مریم نواز اپنے والد کے بعد خاندان کی واحد کرشماتی شخصیت ہیں، سہیل وڑائچ

battery low

Minister (2k+ posts)
اب جبکہ مریم نواز شریف وزیر اعلیٰ کا حلف اٹھانے والی ہیں تو ضروری ہے کہ منطقی انداز میں ان کی خوبیوں اور خامیوں کا جائزہ لیا جائے۔ یہ دیکھا جائے کہ ماضی میں ان کی سیاست اور شخصیت کن کن مراحل سے گزری اور وہ مستقبل میں کن خوبیوں کی بنا پر آگےبڑھ سکتی ہیں اور کن خامیوں کی وجہ سے انہیں مشکلات پیش آ سکتی ہیں۔

مریم نواز شریف کی پہلی خاتون وزیر اعلیٰ کے طور پر نامزدگی اس بات کا باضابطہ اعلان ہے کہ شریف خاندان نے انہیں اپنے جانشین اور سیاسی چہرے کے طور پر آگے بڑھایا ہے۔

شریف خاندان میں میاں محمد شریف کی وفات کے بعد سے میاں نواز شریف کو باضابطہ طور پر خاندان کا سربراہ بنایا گیا تھا۔ اس لئے خاندان کے سیاسی اور بیشتر سماجی فیصلے اور اندرونی تنازعات و اختلافات کو بھی وہی حتمی شکل دیتے ہیں۔

شریف خاندان ان کے فیصلوں پر، اختلاف ہو تب بھی، سر تسلیم خم کرتا ہے۔ مریم نواز اور حمزہ شہباز میں سے وزیر اعلیٰ چننے کا فیصلہ نواز شریف نے کیا ہے اور اس پر شہباز شریف اور حمزہ نے صاد کہا ہے۔ اب حمزہ پنجاب اسمبلی کی بجائے قومی اسمبلی کا حلف اٹھائیں گے اور وہاں شہباز شریف کی معاونت کریں گے۔

مریم نواز شریف اپنے والد کے بعد اپنے خاندان کی واحد کرشماتی شخصیت ہیں۔ وہ کراؤڈ پُلر ہیں، جارحانہ اور جذباتی سیاست کرتی ہیں، والد نے مقتدرہ کے خلاف مزاحمت کی تو وہ شانے سےشانہ ملا کر ان کے ساتھ کھڑی ہوگئیں۔ نہ جیل سے گھبرائیں اور نہ نیب کے احتساب سے۔

جیل اس بہادری سے کاٹی کہ سب حیران تھے کہ نازوں میں پلی، صنعت کار خاندان کی یہ لاڈلی اتنی سخت جان کیسے نکل آئی؟

نوازشریف کی آخری وزارت ِعظمیٰ کے دور میں جب ان کی مقتدرہ سے ٹھن گئی تو مریم نے وزیراعظم ہاؤس کا مورچہ سنبھال لیا، سوشل میڈیا ہو یا ٹی وی چینلز، اس میں نواز شریف کے جارحانہ دفاع کی منصوبہ بندی یہ کرتیں، سب بڑے بڑے فیصلوں میں شریک ہوتیں۔

مشکل کے اس دور میں والد کی تنہائی کی ساتھی بھی یہی تھیں، ہر روز گھنٹوں والد کی صحبت میں گزارتیں۔ اس قربت کی وجہ سے مخالفوں کا نزلہ بھی ان پر گرتا تھا۔ جنرل باجوہ کو جہاں اور باتوں کی نوازشریف سے شکایتیں تھیں، مریم کےسخت موقف پر بھی ان کو شدید اختلافات تھے۔ اس زمانے میں پی ٹی آئی اور مقتدرہ ایک ہوا کرتے تھے اس لئے عمران خان اور پی ٹی آئی کانشانہ مریم بھی بنتی رہیں۔

اس زمانے میں خاندان کے اندر کلثوم نواز، مریم نواز اور اسحاق ڈار کا ایک نیا اندرونی حلقہ بن گیا یہی حلقہ حتمی سیاسی فیصلے کرتا تھا۔ چودھری نثار علی اسی زمانے میں مریم کے خلاف بولے تھے۔ مریم نواز کو ڈان لیکس میں بھی ملوث قرار دینے کی کوشش کی گئی لیکن چودھری نثار علی کی کوشش سے جنرل باجوہ ان کا نام نکالنے پر راضی ہوگئے تھے۔

