ﮐﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﮯ

m00dy

MPA (400+ posts)
ﮐﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﮯ

ﺍﯾﮏ ﮔﺠﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺎ ﮐﭩﺎ )ﺑﮭﯿﻨﺲ ﮐﺎ
ﺑﭽﮧ( ﮔﻢ ﮨﻮﮔﯿﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻮ ﻋﻤﺮ
ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﺅﮞ ﮔﺎﺅﮞ
ﺍﭘﻨﮯ ﮐﭩﮯ ﮐﻮ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔

ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺘﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺰﺍﺭﺍﺕ ﺁﺗﮯ
ﮔﺌﮯ ﻭﮦ ﮐﭩﺎ ﻣﻠﻨﮯ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﭘﯿﮧ
ﭼﮍﮬﺎﻭﮮ ﮐﯽ ﻣﻨﺖ ﻣﺎﻥ ﮐﺮ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﺘﺎ
ﮔﯿﺎ،

ﺍﯾﮏ ﺟﮕﮧ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ ﺟﺐ ﮔﺠﺮ ﺻﺎﺣﺐ
ﻧﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﭘﯿﮧ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺑﮯ ﮐﯽ
ﻧﺬﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺑﯿﭩﺎ ﮐﮩﻨﮯ
ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺍﺑﺎ ﭼﻠﻮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﺎ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ

ﮐﮧ ﺍﺑﺎ ﺟﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮐﭩﮯ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺳﮯ
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻣﻨﺘﯿﮟ ﻣﺎﻥ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ
ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺏ ﮐﭩﺎ ﻣﻞ ﺑﮭﯽ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ

ﮔﮭﺎﭨﮯ ﮐﺎ ﺳﻮﺩﺍ ﮨﻮﮔﺎ ﺍﺱ ﻟﯿﺌﮯ ﻣﯿﺮﺍ
ﺧﯿﺎﻝ ﮨﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﯿﮯ۔
ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﺎﭖ ﺯﻭﺭ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﮨﻨﺴﻨﮯ ﻟﮕﺎ،،
ﺟﺐ ﺑﯿﭩﮯ ﻧﮯ ﮨﻨﺴﻨﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﭘﻮﭼﮭﯽ
ﺗﻮ ﺑﺎﭖ ﺑﻮﻻ،،، ﻣﯿﺮﯼ ﺑﭽﮯ،،،!

ﺯﺭﺍ ﮐﭩﮯ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮕﻮﮞ ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺗﻮ
ﭘﮍﻧﮯ ﺩﻭ، ﺍﻥ ﺑﺎﺑﻮﮞ ﺷﺎﺑﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ
ﺩﯾﮑﮫ ﻟﻮﮞ ﮔﺎ۔
ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﯾﺎﺩ ﺁﯾﺎ ﺟﺐ ﻣﯿﺎﮞ
ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺎﺏ ﺧﻮﺍﺟﮧ ﺁﺻﻒ ﻧﮯ
ﺍﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﺧﻮﺷﺨﺒﺮﯼ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﮎ ﺑﺠﻠﯽ
ﮐﺎ ﺑﺤﺮﺍﻥ 6 ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺣﻞ ﻧﮩﯿﮟ
ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ، ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻟﯿﮑﺸﻦ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ 6
ﻣﺎﮦ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﺱ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﺳﮯ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ
ﺟﺎﻥ ﭼﮭﮍﺍﻧﮯ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺏ

ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﺎ ﮐﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﺳﯿﻨﮓ، ﺩﻭﻧﻮﮞ
ﻣﯿﺎﮞ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺏ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻭﮨﯽ ﺳﻠﻮﮎ
ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﮔﺠﺮ ﺑﮭﯿﺎ ﻧﮯ
ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ
 
Last edited by a moderator:

ansarppu

Minister (2k+ posts)
barca aur mcbeth ki tarah aap ne bhi ban toh nahi hona ...
koi gujjar admin lag gaya hai ....
warna ban karne ka koi khaas tuk nahi tha....
sab kuch lighter note pe tha
 

m00dy

MPA (400+ posts)
barca aur mcbeth ki tarah aap ne bhi ban toh nahi hona ...
koi gujjar admin lag gaya hai ....
warna ban karne ka koi khaas tuk nahi tha....
sab kuch lighter note pe tha


