Can originality of the Quran be clearly proven? (A MUST READ FOR ALL)

Nice2MU

Prime Minister (20k+ posts)

آپ کا شکریہ آپ نے سوال پوچھا اور ہمیں وضاحت کا موقع دیا
. . . . . .
پہلی بات تو یہ کہ میں نے تین آیات کا حوالہ دیا اور اگر اہل سنت کے عقائد کے مطابق چلیں تو ان تینوں آیات میں اختلاف نظر آتا ہے
اب دوسرا سوال کہ ہمارے ہاں احادیث سے ہی اہل بیت کا پتہ چلتا ہے ، مجھے اس بات پر کوئی اعتراض نہیں
میرا نقطہ یہ تھا کہ عقیدہ وہ ہونا چاہیے جس کے مطابق چلیں تو قرآن میں کوئی اختلاف نظر نہ آئے

اس کے علاوہ قرآن میں قابل لوگوں کی نشانیاں کافی تفصیل سے بیان کی گئی ہیں تو ان نشانیوں کو دیکھیں اور لوگوں کو پرکھیں ، آپ کو اہل بیت کی پہچان ہو جائے گی
مثال کے طور پر سچوں کے ساتھ ہو جاؤ ، اہل ذکر سے پوچھو ، امام مبین کے پاس ہر چیز کا علم ہے وغیرہ وغیرہ
مجھے مزید تفصیل بھی بیان کرنے میں خوشی ہو گی
مجھے وہ آیت یا آیات دیکھائے جنمیں ان اہل بیت کا ذکر ہے جنہیں اہل تشیع اہل بیت مانتے ہیں۔

سورت الاحزاب کی آیت نمبر 33 میں صرف امہات المومنین کو اہل بیت کہا گیا۔۔۔

مجھے وہ آیت دیکھا دو جن میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نواسوں کو اہل بیت کہا ہو۔۔۔؟
 

Vitamin_C

Chief Minister (5k+ posts)
There are versions of Quran that are slightly different. But thats not what I will argue about. We all know that Quran was compiled after death of Hazrat Muhammad.

It was compiled by people and all other copies were burned. Since then the printing of Quran has been heavily controlled to keep it the same. Under those circumstances its not such a big deal that the book is not changed.

There is a vault for literature that preserves books, I can write a book and put it in the vault and it wont change for 100,000 years so what.

Now if there was no purpose behind preservation and still there was only one copy then that would have been a miracle, but if you purposely burned all copies and prevented other versions from being printed then thats not a miracle.

Dear vitamin c, please discuss other things about the quran in other threads because this thread is about authenticity of the actual quranic text we have. Of course, your input will be appreciated if you have anything positive or negative to say about my opening post regarding the quranic text.

regards and all the best.
 

TechWarrior

MPA (400+ posts)
Many books have been written by nonmuslims and muslims alike on the subject of originality and validity of the quran but none of them really shows proper understanding of this subject. The same is true about the videos on internet about it.

Can the originality of the quran be clearly proven? Yes, the originality of the quran can be clearly proven beyond a shadow of doubt. How? From the existing copies of the quran around the world.

This is a most important point that each and every person must come to know and particularly a person who claims to be a muslim.

Let us look at the quranic copies that we have around the world in a bit of detail to see how the existing copies of the quran prove to us human beings that the quran we have today is original.

Let us first look at the way the quran was written down in ancient format of writing. If one gathers ancient copies of the quran that still exist today, one will see in them a special way of writing the quranic text. For example, in those copies we will see that they do not have diacritical marks which we call in arabic harakaat ie damma, fatha and kasra or tanween etc. The other thing one cannot fail to notice is that they do not contain any dots or naqaat for distinguishing letters of same shape from each other or one can cl;early see that BAA, TAA, SAA and NOON use exactly the same shape. JEEM, HAA and KHAA use the very same shape, DAAL and ZAAL, RAA and ZAA, SEEN and SHEEN, SWAAD and DWAAD, TWAA and ZWAA, AIN and GHAIN, FAA and QAAF, LAAM and YAA are written using the very same shape. This is most important point to note. The question one has to ask oneself is, is it possible for any person at all to read a text that is written down this way unless one already knows the actual message? My answer is, no, it cannot be read no matter how hard one tries unless one is already familiar with message in the text.

What does this prove beyond a shadow of doubt? It proves the quran we have today in its written form has come from the original source ie directly from the final messenger of God. Not only that it also proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today was transmitted by the final messenger of God in two completely independent ways. a) through memory ie people had committed the quran to their memories directly from the final messenger of God and b)through writing and again directly from the final; messenger of God.

The vitally important points in this regard for people to understand are:-

The way the quran was written down could not be read unless the quranic text was fully memorised by people. If anyone thinks it could read then go ahead and try it yourself. Ask someone to write something down for you in that format without telling you what one is writing and then you try and read it yourself. You will soon find out that you cannot make out the text as to what it is saying.

But how does this prove the quran we have is original? It is because the quranic text we find in the existing copies of the quran proves, it could not have been written down by people from their own memories. Not only that but one can try and do so oneself and one will fail badly even today. So the claim by muslims that they can recreate the quranic text from their memories if all written copied of the quran somehow became destroyed is false. Why?

Because there are some particular problems which people face when someone dictates the quranic text from one's memory for others to write it down. What are those problems?

Those problems are different ways of writing a particular piece of quranic information. For example, if I tell a group of people to write a number eg three. Will the person write 3 as a digit or as a word? You will agree that some could write 3 and others three. If the quran was copied the same way from dictation by someone then people could write it down different ways. In the quran we have some surahs which contain some letters in their beginnings eg surah al baqarah starts with ALIF, LAAM and MEEM letters. So if a group of people was told to write down alif, laam, meem then what do you think people will write down? Letters alif, laam and meem or words alif laam meem? Then in arabic language we have some words that can be written with different letters eg word SIRAAT can be written either by using letter SEEN or SWAAD. So if a group of people were told to write word SIRAAT what do you think people will write down? SIRAAT with SEEN or SWAAD? You will agree that some could write down word siraat with seen and others with swaad. It is just as we write word REALISE with letter S or Z ie REALIZE. Not only this but there are borrowed words in each and every human language from other languages which can be written down different ways eg see in english in how many different ways people spell word MUHAMMAD ie they write it as mohammed or mohamed and so on and so forth.

Can you therefore see the problems when people have to read a text from an awkward way of writing without having it in their memories? Likewise can you see the problems if a group of people is told to write some information down? This will create a lot of variations or differences between people whether they memorise some information or write it down unless they memorised it and wrote it down exactly the same way right from the very beginning or original source.

Now the big question, in the existing copies of quran worldwide, do we find any such differences at all? The answer is no, none at all. They are all exactly the same go and check them. This is impossible to happen unless all copies of the quran were copied from the copies exactly the same way. This explanation proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today is exactly the same. This claim can also be verified by looking at the quranic text in written form and reading it our from one's memory. Despite coming down to us in two completely independent ways over all the quranic information remains exactly the same. A clear proof that the quran we have today has been preserved perfectly except for some copying errors by the copiers of the quran.

This proves beyond a shadow of doubt that the claims made by ignorant muslims and nonmuslinms about the changed quran are utterly false. Muslims have been spreading false information about the quran in order to defend false reports in the hadith books and nonmuslims have been using the same reports to discredit the quran and deen of islam.

More to come regarding what kinds of differences exist in the existing copies of the quran and can they invalidate the quran as we have it?
you are very masoom and obviously dont have any knolwedge about the existence of different 'styles' of Quran that exist. There is no one Quran in this world, this is completely wrong. There are official 7 different styles of Quran. In Africa Quran is a little different than what you read. The number of Ayats are different too. The more you study that the more you will have problems. And you will delete this thread afterwards.
 

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)
I said pick something from my post cause there are topics that I am not qualified to answer on such as physics and biology.

To get more concrete answers you will have to contact someone who works in those fields. But we can have a casual conversation on those topics if you like.

Not sure if water is necessary. There are microbes that can live indefinately in absense of water.

Also there are billions of other planets in milkyway galaxy so there is a possibility of life forms developing on solvents other than water.
You said embryology , I thought you are fimiliar with life, biology etc
There are still many many points in your original post related to physics bio etc.
Anyway since you are not "qualified" in physics and bio, and I am unable to understand which field you are expert in, therefore I request you to present a single question of your expertise so that we may discuss.
 

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)
مجھے وہ آیت یا آیات دیکھائے جنمیں ان اہل بیت کا ذکر ہے جنہیں اہل تشیع اہل بیت مانتے ہیں۔

سورت الاحزاب کی آیت نمبر 33 میں صرف امہات المومنین کو اہل بیت کہا گیا۔۔۔

مجھے وہ آیت دیکھا دو جن میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نواسوں کو اہل بیت کہا ہو۔۔۔؟
ایک وقت میں ایک موضوع ہو تو بہتر نہیں رہے گا ؟ امہات المومین اور نواسوں کی شمولیت کے دو الگ الگ موضوع ہوئے ، اس لئے ابھی امہات المومنین کے موضوع پر بات کر لیتے ہیں
.
اگر آپ امہات المومنین کو اہل بیت میں شامل مانتے ہیں تو آیات 85:16 اور سورہ تحریم سے ملنے والے اختلاف کے تاثر کا رد کریں
 

There is only 1

Chief Minister (5k+ posts)
There are versions of Quran that are slightly different. But thats not what I will argue about. We all know that Quran was compiled after death of Hazrat Muhammad.

It was compiled by people and all other copies were burned. Since then the printing of Quran has been heavily controlled to keep it the same. Under those circumstances its not such a big deal that the book is not changed.

There is a vault for literature that preserves books, I can write a book and put it in the vault and it wont change for 100,000 years so what.

Now if there was no purpose behind preservation and still there was only one copy then that would have been a miracle, but if you purposely burned all copies and prevented other versions from being printed then thats not a miracle.
I see another point by you : I can write a book and put it in the vault and it wont change for 100,000 years so what.
If you write a book, it will have to change it every 2~4 hundred years because language changes and after sometime it become so altered that it looks like a complete new language.
You can try reading Shakespeare work, it is not possible for any common english man to understand the original text today.
Similarly, I was unable to understand Mirza Qadiyan's book at all. Even though I am urdu speaking guy.
Secondly, there is not a single example of any book other than Quran which is unchanged for 1400+ years. Therefore this point does contain weight.
 
Last edited:

Complete Sense

MPA (400+ posts)
Many books have been written by nonmuslims and muslims alike on the subject of originality and validity of the quran but none of them really shows proper understanding of this subject. The same is true about the videos on internet about it.

Can the originality of the quran be clearly proven? Yes, the originality of the quran can be clearly proven beyond a shadow of doubt. How? From the existing copies of the quran around the world.

This is a most important point that each and every person must come to know and particularly a person who claims to be a muslim.

Let us look at the quranic copies that we have around the world in a bit of detail to see how the existing copies of the quran prove to us human beings that the quran we have today is original.

Let us first look at the way the quran was written down in ancient format of writing. If one gathers ancient copies of the quran that still exist today, one will see in them a special way of writing the quranic text. For example, in those copies we will see that they do not have diacritical marks which we call in arabic harakaat ie damma, fatha and kasra or tanween etc. The other thing one cannot fail to notice is that they do not contain any dots or naqaat for distinguishing letters of same shape from each other or one can cl;early see that BAA, TAA, SAA and NOON use exactly the same shape. JEEM, HAA and KHAA use the very same shape, DAAL and ZAAL, RAA and ZAA, SEEN and SHEEN, SWAAD and DWAAD, TWAA and ZWAA, AIN and GHAIN, FAA and QAAF, LAAM and YAA are written using the very same shape. This is most important point to note. The question one has to ask oneself is, is it possible for any person at all to read a text that is written down this way unless one already knows the actual message? My answer is, no, it cannot be read no matter how hard one tries unless one is already familiar with message in the text.

What does this prove beyond a shadow of doubt? It proves the quran we have today in its written form has come from the original source ie directly from the final messenger of God. Not only that it also proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today was transmitted by the final messenger of God in two completely independent ways. a) through memory ie people had committed the quran to their memories directly from the final messenger of God and b)through writing and again directly from the final; messenger of God.

The vitally important points in this regard for people to understand are:-

The way the quran was written down could not be read unless the quranic text was fully memorised by people. If anyone thinks it could read then go ahead and try it yourself. Ask someone to write something down for you in that format without telling you what one is writing and then you try and read it yourself. You will soon find out that you cannot make out the text as to what it is saying.

But how does this prove the quran we have is original? It is because the quranic text we find in the existing copies of the quran proves, it could not have been written down by people from their own memories. Not only that but one can try and do so oneself and one will fail badly even today. So the claim by muslims that they can recreate the quranic text from their memories if all written copied of the quran somehow became destroyed is false. Why?

Because there are some particular problems which people face when someone dictates the quranic text from one's memory for others to write it down. What are those problems?

Those problems are different ways of writing a particular piece of quranic information. For example, if I tell a group of people to write a number eg three. Will the person write 3 as a digit or as a word? You will agree that some could write 3 and others three. If the quran was copied the same way from dictation by someone then people could write it down different ways. In the quran we have some surahs which contain some letters in their beginnings eg surah al baqarah starts with ALIF, LAAM and MEEM letters. So if a group of people was told to write down alif, laam, meem then what do you think people will write down? Letters alif, laam and meem or words alif laam meem? Then in arabic language we have some words that can be written with different letters eg word SIRAAT can be written either by using letter SEEN or SWAAD. So if a group of people were told to write word SIRAAT what do you think people will write down? SIRAAT with SEEN or SWAAD? You will agree that some could write down word siraat with seen and others with swaad. It is just as we write word REALISE with letter S or Z ie REALIZE. Not only this but there are borrowed words in each and every human language from other languages which can be written down different ways eg see in english in how many different ways people spell word MUHAMMAD ie they write it as mohammed or mohamed and so on and so forth.

Can you therefore see the problems when people have to read a text from an awkward way of writing without having it in their memories? Likewise can you see the problems if a group of people is told to write some information down? This will create a lot of variations or differences between people whether they memorise some information or write it down unless they memorised it and wrote it down exactly the same way right from the very beginning or original source.

Now the big question, in the existing copies of quran worldwide, do we find any such differences at all? The answer is no, none at all. They are all exactly the same go and check them. This is impossible to happen unless all copies of the quran were copied from the copies exactly the same way. This explanation proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today is exactly the same. This claim can also be verified by looking at the quranic text in written form and reading it our from one's memory. Despite coming down to us in two completely independent ways over all the quranic information remains exactly the same. A clear proof that the quran we have today has been preserved perfectly except for some copying errors by the copiers of the quran.

This proves beyond a shadow of doubt that the claims made by ignorant muslims and nonmuslinms about the changed quran are utterly false. Muslims have been spreading false information about the quran in order to defend false reports in the hadith books and nonmuslims have been using the same reports to discredit the quran and deen of islam.

More to come regarding what kinds of differences exist in the existing copies of the quran and can they invalidate the quran as we have it?
The discussing about authincity of Quran is a very complex and even dangerous in Pakistan. Allah has made us ashraful malkluqat, so we can use our brain and to do research about any thing, it can be sky, earth, sea, religion and so on. Discussing Quran is also possible without any heartfeeling of other person.
 

4PeaceAndJustice

Councller (250+ posts)
You pick what you want from my post dude, I have been studying this for 20 years now and have references to back up everything I am saying.

The first shock I received as a Muslim was when I read Surah Kahf with Tafsir. Then I started rereading the book critically and everything became clear to me.

We believe in these things because we are brought up to believe it with strong influence of parents, peers, schools, media, government etc.

Stand in a neutral disbelievers shoes and then look at all this to evaluate and find reasons to believe in it without any bias. You will see how hard it is.
Have you really studied the Quran with translation? Where in the Quran is any mention of Mutta Marriages? If you can't specify then admit that you are lying and are just writing based on some third rated anti Islamic content written with the sole purpose of keeping people away from the truth.
 

akinternational

Minister (2k+ posts)
hamen ye sabit karne ki zarurat nahin.... sura baqra... zalik al kitabo lareba fih....mafhoom: iss kitab men koi shak nahin... sadi si baat hai..
waahid hal inqelab e islami ke zarye sharia't ka nifaz.... haq ke liye jiddojohad, sabr aur Allah per tawakkal.... FIRQABAZI HARAM HAI, SIRF MUSLIM BANO
 

Vitamin_C

Chief Minister (5k+ posts)
Everything that I wrote about, I have done extensive reasearch on. So you can ask me on that but before you ask me do your own research in the other side of the argument first.

Don't just falll for confirmation bias, (trying to disprove everything that goes against your belief regardless of whether or not its true)

Okay let me ask you this, the questions that you are asking, is the purpose behind it that you want to poke holes in what I am saying or that you actually want to find out the truth.

Because if you want to find the truth you do not have to ask me, you can just go online and study the other side of the argument presented by scientists, ex-muslims etc. Have you done that?


You said embryology , I thought you are fimiliar with life, biology etc
There are still many many points in your original post related to physics bio etc.
Anyway since you are not "qualified" in physics and bio, and I am unable to understand which field you are expert in, therefore I request you to present a single question of your expertise so that we may discuss.
 
Last edited:

Vitamin_C

Chief Minister (5k+ posts)
Surah An Nisa : 24

It was allowed when it was convenient and then it was banned. So obviously it was a verse of covenience and not a comandment for all times for all mankind.

Have you really studied the Quran with translation? Where in the Quran is any mention of Mutta Marriages? If you can't specify then admit that you are lying and are just writing based on some third rated anti Islamic content written with the sole purpose of keeping people away from the truth.
 
Last edited:

Vitamin_C

Chief Minister (5k+ posts)
If the book is in the vault for 100,000 years and nobody can open it, how the hell will it change every 200 years? Aqal ko thora hath lagao

Peoole who understand Shakespear english they can still read the original work. Even the tafsirs and translation of Quran have changed dozens of time in last 1400 years.

Thats why the arabic in quran is called classic arabic. Then you have different kind of Arabic from Morocco to Oman.

