خلفاء راشدین کیسے منتخب ہوئے

PAINDO

Siasat.pk - Blogger
[h=1][/h]

اللہ کے نام سے ابتدا۔ جو مہربان، رحم کرنے والا اور ہر چیز کا مالک ہے۔ وہ ہر بات اور دلوں کے بھید خوب جانتا ہے۔
ہمارے ہاں اکثر کہا جاتا ہے کہ اسلامی نظام نافذ ہونا چاہئے۔ جی بالکل ہونا چاہئے، میں بھی اس کے حق میں ہوں لیکن جب یہ پوچھا جاتا ہے کہ اسلامی نظام کیسے نافذ ہو گا؟ تو جواب میں خلافت راشدہ کا حوالہ ملتا ہے۔ بے شک خلفاء راشدین عظیم لوگ تھے اور ہمارے لئے مشعل راہ ہیں۔ اسی لیے اس تحریر میں خلفاء راشدین منتخب ہونے کا مختصر جائزہ پیش کر رہا ہوں۔ باقی فیصلہ آپ لوگوں کے ہاتھ میں ہے کہ خلفاء راشدین مقرر ہونے کے طریقوں میں کونسی بات، کونسی چیز مشترک تھی؟ خلفاء راشدین اور تب کے دیگر مسلمان، خلیفہ منتخب کرنے میں کس چیز کو خاص طور پر مدِنظر رکھتے تھے؟ خلفاء راشدین مقرر ہونے کے طریقوں میں سے آج کے دور میں خلیفہ مقرر کرنے کے لئے کونسا طریقہ اپنایا جا سکتا ہے یا کونسا طریقہ مناسب رہے گا؟ خود تحقیق کریں اور جانیں کہ خلیفہ مقرر ہونے کے طریقے میں وہ کونسا بنیادی اصول تھا، جس کو اس وقت کے مسلمان سب سے زیادہ ترجیح دیتے تھے اور وہ کونسی بات تھی جو خلافت کو بادشاہت سے ممتاز کرتی تھی؟ سب سے اہم بات کہ اسلام نے خلیفہ منتخب کرنے کا اختیار کس کو دیا ہے؟
اس تحریر کو دو طرح پیش کر رہا ہوں۔ ایک یہ: جو کہ آپ پڑھ رہے ہیں۔ یہ تفصیلی (مگر مختصر) جائزہ بمعہ حوالہ جات ہے۔ ویسے تو یہ حصہ بھی زیادہ لمبا نہیں۔ لیکن پھر بھی اگر کسی کے پاس وقت بہت کم ہے تو اس کے لئے علیحدہ خلاصہ لکھ دیا ہے۔ ایک بات واضح کر دوں: ہو سکتا ہے کہ میری تحقیق میں کوئی کمی رہ گئی ہو، اس لئے اگر کہیں آپ کو لگے کہ میں غلطی کر رہا ہوں تو اس کی نشاندہی ضرور کیجئے۔ اس کے علاوہ جو باتیں لکھ رہا ہوں وہ سب جن کتب سے مجھے معلوم ہوئی تھیں، ساتھ میں ان کتب کا حوالہ بھی لکھ رہا ہوں۔ اب اگر تاریخی یا دیگر باتوں میں کہیں کوئی غلطی ہے تو اس کی ساری ذمہ داری ان کتب پر ہے جن ذریعے ہم تک یہ باتیں پہنچی۔
اسلام (قرآن و حدیث) میں ہمیں امیر (خلیفہ) کے اوصاف، اس کے کردار، مسلمانوں کو امیر کی اطاعت اور نافرمانی کرنے[1] وغیرہ کے بارے میں تو ملتا ہے لیکن امیر مقرر کرنے کا طریقہ کار نہیں ملتا۔ میرے حساب سے اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ اسلام نے بتا دیا ہے کہ فلاں فلاں خصوصیات کے حامل کو اپنا امیر مقرر کرو جبکہ امیر مقرر کرنے کا طریقہ مسلمانوں پر چھوڑ دیا ہے یعنی مسلمان حالات کے مطابق، باہمی مشاورت سے اپنا امیر مقرر کر لیں۔ مسلمانوں کا باہمی مشاورت سے کام کاج کرنے کا ذکر قرآن میں ملتا ہے۔[2]
ہمارے پیارے نبی حضرت محمدﷺ نے اپنی زندگی میں اپنا کوئی جانشین یا اپنے بعد کسی کو خلیفہ نامزد نہیں کیا تھا[3]۔ البتہ مختلف واقعات جیسے رسول اللہﷺ کی بیماری کے دنوں میں نماز کی امامت کے لئے حضرت ابو بکر صدیقؓ کو حکم دینا[4]۔اس کے علاوہ 9 ہجری میں حضرت ابوبکر صدیقؓ کو اپنے قائم مقام کی حیثیت سے امیر الحج بنا کر بھیجنا[5] اور اسی طرح چند ایک دیگر واقعات سے یہ اشارہ ملتا ہے کہ رسول اللہﷺ کی نظر میں آپﷺ کی غیر موجودگی میں مسلمانوں کے امیر حضرت ابوبکرصدیقؓ کو ہونا چاہئے۔ بعض جگہ یہ ذکر بھی ملتا ہے کہ رسول اللہﷺ کو ڈر تھا کہ میرے بعد کئی لوگ خلافت کی آرزو کریں گے اور کہنے والے یہ بھی کہیں گے کہ میں خلافت کا زیادہ حق دار ہوں، اس لئے آپﷺ ابوبکرصدیقؓ کو اپنا جانشین بنانا تو چاہتے تھے لیکن مقرر نہیں کیا تھا[6]۔ حضورﷺ کو خلافت کے متعلق لوگوں کی آرزو اور لوگوں کا اپنے آپ کو زیادہ حق دار سمجھنے کا ڈر ہونے کے باوجود بھی جانشین یا خلیفہ نامزد نہ کرنا، کچھ اور واضح کرتا ہے یا نہیں لیکن میرے خیال میں یہ صاف واضح کرتا ہے کہ آپﷺ نے خلیفہ بنانے کا اختیار آنے والے وقت اور مسلمانوں پر چھوڑ دیا تھا۔ اگر آپﷺ خلیفہ مقرر کر جاتے تو پھر وہ حدیث ہو جاتی اور مسلمانوں کا خلیفہ بنانے کا وہی طریقہ ہوتا یعنی پچھلا خلیفہ اگلا خلیفہ مقرر کر جائے جبکہ آپﷺ نے کسی کو خلیفہ مقرر نہیں کیا تھا۔ آپ خود سوچیں کہ اگر خلیفہ مقرر کرنے کا اختیار مسلمانوں کے پاس نہ ہوتا یا اس کا کوئی دوسرا خاص طریقہ ہوتا تو کم از کم خلفاء راشدین ضرور اس خاص طریقے سے خلیفہ مقرر ہوتے، جبکہ تاریخ بتاتی ہے کہ خلفاء راشدین مختلف حالات میں مختلف طریقوں سے مقرر ہوئے۔ آسان الفاظ میں یہ کہ خلیفہ مقرر کرنے کا اختیار اور طریقہ مسلمانوں پر چھوڑ دیا گیا، تاکہ مسلمان اپنے حالات کے مطابق باہمی مشاورت سے خلیفہ مقرر کر لیں۔
حضورﷺ کی وفات کے بعد صحابہؓ آپﷺ کی تجہیزوتکفین میں مصروف تھے تو انصار کے کچھ لوگ سقیفہ بنی ساعدہ میں امیر منتخب کرنے کے لئے جمع ہو گئے[7]۔ جب حضرت ابوبکرؓ اور حضرت عمرؓ کو اس کی خبر ہوئی تو آپ بھی ادھر پہنچ گئے۔ امیر مقرر کرنے پر مشاورت شروع ہوئی اور بات یہاں تک پہنچ گئی کہ انصار میں سے کسی نے کہا کہ ایک امیر ہم میں سے ہو اور ایک قریش میں سے۔ حالات کچھ ایسے بن گئے کہ اچانک حضرت عمرفاروقؓ نے خلیفہ کے لئے حضرت ابوبکرصدیقؓ کا نام تجویز کیا اور ان کی بیعت کر لی[8]۔ اس کے بعد مدینے کے لوگوں(جو درحقیقت اُس وقت پورے ملک میں عملاً نمائندہ حیثیت رکھتے تھے[9])کی اکثریت نے اپنی خوشی سے حضرت ابوبکرصدیقؓ کے ہاتھ پر بیعت کی۔
حضرت ابوبکر صدیقؓ کو اگرچہ مدتوں کے تجربے سے یہ معلوم ہو گیا تھا کہ خلافت کا بارِگراں حضرت عمرؓ کے سوا اور کسی سے اٹھ نہیں سکتا۔ لہٰذا آپؓ نے حضرت عمرؓ کو نامزد کر دینے کا عزم کر لیا۔ اس نامزدگی سے متعلق آپ اکابر صحابہؓ کی رائے کا بھی اندازہ کرنا چاہتے تھے[10] تو اس سلسلے میں آپؓ نے کئی صحابہؓ سے مشورہ کیا اور پھر لوگوں کو جمع کر کے کہا کیا تم اُس شخص پر راضی ہو جسے میں اپنا جانشین بنا رہا ہوں؟ خدا کی قسم میں نے رائے قائم کرنے کے لیے اپنے ذہن پر زور ڈالنے میں کوئی کمی نہیں کی ہے اور اپنے کسی رشتہ دار کو نہیں بلکہ عمر بن الخطاب کو جانشین مقرر کیا ہے، لہٰذا تم ان کی سنو اور اطاعت کرو۔ اس پر لوگوں نے کہا ہم سنیں گے اور اطاعت کریں گے[11]۔ یوں اس طرح صحابہ اکرامؓ سے مشورہ کرنے اور دیگر لوگوں کا بھی اس پر متفق ہو جانے سے حضرت عمر فاروقؓ خلیفہ بنے۔
حضرت عمر فاروقؓ کے دورِخلافت کے آخری سال حج کے دنوں میں ایک شخص نے کہا کہ اگر عمر فاروقؓ کا انتقال ہوا تو میں فلاں شخص کے ہاتھ پر بیعت کر لوں گا، کیونکہ ابوبکرصدیقؓ کی بیعت بھی تو اچانک ہی ہوئی تھی اور وہ کامیاب ہو گئی[8]۔ دراصل اچانک بیعت اور کامیاب ہونے سے اس شخص کی مراد وہ پرانا واقعہ تھا جس میں سقیفہ بنی ساعدہ میں حضرت عمرؓ نے اچانک حضرت ابوبکرؓ کا نام تجویز کیا تھا اور ہاتھ بڑھا کر فوراً بیعت کر لی تھی اور پھر وہ بیعت کامیاب ہوئی یعنی دیگر مسلمان بھی اس بیعت پر راضی ہو گئے۔ اس شخص کی بات کے جواب میں حضرت عمرؓ نے مسجد نبوی میں خلافت کے حوالے سے تاریخ ساز خطبہ دیا۔ جس میں انہوں نے کہا کہ مجھے خبر ملی ہے کہ تم میں سے کوئی کہتا ہے اگر عمر فاروقؓ مرجائیں تو میں فلاں کی بیعت کرلوں گا۔ تمہیں کوئی شخص یہ کہہ کر دھوکہ نہ دے کہ ابوبکرؓ کی بیعت ہنگامی حالات میں ہوئی اور پھر کامیاب ہوگئی، سن لو کہ وہ ایسی ہی تھی لیکن اللہ نے اس (طرح کی) بیعت کے شر سے (امت کو) محفوظ رکھا۔ پھر تم میں سے کوئی شخص ایسا نہیں جس میں ابوبکرؓ جیسی فضیلت ہو؟ جس سے ملنے کے لیے لوگ سفر کرتے ہوں۔۔۔ اس کے علاوہ اس خطبہ میں حضرت عمرؓ نے کہا کہ اب جس کسی نے مسلمانوں سے مشورے کے بغیر کسی کی بیعت کی تو بیعت کرنے والا اور جس کی بیعت کی گئی ہو دونوں اپنی جانیں گنوا بیٹھیں گے[8]۔ میرے خیال میں اس خطبے میں حضرت عمرؓ نے واضح کیا کہ بے شک حضرت ابوبکرؓ کی بیعت ہنگامی حالات میں اچانک ہوئی تھی اور کامیاب بھی ہوئی لیکن اس کو آئندہ کے لئے مثال نہیں بنایا جا سکتا۔ ویسے بھی حضرت ابوبکرؓ جیسی بلندوبالا اور مقبول شخصیت کا آدمی اور کون ہے؟ اگر کوئی حضرت ابوبکرؓ کی اچانک بیعت ہونے والے پہلو کو ثبوت کے طور پر پیش کر کے مسلمانوں کے مشورے کے بغیر بیعت کرنا چاہے تو اس کے دھوکے میں نہ آنا بلکہ مسلمانوں کے مشورے سے بیعت کرنا۔
جب حضرت عمرؓ کو زخمی کیا گیا تو لوگوں نے آپؓ کو خلیفہ مقرر کرنے کا کہا تو آپؓ نے فرمایا بے شک اللہ تعالیٰ اپنے دین کی حفاظت فرمائے گا اور اگر میں خلیفہ مقرر کروں تو مجھ سے بہتر و افضل حضرت ابوبکرؓ مقرر کر چکے ہیں اور اگر میں کسی کو خلیفہ مقرر نہ کروں تو مجھ سے بہتروافضل رسول اللہﷺ نے بھی کسی کو خلیفہ نامزد نہیں کیا تھا[3]۔ عبداللہ بن عمرؓ نے کہتے ہیں کہ جب آپؓ نے رسول اللہﷺ کا ذکر کیا تو میں جان گیا کہ آپؓ کسی کو خلیفہ نامزد نہیں فرمائیں گے۔
