چلو تھوڑا آرام کر لو عمرانیو - کرنٹ اکاونٹ کی ڈگ ڈگی ذرا بند ہو گی ہے

Will_Bite

Chief Minister (5k+ posts)
I may have typed it as Game changer, You said it is the Game of numbers. You have to excuse me because I am being pounded with chittars from all over. So if I make some typos, don't dig the tunnal through it. Even though I know you are expert in it and all you need is to be above in discussions. the facts don't matter to you.
And hell we had no place to stock our wheat and there was no shortage of sugar at the time of Choors. Do you want me to rub it at your face with the proofs or should I leave it ???
I said, "its not just a game of numbers", in reference to your number gimmickry. Dont put words in my mouth.....

Instead of taking credit for something PMLN had nothing to do with, use a bit of common sense and discuss why wheat production fluctuates in Pakistan. Biggest reason is variation in rainfall, which causes delayed planting, delayed harvests, and lost crops. Occasionally we have timely harvests, which yield bumper crops. Nothing to do with anything pmln has done.
Its a bit rich of you talking about sugar, considering PMLN and PPP are the biggest culpriits in this. PTI has always been chastised for its links to JKT, but its on record that JDW mills are one of the very few that are current on their payments to farmers, and even now, are selling sugar at govt support rates, as opposed to crooks in Sindh, who are your chaddi buddies these days.

As Gordon Gecko said, "When you stop telling lies about me, I'll stop telling the truth about you."
 

s.shahid

MPA (400+ posts)
Two things to answer here
1: Nawas was in power (in center) for 2.5Y, 2.5Y, and 4Y. Your IK and his spokes people , are hypocrites of extreme level. And his disciples are Jahils of Extreme level who buy these buzz words. And one of the buzz words is 40 or 30 years of power. The PMLN govts in Punjab meanth nothing until the max powers were divulged to provinces under 18th Amendment. 30-40 years power slurr IS NOTHING BUT YOUR JAHALUT WHICH YOU ARE ALSO VICTIM OFF.
2: IPPS were brainchild of Benazeer bhutto. At the time when offer was floated it was the most expansive offer in the world. It was 6.5 cents per KWH. The investors were invited under some guarantees, which preseeding Govts could not avoid.
It is not easy to find the news of that time, as there was no net. But still I was able to find two links which should give you true picture. But if you don't trust them I cant help you with this sickness.
Link-1 Dated Oct-6 1994
Quote:
Also, the government's decision to assure investors a bulk
tariff rate of 6.5 cents per kilowatt hour for electricity
generated in such new plants marks one of the most attractive
incentives the Pakistan government has ever offered.


https://www.govinfo.gov/content/pkg/CREC-1994-10-06/html/CREC-1994-10-06-pt2-PgE203.htm
Link-2: Dated Oct-6, 2002
Benazeer Defends the rate of 6.5 cents per unit




Even if they were under CPEC, who the hell was making CPEC happen -- what exactly you mean to say. And Please correct your record, one of the three RLNG plants was not the CPEC project, it is totally Punjab Govt project. The NFC award now allows provinces to generate their own power. And the Rahim Yar Khan Coal power plant was also built under same umbrella. What the hell are the options for Punjab to generate its power other than thermal -- please answer me ??
I know you can jump and cling on the coal as a pollutant. But Note that we are not producers of gas or LNG, three plants were enough to consume all of the LNG imports. And we have one of the world's largest coal reserves sitting in Thar. We should never utilize them ??? And please note that there are scavengers used these days which reduce the emissions to less than 20% compared to what the old coal plants used to.

1. From 1980s, PMLN has been in power either in province or center or both except from 1999 to 2007. Last stint was of 5 years and not 4 years (waisay bhi Abbasi ka wazir-e-azam tu nawaz hi tha na). And after governance of straight 10 years in Punjab from 2008 - 2018, and you know what were the last words of shahbaz before the elections compaign was to over at 12am on 23rd July 2018, main patwari aur police kay nazam say bagawat kerta hoon..

2. Brainchaild of benazir but your leader nawaz continued it, here the list of IPPS that were commissioned in the tenure of Nawaz between 1997 to 1999.


During 1980s and 1990s and 2005 onwards nawaz was always busing conspiring with army and other political parties to gain power but he was least bothered about interest of Pakistan, if consensus could have been reached on so called charter of democracy, coalition government, PDM etc etc why not on Kalabagh dam? PMLN wasting billions of rupees of senseless infrastructure projects like metros, instead they could have pumped same money on building a dam. What was the main priority, cheaper electricity or subsidized metros.

3. Point is simple, CPEC is part of China's Belt and Road (2013) Initiative and anyone who would have been in government in 2014, would have welcomed it. It would have happened even if PMLN was not in power, but they could have better negotiate and planned. Have already given you many examples before and can give more.

4. Your quote ''One of the three RLNG plants was not the CPEC project, it is totally Punjab Govt project.''

After 18th amendment provinces were independent to produce their own electricity. 18th amendment happened in 2010, and your leader showbaz sharif was busy doing showbazi at minar -e pakistan instead of generating power, if he had done so, you would not have been scratching your butt in the dark when he was doing showbazi of meri naam badal dena.

5. Your Quote '
And the Rahim Yar Khan Coal power plant was also built under same umbrella. What the hell are the options for Punjab to generate its power other than thermal -- please answer me ?? I know you can jump and cling on the coal as a pollutant. But Note that we are not producers of gas or LNG, three plants were enough to consume all of the LNG imports.

I guess you meant sahiwal coal power plant because Rahim Yar Khan was a proposed coal power plant which have been shelved now.

Effects of Sahiwal Coal Power Plants: yeahi wohi plant hai jiss ki nawaz nay sahiwal kay logon ko mubarak baad di thi.

LIFE UNDER THE SHADOW OF A COAL-FIRED POWER PLANT

6. Your quote:
And we have one of the world's largest coal reserves sitting in Thar. We should never utilize them ??? '

Sahiwal power plant is being run on imported coal, and proposed Rahim yar Khan was also to be run on imported coal. I guess, that speaks for itself.

Despite spending Rs4.9 billion, Dr Samar Mubarakmand’s Underground Coal Gasification (UCG) project did not transmit a single megawatt to the national grid....

 

s.shahid

MPA (400+ posts)
Cooking books is another of the Buzz word that IK has taught to hos Jahil disciples. The IMF, world bank, Fintch, Standard and poor, and all of the monitoring organizations are not idiots like Imran Khan's followers. This is the sickness that I cannot help with.

And I am enjoying the discussion with you. Seems like it is the first one

Pasha disputes Dar's claim of economic growth


Oh before you Claim Hafeez Pasha to be PTI's mouthpiece and ask me to look somewhere else, I had a conversation with someone in my family recently, who too is a die heart PMLN supporter and hates Imran to the core. In one of our discussion on economy he advised me to and I quote : 'Ask Hafiz Pasha, he's absolutely neutral!!! But, youthians won't understand him'.

IMF:

For the record: IMF blows holes in Ishaq Dar’s claims



IMF responds to the Ishaq Dar's claim of best finance minister award​



Moody’s downgrades Pakistan’s rating outlook to negative



This Btw is June 2018, at the end of PMLN 5 year tenure

Can post many more links about Dar figure fudging but that will take some time,

Waisay Shukar Hai for the first time you acknowledged dar stupid decision to keep rupee over valued was indeed a stupid decision, aista aista yeah bhi maan jao gaay why that stupid decision is still hurting the economy and what other things dar did to bring Pakistan to bankruptcy.
 

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)
قبلہ راجہ صاحب، آپ سے بھلا میں ناراض کیوں ہونگا۔ میں نے ہمیشہ اپنا دیانتدارانہ موقف بیان کیا ہے۔ اور جب دوسری طرف سے کچھ بے مقصد اور بچکانہ کمنٹس ہوں اور مقصد صرف سیاسی بحث کرنا ہواور اسے ہر حال میں جیتنا ہو تو میں اپنی ہار مان کر چپ کر جاتا ہوں۔ تحریک انصاف پر تنقید کے لئے بہت سے دوسرے پہلو ہیں جہاں آپ حق بجانب بھی ہو سکتے ہیں لیکن جس موضوع کو آپ نے چھیڑا ہے اور کچھ دیگر موضوعات جو آجکل اپوزیشن پوائینٹ سکورنگ کے طور استعمال کرتی ہے وہاں اگر دلیل سے بات کی جائے تو اپوزیشن چاروں شانے چت ہارتی ہے۔



کرنٹ اکاؤنٹ سے پہلے ذرا ایل این جی پر بات کرتے ہیں کہ اس کی بہت لے دے ہے۔ اب دیکھیں اپوزیشن اور جیو گروپ نے زمین اور آسمان کے قلابے ملا رکھے ہیں کہ وقت پر گیس نہی خریدی۔ اب ان کا مدعا ذرا سمجھیں کہ یہ کہہ رہے ہیں کہ گورنمنٹ نے سپیکولیٹ کیوں نہی کیا۔ یعنی جون میں فیوچر ایل این جی سات روپئے فی ڈالر ایم ایم بی ٹی یو تھی تو اس وقت نہی خریدی جبکہ اب یہ قیمت ۱۲ ڈالر ہے۔ شاید آپ جانتے ہوں کہ فیوچرز خریدنا ایسا ہی ہے کہ جیسے جوا کھیلا جائے یا پھر جیسے شیئرزمیں اپنا پیسہ انویسٹ کر دیا جائے جہاں یہ پرائس اوپر بھی جا سکتی ہیں اور نیچے بھی۔۔ جون میں ڈیلائٹ جیسی کمپنیوں کی آپ آئل فورکاسٹ کی رپورٹس پڑھ لیں کہ بڑے سے بڑے پھنے خان کا بھی یہ کہنا تھا کہ دسمبر میں آئل پرائسز ساڑھے بیالیس ڈالر سے اوپر نہی جائیں گیں لیکن آج آئل پرائسز چھپن ڈالرز پر کھڑی ہے۔ ایل این جی کی پرائسز تیل سے منسلک ہیں تو آج اگر تیل بیالیس پر ہوتا تو ایل این جی کی قیمت بھی ساڑھے چھ ڈالر ہوتی۔ بات یہ ہے کہ اس وقت تو اپوزیشن کے کسی کھڑپینچ نے نہی کہا کہ ہمیں فیوچرز خرید لینا چاہیئے کیونکہ انہیں معلوم تھا کہ چین سے کووڈ کنٹرول نہ ہوا تو آئل پرائس ۳۰ پر آ سکتی ہے اور ایل این جہ پانچ ڈالر کی ہوگی۔ لیکن اب جب تیل کی قیمت بڑھ گئی تو یہ روز چیخ چیخ کر کہہ رہے ہیں کہ اس وقت ایل این جی نہ خرید کر چار ارب روپئے کا نقصان کر دیا۔ یعنی اس بات پر احتجاج کر رہے ہیں کہ حکومت نے دنیا میں بڑے بڑے ایکسپرٹس کی رائے کے خلاف جاتے ہوئے اسی وقت ڈیل کرنے کا جوا کیوں نہی کھیلا۔ سوال یہ ہے کہ اگر چین میں کووڈ کی حالت امریکہ اور یورپ کی طرح کنٹرول نہ ہوسکتی اور آج آئل پرائس بیس سے پچیس اور این جی پرائس پانچ ڈالر ہوتی اور گورنمنٹ نے اس وقت سات ڈالر میں خرید لی ہوتی تو کیا یہ اپوزیشن یہ نہ کہہ رہی ہوتی کہ گورنمنٹ نے کمیشن کھایا ہے اور اس وقت مہنگی ایل این جی خرید لی باوجود اس کے کہ ڈلائٹ جیسی دنیا کی بڑی ایکسپرٹ کمپنی کی فورکاسٹ کہہ رہی تھی کہ پرائسز مزید گریں گیں؟ اس مثال سے کہنا یہ چاہتا ہوں کہ سیاسی بحث اور ہوتی ہے اور نالج بیسڈ مختلف۔



۔

اسی طرح کی بات آپ کرتے ہیں کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر سے صفر اس حکومت نے نہی کیا بلکہ گروتھ رک جانے کی وجہ سے امپورٹ رکی ہے اور اس کی وجہ سے کرنٹ اکاؤنٹ صفر ہو گیا۔ اب یہ ایک مہا بیوقوفی کی بات ہے اور لگتا ہے کہ لکنے والے نے گورنمنٹ پالیسی۔ آئی ایم ایف ڈیل اور پچھلے دو اڑھائی سال میں کی جانے والی اکنامک تبدیلیوں کو سٹڈٰی ہی نہی کیا۔ اس لئے آپ کے اس لکھے پر بات بھی کرنا کچھ عجیب سا لگتا ہے۔ بس یہ بتا سکتا ہوں کہ ایسا ہو نہی سکتا کیونکہ ڈیمانڈ میں کمی نہی آئی، ایم ون میں ذرا برابر کمی نہی آئی۔ ڈیمانڈ میں گروتھ نہ بھی ہو توجس نہج پر وہ ہے وہاں پر ۲۰ ارب ڈالر کا خسارہ ہے۔

۔

دوسری بات یہ کہ آپ کو اس میکانزم کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ روپئے کی قیمت گرنے کی وجہ کیا تھی اور یہ کہ کرنٹ اکاؤنٹ کو مینیج کرتے ہوئے سود کی شرح کیوں بڑھائی جاتی ہے اور اس پراسیس میں مہنگائی کیوں ہوتی ہے۔ آپ کو شاید یاد ہو کہ جب زرداری کی حکومت بنی تو ہمارا کرنٹ اکاؤنٹ آٹھ ارب ڈالر مائنس تھا، اور جب اسے فکس کرنے کی ضرورت پڑی تو ۲۰ فیصد انفلیشن تھا اور ۲۰ فیصد کے قریب ہی سود کی شرح۔ اس میں زرداری کا کوئی قصور نہی تھا اور حکومت جو کر رہی تھی وہی وقت کی ضرورت اور مجبوری تھی۔ لوگوں نے مہنگائی سے تنگ آکر زرداری کو خوب کوسا اور پنجاب سے پی پی پی کا صفایا کر دیا۔ لیکن زرداری حکومت نے کرنٹ اکاؤنٹ کو کنٹرول کیا اور اپنے پہلے تین سالوں میں کوئی گروتھ نہ دکھا سکی۔ جاتے ہوئے وہ نواز شریف کو اڑھائی ارب کا کرنٹ اکاؤنٹ دے کر چلا گیا۔ اس کے بعد میاں صاحب نے جو کیا وہ بیان کرنے کی ضرورت نہی۔

۔

آپ یہ ذہن میں رکھ لیں کہ چاہے آپ جو بھی خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ ایک حد سے تجاوز کرے گا تو ملک کی تباہی ہے اور وہ گروتھ بھی زہر ہے آپ کی اکانومی کے لئے۔ کیونکہ ایسی گروتھ جو امپورٹس کے بل بوتے پر ہو اس کے بعد پانچ سال تک ملک کی نہ گروتھ ہوگی اور نہ لوگوں کو کچھ کھانے کو ملے گا۔ یہ سیدھی سی بات ہے لکھ کر رکھ لیں کہ پاکستان میں یہی کچھ آئیندہ بھی ہونا ہے اور آپ کو اس سمجھ کی پھر ضرورت پڑے گی۔

۔

یہ بھی ذہن نشین کرلیں کہ ہمارے جیسے ممالک کے لئے کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ سارے دوسرے فیکٹرز کو کنٹرول کرتا ہے، شرح سود بھی، ٹیکس کالیکشن بھی، انفلیشن بھی، سٹاک مارکیٹ بھی، ریزروز بھی، نئے جابس بھی اور انڈسٹری بھی۔ یہ سب انٹرکنیکٹیڈ ہین اور ان سب کی ماں کرنٹ اکاؤنٹ ہے۔ اگر یہ ایکوایشن سمجھ نہ آئے تو پوچھ لیجئے گا ۔

۔

آپ نے پوچھا ، کہ جب ۲۰ بیلن ڈالر ڈیفیسٹ تھا تو کیا یہ لوہا مشینیں اور سب کچھ ہم کھا رہے تھے؟ اس کے دو جواب ہیں، ایک یہ کہ جو کم کیا گیا وہ مشینیں اور خام مال نہی ہے کیونکہ ان دونوں مدوں پر ڈیوٹی پھر بھی صفر رکھی گئی ہے۔ صرف کھانے پینے کے مہنگے لوازمات کی مد میں پونے چار ارب کی کمی آئی ہے۔ مہنگے الیکٹرونکس پر ڈیڑھ ارب کا کٹ ہے۔ اسی طرح بہت سی دوسری چیزیں ہیں جن پر ڈیوٹی بڑھائی گئی جن میں مہنگی کاریں بھی ہیں۔

اس کا دوسرا جواب یہ ہے کہ اگر آپ کی آمدن چالیس ہزار ڈالر ہو اور اخراجات ساٹھ ہزار ڈالر توسوال یہ نہی کہ جو آپ خرید رہے ہو وہ کاریں ہیں یا کپڑے، بلکہ سوال یہ ہے کہ باقی بیس ہزار آئیں گے کہاں سے۔ چاہے آپ لوہا مشین وغیرہ ہی کیوں نہ خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ اپنی حد کے اندر رکھنا ہوگا ورنہ آپ پانچ فیصد جعلی گروتھ کے بعد بیس فیصد پیچھے جاؤ گے۔ اسی لئے تو کبھی اپنے یا ادھار کے ڈالروں سے غریب ملک ترقی نہی کرتے بلکہ متواتر ترقی کے لئے فارن انویسٹمنٹ، رِمیٹینسز اور ایکسپورٹ بڑھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔

۔

آپ سے میں نے ایک سوال پوچھا تھا کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر ہے، اور ن کے آخری پانچ مہینوں کو دیکھیں تو یہ چوبیس ارب کی طرف جا رہا ہے، اس سے اگلے سال اس قسم کی گروتھ قائم رکھنے کے لئے یہ تیس ارب ڈالر ہو جائے گا۔ دس گیارہ ارب ڈالر سال کی قسط بھی دینی ہے تو یہ پینتیس چالیس ارب ڈالر سالانہ کہاں سے لے کر فنانس کرنا ہے۔ اگر ن کی حکومت ہوتی تو کیا وہ یہی کچھ جاری رکھتی اور اگلے پانچ سال ۲۰۰ ارب ڈالر ادھار لیتی۔ اور اگر ہاں تو کون دیتا دو سو ارب؟؟ دو سو ارب پر قسط بھی پچیس ارب کی ہوتی رائیٹ؟؟ آئی ایم ایف ہمیں چھ ارب سے زیادہ کبھی نہی دیتی، دے بھی دیتی تو اپنی شرائط مزید سخت کرتی۔ اور ہاں ڈالر پھر کتنے ہزار روپئے کا ہوتا۔ کیا یہ سب کچھ سمجھنا مشکل ہے؟ اپوزیشن نے گروتھ گروتھ کی رٹ لگا رکھی ہے لیکن کسی کو سمجھ نہی یا سمجھنا نہی چاہتے کہ اصل گروتھ امپورٹ ڈرِون گروتھ نہی ہوتی پروڈکشن ڈرِون اور ایکسپورٹ ڈرِون ہوتی ہے۔ اب پہلے قوم ان غلطیوں کی قیمت ادا کرے گی، گروتھ کے لئے بنیادی محرکات کو صحیح جگہ رکھا جائے گا اور جب بھی گروتھ ہوئی تو پھر وہ لمبے عرصے تک چلے گی۔ لیکن اس سب کا دارومدار موجودہ گورنمنٹ پر ہے کہ کہیں یہ بھی ووٹر کو خوش کرنے کے لیے اپنے آخری دو سال میں وہی کچھ تو نہی کرتی۔ بحرحالدسمبر میں چینی اور گندم کی وجہ سے ون ٹائم خسارہ ہے۔ لیکن جب پہیہ چلے گا تو خسارہ بھی ہوگا لیکن اس کو ایک خاص حد کے اندر رکھنا ضروری ہے۔ بعض اوقات فوری گندم چینی کی ضرورت بھی پڑے گی۔ آپ کو بڑی پکچر دیکھنی ہے کہ سالانی خسارہ دو اڑھائی فیصد سے زیادہ نہ ہو۔ اور امپورٹس بڑھیں تو کیپیٹل گڈز کی وجہ سے بڑھے نا کہ کنزیومر گڈز کی وجہ سے جیسا پہلے ہوئے۔ پاکستان کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کو پانچ سات ارب سے زیادہ نہی بڑھنے دیا جانا چاہیئے ورنہ غریب پھر مر جائے گا۔
جی شاہد صاحب - دوبارہ شکریہ کہ آپ ناراض نہیں - پچھلی گفتگو کے تمام جملے مجھے یاد نہیں - لیکن جس فرسٹریشن کا آپ اظہار کر رہے ہیں وہی مجھے ہوئی ہر روز ہوتی ہے - اگلے کا مقصد مجھ سے محض بحث جتنا ہی ہوتا ہے - میں شاید اسی فرسٹریشن کا شکار ہوا تھا تو میں نے کہا تھا کہ "کیا ہم یہ سارے امپورٹس یعنی خام تیل، کیمیکل اور سٹیل وغیرہ کھاتے تھے یا ان کا کوئی اور مصرف بھی تھا" - اس بات کی ٹون کچھ بدتمیزی والی تھی لیکن اس کے جواب کا منتظر میں آج بھی ہوں

ایل این جی اور کرنٹ اکاؤنٹ پر آپ کے بتاۓ ہوے اعداد و شمار کو میں کبھی میں چیلنج نہیں کروں گا لیکن اتنی زیادہ انفورمیشن سے ایسے لگا ہے جیسے کوئی دو چار حدیثیں پڑھ کر کسی بہت بڑے عالم دین کے سامنے مناظرے میں بیٹھ گیا ہو - مناظرے سے تو بیچارہ شکست کھا آتا ہے لیکن اس کے پریشانی وہیں کی وہیں رہتی ہے ؟؟؟

ایل این جی پر ہی پہلے بات کرتے ہیں - مارکیٹ پریڈیکشن - جوا - سٹوریج کپسٹی - وغیرہ وغیرہ چند چیزیں ہو سکتی ہیں جن سے ہمیں نقصان اٹھایا وہ ناگزیر تھا - اس کو حکمرانوں کی سوچ یا ایماندارانہ غلطی بھی کہ سکتے ہیں - ہم یہ بھی کیہ سکتے ہیں کہ پورے سال میں ہمیں اس کا فائدہ بھی ہو سکتا ہے - لیکن شاہد صاحب آپ نے جان بوجھ کر عمران خان کے کرتوتوں کو نظر انداز کیا ہے -- قطر کے ساتھ لونگ ٹرم کنٹریکٹ تو کسی ایسی مارکیٹ پریڈیکشن - جوا اور ایماندارانہ غلطی نہیں ہو سکتی نا ؟؟ --- یہ تو خدائی اوطار جناب عمران خان کے بقول کرپشن کی ماں تھی - اس پر شاہد خاقان عباسی اور مفتاح اسماعیل کو مہینوں جیل میں رکھنا اور پھر ان پر صرف ایک ایم ڈی کو نوکری دینے کا الزام لگا کر فارغ کر دینا آپ کے نزدیک نہ قابل ذکر سی چیز ہے نا سر ؟؟؟ - اس سے سے جو نقصان ہمیں مستقبل میں ہو سکتا ہے اس کے متعلق سوچنا اور عقلی دلیلیں دینے کے لئے عالم دین جیسا پڑھا لکھا ہی ہونا لازمی ہے نا سر ؟؟؟
میرے جیسا گلی کی مسجد والے مولوی کو ان باتوں پر نہیں پریشان ہونا چاہیے ؟؟؟


اب میں کرنٹ اکونٹ پر بات کروں تو پھر کہوں گا کہ میں نے دلیلوں کی بہتات پڑھی ہے - لیکن جناب دو چار حدیثوں والے مولوی کی طرح پریشانی وہیں کی وہیں ہے - سر میں اچھی پوزیشن پر کام کرتا ہوں - اور شکر ہے میری پروموشن بھی اسی سال ہوئی ہے - والدین کے دنیا سے رخصت ہو جانے کے بعد میری اب چھوٹی سی فیملی رہ گئی ہے لیکن میری زندگی جس طرح آج کل عذاب ہوئی ہے ایسی پہلے نہیں تھی - اب مجھے دعایں دینے والے نہیں رہے اس لئے یا پھر اس کی وجہ کچھ اور ہے --- میں کیا کہوں ؟؟

بحر حال یہ تو صرف کھیل تماشا اور بحث ہے - میں نے اس موضوع پر انصافیوں سے بہت چھتر کھاۓ ہیں - اب میں نے سوچا کچھ حساب برابر کر دوں - آپ سے بات کر کے ہمیشہ بہت اچھا لگتا ہے سر
 
Last edited:

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)
فصلوں پر اللہ کی مرضی چلتی ہے۔ ن لیگ کے دور میں چینی ۱۳۰ روپئے بھی بکی تھی۔ شاید بھول گئے؟ اور ن لیگ نے بھی گندم امپورٹ کی تھی۔ اب اگر آپ فصلوں کی کم پیداوار یا ٹڈی کے حملے کا ذمہ دار حکومت کو ٹھہراتے ہیں تو آپ کا صرف سیاسی بیان تو ہو سکتا ہے حقیقت نہی۔ دراصل جس جانفشانی اور تیزی سے ٹڈی کا مقابلہ کیا گیا وہ قابل ستائش ہے۔ فصلوں کی پیداوار کے کم ہونے اور روز بروز کم ہوتے جانے کا ذمہ دار وہ حکمران ہیں جو دس سال تک سوئے رہے اور نہ تو کوئی ریسرچ کی اور نہ باہر سے مدد لی۔ اب اس پر کام ہو رہا ہے۔ ایک ہزار ایکڑ پر مختلف ٹرائلز ہو رہے ہیں جو پانچ سال پہلے ہونے چاہئیے تھے۔
ویسے سر میں نے ٹڈی کے آنے سے پہلے بھی کسانوں کی چیکیں سنی تھیں - جب ان کی فصلیں اٹھانے کوئی نہیں ا رہا تھا - یہ سب کچھ تباہ اتنی جلدی کرے ہو گیا - بندہ پاغل ہی ہوتا ہے یہ سوچ کر
 

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)
I said, "its not just a game of numbers", in reference to your number gimmickry. Dont put words in my mouth.....

Instead of taking credit for something PMLN had nothing to do with, use a bit of common sense and discuss why wheat production fluctuates in Pakistan. Biggest reason is variation in rainfall, which causes delayed planting, delayed harvests, and lost crops. Occasionally we have timely harvests, which yield bumper crops. Nothing to do with anything pmln has done.
Its a bit rich of you talking about sugar, considering PMLN and PPP are the biggest culpriits in this. PTI has always been chastised for its links to JKT, but its on record that JDW mills are one of the very few that are current on their payments to farmers, and even now, are selling sugar at govt support rates, as opposed to crooks in Sindh, who are your chaddi buddies these days.

As Gordon Gecko said, "When you stop telling lies about me, I'll stop telling the truth about you."
You are always funny man. I don't know what I will do without you.
Anyways like always we both ran out of arguments and drifting towards trolling.
We will keep it on Insha Allah. I am getting a bit tired and short of time on this topic. 🥴
 

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)
1. From 1980s, PMLN has been in power either in province or center or both except from 1999 to 2007. Last stint was of 5 years and not 4 years (waisay bhi Abbasi ka wazir-e-azam tu nawaz hi tha na). And after governance of straight 10 years in Punjab from 2008 - 2018, and you know what were the last words of shahbaz before the elections compaign was to over at 12am on 23rd July 2018, main patwari aur police kay nazam say bagawat kerta hoon..