My family speaks fluent UAE Arabic because one side of my family is Emirati wahabi but when my mom spoke to my Shia Saudi girlfriend from Riyad region their dialect was different even though her city is close to UAE. Also my family cannot understand Lebanese Arabic imagine how different is Morrocan Arabic.


I see another point by you : I can write a book and put it in the vault and it wont change for 100,000 years so what.
If you write a book, it will have to change it every 2~4 hundred years because language changes and after sometime it become so altered that it looks like a complete new language.
You can try reading Shakespeare work, it is not possible for any common english man to understand the original text today.
Similarly, I was unable to understand Mirza Qadiyan's book at all. Even though I am urdu speaking guy.
Secondly, there is not a single example of any book other than Quran which is unchanged for 1400+ years. Therefore this point does contain weight.
 
Last edited:

4PeaceAndJustice

Councller (250+ posts)
Surah An Nisa : 24

It was allowed when it was convenient and then it was banned. So obviously it was a verse of covenience and not a comandment for all times for all mankind.
This verse is on a totally different topic of Slave women. It has nothing to do with Muta marriage.
 

Nice2MU

Prime Minister (20k+ posts)

ایک وقت میں ایک موضوع ہو تو بہتر نہیں رہے گا ؟ امہات المومین اور نواسوں کی شمولیت کے دو الگ الگ موضوع ہوئے ، اس لئے ابھی امہات المومنین کے موضوع پر بات کر لیتے ہیں
.
اگر آپ امہات المومنین کو اہل بیت میں شامل مانتے ہیں تو آیات 85:16 اور سورہ تحریم سے ملنے والے اختلاف کے تاثر کا رد کریں
میں تو اہل بیت کے ذکر سے ادھر ہوا ہی نہیں۔۔۔ امہات المومنین کو اہل بیت اللہ تعالیٰ فرماتا ہے میں نہیں۔
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
کچھ لوگ کہتے ہیں کہ آیت تطہیر کے مطابق الله نے اہل بیت (امہات المومنین + پنجتن پاک ) کو رجس سے محفوظ رکھنے کا ارادہ کیا ہے
سب سے صحیح قول یہ ہے رسول الله صلی الله علیہ وآلہ وسلم کی ازواج مطہرات آپ کے اہل بیت میں شامل ہیں ، کیونکہ الله تعالی رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم کی ازواج مطہرات کو مخاطب کرتے هوئے کہتے ہیں کہ

(Qur'an 33:32)
يَا نِسَاءَ النَّبِيِّ لَسْتُنَّ كَأَحَدٍ مِّنَ النِّسَاءِ ۚ إِنِ اتَّقَيْتُنَّ فَلَا تَخْضَعْنَ بِالْقَوْلِ فَيَطْمَعَ الَّذِي فِي قَلْبِهِ مَرَضٌ وَقُلْنَ قَوْلًا مَّعْرُوفًا
اے نبی کی بیویو تم معمولی عورتوں کی طرح نہیں ہو اگر تم الله سے ڈرتی ر ہو اور دبی زبان سے بات نہ کہو کیونکہ جس کے دل میں مرض ہے وہ طمع کرے گا اور بات معقول کہو
(Qur'an 33:33) وَقَرْنَ فِي بُيُوتِكُنَّ وَلَا تَبَرَّجْنَ تَبَرُّجَ الْجَاهِلِيَّةِ الْأُولَىٰ ۖ وَأَقِمْنَ الصَّلَاةَ وَآتِينَ الزَّكَاةَ وَأَطِعْنَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ ۚ إِنَّمَا يُرِيدُ اللَّهُ لِيُذْهِبَ عَنكُمُ الرِّجْسَ أَهْلَ الْبَيْتِ وَيُطَهِّرَكُمْ تَطْهِيرًا
اور اپنے گھروں میں بیٹھی رہو اور گزشتہ زمانہ جاہلیت کی طرح بناؤ سنگھار دکھاتی نہ پھرو اور نماز پڑھو اور زکواة دو اور الله اور اس کے رسول کی فرمانبرداری کرو الله یہی چاہتا ہے کہ اے اس گھر والو تم سے ناپاکی دور کرے اور تمہیں خوب پاک کرے

اللہ تعالٰی ان آیات میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی ازواج مطہرہ کو واضح طور پر اہل بیت سے تعبیر کیا ہے ، اس آیت کا سیاق و سباق "نبی کی بیویوں" سے شروع ہوتا ہے اور ابتدائی اور بعد کی آیات (یعنی 33: 32-34) میں جہاں "اہلیبیت" کی اصطلاح استعمال ہوئی وہاں صرف بیویاں ہی مخاطب ہیں۔

اور فرشتوں نے حضرت سارہ سے حضرت ابراہیم علیہ السلام کی اہلیہ سے کہا:

(Qur'an 11:73) قَالُوا أَتَعْجَبِينَ مِنْ أَمْرِ اللَّهِ ۖ رَحْمَتُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ عَلَيْكُمْ أَهْلَ الْبَيْتِ ۚ إِنَّهُ حَمِيدٌ مَّجِيدٌ
انہوں نے کہا کیاتو الله کے حکم سے تعجب کرتی ہے تم پر اے گھر والو الله کی رحمت اور اس کی برکتیں ہیں بے شک وہ تعریف کیا ہوا بزرگ ہے

اور اس لئے کہ اللہ تعالی نے لوط کی بیوی کو اس کے کفر کی وجہ سے عذاب سے نہیں بچانا تھا لہذا اسے لوط (علیہ السلام) کے اہل خانہ سے خارج کردیا ، اللہ تعالیٰ قرآن میں فرماتے ہیں

(Qur'an 15:59-60)
إِلَّا آلَ لُوطٍ إِنَّا لَمُنَجُّوهُمْ أَجْمَعِينَ - ِلَّا امْرَأَتَهُ قَدَّرْنَا ۙ إِنَّهَا لَمِنَ الْغَابِرِينَ
مگر لوط کے گھر والے کہ ہم ان سب کو بچا لیں گے- مگر اس کی بیوی ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ پیچھے رہنے والو ں میں سے ہے

اوپر بیان کی گئی آیات سے واضح ہوتا ہے کہ بیوی اہل بیت کا حصہ ہوتی ہے۔ جبکہ سورہ احزاب کی آیات نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی ازواج مطہرات کو "اھلبیت" قرار دینے میں اتنی واضح ہیں کہ غیر جانبدارانہ رویہ رکھنے والا شخص اس واضح ثبوت کو کبھی انکار نہیں کرے گا کیونکہ یہ پوری عبارت سے ظاہر ہے (33-32) ابتداء سے آخر تک کہ مخاطب نبی ﷺ کی بیویاں ہیں۔ لیکن جو لوگ اپنے نفس سے محبت کرتے ہیں انھوں نے اللہ کے کلام سے زیادہ اپنے باپ دادا کے بنائے ہوئے عقائد اور تصورات کو ان دور دراز دلائل اور تعبیروں سے جکڑا جس کے بارے میں قرآن (3: 7) نے متنبہ کی

وہی ہے جس نے تجھ پر کتاب اتاری اس میں بعض آیتیں محکم ہیں (جن کے معنیٰ واضح ہیں) وہ کتاب کی اصل ہیں اور دوسری مشابہ ہیں (جن کے معنیٰ معلوم یا معین نہیں) سو جن لوگو ں کے دل ٹیڑھے ہیں وہ گمراہی پھیلانے کی غرض سے اور مطلب معلوم کرنے کی غرض سے متشابہات کے پیچھے لگتے ہیں اور حالانکہ ان کا مطلب سوائے الله کے اور کوئی نہیں جانتا اور مضبوط علم والے کہتے ہیں ہمارا ان چیزوں پر ایمان ہے یہ سب ہمارے رب کی طرف سے ہیں اور نصیحت وہی لوگ مانتے ہیں جو عقلمند ہیں
Click Here For detailed response check my older post # 67 (Feb10, 2011)

اور الله کر گزرتا ہے جو چاہے 85:16
شیعہ کا باطل عقیدہ بداء اس قرآنی آیت کے خلاف ہے - نیچے طویل دلائل سے واضح ہو جاۓ گا کہ شیعہ کے باطل عقیدہ بداء کے مطابق الله تعالیٰ مستقبل کے بارے میں پیش گوئی کرتے ہوۓ غلطی کر سکتا ہے - أستغفر الله - اور یہ باطل عقیدہ بداء شیعہ کے اماموں نے اپنی جھوٹی پیش گوئ پوری نہ ہونے کے جواز میں گھڑا ہے​



For detailed discussion on this topic please check my older post # 130

یہ اختلاف اس وجہ سے کہ اہل بیت میں امہات المومنین ہرگز شامل نہیں
قرآن میں کوئی اختلاف نہیں - اختلاف شیعہ کا اپنا پیدا کردہ ہے باطل شیعہ عقیدہ بداء کے ذر یعے جس کی تفصیل اوپر بیان کر دی گئی ہے​
 
Last edited:

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
میرا اصول یہ ہے کہ قرآن میں اختلاف نہیں ہو سکتا یعنی ایسا نہیں ہو سکتا کہ ایک آیت کچھ کہے اور دوسری آیت اس کے برخلاف کچھ کہے
اس لئے جب کوئی ایسا عقیدہ بتائے جس سے قرآن میں اختلاف کا شائبہ ملے تو میں وہ عقیدہ چھوڑ دیتا ہوں

نیچے بین کئے گیے شیعہ باطل عقائد قرآن کے سریحاً خلاف ہیں آپ کب ان سے دستبرداری کا علان کر رہے ہیں یا پھر تقیہ پر اکتفا کرنا چاہیں گے

1. Taqiyyah:

تقیہ:
امامی شیعہ کے معنی ہیں - اسے اپنے مذہب کے بنیادی اصولوں میں سے ایک سمجھتے ہیں ، اور وہ اس پر عمل کرنا اسی طرح فرض سمجھتے جیسا کہ نماز کا پڑھنا۔ ان کے لئے یہ واجب ہے اور جب تک پوشیدہ امام ظاہر نہ ہو اس سے پرہیز کرنا جائز نہیں ہے۔ جو شخص امام کے ظاہر ہونے سے پہلے تقیہ سے باز آجائے وہ ان کے مطابق اللہ کے دین،امامیوں کا دین، کو چھوڑ گیا
Read more....

2. They do not believe in the completeness of Qur'an:
شیعہ حضرات قرآن میں تحریف کے قائل ہیں اور اوپری طور پر تقیّہ کرتے ہوے اسے ایک الزام کہتے ہیں - اصل بات یہ شیعہ کا امامت کا باطل عقیدہ کسی طور پر قرآن سے ثابت نہیں ہوتا - کبھی وہ (سورة البقرة, Verse #124) میں لفظ "إِمَامًا" یا کبھی (سورة يس, Verse #12) میں لفظ "إِمَامٍ" دکھا کر اپنے باطل عقیدہ امامت ثابت کرنے کی ناکام کوشش کرتے ہیں- باوجود اس کہ قرآن میں امامت کی کوئی دلیل نہیں شیعہ اپنے دل کو مطمعین کرنے کے لئے دل ہی دل میں تحریف قرآن کے عقیدہ کو صحیح سمجھتے ہیں جو کہ شیعہ کتابوں ایک واضح عقیدہ کے طور پر سامنے آتا ہے

Kulayni in "Kafi", kitab al Hujja, vol 1, p 424:
عن الحسين بن مياح عمن أخبره قال قرأ رجل عند أبي عبد الله عليه السلام: "وقل اعملوا فسيرى الله عملكم ورسوله والمؤمنون"، فقال: ليس هكذا إنما هي والمأمونون. "فنحن المأمونون.

Translation:
"ایک شخص نے ابو عبد اللہ کی موجودگی میں آیت پڑھی: وَقُلِ اعْمَلُوا فَسَيَرَى اللَّهُ عَمَلَكُمْ وَرَسُولُهُ وَالْمُؤْمِنُونَ ۖ وَسَتُرَدُّونَ إِلَىٰ عَالِمِ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ فَيُنَبِّئُكُم بِمَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ"اور کہہ دےکہ کام کیے جاؤ پھر عنقریب الله اور اس کا رسول اور مسلمان تمہارے کام کو دیکھ لیں گے اور عنقریب تم غائب اور حاضر کے جاننے والے کی طرف لوٹائے جاؤ گےپھر وہ تمہیں بتا دے گا جو کچھ تم کرتے تھے" (امام نے) کہا یہ ایسا نہیں ہے ، لیکن "المأمونون" ہے۔ "ہم "المأمونون" ہیں ۔
(Qur'an 9:105)
Read more....

3. They are arrogant, use vulgar language and are very abusive to non-Shias:

Usually Shia members show the arrogance and use foul and abusive language. I did a research to know the reason behind this common Shia character and found that Shias are misguided by their so called Imams - This is what their religion is on this issue, hence they expect reward upon being abusive to a non-Shia:

Here is a hadeeth from their so called 6th Imaam :

مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْحُسَيْنِ عَنْ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ أَبِي نَصْرٍ عَنْ دَاوُدَ بْنِ سِرْحَانَ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ع قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ص إِذَا رَأَيْتُمْ أَهْلَ الرَّيْبِ وَ الْبِدَعِ مِنْ بَعْدِي فَأَظْهِرُوا الْبَرَاءَةَ مِنْهُمْ وَ أَكْثِرُوا مِنْ سَبِّهِمْ وَ الْقَوْلَ فِيهِمْ وَ الْوَقِيعَةَ وَ بَاهِتُوهُمْ كَيْلَا يَطْمَعُوا فِي الْفَسَادِ فِي الْإِسْلَامِ وَ يَحْذَرَهُمُ النَّاسُ وَ لَا يَتَعَلَّمُوا مِنْ بِدَعِهِمْ يَكْتُبِ اللَّهُ لَكُمْ بِذَلِكَ الْحَسَنَاتِ وَ يَرْفَعْ لَكُمْ بِهِ الدَّرَجَاتِ فِي الْآخِرَةِ

The Messenger of Allah (صلى الله عليه وآله وسلم) said: “When you will find people of bid`ah (innovation) and doubt/suspicion after me, do baraa’ (disassociation) from them and increase in your insults (sabihim) to them, and oppose (them) and bring evidences against them so they may not become greedy in bringing fasaad (corruption) to Islam. You must warn people against them and do not learn their bid`ah (innovation). Allah will write for you hasanaat (good deeds) for this, and will raise you darajaat (levels) in the next life.’”

Source:

1. Al-Kulayni, Al-Kaafi, vol. 2, ch. 159, pg. 375, hadeeth # 4

4. The are very abusive and use vulgar language against Sahaba Karam (رضوان اللہ عنھم اجمعین)

(Qur'an 9:100)
وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَ‌ٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ
اور جو لوگ قدیم میں پہلے ہجرت کرنے والوں اور مدد دینے والو ں میں سے اور وہ لوگ جو نیکی میں ان کی پیروی کرنے والے ہیں الله ان سے راضی ہوئےاوروہ اس سے راضی ہوئےان کے لیے ایسے باغ تیار کیے ہیں جن کے نیچے نہریں بہتی ہیں ان میں ہمیشہ رہیں گے یہ بڑی کامیابی ہے

یہ شیعہ ہی ہیں جو قرآن کی واضح آیت رسول الله ﷺ کے اصحاب کے بارے میں سننے کے باوجود ان کے بارے میں اپنی غلیظ زبان کھولتے ہیں - یقینا یہ لوگ وہ ہیں جو ہمارے ہاتھوں میں موجود قرآن کی حقانینت کے قائل ہہیں ہیں اور تقیہ کرتے ہوۓ کہتے ہم تو اس قرآن کو مکمل مانتے ہیں جو رسول الله پر نازل ہوا تھا جبکہ دل میں یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ حضرت عثمان نے قرآن میں تحریف کر دی تھی- أستغفر الله -ان کا یہ عقیدہ ان کی کتابوں سے بلکل عیاں ہے، کلک کریں "پوسٹ نمبر ١٩"
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
کچھ لوگ کہتے ہیں کہ سورہ الحمد کے مطابق مدد صرف الله سے مانگی جا سکتی ہے اور پھر کچھ آیات پیش کرتے ہیں کہ مدد دوسرے حاضر لوگوں سے بھی مانگی جا سکتی ہے . یعنی کھلم کھلا اختلاف پر مبنی عقیدہ
لہٰذا علما سے سوال پوچھیں کہ اس اختلافی عقیدے کا رد کیا ہے اور کیسے الله کے سوا لوگوں سے مدد لینے میں سورہ الحمد کی خلاف ورزی نہیں ہوتی
اس موضو ع پر آپ سے بحث ہو چکی - ملاحظہ کیجئے میری پوسٹ نمبر ١٨

ایک سادہ سا سوال : آپ اگر ایک کمرے میں موجود دوسرے شخص سے پانی کا گلاس مانگیں تو کیا اس شخص سے حاصل مدد کو الله کی مدد کہا جا سکتا ہے یا پھر صرف اسی شخص کی مدد کہا جائے ؟
ایک مثال کے ساتھ سمجھنے کی کوشش کریں ، اگر آپ میرے سامنے بیٹھے ہوئے ہیں اور میں آپ سے کہتا ہوں کہ "براہ کرم میرے لئے پینے کا پانی لانے میں مدد کریں" ، تو آپ پانی کے حصول میں' میری مدد کرنے میں' جسمانی ذریعہ یا سبب بن جاتے ہیں ؛ لہذا یہ شرک نہیں ہے ، مندرجہ ذیل آیت پڑھیں ، (قرآن ، click here for complete verse with translation:

"اور آپس میں نیک کام اور پرہیز گاری پر مدد کرو اورگناہ اور ظلم پر مدد نہ کرو" (Qur'an 5:2)

یہاں یہ بات طے ہو گئی کہ نیکی کے کام اور پرہیز گاری میں الله نے مدد کرنے کو کہا ہے - آپکا سوال کہ کیا یہ مدد الله نے کی یا کسی شخص نے کی ، اس بات کا جواب نیچے بیان کی گئی آیات میں ہے

(Qur'an 42:30-31) وَمَا أَصَابَكُم مِّن مُّصِيبَةٍ فَبِمَا كَسَبَتْ أَيْدِيكُمْ وَيَعْفُو عَن كَثِيرٍ - وَمَا أَنتُم بِمُعْجِزِينَ فِي الْأَرْضِ ۖ وَمَا لَكُم مِّن دُونِ اللَّهِ مِن وَلِيٍّ وَلَا نَصِيرٍ
تجھے جو بھی بھلائی پہنچے وہ الله کی طرف سے ہے اور جو تجھے برائی پہنچے وہ تیرے نفس کی طرف سے ہے ہم نے تجھے لوگوں کو پیغام پہنچانے والا بنا کر بھیجا ہے اور الله کی گواہی کافی ہے - اور تم زمین میں عاجز کرنے والے نہیں اور سوائے الله کے نہ کوئی تمہارا کارساز ہے اور نہ کوئی مددگار


(Qur'an 13:11) لَهُ مُعَقِّبَاتٌ مِّن بَيْنِ يَدَيْهِ وَمِنْ خَلْفِهِ يَحْفَظُونَهُ مِنْ أَمْرِ اللَّهِ ۗ إِنَّ اللَّهَ لَا يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّىٰ يُغَيِّرُوا مَا بِأَنفُسِهِمْ ۗ وَإِذَا أَرَادَ اللَّهُ بِقَوْمٍ سُوءًا فَلَا مَرَدَّ لَهُ ۚ وَمَا لَهُم مِّن دُونِهِ مِن وَالٍ
ہر شخص حفاظت کے لیے کچھ فرشتے ہیں اس کے آگے اورپیچھے الله کے حکم سے اس کی نگہبانی کرتے ہیں بے شک الله کسی قوم کی حالت نہیں بدلتا جب تک وہ خود اپنی حالت کو نہ بدلے اور جب الله کو کسی قوم کی برائی چاہتا ہے پھر اسے کوئی نہیں روک سکتا اور اس ( الله) کے سوا ان کا کوئی مددگار نہیں ہو سکتا

اوپر بیان کی گئی آیات سے ثابت ہوتا ہے کہ الله کے سوائے نہ کوئی ہمارا کارساز ہے اور نہ کوئی مددگار - اگر ہمیں کسی سبب کوئی اچھائی پہنچی تو یہ الله کی طرف سے ہے اور اگر برائی پہنچی تو وہ ہمارے نفس کی وجہ سے ہے - الله تعالیٰ نے فرشتوں کی مثال دی ہے جو کہ ہر شخص کی حفاظت کے لئے معمور ہیں - اسی آیت میں وضاحت ہے کہ باوجود اسکے کہ فرشتے ہر انسان کی حفاظت کرتے ہیں انہیں کارساز اور مددگار نہ سمجھ لیا جائے کیونکہ وہ تو الله کے حکم سے ہی ہر شخص نگہبانی کرتے ہیں

لہذا جو حضرات حضرت علی یا غوث اعظام کو مشکل کشا سمجھتے ہیں وہ شرک کے مرتکب ہو رہے ہوتے ہیں - اگر کسی شخص نے آپکو پانی پلایا تو الله کا شکر ادا کریں کہ الله نے اس شخص کو توفیق دی کہ اس نے آپ کو پانی پلایا نہ کہ اس شخص کو کارساز اور مددگار سمجھ لیں - اگر کسی صحرا میں آپ پیاسے ہیں دور دور تک کوئی ہستی موجود نہیں تو آپ الله سے دعا کر سکتے ہیں کہ "یا الله میری پیاس بجھا نے کا کوئی ذریعہ بنا" نہ کہ آپ کہیں "یا علی مدد" یا "یا عبدل قادر جیلانی مدد " اگر کہیں گے تب یہ سراسر شرک ہو جائے گا

نہ ہی آپ فرشتوں سے مدد طلب کر سکتے ہیں جو کہ قرآن کی آیت کے مطابق ہر شخص کی حفاظت کے لئے مامور ہیں - اگر آپ نے کہا کہ "اے فرشتہ میری مدد کر " تو یقینا یہ شرک ہوگا

click here for the complete thread on this topic
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
Ok
Since you have asked me to pick up a question . . . . .
Tell me how scientists know that water is mandatory for life? Any proof?
I believe science do not have sufficient proof for this claim therefore scientists "STOLE" this from religion.
آپ کو صرف دس دنوں کے لئے صحرا میں بغیر پانی کے چھوڑ دیتے ہیں آپ بغیر کسی مدہب کی دلیل کے بغیر صرف تین یا اس سے بھی کم دن میں کہو گے کہ پانی زندگی کے لئے ضروری ہے​
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
Many books have been written by nonmuslims and muslims alike on the subject of originality and validity of the quran but none of them really shows proper understanding of this subject. The same is true about the videos on internet about it.

Can the originality of the quran be clearly proven? Yes, the originality of the quran can be clearly proven beyond a shadow of doubt. How? From the existing copies of the quran around the world.

This is a most important point that each and every person must come to know and particularly a person who claims to be a muslim.

Let us look at the quranic copies that we have around the world in a bit of detail to see how the existing copies of the quran prove to us human beings that the quran we have today is original.

Let us first look at the way the quran was written down in ancient format of writing. If one gathers ancient copies of the quran that still exist today, one will see in them a special way of writing the quranic text. For example, in those copies we will see that they do not have diacritical marks which we call in arabic harakaat ie damma, fatha and kasra or tanween etc. The other thing one cannot fail to notice is that they do not contain any dots or naqaat for distinguishing letters of same shape from each other or one can cl;early see that BAA, TAA, SAA and NOON use exactly the same shape. JEEM, HAA and KHAA use the very same shape, DAAL and ZAAL, RAA and ZAA, SEEN and SHEEN, SWAAD and DWAAD, TWAA and ZWAA, AIN and GHAIN, FAA and QAAF, LAAM and YAA are written using the very same shape. This is most important point to note. The question one has to ask oneself is, is it possible for any person at all to read a text that is written down this way unless one already knows the actual message? My answer is, no, it cannot be read no matter how hard one tries unless one is already familiar with message in the text.

What does this prove beyond a shadow of doubt? It proves the quran we have today in its written form has come from the original source ie directly from the final messenger of God. Not only that it also proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today was transmitted by the final messenger of God in two completely independent ways. a) through memory ie people had committed the quran to their memories directly from the final messenger of God and b)through writing and again directly from the final; messenger of God.

The vitally important points in this regard for people to understand are:-

The way the quran was written down could not be read unless the quranic text was fully memorised by people. If anyone thinks it could read then go ahead and try it yourself. Ask someone to write something down for you in that format without telling you what one is writing and then you try and read it yourself. You will soon find out that you cannot make out the text as to what it is saying.

But how does this prove the quran we have is original? It is because the quranic text we find in the existing copies of the quran proves, it could not have been written down by people from their own memories. Not only that but one can try and do so oneself and one will fail badly even today. So the claim by muslims that they can recreate the quranic text from their memories if all written copied of the quran somehow became destroyed is false. Why?

Because there are some particular problems which people face when someone dictates the quranic text from one's memory for others to write it down. What are those problems?

Those problems are different ways of writing a particular piece of quranic information. For example, if I tell a group of people to write a number eg three. Will the person write 3 as a digit or as a word? You will agree that some could write 3 and others three. If the quran was copied the same way from dictation by someone then people could write it down different ways. In the quran we have some surahs which contain some letters in their beginnings eg surah al baqarah starts with ALIF, LAAM and MEEM letters. So if a group of people was told to write down alif, laam, meem then what do you think people will write down? Letters alif, laam and meem or words alif laam meem? Then in arabic language we have some words that can be written with different letters eg word SIRAAT can be written either by using letter SEEN or SWAAD. So if a group of people were told to write word SIRAAT what do you think people will write down? SIRAAT with SEEN or SWAAD? You will agree that some could write down word siraat with seen and others with swaad. It is just as we write word REALISE with letter S or Z ie REALIZE. Not only this but there are borrowed words in each and every human language from other languages which can be written down different ways eg see in english in how many different ways people spell word MUHAMMAD ie they write it as mohammed or mohamed and so on and so forth.

Can you therefore see the problems when people have to read a text from an awkward way of writing without having it in their memories? Likewise can you see the problems if a group of people is told to write some information down? This will create a lot of variations or differences between people whether they memorise some information or write it down unless they memorised it and wrote it down exactly the same way right from the very beginning or original source.

Now the big question, in the existing copies of quran worldwide, do we find any such differences at all? The answer is no, none at all. They are all exactly the same go and check them. This is impossible to happen unless all copies of the quran were copied from the copies exactly the same way. This explanation proves beyond a shadow of doubt that the quran we have today is exactly the same. This claim can also be verified by looking at the quranic text in written form and reading it our from one's memory. Despite coming down to us in two completely independent ways over all the quranic information remains exactly the same. A clear proof that the quran we have today has been preserved perfectly except for some copying errors by the copiers of the quran.

