سی آئی اے اہلکار منشیات فروشوں سے ملے ہوئے ہیں، ایس ایچ او ہڈیارہ

soahah11.jpg


لاہور کے تھانہ ہڈیارہ کے ایس ایچ او خالد کا کہنا ہے کہ منشیات فروشوں کے خلاف کارروائی کرنے پر سی آئی اے کی جانب سے اپنےخلاف کارروائی کا خدشہ ہے، اعلیٰ افسرا ن سے تحقیقات کا مطالبہ بھی کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کے تھانہ ہڈیارہ کے ایس ایچ او خالد کی جانب سے جاری کردہ ایک ویڈیو بیان میں کہا گیا ہے مجھے افسران کی جانب سے انسداد منشیات کے حوالے سے خصوصی ٹاسک دیا گیا، میں نے ٹاسک پر پورا اترتے ہوئے اتنے لوگوں کو ٹریس کیا اور مقدمات دیئے جتنے تھانہ ہڈیارہ کی تاریخ میں پہلے کبھی نہیں ہوئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان مقدمات کو درج کرتے ہوئے مجھے سیاسی اور دیگر حلقوں کی طرف سے دباؤ کا بھی سامنا کرنا پڑا،سی آئی اے لاہور اور دیگر اداروں کی جانب سے مجھے روکنے کی کوشش بھی کی گئی،سی آئی اے اور لاہور کے دیگر پولیس افسران کی جانب سے میرے خلاف یہ پراپیگنڈہ کرنا شروع کردیا ہے کہ ایس ایچ او ہڈیارہ منشیات فروشوں کے ساتھ ملوث ہے۔

https://twitter.com/x/status/1781615326964125730
ایس ایچ او ہڈیارہ نے ان الزامات کویکسر مسترد کرتے ہوئے اعلیٰ پولیس افسران سے تحقیقات کیلئے کمیٹی بنانے کا مطالبہ کرتے ہوئے خود کو انکوائری کیلئے پیش کرنے کا اعلان کیا ۔

دوسری جانب سی آئی اے حکام کی جانب سے بھی اس معاملے پر موقف سامنے آگیا ہےجس میں سی آئی اے حکام کا کہنا ہے کہ ایس ایچ او ہڈیارہ غلط بیانی کر رہا ہے، اور ا ن کی طرف سے عائد الزام جھوٹ پر مبنی ہیں۔

https://twitter.com/x/status/1781625103475954042
سی آئی اے حکام کے مطابق ایس ایچ او ہڈیارہ سرحد پار منشیات سپلائی کرتا ہے،ایس ایچ او خالد منشیات فروش بابر کیساتھ مل کر سپلائی کرتا، اس بابر نامی ٹاؤٹ کے بغیر کہیں بھی ریڈ نہیں ہوتا۔

سی آئی حکام کا مزید کہنا تھا کہ ایس ایچ او ہڈیارہ کی پہلی پوسٹنگ ہےان کے پاس اتنی قیمتی گاڑی کہاں سے آئی؟اس معاملے پر سی سی پی او صاحب خود انکوئری کر رہے، جیسے ہی ایس ایچ او ہڈیارہ اور منشیات فروش بابر کیخلاف انکوائری شروع ہوئی تو اسنے جھوٹا بیان جاری کیا۔