تحریک انصاف کی حکومت کے دور میں بھی مریم نے کئی بڑے شہروں میں جلسے کئے، اپنے مزاحمتی انداز اور رویے کی وجہ سے انہیں پذیرائی بھی بہت ملی۔

شریف خاندان نے اپنی سیاست کا آغاز پیپلز پارٹی کی مخالفت سے کیا۔ مقتدرہ اور دائیں بازو کی بے پناہ حمایت سے انہوں نے بھٹو کی جماعت کے ’لاڑکانہ‘ پنجاب میں تعمیر و ترقی اور سیاسی ترغیب و انتقام سے اس کا صفایا کردیا۔

شریف خاندان نے مریم نواز کو بھی ایجنڈے کے تحت پنجاب میں اتارا ہے ان کا خیال ہے کہ اگر چند سال مل گئے تو مریم نواز کے پیچھے ان کے والد بیٹھ کر تحریک انصاف کا بھی وہی حشر کریں گے جو پیپلز پارٹی کا کیا تھا۔

دیکھنا یہ ہوگا کہ مریم کی خوبیاں ان کی پنجاب میں سیاست کو آگے بڑھائیں گی یا ان کی کمیاں اور کوتاہیاں ن لیگ کو پہلے سے بھی کمزور کردیں گی۔

مریم نواز کی خامیاں اور کوتاہیاں بیان کرنا بھی ضروری ہے۔ مریم نواز کے سیاسی کیریئر کو دیکھا جائے تو وہ کبھی بھی فل ٹائم سیاستدان نہیں رہیں، وہ پارٹ ٹائم سیاست کرتی رہی ہیں ۔کبھی تو وہ سیاست میں متحرک ہو کر جلسوں میں جوش و خروش سے تقریریں کرتی ہیں اور کبھی کئی کئی مہینے وہ خاموشی اور چپ کاروزہ رکھ لیتی ہیں۔

اب ان کا یہ انداز ِسیاست چل نہیں سکے گا، اب انہیں ہر وقت اور ہر پل متحرک سیاست میں رہنا پڑے گا۔

شریف خاندان میں اپنی قدیم روایات کی وجہ سے خاندان کا ریموٹ کنٹرول میاں نواز شریف کے پاس ہے، کئی معنوں میں یہ اچھی بات بھی ہوسکتی ہے مگر وزیر اعلیٰ پنجاب جیسے بااختیار عہدے پر فائز ہو کر بھی کیا ان کا کنٹرول ان کے والد کے پاس ہی رہے گا۔

کہا جاتا ہے کہ امریکی صدر ووڈرو ولسن اپنے پروفیسر والد سے ہدایات لیتے تھے۔ میاں نواز شریف ک ےبارے میں بھی یہ مشہور تھا کہ وہ اپنے والد میاں شریف سے ہدایات لیتے تھے۔ بظاہر والد سے رہنمائی یا ہدایات لینے میں کوئی منفی بات نہیں مگر ایسا کرنے سے اقتدار کا مرکز ایک نہیں رہتا دو ہو جاتے ہیں۔ ایک میان میں دو تلواریں سما نہیں سکتیں۔

مریم نواز کو گورننس کا تجربہ بہت کم ہے ،پنجاب کے کروڑوں عوام اور اس کی بے لگام پولیس اور بیوروکریسی کو وہ اس محدود تجربے سے کتنا سنبھال سکیں گی، یہ ان کی صلاحیتوں کا امتحان ہوگا۔

اس وقت سب سے بڑا سیاسی مسئلہ یہ ہے کہ عمران خان کا کیا کرنا ہے؟ ن لیگ آج تک اس مسئلے کا کوئی شافی بیانیہ نہیں دے سکی۔ کیا مریم بھی ماضی کی طرح تحریک انصاف کو دبانے، ان کے خلاف مقدمے بنانے اور انہیں جیلوں میں رکھنے کا پروگرام جاری رکھیں گی یا پھر مصالحت اور مفاہمت کا کوئی نیا راستہ تلاش کریں گی۔

مردوں کے اس معاشرے میں عورتوں کی نصف سے زیادہ آبادی کی نمائندگی مریم کا کرنا اچھا شگون تو ہے مگر مردوں کی اکثریت پر مشتمل کابینہ، اسمبلی اور سیکرٹریز کو چلانا ان کیلئے ایک چیلنج ہوگا۔

ہر فردکی آزادی اہم ہے، ہر فرد کو اپنے لباس کی چوائس کا پورا حق حاصل ہے لیکن ورکنگ وومن اور عام خاتون کے لباس میں فرق ہوتا ہے۔ محترمہ بے نظیر بھٹو نے اپنے لباس میں سفید دوپٹہ اور کوٹ کا اضافہ کرکے اسے ورکنگ وومن کا ڈریس بنا لیا تھا۔ محترمہ فاطمہ جناح اپنے زندگی کے آخری برسوں میں سفید اور کریم کلر کا سوٹ اور اسی رنگ کا دوپٹہ اورڑھتی تھیں۔ بیگم نصرت بھٹو اور بیگم رعنا لیاقت علی خان ساڑھیاں پہنتی تھیں۔ مریم نواز شریف کو بھی اپنے لباس کو ورکنگ وومن کا ٹچ دینا پڑے گا۔

وزیر اعلیٰ مریم نواز نہ صرف پنجاب بلکہ شریف خاندان کیلئے ایک نیا سیاسی تجربہ ہیں، وہ سیاسی تقریروں میں تو اعلیٰ نمبر لیتی رہی ہیں لیکن کیا وہ گورننس میں اپنے والد اور چچا جیسی کارکردگی دکھا سکیں گی۔

شریف خاندان کے سیاسی مستقبل کا انحصار اب مریم نواز کی حکومتی کارکردگی پر ہے، اگر تو وہ سیاست کی گتھی سلجھا کر تحریک انصاف کا سحر توڑ سکیں تو ان کا بھی مستقبل ہے اور ان کے خاندان کا بھی۔

تاہم اگر وہ کارکردگی نہ دکھا سکیں تو ن لیگ کا حشر بھی پنجاب میں پیپلز پارٹی جیسا ہوسکتا ہے۔ فی الحال شریف خاندان نے اپنے سارے سیاسی انڈے مریم کے سیاسی مستقبل میں ڈال دیئے ہیں، دیکھئے اس سے کیا ظہور میں آتا ہے۔

Source
 

Sach Bolo

Senator (1k+ posts)
No Doubt there!

She single handedly destroyed the powerful Bajwa-Imran-Faez Troika and threw Imran on charcoal coated hot streets with one leg infected
🤣
 

Masud Rajaa

Siasat member
Lanut GIF by Siasat.pk
 

Will_Bite

Prime Minister (20k+ posts)
Maryam is in parliament on a seat that she lost. She is going to have a hell of a time going out in public. Her tenure as CM will be marked with police gardi and goonish behavior and belligerence.

Her father was an ISI baby, much like ZAB...and got his political training from the establishment. They dont know how to engage the public, which is why the only way these family parties know is by buying loyalties, or threatening employees into attending jalsas.

Maryam cannot succeed like this. She could have shown some courage and let a senior person of their party rule, while she learnt on the job. Her father had nothing to teach her.

Its bad enough that you are becoming the CM on a lost seat....you could have shown some sense and sensibility within the party.
 

Husain中川日本

Senator (1k+ posts)
اب جبکہ مریم نواز شریف وزیر اعلیٰ کا حلف اٹھانے والی ہیں تو ضروری ہے کہ منطقی انداز میں ان کی خوبیوں اور خامیوں کا جائزہ لیا جائے۔ یہ دیکھا جائے کہ ماضی میں ان کی سیاست اور شخصیت کن کن مراحل سے گزری اور وہ مستقبل میں کن خوبیوں کی بنا پر آگےبڑھ سکتی ہیں اور کن خامیوں کی وجہ سے انہیں مشکلات پیش آ سکتی ہیں۔

مریم نواز شریف کی پہلی خاتون وزیر اعلیٰ کے طور پر نامزدگی اس بات کا باضابطہ اعلان ہے کہ شریف خاندان نے انہیں اپنے جانشین اور سیاسی چہرے کے طور پر آگے بڑھایا ہے۔

شریف خاندان میں میاں محمد شریف کی وفات کے بعد سے میاں نواز شریف کو باضابطہ طور پر خاندان کا سربراہ بنایا گیا تھا۔ اس لئے خاندان کے سیاسی اور بیشتر سماجی فیصلے اور اندرونی تنازعات و اختلافات کو بھی وہی حتمی شکل دیتے ہیں۔

شریف خاندان ان کے فیصلوں پر، اختلاف ہو تب بھی، سر تسلیم خم کرتا ہے۔ مریم نواز اور حمزہ شہباز میں سے وزیر اعلیٰ چننے کا فیصلہ نواز شریف نے کیا ہے اور اس پر شہباز شریف اور حمزہ نے صاد کہا ہے۔ اب حمزہ پنجاب اسمبلی کی بجائے قومی اسمبلی کا حلف اٹھائیں گے اور وہاں شہباز شریف کی معاونت کریں گے۔

مریم نواز شریف اپنے والد کے بعد اپنے خاندان کی واحد کرشماتی شخصیت ہیں۔ وہ کراؤڈ پُلر ہیں، جارحانہ اور جذباتی سیاست کرتی ہیں، والد نے مقتدرہ کے خلاف مزاحمت کی تو وہ شانے سےشانہ ملا کر ان کے ساتھ کھڑی ہوگئیں۔ نہ جیل سے گھبرائیں اور نہ نیب کے احتساب سے۔

جیل اس بہادری سے کاٹی کہ سب حیران تھے کہ نازوں میں پلی، صنعت کار خاندان کی یہ لاڈلی اتنی سخت جان کیسے نکل آئی؟

نوازشریف کی آخری وزارت ِعظمیٰ کے دور میں جب ان کی مقتدرہ سے ٹھن گئی تو مریم نے وزیراعظم ہاؤس کا مورچہ سنبھال لیا، سوشل میڈیا ہو یا ٹی وی چینلز، اس میں نواز شریف کے جارحانہ دفاع کی منصوبہ بندی یہ کرتیں، سب بڑے بڑے فیصلوں میں شریک ہوتیں۔

مشکل کے اس دور میں والد کی تنہائی کی ساتھی بھی یہی تھیں، ہر روز گھنٹوں والد کی صحبت میں گزارتیں۔ اس قربت کی وجہ سے مخالفوں کا نزلہ بھی ان پر گرتا تھا۔ جنرل باجوہ کو جہاں اور باتوں کی نوازشریف سے شکایتیں تھیں، مریم کےسخت موقف پر بھی ان کو شدید اختلافات تھے۔ اس زمانے میں پی ٹی آئی اور مقتدرہ ایک ہوا کرتے تھے اس لئے عمران خان اور پی ٹی آئی کانشانہ مریم بھی بنتی رہیں۔

اس زمانے میں خاندان کے اندر کلثوم نواز، مریم نواز اور اسحاق ڈار کا ایک نیا اندرونی حلقہ بن گیا یہی حلقہ حتمی سیاسی فیصلے کرتا تھا۔ چودھری نثار علی اسی زمانے میں مریم کے خلاف بولے تھے۔ مریم نواز کو ڈان لیکس میں بھی ملوث قرار دینے کی کوشش کی گئی لیکن چودھری نثار علی کی کوشش سے جنرل باجوہ ان کا نام نکالنے پر راضی ہوگئے تھے۔

تحریک انصاف کی حکومت کے دور میں بھی مریم نے کئی بڑے شہروں میں جلسے کئے، اپنے مزاحمتی انداز اور رویے کی وجہ سے انہیں پذیرائی بھی بہت ملی۔

شریف خاندان نے اپنی سیاست کا آغاز پیپلز پارٹی کی مخالفت سے کیا۔ مقتدرہ اور دائیں بازو کی بے پناہ حمایت سے انہوں نے بھٹو کی جماعت کے ’لاڑکانہ‘ پنجاب میں تعمیر و ترقی اور سیاسی ترغیب و انتقام سے اس کا صفایا کردیا۔

شریف خاندان نے مریم نواز کو بھی ایجنڈے کے تحت پنجاب میں اتارا ہے ان کا خیال ہے کہ اگر چند سال مل گئے تو مریم نواز کے پیچھے ان کے والد بیٹھ کر تحریک انصاف کا بھی وہی حشر کریں گے جو پیپلز پارٹی کا کیا تھا۔

دیکھنا یہ ہوگا کہ مریم کی خوبیاں ان کی پنجاب میں سیاست کو آگے بڑھائیں گی یا ان کی کمیاں اور کوتاہیاں ن لیگ کو پہلے سے بھی کمزور کردیں گی۔

