عزت واپس لارہے ہو۔ پس صبر کرو ، ثابت قدم رہو اور اپنی احتیاط کو اختیار کرو۔ اللہ کے دشمن جھاگ کی طرح اکھٹے ہورہے ہیں ، گرج رہے ہیں اور اہل موصل کو دھمکیاں دیں رہے ہیں۔ لیکن ہم سمجھتے ہیں کہ وہ موصل سے پہلے الرقہ اور حلب کیخلاف اکھٹے ہو(کر یلغار کر)نا چاہتے ہیں۔ پس احتیاطی تدابیر اختیار کرو۔
میں دمشق اور دیالی میں موجود خلافت کے شیروں کی تعریف کرتا ہوں ، جو صبر کرنے والے ، ڈٹ جانے والے اور پلٹ کر جھپٹنے والے ہیں۔ اللہ تم کو اجر دے۔ اللہ تم کو اجر سے نوازے۔ وہ امت کبھی شکست خوردہ نہیں ہوسکتی ہے جس میں تم جیسے موجود ہو۔
میں لیبیا، الجزائر اور تونس میں خلافت کے سپاہی ہیروز اور بہادروں کی تعریف کرتا ہوں۔ اللہ تم کو اجر دے ۔ ثابت قدمی اختیار کرو اور صبرو کرو کیونکہ آخری نتیجہ وانجام اللہ کے حکم سے تمہارے ہی لیے ہیں۔
میں خراسان اور مغربی افریقہ میں موجود دولت اسلامیہ کے سپاہی مجاہدین کی تعریف کرتا ہوں، ہم ان کو بیعت کرنے پر مبارکباد دیتے ہیں، ہم اللہ تعالی سے دعا کرتے ہیں کہ وہ ان کو ثابت قدمی عطا کرے، ان کو فتح نصیب کرے اور انہیں استحکام بخشے۔ اللہ تعالی ہی ان کو اجر دے۔
میں یمن میں موجود خلافت کے سپاہیوں کی تعریف کرتا ہوں ۔ ہم ان کو (زبردست جہادی کارروائیوں کے ساتھ ہونےوالے) ان کے آغازی اقدام پر مبارکباد دیتے ہیں اور ہم ان سے مزید کا انتظار کررہے ہیں۔ اللہ تعالی ان کو اجر دے۔
اس موقع پر میں دنیا بھر کے طاغوتوں کی جیلوں میں اسیر مسلمان قیدیوں کو ذکر کرنا نہیں بھولوں گا اور ان سے کہتا ہوں :
ہم نے تمہیں کبھی ایک دن بھی نہیں بھلایا ہے اور نہ ہی ہم کبھی تم کو بھلائینگے۔ ان شاء اللہ
ہم اللہ کے حکم سے اپنی توانائی لگاتے ہوئے پوری جدوجہد کرینگے اور کوئی موقع نہیں جانے دینگے یہاں تک ہم تمہارے آخر تک سب کو اللہ کے حکم سے رہا نہ کرالیں۔ پس صبر کرو اور ثابت قدم رہو۔
بالخصوص ان طالب علموں کو جو آل سلول (آل سعود) اور اس کے مددگاروں ــ اللہ ان کو ذلیل کرے ــ کی جیلوں میں قید ہیں۔
اے اللہ! کتاب کو نازل کرنے والے، جلد حساب لینے والے! اے اللہ ! ان (اتحادی)جتھوں کو شکست سے دوچار کردے ۔ اے اللہ ان کو ہزیمت دے اور ان پر زلزلہ برپا کردے۔ اے اللہ! ہمیں ان پر کامیابی عطا فرمادے۔
اے اللہ ! تو ہی امریکہ اور اس کے اتحادی صلیبیوں ، یہودیوں، (شیعی)روافضیوں ، مرتدین اور ملحدین کی پکڑ فرما۔ اے ہمارے رب ! ان کے اموال کو غارت کردے اور ان کے دلوں کو سخت فرمادے کہ یہ نہیں ایمان لیکر آئے یہاں تک کہ دردناک عذاب کو دیکھ نہ لیں۔
ہمارے پروردگار!ہمارے گناہوں کو اور ہم سے اپنے معاملات میں سرزد ہونے والی بے اعتدالیوں کو معاف فرمادے اور ہمارے قدموں کو جمادے اور کافر قوم پر ہمیں فتح عطا کردے۔
ہماری آخری بات یہ ہے کہ تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے۔
*** *** ***

اس جدید دور میں جب داعش والے گلے کاٹنے اور زندہ جلانے کی ویڈیو بناتے ہیں ، خلیفہ وقت کا صرف کمپیوٹر پرنٹڈ خط آتا ہے؟ نہ کوئی خلافت کی مہر نہ کوئی تاریخ خطابت کا پتہ ؟ یہ کیسا جعلی اور من گھڑت پیغام پیسٹ کیا ہے یہاں
 

Khair Andesh

Chief Minister (5k+ posts)
ملّا عمر صاحب نے ديش جيسے خطرے کے بارے ميں کچھ نہيں کہا؟ ايک تو سامنے آتے نہيں اور اوپر سے ديش کی مخالفت بھی نہيں۔ اب ملک کی محبّت کہاں گئئ؟
کسی تنظیم کا نام لینا ضروری نہیں۔
لہذا ہمارے ملک میں جہادی صف کو متحد رکھنا ایک شرعی فریضہ ہے ۔ اس لیے ہم نے تمام مجاہدین کو حکم دے دیا ہے کہ اپنا اتحاد مضبوط رکھیں اور جو لوگ اختلاف کرتے ہیں ، جہادی صف خراب کرتے ہیں یا مجاہدین منتشر کرنے کی کوشش کرتے ہیں ان کا راستہ سختی سے روکیں ۔
الحمد لللہ مجاہدیں جاگ رہے ہیں، اور سازش سے با خبر ہیں،۔ اسلئے خداکے فضل سے، داعش یا کسی بھی نام سے مجاہدیں کی صفوں میں پھوٹ ڈالنے کی کوشش شدید ناکامی سے دوچار ہو گی۔
 

Khair Andesh

Chief Minister (5k+ posts)
Khawarjee (ISIS, Daish, Taliban, Al Qaida, Al Shabab, Houthi, Hizb Ullah, Shitan Aziz Firqa, Gullu Qadri Firqa) ka jo yaar h, Islam or Pakistan ka Gaddar h.

اللہ اپنی راہ میں لڑنے والوں کی مدد و نصرت فرمائے، خواہ وہ افغانستان، فلسطین کشمیر میں ہوں یا شام و عراق اور یمن میں۔
 
Last edited:

Khair Andesh

Chief Minister (5k+ posts)
اس مرتبہ عید کا پیغام ذیادہ جامع، اور غیر روایتی اور پہلے سے ذیادہ اہمیت کا حامل ہے۔
اس میں؛
اپنے عزم کا اعادہ ہے
یہ بات ٹھیک ہے کہ ملک کے بہت سے وسیع علاقے مجاہدین نے فتح کردیے ہیں مگر ہماری یہ جہادی مزاحمت اس وقت تک جاری رہے گی جب تک ہماراملک مکمل طورپر کفری جارحیت سے پاک ہوگا اور یہاں اسلامی نظام کی مکمل حاکمیت ہوگی ۔

داعش کارڑ یا کسی بھی اور طریقے سےمجاہدین کو آپس میں لڑواکر انہیں کمزور کرنے کے خواب دیکھنے والوں کےلئے بری خبر ہے
لہذا ہمارے ملک میں جہادی صف کو متحد رکھنا ایک شرعی فریضہ ہے ۔ اس لیے ہم نے تمام مجاہدین کو حکم دے دیا ہے کہ اپنا اتحاد مضبوط رکھیں اور جو لوگ اختلاف کرتے ہیں ، جہادی صف خراب کرتے ہیں یا مجاہدین کو منتشر کرنے کی کوشش کرتے ہیں ان کا راستہ سختی سے روکیں ۔