This proves beyond a shadow of doubt that the claims made by ignorant muslims and nonmuslinms about the changed quran are utterly false. Muslims have been spreading false information about the quran in order to defend false reports in the hadith books and nonmuslims have been using the same reports to discredit the quran and deen of islam.

More to come regarding what kinds of differences exist in the existing copies of the quran and can they invalidate the quran as we have it?
ہمارے لئے یہ یقین کرنے کے لئے قرآن کی صرف ایک آیت ہی کافی ہے کہ اللہ قرآن کی حفاظت کرے گا ، لہذا ہمارے پاس جو بھی قرآن موجود ہے وہ اصلی ، مستند ، بغیر کسی کمی بیشی کے ساتھ ہے-
مسلمانوں کے درمیان جو اس بحث کو چھیڑے گا وہ خود اپنے آپ کو مشکوک بناۓ گا



(Qur'an 15:9)
إِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الذِّكْرَ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ
ہم نے یہ نصیحت اتار دی ہے اور بے شک ہم اس کے نگہبان ہیں
 

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
کیا قرآن الله کی طرف سے نازل کی گئی کتاب ہے؟ یہ سوال رسول الله ﷺ کی زندگی میں کافروں کی جانب سے کیا گیا جس کا جواب الله تعالیٰ نے قرآن میں خود دے دیا - موجودہ زمانے میں بھی غیر مسلم اکثر یہ سوال اٹھاتے رہتے ہیں خاص طور پر پاکستانی حضرات جو غیر مسلم ممالک میں مقیم ہیں انھیں ایسے سوالات کا سامنا رہتا ہے - اپنے مسلمان بھائیوں اور بہنوں کی اس موضوع پر آگاہی کے لیے میں نے مناسب سمجھا کا یہ تھریڈ سٹارٹ کیا جاجائے - بدقسمتی سے اب یہ سوال شیعہ حضرات کی طرف سے بھی آنا شروع ہو گیا ہے- بہرحال جس جانب سے یہ سوال اٹھایا جاتا ہے بظاھر اس کا مقصد مسلمانوں کے دل میں قرآن کے بارے میں وسوسہ پیدا کرنا معلوم ہوتا ہے - نیچے بیان کی گئی اس موضوع پر بحث سے قرآن کی حقانیت روز روشن کی طرح واضح ہو جائے گی - انشاءالله-

آپ یہ فرمائیں کہ آپ کو کیسے پتہ چلا کہ قرآن الله کی کتاب ہے ؟ کوئی دلیل ہے یا بس ارد گرد کے لوگوں کی دیکھا دیکھی ؟
قرآن اور اس بات کا ثبوت کہ یہ الله کا کلام ہے ، یہ خاص دلائل ہیں جن کو پہلے کافروں نے ضد اور تکبر میں جھٹلایا تھا۔ الله تعالی نے ان کی باتوں کو متعدد طریقوں سے غلط ثابت کیا ، اور اشارہ کیا کہ کافروں کے دلایل کیا غلطیاں ہیں ۔ مثال کے طور پر

یہ قران الله تعالی کی طرف سے انسانوں اور جنوں کے لئے چیلنج ہے کہ وہ اس طرح کی کوئی چیز تیار کریں ، لیکن وہ اس سے قاصر تھے۔ پھر الله نے ان کو چیلنج دیا کہ اس طرح صرف دس سورہ تیار کریں ، اور کفار اس سے قاصر رہے۔ پھر الله نے کافرون کو چیلنج دیا کہ وہ قران میں سب سے چھوٹی سورہ کی طرح کوئی چیز لکھ کر لائیں ، اور وہ ایسا نہیں کرسکے ، حالانکہ جن کو چیلنج دیا جارہا تھا وہ بنی نوع انسان کے نہایت ہی فصاحت رکھنے والے اور باشعور انسان تھے ، اور قرآن ان کی زبان میں نازل ہوا تھا۔ پھر بھی اس کے باوجود انہوں نے کہا کہ وہ ایسا کرنے میں مکمل طور پر نااہل ہیں۔ یہ چیلنج پوری تاریخ میں بدستور برقرار ہے ، لیکن ایک بھی شخص اس طرح کی کوئی چیز تیار نہیں کرسکا ہے۔ اگر یہ انسان کا کلام ہوتا تو کچھ لوگ اس کی طرح پیدا کر سکتے یا اس کے قریب ہوتے۔ قرآن میں اس چیلنج کے لئے بہت سارے ثبوت موجود ہیں ، مثال کے طور پر

(Qur'an 17:88) قُل لَّئِنِ اجْتَمَعَتِ الْإِنسُ وَالْجِنُّ عَلَىٰ أَن يَأْتُوا بِمِثْلِ هَـٰذَا الْقُرْآنِ لَا يَأْتُونَ بِمِثْلِهِ وَلَوْ كَانَ بَعْضُهُمْ لِبَعْضٍ ظَهِيرًا
کہہ دو اگر سب آدمی اور سب جن مل کر بھی ایسا قرآن لانا چاہیں تو ایسا نہیں لا سکتے اگرچہ ان میں سے ہر ایک دوسرے کا مددگار کیوں نہ ہو

الله سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے کہ ، انہیں صرف دس سورہ تیار کرنے کا چیلنج ہے

(Qur'an 11:13) أَمْ يَقُولُونَ افْتَرَاهُ ۖ قُلْ فَأْتُوا بِعَشْرِ سُوَرٍ مِّثْلِهِ مُفْتَرَيَاتٍ وَادْعُوا مَنِ اسْتَطَعْتُم مِّن دُونِ اللَّهِ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ
کیا کہتے ہیں کہ تو نے قرآن خود بنا لیا ہے کہہ دو تم بھی ایسی دس سورتیں بنا لاؤ اور الله کے سوا جس کو بلا سکو بلا لو اگر تم سچے ہو

الله سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے ، انھیں چیلینج کیا کہ صرف ایک سورہ ہی قرآن جیسی بنا کر لائیں

(Qur'an 2:23) وَإِن كُنتُمْ فِي رَيْبٍ مِّمَّا نَزَّلْنَا عَلَىٰ عَبْدِنَا فَأْتُوا بِسُورَةٍ مِّن مِّثْلِهِ وَادْعُوا شُهَدَاءَكُم مِّن دُونِ اللَّهِ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ
اور اگر تمہیں اس چیز میں شک ہے جو ہم نے اپنے بندے پر نازل کی ہے تو ایک سورت اس جیسی لے آؤ اور الله کے سوا جس قدر تمہارے حمایتی ہوں بلا لو اگر تم سچے ہو

اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ بنی نوع انسان کتنا بھی علم اور ادراک حاصل کرلے ، پھر بھی وہ لامحالہ غلطیاں کریں گے ، چیزوں کو بھول جائیں گے یا کم کر دیں گے۔ اگر قرآن کریم الله تعالی کا کلام نہ ہوتا تو اس میں کچھ تضادات اور کوتاہیاں ہوتیں ، جیسا کہ الله تعالی کا فرمان ہے۔

(Qur'an 4:82) أَفَلَا يَتَدَبَّرُونَ الْقُرْآنَ ۚ وَلَوْ كَانَ مِنْ عِندِ غَيْرِ اللَّهِ لَوَجَدُوا فِيهِ اخْتِلَافًا كَثِيرًا
کیا یہ لوگ قرآن میں غور نہیں کرتے اور اگر یہ قرآن سوائے الله کے کسی اور کی طرف سے ہوتا تو وہ اس میں بہت اختلاف پاتے

لیکن یہ کسی بھی نقص ، غلطی یا تضاد سے پاک ہے۔ بے شک ، یہ سب حکمت ، رحمت اور انصاف ہے۔ جو شخص یہ سمجھتا ہے کہ اس میں کوئی تضاد ہے ، وہ اس کی بیمار سوچ اور غلط فہمی کی وجہ سے ہے۔ اگر وہ علماء سے معلوم کریں، تو علماء اس کی وضاحت کریں گے کہ کیا صحیح ہے اور ان کی الجھن کو ختم کردیں گے ، جیسا کہ الله تعالی کا ارشاد ہے:

(Qur'an 41:41-42) إِنَّ الَّذِينَ كَفَرُوا بِالذِّكْرِ لَمَّا جَاءَهُمْ ۖ وَإِنَّهُ لَكِتَابٌ عَزِيزٌ - لَّا يَأْتِيهِ الْبَاطِلُ مِن بَيْنِ يَدَيْهِ وَلَا مِنْ خَلْفِهِ ۖ تَنزِيلٌ مِّنْ حَكِيمٍ حَمِيدٍ
بے شک وہ لوگ جنہوں نے نصیحت سے انکار کیا جب کہ وہ ان کے پاس آئی اور تحقیق وہ البتہ عزت والی کتاب ہے - جس میں نہ آگے اور نہ پیچھے سے غلطی کا دخل ہے حکمت والے تعریف کیے ہوئے کی طرف سے نازل کی گئی ہے

تیسرا نقطہ یہ ہے کہ الله تعالی نے اس قران کو محفوظ رکھنے کی ضمانت دی ہے ، اور فرمایا:

(Qur'an 15:9) إِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الذِّكْرَ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ
ہم نے یہ نصیحت اتار دی ہے اور بے شک ہم اس کے نگہبان ہیں

