شاہد عباسی کی ذہانت نے نیب کے سورماؤں کو چِت کر دیا

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
NAB’s ‘genius’ outclassed by Shahid Abbasi’s brilliance


اسلام آباد (انصار عباسی) نیب نے شاہد خاقان عباسی سے سوال کیا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ (ایس ایس جی سی ایل) کے پورٹ قاسم اتھارٹی (پی کیو اے) پر قائم ایل پی جی ٹرمینل کو پیسے بچانے کیلئے کیوں استعمال نہیں کیا گیا؟ سابق وزیراعظم کا جواب تھا: ’’ایل پی جی اور ایل این جی نام بظاہر یکساں لگتے ہیں لیکن یکسانیت یہیں ختم ہو جاتی ہے۔‘‘

مذکورہ بالا جواب اس بات کی زبردست عکاسی ہے کہ نیب کے اُن سورمائوں کی تکنیکی معلومات کی سطح کیا ہے جنہوں نے شاہد خاقان عباسی کو ایل این جی ٹرمینل کیس میں یہ بتائے بغیر ہی گرفتار کیا کہ سابق وزیراعظم نے کیا کرپشن کی ہے؟

دی نیوز کے پاس نیب کی جانب سے پوچھے گئے سوالات اور عباسی کے ایل این جی ٹرمینل کیس میں جوابات کی نقل موجود ہے جس کا تبادلہ شاہد عباسی کی گرفتاری سے قبل کیا گیا تھا۔ ان سوالوں اور جوابات کو پڑھ کر یہ بات سامنے آتی ہے کہ نیب میں یہ معاملہ سمجھنے کی صلاحیت نہیں، اس سے سابق وزیراعظم کی اس موضوع پر مہارت بھی ظاہر ہوتی ہے۔


NAB asked Shahid Khaqan Abbasi why SSGCL’s LPG Terminal at PQA was not operated for LNG to save money? The former premier responded, “LPG and LNG have similar sounding names but the similarity ends there.”

The above is a perfect reflection of how technically knowledgeable are the “geniuses” of NAB, who arrested Abbasi in the LNG Terminal case without even telling what specific corruption the former prime minister has committed. The News has a copy of the NAB’s questionnaire and Abbasi’s answers in the LNG Terminal case before the former premier’s arrest. Their reading exposes the NAB’s deficient understanding of the issue, it also speaks volumes about former PM’s command on the subject. On Friday, The News had published the important questions and answers of the LNG import case. For the interest and information of the readers, a set of NAB questions and Abbasi’s answers are being reproduced here.

Q. SSGCL was having its own LPG Terminal at PQA; reasons for not Operating or Retrofitting own terminal of SSGCL instead of accepting Terminal of Engro after retrofitting? This could have saved money spent in terms of rent and other payments made for retrofitting to Engro, working on own Terminal or retrofitting SSGC LPG terminal before or at time of LNG Terminal 2?

Ans. Liquefied Petroleum Gas (LPG) and Liquefied Natural Gas (LNG) have similar sounding names but the similarity ends there; LPG and LNG have completely different chemical and physical characteristics and the process of handling them is completely different. LPG Terminals are basic unloading terminals where the LPG, which exists as a flammable liquid under ambient temperature conditions, is taken off the dedicated LPG tankers, which are generally below the 15,000 MT size, and transported via pipelines to storage tanks in liquid form.

Whereas, the LNG Terminals are complex facilities where the LNG, which is natural gas existing as a liquid at cryogenic temperatures of 110 degree Kelvin (-265 degree F or -160 degree C) at atmospheric pressure is taken off dedicated LNG tankers, which are generally above 50,000 MT size, and transported through cryogenic transmission facilities to an adjacent floating or land based LNG storage and regasification plant where it is converted into natural gas and transported through gas pipelines at high pressure to the gas utility’s natural gas transmission and distribution system. There is no synergy between LPG terminals and LNG terminals, and there is no cost advantage in converting an LPG terminal into an LNG terminal. In fact, the only effect of such an attempted conversion would be elimination of the LPG terminal and the cost of dismantling it added to the cost of the LNG terminal.

The SSGC had procured a LPG unloading terminal at Port Qasim which generally handles vessels in the 3,000 MT range; this is Pakistan’s only dedicated marine LPG terminal. This terminal was also the subject of an ongoing $ 750 million litigation against the Government of Pakistan in the London Court of International Arbitration in 2013. The SSGC had attempted to set up a 400 MMCFD LNG Terminal at the site of the LPG Terminal in December 2011 and had floated tenders for LPG Terminal Retrofit project. The tender process attracted only one viable bid from a Dubai based company called 4Gas Asia at a tolling rate of $0.84/ MMBTU. The bids were opened in August 2013 but the contract could not be awarded, mainly because of limitations of the PPRA Rules and also possibly because 4Gas in Holland which was the parent company of 4Gas Asia went bankrupt. Shortly after bidding on the SSGC LPG Terminal Retrofit project, 4Gas Asia also went bankrupt.

The bidders under the competitive tender process for the LNG Terminal project were free to select any site, subject to compliance with all PQA requirements. The permission/ approval/ licence was granted by PQA to EETPL (Engro). The MP&NR did not have any role in this as the bidder was solely responsible to meet all legal/ procedural requirements and meet the timelines given in the bidding documents and any modalities for setting up the LNG Terminal including conversion of any LPG terminal if it was advantageous to their bid. No bidder chose to pursue conversion of a LPG Terminal, probably because there was no cost advantage to be gained by any such conversion.

Q. Who negotiated various charges to be paid to Engro under various heads under LSA? Your role in decision making with respect to Board of ISGS & SSGCL?

The various charges payable under the LNG Services Agreement (LSA) to Engro Elengy Terminal (Private) Limited were not negotiated; the charges were obtained through a PPRA compliant competitive transparent 2-stage tender process.

I had oversight role over the LNG Terminal project in my capacity as Minister for MP&NR. The ISGS (Inter State Gas Systems Ltd) and SSGC Management and BoD’s conducted the tender process with assistance from QED Consulting and other consultants for the LNG Terminal project.

Q. Reasons for deviation from earlier Integrated System during era of Dr Asim Hussain of PPP as of 2011/2012.

Ans. The failure of the Integrated Mashaal Project under the PML-Q Government in 2005 and the 3 Integrated Projects under the PPP government in 2012 provided sufficient evidence that Integrated Projects were not viable and could not provide a timely cost-effective solution to Pakistan’s need for a LNG supply chain.

The only option available was to proceed with an Independent/ Nonintegrated/ Unbundled approach to the LNG supply chain.

Q. Basis of opting for Tolling/ Dis-Integrated System regarding LNG Import & LNG Terminal 1 in 2013, any study or feasibility report etc.; provide the then working papers. Who made proposal and who approved?

Ans. It was obvious from Pakistan’s 10 year experience of the LNG supply chain, including the failure of the Integrated Mashaal Project under the PML Q Government in 2005 and the 3 Integrated Projects under the PPP Government in 2012, that Integrated Projects were not viable. It was clear that only the Independent/Nonintegrated/Unbundled approach to the LNG supply chain could provide a solution and this approach was successfully followed.

It was also observed that almost every non-dedicated LNG supply chain in the world was built on the Independent/ Nonintegrated/ Unbundled model.

Q. Reasons for selecting QED Consultant as International Consultant who remained consultant for Integrated System during era of Dr Asim Hussain for Bidding for LNG Terminal 1 while avoiding Integrated System of Dr Asim Hussain at the same time.

Ans. QED Consulting was selected by the USAID for assistance with the LNG Terminal project through its transparent, stringent, and competitive contracting process under the Energy Policy Programme (EPP) for Pakistan.

Consultants work according to the requirements of the Client. The earlier approach to the LNG supply chain selected by the Government of Pakistan was the Integrated system; however, the failure of 4 successive Integrated projects in Pakistan and the worldwide experience of LNG supply chains proved that the Integrated approach was not viable and the Independent/ Nonintegrated/ Unbundled approach needed to be followed.

Q. Reasons for selecting QED Consultant as International Consultant for Bidding for LNG Terminal 1 instead of selection of International Consultant through open Competitive Bidding as per PPRA Rules.

Ans. QED Consulting was an experienced LNG consultant with substantial prior experience in Pakistan. There was no doubt on the ability of QED to be able to provide the required services and technical assistance for Pakistan’s first LNG Terminal based on their selection by USAID, their reputation in the market, and their experience. In addition, the QED experience in Pakistan was critical as knowledge of local issues, especially related to the LNG Terminal, greatly helped in timely completion of the project.

The experience at that time had been that most competent international consultants were not willing to bid on projects in Pakistan due to the security situation in the country and interference by FIA, NAB, and the Judiciary. In addition, it would not have possible for the Government, without any experience of what services it needed for a LNG Terminal, to directly procure services of a competent international consultant in a timely fashion through its own PPRA-compliant tender process.

Q. Who was QED Consultant? Have you satisfied yourself regarding rating of QED Consultant through independent source before accepting its nomination as International Consultant for Award of bidding of LNG Terminal 1? How, give brief reasons along with his previous experience in LNG Terminals etc. especially Integrated as well as Dis-Integrated system?

Ans. QED Consulting was the consultant selected by the USAID for assistance with the LNG Terminal project under the EPP. The strength of the USAID selection process provided sufficient credibility to QED’s expertise as a consultant. In addition, QED had also been selected by SSGC as a consultant, through its competitive tendering process, for the 3 Integrated LNG projects and the LPG Terminal Retrofit project. QED capability statement and experience is available on its website qedgas.com

In addition to QED Consulting, USAID also selected and provided the services of Watson Farley & Williams to provide legal support for the LNG Terminal project and ECIL, Granada, Sellhorn, and Siport to provide technical support to Port Qasim Authority for LNG Terminal operations.

Q. Procedure of selection of QED Consultant as International Consultant for LNG Terminal? How much payment had been paid and who paid?

Ans. An mentioned ealier QED was selected by the USAID for assistance with the LNG Terminal project through its transparent, stringent, and competitive contracting process under the Energy Policy Programme (EPP) for Pakistan.

All payments to QED for its services were made by USAID under the EPP; no Government of Pakistan funds were involved.

Q. Who approved QED Consultant as International Consultant for LNG Terminal from Pakistan? Have you checked his prior experience in both Integrated/ Dis-Integrated system? Quote instances, if yes? Otherwise reasons if no?

Ans. The services of a consultant for the LNG Terminal were requisitioned by MP&NR under the USAID Energy Policy Programme. The procurement process for selection of the consultant was undertaken by USAID and MP&NR accepted the services of the selected consultant, QED Consulting.

The USAID follows a sophisticated, transparent, and competitive process for procurement of services; it has over 5 decades of time-tested international procurement experience and the MP&NR had no reason to question the selection of QED Consulting as a qualified and experienced consultant through a process which was superior to our PPRA-compliant procurement process. The on-time delivery of the LNG Terminal project at the lowest LNG regasification tolling rates in the world is sufficient proof of the success of the USAID selection process and QED’s expertise.

Q. Do you know that QED Consultant has previous experience of working with SSGCL before choosing for Fast Track LNG Project of 2014?

Ans. As noted above, I know that QED Consulting had previously worked in Pakistan for the 3 SSGC Integrated LNG projects and the SSGC LPG Terminal Retrofit project in 2012. I became aware of this fact after QED started work on the LNG Terminal project.

Q. Reasons for entrustment of whole bidding process to ISGS for establishment of LNG Terminal 1 instead of SSGCL?

Ans. The expertise of ISGS, a company owned 100% by the Government of Pakistan, in developing and executing large international gas import contracts under the Iran-Pakistan (IP) pipeline and Turkmenistan- Afghanistan-Pakistan-India (TAPI) natural gas pipeline projects was utilized to coordinate with and assist SSGC in developing and executing the procurement of the LNG Terminal project. QED Consulting provided technical support for the LNG Terminal project.

The whole bidding process was not entrusted to ISGS; ISGS was mandated by the MP&NR to provide coordination for the project. SSGC remained the procuring agency for the LNG Terminal project, and its representatives controlled the decision making process at every stage of the project. The BoD’s of both ISGS and SSGC approved this arrangement; in addition, PPRA raised no objection to the arrangement.

Q. Do you know that SSGCL had qualified/ experienced Engineers?

Ans. I was the Minister for MP&NR from 2013 to 2018 and I was aware of the qualifications and experience that SSGC possessed. I was aware that SSGC did not have experience with complex Integrated or Unbundled natural gas import projects or large international infrastructure contracts, especially tolling fee based project structures such as this LNG Terminal.

Q. Was SSGCL considered as totally inefficient/ inexperienced with respect to auction/ bidding for establishment of LNG Terminal and procurement of LNG etc?

Ans. SSGC did not possess the requisite technical knowledge or experience to initiate or develop complex international contracts, especially for the complexity involved in a tolling fee based LNG Terminal project. SSGC technical capacity constraints were evident from the failure of the Mashaal LNG, the LPG Terminal Retrofit, and the 3 Integrated LNG projects.

I was not aware of any Oil or LPG Refineries that SSGC had established.

Gas pipelines is SSGC’s core business and all Gas pipelines for the LNG Terminal project were laid by SSGC as a contractor.

Q. What was mandate of ISGS and whether ISGS had any experience in procurement of LNG related matters?

Ans. ISGS (Private) Limited is a company owned 100% by the Government of Pakistan, through shareholding by GHPL, SSGC, and SNGPL, and is mandated to implement the Iran-Pakistan (IP) and Turkmenistan- Afghanistan-Pakistan-India (TAPI) natural gas pipeline projects. The company has developed sufficient knowledge and experience in developing and executing multi-billion-dollar gas import projects in both the Integrated and Unbundled project structure forms which are structurally identical to the Unbundled LNG project, including the tolling fee based LNG Terminal, that was being developed. No other public sector company in Pakistan has such expertise or experience.

The negotiation and successful signing of the IP and TAPI Contracts with an annual value of over $5 billion are examples of ISGS success stories.

Q. What were special merits of Mr Mobin Saulat for dealing LNG related procurement issues on Tolling System viz-a-viz his qualification, experience/ expertise and likewise previous procurement activities?

Ans. Mr Mobin Saulat was the Managing Director of ISGS, and under his leadership ISGS developed sufficient knowledge and experience in developing and executing multi-billion-dollar gas import projects in both the Integrated and Unbundled project structure forms which were structurally identical to the Unbundled LNG project, including the tolling fee based LNG Terminal, that was being developed.

Q. Your role and contribution with respect to activities of ISGS & ISGS Board regarding LNG Terminal Award activities?

Ans. As the Federal Minister for Petroleum & Natural Resources, Member of the Federal Cabinet, Member of the Cabinet Committee on Energy, and Member of the Economic Coordination Committee of the Cabinet it was my responsibility to help resolve the energy crisis in Pakistan.

Creation of the LNG supply chain, including LNG import facilities, was a critical part of resolution of the energy crisis. Oversight of the efforts to create the LNG supply chain, including development of Pakistan’s first LNG regasification terminal, were a primary responsibility of my job function.

ISGS is mandated and obligated to perform as per the policy of the government. It was not my practice to interact with or interfere in the working of the BoD’s or management of companies in the MP&NR; the companies operated as per their mandate and SECP Rules and Regulations.

Q. Reasons for removal of independent members (Shahzad Ali Khan & Zubair Motiwala) from Board of ISGS?

Ans. Mr Shahzad Ali Khan and Mr Zubair Motiwala, who were Independent Directors on the ISGS Board of Directors, retired from the ISGS BoD in August 2016 after completion of their 3-year term of office.

Q. Reasons for non-appointment of independent members on ISGS Board at the time of bidding of LNG Terminal 1?

Ans. The Independent Directors required as per the Public Sector Companies (Corporate Governance) Rules 2013, were appointed and working on the ISGS BoD at the time of the bidding for the LNG Terminal.

Q. Whether was entrustment of whole bidding process to ISGS instead of SSGCL as an excuse for arbitrary decision in LNG Terminal in favour of EETPL while keeping independent members out & avoiding SSGC experienced team?

Ans. The unfortunate allegation in this question defies the facts under consideration; the tolling fee based services for the LNG Terminal were procured through a transparent competitive 2-stage tender process and it is not possible to make arbitrary decisions in a competitive tender process. The award decision in a competitive tender process is based on clearly defined technical and financial criteria.

The Independent members of the ISGS BoD were appointed and working when the LNG Terminal tender process was undertaken.

As explained above, SSGC was the procuring agency for the LNG Terminal project and ISGS was mandated to coordinate the project. SSGC was a part of the tender process from day one till the award of the LNG Terminal project and no step could be taken without SSGC approval; in addition, the Managing Directors of both SSGC and SNGPL were also members of the ISGS BoD. Both the ISGS and SSGC BoD’s approved the project at every stage of development. The financial bid of the successful bidder was explicitly approved by the SSGC BoD with the direction to the SSGC Management to negotiate the LNG Services Agreement (LSA). Accordingly, the whole procurement process was completed and the LSA was executed by SSGC.

The fairness and objectivity of the evaluation process can be established from the fact that PGPL, who were disqualified during the evaluation of the technical proposals, accepted QED’s evaluation and did not resort to the grievance mechanism or litigate against the decision.

Q. Whether was it necessary for seeking exemption from PPRA Rules/ Regulations etc. from PPRA Authority while selecting QED directly without open auction as per PPRA Rules? If no, quote relevant authority and laws rules which gave exemption?

Ans. The services of QED Consulting as the consultant for the LNG Terminal project were procured by USAID and not the Government of Pakistan; hence PPRA Rules and Regulations did not apply.

Q. Details of exemption from PPRA Rules/ Regulations etc. from PPRA Authority while selecting QED directly without open auction as per PPRA Rules? If no, quote relevant authority and laws/rules.

Ans. The services of QED Consulting as the consultant for the LNG Terminal project were procured by USAID and not the Government of Pakistan; hence PPRA Rules and Regulations did not apply and there was no requirement for any exemptions from PPRA.

Q. Establishing LNG Terminal at site of Engro’s Chemical Terminal instead of LNG Zone of PQA was ever discussed in the MP&NR or Board of ISGS or SSGCL? Reasons of the said permission to Engro out of LNG Zone?

The bidders for the procurement of LNG regasification services under the LNG Terminal project tender process were fully responsible for setting up the regasification terminal facilities and procuring all licences, permits, and permissions for these facilities. The bidders were also provided full flexibility on what type of terminal to build and where to locate it.

I do not recall the MP&NR having a discussion on the location of the LNG Terminal; however, any such discussion would only have been academic in nature as the location, licences, permits, and permissions for the LNG regasification facilities were the responsibility of the successful bidder, Engro Elengy Terminal (Private) Limited (EETPL). I was not on the ISGS or SSGC BoD’s so I cannot recall if this issue came under discussion there.

I do not recall EETPL requesting the MP&NR for any permission to locate the LNG Terminal. The permission/ approval/ licence to locate the LNG Terminal was granted by PQA to EETPL. MP&NR did not have any role in the location of the LNG Terminal as the bidder was solely responsible to meet all legal and procedural requirements, and meet the timelines given in the bidding documents.

Q. Has any effort been made to get prices of FSRU for lease checked in international market?

Ans. There was no reason for MP&NR or ISGS or SSGC to check FSRU Ownership or Lease prices in the market. Price for the FSRU was not part of the charges required in the LSA or Bid Documents, as provided in the Answer to Question 29 above, as the bidder was free to adopt any LNG storage and regasification method that he found competitive for the LNG Terminal project including Land based system or FSRU based system or FSU + Regasification based system or any other Hybrid system or based or any other system that was technically possible.

Q. Whether was advertisement for calling international bidders for participation in establishment of LNG Terminal-1 been made and in which countries the said advertisement had been made? Had you checked this aspect and what measures were suggested/ taken by you?

Ans. The draft advertisement for the LNG Terminal project was considered in the MP&NR and in view of the expertise available with local companies to structure the project, the requirement that the Terminal was to be owned by a Pakistani corporate entity, and the substantial time savings involved, it was considered appropriate to use a Local Tender process. The Tender did not bar local companies from associating with foreign companies by forming joint ventures, or even foreign companies bidding on their own.

The tender for the LNG Terminal was advertised in national newspapers only as it was a Local Tender and it was not needed to be published in the international newspapers, a process which can take months.

Q. Whether has decision of import of LNG and LNG Terminals via FSRU resolved energy crisis as a sustainable and concrete measure as comparison to alternate energy sources or creation of own resources through exploration plus control on line losses (Unaccounted For Gas) to overcome shortage of energy for a longer period? How, reasons based on actual facts?

Ans. The actual sustainable and concrete measures based facts are as follows:

The successful creation of the LNG supply chain has been critical to the resolution of the energy crisis, especially the power crisis in Pakistan. Natural gas was made available to every efficient gas-fired power plant in Pakistan reducing the dependence on inefficient and environmentally unsustainable HSFO and LSFO. In addition, 4 RLNG based 1,200 MW power plants have been installed in Pakistan which at ~62% efficiency are the most efficient in the world today and produce power at half the cost of comparable HSFO/ LSFO fired power plants; these power plants are the backbone of Pakistan’s power generation capacity today. Pakistan has gone from its ranking as the world’s second largest importer of HSFO/ LSFO imports to zero imports today. The fuel savings for power generation are estimated at over $2 billion per year.

Gas availability to industry has been ensured on 24/7/265 basis; it compares very favorably to availability of less than 33% in 2013. This has had positive impact on exports, and greater efficiency and associated profitability for the industries resulting in renewed investment.

CNG industry has been revived with availability of gas on 24/7/365 basis; the shutdowns and the long queues at CNG of stations of 2013 have been eliminated.

Pakistan has gone from an importer of 1,000,000 MT of Urea to an Exporter of Urea while ensuring lower prices and better availability for the Pakistani farmer.

Domestic gas load-shedding in winters has been eliminated without price increases through seasonal gas swaps between LNG and Domestic gas. Gas is now available for an unlimited number of additional domestic consumers.

There is a huge positive impact on the environment through elimination of HSFO/ LSFO usage, higher efficiency in power generation, reduction of captive power generation, and greater CNG usage.

Domestic gas will always be cheaper than imported gas, whether pipeline or LNG; Domestic gas is our asset that we pay others to take out of the ground for us, Imported pipeline gases or LNG is a third party asset that they take out of the ground and hand over to us for a price.

Unfortunately for Pakistan, domestic gas is a diminishing quantity; our new discoveries barely keep pace with natural depletion of the existing gas fields.

Oil and Gas Exploration is a function of probability; the probability of a significant on-shore oil and gas find in Pakistan is low, off-shore and shale oil and gas potential exists but its economic viability is in question. The choice for Pakistan was to wait for a large Domestic oil and gas discovery to happen or import gas. Countries with rational behavior cannot wait, they import energy and use it efficiently; this is exactly what Pakistan has done with LNG.

The issue of alternate renewable energy, mostly wind and solar, barring any major technological breakthrough in storage of energy is simple; it is financially viable only when you have a base-load solution and the total cost of renewable generation is below the fuel cost of preferably the cheapest power generation fossil fuel.

The question of improving UFG is something that is a continuous challenge for SSGC and SNGPL; it is linked to societal challenges and Pakistan’s law and order, and security situation. Real UFG improvements in the absence of these environmental improvements will only be marginal. The increased use of RLNG, as RLNG users are mostly bulk customers on the transmission lines and pay the full cost of gas provision, will show lower UFG numbers as volume and percentage of the natural gas in the system; however, the reality of UFG losses will not change and heavy investments in technology and management will be needed to bring UFG down by significant levels.


The News
 
Advertisement
Last edited by a moderator:

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
(انصار عباسی)
نیب نے شاہد خاقان عباسی سے سوال کیا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ (ایس ایس جی سی ایل) کے پورٹ قاسم اتھارٹی (پی کیو اے) پر قائم ایل پی جی ٹرمینل کو پیسے بچانے کیلئے کیوں استعمال نہیں کیا گیا؟ سابق وزیراعظم کا جواب تھا: ’’ایل پی جی اور ایل این جی نام بظاہر یکساں لگتے ہیں لیکن یکسانیت یہیں ختم ہو جاتی ہے۔‘‘ مذکورہ بالا جواب اس بات کی زبردست عکاسی ہے کہ نیب کے اُن سورمائوں کی تکنیکی معلومات کی سطح کیا ہے جنہوں نے شاہد خاقان عباسی کو ایل این جی ٹرمینل کیس میں یہ بتائے بغیر ہی گرفتار کیا کہ سابق وزیراعظم نے کیا کرپشن کی ہے؟ دی نیوز کے پاس نیب کی جانب سے پوچھے گئے سوالات اور عباسی کے ایل این جی ٹرمینل کیس میں جوابات کی نقل موجود ہے جس کا تبادلہ شاہد عباسی کی گرفتاری سے قبل کیا گیا تھا۔ ان سوالوں اور جوابات کو پڑھ کر یہ بات سامنے آتی ہے کہ نیب میں یہ معاملہ سمجھنے کی صلاحیت نہیں، اس سے سابق وزیراعظم کی اس موضوع پر مہارت بھی ظاہر ہوتی ہے۔ جمعہ کو دی نیوز نے ایل این جی درآمد کیس کے اہم