2. Brainchaild of benazir but your leader nawaz continued it, here the list of IPPS that were commissioned in the tenure of Nawaz between 1997 to 1999.


During 1980s and 1990s and 2005 onwards nawaz was always busing conspiring with army and other political parties to gain power but he was least bothered about interest of Pakistan, if consensus could have been reached on so called charter of democracy, coalition government, PDM etc etc why not on Kalabagh dam? PMLN wasting billions of rupees of senseless infrastructure projects like metros, instead they could have pumped same money on building a dam. What was the main priority, cheaper electricity or subsidized metros.

3. Point is simple, CPEC is part of China's Belt and Road (2013) Initiative and anyone who would have been in government in 2014, would have welcomed it. It would have happened even if PMLN was not in power, but they could have better negotiate and planned. Have already given you many examples before and can give more.

4. Your quote ''One of the three RLNG plants was not the CPEC project, it is totally Punjab Govt project.''

After 18th amendment provinces were independent to produce their own electricity. 18th amendment happened in 2010, and your leader showbaz sharif was busy doing showbazi at minar -e pakistan instead of generating power, if he had done so, you would not have been scratching your butt in the dark when he was doing showbazi of meri naam badal dena.

5. Your Quote '
And the Rahim Yar Khan Coal power plant was also built under same umbrella. What the hell are the options for Punjab to generate its power other than thermal -- please answer me ?? I know you can jump and cling on the coal as a pollutant. But Note that we are not producers of gas or LNG, three plants were enough to consume all of the LNG imports.

I guess you meant sahiwal coal power plant because Rahim Yar Khan was a proposed coal power plant which have been shelved now.

Effects of Sahiwal Coal Power Plants: yeahi wohi plant hai jiss ki nawaz nay sahiwal kay logon ko mubarak baad di thi.

LIFE UNDER THE SHADOW OF A COAL-FIRED POWER PLANT

6. Your quote:
And we have one of the world's largest coal reserves sitting in Thar. We should never utilize them ??? '

Sahiwal power plant is being run on imported coal, and proposed Rahim yar Khan was also to be run on imported coal. I guess, that speaks for itself.

Despite spending Rs4.9 billion, Dr Samar Mubarakmand’s Underground Coal Gasification (UCG) project did not transmit a single megawatt to the national grid....

I have already replied to most of your Qs. Nawaz was in power for 2.5, 2.5 and 4 years. That is all. If you want to keep riding on Imran khans taught buzz words of 40 years. I don't have cure to this sickness.

Again, Punjab does not have any other option than the thermal, to generate its power. If there is any other then please tell me. If any of the Punjab coal power plant runs on the imported coal then it is not totally the province responsibility. Someone has to go and dig it out from Ther and sell it to Punjab ??? We wasted lots of time with the gasification project of Stooge Dr Samar Mubarik. We have to resort to conventional mining.

I think we are not going anywhere. I liked talking with you Jnaab. Always enjoy talking on subjects. This seems like the first interaction. Please keep in touch. They call me putwari but I am just another person with two eyes, two ears, and one nose.
 

s.shahid

MPA (400+ posts)
I have already replied to most of your Qs. Nawaz was in power for 2.5, 2.5 and 4 years. That is all. If you want to keep riding on Imran khans taught buzz words of 40 years. I don't have cure to this sickness.

Again, Punjab does not have any other option than the thermal, to generate its power. If there is any other then please tell me. If any of the Punjab coal power plant runs on the imported coal then it is not totally the province responsibility. Someone has to go and dig it out from Ther and sell it to Punjab ??? We wasted lots of time with the gasification project of Stooge Dr Samar Mubarik. We have to resort to conventional mining.

I think we are not going anywhere. I liked talking with you Jnaab. Always enjoy talking on subjects. This seems like the first interaction. Please keep in touch. They call me putwari but I am just another person with two eyes, two ears, and one nose.
Nawaz and sharif has remained chief minister of largest province of Pakistan for multiple times and could have done a lot in their capacity as CM. Nawaz was prime minister of Pakistan and shahbaz cm of punjab, both with 2/3rd majority, when Dr mubarak was in charge of the thar coal project.

I don't like calling names, discussion should always be objective and within basic mannerism. You have 2 eyes and 2 ears but you have closed them, else you wouldn't be supporting certified thieves and liars like nawaz and Co. Everyone has its own hickup, I don't know what's yours.

Yes this discussion is going in circles now so let's call it a day here, atleast we can agree to disagree.
 

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)
Nawaz and sharif has remained chief minister of largest province of Pakistan for multiple times and could have done a lot in their capacity as CM. Nawaz was prime minister of Pakistan and shahbaz cm of punjab, both with 2/3rd majority, when Dr mubarak was in charge of the thar coal project.

I don't like calling names, discussion should always be objective and within basic mannerism. You have 2 eyes and 2 ears but you have closed them, else you wouldn't be supporting certified thieves and liars like nawaz and Co. Everyone has its own hickup, I don't know what's yours.

Yes this discussion is going in circles now so let's call it a day here, atleast we can agree to disagree.
You don't understand what i go through every day. So i tend to be blunt. But I always like objective discussion. I just need to know who I am talking to.
 

Shahid Abassi

Minister (2k+ posts)
ایل این جی پر ہی پہلے بات کرتے ہیں - مارکیٹ پریڈیکشن - جوا - سٹوریج کپسٹی - وغیرہ وغیرہ چند چیزیں ہو سکتی ہیں جن سے ہمیں نقصان اٹھایا وہ ناگزیر تھا - اس کو حکمرانوں کی سوچ یا ایماندارانہ غلطی بھی کہ سکتے ہیں - ہم یہ بھی کیہ سکتے ہیں کہ پورے سال میں ہمیں اس کا فائدہ بھی ہو سکتا ہے - لیکن شاہد صاحب آپ نے جان بوجھ کر عمران خان کے کرتوتوں کو نظر انداز کیا ہے -- قطر کے ساتھ لونگ ٹرم کنٹریکٹ تو کسی ایسی مارکیٹ پریڈیکشن - جوا اور ایماندارانہ غلطی نہیں ہو سکتی نا ؟؟ --- یہ تو خدائی اوطار جناب عمران خان کے بقول کرپشن کی ماں تھی - اس پر شاہد خاقان عباسی اور مفتاح اسماعیل کو مہینوں جیل میں رکھنا اور پھر ان پر صرف ایک ایم ڈی کو نوکری دینے کا الزام لگا کر فارغ کر دینا آپ کے نزدیک نہ قابل ذکر سی چیز ہے نا سر ؟؟؟ -
راجہ صاحب آپ کو مروموشن پر دلی مبارک باد۔ اللہ آپ کو مزید ترقیاں دے۔

راجہ صاحب پہلا مسئلہ آپ نے ایل این جی کے موجودہ مسئلے اور شاہد خاقان عباسی صاحب کے لانگ ٹرم موازنے سے اٹھایا ہے کہ کیا وہ کانٹریک بھی جوا یا سپیکولیشن تھا؟ اور کیا وہاں بھی غلطی کا اہتمام ہے یا وہاں کرپشن ہوئی۔ تو سر پہلے ایک بات سمجھنا ضروری ہے۔ خاقان عباسی نے فیوچرز پر سپیکولیٹ نہی کیا کیونکہ ان کا کانٹریکٹ ڈالر میں قیمت پر نہی ہے۔ یعنی ایسا نہی کے اگلے پندرہ سال آپ کو سات ڈالر کی گیس ملے گی۔ بلکہ وہ کانٹریکٹ تیل سے منسلق قیمت پر ہے۔ یعنی جو بھی ایک وقت پر تیل کی قیمت ہوگی اس کا اتنے فی صد گیس کی قیمت ہوگی۔
لیکن دوسری طرف جس چیز پر اب واویلا کیا جا رہا ہے وہ ہے ڈالر قیمت پر سپیکولیشن نہ کرنا۔
خاقان عباسی نے جب تیل کی قیمت کے تیرہ فیصد پر پندرہ سال کا کانٹریکٹ کیا تو اس کے ڈیڑہ ماہ بعد یہ ریشو دس فیصد پر آ گئی تھی اور سارے ایکسپرٹ چیخ چیخ کر کہہ رہے تھے کہ تیرہ فیصد پر نہ کریں یہ نو فیصد پر مل جائے گی۔ انڈیا نے اس وقت آٹھ سال کے کانٹریکٹ پونے دس فیصد پر کئے تھے۔ اس کے علاوہ مجھے نہی معلوم کہ اس کیس میں نیب کے پاس کیا ثبوت ہیں اور کیا یہ غلطی تھی یا کرپشن۔ ویسے باقی معاملات دیکھے جائیں تو شبہ ضرور ہوتا ہے کہ کچھ نہ کچھ کمیشن کھایا گیا ہوگا۔
"کیا ہم یہ سارے امپورٹس یعنی خام تیل، کیمیکل اور سٹیل وغیرہ کھاتے تھے یا ان کا کوئی اور مصرف بھی تھا" - اس بات کی ٹون کچھ بدتمیزی والی تھی لیکن اس کے جواب کا منتظر میں آج بھی ہوں
راجہ بھائی آپ اعلی تعلیم یافتہ بھی ہیں اور اچھی پوسٹ پر تعینات بھی ۔ لیکن کیا یہ سمجھنا مشکل ہے کہ ہمارا ڈالروں میں خسارہ جتنا بھی ہوگا اسے باہر سے ڈالروں میں ادھار لے کر پورا کرنا پڑے گا۔ اس سے روپئہ گرے گا، مہنگائی ہوگی، ریزرو بھی گریں گے، کساد بازاری بھی ہوگی اور شرح سود بھی بڑھے گی ۔ میں تو بیسیوں دفعہ آپ سے پوچھ چکا ہوں کہ چاہے آپ لوہا سریہ اور مشین بھی خرید رہے ہوتے تو خسارہ اور قسطیں تو پھر بھی ادا کرنی ہی تھیں کہ نہی۔ میں نے بارہا پوچھا کہ اگر اسہ نہج پر چلتے تو پانچ سال میں کیا ہمیں ۲۰۰ ارب ڈالر نہ چاہیئے ہوتے اس خسارے کو برج کرنے کے لئے۔ کیا ہمیں وہ ملتے؟ دراصل آپ کی قرض ملنے کی بھی ایک لمٹ ہے اس سے باہر نکلیں گے تو دیوالیہ ہونا لازم ٹھہر جاتا ہے۔ حالنکہ یہ خسارہ مشینوں اور سرئیے کا نہی تھا لیکن ہوتا بھی تو غلط تھا۔ پاکستان جیسی اکانومی کو اپنا کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ پانچ چھ ارب سے زیادہ نہی ہونے دینا چاہیے۔
میاں صاحب کی حکومت کا دوسرا بڑا مسئلہ یہ تھا کہ انہوں نے ایکسپورٹ بڑھانے کے لئے ایکسپورٹ انڈسٹری کو کچھ نہی دیا بلکہ تین سال تک ان کے ریفنڈز کے چار سو ارب دبا کر بیٹھے رہے۔ کوئی ٹیکسٹائل کمپنی ایسی نہ تھی جس کا پندرہ بیس کروڑ دبا نہ رہا تھا۔ پانچ سال میں ایکسپورٹ بڑھنے کی بجائے ۲۵ سے ۲۲ ارب پر آ گئیں۔ بجلی نہ ہونے کا بہانہ بنایا گیا لیکن ساتھ ہی گورنمنٹ کی یہ پالیسی بھی تھی کہ لوڈ شیڈنگ صرف ڈومیسٹک ترسیل پر ہو رہی ہے اور پالیسی کے تحت انڈسٹری کو بغیر تعطل بجلی دی جائے گی۔ ایکسپورٹ کو ہی دیکھتے ہوئے ان کی سب سے بڑی غلطی یہ تھی کہ ڈالر کو باندھے رکھنے سے امپورٹ تو سستی رہی لیکن ہماری ایکسپورٹس گڈز کی قیمتیں بہت زیادہ تھیں اور ہم مقابلہ نہی کر سکتے تھے۔
ایکسپورٹ ہی اگر تیس ارب ہو جاتی تو یہ خسارہ ۱۲ ارب پر ہوتا لیکن میاں صاحب نے ملکہ اکانومی کا نہیں سوچا بلکہ ووٹر کو وقتی خوش کیا جو کہ نہی جانتا تھا کہ اس کی بھاری قیمت بھی ادا کرنی ہے۔
لیکن شاہد صاحب آپ نے جان بوجھ کر عمران خان کے کرتوتوں کو نظر انداز کیا ہے --
راجہ صاحب میرے لئے عمران خان اندھوں میں کانا راجہ ہے۔ زراداری اور شریفوں کے ہوتے اسے بہتر چائس سمجھتا ہوں اس کے باوجود کہ یہ اسٹیبلشمنٹ کی چھتری کی نیچے بہت زیادہ دب گیا ہے۔ ایسا نہی ہے کہ کچھ ایسا نہی کہ میں اس پر تنقید نہ کر سکوں۔ دو بڑے مسائل جہاں مجھے حکومت کی ناکامی نظر آتی ہے وہ ہیں ادارہ جاتی اصلاحات نہ ہونا اور دوسری سب سے بڑی کمزوری ریوینئو کالیکشن ہے۔ ٹیکس کالیکشن میں صرف پانچ فیصد اضافہ بہت کم ہے۔ اتنا اضافہ تو کچھ نہ بھی کرتے تو ہو جاتا کیونکہ سیلز ٹیکس کالیکشن تو قیمتیں بڑھنے کے ساتھ ساتھ خود ہی بڑھنا چاہیئے تھی۔ مثلا اگر پچھلے سال میں ایک پنکھا تین ہزار کا لیتا تو اس پر چار سو چھتیس سیلز ٹیکس تھا لیکن اگر وہی پنکھا اس سال بتیس سو کا ہے تو اس پر سیلز ٹیکس چار سو پینستھ کٹے گا۔
 
Last edited:

