قطر کو پی آئی اے اور روز ویلٹ ہوٹل کے کتنے فیصد شیئرز کی پیشکش کا فیصلہ؟

rosvelt-shehbaz-pia-qater.jpg


حکومت نے گزشتہ روز قطر کو ایل این جی سے چلنے والے دو پاور پلانٹس فروخت کرنے کے منصوبے کو روک کر روزویلٹ ہوٹل، نیویارک اور پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز (پی آئی اے) میں 51 فیصد شیئرز خریدنے کی پیشکش دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

ایکسپریس ٹریبیون کا دعویٰ ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف نے یہ فیصلے آئندہ ہفتے اپنے دورہ قطر کی تیاریوں کے لیے بلائے گئے اجلاس کے دوران کیے، جو کہ 22 سے 23 اگست تک متوقع ہے۔ اجلاس میں وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل اور سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بھی شرکت کی۔

اخبار کے مطابق وزیراعظم نے اس ہفتے کے آخر تک ان تجاویز کو حتمی شکل دینے اور اگلے ہفتے روانگی سے قبل تمام کاغذی کارروائی مکمل کرنے کے لیے ایک کمیٹی بھی تشکیل دی ہے۔

اجلاس میں دو ایل این جی پاور پلانٹس قطر کو فروخت کرنے کے امکان پر غور کیا گیا۔ لیکن کچھ شرکاء کا خیال تھا کہ 104 بلین روپے کے قرض کی بہترین قیمت ایسے نہیں مل سکتی جو ان پاور پلانٹس پر واجب الادا ہے اور انہیں ریٹائر یا طویل مدتی فنانسنگ میں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

اخبار کا دعویٰ ہے کہ نیشنل پاور پارکس مینجمنٹ کمپنی لمیٹڈ کے پاس 1230 میگاواٹ حویلی بہادر شاہ اور 1223 میگاواٹ بلوکی پاور پلانٹس ہیں۔ یہ پاور پلانٹس 70:30 قرض سے ایکویٹی تناسب کے بجائے حکومتی فنڈنگ سے لگائے گئے تھے۔

وزارت خزانہ نے چند سال قبل ان پاور پلانٹس کی ایکویٹی پاکستان ڈویلپمنٹ فنڈ کی رقم سے خریدی تھی۔ حکومت کے 103.7 بلین روپے کے قرض کو بینک قرضوں کے ذریعے تبدیل کیا جانا ہے، جس سے حتمی قیمت میں خاطر خواہ کمی آئے گی۔

منصوبوں کی 70 فیصد لاگت کو ٹیرف پر مبنی سرمائے کے ڈھانچے کے مطابق پاور پلانٹس کی نجکاری کے لیے طویل مدتی فنانسنگ میں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

جب کہ ایک سینئر سرکاری اہلکار نے کہا کہ ایل این جی پلانٹس کی قیمتوں کا تعین فوری طور پر ممکن نہیں تھا لہذا، یہ پلانٹس سرمایہ کاری کے مقاصد کے لیے قطری حکومت کو پیش نہیں کیے جا سکتے۔

وزیر خزانہ اسماعیل نے اپنے 8.5 بلین ڈالر کی غیر ملکی آمد کے تخمینے میں ایل این جی پاور پلانٹس کی فروخت سے حاصل ہونے والی آمدنی کا حساب دیا تھا، جسے وہ اس مالی سال میں 35 بلین ڈالر کی مجموعی بیرونی مالیاتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے بڑھانا چاہتے تھے۔

اخبار کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ پاکستان قطر کو سرکاری ملکیت میں درج کمپنیوں میں 10 فیصد حصص کی پیشکش کرے، اسی طرح کی پیشکش پاکستان نے متحدہ عرب امارات کو بھی کی ہے۔
 

arifkarim

Prime Minister (20k+ posts)
Premium Member
rosvelt-shehbaz-pia-qater.jpg


حکومت نے گزشتہ روز قطر کو ایل این جی سے چلنے والے دو پاور پلانٹس فروخت کرنے کے منصوبے کو روک کر روزویلٹ ہوٹل، نیویارک اور پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز (پی آئی اے) میں 51 فیصد شیئرز خریدنے کی پیشکش دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

