عمران خان کو 5 سال جیل میں رکھنے کے بیان پر احسن اقبال اور فواد آمنے سامنے

ahsnai1h1.jpg


وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی احسن اقبال کا کہنا ہے لوگ کہتے ہیں کہ ملک نے ترقی کرنی ہے تو بانی پی ٹی آئی کو 5 سال جیل کے اندر ہی رکھیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان اور عدلیہ فیصلہ کر لیں کہ ملک کو مذاکرات اور امن سے آگے لے کر جانا ہے یا انتشار پھیلانا ہے، حکومت 5 سال پورے کرے گی، اسٹیبلشمنٹ کو بھی سمجھ آ چکی ہے۔

انکا کہنا تھا کہ بانی پی ٹی آئی کی سیاست انتشار اور فساد کی سیاست ہے اور ملک عدم استحکام اور بے یقینی کی سیاست کا متحمل نہیں ہو سکتا۔

اس بیان پر فوادچوہدری اور احسن اقبال میں لفظی جنگ چھڑ گئی۔

فوادچوہدری نے اس پر ردعمل دیتے ہوئے لکھا کہ حکومتی وزیر احسن اقبال نے حکومت کی سیاسی اور معاشی حکمت عملی یہ بتائی کہ عمران خان کو پانچ سال تک جیل رکھا جائیگا تاکہ موجودہ حکومت حکومت کر سکے، حکمرانوں کو احساس ہے کہ ان کی کوئی سیاسی پوزیشن نہیں اور صرف لاٹھی اور گولی پر حکومت کر سکتے ہیں
https://twitter.com/x/status/1802205425124757643
اس نے احسن اقبال نے کہا کہ میں نے حکومت کی سیاسی حکمت عملی نہیں بتائی بلکہ عوام کی بات کی ہے جو کہہ رہے ہیں کہ اگر پاکستان نے چلنا ہے اور ترقی کرنی ہے تو فتنہ اور فساد کی جڑ اور سائے سے پاکستان کو محفوظ رکھیں جسے سوائے منفی سیاست، دھرنوں، گالی گلوچ ، تشدد اور نفرت کے کچھ نہیں آتا۔

انہوں نے عمران خان پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ چار سال سیاہ سفید کا مالک رہا لیکن پورے ملک میں ایک بھی قابل ذکر منصوبہ نہیں جو اس کی نشانی ہو ماسوائے سیلانی فاؤنڈیشن کے پیسوں سے چلنے والے 29 لنگر خانے جن کا کریڈٹ لیا جاتا رہا۔
https://twitter.com/x/status/1802208517937651978
اس پر فوادچوہدری نے کہا کہ عوام نے تو 8 فروری کو بتا دیا وہ کیا چاہتے ہیں، آپ خود بری طرح الیکشن ہار گئے، ڈان اخبار نے آپ کے الفاظ وقٹ کئے ہیں اور آپ کے ایکشن ان الفاظ کی گواہی ہیں۔ پاکستان نے ترقی کرنی ہے تو عوام کاحق زندگی اور عزت نفس کا حق دینا ہو گا۔
https://twitter.com/x/status/1802226917116133439
انہوں نے مزید کہا کہ آپ اس وقت فرنگی حکومت کے راستے پر ہیں ۔۔
 

ranaji

(50k+ posts) بابائے فورم
اس گشتی کے بچے احسن اقبال فراڈئے کی گشتی ماں نثار فاطمہ
وہ گشتی عورت تھی جس نے خورد اور اس گشتی کے حرام زادے باپ
یعنی اس بجو حرامی کے کنجر نانے جس کا نام شاید محمد حسین تھا
اس نے
پاکستان بننے کے خلاف مہم چلائی کانگریس نے اس دور میں
اسکو ہزاروں روپے دئے اور اس پیسے کے بدلے اس نے اپنی ماں چ۔۔ کر مسلم لیگ کے
خلاف الیکشن لڑا ایک مسلم لیگی معمولی مزدور اور عام ورکر کے خلاف
کانگریس کی
ٹکٹ پر الیکشن لڑا اس حرام زادے کو ٹکٹ مجبوری
میں دی کانگریس نے کیونکہ
اور کوئی حلالی
ماں باپ کی حلالی اولاد اور مسلمان امیدوار پاکستان بنانے والی قائداعظم کی
مسلم لیگ کے کسی بھی امیدوار کے خلاف الیکشن لڑنا
ہی نہیں چاہتا تھا لیکن جب کوئی اور با اثر مسلمان پاکستان اور قائد اعظم کے امیدوار کے
خلاف الیکشن لڑنے پر تیار نا ہوا
اس وقت اس کے حرامی نانے نے اپنی ماں چ۔۔ کر یہ پاکستان مخالف الیکشن لڑا اور اسکے
مخالف نے ہزاروں ووٹ لے کر اس کے نانے اور کانگریسی چیلے حرام زادے کی ضمانت ضبط
کرادی جس نے صرف بیس بائیس ووٹ
لئے اسطرح زلیل ہونے کے بعد اس کے حرامی نانے
اور اسکی ماں پھاتو گشتی ناروالی یعنی
نثار فاطمہ
نے قائد اعظم اور مسلم لیگ اور پاکستان کے خلاف اور زیادہ بھونکنا شروع کردیا
لیکن اللہ کی
شان اور ہمیشہ ہی زلیل ہوتی رہی
لیکن پھر جب جنرل ضیا نے مارشل لا لگایا تو وہ
گشتئ عورت اس جھوٹ کے ساتھ ضیا سے ملی کہ
جس بہادر دلیر لڑکی اور مسلم لیگی لڑکی نے لاہور سیکریٹریٹ پر پاکستان کا جھنڈا لہرایا تھا وہ پاکستان
سے محبت کرنے والی وہ مسلمُ لیگی لڑکی وہ خود تھی
یعنی وہ لڑکی نثار فاطمہ تھی
جبکہ وہ لڑکی جو کہ اس وقت تک عورت بن چکی تھی وہ کوئی اور تھی اور وہ مسلم لیگی عورت تھی
لیکن یہ گشتی تو کانگریسی عورت تھی اور پاکستان کے خلاف تھی
لیکن یہ جھوٹ بھونک کر نثار فاطمہ نامی وہ جھوٹی مکار گشتی عورت
جنرل ضیا کے پاس اس مسلم لیگی لڑکی کے نام پر پہنچی اور حکومت میں داخل ہوئی اور شاید وزیر
یا کوئی
مشیر بنی لیکن جب ایک بار اس گشتی جھوٹی لعنتئ کانگریسی عورت نثار فاطمہ نے حکومت میں آنے کے
بعد دوبارہ اپنے نام سے یہ جھوٹا کلیم کیا
اور ایک اخباری انٹرویو میں یہ دعوئی کیا وہ جھنڈا لہرانے
والی مسلم لیگی بہادر لڑکی یہ خود نثار فاطمہ تھی
تو اس وقت بھی چند صحافی بہت محنت کرکے اس اصلی لڑکی کو ڈھونڈھ
کر
سامنے لے آئے جس نے اصل میں لاہور سیکریٹریٹ پر انگریزی فوج اور گارڈز کی موجودگی میں وہ
جھنڈا لہرایا تھا اور جس کا جھوٹ بھونک کر وہ جھوٹی مکار لعنتئ عورت نثار فاطمہ
ضیا کی
حکومت میں شامل ہوئی لیکن جب اخباری نمائندوں نے اسکا جھوٹ بے نقاب کیا اور اسکی پول کھولی
تو وہ حرام زادی اس راز کھلنے کے بعد کچھ دن تو تک
شرم سے مونہہ چھپائے پھری اور چند دن غائب رہی
لیکن پھر اس گشتی عورت قائداعظم کو گالیاں بھونکنے والی کانگریسی کتیا ڈھیٹ اور جھوٹی گشتی عورت
نے دوبارہ اپنے یہ جھوٹ کی گرد بیٹھے کے بعد اس
نے پھر مارشل لا کے کرپٹ ٹولے اور انکی لوٹ مار میں
اپنا حصہ وصول کرنا شروع کردیا اور جھوٹ کی بنیاد
پر آئی ہوئی اس گشتی عورت نے اپنے بجو کی شکل کے بیٹے احسن اقبال کو بھی جنرل ضیا کی اس بات سے فائدہ اٹھایا کہ جنرل ضیا کو نعتیں بہت پسند تھیں
اور بجو کنجر احسن اقبال فراڈیا گانے بہت اچھے گاتا تھا شاید کنجر اور میراثی دادے جی وجہ سے
اس کی آواز کی وجہ سے اس گشتی عورت نے جنرل ضیا کی پسند کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کو نعتیں
یاد کرانا شروع کردیں اور یہ بجو احسن اقبال فراڈیا اپنی گشتی ماں کے ساتھ جنرل ضیا کو نعتیں سنانے پہنچ جاتا تھا
کے پاس لیجانا شروع کردیا اور اس طرح یہ حرام زادہ جنرل ضیا کا نعت خوان بن کر سیاست میں آیا
جنرل ضیا کو اس سے زیادہ ریڈیو اور ٹی وی کا اناونسر اورپھر ڈائرکٹر شاعر منصور تابش کی آواز بہت پسند تھی جس نے مشہور زمانہ نعت گائی تھی
یہ تو تیرا کرم ہے آقا کہ بات اب تک بنی ہوئی ہے اور جنرل ضیا کی بہت کی تقریبات میں
منصور تابش نعت خواں ہوتا تھا اور قاری خوشی محمد تلاوت قرآن پاک قرائت کے ساتھ سناتے تھے
جنرل ضئا کی اسئ پسند کو گشتی نثار فاطمہ کانگریسی
حرامن نے کیش کرایا اس بہانے سے ضیا سے مفادات
حاصل کرنے کے لئے بس یہ اوقات ہے اس کنجر ارسطو بجو حرام زادے کی
اس کنجر کی
اوقات دیکھو اور اس کا بھونکنا سنو تو حیرت ہوتی ہے
کیسے کیسے مایک اور حرامی سیاست میں کیسے کیسے طریقے سے داخل ہوئے
 

Digital_Pakistani

Chief Minister (5k+ posts)
فواد چوہدری کو ٹویٹر پر فالو کرتا ہوں۔ وہ پی ٹی ائی کا حصہ نہ ہوتے ہوئے بھی پہلے کی طرح حق کی بات پر کھڑا رہتا ہے
 

Nice2MU

President (40k+ posts)
احسن اقبال نے فضول میں چول مار دی ہے -لیکن ہے ١١٠% درست - اور ہونا بھی یہی ہے

جب عمران نہیں تھا تو ان گنجوں نے ملک کو کتنی ترقی دی تھی سوائے لندن میں جائیدادیں بنانے کے ؟