Resilient

Minister (2k+ posts)
جی شاہد صاحب - دوبارہ شکریہ کہ آپ ناراض نہیں - پچھلی گفتگو کے تمام جملے مجھے یاد نہیں - لیکن جس فرسٹریشن کا آپ اظہار کر رہے ہیں وہی مجھے ہوئی ہر روز ہوتی ہے - اگلے کا مقصد مجھ سے محض بحث جتنا ہی ہوتا ہے - میں شاید اسی فرسٹریشن کا شکار ہوا تھا تو میں نے کہا تھا کہ "کیا ہم یہ سارے امپورٹس یعنی خام تیل، کیمیکل اور سٹیل وغیرہ کھاتے تھے یا ان کا کوئی اور مصرف بھی تھا" - اس بات کی ٹون کچھ بدتمیزی والی تھی لیکن اس کے جواب کا منتظر میں آج بھی ہوں

ایل این جی اور کرنٹ اکاؤنٹ پر آپ کے بتاۓ ہوے اعداد و شمار کو میں کبھی میں چیلنج نہیں کروں گا لیکن اتنی زیادہ انفورمیشن سے ایسے لگا ہے جیسے کوئی دو چار حدیثیں پڑھ کر کسی بہت بڑے عالم دین کے سامنے مناظرے میں بیٹھ گیا ہو - مناظرے سے تو بیچارہ شکست کھا آتا ہے لیکن اس کے پریشانی وہیں کی وہیں رہتی ہے ؟؟؟

ایل این جی پر ہی پہلے بات کرتے ہیں - مارکیٹ پریڈیکشن - جوا - سٹوریج کپسٹی - وغیرہ وغیرہ چند چیزیں ہو سکتی ہیں جن سے ہمیں نقصان اٹھایا وہ ناگزیر تھا - اس کو حکمرانوں کی سوچ یا ایماندارانہ غلطی بھی کہ سکتے ہیں - ہم یہ بھی کیہ سکتے ہیں کہ پورے سال میں ہمیں اس کا فائدہ بھی ہو سکتا ہے - لیکن شاہد صاحب آپ نے جان بوجھ کر عمران خان کے کرتوتوں کو نظر انداز کیا ہے -- قطر کے ساتھ لونگ ٹرم کنٹریکٹ تو کسی ایسی مارکیٹ پریڈیکشن - جوا اور ایماندارانہ غلطی نہیں ہو سکتی نا ؟؟ --- یہ تو خدائی اوطار جناب عمران خان کے بقول کرپشن کی ماں تھی - اس پر شاہد خاقان عباسی اور مفتاح اسماعیل کو مہینوں جیل میں رکھنا اور پھر ان پر صرف ایک ایم ڈی کو نوکری دینے کا الزام لگا کر فارغ کر دینا آپ کے نزدیک نہ قابل ذکر سی چیز ہے نا سر ؟؟؟ - اس سے سے جو نقصان ہمیں مستقبل میں ہو سکتا ہے اس کے متعلق سوچنا اور عقلی دلیلیں دینے کے لئے عالم دین جیسا پڑھا لکھا ہی ہونا لازمی ہے نا سر ؟؟؟
میرے جیسا گلی کی مسجد والے مولوی کو ان باتوں پر نہیں پریشان ہونا چاہیے ؟؟؟


اب میں کرنٹ اکونٹ پر بات کروں تو پھر کہوں گا کہ میں نے دلیلوں کی بہتات پڑھی ہے - لیکن جناب دو چار حدیثوں والے مولوی کی طرح پریشانی وہیں کی وہیں ہے - سر میں اچھی پوزیشن پر کام کرتا ہوں - اور شکر ہے میری پروموشن بھی اسی سال ہوئی ہے - والدین کے دنیا سے رخصت ہو جانے کے بعد میری اب چھوٹی سی فیملی رہ گئی ہے لیکن میری زندگی جس طرح آج کل عذاب ہوئی ہے ایسی پہلے نہیں تھی - اب مجھے دعایں دینے والے نہیں رہے اس لئے یا پھر اس کی وجہ کچھ اور ہے --- میں کیا کہوں ؟؟

بحر حال یہ تو صرف کھیل تماشا اور بحث ہے - میں نے اس موضوع پر انصافیوں سے بہت چھتر کھاۓ ہیں - اب میں نے سوچا کچھ حساب برابر کر دوں - آپ سے بات کر کے ہمیشہ بہت اچھا لگتا ہے سر

شاہد صاحب بڑے بھائیوں جیسے ہیں ، یہ ان معدودے چند انصافیوں میں سے ہیں جن سے بات ہوسکتی ہے
Shahid Abassi
 

Resilient

Minister (2k+ posts)
140660609_417426066347985_7460872516480350786_n.jpg

قبلہ راجہ صاحب، آپ سے بھلا میں ناراض کیوں ہونگا۔ میں نے ہمیشہ اپنا دیانتدارانہ موقف بیان کیا ہے۔ اور جب دوسری طرف سے کچھ بے مقصد اور بچکانہ کمنٹس ہوں اور مقصد صرف سیاسی بحث کرنا ہواور اسے ہر حال میں جیتنا ہو تو میں اپنی ہار مان کر چپ کر جاتا ہوں۔ تحریک انصاف پر تنقید کے لئے بہت سے دوسرے پہلو ہیں جہاں آپ حق بجانب بھی ہو سکتے ہیں لیکن جس موضوع کو آپ نے چھیڑا ہے اور کچھ دیگر موضوعات جو آجکل اپوزیشن پوائینٹ سکورنگ کے طور استعمال کرتی ہے وہاں اگر دلیل سے بات کی جائے تو اپوزیشن چاروں شانے چت ہارتی ہے۔



کرنٹ اکاؤنٹ سے پہلے ذرا ایل این جی پر بات کرتے ہیں کہ اس کی بہت لے دے ہے۔ اب دیکھیں اپوزیشن اور جیو گروپ نے زمین اور آسمان کے قلابے ملا رکھے ہیں کہ وقت پر گیس نہی خریدی۔ اب ان کا مدعا ذرا سمجھیں کہ یہ کہہ رہے ہیں کہ گورنمنٹ نے سپیکولیٹ کیوں نہی کیا۔ یعنی جون میں فیوچر ایل این جی سات روپئے فی ڈالر ایم ایم بی ٹی یو تھی تو اس وقت نہی خریدی جبکہ اب یہ قیمت ۱۲ ڈالر ہے۔ شاید آپ جانتے ہوں کہ فیوچرز خریدنا ایسا ہی ہے کہ جیسے جوا کھیلا جائے یا پھر جیسے شیئرزمیں اپنا پیسہ انویسٹ کر دیا جائے جہاں یہ پرائس اوپر بھی جا سکتی ہیں اور نیچے بھی۔۔ جون میں ڈیلائٹ جیسی کمپنیوں کی آپ آئل فورکاسٹ کی رپورٹس پڑھ لیں کہ بڑے سے بڑے پھنے خان کا بھی یہ کہنا تھا کہ دسمبر میں آئل پرائسز ساڑھے بیالیس ڈالر سے اوپر نہی جائیں گیں لیکن آج آئل پرائسز چھپن ڈالرز پر کھڑی ہے۔ ایل این جی کی پرائسز تیل سے منسلک ہیں تو آج اگر تیل بیالیس پر ہوتا تو ایل این جی کی قیمت بھی ساڑھے چھ ڈالر ہوتی۔ بات یہ ہے کہ اس وقت تو اپوزیشن کے کسی کھڑپینچ نے نہی کہا کہ ہمیں فیوچرز خرید لینا چاہیئے کیونکہ انہیں معلوم تھا کہ چین سے کووڈ کنٹرول نہ ہوا تو آئل پرائس ۳۰ پر آ سکتی ہے اور ایل این جہ پانچ ڈالر کی ہوگی۔ لیکن اب جب تیل کی قیمت بڑھ گئی تو یہ روز چیخ چیخ کر کہہ رہے ہیں کہ اس وقت ایل این جی نہ خرید کر چار ارب روپئے کا نقصان کر دیا۔ یعنی اس بات پر احتجاج کر رہے ہیں کہ حکومت نے دنیا میں بڑے بڑے ایکسپرٹس کی رائے کے خلاف جاتے ہوئے اسی وقت ڈیل کرنے کا جوا کیوں نہی کھیلا۔ سوال یہ ہے کہ اگر چین میں کووڈ کی حالت امریکہ اور یورپ کی طرح کنٹرول نہ ہوسکتی اور آج آئل پرائس بیس سے پچیس اور این جی پرائس پانچ ڈالر ہوتی اور گورنمنٹ نے اس وقت سات ڈالر میں خرید لی ہوتی تو کیا یہ اپوزیشن یہ نہ کہہ رہی ہوتی کہ گورنمنٹ نے کمیشن کھایا ہے اور اس وقت مہنگی ایل این جی خرید لی باوجود اس کے کہ ڈلائٹ جیسی دنیا کی بڑی ایکسپرٹ کمپنی کی فورکاسٹ کہہ رہی تھی کہ پرائسز مزید گریں گیں؟ اس مثال سے کہنا یہ چاہتا ہوں کہ سیاسی بحث اور ہوتی ہے اور نالج بیسڈ مختلف۔



۔

اسی طرح کی بات آپ کرتے ہیں کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر سے صفر اس حکومت نے نہی کیا بلکہ گروتھ رک جانے کی وجہ سے امپورٹ رکی ہے اور اس کی وجہ سے کرنٹ اکاؤنٹ صفر ہو گیا۔ اب یہ ایک مہا بیوقوفی کی بات ہے اور لگتا ہے کہ لکنے والے نے گورنمنٹ پالیسی۔ آئی ایم ایف ڈیل اور پچھلے دو اڑھائی سال میں کی جانے والی اکنامک تبدیلیوں کو سٹڈٰی ہی نہی کیا۔ اس لئے آپ کے اس لکھے پر بات بھی کرنا کچھ عجیب سا لگتا ہے۔ بس یہ بتا سکتا ہوں کہ ایسا ہو نہی سکتا کیونکہ ڈیمانڈ میں کمی نہی آئی، ایم ون میں ذرا برابر کمی نہی آئی۔ ڈیمانڈ میں گروتھ نہ بھی ہو توجس نہج پر وہ ہے وہاں پر ۲۰ ارب ڈالر کا خسارہ ہے۔

۔

دوسری بات یہ کہ آپ کو اس میکانزم کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ روپئے کی قیمت گرنے کی وجہ کیا تھی اور یہ کہ کرنٹ اکاؤنٹ کو مینیج کرتے ہوئے سود کی شرح کیوں بڑھائی جاتی ہے اور اس پراسیس میں مہنگائی کیوں ہوتی ہے۔ آپ کو شاید یاد ہو کہ جب زرداری کی حکومت بنی تو ہمارا کرنٹ اکاؤنٹ آٹھ ارب ڈالر مائنس تھا، اور جب اسے فکس کرنے کی ضرورت پڑی تو ۲۰ فیصد انفلیشن تھا اور ۲۰ فیصد کے قریب ہی سود کی شرح۔ اس میں زرداری کا کوئی قصور نہی تھا اور حکومت جو کر رہی تھی وہی وقت کی ضرورت اور مجبوری تھی۔ لوگوں نے مہنگائی سے تنگ آکر زرداری کو خوب کوسا اور پنجاب سے پی پی پی کا صفایا کر دیا۔ لیکن زرداری حکومت نے کرنٹ اکاؤنٹ کو کنٹرول کیا اور اپنے پہلے تین سالوں میں کوئی گروتھ نہ دکھا سکی۔ جاتے ہوئے وہ نواز شریف کو اڑھائی ارب کا کرنٹ اکاؤنٹ دے کر چلا گیا۔ اس کے بعد میاں صاحب نے جو کیا وہ بیان کرنے کی ضرورت نہی۔

۔

آپ یہ ذہن میں رکھ لیں کہ چاہے آپ جو بھی خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ ایک حد سے تجاوز کرے گا تو ملک کی تباہی ہے اور وہ گروتھ بھی زہر ہے آپ کی اکانومی کے لئے۔ کیونکہ ایسی گروتھ جو امپورٹس کے بل بوتے پر ہو اس کے بعد پانچ سال تک ملک کی نہ گروتھ ہوگی اور نہ لوگوں کو کچھ کھانے کو ملے گا۔ یہ سیدھی سی بات ہے لکھ کر رکھ لیں کہ پاکستان میں یہی کچھ آئیندہ بھی ہونا ہے اور آپ کو اس سمجھ کی پھر ضرورت پڑے گی۔

۔

یہ بھی ذہن نشین کرلیں کہ ہمارے جیسے ممالک کے لئے کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ سارے دوسرے فیکٹرز کو کنٹرول کرتا ہے، شرح سود بھی، ٹیکس کالیکشن بھی، انفلیشن بھی، سٹاک مارکیٹ بھی، ریزروز بھی، نئے جابس بھی اور انڈسٹری بھی۔ یہ سب انٹرکنیکٹیڈ ہین اور ان سب کی ماں کرنٹ اکاؤنٹ ہے۔ اگر یہ ایکوایشن سمجھ نہ آئے تو پوچھ لیجئے گا ۔

۔

آپ نے پوچھا ، کہ جب ۲۰ بیلن ڈالر ڈیفیسٹ تھا تو کیا یہ لوہا مشینیں اور سب کچھ ہم کھا رہے تھے؟ اس کے دو جواب ہیں، ایک یہ کہ جو کم کیا گیا وہ مشینیں اور خام مال نہی ہے کیونکہ ان دونوں مدوں پر ڈیوٹی پھر بھی صفر رکھی گئی ہے۔ صرف کھانے پینے کے مہنگے لوازمات کی مد میں پونے چار ارب کی کمی آئی ہے۔ مہنگے الیکٹرونکس پر ڈیڑھ ارب کا کٹ ہے۔ اسی طرح بہت سی دوسری چیزیں ہیں جن پر ڈیوٹی بڑھائی گئی جن میں مہنگی کاریں بھی ہیں۔

