جناح اسپتال میں لڑکی کی لاش چھوڑ کر جانے کا معاملہ،اہم حقائق سامنےآگئے

4%D8%B9%D8%AF%DB%8C%DA%BE%D8%AC%DA%A9%D8%A7%DA%A9%D8%B1%D8%A7%DA%86%D8%A7%DA%86%D8%A7%D8%A7%DA%86%D8%A7%DA%86.jpg


کراچی کے جناح اسپتال میں جوان لڑکی کی لاش چھوڑ کر جانے والے افراد سے متعلق اہم انکشاف سامنے آگئے ہیں، مقتولہ کی شناخت اور موت کی وجہ بھی سامنے آگئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق پولیس ذرائع کے مطابق لاش چھوڑ کر جانےوالوں کی تصاویر سامنے آگئی ہیں، لاش چھوڑنے کیلئے ایک لڑکا اور ایک لڑکی سفید رنگ کی گاڑی میں ہسپتال پہنچے۔

تفتیشی ٹیم نے ہسپتال کی سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کرلی ہیں، فوٹیج میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ایک سفید گاڑی میں جبران نامی لڑکا اور سحرش نامی لڑکی لاش ہسپتال لائے، ڈاکٹروں نے لڑکی کو چیک کرنے کے بعد اسے مردہ قرار دیدیا۔


پولیس کے مطابق صبح 7بج کر 28 منٹ پر گاڑی ہسپتال کی ایمرجنسی کے باہر پہنچی، جبران اور سحرش گاڑی سے اترے اور انہوں نے ایمرجنسی کے باہر موجود ہسپتال کے عملے سےکچھ بات کی، سی سی ٹی وی فوٹیج میں دیکھا جاسکتا ہے کہ سحرش فون پر بات کرتے ہوئے7 بجکر 42 منٹ پر ایمرجنسی سے باہر نکلی۔

https://twitter.com/x/status/1672578964609531904
پولیس کےمطابق ہسپتال لائی جانے والی لاش کی شناخت ہوگئی ہے، لڑکی ٹک ٹاکر تھی اور اس کا تعلق شیخوپورہ سے تھا، پولیس نے مقتولہ کے گھر والوں سے رابطہ کرلیا ہے، ابتدائی معلومات کے مطابق لڑکی کی موت نشہ کی زیادتی کے باعث ہوئی۔