مریم نواز کی خامیاں اور کوتاہیاں بیان کرنا بھی ضروری ہے۔ مریم نواز کے سیاسی کیریئر کو دیکھا جائے تو وہ کبھی بھی فل ٹائم سیاستدان نہیں رہیں، وہ پارٹ ٹائم سیاست کرتی رہی ہیں ۔کبھی تو وہ سیاست میں متحرک ہو کر جلسوں میں جوش و خروش سے تقریریں کرتی ہیں اور کبھی کئی کئی مہینے وہ خاموشی اور چپ کاروزہ رکھ لیتی ہیں۔

اب ان کا یہ انداز ِسیاست چل نہیں سکے گا، اب انہیں ہر وقت اور ہر پل متحرک سیاست میں رہنا پڑے گا۔

شریف خاندان میں اپنی قدیم روایات کی وجہ سے خاندان کا ریموٹ کنٹرول میاں نواز شریف کے پاس ہے، کئی معنوں میں یہ اچھی بات بھی ہوسکتی ہے مگر وزیر اعلیٰ پنجاب جیسے بااختیار عہدے پر فائز ہو کر بھی کیا ان کا کنٹرول ان کے والد کے پاس ہی رہے گا۔

کہا جاتا ہے کہ امریکی صدر ووڈرو ولسن اپنے پروفیسر والد سے ہدایات لیتے تھے۔ میاں نواز شریف ک ےبارے میں بھی یہ مشہور تھا کہ وہ اپنے والد میاں شریف سے ہدایات لیتے تھے۔ بظاہر والد سے رہنمائی یا ہدایات لینے میں کوئی منفی بات نہیں مگر ایسا کرنے سے اقتدار کا مرکز ایک نہیں رہتا دو ہو جاتے ہیں۔ ایک میان میں دو تلواریں سما نہیں سکتیں۔

مریم نواز کو گورننس کا تجربہ بہت کم ہے ،پنجاب کے کروڑوں عوام اور اس کی بے لگام پولیس اور بیوروکریسی کو وہ اس محدود تجربے سے کتنا سنبھال سکیں گی، یہ ان کی صلاحیتوں کا امتحان ہوگا۔

اس وقت سب سے بڑا سیاسی مسئلہ یہ ہے کہ عمران خان کا کیا کرنا ہے؟ ن لیگ آج تک اس مسئلے کا کوئی شافی بیانیہ نہیں دے سکی۔ کیا مریم بھی ماضی کی طرح تحریک انصاف کو دبانے، ان کے خلاف مقدمے بنانے اور انہیں جیلوں میں رکھنے کا پروگرام جاری رکھیں گی یا پھر مصالحت اور مفاہمت کا کوئی نیا راستہ تلاش کریں گی۔

مردوں کے اس معاشرے میں عورتوں کی نصف سے زیادہ آبادی کی نمائندگی مریم کا کرنا اچھا شگون تو ہے مگر مردوں کی اکثریت پر مشتمل کابینہ، اسمبلی اور سیکرٹریز کو چلانا ان کیلئے ایک چیلنج ہوگا۔

ہر فردکی آزادی اہم ہے، ہر فرد کو اپنے لباس کی چوائس کا پورا حق حاصل ہے لیکن ورکنگ وومن اور عام خاتون کے لباس میں فرق ہوتا ہے۔ محترمہ بے نظیر بھٹو نے اپنے لباس میں سفید دوپٹہ اور کوٹ کا اضافہ کرکے اسے ورکنگ وومن کا ڈریس بنا لیا تھا۔ محترمہ فاطمہ جناح اپنے زندگی کے آخری برسوں میں سفید اور کریم کلر کا سوٹ اور اسی رنگ کا دوپٹہ اورڑھتی تھیں۔ بیگم نصرت بھٹو اور بیگم رعنا لیاقت علی خان ساڑھیاں پہنتی تھیں۔ مریم نواز شریف کو بھی اپنے لباس کو ورکنگ وومن کا ٹچ دینا پڑے گا۔

وزیر اعلیٰ مریم نواز نہ صرف پنجاب بلکہ شریف خاندان کیلئے ایک نیا سیاسی تجربہ ہیں، وہ سیاسی تقریروں میں تو اعلیٰ نمبر لیتی رہی ہیں لیکن کیا وہ گورننس میں اپنے والد اور چچا جیسی کارکردگی دکھا سکیں گی۔

شریف خاندان کے سیاسی مستقبل کا انحصار اب مریم نواز کی حکومتی کارکردگی پر ہے، اگر تو وہ سیاست کی گتھی سلجھا کر تحریک انصاف کا سحر توڑ سکیں تو ان کا بھی مستقبل ہے اور ان کے خاندان کا بھی۔

تاہم اگر وہ کارکردگی نہ دکھا سکیں تو ن لیگ کا حشر بھی پنجاب میں پیپلز پارٹی جیسا ہوسکتا ہے۔ فی الحال شریف خاندان نے اپنے سارے سیاسی انڈے مریم کے سیاسی مستقبل میں ڈال دیئے ہیں، دیکھئے اس سے کیا ظہور میں آتا ہے۔


Source
ٹٹے ہوں نہ ہوں مگر دلّا اٹھانے کا ما سٹر ہے
 

Dr Adam

Prime Minister (20k+ posts)


اب اس دشمن اناج اور اس خاندانی چُوکر صالح ظافر میں ٹ** چُکی کا مقابلہ شروع ہو جائے گا اور اب دونوں ہی اس چڑیل کی ہر چیز کا رقبہ اور جغرافیہ اور سائز بتانے میں ایک دوسرے پر سبقت لے جانے کی کوشش کریں گے

Stay tuned for wealth of information!

Zainsha

 

ranaji

President (40k+ posts)
صالح ظفر نمبر دو کالا کاں
کنجر مثلی میراثی چوڑا آگیا اپنی چوپن چپائی کی خاندانی ڈیوٹی پر ویسے یہ چار پانچ میراثی مثلی چوڑے اور کنجر گشتی فراری نے مستقل پالے ہوئے ہیں
 

ranaji

President (40k+ posts)
نو مہینے کا پراجیکٹ چار مہینے میں ختم کرنا بھی کرشمہ ہے۔
شادی کنجر مثلی حرامی صفدرے یدی نے کے ساتھ بچوں کی رگوں میں قطر کا شاہی خون کیا کرشمہ ہے اور چند زانی شرابی بے غیرت کنجر نسل کے
ججز اور جرنیلوں کے زنا کے پورنو کلپ بنا کر ان کو اپنا پالتو کتا بنا کر رکھنا اس سے بڑے کرشمے اور کیا ہوں گے ؟ بہت بڑی کرشماتی شخصیت ہے اس میں کوئی شک نہیں
 

انقلاب

Chief Minister (5k+ posts)
اب جبکہ مریم نواز شریف وزیر اعلیٰ کا حلف اٹھانے والی ہیں تو ضروری ہے کہ منطقی انداز میں ان کی خوبیوں اور خامیوں کا جائزہ لیا جائے۔ یہ دیکھا جائے کہ ماضی میں ان کی سیاست اور شخصیت کن کن مراحل سے گزری اور وہ مستقبل میں کن خوبیوں کی بنا پر آگےبڑھ سکتی ہیں اور کن خامیوں کی وجہ سے انہیں مشکلات پیش آ سکتی ہیں۔

مریم نواز شریف کی پہلی خاتون وزیر اعلیٰ کے طور پر نامزدگی اس بات کا باضابطہ اعلان ہے کہ شریف خاندان نے انہیں اپنے جانشین اور سیاسی چہرے کے طور پر آگے بڑھایا ہے۔

شریف خاندان میں میاں محمد شریف کی وفات کے بعد سے میاں نواز شریف کو باضابطہ طور پر خاندان کا سربراہ بنایا گیا تھا۔ اس لئے خاندان کے سیاسی اور بیشتر سماجی فیصلے اور اندرونی تنازعات و اختلافات کو بھی وہی حتمی شکل دیتے ہیں۔

شریف خاندان ان کے فیصلوں پر، اختلاف ہو تب بھی، سر تسلیم خم کرتا ہے۔ مریم نواز اور حمزہ شہباز میں سے وزیر اعلیٰ چننے کا فیصلہ نواز شریف نے کیا ہے اور اس پر شہباز شریف اور حمزہ نے صاد کہا ہے۔ اب حمزہ پنجاب اسمبلی کی بجائے قومی اسمبلی کا حلف اٹھائیں گے اور وہاں شہباز شریف کی معاونت کریں گے۔

مریم نواز شریف اپنے والد کے بعد اپنے خاندان کی واحد کرشماتی شخصیت ہیں۔ وہ کراؤڈ پُلر ہیں، جارحانہ اور جذباتی سیاست کرتی ہیں، والد نے مقتدرہ کے خلاف مزاحمت کی تو وہ شانے سےشانہ ملا کر ان کے ساتھ کھڑی ہوگئیں۔ نہ جیل سے گھبرائیں اور نہ نیب کے احتساب سے۔

جیل اس بہادری سے کاٹی کہ سب حیران تھے کہ نازوں میں پلی، صنعت کار خاندان کی یہ لاڈلی اتنی سخت جان کیسے نکل آئی؟

نوازشریف کی آخری وزارت ِعظمیٰ کے دور میں جب ان کی مقتدرہ سے ٹھن گئی تو مریم نے وزیراعظم ہاؤس کا مورچہ سنبھال لیا، سوشل میڈیا ہو یا ٹی وی چینلز، اس میں نواز شریف کے جارحانہ دفاع کی منصوبہ بندی یہ کرتیں، سب بڑے بڑے فیصلوں میں شریک ہوتیں۔

مشکل کے اس دور میں والد کی تنہائی کی ساتھی بھی یہی تھیں، ہر روز گھنٹوں والد کی صحبت میں گزارتیں۔ اس قربت کی وجہ سے مخالفوں کا نزلہ بھی ان پر گرتا تھا۔ جنرل باجوہ کو جہاں اور باتوں کی نوازشریف سے شکایتیں تھیں، مریم کےسخت موقف پر بھی ان کو شدید اختلافات تھے۔ اس زمانے میں پی ٹی آئی اور مقتدرہ ایک ہوا کرتے تھے اس لئے عمران خان اور پی ٹی آئی کانشانہ مریم بھی بنتی رہیں۔

اس زمانے میں خاندان کے اندر کلثوم نواز، مریم نواز اور اسحاق ڈار کا ایک نیا اندرونی حلقہ بن گیا یہی حلقہ حتمی سیاسی فیصلے کرتا تھا۔ چودھری نثار علی اسی زمانے میں مریم کے خلاف بولے تھے۔ مریم نواز کو ڈان لیکس میں بھی ملوث قرار دینے کی کوشش کی گئی لیکن چودھری نثار علی کی کوشش سے جنرل باجوہ ان کا نام نکالنے پر راضی ہوگئے تھے۔

تحریک انصاف کی حکومت کے دور میں بھی مریم نے کئی بڑے شہروں میں جلسے کئے، اپنے مزاحمتی انداز اور رویے کی وجہ سے انہیں پذیرائی بھی بہت ملی۔

شریف خاندان نے اپنی سیاست کا آغاز پیپلز پارٹی کی مخالفت سے کیا۔ مقتدرہ اور دائیں بازو کی بے پناہ حمایت سے انہوں نے بھٹو کی جماعت کے ’لاڑکانہ‘ پنجاب میں تعمیر و ترقی اور سیاسی ترغیب و انتقام سے اس کا صفایا کردیا۔

شریف خاندان نے مریم نواز کو بھی ایجنڈے کے تحت پنجاب میں اتارا ہے ان کا خیال ہے کہ اگر چند سال مل گئے تو مریم نواز کے پیچھے ان کے والد بیٹھ کر تحریک انصاف کا بھی وہی حشر کریں گے جو پیپلز پارٹی کا کیا تھا۔

دیکھنا یہ ہوگا کہ مریم کی خوبیاں ان کی پنجاب میں سیاست کو آگے بڑھائیں گی یا ان کی کمیاں اور کوتاہیاں ن لیگ کو پہلے سے بھی کمزور کردیں گی۔

مریم نواز کی خامیاں اور کوتاہیاں بیان کرنا بھی ضروری ہے۔ مریم نواز کے سیاسی کیریئر کو دیکھا جائے تو وہ کبھی بھی فل ٹائم سیاستدان نہیں رہیں، وہ پارٹ ٹائم سیاست کرتی رہی ہیں ۔کبھی تو وہ سیاست میں متحرک ہو کر جلسوں میں جوش و خروش سے تقریریں کرتی ہیں اور کبھی کئی کئی مہینے وہ خاموشی اور چپ کاروزہ رکھ لیتی ہیں۔

اب ان کا یہ انداز ِسیاست چل نہیں سکے گا، اب انہیں ہر وقت اور ہر پل متحرک سیاست میں رہنا پڑے گا۔