جب حضرت عمرؓ آخری وصیتیں فرما رہے تھے تب لوگوں نے عرض کیا امیرالمومنین کسی کو خلیفہ بنا دیں حضرت عمرؓ نے کہا کہ میرے نزدیک ان لوگوں سے زیادہ کوئی خلافت کا مستحق نہیں ہے جن سے رسول اللہﷺ انتقال کے وقت راضی تھے پھر آپ نے حضرت علیؓ، عثمانؓ، زبیرؓ، طلحہؓ، سعدؓ، عبدالرحمنؓ بن عوف کا نام لیا اور فرمایا کہ عبد اللہ بن عمرؓ تمہارے پاس حاضر رہا کریں گے مگر خلافت میں ان کا کوئی حصہ نہیں ہے۔ آپ نے یہ جملہ ابن عمرؓ کی تسلی کے لیے کہا۔ پھر حضرت عمرؓ کی وفات کے بعد وہ لوگ جو حضرت عمرؓ کی نظر میں خلافت کے مستحق تھے جمع ہوئے۔ ان چھ صحابہ نے اتفاق رائے سے اپنے میں سے تین لوگ منتخب کر لیے۔ پھر ان تینوں نے اتفاق رائے سے خلیفہ تجویز کرنے کا اختیار عبدالرحمٰنؓ بن عوف کو دے دیا۔ عبدالرحمٰنؓ بن عوف نے بہت سوچ بچار، عام لوگوں کا رحجان کس طرف ہے اور کئی صحابہ اکرامؓ سے مشورہ کرنے کے بعد عثمان غنیؓ کو خلیفہ منتخب کیا[12]۔ کہا جاتا ہے کہ خلیفہ مقرر کرنے کے لئے عبدالرحمٰنؓ بن عوف اکابر سے بھی مشورہ کرتے اور ان کے پیروکاروں سے بھی۔ اجتماعاً بھی اور متفرق طور پر بھی۔ اکیلے اکیلے سے بھی اور دو دو سے بھی۔ خفیہ بھی اور اعلانیہ بھی، حتی کہ پردہ نشین عورتوں سے بھی مشورہ کیا۔ مدرسے کے طالب علموں سے بھی اور مدینہ کی طرف آنے والے سواروں سے بھی(حج سے واپس گزرتے ہوئے قافلوں سے بھی دریافت کیا[13])، بدووں سے بھی جنہیں وہ مناسب سمجھتے۔ تین دن اور تین راتیں یہ مشورہ جاری رہا۔ حضرت عبدالرحمٰنؓ ان تین دن اور تین راتوں میں بہت کم سوئے۔ وہ اکثر نماز، دعا، استخارہ اور ان لوگوں سے مشورہ میں وقت گزارتے تھے جن کو وہ مشورہ کا اہل سمجھتے[14]۔ آخر اس استصوابِ عام سے وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ اکثر لوگ حضرت عثمانؓ کے حق میں ہیں[13]۔
جہاں تک میری معلومات ہے اس کے مطابق حضرت عثمانؓ نے بھی اپنا کوئی جانشین مقرر نہیں کیا تھا۔ لیکن ایک جگہ پر یہ پڑھنے کو ملا کہ حضرت عثمانؓ نے اپنے بعد خلافت عبدالرحمٰنؓ بن عوف کے لئے لکھ کر اپنے منشی کے پاس وہ کاغذ رکھوا دیا تھا۔ مگر حضرت عبدالرحمٰنؓ بن عوف ان کی زندگی میں ہی 32ھ میں انتقال کر گئے[15]۔ یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ حضرت عثمانؓ کی شہادت 35ھ میں ہوئی جبکہ حضرت عبدالرحمٰنؓ بن عوف تین سال قبل 32ھ میں انتقال کر گئے تو پھر اگر حضرت عثمانؓ اپنا جانشین مقرر کرنا چاہتے تھے تو انہوں نے ان تین سالوں میں کسی دوسرے کو جانشین مقرر کیوں نہ کیا؟ خیر اس کے علاوہ صحیح بخاری میں ذکر ملتا ہے کہ جب حضرت عثمانؓ کو اتنی نکسیر پھوٹی کہ آپؓ کو حج سے رکنا پڑا اور وصیت بھی کر دی تھی کہ ایک قریشی نے آپ کے پاس جا کر عرض کیا کہ کسی کو خلیفہ مقرر کر دیجئے۔ حضرت عثمانؓ نے پوچھا کیا لوگ خلیفہ مقرر کرنے کو کہتے ہیں؟ اس نے کہا ہاں۔ آپ نے فرمایا کس کو؟ وہ خاموش رہا پھر ایک اور شخص آپؓ کے پاس آیا اس نے کہا کسی کو خلیفہ بنائیے۔ آپؓ نے اس سے بھی پوچھا کیا لوگ خلیفہ مقرر کرنے کو کہتے ہیں؟ اس نے کہا ہاں۔ آپؓ نے اس سے بھی فرمایا کس کو؟ شاید وہ بھی تھوڑی دیر خاموش رہا پھر کہنے لگا شاید لوگوں کی رائے ہے زبیر کو خلیفہ بنایا جائے تو حضرت عثمانؓ نے فرمایا! اس ذات کی قسم جس کے قبضہ میں میری جان ہے میرے علم میں زبیر سب سے بہتر ہیں یقیناً وہ سرور عالمﷺ کو سب سے زیادہ محبوب تھے۔ اس سے اگلی حدیث میں یہ الفاظ بھی ہیں کہ حضرت عثمانؓ نے تین بار یہ بات دہرائی کہتم خود جانتے ہو کہ زبیرؓ بن عوام تم سب میں سے بہتر ہیں[16]۔ ان واقعات سے یہ تو ثابت ہوتا کہ حضرت عثمانؓ سے جب خلیفہ بنانے کا کہا گیا تو انہوں نے حضرت زبیرؓ بن عوام کو پسند فرمایا اور سب سے بہتر کہا۔ میرا خیال ہے کہ یہ حضرت زبیرؓ کے متعلق حضرت عثمانؓ کی رائے تھی اور اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ حضرت عثمانؓ نے حضرت زبیرؓ کو اپنا جانشین یا خلیفہ مقرر کیا ہو۔
حضرت عثمانؓ کی شہادت کے وقت باغی اور شورش پسند عنصر مدینہ پر چھایا ہوا تھا۔ انہوں نے شہر کی ناکہ بندی کی ہوئی تھی۔ پورے شہر کا نظم و نسق باغیوں میں سے ہی ایک شخص غافقی بن حرب کے ہاتھ میں تھا۔ یہی شخص 5 دن تک امامت کے فرائض بھی انجام دیتا رہا۔ شرپسندوں کا یہ گروہ حضرت عثمانؓ کو شہید کر دینے تک تو متفق تھا لیکن آئندہ خلیفہ بنانے میں ان میں اختلاف تھا۔ مصری حضرت علیؓ کو، کوفی حضرت زبیرؓ کو اور بصری حضرت طلحہؓ کو خلیفہ بنانے چاہتے تھے۔ لیکن ان تینوں حضرات نے انکار کر دیا۔ پھر یہ لوگ حضرت سعد بن ابی وقاصؓ اور حضرت عبداللہ بن عمرؓ کے پاس بھی گئے لیکن ان دونوں حضرات نے بھی صاف انکار کر دیا۔ اس صورت حال سے ان شورشیوں کو یہ خطرہ پیدا ہو گیا کہ اگر ہم اس معاملہ کو یونہی چھوڑ کر واپس چلے گئے تو ہماری خیر نہیں (خود عبداللہ بن سبا مصر سے بھیس بدل کر مدینہ آیا اور اپنے چیلوں کو تاکید کی کہ خلیفہ کے تقرر کے بغیر اپنے علاقوں کو ہرگز واپس نہ جائیں)[17]۔ ایک روایت کے مطابق جب حضرت علیؓ سے خلافت سنبھالنے کو کہا گیا تو آپ نے فرمایا میری بیعت خفیہ طریقے سے نہیں ہو سکتی۔ یہ مسلمانوں کی مرضی سے ہونی چاہیئے۔ ایک دوسری روایت کے مطابق آپؓ نے اس کا یوں جواب دیا یہ اہلِ شوریٰ اور اہلِ بدر کا کام ہے، جسے وہ منتخب کریں وہی خلیفہ ہو گا۔ پس ہم جمع ہوں گے اور اس معاملہ پر غور کریں گے[18]۔
حضرت علیؓ کے خلیفہ مقرر ہونے کے بارے میں خلافت و جمہوریت کے صفحہ 75 اور 76 پر مولانا عبدالرحمٰن کیلانی صاحب البدایہ کا حوالہ دیتے ہوئے لکھتے ہیں کہ شورشی یہ سوچ کر (خلیفہ بنائے بغیر واپس چلے گئے تو ہماری خیر نہیں) حضرت علیؓ کے پاس آئے اور اصرار کیا اور اس گروہ کے سرخیل اشترنخعی نے حضرت علیؓ کا ہاتھ پکڑ کر بیعت کر لی۔ اس کے بعد دیگر افراد نے بھی بیعت کی۔ لیکن حضرت علیؓ کی خواہش کے مطابق اہل شوریٰ اور اہل بدر کے جمع ہونے کا موقع میسر نہ آ سکا اور اس کے بغیر ہی آپ خلیفہ چن لیے گئے۔ خلافت و ملوکیت کے صفحہ 83 تا 86 پر ابوالاعلی مودودی صاحب جہاں دیگر خلفاء کے مقرر ہونے کا طریقہ بیان کرتے ہیں وہاں پر حضرت علیؓ کے خلیفہ مقرر ہونے کا طریقہ واضح الفاظ میں نہیں لکھتے جبکہ صفحہ 121 اور 122 پر لکھتے ہیں کہ تمام معتبر روایتوں سے یہی معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہﷺ کے اصحاب اور دوسرے اہلِ مدینہ ان (حضرت علیؓ) کے پاس گئے اور ان سے کہا کہ یہ نظام کسی امیر کے بغیر قائم نہیں رہ سکتا، لوگوں کے لیے ایک امام کا وجود ناگزیر ہے، اور آج آپ کے سوا ہم کوئی ایسا شخص نہیں پاتے جو اس منصب کے لئے آپ سے زیادہ مستحق ہو، نہ سابق خدمات کے اعتبار سے، اور نہ رسول اللہﷺ کے ساتھ قُرب کے اعتبار سے۔ انہوں نے انکار کیا اور لوگ اصرار کرتے رہے۔ آخر کار انہوں نے کہا میری بیعت گھر بیٹھے خفیہ طریقہ سے نہیں ہو سکتی، عام مسلمانوں کی رضا کے بغیر ایسا ہونا ممکن نہیں ہے۔ پھر مسجد نبویؐ میں اجتماع عام ہوا اور تمام مہاجرین اور انصار نے ان کے ہاتھ پر بیعت کی۔ صحابہؓ میں سے 17 یا 20 ایسے بزرگ تھے جنہوں نے بیعت نہیں کی تھی۔
حضرت علیؓ کی وفات کے قریب لوگوں نے پوچھا کہ اے امیر المومنین! اگر آپ فوت ہو جائیں تو ہم آپ کے صاحبزادے حضرت حسنؓ کے ہاتھ پر بیعت کر لیں؟ آپؓ نے جواب دیا میں نہ تم کو اس کا حکم دیتا ہوں، نہ منع کرتا ہوں۔ تم لوگ خود اچھی طرح دیکھ سکتے ہو۔ حضرت علیؓ کی وفات کے قریب ہی لوگوں نے کہا کہ آپؓ اپنا ولی عہد مقرر کر جائیں۔ آپ نے جواب میں فرمایا میں مسلمانوں کو اُسی حالت میں چھوڑوں گا جس میں رسول اللہﷺ نے چھوڑا تھا[19]۔
قارئین! فیصلہ آپ لوگوں کے ہاتھ میں ہے۔ سوچیں اور تحقیق کریں، تحریر کے شروع میں لکھے گئے سوالات کے جوابات ڈھونڈیں۔ خاص طور پر ان نکات پر غور کریں کہ اسلام (قرآن و حدیث) میں خلیفہ مقرر کرنے کا طریقہ نہ ہونا، حضورﷺ کا اپنا جانشین مقرر نہ کرنا، حضورﷺ کے بعد خلیفہ منتخب کرنے کے لئے سقیفہ بنی ساعدہ میں مسلمانوں کا مشاورت کرنا، حضرت عمرؓ کو خلیفہ نامزد کرنے کے لئے حضرت ابو بکرؓ کا اکابر صحابہؓ سے مشورہ کرنا اور پھر دیگر مسلمانوں کا اس سے متفق ہونا، حضرت عمرؓ کا خطبے میں یہ فرمانا کہ جس کسی نے مسلمانوں سے مشورے کے بغیر کسی کی بیعت کی تو بیعت کرنے والا اور جس کی بیعت کی گئی ہو دونوں اپنی جانیں گنوا بیٹھیں گے، مزید حضرت عمرؓ کا کسی کو خلیفہ نامزد نہ کرنا، حضرت عمرؓ کی وفات کے بعد جب عبدالرحمٰنؓ بن عوف کو خلیفہ نامزد کرنے کا اختیار دیا گیا تو ان کی اس معاملے میں بہت سوچ بیچار اور خاص طور یہ جاننا کہ عام لوگوں کی اکثریت کا رحجان کس شخصیت کی طرف ہے، حضرت علیؓ کا یہ فرمانا میری بیعت خفیہ طریقے سے نہیں ہو سکتی۔ یہ مسلمانوں کی مرضی سے ہونی چاہیئے۔ ایک دوسری روایت کے مطابق آپؓ کا یوں فرمانا یہ اہلِ شوریٰ اور اہلِ بدر کا کام ہے، جسے وہ منتخب کریں وہی خلیفہ ہو گا۔ پس ہم جمع ہوں گے اور اس معاملہ پر غور کریں گے، مزید آپؓ کا ولی عہد مقرر کرنے والی بات پر یہ فرمانا میں مسلمانوں کو اُسی حالت میں چھوڑوں گا جس میں رسول اللہﷺ نے چھوڑا تھا۔
ایک نظر جمہوریت کیا ہے؟ پر بھی ہو جائے۔
مزید معلومات کے لیے
 

dilavar

Chief Minister (5k+ posts)
There is very important point everyone ignores. After death of The Prophet PBUH medinites wanted to make Hazrat Saad bin ubadah as the Caliph. Hazrat Abubakr told them that Arabs would not accept anyone except from the house of Quraish due to their nobility and custodians of Kaaba to rule over them. This is the essence of democracy. Since people elected quraish to be their leaders best person among them was selected to be the caliph by consultation much like what happens or should happen in a political party.
 

muntazir

Chief Minister (5k+ posts)
خلفا راشدین کو چننے کا کوئی بھی طریقہ وازہ نہیں بتایا ہے آپ نے
پہلی بات تو یہہے کے کیسے ہو سکتا ہے کے نبی پاک اس دنیا سے رخصت ہو رہے ہوں اور انھوں نے کسی کو نہ چنا ہو ؟
اس کی سب سے بڑی مثال ہے غدیر جہاں پر رسالت مآب نے اایک لاکھ سے اوپر صحابہ اکرام کے سامنے علی علیہ سلام کا ہاتھ بلند کر کے فرمایا کے جس جس کا میں مولا اس اس کا علی مولا جس پر سب نے بیت کی اور مبارکباد بھی دی
اور حضرت عمر رضی الله عنہا نے بھی آپ کو مبارک دی
سوره برات کو جب حضرت ابوبکر رضی الله کے ہاتھ بھیجا تو آپ کو وہ نازل ہوئی اور آپ نے فورن علی علیہ سلام کو بھیجا کے آپ جاکر ان سے یہ سوره لے لیں کیوں کے حکم ہووہ ہے کے یا تو آپ خود یا کوئی آپکا قریبی اس کو بیان فرماے
ایک دفعہ آپ مولا علی کو جنگ تبوک میں ساتھ لیکر نہیں جا رہے تھے تو آپ نے آکر بولا یا رسول الله آپ مجھ کو عورتوں اور بچوں کے بیچ چھوڑ کے جا رہے ہیں آپ نے فرمایا کیا آپ خوش نہیں ہو کے ااے علی تماری مثلا میرے ساتھ ایسےہی ہے جیسی ہارون کی موسیٰ کے ساتھ تھی یہ اور بات ہے کے میرے بعد کوئی نبی نہیں ہو گا
پھر بات یہ بھی آپسے پوچھی جاے کے اگر آپ کی بات ٹھیک ہے کے نبی پاک کو وصیت کر کے نہیں گے تو خلفا کو چننے کے لے مختلف طریقے سامنے آتے ہیں

بقول خود آپ کی تحقیق کے اچانک حضرت عمر رضی الله عنہا نے آپ کا ہاتھ بلند کیا اور بیت کر لی
جب آپ حضرت ابوبکر رضی الله عنہا کا وقت قریب آیا تو انھوں نے آپ حضرت عمر رضی الله عنہا کو چن لیا
حضرت عمررضی الله عنہا نے شوری بنا دی
حضرت عثمان رضی الله عنہا نے بقول ان کے کے حضرت زبیر سے زیادہ کوئی بہتر نہیں اور نبی پاک کو ان سے زیادہ کوئی محبوب نہیں اگر یہی بات تھی تو پھر حضرت زبیر رضی الله عنہا کو کیوں نہیں پہلا خلیفہ بنایا گیا ؟
نبی پاک کو سب سے زیادہ محبوب مولا علی کی ذات تھی اور آپ نے فرمایا تھا کے اے علی تم اس دنیا اور آخرت میں بھی میرے بھائی ہو خدا را آپ سے گزارش ہے کے اس طرح کے ٹاپک کو مت شروع کریں میں گزارش بھی کرونگا کے میری پوسٹ کو فرقہ واریت کی طرف نہ لیا جاے میں نے جو کچھ قوٹ کیا ہے اس کے لے مستند ترین روایت موجود ہیں اگر کسی کو چاہے ہونگی تو انشااللہ کوشش کر کے مہیا بھی کر دوں گا جزاکم الله خیر

 
Last edited:

karachiwala

Prime Minister (20k+ posts)
​صحابہ رضوان اللہ تعالیٰ علیہم آسمان کے ستارے تھے اور آج کے سیاستدان بغیر کسی امتیاز کےایک انتہائی گہری کھائی کی مخلوق ہیں۔ بنالو اب جو بھی تعلق آپ بنا سکتے ہو ان دونوں میں۔
 

PAINDO

Siasat.pk - Blogger
.................

23-653x1024.jpg
 
Last edited by a moderator:

dilavar

Chief Minister (5k+ posts)
خلفا راشدین کو چننے کا کوئی بھی طریقہ وازہ نہیں بتایا ہے آپ نے
پہلی بات تو یہہے کے کیسے ہو سکتا ہے کے نبی پاک اس دنیا سے رخصت ہو رہے ہوں اور انھوں نے کسی کو نہ چنا ہو ؟

آپکی پہلی بات ہی غلط ہے. کوشش کریں ایک وسیح دائرہ ے نظر رکھنے کی. حضور ے اکرم ص کسی کو دائرکتلی نامزد کر دیتے تو اسے ڈیواین رائٹ ٹو رول مل جاتا جو کے صرف ایک نبی کیلئے ہوتا ہے. یہی حکمت حضور ص کی اولاد ے نرینہ کا نہ ہونے کی تھی میرے خیال میں. حضرت علی ر کی ذات کے بارے میں کیسا کیسا غلو برتا جاتا ہے تو دوسری صورت میں ہمہارا کیا حال ہوتا ؟

آپکی باقی باتوں میں کوئی ربط اور وزن نہی
 

Raaz

(50k+ posts) بابائے فورم
یہ بہت ہی اہم بات کی گئی ہے
جو لوگ خلافت کی بات کرتے ہیں ان لوگوں کو خلیفہ کا مطلب ہی نہی پتہ
یہ مکمل لفظ خلیفہ الرسول ہے ، جس کا مطلب رسول اللہ کا خلیفہ ہے نا کہ کسی حکومتی عہدے کا نام ہے

کیا آج ہے کوئی اتنا نیک جو کہے کہ وہ رسول کا خلیفہ ہے ؟؟؟

کیا آج کی امت مسلمہ رسول اللہ کی امت ہے ؟؟



 

dilavar

Chief Minister (5k+ posts)
divine right to rule aik nabi ko bhi haasil nahin hota balkeh nabi ko bhi khud nabi saabitkarna padhta hai 3/64,79 etc. Right of rule sirf aur sirf Allah ko hai. Allah apni kitaab ke zariye insaanu par apni hakoomat chahta hai. albata insaan sab mil kar jo aik ummat hun apne main se kuchh logoon ko chun sakte hen jo un ki nazar main sab se behtar ummat ko serve kar sakte hen quran ke mutaabiq.

http://www.siasat.pk/forum/showthread.php?42439-Allama-Ghulam-Ahmad-Parwez-s-threads-collections&


بھائی ڈیواین رائٹ تو رول کا مطلب ہی الله کی نامزدگی ہوتا ہے - سادہ مطلب ہی الله کی طرف سے دیا گیا اختیار ہے
 

muntazir

Chief Minister (5k+ posts)

آپکی پہلی بات ہی غلط ہے. کوشش کریں ایک وسیح دائرہ ے نظر رکھنے کی. حضور ے اکرم ص کسی کو دائرکتلی نامزد کر دیتے تو اسے ڈیواین رائٹ ٹو رول مل جاتا جو کے صرف ایک نبی کیلئے ہوتا ہے. یہی حکمت حضور ص کی اولاد ے نرینہ کا نہ ہونے کی تھی میرے خیال میں. حضرت علی ر کی ذات کے بارے میں کیسا کیسا غلو برتا جاتا ہے تو دوسری صورت میں ہمہارا کیا حال ہوتا ؟

آپکی باقی باتوں میں کوئی ربط اور وزن نہی

Abhi to main ghar sai bahar nikal aaya hoo aur highway per hoon p sai pehkey bhi in nazuk masail ler bat hoi hai aur main yeh samjhta hoon key aap jo chutkloon wala thread hai us oer hi fit hitey hain kion key naah to aap key paas knowldge hai aur nh hi hardasht lekin chonkey aap key aqaid ko tges phnchti hai is key aap becharey naah chahtey hiey bhi beech main kod jaatey hain main ney jo bhi quote kia hai is ki zumedari bhi li hai aap kuch arsa kisi madrasey main waqt den too aap ko meri baaten samjh aaen gii tub tuk apney nazuk damgh per boojh mut daalen agar kutub key hawaley chahey hotey to aap mujh sai daleel mangtey lek8n mujhey maloom hai key aap bura naah manen to aap iney jogey naheen hoo is forum per aaj tuk koi baat bagher daleel key naheen ki hai ghloo vh kertey hain jinhon jey jhotey fazail bana ker rakhey hain warna agar aaj vh hastian agar mojood hoon too laa.litar len.
 

muntazir

Chief Minister (5k+ posts)
تم ہی کہو یہ انداز گفتگو کیا ہے

Bhai main bahar jaa raha hoo aakar ap sai baat keroon ga main is baat per qaim hoon aur iman hai key sahaba ikram ki izat wajib hai faraq sirf yeh hai key hum sabkey tareqey mukhtlf hain mera quote kerney ka hir giz maqsad naheen hai key aapka thread khrb hoo aab jo bhi baat agar ho gi to hum pm kerlen gai jazakum Allah khair.
 

Raaz

(50k+ posts) بابائے فورم
اللہ کریم نے سورہ شوریٰ میں طریقه بتا دیا ہے کہ اپنے فیصلے کیسے کرنے ہیں
لیکن اس میں نیت کی بات ہے ، ہماری نیت ہی کبھی صاف نہی ہوئی تو کیا کیا جاۓ

آج انگریز اس پر عمل کر رہا ہے اور کامیاب ہے


جو اپنے رب کا حکم مانتے ہیں، نماز قائم کرتے ہیں، اپنے معاملات آپس کے مشورے سے چلاتے ہیں، ہم نے جو کچھ بھی رزق انہیں دیا ہے اُس میں سے خرچ کرتے ہیں (38

لیکن یہ بات اپنے رب کا حکم ماننے والوں کے لئے ہے ، شاید آج کا کافر ہم سے بہتر ہے
 

PAINDO

Siasat.pk - Blogger
اللہ کریم نے سورہ شوریٰ میں طریقه بتا دیا ہے کہ اپنے فیصلے کیسے کرنے ہیں
لیکن اس میں نیت کی بات ہے ، ہماری نیت ہی کبھی صاف نہی ہوئی تو کیا کیا جاۓ

آج انگریز اس پر عمل کر رہا ہے اور کامیاب ہے


جو اپنے رب کا حکم مانتے ہیں، نماز قائم کرتے ہیں، اپنے معاملات آپس کے مشورے سے چلاتے ہیں، ہم نے جو کچھ بھی رزق انہیں دیا ہے اُس میں سے خرچ کرتے ہیں (38

لیکن یہ بات اپنے رب کا حکم ماننے والوں کے لئے ہے ، شاید آج کا کافر ہم سے بہتر ہے


خدا نخواستہ مگر لگتا کچھ ایسا ہی ہے
 

Raaz

(50k+ posts) بابائے فورم
تم ہی کہو یہ انداز گفتگو کیا ہے

Yar thanks for sharing this article , I always wanted to write this but was afraid of so long writing , and afterward discussion ...
 

Raaz

(50k+ posts) بابائے فورم

خدا نخواستہ مگر لگتا کچھ ایسا ہی ہے

یہ حقیقت بات ہے جس کو ہم قبول نہی کر رہے

آج کا کا فر ہمارے سے کردار میں بڑھ گیا ہے ، اور ہم نماز روزے کو کردار سمجھ رہے ہیں جو کہ عبادات ہیں ، کردار نہی ، اخلاق نہی

مودی کو دیکھ لو ، ٹرین میں چاۓ بیچتا تھا ، ایم اے کیا ، سیاست کی ، اپنے لوگوں کو فایدہ دیا آج لوگوں نے اس کو وزیر اعظم بنا دیا ہے کہ ہمارے کام کرو

ہم لوگ ہیں ، نواز اور زرداری امریکہ سے ڈیل کرتے ہیں ، فراڈ کرتے ہیں لوٹ ما مچاتے ہیں ، عوام سے گالیاں کھاتے ہیں

کتنا فرق ہے کردار میں ؟؟؟ دیکھو

ہمارا ملا ہے ، بکا ہوا ہے ، سعودیہ کے ہاتھوں ، امریکہ کے ہاتھوں ، ہمیشہ فوج کا ساتھ دیتا ہے ، اسلام کا نہی ، سارے لوگوں سے گالیاں کھاتا ہے

لوگوں میں بھی ایمان ختم ہو گیا ہے ، کوئی کردار نہی ہے
 

dilavar

Chief Minister (5k+ posts)
Abhi to main ghar sai bahar nikal aaya hoo aur highway per hoon p sai pehkey bhi in nazuk masail ler bat hoi hai aur main yeh samjhta hoon key aap jo chutkloon wala thread hai us oer hi fit hitey hain kion key naah to aap key paas knowldge hai aur nh hi hardasht lekin chonkey aap key aqaid ko tges phnchti hai is key aap becharey naah chahtey hiey bhi beech main kod jaatey hain main ney jo bhi quote kia hai is ki zumedari bhi li hai aap kuch arsa kisi madrasey main waqt den too aap ko meri baaten samjh aaen gii tub tuk apney nazuk damgh per boojh mut daalen agar kutub key hawaley chahey hotey to aap mujh sai daleel mangtey lek8n mujhey maloom hai key aap bura naah manen to aap iney jogey naheen hoo is forum per aaj tuk koi baat bagher daleel key naheen ki hai ghloo vh kertey hain jinhon jey jhotey fazail bana ker rakhey hain warna agar aaj vh hastian agar mojood hoon too laa.litar len.

بھائی مینے عالم تو نہی بننا کے مدرسے میں داخلہ لوں. میں ایک ہولیسٹک ویو سے دیکھتا ہوں چیزوں کو. اور کوشش کرتا ہوں کے کچھ اپنا بھی دماغ استحمال کروں نہ کے اپنے پہلے سے میڈ اپ مائنڈ کیلئے ادھر ادھر سے دلائل تلاش کرتا رہوں جب آپ کا فریم ورک ہی ٹیڑہا ہو تو اس کے اندر جتنے مرضی دلائل لے این اپنے آپ کو اس ٹیڑھ پے مستحکم کرنے کے علاوہ کوئی فائدہ نہی
.
 

Phoenix112

Councller (250+ posts)
Something i wrote before, thought i should add to this discussion

"Is democracy an Islamic concept or not? For those who say it is a western concept only thing i ask is what is the difference between the rule of the first four rightly guided caliphs and the ones who came after turning the caliphacy into a kingship. If the later was a kingship then what was the former. A nascent form of Islamic democracy? Mankind has only two choices one is kingship and another being democracy. Sure the king can be benevolent but will his sons or their sons share the same trait? The idea of separation between the religion and the state is an idea of secular democracy that has its roots in the west. A religious democracy on the other hand which we should strive to achieve is a relatively new concept that has its roots in the nascent democracy of the first four rightly guided caliphs. The future of Islam depends on this concept. In the wider Muslim world lack of democracy has led to Muslims states ignoring the plight of their brethren in need. Dictators and kings have personal needs that is not synonymous with the needs of their people whereas the people hearts beat with their brethren. Only when democracy or Islamic democracy has triumphed all over the world will the Islamic world rise to state of power and authority in the world where its voice matters and others are forced to listen and act upon what it has to say."
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
بھائی ڈیواین رائٹ تو رول کا مطلب ہی الله کی نامزدگی ہوتا ہے - سادہ مطلب ہی الله کی طرف سے دیا گیا اختیار ہے

dear brother dilavar sb, Allah ne kisi bhi aik shakhs ko yeh ikhtayaar nahin diya keh woh logoon par Allah ke naam par hakomat kare. nabi bhi yahee karta hai keh Allah ka paighaam logoon ko pohnchaata hai aur agar log is paighaam par jama ho jaayen is bunyaad par keh woh is nizaam ke mutaabiq zindagi guzaaren ge to un ko aik ummat ke tor par munazzam kar deta hai ta keh woh qurani manshooro dastoor ke mutaabiq sab kaam anjaam den aur khud ko regulate karen. kisi ko bhi kisi tarah se bhi kisi par hukamraani ka haq nahin hai.

yahee wajah hai deene islam main na hukamraanu ki gunjaaish hai na mullaaanu ki aur na hi samayaadaarun ki. isi liye ummah aik bhaichaara ka naam hai hukamraanu aur mahkoomun ke tasawur ka nahin.

molvi log jo kuchh ham logoon ko quran aur hadees ki taraf mansoob kar ke bataate hen us main bahor si baten bilkul ghalat hoti hen. albata yeh jaanane ke liye ham ko khud quran ko samajhne ke liye padhna laazmi hai.

yeh kehna ke haakim Allah hai phir khud haakim ban jaana yahee to shirk hai. neede islam ko chhor kar aur raaste apnaana yahee to kufar hai quran ki nazar main.

deene islam hai kia cheez yeh baat jaanana bahot hi zaroori hai. It is a set of goals, to accomplish those goals the quran gives mankind a program and to accomplish those goals according to the given program Allah has given in the quran some guidelines according to which those goals are to be accomplished. yeh hai deene islam anything else in the name of Allah and rasool is nothing but falsehood invented by some people to seek and gain dominance over others to use and abuse them. That is what malukiyati nizaam is all about which muslim ummah has been taking as islami nizaam for many centuries. This nizaam has given us islam as a mazhab that has nothing at all to do with deen. Deene islam is a way of life advised by Allah for the well being of mankind. It is a way of life that teaches people to learn to live for the well being each other in the name of Allah. The malukiyati way of life is all about living at the expense of each other for personal gains. This is why is concept of rulers, mullahs and sarmayadaars.

For better clarity please refer to provided link. It explains the message of the quran in detail. Ummah has no sense what deene islam is so it is not possible yet to establish deen. People are mazbi janoonies that is all. If thye wanted deen the first thing they will need to do is get the message of the quran for themselves then let others know about it and only if people agree on the message and coem together deen of islam will become established. This is how each and every messenger of of Allah worked as well as their supporters who were missionaries for deen of Allah.

regards and all the best.
 

Kunphushus

Councller (250+ posts)
Please do not post while you are on the road. Drive Safe.



Abhi to main ghar sai bahar nikal aaya hoo aur highway per hoon p sai pehkey bhi in nazuk masail ler bat hoi hai aur main yeh samjhta hoon key aap jo chutkloon wala thread hai us oer hi fit hitey hain kion key naah to aap key paas knowldge hai aur nh hi hardasht lekin chonkey aap key aqaid ko tges phnchti hai is key aap becharey naah chahtey hiey bhi beech main kod jaatey hain main ney jo bhi quote kia hai is ki zumedari bhi li hai aap kuch arsa kisi madrasey main waqt den too aap ko meri baaten samjh aaen gii tub tuk apney nazuk damgh per boojh mut daalen agar kutub key hawaley chahey hotey to aap mujh sai daleel mangtey lek8n mujhey maloom hai key aap bura naah manen to aap iney jogey naheen hoo is forum per aaj tuk koi baat bagher daleel key naheen ki hai ghloo vh kertey hain jinhon jey jhotey fazail bana ker rakhey hain warna agar aaj vh hastian agar mojood hoon too laa.litar len.
 

affanpervez

Minister (2k+ posts)
One thing which should be added in this article is that although Holy Prophet (Peace Be Upon Him) didn't nominated any one but asked Hazrat Abu Bakkar Razi Allah tala unho to lead the prayer in Masjid e Nabwi during his last time. This was a clear message that Prophet has selected AbuBakkar as the leader for Muslims.
 
Sponsored Link