تھریڈ کہ ٹائٹل سے گجر ڈیلیٹ کیا اسی ڈر سے ...(bigsmile)....ویسے لگتا ہے " دانش سکول " سے نئے نئے موڈز بھرتی ہوے

:P
 

Sachbolo

Senator (1k+ posts)
Jesa yeah latifa hay wesay he yahan Gujjaron ka supply kia hoa dood bhee milta hay. Parsoon Lahore mea Food Department walon nea Khoob milawat shyda dood ki tankian ulti theen ziada tar Gujjaron ka farm sea ya Gujjar suppliers ka pas sea asli milawat shuda.
 

Altaf Lutfi

Chief Minister (5k+ posts)
بظاھر لگتا تو ایسے ھی ھے کہ جوڈیشل کمشن رپورٹ نے میاں صاحب کو بلا شرکتِ غیرے اقتدار کا مالک بنا دیا ھے اور مرزا یار سہولت سے سُنجی گلیوں میں ننگا ناچ سکتا ھے، لیکن ھم مور کے ناچ سے مسحور ھونے والے لوگ اس کے بدنما پیروں پر کم ھی نظر ڈالتے ھیں، ایسا نہیں کہ ھمارا دھیان نہیں جاتا، ھم صرف اپنے من پسند خواب سے نہیں جاگنا چاھتے اور یہی وجہ ھے کہ جب نورے میاں صاحب کی فتح کے ڈھول بجاتے ھیں تو میاں صاحب سر پیٹ لیتے ھیں کہ کمبختو ! کون سا اقتدار ؟ میاں صاحب کی الجھنیں اتنی ھیں کہ حکومت ایک بوجھ ھے جسے نہ اٹھانے سے مشکلات میں اضافہ ھو سکتا ھے، وہی زرداری والا حال ھے کہ ایوانِ صدر طاقت کا مرکز نہیں، ایک قانون سے بھاگے ھوےؑ شخص کی جاےؑ پناہ بن گیا تھا

میاں صاحب کھُلی آنکھوں سے احتساب مشین کی سندھ سے پنجاب آمد کا شور سُن رھے ھیں، اسمبلی میں ان کے کثیرتعداد میں حامی نیب سے اپنا جُرم قبول کر کے نا اھل ھونے کے باوجود اسمبلی میں بیٹھے ھیں، کرپشن کے معاملات میں میاں صاحب زرداری کے شاگرد ھیں لیکن پھر بھی اتنا بوجھ ضرور ھے کہ ان کی ٹانگوں سے باندھا گیا تو سمندر کی تہہ سے واپس نہیں آنے دے گا، شہباز شریف تو ان گنت قتل کے معاملات میں آسانی سے پھانسے جا سکتے ھیں

سب سے بڑی مصیبت عمران خان والی ھے، ایسا نہیں کہ عمران خان میاں صاحب سے بڑا سیاست دان ھے یا پیسہ لگا سکتا ھے یا ھمارے معاملات میں دخل دینے والے بیرونی مملک کو میاں صاحب سے بدظن کر سکتا ھے، اصل مشکل یہ ھے کہ میاں صاحب جس نظام کی کوکھ سے نکلے ھیں، وہ اپنے دن پُورے کر رھا ھے، کھینچ تان کر وقت تو نکالا جا سکتا ھے لیکن آخرکار عوامی غضب سے بچنا ممکن نھیں

اسی لیے ھم جو دن بھر ٹیلیویژن پر میاں صاحب کی آنیان جانیاں دیکھتے ھیں اور اس کی آڑ میں جو ھزاروں چیونٹے ملکی معیشت کے کیک کو توڑ توڑ کر اپنے بِلوں میں ڈھو رھے ھیں، اس کی ایک طاقتور آنکھ مسلسل نگرانی کر رھی ھے
 
Sponsored Link