پوری اسلامی تاریخ میںقرآن کے ہر حرف کو ہزاروں نے ہزاروں لوگوںکو منتقل کیا ، اور اس کا ایک حرف بھی نہیں بدلا جا سکا ۔ اگر کسی شخص نے اس میں کچھ بھی تبدیل کرنے کی کوشش کی ، یا کچھ شامل کرنے یا کچھاضافہ کرنے کی کوشش کی تو اسے فورا ہی بے نقاب کردیا گیا ، کیوں کہ الله تعالی نے ہی قرآن کریم کو محفوظ رکھنے کی ضمانت دی ہے ، اس کے برعکس الله کی دوسری آسمانی کتابیں صرف خاص نبی کے لوگوں پر نازل ہوئیں ، نہ کہ سارے انسانوں پر ، لہذا الله نے ان کو محفوظ رکھنے کی گارنٹی نہیں دی ، بلکہ ان کا تحفظ انبیاء کے پیروکاروں کے سپرد کیا۔ لیکن انہوں نے ان کو محفوظ نہیں کیا ، بلکہ انھوں نے ایسی تبدیلیاں اور تبدیلیاں متعارف کروائیں جن سے بیشتر معنی مسخ ہوگئے۔ دوسری طرف ، قرآن الله تعالی نے قیامت تک آنے والےتمام انسانوں کے لئے نازل کیا ، کیونکہ محمد صلی الله علیہ وآلہ وسلم کا پیغام ہی آخری پیغام ہے ، لہذا قران مسلمانوں کے دلوں میں محفوظ ہے اور تحریری شکل میں بھی ، جیسا کہ تاریخ کے واقعات سے ثابت ہوتا ہے۔ کتنے لوگوں نے قران کی آیات کو تبدیل کرنے اور مسلمانوں کو دھوکہ دینے کی کوشش کی ، لیکن انھیں جلد ہی بے نقاب کردیا گیا اور ان کے جھوٹ کا پتہ چل گیا

اس کی ایک اور واضح علامت، کہ یہ قران رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم نے نہیں پیش کیا تھا ، بلکہ یہ الله تعالی نے ان کے ذریعہ نازل کیا ہے، نیچے بیان کی گئی ہے ۔

چوتھا نقطہ یہ ہے کہ قرآن قانون ، احکام ، کتاریخی قصوں اور عقائد پر مشتمل عظیم الشان معجزہ ہے ، جو کوئی بھی مخلوق پیدا نہیں کر سکتی ، چاہے اس کی ذہانت اور افہام و تفہیم کی سطح کتنی ہی بڑی ہو۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ لوگ اپنی زندگی کو منظم کرنے کے لئے قوانین کو نافذ کرنے کی کتنی ہی کوشش کریں ، وہ اس وقت تک کبھی بھی کامیاب نہیں ہو سکتے جب تک کہ اپنے قوائد قرآن کی تعلیمات کے قریب تر نہ بنائیں ۔ جتنا دور ہونگے ، ان کی ناکامی کی شرح اتنی ہی زیادہ ہو گی ۔ یہ وہ چیز ہے جسے خود کفار تسلیم کرتے ہیں۔

پانچواں نقطہ یہ ہے کہ ماضی اور مستقبل دونوں ہیکے بارے میں غیب کے معاملات کی اطلاعات ، جن کے بارے میں کوئی بھی انسان حتمی طور پر بات نہیں کرسکتا ، اس سے قطع نظر بھی ان کے پاس کتنا ہی علم کیوں نہ ہو ، خاص طور پر اس زمانے میں جو ٹکنالوجی اور جدید آلات کے معاملے میں قدیم سمجھا جاتا ہے۔ بہت سی ایسی چیزیں ہیں جو اس وقت تک دریافت نہیں ہوئیں تھیں ، اور جنہیں جدید ترین آلات کی مدد سے لمبی لمبی اور دشوار گزار تفتیش کے بعد ہی دریافت کیا گیا ہے ، لیکن الله تعالی نے ہمیں قرآن کریم میں ان کے بارے میں بتایا ، اور رسول الله صلی الله علیہ وآلہ وسلم نے ان باتوں کا تذکرہ پندرہ صدیوں پہلے کیا ، جیسا کہ ماں کے پیٹ میں بچے کی نشوونما کے مراحل ، سمندروں کی نوعیت ، وغیرہ۔ ان چیزوں نے کچھ کافروں کو بھی یہ کہنے پر مجبور کر دیا کہ یہ قرآن الله کی طرف سے ہی آسکتا تھا ، جیسا کہ ایمبریو کی نشو نما کے حقائق۔

شیخ الزندانی نے کہتے ہیں ، ہم نے ایک امریکی پروفیسر سے ملاقات کی ، ایک عظیم ترین امریکی سائنس دان ، جس کا نام پروفیسر مارشل جانسن تھا ، اور ہم نے اسے بتایا کہ قرآن کریم میں یہ بتایا گیا ہے کہ انسان کو مراحل میں پیدا کیا گیا ہے ۔ یہ سن کر وہ نیچے بیٹھا ہوا تھا ، لیکن وہ کھڑا ہوگیا اور کہنے لگا ، "مراحل میں"؟ ہم نے کہا ، یہ بات ساتویں صدی عیسوی میں قرآن میں بیان کی گئی ہے کہ انسان مراحل میں پیدا ہوا۔ اس نے کہا ، یہ ناممکن ہے ، ناممکن ہے، ہم نے اسے قرآن کا یہ حوالہ دیا

(Qur'an 39:6) يَخْلُقُكُمْ فِي بُطُونِ أُمَّهَاتِكُمْ خَلْقًا مِّن بَعْدِ خَلْقٍ فِي ظُلُمَاتٍ ثَلَاثٍ ۚ
وہ تمہیں تمہاری ماؤں کے پیٹوں میں ایک کیفیت کے بعد دوسری کیفیت پر تین اندھیروں میں بناتا ہے

(Qur'an 71:13-14) مَّا لَكُمْ لَا تَرْجُونَ لِلَّهِ وَقَارًا - وَقَدْ خَلَقَكُمْ أَطْوَارًا
تمہیں کیا ہو گیا تم الله کی عظمت کا خیال نہیں رکھتے - حالانکہ اس نے تمہیں کئی طرح سے بنا یا ہے

پھر وہ اپنی کرسی پر بیٹھ گیا اور کچھ لمحوں کے بعد اس نے کہا ، یہاں صرف تین امکانات ہیں۔ پہلا یہ کہ محمد ﷺ کے پاس ایک بہت طاقت ور خوردبین تھی جس کے ذریعہ وہ ان چیزوں کا مطالعہ کرنے میں کامیاب ہوگئے اور وہ ایسی چیزوں کو جانتے تھے جو لوگ نہیں جانتے تھے ۔ دوسرا صورت یہ کہ یہ اتفاق سے ہوا ۔ تیسرا یہ کہ وہ اللہ کی طرف سے رسول تھے۔ ہم نے کہا ، پہلے خیال کے حوالے سے ، کہ ان کے پاس مائکروسکوپ اور دیگر سامان موجود تھا ، آپ جانتے ہو کہ مائکروسکوپ کو عدسے ، تکنیکی مہارت اور دیگر سامان کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس میں سے کچھ معلومات کو صرف ایک الیکٹران مائکروسکوپ کے ذریعے دریافت کیا جاسکتا ہے جس کو بجلی کی ضرورت ہوتی ہے ، اور بجلی پیدا کرنے کا علم اس زمانے میں بلکل نہ تھا ۔ یہ ممکن نہیں ہے کہ یہ علم ایک ہی نسل میں ایک ساتھ حاصل کیا جاسکے۔ پچھلی نسل کو سائنس کی نشوونما کرنے اور اسے اگلی نسل میں منتقل کرنے کے لئے سخت جدوجہد کرنی پڑتی ، وغیرہ۔ لیکن یہ ایک شخصکے لئے نہ ممکن ہے جبکہ نہ ہی ان سے پہلے اور نہ ہیان کے بعد ، نہ ہی ان کی اپنی سرزمین میں یا رومیوں ، فارسیوں اور عربوں کے پڑوسی ممالک بھی جاہل تھے اور ان کے پاس ایسا سامان نہیں تھا - یہ آلات اور اوزار ان کی بعد کسی کو نہیں ملے یہ ممکن نہیں ہے۔ اس نے کہا ، آپ ٹھیک کہتے ہیں یہ بہت ہی مشکل ہے ۔ ہم نے کہا ، اورجہاں تک یہ سوچنا کہ یہ حادثہ یا اتفاق تھا ، قرآن نے اس حقیقت کا ذکر صرف ایک آیت میں نہیں بلکہ متعدد آیات میں کیا ہے ، اور یہ کہ قرآن نے عام اصطلاحات میں اس کا حوالہ نہیں دیا ہے بلکہ قرآن نے ہر مرحلے کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ پہلے مرحلے میں ایسے ، دوسرے مرحلے میں اور تیسرے مرحلے میں اسی طرح ہوتا ہے۔ کیا یہ اتفاق ہوسکتا ہے؟ جب ہم نے ان کو ان مراحل کی ساری تفصیلات بتائیں تو اس نے کہا ، یہ کہنا غلط ہے کہ یہ حادثہ ہے! یہ اچھی طرح سے قائم کیا ہوا علم ہے۔ ہم نے کہا ، پھر آپ اس کی وضاحت کیسے کریں گے؟ اس نے کہا ، اس کے سوا کوئی وضاحت نہیں ہے کہ یہ اوپر سے وحی ہے

قرآن مجید میں سمندر کے بارے میں بہت سارے بیانات کے سلسلے میں ، ان حقائق میں سے کچھ ابھی کچھ عرصہ پہلے تک دریافت نہیں ہوئے تھے ، اور ان میں سے بہت سے تاحال نامعلوم ہیں۔ مثال کے طور پر ، یہ حقائق سیکڑوں میرین اسٹیشن قائم کرنے کے بعد ، اور مصنوعی سیارہ کے ذریعہ تصاویر لینے کے بعد دریافت ہوئے تھے۔ جس نے یہ کہا وہ پروفیسر شروئڈر (Schroeder) تھے ، جو مغربی جرمنی کے ایک بہت بڑے سمندری ماہر ہیں۔ وہ کہتے تھے کہ اگر سائنس ترقی کرنا ہے تو مذہب کو پیچھے ہٹنا ہوگا۔ لیکن جب اس نے قرآنی آیات کا ترجمہ سنا تو وہ دنگ رہ گیا اور کہنے لگا یہ انسان کے الفاظ نہیں ہوسکتے ہیں۔ اور بحر سائنس (oceanography) کے پروفیسر، پروفیسر ڈورجارو (Dorjaro) نے سائنس کی تازہ ترین پیشرفت کے بارے میں بتایا ، جب انہوں نے آیات سنیں

(Qur'an 24:40) أَوْ كَظُلُمَاتٍ فِي بَحْرٍ لُّجِّيٍّ يَغْشَاهُ مَوْجٌ مِّن فَوْقِهِ مَوْجٌ مِّن فَوْقِهِ سَحَابٌ ۚ ظُلُمَاتٌ بَعْضُهَا فَوْقَ بَعْضٍ إِذَا أَخْرَجَ يَدَهُ لَمْ يَكَدْ يَرَاهَا ۗ وَمَن لَّمْ يَجْعَلِ اللَّهُ لَهُ نُورًا فَمَا لَهُ مِن نُّورٍ
یا جیسے گہرے دریا میں اندھیرے ہوں اس پر ایک لہر چڑھ آتی ہے اس پرایک او رلہر ہے اس کے اوپر بادل ہے اوپر تلے بہت سے اندھیرے ہیں جب اپنا ہاتھ نکالے تو اسے کچھ بھی دیکھ نہ سکے اور جسے الله ہی نے نور نہ دیا ہو اس کے لیے کہیں نور نہیں ہے

اس سائنس داں نے کہا ، ماضی میں ، انسان بیس میٹر سے زیادہ کی گہرائی میں غوطہ نہیں لگا سکتا تھا کیونکہ اس کے پاس کوئی خاص سامان نہیں تھا۔ لیکن اب ہم جدید سازو سامان کا استعمال کرتے ہوئے سمندر کی تہہ تک غوطہ زن کرسکتے ہیں ، اور ہمیں دو سو میٹر کی گہرائی میں شدید اندھیرے ملتے ہیں۔آیت کے مطابق ایک وسیع گہرا سمندر۔ سمندر کی گہرائیوں میں موجودہ دریافتیں ہمیں اندھیرے پر اندھیرا کی آیت ، (تہوں) کا مطلب سمجھنے میں مدد دیتی ہیں ۔ یہ معلوم ہے کہ سپیکٹرم میں سات رنگ ہیں ، جن میں سرخ ، پیلے ، نیلے ، سبز ، اورینج وغیرہ شامل ہیں جب ہم سمندر کی گہرائی میں جاتے ہیں تو ، یہ رنگ ایک کے بعد ایک غائب ہوجاتے ہیں ۔ زیادہ اندھیرے میں سب سے پہلے سرخ ، پھر اورینج ،پھر پیلا پھر آخری رنگ دو سو میٹر کی گہرائی میں نیلا ہوتا ہے جو غائب ہوتا ہے۔ ہر رنگ جو غائب ہو جاتا ہے وہ تاریکی میں مزید اضافہ ہوجاتا ہے یہاں تک کہ یہ مکمل اندھیرا ہو جائے۔ لہروں کے سلسلے میں ، یہ سائنسی طور پر ثابت ہوا ہے کہ سمندر کے اوپری اور نچلے حصوں کے درمیان جدائی ہے اور یہ جدائی لہروں سے بھری ہوئی ہے ، گویا اندھیرے کے کنارے پر لہریں ہیں۔ ، سمندر کا نچلا حصہ ، جو ہم نہیں دیکھتے ہیں ، اور سمندر کے ساحل پر لہریں ہیں ، جو ہم دیکھتے ہیں۔ تو گویا لہروں کے اوپر لہریں ہیں۔ یہ ایک تصدیق شدہ سائنسی حقیقت ہے ، لہذا پروفیسر ڈورجارو (Dorjaro) نے ان قرآنی آیات کے بارے میں کہا ، کہ یہ انسانی علم نہیں ہوسکتا ہے۔

اور ایسی بہت ساری مثالیں موجود ہیں

قرآن میں کچھ آیات ہیں جو رسول الله صلی الله علیہ وسلم کو سرزنش کرتی ہیں اور کچھ ایسی باتوں کا تذکرہ کرتی ہیں جن پر الله تعالی نے ان کی توجہ مبذول کروائی۔ ان میں سے کچھ تو رسول اللہ صلی الله علیہ وآلہ وسلم کے لئے باعث شرمندگی ہونگی ۔ لیکن اگر یہ قرآن رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے آتا تو ایسی آیات شامل نہ ہوتی ۔ اگر وہ قران کے کسی حصے کو چھپاتے تو ان میں سے کچھ آیات کو چھپا دیتے جس میں سرزنش ہوئی تھی یا کچھ معاملات کی طرف ان کی توجہ مبذول کرائی گئی تھی جسے انہیں نہیں کرنا چاہئے تھا ، جیسے نیچے آیت جس میں الله تعالی نے اپنے نبی صلی الله علیہ وسلم کو ارشاد فرمایا ہے۔

(Qur'an 33:37) وَإِذْ تَقُولُ لِلَّذِي أَنْعَمَ اللَّهُ عَلَيْهِ وَأَنْعَمْتَ عَلَيْهِ أَمْسِكْ عَلَيْكَ زَوْجَكَ وَاتَّقِ اللَّهَ وَتُخْفِي فِي نَفْسِكَ مَا اللَّهُ مُبْدِيهِ وَتَخْشَى النَّاسَ وَاللَّهُ أَحَقُّ أَن تَخْشَاهُ ۖ فَلَمَّا قَضَىٰ زَيْدٌ مِّنْهَا وَطَرًا زَوَّجْنَاكَهَا لِكَيْ لَا يَكُونَ عَلَى الْمُؤْمِنِينَ حَرَجٌ فِي أَزْوَاجِ أَدْعِيَائِهِمْ إِذَا قَضَوْا مِنْهُنَّ وَطَرًا ۚ وَكَانَ أَمْرُ اللَّهِ مَفْعُولًا
اور جب تو نے اس شخص سے کہا جس پر الله نے احسان کیا اور تو نے احسان کیا اپنی بیوی کو اپنے پاس رکھ الله سے ڈر اور تو اپنے دل میں ایک چیز چھپاتا تھا جسے الله ظاہر کرنے والا تھا اور تو لوگوں سے ڈرتا تھا حالانکہ الله زیادہ حق رکھتا ہے کہ تو اس سے ڈرے پھر جب زید اس سے حاجت پوری کر چکا تو ہم نے تجھ سے اس کا نکاح کر دیا تاکہ مسلمانوں پر ان کے منہ بولے بیٹوں کی بیویوں کے بارے میں کوئی گناہ نہ ہو جب کہ وہ ان سے حاجت پوری کر لیں اور الله کا حکم ہوکر رہنے والا ہے

اس کے بعد ، کیا کسی بھی ذہین شخص کے ذہن میں یہ شک باقی رہ سکتا ہے کہ یہ قرآن الله تعالی کا کلام ہے ، اور رسول الله صلی الله علیہ وسلم نے وہ بات پوری طرح پہنچا دی جو ان پر نازل کی گئی تھی؟

مزید یہ کہ ہم اس شخص کو کہتے ہیں ، اسے خود ہی آزمائیں ، قران کا ایک عمدہ ترجمہ پڑھیں اور ان قواعد و ضوابط پر غور کرنے کے لیۓ اپنے دماغ کا استعمال کریں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ کوئی بھی ذہین شخص جو فہم و فراست کا حامل ہے ، ان الفاظ (الله تعالی کے ) اور زمین پر کسی بھی شخص کے الفاظ کے درمیان بڑا فرق دیکھ سکے گا۔

ماخوز
For detailed discussion on this topic in an older thread click here
 
Sponsored Link

Featured Discussion Latest Blogs اردوخبریں