اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں

_Hope786

Senator (1k+ posts)
اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !
دہقان تو مر کھپ گیا اب کس کو جگاؤں
ملتا ہی کہاں خوشہ گندم کے جلاؤں
شاہیں کا ہے گنبد شاہی پے بسیرا
کنجشک فرو مایہ کو اب کس سے لڑاؤں

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں!

مکاری و عیاری و غداری و ہیجان
اب بنتا ہے ان چار عناصر سے مسلمان
قاری اسے کہنا تو بڑی بات ہے یارو
اس نے تو کبھی کھول کی دیکھا نہیں قران
بیباکی و حق گوئی سے گھبراتا ہے مومن
مکاری و روباہی پے اتراتا ہے اب مومن
جس رزق سے پرواز میں کو کوتاہی کا ڈر ہو
وو رزق بڑے شوق سے اب کھاتا ہے مومن
شاہیں کا جہاں آج ممولے کا جہاں ہے
ملتی ہی ملا سے مجاہد کی اذاں ہے
مانا کے ستاروں سے بھی آگے ہیں جہاں اور
شاہیں میں مگر طاقت پرواز کہاں ہے ؟
کردار کا ، گفتار کا، اعمال کا مومن
قائل نہیں آیسے کسی جنجال کا مومن
سرحد کا کوئی مومن، کوئی پنجاب کا مومن
ڈھونڈے سے بھی ملتا نہیں قران کا مومن

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں!

ہر داڑھی میں تنکا ہے، ہر آنکھ میں شہتیر
مومن کی نگاہوں سے اب بدلتی نہیں تقدیر
توحید کی تلواروں سے اب خالی ہیں نیامیں
اب ذوق یقیں سے نہیں کٹتی کوئی زنجیر

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !

دیکھو تو ذرا محلوں کے پردوں کو اٹھا کر
شمشیر و سناں رکھی ہیں طاقوں میں سجا کر
آتے ہیں نظر مسند شاہی پے رنگیلے
تقدیر امم سو گئی طاوس پے آ کر
کہنے کو تو ہر شخص مسلمان ہے لیکن
دیکھو تو کہیں نام کو کردار نہیں ہے

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !

محمودوں کی صف آج آیازوں سے پرے ہے
جمہور پے سلطانی جمہور ور ے ہے
تھامے ہؤے دامن ہیں یہاں پر جو خودی کا
مر مر کے جئے ہے، کبھی جی جی کے مرے ہے

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !

پیدا کبھی ہوتی تھی سحر جس کی اذاں سے
اس بندہ مومن کو میں لاؤں کہاں سے
وہ سجدہ، زمیں جس سے لرز جاتی تھی یارو
اک بار ہی ہم چھٹ گئے اس بار گراں سے

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!
 

Young_Blood

Minister (2k+ posts)
Hamza Shahbaz jese log Monis Elahi, Moosa Gelani, Bilawal jese log iss dharti k malik bun jaein to Iqbal k watan ka yehi haal hota hai,,, jin ko hamari awaam apna leader manti hai,,, list bohat lambi hai, magar generation k maai baap yehi hein .....
 

_Hope786

Senator (1k+ posts)
Hamza Shahbaz jese log Monis Elahi, Moosa Gelani, Bilawal jese log iss dharti k malik bun jaein to Iqbal k watan ka yehi haal hota hai,,, jin ko hamari awaam apna leader manti hai,,, list bohat lambi hai, magar generation k maai baap yehi hein .....

Isi baat ka tu rona hai dost k hum kidher ja rahay hain.....Khabhi souctha hon k wo 20 lakh log kya pagel thay ju jaan se gaye iss mulk ki azadi k liye????? kya Jinnah saheb ghalti ki iss qoum k liye apni sari zindgi luta ker?????Kya Iqbal kay shaheen ka wajoud sirf unki poetry tak he thaa???lakin phir khayal aata hai k wo tu azeem log thay ju azadi k liye jan se guzer gaye , kami hai tu hum main hai k hum unki qurbaniyun ka tahufuz nahi ker paye....humne choti choti batoun per dusroun main keeray nikalna tu seekh liya lakin baday maqsad ki traf aankhain band ker lien....her kaam hunay ka intazar kernay lagay k koi aye aur hamaray liye kery aur aaj halat ye hai k pak sir zameen per basnay walay her insaan ku apnay mafad ki tu her baat nazer aati hai lakin nahi nazer aata tu payara PAKISTAN nazer nahi aata...
 

Afaq Chaudhry

Chief Minister (5k+ posts)
اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !
دہقان تو مر کھپ گیا اب کس کو جگاؤں
ملتا ہی کہاں خوشہ گندم کے جلاؤں
شاہیں کا ہے گنبد شاہی پے بسیرا
کنجشک فرو مایہ کو اب کس سے لڑاؤں

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں!

مکاری و عیاری و غداری و ہیجان
اب بنتا ہے ان چار عناصر سے مسلمان
قاری اسے کہنا تو بڑی بات ہے یارو
اس نے تو کبھی کھول کی دیکھا نہیں قران
بیباکی و حق گوئی سے گھبراتا ہے مومن
مکاری و روباہی پے اتراتا ہے اب مومن
جس رزق سے پرواز میں کو کوتاہی کا ڈر ہو
وو رزق بڑے شوق سے اب کھاتا ہے مومن
شاہیں کا جہاں آج ممولے کا جہاں ہے
ملتی ہی ملا سے مجاہد کی اذاں ہے
مانا کے ستاروں سے بھی آگے ہیں جہاں اور
شاہیں میں مگر طاقت پرواز کہاں ہے ؟
کردار کا ، گفتار کا، اعمال کا مومن
قائل نہیں آیسے کسی جنجال کا مومن
سرحد کا کوئی مومن، کوئی پنجاب کا مومن
ڈھونڈے سے بھی ملتا نہیں قران کا مومن

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں!

ہر داڑھی میں تنکا ہے، ہر آنکھ میں شہتیر
مومن کی نگاہوں سے اب بدلتی نہیں تقدیر
توحید کی تلواروں سے اب خالی ہیں نیامیں
اب ذوق یقیں سے نہیں کٹتی کوئی زنجیر

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !
دیکھو تو ذرا محلوں کے پردوں کو
شمشیر و سناں رکھی ہیں طاقوں میں سجا کر
آتے ہیں نظر مسند شاہی پے رنگیلے
تقدیر امم سو گئی طاوس پے آ کر
کہنے کو تو ہر شخص مسلمان ہے لیکن
دیکھو تو کہیں نام کو کردار نہیں ہے
اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !
محمودوں کی صف آج آیازوں سے پرے ہے
جمہور پے سلطانی جمہور ور ے ہے
تھامے ہؤے دامن ہیں یہاں پر جو خودی کا
مر مر کے جئے ہے، کبھی جی جی کے مرے ہے

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !

پیدا کبھی ہوتی تھی سحر جس کی اذاں سے
اس بندہ مومن کو میں لاؤں کہاں سے
وہ سجدہ، زمیں جس سے لرز جاتی تھی یارو
اک بار ہی ہم چھٹ گئے اس بار گراں سے

اقبال ترے دیس کا کیا حال سناؤں !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!


07.gif


 
Last edited: