اچھرہ میں خاتون کو ہراساں کرنے والے مشتعل افراد کے خلاف مقدمہ درج

15halwlakkjskhdjfhvf.png

لاہور کے اچھرہ بازار میں حروف تہجی والا لباس پہننے والی خاتون کو ہراساں کرنے والے افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور پولیس نے شدید دباؤ کے باوجود اچھرہ واقعہ میں ملوث افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے، ایف آئی آر میں مذہبی جذبات بھڑکانے، امن و امان کی صورتحال خراب کرنے اور ایک خاتون کی جان کو خطرہ بنانے کی دفعات شامل کی گئی ہیں،مقدمہ درج کرکے فائل لاہور پولیس کے تفتیشی یونٹ کے حوالے کردی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ لاہور پولیس کےسینئر افسران پر اس واقعہ کا مقدمہ درج نا کرنے کیلئے شدید دباؤ تھا اور یہ کہاجارہا تھا کہ ماضی میں پرتشدد کارروائیوں کا حصہ بننے والے مذہبی گروہوں کے ساتھ تنازعات یا ممکنہ تصادم سے گریز کیا جائے۔


اس کے برعکس لاہور پولیس کے سینئر افسران کا موقف تھا کہ مجرمان کے خلاف کارروائی نا کرنے اور سزا نا دینے سے قانون نافذ کرنے والے اداروں کا نا صرف برا تاثر جائے گا بلکہ مستقبل میں شرپسندوں دوبارہ ایسا کرنے کا موقع ملے گا، پنجاب حکومت نے بھی شرپسندوں کے خلاف کارروائی میں مکمل تعاون فراہم کیا اور زیر وٹالرنس کا مظاہرہ کیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ کئی اہم اجلاسوں کے بعد اس بات پراتفاق ہوا کہ توہین مذہب یا توہین رسالت ایک حساس معاملہ ہے، ماضی میں ایسے واقعات پرتشدد ہجوم کے حملوں کا باعث بنے جن میں سیالکوٹ اور جڑانوالہ کی مثالیں موجود ہیں، لہذا اچھرہ واقعہ میں ملوث افراد کے خلاف قانونی کارروائی شروع کرنی جائے، اس فیصلے کا بنیادی مقصد قانون کی عملداری کو برقرار رکھنا ہے۔