ایکسپریس ٹریبیون کا دعویٰ ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف نے یہ فیصلے آئندہ ہفتے اپنے دورہ قطر کی تیاریوں کے لیے بلائے گئے اجلاس کے دوران کیے، جو کہ 22 سے 23 اگست تک متوقع ہے۔ اجلاس میں وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل اور سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بھی شرکت کی۔

اخبار کے مطابق وزیراعظم نے اس ہفتے کے آخر تک ان تجاویز کو حتمی شکل دینے اور اگلے ہفتے روانگی سے قبل تمام کاغذی کارروائی مکمل کرنے کے لیے ایک کمیٹی بھی تشکیل دی ہے۔

اجلاس میں دو ایل این جی پاور پلانٹس قطر کو فروخت کرنے کے امکان پر غور کیا گیا۔ لیکن کچھ شرکاء کا خیال تھا کہ 104 بلین روپے کے قرض کی بہترین قیمت ایسے نہیں مل سکتی جو ان پاور پلانٹس پر واجب الادا ہے اور انہیں ریٹائر یا طویل مدتی فنانسنگ میں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

اخبار کا دعویٰ ہے کہ نیشنل پاور پارکس مینجمنٹ کمپنی لمیٹڈ کے پاس 1230 میگاواٹ حویلی بہادر شاہ اور 1223 میگاواٹ بلوکی پاور پلانٹس ہیں۔ یہ پاور پلانٹس 70:30 قرض سے ایکویٹی تناسب کے بجائے حکومتی فنڈنگ سے لگائے گئے تھے۔

وزارت خزانہ نے چند سال قبل ان پاور پلانٹس کی ایکویٹی پاکستان ڈویلپمنٹ فنڈ کی رقم سے خریدی تھی۔ حکومت کے 103.7 بلین روپے کے قرض کو بینک قرضوں کے ذریعے تبدیل کیا جانا ہے، جس سے حتمی قیمت میں خاطر خواہ کمی آئے گی۔

منصوبوں کی 70 فیصد لاگت کو ٹیرف پر مبنی سرمائے کے ڈھانچے کے مطابق پاور پلانٹس کی نجکاری کے لیے طویل مدتی فنانسنگ میں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔

جب کہ ایک سینئر سرکاری اہلکار نے کہا کہ ایل این جی پلانٹس کی قیمتوں کا تعین فوری طور پر ممکن نہیں تھا لہذا، یہ پلانٹس سرمایہ کاری کے مقاصد کے لیے قطری حکومت کو پیش نہیں کیے جا سکتے۔

وزیر خزانہ اسماعیل نے اپنے 8.5 بلین ڈالر کی غیر ملکی آمد کے تخمینے میں ایل این جی پاور پلانٹس کی فروخت سے حاصل ہونے والی آمدنی کا حساب دیا تھا، جسے وہ اس مالی سال میں 35 بلین ڈالر کی مجموعی بیرونی مالیاتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے بڑھانا چاہتے تھے۔

اخبار کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ پاکستان قطر کو سرکاری ملکیت میں درج کمپنیوں میں 10 فیصد حصص کی پیشکش کرے، اسی طرح کی پیشکش پاکستان نے متحدہ عرب امارات کو بھی کی ہے۔
نشئی امپورٹڈ حکومت نے ملک کی ہر چیز بیچ دی 😂 یہ والا بغض اب کیوں نہیں نکالتے ؟
Siberite Meme
 

Sonya Khan

Minister (2k+ posts)
First install non viable projects on loans .... Take commission.....
Then take loans to pay off those loans .... Take commission......
Then sell prime assets of Pakistan...... Take commission
Then buy back those prime assets on higher price ..... Take commission.....
Looks like your greed will only be satisfied by the hellfire ....
 

patwari_sab

MPA (400+ posts)
boot polishiya ne jane se pele sab koch nilam kar na ha.. pir imran khan 2/3 majority se bi koch nahi kar paye ga. ye polishiya lond, bajwa belgium or zardari dubai shift ho jaye ga
 

stranger

Chief Minister (5k+ posts)
qarz ka paisa sharifo zardarion ki jaib main or mulk ke asasay arbon ko bech do.. kam qeemat per bechne per commission alehda se...

issay kehte hain business mind.. dohra munafa
 

Siberite

Chief Minister (5k+ posts)
This is an excellent plan. PIA has been long pain in the national butt. They should also consider offering shares on other institutions like OGRA,PEMPRA,PAK STEELS,PTV ,PAK RAILWAY . That is the only way to run them efficiently.
 
Sponsored Link