اس کا دوسرا جواب یہ ہے کہ اگر آپ کی آمدن چالیس ہزار ڈالر ہو اور اخراجات ساٹھ ہزار ڈالر توسوال یہ نہی کہ جو آپ خرید رہے ہو وہ کاریں ہیں یا کپڑے، بلکہ سوال یہ ہے کہ باقی بیس ہزار آئیں گے کہاں سے۔ چاہے آپ لوہا مشین وغیرہ ہی کیوں نہ خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ اپنی حد کے اندر رکھنا ہوگا ورنہ آپ پانچ فیصد جعلی گروتھ کے بعد بیس فیصد پیچھے جاؤ گے۔ اسی لئے تو کبھی اپنے یا ادھار کے ڈالروں سے غریب ملک ترقی نہی کرتے بلکہ متواتر ترقی کے لئے فارن انویسٹمنٹ، رِمیٹینسز اور ایکسپورٹ بڑھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔

۔

آپ سے میں نے ایک سوال پوچھا تھا کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر ہے، اور ن کے آخری پانچ مہینوں کو دیکھیں تو یہ چوبیس ارب کی طرف جا رہا ہے، اس سے اگلے سال اس قسم کی گروتھ قائم رکھنے کے لئے یہ تیس ارب ڈالر ہو جائے گا۔ دس گیارہ ارب ڈالر سال کی قسط بھی دینی ہے تو یہ پینتیس چالیس ارب ڈالر سالانہ کہاں سے لے کر فنانس کرنا ہے۔ اگر ن کی حکومت ہوتی تو کیا وہ یہی کچھ جاری رکھتی اور اگلے پانچ سال ۲۰۰ ارب ڈالر ادھار لیتی۔ اور اگر ہاں تو کون دیتا دو سو ارب؟؟ دو سو ارب پر قسط بھی پچیس ارب کی ہوتی رائیٹ؟؟ آئی ایم ایف ہمیں چھ ارب سے زیادہ کبھی نہی دیتی، دے بھی دیتی تو اپنی شرائط مزید سخت کرتی۔ اور ہاں ڈالر پھر کتنے ہزار روپئے کا ہوتا۔ کیا یہ سب کچھ سمجھنا مشکل ہے؟ اپوزیشن نے گروتھ گروتھ کی رٹ لگا رکھی ہے لیکن کسی کو سمجھ نہی یا سمجھنا نہی چاہتے کہ اصل گروتھ امپورٹ ڈرِون گروتھ نہی ہوتی پروڈکشن ڈرِون اور ایکسپورٹ ڈرِون ہوتی ہے۔ اب پہلے قوم ان غلطیوں کی قیمت ادا کرے گی، گروتھ کے لئے بنیادی محرکات کو صحیح جگہ رکھا جائے گا اور جب بھی گروتھ ہوئی تو پھر وہ لمبے عرصے تک چلے گی۔ لیکن اس سب کا دارومدار موجودہ گورنمنٹ پر ہے کہ کہیں یہ بھی ووٹر کو خوش کرنے کے لیے اپنے آخری دو سال میں وہی کچھ تو نہی کرتی۔ بحرحالدسمبر میں چینی اور گندم کی وجہ سے ون ٹائم خسارہ ہے۔ لیکن جب پہیہ چلے گا تو خسارہ بھی ہوگا لیکن اس کو ایک خاص حد کے اندر رکھنا ضروری ہے۔ بعض اوقات فوری گندم چینی کی ضرورت بھی پڑے گی۔ آپ کو بڑی پکچر دیکھنی ہے کہ سالانی خسارہ دو اڑھائی فیصد سے زیادہ نہ ہو۔ اور امپورٹس بڑھیں تو کیپیٹل گڈز کی وجہ سے بڑھے نا کہ کنزیومر گڈز کی وجہ سے جیسا پہلے ہوئے۔ پاکستان کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کو پانچ سات ارب سے زیادہ نہی بڑھنے دیا جانا چاہیئے ورنہ غریب پھر مر جائے گا۔

عباسی صاحب،
کس کو نہیں معلوم کہ سردیوں میں گیس کی کھپت زیادہ ہوتی ہے، اس میں سپیکولیشن والی کون سی بات ہے؟؟ اس لئے ہم اس کا ٹینڈر ہرسال چار سے چھ مہینے پہلے کرتے ہیں تاکہ اچھا ریٹ مل سکے ، حتیٰ کہ پچھلے سال (٢٠١٩) میں بھی اس حکومت نے جولائی/اگست میں ٹینڈر کردئے تھے ، اس سال میڈیا اور اپوزیشن نے ستمبر اکتوبر میں شور مچانا شروع کیا اور آخر کار نومبر میں حکومت نے دسمبر /جنوری کیلئے ٹینڈر کرنے شروع کئے اور نتیجہ یہ نکلا کہ کچھ ہفتوں کیلئے سرے سے بولیاں ہی نہیں آئیں اور جن کیلئے بولیاں آئیں ان میں ریٹ بہت زیادہ تھا اور جب ان زیادہ ریٹس پر بھی خریدنے کو تیار ہوگئے تو بولی دینے والے بھی بھاگ گئے

اب پھر وہی قطر مدد کو آیا جس کے بارے آپ کے ساتھ انصافی کیا کیا کچھ نہیں کہتے تھے ، آپ تو ناروے میں مزے سے بیٹھے انجوائے کررہے ہیں ہم نے یہاں اس سخت سردی میں ایل پی جی ہی پھونکنی تھی​
 
Last edited:

Resilient

Minister (2k+ posts)
What the heck are you talking about when you say cheap energy projects. Do you mean cheap production of cheap installation cost? And do you even know what it takes to install a power project and how long it takes ???
Dams are the cheapest high yield projects but it takes 10 years to install them which phenomenally more cost than a thermal. The thermal on other hand starts roaring in three years. When you are sitting in dark scratching your ass, and you need power now then thermal is the only option you have.

We are getting "cheap" electricity from these dams which were built by World Bank in lieu of three rivers we given to India by our beloved Field Martial Ayub Khan.
 

Resilient

Minister (2k+ posts)
قبلہ راجہ صاحب، آپ سے بھلا میں ناراض کیوں ہونگا۔ میں نے ہمیشہ اپنا دیانتدارانہ موقف بیان کیا ہے۔ اور جب دوسری طرف سے کچھ بے مقصد اور بچکانہ کمنٹس ہوں اور مقصد صرف سیاسی بحث کرنا ہواور اسے ہر حال میں جیتنا ہو تو میں اپنی ہار مان کر چپ کر جاتا ہوں۔ تحریک انصاف پر تنقید کے لئے بہت سے دوسرے پہلو ہیں جہاں آپ حق بجانب بھی ہو سکتے ہیں لیکن جس موضوع کو آپ نے چھیڑا ہے اور کچھ دیگر موضوعات جو آجکل اپوزیشن پوائینٹ سکورنگ کے طور استعمال کرتی ہے وہاں اگر دلیل سے بات کی جائے تو اپوزیشن چاروں شانے چت ہارتی ہے۔



کرنٹ اکاؤنٹ سے پہلے ذرا ایل این جی پر بات کرتے ہیں کہ اس کی بہت لے دے ہے۔ اب دیکھیں اپوزیشن اور جیو گروپ نے زمین اور آسمان کے قلابے ملا رکھے ہیں کہ وقت پر گیس نہی خریدی۔ اب ان کا مدعا ذرا سمجھیں کہ یہ کہہ رہے ہیں کہ گورنمنٹ نے سپیکولیٹ کیوں نہی کیا۔ یعنی جون میں فیوچر ایل این جی سات روپئے فی ڈالر ایم ایم بی ٹی یو تھی تو اس وقت نہی خریدی جبکہ اب یہ قیمت ۱۲ ڈالر ہے۔ شاید آپ جانتے ہوں کہ فیوچرز خریدنا ایسا ہی ہے کہ جیسے جوا کھیلا جائے یا پھر جیسے شیئرزمیں اپنا پیسہ انویسٹ کر دیا جائے جہاں یہ پرائس اوپر بھی جا سکتی ہیں اور نیچے بھی۔۔ جون میں ڈیلائٹ جیسی کمپنیوں کی آپ آئل فورکاسٹ کی رپورٹس پڑھ لیں کہ بڑے سے بڑے پھنے خان کا بھی یہ کہنا تھا کہ دسمبر میں آئل پرائسز ساڑھے بیالیس ڈالر سے اوپر نہی جائیں گیں لیکن آج آئل پرائسز چھپن ڈالرز پر کھڑی ہے۔ ایل این جی کی پرائسز تیل سے منسلک ہیں تو آج اگر تیل بیالیس پر ہوتا تو ایل این جی کی قیمت بھی ساڑھے چھ ڈالر ہوتی۔ بات یہ ہے کہ اس وقت تو اپوزیشن کے کسی کھڑپینچ نے نہی کہا کہ ہمیں فیوچرز خرید لینا چاہیئے کیونکہ انہیں معلوم تھا کہ چین سے کووڈ کنٹرول نہ ہوا تو آئل پرائس ۳۰ پر آ سکتی ہے اور ایل این جہ پانچ ڈالر کی ہوگی۔ لیکن اب جب تیل کی قیمت بڑھ گئی تو یہ روز چیخ چیخ کر کہہ رہے ہیں کہ اس وقت ایل این جی نہ خرید کر چار ارب روپئے کا نقصان کر دیا۔ یعنی اس بات پر احتجاج کر رہے ہیں کہ حکومت نے دنیا میں بڑے بڑے ایکسپرٹس کی رائے کے خلاف جاتے ہوئے اسی وقت ڈیل کرنے کا جوا کیوں نہی کھیلا۔ سوال یہ ہے کہ اگر چین میں کووڈ کی حالت امریکہ اور یورپ کی طرح کنٹرول نہ ہوسکتی اور آج آئل پرائس بیس سے پچیس اور این جی پرائس پانچ ڈالر ہوتی اور گورنمنٹ نے اس وقت سات ڈالر میں خرید لی ہوتی تو کیا یہ اپوزیشن یہ نہ کہہ رہی ہوتی کہ گورنمنٹ نے کمیشن کھایا ہے اور اس وقت مہنگی ایل این جی خرید لی باوجود اس کے کہ ڈلائٹ جیسی دنیا کی بڑی ایکسپرٹ کمپنی کی فورکاسٹ کہہ رہی تھی کہ پرائسز مزید گریں گیں؟ اس مثال سے کہنا یہ چاہتا ہوں کہ سیاسی بحث اور ہوتی ہے اور نالج بیسڈ مختلف۔



۔

اسی طرح کی بات آپ کرتے ہیں کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر سے صفر اس حکومت نے نہی کیا بلکہ گروتھ رک جانے کی وجہ سے امپورٹ رکی ہے اور اس کی وجہ سے کرنٹ اکاؤنٹ صفر ہو گیا۔ اب یہ ایک مہا بیوقوفی کی بات ہے اور لگتا ہے کہ لکنے والے نے گورنمنٹ پالیسی۔ آئی ایم ایف ڈیل اور پچھلے دو اڑھائی سال میں کی جانے والی اکنامک تبدیلیوں کو سٹڈٰی ہی نہی کیا۔ اس لئے آپ کے اس لکھے پر بات بھی کرنا کچھ عجیب سا لگتا ہے۔ بس یہ بتا سکتا ہوں کہ ایسا ہو نہی سکتا کیونکہ ڈیمانڈ میں کمی نہی آئی، ایم ون میں ذرا برابر کمی نہی آئی۔ ڈیمانڈ میں گروتھ نہ بھی ہو توجس نہج پر وہ ہے وہاں پر ۲۰ ارب ڈالر کا خسارہ ہے۔

۔

دوسری بات یہ کہ آپ کو اس میکانزم کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ روپئے کی قیمت گرنے کی وجہ کیا تھی اور یہ کہ کرنٹ اکاؤنٹ کو مینیج کرتے ہوئے سود کی شرح کیوں بڑھائی جاتی ہے اور اس پراسیس میں مہنگائی کیوں ہوتی ہے۔ آپ کو شاید یاد ہو کہ جب زرداری کی حکومت بنی تو ہمارا کرنٹ اکاؤنٹ آٹھ ارب ڈالر مائنس تھا، اور جب اسے فکس کرنے کی ضرورت پڑی تو ۲۰ فیصد انفلیشن تھا اور ۲۰ فیصد کے قریب ہی سود کی شرح۔ اس میں زرداری کا کوئی قصور نہی تھا اور حکومت جو کر رہی تھی وہی وقت کی ضرورت اور مجبوری تھی۔ لوگوں نے مہنگائی سے تنگ آکر زرداری کو خوب کوسا اور پنجاب سے پی پی پی کا صفایا کر دیا۔ لیکن زرداری حکومت نے کرنٹ اکاؤنٹ کو کنٹرول کیا اور اپنے پہلے تین سالوں میں کوئی گروتھ نہ دکھا سکی۔ جاتے ہوئے وہ نواز شریف کو اڑھائی ارب کا کرنٹ اکاؤنٹ دے کر چلا گیا۔ اس کے بعد میاں صاحب نے جو کیا وہ بیان کرنے کی ضرورت نہی۔

۔

آپ یہ ذہن میں رکھ لیں کہ چاہے آپ جو بھی خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ ایک حد سے تجاوز کرے گا تو ملک کی تباہی ہے اور وہ گروتھ بھی زہر ہے آپ کی اکانومی کے لئے۔ کیونکہ ایسی گروتھ جو امپورٹس کے بل بوتے پر ہو اس کے بعد پانچ سال تک ملک کی نہ گروتھ ہوگی اور نہ لوگوں کو کچھ کھانے کو ملے گا۔ یہ سیدھی سی بات ہے لکھ کر رکھ لیں کہ پاکستان میں یہی کچھ آئیندہ بھی ہونا ہے اور آپ کو اس سمجھ کی پھر ضرورت پڑے گی۔

