باپ اور بیٹے کا فرق

khandimagi

Minister (2k+ posts)
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
السلامُ علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ


باپ اور بیٹے میں فرق



ایک 85 سالہ عمر رسیدہ باپ اپنے 45 سالہ بیٹے کے ساتھ گھر کے ھال کمرے میں بیٹھا ہوا تھا کہ ایک کوّے نے کھڑکی کے پاس آ کر شور مچایا۔باپ کو نجانے کیا سوجھی، اُٹھ کر بیٹے کے پاس آیا اور اُس سے پوچھا، بیٹے یہ کیا چیز ہے؟بیٹے نے جواب دیا؛ یہ کوّا ہے۔ یہ سُن کر باپ اپنی جگہ پر جا کر بیٹھ گیا۔کُچھ دیر کے بعد وہ پھر اُٹھ کر اپنے بیٹے کے پاس کر آیا اور دوبارہ اُس سے پوچھا، بیٹے؛ یہ کیا ہے؟بیٹے نے حیرت کے ساتھ باپ کی طرف دیکھا ور پھر اپنا جواب دُہرایا: یہ کوّا ہے۔کُچھ دیر کے بعد باپ پھر اُٹھ کر آیا اور تیسری بار پوچھا: بیٹے یہ کیا ہے؟بیٹے نے اپنی آواز کو اونچا کرتے ہوئے کہا؛ ابا جی یہ کوّا ہے، یہ کوّا ہے۔

تھوڑی دیر کے بعد باپ پھر اُٹھ کر آیا ور چوتھی بار بیٹے سے مُخاطب ہو کر پوچھا؛ بیٹے یہ کیا ہے؟اس بار بیٹے کا صبر جواب دے چُکا تھا، نہایت ہی اُکتاہٹ اور ناگواری سے اپنی آواز کو مزید بُلند کرتے ہوئے باپ سے کہا؛ کیا بات ہے، آج آپکو سُنائی نہیں دے رہا کیا؟ ایک ہی سوال کو بار بار دُہرائے جا رہے ہو۔ میں کتنی بار بتا چُکا ہوں کہ یہ کوّا ہے، یہ کوّا ہے۔ کیا میں کسی مُشکل زبان میں آپکو یہ سب کُچھ بتا رہا ہوں جو اتنا سادہ سا جواب بھی نہ تو آپ کو سُنائی دے رہا ہے اور نہ ہی سمجھ آرہا ہے!اس مرتبہ باپ یہ سب کُچھ سننے کے بعد اپنے کمرے کی طرف چلا گیا۔ تھوڑی دیر کے بعد باہر واپس آیا تو ہاتھ میں کُچھ بوسیدہ سے کاغذ تھے۔ کاغذوں سے لگ رہا تھا کہ کبھی کسی ڈائری کا حصہ رہے ہونگے۔ کاغذ بیٹے کو دیتے ہوئے بولا، بیٹے دیکھو ان کاغذوں پر کیا لکھا ہے؟بیٹے نے پڑھنا شروع کیا، لکھا تھا؛ آج میرے بیٹے کی عمر تین سال ہو گئی ہے۔ اُسے کھیلتے کودتے اور بھاگتے دوڑتے دیکھ دیکھ کر دِل خوشی سے پاگل ہوا جا رہا ہے۔

اچانک ہی اُسکی نظر باغیچے میں کائیں کائیں کرتے ایک کوّے پر پڑی ہے تو بھاگتا ہوا میرے پاس آیا ہے اور پوچھتا ہے؛ یہ کیا ہے۔ میں نے اُسے بتایا ہے کہ یہ کوّا ہے مگر اُسکی تسلی نہیں ہورہی یا شاید میرے منہ سے سُن کر اُسے اچھا لگ رہا ہے۔ ہر تھوڑی دیر کے بعد آ کر پھر پوچھتا ہے یہ کیا ہے اور میں ہر بار اُسے کہتا ہوں یہ کوّا ہے۔ اُس نے مُجھ سے یہ سوال ۲۳ بار پوچھا ہے اور میں نے بھی اُسے ۲۳ بار ہی جواب دیا ہے۔ اُسکی معصومیت سے میرا دِل اتنا خوش ہو رہا ہے کہ کئی بار تو میں جواب دینے کے ساتھ ساتھ اُسے گلے لگا کر پیار بھی کر چُکا ہوں۔ خود ہی پوچھ پوچھ کر تھکا ہے تو آکر میرے پاس بیٹھا ہے اور میں اُسے دیکھ دیکھ کر فدا اور قُربان ہو رہا ہوں۔
سُبحان اللہاللہ تبارک و تعالیٰ کا ارشاد ہے (سورۃ الاسراء 17)
download
ترجمۃ:
اور آپ کے رب نے حکم فرما دیا ہے کہ تم اﷲ کے سوا کسی کی عبادت مت کرو اور والدین کے ساتھ حسنِ سلوک کیا کرو، اگر تمہارے سامنے دونوں میں سے کوئی ایک یا دونوں بڑھاپے کو پہنچ جائیں تو انہیں اُف بھی نہ کہنا اور انہیں جھڑکنا بھی
نہیں اور ان دونوں کے ساتھ بڑے ادب سے بات کیا کرو۔

دوستوں،،،،،ہمیں چیک کرلینا چاہئے کہ ہمارا رویہ کیسا ہے


​بصد شکریہ درج ذیل سے لیا گیا

From: Muhammad Idris Shaikh [mailto:[email protected]]
Sent: Tuesday, April 05, 2011 1:27 PM
To: Ashiq Hussain; Muhammad Ayoub Gaba; Rashid Ali Khan; Muhammad Aslam Shaikh; Adnan Ur Rehman Khan; Jamil Ahmad
Subject: FW: U R D U -- باپ اور بیٹے میں فرق
 
Last edited by a moderator:

Annie

Moderator
واعلیکم اسلام و رحمتہ اللہ ،
جناب اچھی تحریر شیئر کی ہے جزاک اللہ
 

Annie

Moderator

اوئے مُلڑ دین فروش، اگر تھریڈ بنانے کا اتنا ہی شوق تھا تو کوئی نئی چیز پوسٹ کرتا، تاکہ تیرے تھریڈ پر کوئی آکر تجھے شاباش تو دیتا،۔


.........................................:(.............:(................:(........میں دی نہ تھریڈ میں شاباش........... ،کیا میں کسی میں شمار نہیں ہوتی ؟
 

Zinda_Rood

Minister (2k+ posts)
.........................................:(.............:(................:(........میں دی نہ تھریڈ میں شاباش........... ،کیا میں کسی میں شمار نہیں ہوتی ؟


معاف کرنا آپ کے کمنٹ میں بھی شاباش کا لفظ نہیں ہے اور ہاں اس جیسے فسادی ملڑ کو شاباش دینے کیلئے بھی کسی دہشتگرد کا دل گردہ چاہئے۔

 
Last edited:
Sponsored Link