مجھے جنرل فیض حمید کا فون آیا،ابصارعالم کے الزامات پر عامرلیاقت کا جواب

amir-liaquat-absar-11231.jpg


سابق چئیرمین پیمرا ابصار عالم نے دعویٰ کیا کہ جب بطورچیئرمین پیمرا میں نے عامر لیاقت کے شو پر پابندی لگائی کیونکہ وہ صحافیوں کی فیملی کو گالیاں دیتے تھے، دشنام طرازی، کفر کے فتوے لگاتے تھے، اخلاق سے گری ہوئی گالیاں دیتے رہے۔

ابصار عالم نے دعویٰ کیا کہ اسی دوران جنرل فیض حمید کا مجھے فون آیا کہ میں آپ سے ملنا چاہتا ہوں،ہم نے سمجھا کوئی سیکیورٹی اشو ہوگا، وہ آئے اور کہنے لگے عامر لیاقت کو کچھ نہ کہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ میں نے جنرل فیض حمید کو انکار کردیا اور وہ چلے گئے۔


ابصارعالم کے اس دعوے پر عامر لیاقت کا ردعمل بھی آگیا اور کہا کہ کائنات میں انسانوں کی تخلیق کے بعد جب جزبات منفی و مثبت کی تشکیل کا مرحلہ آیا تو جھوٹ سانپ کے منہ میں چھپ گیا تھا ۔کورٹ میں چیلنج کرو اپنی بات کو کاذب زمانہ!


عامر لیاقت نے مزید کہا کہ عامر کیاقت کو کچھ نہ کہیں ،کونسل آف کمپلینٹس میں اسی عامرلیاقت نے آپ کی دھجیاں اڑادی تھیں اگر بعد میں چھپو نہیں تو آڈیو ہیش کردوں ؟ تم کئی تھے میں ایک اور منہ چھپانے کی جگہ نہ تھی۔ Gay Rights والے کو مردوں ایسی بات زیب نہیں دیتیں ، کب تک فوج کو گالیاں دو گے؟


انکا مزید کہنا تھا کہ تھوڑی دیر کو مان لیتےُ ہیں کہ جنرل فیض حمید نے ایساکہا ہوگا تو ملک کے فوجی کسی کے لیے کچھ کہتے بھی ہیں (اگر کہا ہے) تو آپ نے اس وقت یہ ثابت کیوں نہ کیا؟

عامرلیاقت نے مزید کہا کہ تقرری سیاسی تھی اور عامر لیاقت نےُمقررہ وقت پر پیش کوکرایک ایک کو بھگایا (تاریخُ میں ہے) اس کا مطلب جنرل فیض صحیح تھے


انہوں نے ابصارعالم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جسٹس ثاقب نثار کی وہ ڈانٹ یاد ہے ،ابصار عباسلم کو چھچھورا قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کس کو خوش کررہے ؟


اس موقع پر عامرلیاقت نے ایک کلپ بھی شئیر کیا جس کی وجہ سے ان پر پابندی لگی تھی۔
 
Advertisement

ranaji

President (40k+ posts)
ویسے یہ کالیا کالا ک۔۔ر اور میراثی مثلی چوڑا ابصار گشتی زاد گشتی کی وہ ناجائز اولاد ہے جو پچھواڑے سے بھونکتی ہے نوازشریف بٹ کا پالتو کتا
 

The Sane

Chief Minister (5k+ posts)
amir-liaquat-absar-11231.jpg


سابق چئیرمین پیمرا ابصار عالم نے دعویٰ کیا کہ جب بطورچیئرمین پیمرا میں نے عامر لیاقت کے شو پر پابندی لگائی کیونکہ وہ صحافیوں کی فیملی کو گالیاں دیتے تھے، دشنام طرازی، کفر کے فتوے لگاتے تھے، اخلاق سے گری ہوئی گالیاں دیتے رہے۔

ابصار عالم نے دعویٰ کیا کہ اسی دوران جنرل فیض حمید کا مجھے فون آیا کہ میں آپ سے ملنا چاہتا ہوں،ہم نے سمجھا کوئی سیکیورٹی اشو ہوگا، وہ آئے اور کہنے لگے عامر لیاقت کو کچھ نہ کہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ میں نے جنرل فیض حمید کو انکار کردیا اور وہ چلے گئے۔


ابصارعالم کے اس دعوے پر عامر لیاقت کا ردعمل بھی آگیا اور کہا کہ کائنات میں انسانوں کی تخلیق کے بعد جب جزبات منفی و مثبت کی تشکیل کا مرحلہ آیا تو جھوٹ سانپ کے منہ میں چھپ گیا تھا ۔کورٹ میں چیلنج کرو اپنی بات کو کاذب زمانہ!


عامر لیاقت نے مزید کہا کہ عامر کیاقت کو کچھ نہ کہیں ،کونسل آف کمپلینٹس میں اسی عامرلیاقت نے آپ کی دھجیاں اڑادی تھیں اگر بعد میں چھپو نہیں تو آڈیو ہیش کردوں ؟ تم کئی تھے میں ایک اور منہ چھپانے کی جگہ نہ تھی۔ Gay Rights والے کو مردوں ایسی بات زیب نہیں دیتیں ، کب تک فوج کو گالیاں دو گے؟


انکا مزید کہنا تھا کہ تھوڑی دیر کو مان لیتےُ ہیں کہ جنرل فیض حمید نے ایساکہا ہوگا تو ملک کے فوجی کسی کے لیے کچھ کہتے بھی ہیں (اگر کہا ہے) تو آپ نے اس وقت یہ ثابت کیوں نہ کیا؟

عامرلیاقت نے مزید کہا کہ تقرری سیاسی تھی اور عامر لیاقت نےُمقررہ وقت پر پیش کوکرایک ایک کو بھگایا (تاریخُ میں ہے) اس کا مطلب جنرل فیض صحیح تھے


انہوں نے ابصارعالم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ جسٹس ثاقب نثار کی وہ ڈانٹ یاد ہے ،ابصار عباسلم کو چھچھورا قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کس کو خوش کررہے ؟


اس موقع پر عامرلیاقت نے ایک کلپ بھی شئیر کیا جس کی وجہ سے ان پر پابندی لگی تھی۔
ابصار حرامی، اگر تُو سفارش پر پیمرا کا چیرمین لگ سکتا ہے، تو دوسرے اپنی سفارش کیوں نا کروائیں
 

karachiwala

Chief Minister (5k+ posts)

دونوں ہی حرامی ہیں۔ دونوں ہی جھوٹے ہیں۔ دونوں ہی خبیث ہیں۔ ابصار عالم ہو یا جھوٹا ڈاکٹر گھامڑ کوئی فرق نہیں
 

ranaji

President (40k+ posts)
کالا کن۔ر ابصار چوڑا میراثی اورمثلی اپنی بیوی کا پمپ بیوی کے نام سے ایک این جی او بنوا کر غیر ملکی فنڈنگ وصول کرتا ہے انڈیا اسرائیل سمیت بہت سے ملکوں سے اس کی انکوائری کرانے کی ضرورت ہے
 

nawaz.sharif

MPA (400+ posts)
اپنی اہمیت بڑھا رہا ہے آئی ایس آئی کا چیف اس سے ملنے آیا تھا۔۔ اپنی طرح بالکل فارغ سمجھا ہے۔۔ ؟
Exactly - if something like this was to happen, it didn't need involvement/action by the chief himself - yeh kaam to koi major saab bhi aa ker ker saktay thay..
 
Sponsored Link