مستقبل کی امریکی استعماری حکومت کے اثر سے سو فیصد پاک، افغانوں کی اپنی اسلامی حکومت کا خاکہ اور خوشخبری ہے۔
امارت اسلامی کی تشکیلات میں ملک کے تمام حصوں اور تمام لسانی طبقات سے صالح اور سمجھدار لوگ شریک ہیں ، جوگذشتہ 36 سالہ تجربات اور پھر آخری بیس سالوں کی ذمہ داریوں سے بہت کچھ حاصل کرچکے ہیں ۔ لہذا کوئی اس تشویش کا شکار نہ ہو کہ اگر امارت اسلامی کی حکومت آگئی تو کیا ہوگا ۔ میں آپ سب کو اطمینان دلاتاہوں کہ آنے والا انقلاب ایسا نہیں ہوگا جس طرح کمیونسٹ حکومت کے خاتمے سے سب کچھ ختم ہوکر رہ گیا تھا ۔
پروپیگنڈوں کا جواب ہے۔
کچھ حلقے مجاہدین پر الزام لگاتے ہیں کہ یہ پاکستان اور ایران کے لوگ ہیں ۔ ان کے یہ خیالات اور الزامات انتہائی ظالمانہ اور خلاف حقیقت ہیں ۔ کیوں کہ ہماری گذشتہ تاریخ اور رواں صورتحال ان دعووں کی تصدیق نہیں کرتی ، اور آئندہ کی تاریخ بھی اس تہمت کے خلاف گواہی دے گی ، ان شاء اللہ۔
خون خرابہ سے ہر ممکنہ حد تک بچنے کی تلقین ہے۔
مجاہدین بھائیو ! ابھی جب اللہ تعالی نے فتوحات کے دروازے تم پر کھول دیے ہیں تو کوشش کرو کہ مخالف صف کے لوگوں کودعوت کے ذریعے باطل راہ سے نجات دلاو۔ ان کو حفاظت اور باعزت زندگی کے راستے مہیا کرو۔
اور تمام مسلمانوں سے اعانت و مدد اور دعا کی اپیل ہے۔
پوری دنیا خصوصا افغانستان کے لوگوں سے اپیل کرتا ہوں کہ فتوحات کے اس شروع ہونے والے سلسلے میں جس طرح گذشتہ 14 سال تک جان ومال سے مجاہدین کی مدد کی ، اب پہلے سے بھی زیادہ ان کی مدد اور ان کا تعاون کریں ۔ اس بات پر تمھاری توجہ رہے کہ جہاد ہم میں سے ہر شخص پر فرض عین ہے ۔ اگر کوئی شخص خود جہادی محاذ پر نہیں جاسکتا وہ ایک مجاہد کی تیاری اور جہادی صفوں کے ساتھ مالی ، سیاسی اور ثقافتی وابلاغی طریقوں سے تعاون کرکے جہادی فریضہ ادا کرسکتا ہے
 

Ibrahim92

MPA (400+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.

اس جدید دور میں جب داعش والے گلے کاٹنے اور زندہ جلانے کی ویڈیو بناتے ہیں ، خلیفہ وقت کا صرف کمپیوٹر پرنٹڈ خط آتا ہے؟ نہ کوئی خلافت کی مہر نہ کوئی تاریخ خطابت کا پتہ ؟ یہ کیسا جعلی اور من گھڑت پیغام پیسٹ کیا ہے یہاں

Audio Ki urdu translation hay ! Shukar hay tum nay yeh nahi kah dia kay Khalifa Ibrahim nay Urdu main kasay biyan day dia :lol:
 

Piyasa

Minister (2k+ posts)
Re: Afghan Taliban leader Mullah Mohammed Omar has backed peace talks with the Afghan government.





پیش کرتا ہے:
مولانا امیر المومنین ابوبکر الحسینی القرشی البغدادی





مولانا" امیر المومنین" ابوبکر" الحسینی" القرشی "البغدادی"

لالا، ايک بات بتاؤ۔۔۔۔۔ يہ کتنے لوگوں کے نام ہيں؟ چور بغدادی کے نام کے آگے مولانا، امير المومنين، ابوبکر صديق رضی اللّہ تعالی عنہ کے نام کی برابری؟ يار اس چور کے نام کے آگے چور ہی لگنا چاہيۓ

 
Sponsored Link