۔

یہ بھی ذہن نشین کرلیں کہ ہمارے جیسے ممالک کے لئے کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ سارے دوسرے فیکٹرز کو کنٹرول کرتا ہے، شرح سود بھی، ٹیکس کالیکشن بھی، انفلیشن بھی، سٹاک مارکیٹ بھی، ریزروز بھی، نئے جابس بھی اور انڈسٹری بھی۔ یہ سب انٹرکنیکٹیڈ ہین اور ان سب کی ماں کرنٹ اکاؤنٹ ہے۔ اگر یہ ایکوایشن سمجھ نہ آئے تو پوچھ لیجئے گا ۔

۔

آپ نے پوچھا ، کہ جب ۲۰ بیلن ڈالر ڈیفیسٹ تھا تو کیا یہ لوہا مشینیں اور سب کچھ ہم کھا رہے تھے؟ اس کے دو جواب ہیں، ایک یہ کہ جو کم کیا گیا وہ مشینیں اور خام مال نہی ہے کیونکہ ان دونوں مدوں پر ڈیوٹی پھر بھی صفر رکھی گئی ہے۔ صرف کھانے پینے کے مہنگے لوازمات کی مد میں پونے چار ارب کی کمی آئی ہے۔ مہنگے الیکٹرونکس پر ڈیڑھ ارب کا کٹ ہے۔ اسی طرح بہت سی دوسری چیزیں ہیں جن پر ڈیوٹی بڑھائی گئی جن میں مہنگی کاریں بھی ہیں۔

اس کا دوسرا جواب یہ ہے کہ اگر آپ کی آمدن چالیس ہزار ڈالر ہو اور اخراجات ساٹھ ہزار ڈالر توسوال یہ نہی کہ جو آپ خرید رہے ہو وہ کاریں ہیں یا کپڑے، بلکہ سوال یہ ہے کہ باقی بیس ہزار آئیں گے کہاں سے۔ چاہے آپ لوہا مشین وغیرہ ہی کیوں نہ خرید رہے ہوں کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ اپنی حد کے اندر رکھنا ہوگا ورنہ آپ پانچ فیصد جعلی گروتھ کے بعد بیس فیصد پیچھے جاؤ گے۔ اسی لئے تو کبھی اپنے یا ادھار کے ڈالروں سے غریب ملک ترقی نہی کرتے بلکہ متواتر ترقی کے لئے فارن انویسٹمنٹ، رِمیٹینسز اور ایکسپورٹ بڑھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔

۔

آپ سے میں نے ایک سوال پوچھا تھا کہ کرنٹ اکاؤنٹ ۲۰ ارب ڈالر ہے، اور ن کے آخری پانچ مہینوں کو دیکھیں تو یہ چوبیس ارب کی طرف جا رہا ہے، اس سے اگلے سال اس قسم کی گروتھ قائم رکھنے کے لئے یہ تیس ارب ڈالر ہو جائے گا۔ دس گیارہ ارب ڈالر سال کی قسط بھی دینی ہے تو یہ پینتیس چالیس ارب ڈالر سالانہ کہاں سے لے کر فنانس کرنا ہے۔ اگر ن کی حکومت ہوتی تو کیا وہ یہی کچھ جاری رکھتی اور اگلے پانچ سال ۲۰۰ ارب ڈالر ادھار لیتی۔ اور اگر ہاں تو کون دیتا دو سو ارب؟؟ دو سو ارب پر قسط بھی پچیس ارب کی ہوتی رائیٹ؟؟ آئی ایم ایف ہمیں چھ ارب سے زیادہ کبھی نہی دیتی، دے بھی دیتی تو اپنی شرائط مزید سخت کرتی۔ اور ہاں ڈالر پھر کتنے ہزار روپئے کا ہوتا۔ کیا یہ سب کچھ سمجھنا مشکل ہے؟ اپوزیشن نے گروتھ گروتھ کی رٹ لگا رکھی ہے لیکن کسی کو سمجھ نہی یا سمجھنا نہی چاہتے کہ اصل گروتھ امپورٹ ڈرِون گروتھ نہی ہوتی پروڈکشن ڈرِون اور ایکسپورٹ ڈرِون ہوتی ہے۔ اب پہلے قوم ان غلطیوں کی قیمت ادا کرے گی، گروتھ کے لئے بنیادی محرکات کو صحیح جگہ رکھا جائے گا اور جب بھی گروتھ ہوئی تو پھر وہ لمبے عرصے تک چلے گی۔ لیکن اس سب کا دارومدار موجودہ گورنمنٹ پر ہے کہ کہیں یہ بھی ووٹر کو خوش کرنے کے لیے اپنے آخری دو سال میں وہی کچھ تو نہی کرتی۔ بحرحالدسمبر میں چینی اور گندم کی وجہ سے ون ٹائم خسارہ ہے۔ لیکن جب پہیہ چلے گا تو خسارہ بھی ہوگا لیکن اس کو ایک خاص حد کے اندر رکھنا ضروری ہے۔ بعض اوقات فوری گندم چینی کی ضرورت بھی پڑے گی۔ آپ کو بڑی پکچر دیکھنی ہے کہ سالانی خسارہ دو اڑھائی فیصد سے زیادہ نہ ہو۔ اور امپورٹس بڑھیں تو کیپیٹل گڈز کی وجہ سے بڑھے نا کہ کنزیومر گڈز کی وجہ سے جیسا پہلے ہوئے۔ پاکستان کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کو پانچ سات ارب سے زیادہ نہی بڑھنے دیا جانا چاہیئے ورنہ غریب پھر مر جائے گا۔

اگر اس ملک میں بجلی کے نئے کارخانے نہ لگائے جاتے ، روڈ انفراسٹرکچر بہتر نہ کیا جاتا اور سب سے بڑھ کر مہنگی جنگیں لڑ کر امن و امان کی صورتحال بہتر نہ کی جاتی تو آج ہم کہاں ہوتے؟؟

کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ تارکین وطن کے بھجوائے گئے پیسوں کی وجہ سے کم ہوا ہے ایکسپورٹ نون لیگ کے آخری سال سے اب بھی کم ہیں جب کہ اب امن و امان کی صورتحال بہت بہتر ہے، انرجی کرائسس نہ ہونے کے برابر ہے ، اب یورپ امریکہ میں لوگوں کے پاس حکومت کی طرف سے مفت امداد کافی ہے اور اس کو خرچ کیلئے کوئی جگہ نہیں اس لئے وہ کپڑے ، جوتے ، بیڈ شیٹ ، ٹاول خرید رہے ہیں دوسرے جولائی-اکتوبر میں بنگلہ دیش بند تھا ان سب چیزوں کا پاکستان کے ٹیکسٹائل ایکسپورٹر کو فائدہ ہوا لیکن وہ بھرپور فائدہ نہیں اٹھا سکا ،

تارکین وطن کے بھجوائے گئے پیسوں میں بڑھوتری کی وجہ یہ ہے کہ اب ایئر لائنز بند ہونے کی وجہ ہنڈی کا کاروبار بہت متاثر ہوا دوسرے عام پاکستانی بھی اب بینک سے پیسے بھجوانے کو ترجیح دے رہا ہے ایف اے ٹی ایف کی وجہ سے پاکستانی بینکوں نے اب کافی سہولتیں دینا شروع کردی ہیں اور پچھلے دو سالوں میں بے تحاشا لوگوں نے ترک وطن کیا ہے کیونکہ یہاں پاکستان میں لاکھوں لوگوں کا کاروبار تباہ ہوگیا اور اس سے کہیں زیادہ لوگوں کی نوکریاں چلی گئیں​
 

Rajarawal111

Prime Minister (20k+ posts)


راجہ بھائی آپ اعلی تعلیم یافتہ بھی ہیں اور اچھی پوسٹ پر تعینات بھی ۔ لیکن کیا یہ سمجھنا مشکل ہے کہ ہمارا ڈالروں میں خسارہ جتنا بھی ہوگا اسے باہر سے ڈالروں میں ادھار لے کر پورا کرنا پڑے گا۔ اس سے روپئہ گرے گا، مہنگائی ہوگی، ریزرو بھی گریں گے، کساد بازاری بھی ہوگی اور شرح سود بھی بڑھے گی ۔ میں تو بیسیوں دفعہ آپ سے پوچھ چکا ہوں کہ چاہے آپ لوہا سریہ اور مشین بھی خرید رہے ہوتے تو خسارہ اور قسطیں تو پھر بھی ادا کرنی ہی تھیں کہ نہی۔ میں نے بارہا پوچھا کہ اگر اسہ نہج پر چلتے تو پانچ سال میں کیا ہمیں ۲۰۰ ارب ڈالر نہ چاہیئے ہوتے اس خسارے کو برج کرنے کے لئے۔ کیا ہمیں وہ ملتے؟ دراصل آپ کی قرض ملنے کی بھی ایک لمٹ ہے اس سے باہر نکلیں گے تو دیوالیہ ہونا لازم ٹھہر جاتا ہے۔ حالنکہ یہ خسارہ مشینوں اور سرئیے کا نہی تھا لیکن ہوتا بھی تو غلط تھا۔ پاکستان جیسی اکانومی کو اپنا کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ پانچ چھ ارب سے زیادہ نہی ہونے دینا چاہیے۔
میاں صاحب کی حکومت کا دوسرا بڑا مسئلہ یہ تھا کہ انہوں نے ایکسپورٹ بڑھانے کے لئے ایکسپورٹ انڈسٹری کو کچھ نہی دیا بلکہ تین سال تک ان کے ریفنڈز کے چار سو ارب دبا کر بیٹھے رہے۔ کوئی ٹیکسٹائل کمپنی ایسی نہ تھی جس کا پندرہ بیس کروڑ دبا نہ رہا تھا۔ پانچ سال میں ایکسپورٹ بڑھنے کی بجائے ۲۵ سے ۲۲ ارب پر آ گئیں۔ بجلی نہ ہونے کا بہانہ بنایا گیا لیکن ساتھ ہی گورنمنٹ کی یہ پالیسی بھی تھی کہ لوڈ شیڈنگ صرف ڈومیسٹک ترسیل پر ہو رہی ہے اور پالیسی کے تحت انڈسٹری کو بغیر تعطل بجلی دی جائے گی۔ ایکسپورٹ کو ہی دیکھتے ہوئے ان کی سب سے بڑی غلطی یہ تھی کہ ڈالر کو باندھے رکھنے سے امپورٹ تو سستی رہی لیکن ہماری ایکسپورٹس گڈز کی قیمتیں بہت زیادہ تھیں اور ہم مقابلہ نہی کر سکتے تھے۔
ایکسپورٹ ہی اگر تیس ارب ہو جاتی تو یہ خسارہ ۱۲ ارب پر ہوتا لیکن میاں صاحب نے ملکہ اکانومی کا نہیں سوچا بلکہ ووٹر کو وقتی خوش کیا جو کہ نہی جانتا تھا کہ اس کی بھاری قیمت بھی ادا کرنی ہے۔

راجہ صاحب میرے لئے عمران خان اندھوں میں کانا راجہ ہے۔ زراداری اور شریفوں کے ہوتے اسے بہتر چائس سمجھتا ہوں اس کے باوجود کہ یہ اسٹیبلشمنٹ کی چھتری کی نیچے بہت زیادہ دب گیا ہے۔ ایسا نہی ہے کہ کچھ ایسا نہی کہ میں اس پر تنقید نہ کر سکوں۔ دو بڑے مسائل جہاں مجھے حکومت کی ناکامی نظر آتی ہے وہ ہیں ادارہ جاتی اصلاحات نہ ہونا اور دوسری سب سے بڑی کمزوری ریوینئو کالیکشن ہے۔ ٹیکس کالیکشن میں صرف پانچ فیصد اضافہ بہت کم ہے۔ اتنا اضافہ تو کچھ نہ بھی کرتے تو ہو جاتا کیونکہ سیلز ٹیکس کالیکشن تو قیمتیں بڑھنے کے ساتھ ساتھ خود ہی بڑھنا چاہیئے تھی۔ مثلا اگر پچھلے سال میں ایک پنکھا تین ہزار کا لیتا تو اس پر چار سو چھتیس سیلز ٹیکس تھا لیکن اگر وہی پنکھا اس سال بتیس سو کا ہے تو اس پر سیلز ٹیکس چار سو پینستھ کٹے گا۔

عباسی صاحب،
کس کو نہیں معلوم کہ سردیوں میں گیس کی کھپت زیادہ ہوتی ہے، اس میں سپیکولیشن والی کون سی بات ہے؟؟ اس لئے ہم اس کا ٹینڈر ہرسال چار سے چھ مہینے پہلے کرتے ہیں تاکہ اچھا ریٹ مل سکے ، حتیٰ کہ پچھلے سال (٢٠١٩) میں بھی اس حکومت نے جولائی/اگست میں ٹینڈر کردئے تھے ، اس سال میڈیا اور اپوزیشن نے ستمبر اکتوبر میں شور مچانا شروع کیا اور آخر کار نومبر میں حکومت نے دسمبر /جنوری کیلئے ٹینڈر کرنے شروع کئے اور نتیجہ یہ نکلا کہ کچھ ہفتوں کیلئے سرے سے بولیاں ہی نہیں آئیں اور جن کیلئے بولیاں آئیں ان میں ریٹ بہت زیادہ تھا اور جب ان زیادہ ریٹس پر بھی خریدنے کو تیار ہوگئے تو بولی دینے والے بھی بھاگ گئے

اب پھر وہی قطر مدد کو آیا جس کے بارے آپ کے ساتھ انصافی کیا کیا کچھ نہیں کہتے تھے ، آپ تو ناروے میں مزے سے بیٹھے انجوائے کررہے ہیں ہم نے یہاں اس سخت سردی میں ایل پی جی ہی پھونکنی تھی​

جہاں تک مجھے پتا ہے ایل یں جی کے کنٹریکٹ ریٹ کو خفیہ رکھا گیا تھا - جو کہ اس کی شرط تھی - یہ اس وقت کسی کو نہیں پتا تھا کہ کیا ریٹ لگا ہے - یہ تو نیب اور عدالت تک آنے کے بعد اس کا ریٹ پتا چلا اور یہ بھی پتا چلا کہ بھارت اور بنگلہ دیش دونوں اوسطا اس ریت سے مہنگی ایل این جی قطر سے خریدتے تھے - پھر اس کا ریت فیکس نہ ہونا اور اس کا تیل کی قیمت کے ساتھ منسلک ہونا کیا اچھی بات نہیں تھی ؟؟ اور کیا دنیا میں ایل این جی کی قیمت اسی طریقے سے نہیں لگائی جاتی ؟

اپ نے لکھا کہ "ویسے باقی معاملات دیکھے جائیں تو شبہ ضرور ہوتا ہے کہ کچھ نہ کچھ کمیشن کھایا گیا ہوگا" - میں نے عمران خان کے انہی کرتوتوں کا ذکر کیا تھا - اس واویلے کے بعد ھمیں کوئی کم قیمت پر کونتریکٹ ملیں گے یا نہیں یہ الله ہی جانتا ہے - مفتاح اسماعیل اور شاہد خاقان کو مہینوں جیل میں رکھ کر ان پر کوئی فرد جرم نہ لگانا - اور اس کی بعد بھی آپ کہتے ہیں کہ "کچھ نہ کچھ کمیشن کھایا گیا ہوگا" --- الله کا خوف بھی کوئی چیز ہوتی ہے شاہد صاحب ؟

دوسری بات شاہد صاحب کرنٹ اکاونٹ کی ہے تو سر میں کون سا یہ کیہ رہا ہوں کہ ہمیں برامداد کرنی ہی نہیں چاہیے - بحث صرف اس بات پر ہے کہ اس پر اتنا واویلہ کیوں مچتا تھا - اس دور میں ملک کی تاریخ کے تیز ترین انفرا اسٹرکچر میں ترقی ہو رہی تھی - اس کا مطلب یہ تو نہیں تھا کہ یہ ہمیشہ سے ایسے ہی رہتا - الله کرے ہماری برامداد بڑھیں - الله کرے ہندوستان اور بنگلہ دیش کے میدان میں نہ ہونے سے جو ٹیکس ٹائل مارکیٹ ہم نے کیپچر کی ہے ہمارے پاس ہی رھیں - بحث اس بات پر ہے کہ خسارے کی موجودہ کمی کی وجہ ہماری اندرونی معیشت کا جمود ہے اور فورن ریمٹنس ہے - ایک دوسرے تھریڈ میں میں نے اس کا ذکر کیا تھا کہ مڈل ایسٹ میں خوف کا عالم ہے اور پاکستانی اپنی جمع پونجی نکال رہے ہیں - ہمیں بہت زیادہ ڈھول طاشے نہیں بجانے چاہیے
 

Shahid Abassi

Minister (2k+ posts)
جہاں تک مجھے پتا ہے ایل یں جی کے کنٹریکٹ ریٹ کو خفیہ رکھا گیا تھا - جو کہ اس کی شرط تھی - یہ اس وقت کسی کو نہیں پتا تھا کہ کیا ریٹ لگا ہے - یہ تو نیب اور عدالت تک آنے کے بعد اس کا ریٹ پتا چلا اور یہ بھی پتا چلا کہ بھارت اور بنگلہ دیش دونوں اوسطا اس ریت سے مہنگی ایل این جی قطر سے خریدتے تھے - پھر اس کا ریت فیکس نہ ہونا اور اس کا تیل کی قیمت کے ساتھ منسلک ہونا کیا اچھی بات نہیں تھی ؟؟ اور کیا دنیا میں ایل این جی کی قیمت اسی طریقے سے نہیں لگائی جاتی ؟

اپ نے لکھا کہ "ویسے باقی معاملات دیکھے جائیں تو شبہ ضرور ہوتا ہے کہ کچھ نہ کچھ کمیشن کھایا گیا ہوگا" - میں نے عمران خان کے انہی کرتوتوں کا ذکر کیا تھا - اس واویلے کے بعد ھمیں کوئی کم قیمت پر کونتریکٹ ملیں گے یا نہیں یہ الله ہی جانتا ہے - مفتاح اسماعیل اور شاہد خاقان کو مہینوں جیل میں رکھ کر ان پر کوئی فرد جرم نہ لگانا - اور اس کی بعد بھی آپ کہتے ہیں کہ "کچھ نہ کچھ کمیشن کھایا گیا ہوگا" --- الله کا خوف بھی کوئی چیز ہوتی ہے شاہد صاحب ؟

راجہ بھائی ۔ انڈیا کے قطر سے خریدی لانگ ٹرم کانٹریکٹس پر ایل این جی کے ریٹس پاکستان سے کم ہیں۔ ان کا معائدہ بھی ۲۰۱۵ ہی میں ہوا تھا اور انہیں ۱۲ اعشاریہ سڑسٹھ کا ریٹ ملا تھا اور ہمیں ۱۳ اعشاریہ صفر نو کا۔ دوسری بات کہ بھارت نے اسی وقت ایک معائدہ روس کی گیزپرام سے ساڑھے گیارہ پر کیا تھا اور ایکزان موبائل سے تیسرا معائدہ کیا جو ۱۲ کے قریب ہے۔ تیسری بات یہ کہ بھارت نے بعد میں یہ معائدے ری نیگوشیئیٹ بھی کئے اور قیمتوں میں مزید کمی حاصل کی۔
جب میں یہ کہتا ہوں کہ لگتا ہے کہ کوئی کمیشن ضرور کھایا ہو گا تو میں ن لیگ کے باقی معاملات کو مدِنظر رکھ کر بات کرتا ہوں۔ جس قدر منی لانڈرنگ ٹی ٹیاں اور باقی معاملات سامنے آئے ہیں وہ سب کے سامنے ہیں۔ ملتان سے سکھر موٹروے چھ لین موٹر وے ہے اور اس کی قیمت سات ملین ڈالرز فی کلومیٹر سے زیادہ ہے لیکن اب جو ٹینڈرز ہورہے ہیں سکھر سے حیدرآباد سیکشن کے لئے وہ پانچ سے ساڑھے پانچ ملین ڈالر پر ہورہے ہیں حالانکہ اب پہلے کی نسبت مہنگائی ہے اور قیمت کم ہونے کی بجائے بڑھنی چاہیئے تھی۔ اسی طرح اور بھی بہت سے معاملات ہیں جن پر ہمارا متفق ہونا تو ضروری نہی لیکن ایک ان بائسڈ شخص کے لئے کھلی کتاب کی طرح ہیں۔
شاہد خاقان اور مفتاح کے خلاف ریفرنس دائر ہوتے ہیں یا نہی یہ ابھی بہت بعد کی بات ہے کیونکہ ابھی تحقیقات ہی ختم نہی ہوئیں۔ ویسے بھی اس ملک میں کبھی کسی کرپٹ کو سزا ملنی ہی نہی ہے کہ اسٹیبلشمنٹ یہ چاہتی ہی نہی۔ وہ تو اسے صرف بلیک میلنگ اور پولیٹیکل مینیجمنٹ کے لئے ایک ٹول کے طور پر استعمال کرتی ہے ورنہ تو زرداری اب تک کئی دفعہ ٹانگ دیا گیا ہوتا۔



دوسری بات شاہد صاحب کرنٹ اکاونٹ کی ہے تو سر میں کون سا یہ کیہ رہا ہوں کہ ہمیں برامداد کرنی ہی نہیں چاہیے - بحث صرف اس بات پر ہے کہ اس پر اتنا واویلہ کیوں مچتا تھا - اس دور میں ملک کی تاریخ کے تیز ترین انفرا اسٹرکچر میں ترقی ہو رہی تھی - اس کا مطلب یہ تو نہیں تھا کہ یہ ہمیشہ سے ایسے ہی رہتا - الله کرے ہماری برامداد بڑھیں - الله کرے ہندوستان اور بنگلہ دیش کے میدان میں نہ ہونے سے جو ٹیکس ٹائل مارکیٹ ہم نے کیپچر کی ہے ہمارے پاس ہی رھیں - بحث اس بات پر ہے کہ خسارے کی موجودہ کمی کی وجہ ہماری اندرونی معیشت کا جمود ہے اور فورن ریمٹنس ہے - ایک دوسرے تھریڈ میں میں نے اس کا ذکر کیا تھا کہ مڈل ایسٹ میں خوف کا عالم ہے اور پاکستانی اپنی جمع پونجی نکال رہے ہیں - ہمیں بہت زیادہ ڈھول طاشے نہیں بجانے چاہیے
نہ جانے کیوں مجھے معلوم ہوتا ہے کہ آپ سمجھتے ہوئے بھی یہ بات سمجھنا ہی نہی چاہتے لیکن ایک چھوٹی سی ٹرائی پھر کرتا ہوں وعدہ کریں کہ اسے غور سے پورا پڑھیں گے۔

۔(۱) واویلا اس لئے کیا جارہا ہے کہ جب ایک دفعہ کرنٹ اکاؤنٹ میں ایک حد سے زیادہ خسارہ ہو جاتا ہے تو اسے واپس موڑنے کی بہت ہی بھاری قیمت ادا کرنی پڑتی ہے۔یہ ایک دلدل میں کھودا گیا گڑھا ہوتا ہے جسے بھرنے میں سالوں لگتے ہیں اور عوام ایک بہت بڑی قیمت ادا کرتے ہیں۔ کئی کئی سالوں تک مہنگائی اور کساد بازاری رہتی ہے، کرنسی ڈیپریشیئیٹ ہو جاتی ہے اور گروتھ رک جاتی ہے یعنی پوری معیشت کا ستیاناس ہو جاتا ہے۔ ایسا نہی ہے کہ جب خسارہ بہت بڑھ جائے تو بس امپورٹ کم کر دو اور سب کچھ ٹھیک۔اس کے سائیڈ افیکٹس بہت بھیانک ہوتے ہیں۔ اس میکانزم کو آپ کو سمجھنا ہو گا۔

کیا آپ کو معلوم ہے کہ سٹیٹ بنک نئے نوٹ کس حساب سے چھاپتا ہے اور ٹوٹل منی جو سرکولیشن میں ہوتی ہے اس کا حساب کیسے لگایا جاتا ہے؟ تو سنئیے۔ کسی معیشت میں تمام اشیا(بشمول امپورٹڈ اشیا) اور سروسز کی مجموعی مالیت کے برابر ہی نوٹ سرکولیٹ کرنے دیئے جاتے ہیں تاکہ نوٹوں کی خریدنے کی طاقت اشیا کی ویلیو کے برابر رہے۔ اس سے طلب اور رسد میں بیلنس رہتا ہے اور انفلیشن یعنی مہنگائی نہی ہوتی۔

تو مسئلہ یہ ہے کہ امپورٹ کی گئی اشیا کی ویلیو کے برابر مزید نوٹ چھاپ کر معیشت میں ڈالے گئےیعنی میاں صاحب نے جتنی امپورٹ بڑھائی اتنے ہی نئے نوٹ بھی چھاپے۔۔ اب خسارہ کم کرنے کے لئے وہ امپورٹ اشیا تو مارکیٹ سے نکل گئے لیکن ہزاروں ارب کے چھاپے گئے نوٹ جو امپورٹڈ اشیا کو آف سیٹ کرتے تھے وہ تو نہی نکالے جا سکتے نا؟ تو رزلٹ یہ ہوا کہ اشیا کم ہو گئیں اور نوٹ اتنے ہی رہے۔ یعنی رسد کم ہو گئی لیکن طلب (نوٹ) اتنی ہی رہی۔ اس سے مہنگائی ہوتی ہے اور اشیا اور نوٹوں کے بیلنس ہونے تک سالوں قائم رہتی ہے۔ ان اضافی نوٹوں کے خریداری میں لگنے کو کم کرنے کے لئے سود بڑھایا جاتا ہے تاکہ لوگ خرچ کرنے کی بجائے سیونگ کریں اور ادھار لے کر خرچ نہ کریں۔ یہی ایک طریقہ ہوتا ہے اس صورت میں اشیا اور نوٹوں کی خریداری کی طلب کو بیلنس کرنے کا۔ اب سود بڑھاؤ تو سو دوسرے مسئلے۔ بزنسز بیٹھنے لگتے ہیں، وہ اپنے لونز پر ادائیگی نہی کر سکتے اور نئے مہنگے لون نہی لے سکتے۔ اس طرح یہ ایک جلد نہ ختم ہونے والا بھیانک سرکل چلتا ہے جو بعض اوقات دس دس سال تک گروتھ کو روک دیتا ہے۔ مصر اور یونان آپ کے سامنے ہیں۔
 

Shahid Abassi

Minister (2k+ posts)

عباسی صاحب،
کس کو نہیں معلوم کہ سردیوں میں گیس کی کھپت زیادہ ہوتی ہے، اس میں سپیکولیشن والی کون سی بات ہے؟؟ اس لئے ہم اس کا ٹینڈر ہرسال چار سے چھ مہینے پہلے کرتے ہیں تاکہ اچھا ریٹ مل سکے ، حتیٰ کہ پچھلے سال (٢٠١٩) میں بھی اس حکومت نے جولائی/اگست میں ٹینڈر کردئے تھے ، اس سال میڈیا اور اپوزیشن نے ستمبر اکتوبر میں شور مچانا شروع کیا اور آخر کار نومبر میں حکومت نے دسمبر /جنوری کیلئے ٹینڈر کرنے شروع کئے اور نتیجہ یہ نکلا کہ کچھ ہفتوں کیلئے سرے سے بولیاں ہی نہیں آئیں اور جن کیلئے بولیاں آئیں ان میں ریٹ بہت زیادہ تھا اور جب ان زیادہ ریٹس پر بھی خریدنے کو تیار ہوگئے تو بولی دینے والے بھی بھاگ گئے

اب پھر وہی قطر مدد کو آیا جس کے بارے آپ کے ساتھ انصافی کیا کیا کچھ نہیں کہتے تھے ، آپ تو ناروے میں مزے سے بیٹھے انجوائے کررہے ہیں ہم نے یہاں اس سخت سردی میں ایل پی جی ہی پھونکنی تھی​
سرجی۔ میں مانتا ہوں کہ حکومت کی غلطی ہے انہیں معمول کے مطابق ٹینڈر کر دینے چاہیئں تھے لیکن ان کی وضاحت بھی سمجھتا ہوں کہ کیوں ایسا کیا گیا۔ جب ڈلائٹ جیسے کنسلٹنٹ یہ فور کاسٹ کریں کہ تیل کی قیمت سارا سال کم ہی رہے گی تو فیوچر خریدنے کی بجائے سپاٹ پرچیز میں پیسہ بچتا ہے۔ یعنی جب تیل ۳۰ ڈالر کا تھا تو چھ ماہ کی فیوچر پرائس اکتالیس ڈالر فی بیرل کی تھی۔ اب صورتحال یہ ہے کہ کووڈ ہمیشہ تو نہی آتا، پہلی دفعہ یہ صورت حال پیش آئی ہے۔ اور اس صورت میں سوچا گیا کہ انٹرنیشنل کلسلٹنٹس کے مطابق دسمبر جنوری کی سپاٹ پرائس کم ملے گی۔ لیکن ایسا نہ ہوا اور تیل ۵۳ ڈالر کا ہو گیا اور اسی حساب سے ایل این جی کی قیمت بھی بڑھ گئی۔ ان کی قسمت اچھی تھی کہ مہنگی ڈلیوریز سے کمپنیاں خود ہی بھاگ گئیں اور اپنا ۳ لاکھ ڈالر بھی چھوڑ گئیں اور ساتھ ہی انہیں سستی گیس بھی مل گئی۔
اور ہاں یہ کوئی کام نہی آیا نہ قطر نہ کوئی اور۔ یورپئین مڈل مین کے پاس وافر گیس موجود تھی جو کہ وہ بیچ نہی سک رہے تھے۔ اور ایسی تین پارٹیاں تھیں۔
 

Resilient

Minister (2k+ posts)
راجہ بھائی ۔ انڈیا کے قطر سے خریدی لانگ ٹرم کانٹریکٹس پر ایل این جی کے ریٹس پاکستان سے کم ہیں۔ ان کا معائدہ بھی ۲۰۱۵ ہی میں ہوا تھا اور انہیں ۱۲ اعشاریہ سڑسٹھ کا ریٹ ملا تھا اور ہمیں ۱۳ اعشاریہ صفر نو کا۔ دوسری بات کہ بھارت نے اسی وقت ایک معائدہ روس کی گیزپرام سے ساڑھے گیارہ پر کیا تھا اور ایکزان موبائل سے تیسرا معائدہ کیا جو ۱۲ کے قریب ہے۔ تیسری بات یہ کہ بھارت نے بعد میں یہ معائدے ری نیگوشیئیٹ بھی کئے اور قیمتوں میں مزید کمی حاصل کی۔
جب میں یہ کہتا ہوں کہ لگتا ہے کہ کوئی کمیشن ضرور کھایا ہو گا تو میں ن لیگ کے باقی معاملات کو مدِنظر رکھ کر بات کرتا ہوں۔ جس قدر منی لانڈرنگ ٹی ٹیاں اور باقی معاملات سامنے آئے ہیں وہ سب کے سامنے ہیں۔ ملتان سے سکھر موٹروے چھ لین موٹر وے ہے اور اس کی قیمت سات ملین ڈالرز فی کلومیٹر سے زیادہ ہے لیکن اب جو ٹینڈرز ہورہے ہیں سکھر سے حیدرآباد سیکشن کے لئے وہ پانچ سے ساڑھے پانچ ملین ڈالر پر ہورہے ہیں حالانکہ اب پہلے کی نسبت مہنگائی ہے اور قیمت کم ہونے کی بجائے بڑھنی چاہیئے تھی۔ اسی طرح اور بھی بہت سے معاملات ہیں جن پر ہمارا متفق ہونا تو ضروری نہی لیکن ایک ان بائسڈ شخص کے لئے کھلی کتاب کی طرح ہیں۔
شاہد خاقان اور مفتاح کے خلاف ریفرنس دائر ہوتے ہیں یا نہی یہ ابھی بہت بعد کی بات ہے کیونکہ ابھی تحقیقات ہی ختم نہی ہوئیں۔ ویسے بھی اس ملک میں کبھی کسی کرپٹ کو سزا ملنی ہی نہی ہے کہ اسٹیبلشمنٹ یہ چاہتی ہی نہی۔ وہ تو اسے صرف بلیک میلنگ اور پولیٹیکل مینیجمنٹ کے لئے ایک ٹول کے طور پر استعمال کرتی ہے ورنہ تو زرداری اب تک کئی دفعہ ٹانگ دیا گیا ہوتا۔




نہ جانے کیوں مجھے معلوم ہوتا ہے کہ آپ سمجھتے ہوئے بھی یہ بات سمجھنا ہی نہی چاہتے لیکن ایک چھوٹی سی ٹرائی پھر کرتا ہوں وعدہ کریں کہ اسے غور سے پورا پڑھیں گے۔

۔(۱) واویلا اس لئے کیا جارہا ہے کہ جب ایک دفعہ کرنٹ اکاؤنٹ میں ایک حد سے زیادہ خسارہ ہو جاتا ہے تو اسے واپس موڑنے کی بہت ہی بھاری قیمت ادا کرنی پڑتی ہے۔یہ ایک دلدل میں کھودا گیا گڑھا ہوتا ہے جسے بھرنے میں سالوں لگتے ہیں اور عوام ایک بہت بڑی قیمت ادا کرتے ہیں۔ کئی کئی سالوں تک مہنگائی اور کساد بازاری رہتی ہے، کرنسی ڈیپریشیئیٹ ہو جاتی ہے اور گروتھ رک جاتی ہے یعنی پوری معیشت کا ستیاناس ہو جاتا ہے۔ ایسا نہی ہے کہ جب خسارہ بہت بڑھ جائے تو بس امپورٹ کم کر دو اور سب کچھ ٹھیک۔اس کے سائیڈ افیکٹس بہت بھیانک ہوتے ہیں۔ اس میکانزم کو آپ کو سمجھنا ہو گا۔

کیا آپ کو معلوم ہے کہ سٹیٹ بنک نئے نوٹ کس حساب سے چھاپتا ہے اور ٹوٹل منی جو سرکولیشن میں ہوتی ہے اس کا حساب کیسے لگایا جاتا ہے؟ تو سنئیے۔ کسی معیشت میں تمام اشیا(بشمول امپورٹڈ اشیا) اور سروسز کی مجموعی مالیت کے برابر ہی نوٹ سرکولیٹ کرنے دیئے جاتے ہیں تاکہ نوٹوں کی خریدنے کی طاقت اشیا کی ویلیو کے برابر رہے۔ اس سے طلب اور رسد میں بیلنس رہتا ہے اور انفلیشن یعنی مہنگائی نہی ہوتی۔

تو مسئلہ یہ ہے کہ امپورٹ کی گئی اشیا کی ویلیو کے برابر مزید نوٹ چھاپ کر معیشت میں ڈالے گئےیعنی میاں صاحب نے جتنی امپورٹ بڑھائی اتنے ہی نئے نوٹ بھی چھاپے۔۔ اب خسارہ کم کرنے کے لئے وہ امپورٹ اشیا تو مارکیٹ سے نکل گئے لیکن ہزاروں ارب کے چھاپے گئے نوٹ جو امپورٹڈ اشیا کو آف سیٹ کرتے تھے وہ تو نہی نکالے جا سکتے نا؟ تو رزلٹ یہ ہوا کہ اشیا کم ہو گئیں اور نوٹ اتنے ہی رہے۔ یعنی رسد کم ہو گئی لیکن طلب (نوٹ) اتنی ہی رہی۔ اس سے مہنگائی ہوتی ہے اور اشیا اور نوٹوں کے بیلنس ہونے تک سالوں قائم رہتی ہے۔ ان اضافی نوٹوں کے خریداری میں لگنے کو کم کرنے کے لئے سود بڑھایا جاتا ہے تاکہ لوگ خرچ کرنے کی بجائے سیونگ کریں اور ادھار لے کر خرچ نہ کریں۔ یہی ایک طریقہ ہوتا ہے اس صورت میں اشیا اور نوٹوں کی خریداری کی طلب کو بیلنس کرنے کا۔ اب سود بڑھاؤ تو سو دوسرے مسئلے۔ بزنسز بیٹھنے لگتے ہیں، وہ اپنے لونز پر ادائیگی نہی کر سکتے اور نئے مہنگے لون نہی لے سکتے۔ اس طرح یہ ایک جلد نہ ختم ہونے والا بھیانک سرکل چلتا ہے جو بعض اوقات دس دس سال تک گروتھ کو روک دیتا ہے۔ مصر اور یونان آپ کے سامنے ہیں۔

شاہد صاحب

ایک لطیفہ یاد آرہا ہے ، ایک دکاندار سے ایک گاہک نے چینی پوچھی تو اس نے کہا کہ میرے پاس نہیں ہے ، گاہک نے پوچھا کہ ریٹ کیا چل رہا ہے تو اس نے جواب دیا کہ پچاس روپے فی کلو ، وہ گاہک اگلی دکان پر گیا جہاں چینی موجود تھی لیکن وہ سو روپے سے کم نہیں دے رہا تھا تو گاہک نے کہا فلاں دکاندار پچاس روپے فی کلو بتا رہا ہے تو اس نے جواب دیا کہ جب میرے پاس چینی نہیں ہوتی تو میں بیس روپے کلو بیچتا ہوں!! یہی حال پی ٹی آئی کی حکومت کا ہے، سکھر حیدرآباد موٹر وی کا ٹھیکہ نون لیگ نے چین کو دیا تھا جو ١.٧ ارب ڈالر میں بنا کر دے رہی تھا لیکن پی ٹی آئی کی حکومت نے ری-ٹیندر کئے اور اعلان کیا کہ ہم پچاس ملین روپے فی کلومیٹر بچا رہے ہیں ، حالانکہ یہ کراچی-حیدرآباد موٹر وے سے پچاس ملین روپے فی کلومیٹر زیادہ تھا

اس کے ٹینڈر دسمبر ٢٠١٨ میں کھلنے تھے مگر ابھی تک نہیں کھلے کیونکہ مقصد صرف پوائنٹ سکورنگ تھا ، ہر چھ مہینے بعد پلاننگ ڈویژن اس منصوبے کو ٹاکی شاکی مارتی ہے اور پچاس ارب روپے قیمت بڑھا دیتی ہے ، پچھلے سال جون میں اس کی لاگت ٢٠٤ ارب بتائی گئی اور ابھی دسمبر میں کہا گیا کہ پرائیویٹ کنٹریکٹر کو پیسے دینے ہیں اس لئے منصوبہ شروع نہیں ہورہا ، مارچ میں شروع ہوگا یعنی ٹرک کی بتی

پاکستان نے اس کے بعد بھی دو معاہدے کئے جو گیارہ اور پونے گیارہ فیصد پر تھے یعنی بھارت اور چین سے بھی کم ریٹ پر ، ایل این جی معاہدے بہت گنجلک ہوتے ہیں ، کم مدتی معاہدے سستے ہوتے ہیں کیونکہ اس میں سپلائر کو فائدہ ہوتا ہے کہ اگلا معاہدہ ختم ہونے کے بعد وہ نئے ریٹ پر معاہدہ کرسکتا ہے ، اسی طرح ملکی صورتحال کا عمل دخل بھی ہوتا ہے ، تب ہماری سیکیورٹی صورتحال بہت خراب تھی ، سپلائر کو انشورنس میں مد میں زیادہ پیسے دینے پڑ رہے تھے اور یہ پاکستان کا پہلا معاہدہ تھا اس میں رسک زیادہ تھا

 

Resilient

Minister (2k+ posts)
سرجی۔ میں مانتا ہوں کہ حکومت کی غلطی ہے انہیں معمول کے مطابق ٹینڈر کر دینے چاہیئں تھے لیکن ان کی وضاحت بھی سمجھتا ہوں کہ کیوں ایسا کیا گیا۔ جب ڈلائٹ جیسے کنسلٹنٹ یہ فور کاسٹ کریں کہ تیل کی قیمت سارا سال کم ہی رہے گی تو فیوچر خریدنے کی بجائے سپاٹ پرچیز میں پیسہ بچتا ہے۔ یعنی جب تیل ۳۰ ڈالر کا تھا تو چھ ماہ کی فیوچر پرائس اکتالیس ڈالر فی بیرل کی تھی۔ اب صورتحال یہ ہے کہ کووڈ ہمیشہ تو نہی آتا، پہلی دفعہ یہ صورت حال پیش آئی ہے۔ اور اس صورت میں سوچا گیا کہ انٹرنیشنل کلسلٹنٹس کے مطابق دسمبر جنوری کی سپاٹ پرائس کم ملے گی۔ لیکن ایسا نہ ہوا اور تیل ۵۳ ڈالر کا ہو گیا اور اسی حساب سے ایل این جی کی قیمت بھی بڑھ گئی۔ ان کی قسمت اچھی تھی کہ مہنگی ڈلیوریز سے کمپنیاں خود ہی بھاگ گئیں اور اپنا ۳ لاکھ ڈالر بھی چھوڑ گئیں اور ساتھ ہی انہیں سستی گیس بھی مل گئی۔
اور ہاں یہ کوئی کام نہی آیا نہ قطر نہ کوئی اور۔ یورپئین مڈل مین کے پاس وافر گیس موجود تھی جو کہ وہ بیچ نہی سک رہے تھے۔ اور ایسی تین پارٹیاں تھیں۔

یہ تو جوا ہوا یعنی حکومت نے سپیکولیٹ کیا کہ سارا سال یہی ریٹ رہیں گے ، کیا حکومتی معاملات سپیکولیشن پر چلانے چاہئیں؟؟​
 
Sponsored Link