گندم درآمد اسکینڈل؛ غیرمتعلقہ افسر کو معطل کیے جانے کا انکشاف

wheat-pakistan-o.jpg


گندم درآمد سکینڈل کی تحقیقاتی کمیٹی کی سفارش پر ایک غیرمتعلقہ آفیسر معطل

میری ذمہ داریوں میں چھوٹی فصلیں، سزیاں ودالیں وغیرہ شامل تھیں: سید وسیم الحسن

گندم سکینڈل کی تحقیقات میں انتہائی اہم پیشرفت سامنے آئی ہے جس کے بعد وفاقی حکومت کی طرف سے کیے گئے فیصلوں پر سوالات اٹھ گئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق انکشاف ہوا ہے کہ گندم درآمد سکینڈل کی تحقیقات کے بعد جس افسر کو معطل کر دیا گیا ہے اس کا گندم کی فصل کے امور سے کوئی تعلقات ہی نہیں ہے۔ گندم سکینڈل کی تحقیقات کے بعد ایسے افسر کو معطل کرنے (جس کا اس سکینڈل سے کوئی تعلق نہیں) پر وفاقی حکومت کے فیصلوں پر سوال اٹھائے جا رہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق سیکرٹری کابینہ کامران علی افضل کی تحقیقات کمیٹی کی سفارشات پر وسیم الحسن نامی فوڈ کمشنر ون کو معطل کر دیا گیا ہے تاہم مذکورہ افسر کا گندم کی فصل کے امور سے کوئی تعلق ہی نہیں ہے۔ سٹیبلشمنٹ ڈویژن کی طرف سے وسیم الحسن کے لکھے گئے سسپنشن لیٹر میں ایک بڑی غلطی سامنے آئی ہے جس کے مطابق ان کا عہدہ ہی غلط درج کر دیا گیا ہے۔

سید وسیم الحسن کو فوڈ کمشنر ون کے بجائے سٹیبلشمنٹ ڈویژن کی طرف سے جاری سسپنشن لیٹر میں فوڈ کمشنر 2 لکھا گیا ہے۔ 2023ء اکتوبر میں سید وسیم الحسن کو وزارت فوڈ وسکیورٹی میں او ایس ڈی بنایا گیا تھا، 2024ء مارچ میں دوبارہ سے فوڈ کمشنرون تعینات کر دیا حالانکہ پاسکو اور گندم کے امور فوڈ کمشنر ٹو کی ذمہ داریوں میں شامل ہیں، اسی لیے وسیم الحسن کا گندم کی فصل کے امور کے ساتھ کوئی تعلق نہیں۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ وسیم الحسن کی طرف سے اپنی معطلی ختم کرنے کے لیے وفاقی حکومت کو خط لکھ دیا گیا ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ میری معطلی کے خط میں وفاقی حکومت کی طرف جاری سے مجھے غلطی سے فوڈ کمشنر 2 لکھ دیا گیا۔ بحیثیت فوڈ کمشنر ون میرا گندم درآمد سکینڈل کے ساتھ کوئی تعلق نہیں بنتا، میرے ذمہ داریوں میں چھوٹی فصلیں، سزیاں ودالیں وغیرہ شامل تھیں۔ 12 اکتوبر 2023ء سے 19 مارچ 2024ء تک میں بطور او ایس وزارت میں تعینات تھا جبکہ گندم کی درآمد کے حوالےسے مجھ سے کوئی مشاورت نہیں کی گئی۔

سید وسیم الحسن کے خط کے متن کے مطابق میری معطلی سے میرا 31 سالہ کیریئر بری طرح متاثر ہوا ہے، دل کا مریض ہونے کے باعث اس صورتحال سے میری صحت بھی متاثر ہوئی ہے۔ واضح رہے کہ گندم درآمد سکینڈل کی تحقیقات کرنے والی کمیٹی کی سفارش پر وسیم الحسن سمیت 4 افسروں کو معطل کر دیا گیا تھا، علاوہ ازیں سیکرٹری کابینہ کامران علی افضل کی تحقیقاتی کمیٹی کی طرف سے سفارشات پر وزارت فوڈ وسکیورٹی افسران نے شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے۔
 

kwan225

Minister (2k+ posts)
پیسہ کسی اور نے بنایا ۔۔
اور۔۔۔ایک غیرمتعلقہ آفیسر معطل۔۔
بہت خوب۔۔