شریف خاندان میں اپنی قدیم روایات کی وجہ سے خاندان کا ریموٹ کنٹرول میاں نواز شریف کے پاس ہے، کئی معنوں میں یہ اچھی بات بھی ہوسکتی ہے مگر وزیر اعلیٰ پنجاب جیسے بااختیار عہدے پر فائز ہو کر بھی کیا ان کا کنٹرول ان کے والد کے پاس ہی رہے گا۔

کہا جاتا ہے کہ امریکی صدر ووڈرو ولسن اپنے پروفیسر والد سے ہدایات لیتے تھے۔ میاں نواز شریف ک ےبارے میں بھی یہ مشہور تھا کہ وہ اپنے والد میاں شریف سے ہدایات لیتے تھے۔ بظاہر والد سے رہنمائی یا ہدایات لینے میں کوئی منفی بات نہیں مگر ایسا کرنے سے اقتدار کا مرکز ایک نہیں رہتا دو ہو جاتے ہیں۔ ایک میان میں دو تلواریں سما نہیں سکتیں۔

مریم نواز کو گورننس کا تجربہ بہت کم ہے ،پنجاب کے کروڑوں عوام اور اس کی بے لگام پولیس اور بیوروکریسی کو وہ اس محدود تجربے سے کتنا سنبھال سکیں گی، یہ ان کی صلاحیتوں کا امتحان ہوگا۔

اس وقت سب سے بڑا سیاسی مسئلہ یہ ہے کہ عمران خان کا کیا کرنا ہے؟ ن لیگ آج تک اس مسئلے کا کوئی شافی بیانیہ نہیں دے سکی۔ کیا مریم بھی ماضی کی طرح تحریک انصاف کو دبانے، ان کے خلاف مقدمے بنانے اور انہیں جیلوں میں رکھنے کا پروگرام جاری رکھیں گی یا پھر مصالحت اور مفاہمت کا کوئی نیا راستہ تلاش کریں گی۔

مردوں کے اس معاشرے میں عورتوں کی نصف سے زیادہ آبادی کی نمائندگی مریم کا کرنا اچھا شگون تو ہے مگر مردوں کی اکثریت پر مشتمل کابینہ، اسمبلی اور سیکرٹریز کو چلانا ان کیلئے ایک چیلنج ہوگا۔

ہر فردکی آزادی اہم ہے، ہر فرد کو اپنے لباس کی چوائس کا پورا حق حاصل ہے لیکن ورکنگ وومن اور عام خاتون کے لباس میں فرق ہوتا ہے۔ محترمہ بے نظیر بھٹو نے اپنے لباس میں سفید دوپٹہ اور کوٹ کا اضافہ کرکے اسے ورکنگ وومن کا ڈریس بنا لیا تھا۔ محترمہ فاطمہ جناح اپنے زندگی کے آخری برسوں میں سفید اور کریم کلر کا سوٹ اور اسی رنگ کا دوپٹہ اورڑھتی تھیں۔ بیگم نصرت بھٹو اور بیگم رعنا لیاقت علی خان ساڑھیاں پہنتی تھیں۔ مریم نواز شریف کو بھی اپنے لباس کو ورکنگ وومن کا ٹچ دینا پڑے گا۔

وزیر اعلیٰ مریم نواز نہ صرف پنجاب بلکہ شریف خاندان کیلئے ایک نیا سیاسی تجربہ ہیں، وہ سیاسی تقریروں میں تو اعلیٰ نمبر لیتی رہی ہیں لیکن کیا وہ گورننس میں اپنے والد اور چچا جیسی کارکردگی دکھا سکیں گی۔

شریف خاندان کے سیاسی مستقبل کا انحصار اب مریم نواز کی حکومتی کارکردگی پر ہے، اگر تو وہ سیاست کی گتھی سلجھا کر تحریک انصاف کا سحر توڑ سکیں تو ان کا بھی مستقبل ہے اور ان کے خاندان کا بھی۔

تاہم اگر وہ کارکردگی نہ دکھا سکیں تو ن لیگ کا حشر بھی پنجاب میں پیپلز پارٹی جیسا ہوسکتا ہے۔ فی الحال شریف خاندان نے اپنے سارے سیاسی انڈے مریم کے سیاسی مستقبل میں ڈال دیئے ہیں، دیکھئے اس سے کیا ظہور میں آتا ہے۔


Source
چُاٹ کے لب آزاد ہیں تیرے
 

MunchyMike

Minister (2k+ posts)
No loans for these Mandate Bandits.

Everyone should write to IMF to not give loans to these
thieves, otherwise they will not be repaid back.