الیکٹرانک کرائم ایکٹ، سیاسی مفاہمت پیدا کرنے کیلئے کمیٹی تشکیل

11pmshehbncecomiirsiiaiec.png

الیکٹرانک کرائم کی روک تھام کے حوالے سے ایکٹ میں ترامیم کے معاملے پر سیاسی مفاہمت پیدا کرنے کے لیے مختلف سیاسی جماعتوں کے رہنمائوں پر مشتمل کمیٹی قائم کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم شہبازشریف کی طرف سے الیکٹرانک کرائم کی روک تھام کے حوالے سے ایکٹ میں ترامیم کے معاملے پر سیاسی مفاہمت پیدا کرنے کیلئے ملک کی بڑی سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے والے سیاسی رہنمائوں پر مشتمل کمیٹی قائم کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ انسداد الیکٹرانک کرائم کے لیے قائم کی گئی کمیٹی اس ایکٹ میں ترامیم کے لیے 15 دنوں کے اندر سیاسی اتفاق رائے سے اپنی تجاویز تیار کرنے کے بعد وزیراعظم شہبازشریف کو پیش کرے گی۔ وزیراعظم آفس کی طرف سے کمیٹی قائم کرنے کا باضابطہ نوٹیفیکیشن جاری کیا جا چکا ہے جس کے مطابق رانا ثناء اللہ کی سربراہی میں 9 رکنی کمیٹی اس حوالے سے تجاویز تیار کرے گی۔

الیکٹرانک کرائم ایکٹ میں ترامیم کے لیے قائم کی گئی کمیٹی کے چیئرمین مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ ہوں گے جبکہ دیگر اراکین میں سینیٹر شیری رحمن، رکن اسمبلی نوابزادہ خالد حسین مگسی، شزا فاطمہ، رہنما ایم کیو ایم خالد مقبول صدیقی، وفاقی وزراء عطاء اللہ تارڑ، اعظم نذیر تارڑ اور اٹارنی جنرل منصور عثمان اعوان ہوں گے۔

وزیراعظم آفس کی طرف سے جاری نوٹیفیکیشن کے مطابق 9 رکنی کمیٹی کے سفارش کرنے پر دیگر افراد کو بھی اس کا حصہ بنایا جا سکتا ہے، وزارت انفارمیشن اینڈ ٹیکنالوجی اور ٹیلی کمیونی کیشن سیکرٹریٹ کمیٹی کی معاونت کریں گے۔ الیکٹرانک کرائم ایکٹ کے حوالے سے قائم کی گئی اس کمیٹی کا مقصد سیاسی مفاہمت پیدا کرنے کے ساتھ ترامیم بارے اپنی سفارشات بھی مرتب کرے گی۔
 

3rd_Umpire

Chief Minister (5k+ posts)
Sources say that Shabaz sharif al-maroof Maskhara-e Aala sneakily come to DGISPR presser few days back in disguise of an African tribe costume to hide his identity from participants
sshahbaz.jpg
 
Last edited: