کیا مڈ ٹرم الیکشن میں عمران خان کا مقابلہ آرمی جنرلوں سے ہو گا ؟

Syed Haider Imam

Chief Minister (5k+ posts)
کیا مڈ ٹرم الیکشن میں عمران خان کا مقابلہ آرمی جنرلوں سے ہو گا ؟
( پارٹ ٢ )



ایک طرف انڈیا اور پاکستان کی افواج ایک دوسرے کے خلاف صف آراء ہیں اور دوسری طرف پاکستان میں عمران خان کے خلاف انکے اپنے اتحادی اور اپوزیشن والے اپنے آقاؤں کی سرپرستی میں صف بندی کر رہے ہیں . حالیہ ماضی میں تمام تر کرپشن اور نااہلیوں کے باوجود پیپلز پارٹی اور شریف لیگ نے اپنے ٹرم پورے تو ضرور کئے مگر اس تمام عرصے میں جمہورت نے بد ترین انتقام کے طور پر پاکستان کی معیشیت اور انتظامیہ کو جان کنی کی حالت میں چھوڑ کر میڈیا کے توسط سے تمام ملبہ عمران خان کی نوزائندہ حکومت پر ڈال کر بری الزمہ ہو گئے . پیپلزپارٹی دور میں "حکومت آج گئی کے کل گئی" کا راگ میڈیا کے ہیجان خیزی میں متبلا ڈاکٹر شاہد مسعود کی سربراہی میں الاپا جاتا رہا مگر سائیکل سے شیر بننے والی پارٹی کی باری پانچ سال بعد ہی آئی . ٢٢ سال جدوجہد کرنے والا لون وارئیر عمران خان کو وہی فوجی راگ سنوایا جا رہا جو آج اپنی تمام تر نیک نامی اور ساکھ کے باوجود کسی کو برداشت نہیں ہو رہا ہے



٢٠١٣ کے الیکشن میں بھر پور رگنگ کی گئی . اس الیکشن میں لامتناہی شواہد کی بنیاد پر میں نے ایک تھریڈ بنائی تھی . اس الیکشن سے پہلے عمران خان اپنی عوامی سپورٹ کی بنیاد پر امریکہ اور فوجی جنرلوں کو تڑیاں دیتے رہے اور نتیجہ میں حکومت سے محروم کر دئے گئے . الیکشن انجینرنگ کے تحت لسانی بینادوں پر تمام فریقین کو انکے صوبوں میں حکومت دے کر خاموش کیا گیا .حیران کن طور پر مولانا فضل الرحمان کو قومی کیک سے حصہ نہ ملا جسکا وعدہ اب ان سے کر لیا گیا ہے . تحریک انصاف کی حکومت اتے ہی حیران کن طور پر زرداری اور شریف گروپ نے سلیکٹر اور سلیکٹڈ پر متواتر بیان بازی شروع کر کے الیکشن میں رگنگ کا ڈائریکٹ الزام فوج پر لگا دیا . یہ سلسلہ اس وقت موقوف کیا گیا جب نواز زرداری کو سلیکٹرز نے عدالتوں کے آڑ میں ایک مرتبہ پھر ڈیل دی . نواز شریف نے اپنے ٨٠ سیاستدان جنرل باجوہ کو دے کر ملک میں جاری پولیٹیکل انجینرنگ اور ڈیل پر مہر ثبت کر دی . جن سیاستدانوں نے ووٹ نہیں دئے انھیں ٢٠١٣ کی سلیکشن بھولنی نہیں چاہئے ، وہ خواہ مخواہ گلیڈیٹر مت بنیں . ایک ناگزیز جنرل نے اپنی ایکسٹینشن کے لئے کھربوں کی کرپشن کو ایک مرتبہ پھر لپیٹ کر تاریخ میں آرمی کو بھر پور بدنام کیا . اپنی عاد ت کے مکمل برعکس عمران خان عزت سادات کو بچانے کی خاطر چپ رہنے میں عافیت سمجھی . خود بے عزتی جیھل لی مگر اپنے منصب کا خیال رکھا

٢٠١٨ کے الیکشن سے پہلے عمران خان کی عمر ٦٦ برس کی ہو چکی تھی اور انھیں اندازہ ہو چکا تھا کے اسٹیبلشمنٹ کی مدد کے بغیر وہ اقتدار میں نہیں ا سکتے لھذا" اپنا بھی ٹائم آئے گا" کے مصداق انہوں نے اسٹیبلشمنٹ سے مصالحت کی اور ان سے ہاتھ ملا کر مصالحتوں اور یو- ٹرنز کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا . عمران خان اپنے مخالفین کو چیک میٹ دے چکے تھے اور انھیں عوام پر بھروسہ کرنا چاہئے تھا مگر پولیٹکل انجینرنگ کا توڑ انکے پاس نہ تھا . پارٹی لیول پر بے تحاشا گروپ اور دھڑے بندیاں تھیں جس نے عمران خان کی طاقت کو انتہائی کمزور کر دیا تھا . گروپ اور دھڑے بندی پر مفصل بلاگ میں پہلے ہی لکھ چکا ہوں . عمران خان کی پارٹی میں پیشہ ور اور سدا بہار فٹ فار آل سیاستدان ڈالے گئے تاکے انکو کنٹرول کیا جا سکے . اپوزیشن پارٹیز کے مطابق ٢٠١٨ میں الیکشن انجینرنگ کی گئی . عمران خان کو چند نششتوں کے فرق سے مخلوط حکومت دی گئی تاکے ایک شہ زور گھوڑے کو بوقت ضرورت لگام دیا جا سکے . مخصوس بلوچی ، کراچی کے بہاریوں اور پنجاب کے چودھریوں کی مدد سے حکومت پر پریشر رکھا گیا . سینیٹ چیئرمین کے الیکشن اور پھر عدم اعتماد کی تحریکیں اس تمام الیکشن انجینرنگ کا مونہ بولتا ثبوت اور ناقابل تردید شواہد ہیں



پاکستان کے بدترین سیاستدانوں ، بزنس کلاس اور افسروں کو جنرل باجوہ نے عدالتی آڑ اور قانون سازی میں جو ڈیل دی ہے وہ کسی غداری سے کم نہیں . بظاھر یہ ڈیل تلخ ترین زمینی حقائق کو سامنے رکھ کر دی گئی ہے گزشتہ دس سالوں کی کھلی لوٹ مار سے پاکستان الیکشن سے پہلے ہی دیوالیہ ہو چکا تھا اور انے والے ٤ سالوں میں حکومت وقت نے ٣٧ ارب ڈالر واپس کرنا تھا . قرض اور سود واپس کرنے کے لئے موجودہ حکومت اپنے پہلے سال ہی ١٠ ارب ڈالر قرض لے چکی ہے . انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ کے مطابق ٢٠٢٣ تک پاکستان کے بیرونی قرض ١٣٠ بلین ڈالر تک پہنچ جائیں گے یعنی ٣٥ بلین ڈالر ( ٣٦ فیصد ) زیادہ ہو جائیں گے . عمران خان کی تمام الیکشن مہم الیکشن رگنگ ، کرپشن ، قرضوں اور بد انتظامی کے گرد گھومتی تھی . اگر شیر نہیں اتا اور حکومت اسی حالت میں اپنا وقت پورا کر جاتی ہے تو وہ قرضوں میں ٣٧ ارب ڈالر کے اضافے کا دفاع وہ کیسے کرے گی جسکا واویلا یہ لوگ مچاتے رہے ہیں . عوام میں خوف ہراس نہ پھیلے ، تحریک انصاف کی حکومت حقیت تو بتانے سے رہی اور لوگ حقیقت جاننے سے رہے . انھیں تو محض مہنگائی کا رنڈی رونا ہے اور وہ یہ سوچنے سے معزور ہیں کے جسطرح سرطان جیسے موذی کے پیچھے سگریٹ نوشی ہوتی ہے اسی طرح مہنگائی ، بنیادی سہولتوں کی عدم موجودگی اور بیروزگاری کے پیچھے کرپشن کی عفریت ہوتی ہے جسکی واضح مثالیں دنیا میں سب سے تیل پیدا کرنے ممالک نائجیریا اور وینزوالا کی ہیں. پاکستانیوں کی نسلوں کی بقاء خطرے میں ہے اور وہ مہنگائی کا رنڈی رونا رو رہے ہیں . انڈیا نے پاکستان پر پریشر ڈال کر دفاعی اخراجات میں بے تحاشہ اضافہ کر دیا ہے جس سے پاکستان کی مہنگے قرضے لینے پڑ رہے ہیں اور مہنگائی عوام کو ٹرانسفر کی جا رہی ہے . بدنامی اور رسوائی حکومت کے کھاتے میں ڈالی جا رہی ہے

پاکستان کو جس ڈھٹائی سے لوٹا گھسوٹا گیا ہے ، یہ واضح ہو گیا تھا کے اسکے پیچھے غیر ملکی ایجنڈا ہے اور عالمی طاقتیں پاکستان کی معشیت کو کمزور اور تنہا پا کر حملہ کر دیں گی جس پر میں مسلسل لکھ رہا تھا . آخر کار عالمی طاقتوں نے انڈیا پر ایک جاہل کو مسلط کر کے پاکستان کے خلاف استعمال کرنا چاہ رہے ہیں اور اس کسمپسری کی حالت میں ہماری شرلیوں کی حثیت شب برات کے پٹاخے سے زیادہ نہیں رہ گئی ہے . جتنی ایک ٧٣ سالہ شخص کی سیکس لائف ہوتی ہے اتنی دیر ہم لوگ جنگ کرنے کے قابل ہیں . ان حالات میں پاکستان کی ملٹری کو کاروبار حکومت ہر حال میں چلانا تھا . قسمت کی ستم ظریفی جن لوگوں نے پاکستان کو آخری سانسیں لینے پر مجبور کیا ، انھیں ہی کاروبار مملکت چلانے کے لئے جنرل باجوہ صاحب نے آکسیجن دے ایک نئی زندگی دی . اسلام اور قانون کا نہ صرف ایک مرتبہ پھر مذاق اڑایا گیا بلکے تذلیل بھی کی گئی
( جاری ہے )
 
Advertisement
Last edited:

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
کیا مڈ ٹرم الیکشن میں عمران خان کا مقابلہ آرمی جنرلوں سے ہو گا ؟
( پارٹ ٢ )



ایک طرف انڈیا اور پاکستان کی افواج ایک دوسرے کے خلاف صف آراء ہیں اور دوسری طرف پاکستان میں عمران خان کے خلاف انکے اپنے اتحادی اور اپوزیشن والے اپنے آقاؤں کی سرپرستی میں صف بندی کر رہے ہیں . حالیہ ماضی میں تمام تر کرپشن اور نااہلیوں کے باوجود پیپلز پارٹی اور شریف لیگ نے اپنے ٹرم پورے تو ضرور کئے مگر اس تمام عرصے میں جمہورت نے بد ترین انتقام کے طور پر پاکستان کی معیشیت اور انتظامیہ کو جان کنی کی حالت میں چھوڑ کر میڈیا کے توسط سے تمام ملبہ عمران خان کی نوزائندہ حکومت پر ڈال کر بری الزمہ ہو گئے . پیپلزپارٹی دور میں "حکومت آج گئی کے کل گئی" کا راگ میڈیا کے ہیجان خیزی میں متبلا ڈاکٹر شاہد مسعود کی سربراہی میں الاپا جاتا رہا مگر سائیکل سے شیر بننے والی پارٹی کی باری پانچ سال بعد ہی آئی . ٢٢ سال جدوجہد کرنے والا لون وارئیر عمران خان کو وہی فوجی راگ سنوایا جا رہا جو آج اپنی تمام تر نیک نامی اور ساکھ کے باوجود کسی کو برداشت نہیں ہو رہا ہے



٢٠١٣ کے الیکشن میں بھر پور رگنگ کی گئی . اس الیکشن میں لامتناہی شواہد کی بنیاد پر میں نے ایک تھریڈ بنائی تھی . اس الیکشن سے پہلے عمران خان اپنی عوامی سپورٹ کی بنیاد پر امریکہ اور فوجی جنرلوں کو تڑیاں دیتے رہے اور نتیجہ میں حکومت سے محروم کر دئے گئے . الیکشن انجینرنگ کے تحت لسانی بینادوں پر تمام فریقین کو انکے صوبوں میں حکومت دے کر خاموش کیا گیا .حیران کن طور پر مولانا فضل الرحمان کو قومی کیک سے حصہ نہ ملا جسکا وعدہ اب ان سے کر لیا گیا ہے . تحریک انصاف کی حکومت اتے ہی حیران کن طور پر زرداری اور شریف گروپ نے سلیکٹر اور سلیکٹڈ پر متواتر بیان بازی شروع کر کے الیکشن میں رگنگ کا ڈائریکٹ الزام فوج پر لگا دیا . یہ سلسلہ اس وقت موقوف کیا گیا جب نواز زرداری کو سلیکٹرز نے عدالتوں کے آڑ میں ایک مرتبہ پھر ڈیل دی . نواز شریف نے اپنے ٨٠ سیاستدان جنرل باجوہ کو دے کر ملک میں جاری پولیٹیکل انجینرنگ اور ڈیل پر مہر ثبت کر دی . جن سیاستدانوں نے ووٹ نہیں دئے انھیں ٢٠١٣ کی سلیکشن بھولنی نہیں چاہئے ، وہ خواہ مخواہ گلیڈیٹر مت بنیں . ایک ناگزیز جنرل نے اپنی ایکسٹینشن کے لئے کھربوں کی کرپشن کو ایک مرتبہ پھر لپیٹ کر تاریخ میں آرمی کو بھر پور بدنام کیا . اپنی عاد ت کے مکمل برعکس عمران خان عزت سادات کو بچانے کی خاطر چپ رہنے میں عافیت سمجھی . خود بے عزتی جیھل لی مگر اپنے منصب کا خیال رکھا

٢٠١٨ کے الیکشن سے پہلے عمران خان کی عمر ٦٦ برس کی ہو چکی تھی اور انھیں اندازہ ہو چکا تھا کے اسٹیبلشمنٹ کی مدد کے بغیر وہ اقتدار میں نہیں ا سکتے لھذا" اپنا بھی ٹائم آئے گا" کے مصداق انہوں نے اسٹیبلشمنٹ سے مصالحت کی اور ان سے ہاتھ ملا کر مصالحتوں اور یو- ٹرنز کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا . عمران خان اپنے مخالفین کو چیک میٹ دے چکے تھے اور انھیں عوام پر بھروسہ کرنا چاہئے تھا مگر پولیٹکل انجینرنگ کا توڑ انکے پاس نہ تھا . پارٹی لیول پر بے تحاشا گروپ اور دھڑے بندیاں تھیں جس نے عمران خان کی طاقت کو انتہائی کمزور کر دیا تھا . گروپ اور دھڑے بندی پر مفصل بلاگ میں پہلے ہی لکھ چکا ہوں . عمران خان کی پارٹی میں پیشہ ور اور سدا بہار فٹ فار آل سیاستدان ڈالے گئے تاکے انکو کنٹرول کیا جا سکے . اپوزیشن پارٹیز کے مطابق ٢٠١٨ میں الیکشن انجینرنگ کی گئی . عمران خان کو چند نششتوں کے فرق سے مخلوط حکومت دی گئی تاکے ایک شہ زور گھوڑے کو بوقت ضرورت لگام دیا جا سکے . مخصوس بلوچی ، کراچی کے بہاریوں اور پنجاب کے چودھریوں کی مدد سے حکومت پر پریشر رکھا گیا . سینیٹ چیئرمین کے الیکشن اور پھر عدم اعتماد کی تحریکیں اس تمام الیکشن انجینرنگ کا مونہ بولتا ثبوت اور ناقابل تردید شواہد ہیں



پاکستان کے بدترین سیاستدانوں ، بزنس کلاس اور افسروں کو جنرل باجوہ نے عدالتی آڑ اور قانون سازی میں جو ڈیل دی ہے وہ کسی غداری سے کم نہیں . بظاھر یہ ڈیل تلخ ترین زمینی حقائق کو سامنے رکھ کر دی گئی ہے گزشتہ دس سالوں کی کھلی لوٹ مار سے پاکستان الیکشن سے پہلے ہی دیوالیہ ہو چکا تھا اور انے والے ٤ سالوں میں حکومت وقت نے ٣٧ ارب ڈالر واپس کرنا تھا . قرض اور سود واپس کرنے کے لئے موجودہ حکومت اپنے پہلے سال ہی ١٠ ارب ڈالر قرض لے چکی ہے . انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ کے مطابق ٢٠٢٣ تک پاکستان کے بیرونی قرض ١٣٠ بلین ڈالر تک پہنچ جائیں گے یعنی ٣٥ بلین ڈالر ( ٣٦ فیصد ) زیادہ ہو جائیں گے . عمران خان کی تمام الیکشن مہم الیکشن رگنگ ، کرپشن ، قرضوں اور بد انتظامی کے گرد گھومتی تھی . اگر شیر نہیں اتا اور حکومت اسی حالت میں اپنا وقت پورا کر جاتی ہے تو وہ قرضوں میں ٣٧ ارب ڈالر کے اضافے کا وہ کیسے دفاع کرے گی جسکا واویلا یہ لوگ مچاتے رہے ہیں . عوام میں خوف ہراس نہ پھیلے ، تحریک انصاف کی حکومت حقیت تو بتانے سے رہی اور لوگ حقیقت جاننے سے رہے . انھیں تو محض مہنگائی کا رنڈی رونا ہے اور وہ یہ سوچنے سے معزور ہیں کے جسطرح سرطان جیسے موذی کے پیچھے سگریٹ نوشی ہوتی ہے اسی طرح مہنگائی ، بنیادی سہولتوں کی عدم موجودگی اور بیروزگاری کے پیچھے کرپشن کی عفریت ہوتی ہے جسکا واضح مثالیں دنیا میں سب سے تیل پیدا کرنے ممالک نائجیریا اور وینزوالا کی ہیں. پاکستانیوں کی نسلوں کی بقاء خطرے میں ہے اور وہ مہنگائی کا رنڈی رونا رو رہے ہیں . انڈیا نے پاکستان پر پریشر ڈال کر دفاعی اخراجات میں بے تحاشہ اضافہ کر دیا ہے جس سے پاکستان کی مہنگے قرضے لینے پڑ رہے ہیں اور مہنگائی عوام کو ٹرانسفر ، بدنامی اور رسوائی حکومت کے کھاتے میں ڈالی جا رہی ہے .

پاکستان کو جس ڈھٹائی سے لوٹا گھسوٹا گیا ہے ، یہ واضح ہو گیا تھا کے اسکے پیچھے غیر ملکی ایجنڈا ہے اور عالمی طاقتیں پاکستان کی معشیت کو کمزور اور تنہا پا کر حملہ کر دیں گی جس پر میں مسلسل لکھ رہا تھا . آخر کار عالمی طاقتیں انڈیا پر ایک جاہل کو مسلط کر کے اب پاکستان کے خلاف استعمال کرنا چاہ رہے ہیں اور اس کسمپسری کی حالت میں ہماری شرلیوں کی حثیت شب برات کے پٹاخے سے زیادہ نہیں رہ گئی ہے . جتنی ایک ٧٣ سالہ شخص کی سیکس لائف ہوتی ہے اتنی دیر ہم لوگ جنگ کرنے کے قابل ہیں . ان حالات میں پاکستان کی ملٹری کو کاروبار حکومت ہر حال میں چلانا تھا . قسمت کی ستم ظریفی جن لوگوں نے پاکستان کو آخری سانسیں لینے پر مجبور کیا ، انھیں ہی کاروبار مملکت چلانے کے لئے جنرل باجوہ صاحب نے آکسیجن دے ایک نئی زندگی دی . اسلام اور قانون کا نہ صرف ایک مرتبہ پھر مذاق اڑایا گیا بلکے تذلیل بھی کی گئی
( جاری ہے )



حیدر! اب ان سچی اور کڑوی باتوں پر بندہ کیا تبصرہ کرے ؟؟؟ پچھلے چند ہفتوں کے واقعات سے دل بہت مغموم ہے اور کچھ لکھنے کو دل ہی نہیں چاہتا . آپ کی بڑی ہمت ہے کہ ابھی بھی شمع روشن کر رکھی ہے . ستم ظریفی یہ ہے، اور تجربہ یہ بتاتا ہے کہ نہ یہ قوم اور نہ ہی اس کے کرتا دھرتا اس جلتی شمع سے روشنی لینے کی اہلیت رکھتے ہیں . وہ اپنی ناک کی سیدھ سے آگے دیکھ ہی نہیں سکتے . عمران اکیلا اب کیا کرے؟ جب ہر کسی کا تہیہ ہے کہ منہ سے اسلام اسلام کی رٹ لگائے رکھنی ہے ، کرتوت بدلنے نہیں ہیں اور دنیا ادھر سے ادھر ہو جائے کسی قیمت پر سدھرنا نہیں ہے
قدرت کب تک ان کو موقع دیتی رہے گی ؟؟ یہ سوچ کر ہی خوف آنے لگتا ہے
 

Notpersonal

Minister (2k+ posts)
There are no midterm elections , both Q and MQM not gonna leave from their seats , u can learn this from the history
 

Xiggs

Chief Minister (5k+ posts)
Agar Imran Khan ne governance aur public relief ke baray mai kuch nahi kiya to uska muqabla pakistani awam se hoga...aur awam woh hai jiske samne baday baday generals ki bhi patloon geeli hojati hai.
 

Xiggs

Chief Minister (5k+ posts)
There are no midterm elections , both Q and MQM not gonna leave from their seats , u can learn this from the history
Lekin history mai nawaz aur zardari govt. thi aur woh khoob rishwat aur khuli corruption kerte thay...agar Imran Khan ne bhi history ko follow kia to wohi hoga jo nawaz zardari ka hua.. saath saath MQM aur PMLQ ko bhi history se seekhna hoga. Abhi to PMLQ ne 5-6 seats nikal bhi li...ab to uska bhi koi chance nahi.
 

3rd_Umpire

Minister (2k+ posts)
Beautiful article but qoom e youthia ko kon samjhaye
جس دن تم اپنی بےبے سے پھوجیوں کے سنِفر ڈاگز کو اُتار دو گے، اُس دن
شاید ہماری دماغ کی بتّی بھی جل اُٹھے
 

3rd_Umpire

Minister (2k+ posts)

حیدر! اب ان سچی اور کڑوی باتوں پر بندہ کیا تبصرہ کرے ؟؟؟ پچھلے چند ہفتوں کے واقعات سے دل بہت مغموم ہے اور کچھ لکھنے کو دل ہی نہیں چاہتا . آپ کی بڑی ہمت ہے کہ ابھی بھی شمع روشن کر رکھی ہے . ستم ظریفی یہ ہے، اور تجربہ یہ بتاتا ہے کہ نہ یہ قوم اور نہ ہی اس کے کرتا دھرتا اس جلتی شمع سے روشنی لینے کی اہلیت رکھتے ہیں . وہ اپنی ناک کی سیدھ سے آگے دیکھ ہی نہیں سکتے . عمران اکیلا اب کیا کرے؟ جب ہر کسی کا تہیہ ہے کہ منہ سے اسلام اسلام کی رٹ لگائے رکھنی ہے ، کرتوت بدلنے نہیں ہیں اور دنیا ادھر سے ادھر ہو جائے کسی قیمت پر سدھرنا نہیں ہے
قدرت کب تک ان کو موقع دیتی رہے گی ؟؟ یہ سوچ کر ہی خوف آنے لگتا ہے
ڈاکٹر صاحب' آپ جیسا حال میرا بھی ہے، لیکن میں اپنی رائے میچ ختم ہونے سے قبل قائم نہیں کرتا
اور آپکو معلوم ہے کہ میچ پانچ سال کا ہے،، بعض اوقات خراب اوپننگ کے میچ کا اختتام بھی
ایک شاندار جیت کی شکل میں نکل آتا ہے،، لھٰذا جہاں ھم نے دوسری پارٹیوں کو 50 سال دئیے وہاں کپتان کے 5 سال تک کے انتظار کا حق تو بنتا ہے ناں
 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)
کیا مڈ ٹرم الیکشن میں عمران خان کا مقابلہ آرمی جنرلوں سے ہو گا ؟
( پارٹ ٢ )



ایک طرف انڈیا اور پاکستان کی افواج ایک دوسرے کے خلاف صف آراء ہیں اور دوسری طرف پاکستان میں عمران خان کے خلاف انکے اپنے اتحادی اور اپوزیشن والے اپنے آقاؤں کی سرپرستی میں صف بندی کر رہے ہیں . حالیہ ماضی میں تمام تر کرپشن اور نااہلیوں کے باوجود پیپلز پارٹی اور شریف لیگ نے اپنے ٹرم پورے تو ضرور کئے مگر اس تمام عرصے میں جمہورت نے بد ترین انتقام کے طور پر پاکستان کی معیشیت اور انتظامیہ کو جان کنی کی حالت میں چھوڑ کر میڈیا کے توسط سے تمام ملبہ عمران خان کی نوزائندہ حکومت پر ڈال کر بری الزمہ ہو گئے . پیپلزپارٹی دور میں "حکومت آج گئی کے کل گئی" کا راگ میڈیا کے ہیجان خیزی میں متبلا ڈاکٹر شاہد مسعود کی سربراہی میں الاپا جاتا رہا مگر سائیکل سے شیر بننے والی پارٹی کی باری پانچ سال بعد ہی آئی . ٢٢ سال جدوجہد کرنے والا لون وارئیر عمران خان کو وہی فوجی راگ سنوایا جا رہا جو آج اپنی تمام تر نیک نامی اور ساکھ کے باوجود کسی کو برداشت نہیں ہو رہا ہے



٢٠١٣ کے الیکشن میں بھر پور رگنگ کی گئی . اس الیکشن میں لامتناہی شواہد کی بنیاد پر میں نے ایک تھریڈ بنائی تھی . اس الیکشن سے پہلے عمران خان اپنی عوامی سپورٹ کی بنیاد پر امریکہ اور فوجی جنرلوں کو تڑیاں دیتے رہے اور نتیجہ میں حکومت سے محروم کر دئے گئے . الیکشن انجینرنگ کے تحت لسانی بینادوں پر تمام فریقین کو انکے صوبوں میں حکومت دے کر خاموش کیا گیا .حیران کن طور پر مولانا فضل الرحمان کو قومی کیک سے حصہ نہ ملا جسکا وعدہ اب ان سے کر لیا گیا ہے . تحریک انصاف کی حکومت اتے ہی حیران کن طور پر زرداری اور شریف گروپ نے سلیکٹر اور سلیکٹڈ پر متواتر بیان بازی شروع کر کے الیکشن میں رگنگ کا ڈائریکٹ الزام فوج پر لگا دیا . یہ سلسلہ اس وقت موقوف کیا گیا جب نواز زرداری کو سلیکٹرز نے عدالتوں کے آڑ میں ایک مرتبہ پھر ڈیل دی . نواز شریف نے اپنے ٨٠ سیاستدان جنرل باجوہ کو دے کر ملک میں جاری پولیٹیکل انجینرنگ اور ڈیل پر مہر ثبت کر دی . جن سیاستدانوں نے ووٹ نہیں دئے انھیں ٢٠١٣ کی سلیکشن بھولنی نہیں چاہئے ، وہ خواہ مخواہ گلیڈیٹر مت بنیں . ایک ناگزیز جنرل نے اپنی ایکسٹینشن کے لئے کھربوں کی کرپشن کو ایک مرتبہ پھر لپیٹ کر تاریخ میں آرمی کو بھر پور بدنام کیا . اپنی عاد ت کے مکمل برعکس عمران خان عزت سادات کو بچانے کی خاطر چپ رہنے میں عافیت سمجھی . خود بے عزتی جیھل لی مگر اپنے منصب کا خیال رکھا

٢٠١٨ کے الیکشن سے پہلے عمران خان کی عمر ٦٦ برس کی ہو چکی تھی اور انھیں اندازہ ہو چکا تھا کے اسٹیبلشمنٹ کی مدد کے بغیر وہ اقتدار میں نہیں ا سکتے لھذا" اپنا بھی ٹائم آئے گا" کے مصداق انہوں نے اسٹیبلشمنٹ سے مصالحت کی اور ان سے ہاتھ ملا کر مصالحتوں اور یو- ٹرنز کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا . عمران خان اپنے مخالفین کو چیک میٹ دے چکے تھے اور انھیں عوام پر بھروسہ کرنا چاہئے تھا مگر پولیٹکل انجینرنگ کا توڑ انکے پاس نہ تھا . پارٹی لیول پر بے تحاشا گروپ اور دھڑے بندیاں تھیں جس نے عمران خان کی طاقت کو انتہائی کمزور کر دیا تھا . گروپ اور دھڑے بندی پر مفصل بلاگ میں پہلے ہی لکھ چکا ہوں . عمران خان کی پارٹی میں پیشہ ور اور سدا بہار فٹ فار آل سیاستدان ڈالے گئے تاکے انکو کنٹرول کیا جا سکے . اپوزیشن پارٹیز کے مطابق ٢٠١٨ میں الیکشن انجینرنگ کی گئی . عمران خان کو چند نششتوں کے فرق سے مخلوط حکومت دی گئی تاکے ایک شہ زور گھوڑے کو بوقت ضرورت لگام دیا جا سکے . مخصوس بلوچی ، کراچی کے بہاریوں اور پنجاب کے چودھریوں کی مدد سے حکومت پر پریشر رکھا گیا . سینیٹ چیئرمین کے الیکشن اور پھر عدم اعتماد کی تحریکیں اس تمام الیکشن انجینرنگ کا مونہ بولتا ثبوت اور ناقابل تردید شواہد ہیں



پاکستان کے بدترین سیاستدانوں ، بزنس کلاس اور افسروں کو جنرل باجوہ نے عدالتی آڑ اور قانون سازی میں جو ڈیل دی ہے وہ کسی غداری سے کم نہیں . بظاھر یہ ڈیل تلخ ترین زمینی حقائق کو سامنے رکھ کر دی گئی ہے گزشتہ دس سالوں کی کھلی لوٹ مار سے پاکستان الیکشن سے پہلے ہی دیوالیہ ہو چکا تھا اور انے والے ٤ سالوں میں حکومت وقت نے ٣٧ ارب ڈالر واپس کرنا تھا . قرض اور سود واپس کرنے کے لئے موجودہ حکومت اپنے پہلے سال ہی ١٠ ارب ڈالر قرض لے چکی ہے . انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ کے مطابق ٢٠٢٣ تک پاکستان کے بیرونی قرض ١٣٠ بلین ڈالر تک پہنچ جائیں گے یعنی ٣٥ بلین ڈالر ( ٣٦ فیصد ) زیادہ ہو جائیں گے . عمران خان کی تمام الیکشن مہم الیکشن رگنگ ، کرپشن ، قرضوں اور بد انتظامی کے گرد گھومتی تھی . اگر شیر نہیں اتا اور حکومت اسی حالت میں اپنا وقت پورا کر جاتی ہے تو وہ قرضوں میں ٣٧ ارب ڈالر کے اضافے کا وہ کیسے دفاع کرے گی جسکا واویلا یہ لوگ مچاتے رہے ہیں . عوام میں خوف ہراس نہ پھیلے ، تحریک انصاف کی حکومت حقیت تو بتانے سے رہی اور لوگ حقیقت جاننے سے رہے . انھیں تو محض مہنگائی کا رنڈی رونا ہے اور وہ یہ سوچنے سے معزور ہیں کے جسطرح سرطان جیسے موذی کے پیچھے سگریٹ نوشی ہوتی ہے اسی طرح مہنگائی ، بنیادی سہولتوں کی عدم موجودگی اور بیروزگاری کے پیچھے کرپشن کی عفریت ہوتی ہے جسکا واضح مثالیں دنیا میں سب سے تیل پیدا کرنے ممالک نائجیریا اور وینزوالا کی ہیں. پاکستانیوں کی نسلوں کی بقاء خطرے میں ہے اور وہ مہنگائی کا رنڈی رونا رو رہے ہیں . انڈیا نے پاکستان پر پریشر ڈال کر دفاعی اخراجات میں بے تحاشہ اضافہ کر دیا ہے جس سے پاکستان کی مہنگے قرضے لینے پڑ رہے ہیں اور مہنگائی عوام کو ٹرانسفر ، بدنامی اور رسوائی حکومت کے کھاتے میں ڈالی جا رہی ہے .

پاکستان کو جس ڈھٹائی سے لوٹا گھسوٹا گیا ہے ، یہ واضح ہو گیا تھا کے اسکے پیچھے غیر ملکی ایجنڈا ہے اور عالمی طاقتیں پاکستان کی معشیت کو کمزور اور تنہا پا کر حملہ کر دیں گی جس پر میں مسلسل لکھ رہا تھا . آخر کار عالمی طاقتیں انڈیا پر ایک جاہل کو مسلط کر کے اب پاکستان کے خلاف استعمال کرنا چاہ رہے ہیں اور اس کسمپسری کی حالت میں ہماری شرلیوں کی حثیت شب برات کے پٹاخے سے زیادہ نہیں رہ گئی ہے . جتنی ایک ٧٣ سالہ شخص کی سیکس لائف ہوتی ہے اتنی دیر ہم لوگ جنگ کرنے کے قابل ہیں . ان حالات میں پاکستان کی ملٹری کو کاروبار حکومت ہر حال میں چلانا تھا . قسمت کی ستم ظریفی جن لوگوں نے پاکستان کو آخری سانسیں لینے پر مجبور کیا ، انھیں ہی کاروبار مملکت چلانے کے لئے جنرل باجوہ صاحب نے آکسیجن دے ایک نئی زندگی دی . اسلام اور قانون کا نہ صرف ایک مرتبہ پھر مذاق اڑایا گیا بلکے تذلیل بھی کی گئی
( جاری ہے )

حیدر! اب ان سچی اور کڑوی باتوں پر بندہ کیا تبصرہ کرے ؟؟؟ پچھلے چند ہفتوں کے واقعات سے دل بہت مغموم ہے اور کچھ لکھنے کو دل ہی نہیں چاہتا . آپ کی بڑی ہمت ہے کہ ابھی بھی شمع روشن کر رکھی ہے . ستم ظریفی یہ ہے، اور تجربہ یہ بتاتا ہے کہ نہ یہ قوم اور نہ ہی اس کے کرتا دھرتا اس جلتی شمع سے روشنی لینے کی اہلیت رکھتے ہیں . وہ اپنی ناک کی سیدھ سے آگے دیکھ ہی نہیں سکتے . عمران اکیلا اب کیا کرے؟ جب ہر کسی کا تہیہ ہے کہ منہ سے اسلام اسلام کی رٹ لگائے رکھنی ہے ، کرتوت بدلنے نہیں ہیں اور دنیا ادھر سے ادھر ہو جائے کسی قیمت پر سدھرنا نہیں ہے
قدرت کب تک ان کو موقع دیتی رہے گی ؟؟ یہ سوچ کر ہی خوف آنے لگتا ہے
کیا کرتے ہو یار حیدر ایمام --- آج کل عمران خان کے خلاف سچ بولنے کا فیشن چلا ہوا ہے کیا ؟؟؟
نہ کیا کرو فیشن کے پیروی --- یہ کیوں لکھا ہے تم نے ؟؟؟؟


٢٠١٨ کے الیکشن سے پہلے عمران خان کی عمر ٦٦ برس کی ہو چکی تھی اور انھیں اندازہ ہو چکا تھا کے اسٹیبلشمنٹ کی مدد کے بغیر وہ اقتدار میں نہیں ا سکتے لھذا" اپنا بھی ٹائم آئے گا" کے مصداق انہوں نے اسٹیبلشمنٹ سے مصالحت کی اور ان سے ہاتھ ملا کر مصالحتوں اور یو- ٹرنز کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا .

 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)
ڈاکٹر صاحب' آپ جیسا حال میرا بھی ہے، لیکن میں اپنی رائے میچ ختم ہونے سے قبل قائم نہیں کرتا
اور آپکو معلوم ہے کہ میچ پانچ سال کا ہے،، بعض اوقات خراب اوپننگ کے میچ کا اختتام بھی
ایک شاندار جیت کی شکل میں نکل آتا ہے،، لھٰذا جہاں ھم نے دوسری پارٹیوں کو 50 سال دئیے وہاں کپتان کے 5 سال تک کے انتظار کا حق تو بنتا ہے ناں
اب تم نے میری ماں کو گالیاں دینی ہے - اس لئے تمہارے ساتھ منہ لگانے سے ڈرتا ہوں -- لیکن میرے دل میں ماں دھتری بھی بستی ہے - اس لئے مجبور ہوں تمہیں یہ کہنے پر کہ ہماری بدقسمتی ہے کہ تم سارے اور تمہارا کھوتا صرف میچ کھیلنے سے اگے کچھ کرنے کے قابل نہیں - تم لوگوں کی نہ کوئی ذہنی صلاحیت تھی نہ ہے --- جیسے اوپر چاچے حیدر ایمام نے لکھا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ نے غلطی کر دی جو مسلسل بکواس کی زد میں آ کر بڈھے کھوتے کو حکومت دے دی - جو نہ اب میچ کھیلنے کے قابل بھی نہیں - اب صرف دولتیاں مارنے کے قابل ہے - جو اس نے غریب عوام کو ہی مارنی شروع کر دی ہیں

آخر میں نے دعا کرتا ہوں کہ تمہاری ماں کو الله دونوں جہانوں میں عزت بخشے
 

3rd_Umpire

Minister (2k+ posts)
اب تم نے میری ماں کو گالیاں دینی ہے - اس لئے تمہارے ساتھ منہ لگانے سے ڈرتا ہوں -- لیکن میرے دل میں ماں دھتری بھی بستی ہے - اس لئے مجبور ہوں تمہیں یہ کہنے پر کہ ہماری بدقسمتی ہے کہ تم سارے اور تمہارا کھوتا صرف میچ کھیلنے سے اگے کچھ کرنے کے قابل نہیں - تم لوگوں کی نہ کوئی ذہنی صلاحیت تھی نہ ہے --- جیسے اوپر چاچے حیدر ایمام نے لکھا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ نے غلطی کر دی جو مسلسل بکواس کی زد میں آ کر بڈھے کھوتے کو حکومت دے دی - جو نہ اب میچ کھیلنے کے قابل بھی نہیں - اب صرف دولتیاں مارنے کے قابل ہے - جو اس نے غریب عوام کو ہی مارنی شروع کر دی ہیں

آخر میں نے دعا کرتا ہوں کہ تمہاری ماں کو الله دونوں جہانوں میں عزت بخشے
لگتا ہے تجھ حرامزادے کو پھر سے بےبے نے ڈانٹا ہے، کہ

کپتان کے شیرو، اور موٹو سے اپنی بُنڈ مروا کر آگئے ہو، اور بےبے کے لئے پھوجیوں کے سنِفر ڈاگز اپنے ساتھ نہیں لے کر گئے
 

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
ڈاکٹر صاحب' آپ جیسا حال میرا بھی ہے، لیکن میں اپنی رائے میچ ختم ہونے سے قبل قائم نہیں کرتا
اور آپکو معلوم ہے کہ میچ پانچ سال کا ہے،، بعض اوقات خراب اوپننگ کے میچ کا اختتام بھی
ایک شاندار جیت کی شکل میں نکل آتا ہے،، لھٰذا جہاں ھم نے دوسری پارٹیوں کو 50 سال دئیے وہاں کپتان کے 5 سال تک کے انتظار کا حق تو بنتا ہے ناں


استاد جی! عمران کی نیت پر تو نہ پہلے کوئی شک تھا نہ انشاءاللہ کبھی ہو گا . سورج مغرب سے نکل سکتا ہے لیکن عمران ہار ماننے والا نہیں ہے . وہ اپنی جان لڑا کر آخر تک لڑتا رہے گا . افسوس عمران کے ارد گرد پیدا کیے جانے والے حالات پر ہے . جو بھی اس کا ذمہ دار ہے گلہ ان سے ہے
 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)
لگتا ہے تجھ حرامزادے کو پھر سے بےبے نے ڈانٹا ہے، کہ

کپتان کے شیرو، اور موٹو سے اپنی بُنڈ مروا کر آگئے ہو، اور بےبے کے لئے پھوجیوں کے سنِفر ڈاگز اپنے ساتھ نہیں لے کر گئے
نہیں --- تم اس قابل نہیں ہو کہ تمہیں کوئی سچ بھی سنایا جا سکے - چل جا الله تجھے خوش رکھے
 

3rd_Umpire

Minister (2k+ posts)


استاد جی! عمران کی نیت پر تو نہ پہلے کوئی شک تھا نہ انشاءاللہ کبھی ہو گا . سورج مغرب سے نکل سکتا ہے لیکن عمران ہار ماننے والا نہیں ہے . وہ اپنی جان لڑا کر آخر تک لڑتا رہے گا . افسوس عمران کے ارد گرد پیدا کیے جانے والے حالات پر ہے . جو بھی اس کا ذمہ دار ہے گلہ ان سے ہے
جہاں مجھے اس بات پر یقین ہے کہ کپتان ناممکنات کو ممکن کرنے
کی صلاحیّت رکھتا ہے، وہاں اس بات پر بھی یقین کہ

فوج میں موجود"نواز-زرداری ریسکیو مافیا" کا بھی اُنہوں نے کچھ سوچ رکھا ہوگا
 

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
کیا کرتے ہو یار حیدر ایمام --- آج کل عمران خان کے خلاف سچ بولنے کا فیشن چلا ہوا ہے کیا ؟؟؟
نہ کیا کرو فیشن کے پیروی --- یہ کیوں لکھا ہے تم نے ؟؟؟؟


٢٠١٨ کے الیکشن سے پہلے عمران خان کی عمر ٦٦ برس کی ہو چکی تھی اور انھیں اندازہ ہو چکا تھا کے اسٹیبلشمنٹ کی مدد کے بغیر وہ اقتدار میں نہیں ا سکتے لھذا" اپنا بھی ٹائم آئے گا" کے مصداق انہوں نے اسٹیبلشمنٹ سے مصالحت کی اور ان سے ہاتھ ملا کر مصالحتوں اور یو- ٹرنز کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کیا .


راجے توں کدی گل نوں سمجھیں نہ بس اپنا پٹواری لچ تلن آ جایا کر . تسبیح پھڑ تے حیدر دی گل نوں سمجھن واسطے پوری تسبیح پھیر تے سو وری پڑھ شاید تیرے کھوپڑے اچ کوئی گل آ جائے

ہور سنا ٹھیک ایں ؟؟؟ روائیتی پٹواری حرام توپیاں جاری این ناں ؟؟؟ شاباش جاری رکھو
 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)


استاد جی! عمران کی نیت پر تو نہ پہلے کوئی شک تھا نہ انشاءاللہ کبھی ہو گا . سورج مغرب سے نکل سکتا ہے لیکن عمران ہار ماننے والا نہیں ہے . وہ اپنی جان لڑا کر آخر تک لڑتا رہے گا . افسوس عمران کے ارد گرد پیدا کیے جانے والے حالات پر ہے . جو بھی اس کا ذمہ دار ہے گلہ ان سے ہے
ڈاکٹر صاحب کس نے پیدا کے ہے ایسے حالت --- کیا عمران خان کے فلیر کی کہانی پہلے مہینے سے نہیں شروع ہو گی تھی جب اس شخص نے یہ بکواس کی تھی ؟؟؟ --- میں تو حیران ہو گیا تھا یہ پڑھ کر --- انتظار میں تھا کہ ڈیمیج کنٹرول کے لئے عمران خان سخت سزا دے گا اس شخص کو --- پر اس بیچارے کے پتا ہی نہیں تھا کہ اس شخص نے کیا کیا ہے -- اور نہ آج تک سمجھ سکا ہے بیچارہ ؟؟؟
Pakistan rethinks its role in Xi’s Belt and Road plan- Abdul Razaaq Dawood
Sep-09/2018

آپ کو پتا ہے رسول الله(ص) حضرت ابو بکر جیسے صاف نیت ساتھی کے ہوتے ہوۓ بھی کیوں دعا مانگی تھی کہ عمر بن عبدالمطلب یا عمر بن خطاب میں سے کویہ ایک عمر میری جھولی میں ڈال دے ؟؟؟ اس لئے کہ بڑی سلطنت چلانے کے لئے ایمان کے ساتھ کچھ اور صلاحیتوں کی بھی ضرورت ہوتی ہے جو آقا (ص ) کو نظر آرہی تھیں
 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)


راجے توں کدی گل نوں سمجھیں نہ بس اپنا پٹواری لچ تلن آ جایا کر . تسبیح پھڑ تے حیدر دی گل نوں سمجھن واسطے پوری تسبیح پھیر تے سو وری پڑھ شاید تیرے کھوپڑے اچ کوئی گل آ جائے

ہور سنا ٹھیک ایں ؟؟؟ روائیتی پٹواری حرام توپیاں جاری این ناں ؟؟؟ شاباش جاری رکھو
😄 😁😁
جی جی جاری ان --- ریوڑ وچوں بار نکل کے اجے ہی کھلوتے ہوے آں جناب
حیدر ایمام نو میں ھمیشہ پڑھنا واں جناب --- تھوڑےےےےے جے سمجھدار انصافیاں وچوں حک اے
 
Sponsored Link

Latest Blogs Featured Discussion اردوخبریں