سوالات اور ان کے جوابات شائع کیے تھے۔ قارئین کی معلومات اور دلچسپی کیلئے، نیب کے سوالوں اور شاہد عباسی کے جوابات کو یہاں پیش کیا جا رہا ہے۔ سوال: سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ (ایس ایس جی سی ایل) کے پاس پورٹ قاسم اتھارٹی پر اپنا ایل پی جی ٹرمینل تھا؛ وہ کیا وجوہات تھیں کہ ایس ایس جی سی ایل کا اپنا ٹرمینل استعمال نہیں کیا گیا یا استعمال کرنے کیلئے اس میں ریٹرو فٹنگ (تبدیلیاں) نہیں کی گئیں اور اس کی بجائے اینگرو کا ٹرمینل کیوں استعمال کیا گیا؟ اس سے کرایے اور اینگرو کو ریٹرو فٹنگ کی مد میں کی گئی دیگر ادائیگیوں کا پیسہ بچایا جا سکتا تھا اور اپنے ہی ٹرمینل پر کام کرکے اور ریٹرو فٹنگ کرکے بھی پیسہ بچایا جا سکتا تھا؟ جواب: مائع پٹرولیم گیس (ایل پی جی) اور مائع قدرتی گیس (ایل این جی) کے نام ایک جیسے لگتے ہیں لیکن ان ناموں کی یکسانیت یہیں ختم ہو جاتی ہے؛ ایل پی جی اور ایل این جی میں مکمل طور پر مختلف کیمیکل ہوتا ہے اور ان کی طبعی حالت اور خصوصیات بھی مختلف ہوتی ہیں ا ور انہیں سنبھالنے کا طریقہ کار بھی مکمل طور پر مختلف ہے۔ ایل پی جی ٹرمینلز بنیادی طور پر مال اتارنے (اَن لوڈنگ) ٹرمینلز ہوتے ہیں جہاں ایل پی جی، جو آتشگیر مائع ہوتی ہے اور اسے مناسب درجہ حرارت پر رکھا جاتا ہے، کو اتارا جاتا ہے اور انہیں ایل پی جی کیلئے مخصوص ٹینکرز میں رکھا جاتا ہے، جن کا سائز 15؍ ہزار میٹرک ٹن سے کم ہوتا ہے، اسے یہاں سے پائپ لائنز کی مدد سے مائع شکل میں اسٹوریج ٹینکوں میں رکھا جاتا ہے۔ ایل این جی ٹرمینلز پیچیدہ مقامات ہوتے ہیں جہاں ایل این جی، جو بنیادی طور پر قدرتی گیس ہوتی ہے اور مائع حالت میں ہوتی ہے، اسے انتہائی کم درجہ حرارت پر یعنی 110؍ ڈگری کیلون (منفی 265؍ ڈگری فارن ہائیٹ / منفی 160؍ ڈگری سینٹی گریڈ) پر ایٹماسفیرک پریشر پر رکھا جاتا ہے، اسے ایل این جی کے مخصوص ٹینکرز میں نکالا جاتا ہے جن کا سائز 50 ؍ ہزار میٹرک ٹن سے زیادہ ہوتا ہے، اور اس کے بعد اسے انتہائی کم درجہ حرارت پر مخصوص مقامات پر منتقل کیا جاتا ہے جو پانی کی سطح پر تیرتے ہیں یا زمین پر قائم کیے جاتے ہیں اور یہاں ری گیسی فکیشن پلانٹ بھی ہوتا ہے جہاں مائع کو قدرتی گیس میں تبدیل کیا جاتا ہے اور گیس پائپ لائنوں کی مدد سے ہائی پریشر پر گیس یوٹیلیٹی کے ترسیل و تقسیم سسٹم میں شامل کر دیا جاتا ہے۔ ایل این جی ٹرمینلز اور ایل پی جی ٹرمینلز میں کوئی ہم کاری سائینرجی نہیں ہے، اور ایل پی جی ٹرمینل کو ایل این جی ٹرمینل میں تبدیل کرنے سے کوئی مالی فائدہ نہیں ہوگا۔ درحقیقت، اگر ایسی کسی تبدیلی کی کوشش بھی کی جائے تو ایل پی جی ٹرمینل ختم ہو جائے گا اور اسے پرزہ پرزہ کرکے ختم کرنے یا ڈس مینٹل کرنے سے ایل این جی ٹرمینل قائم کرنے کے اخراجات بڑھ جائیں گے۔ ایس ایس جی سی نے پورٹ قاسم پر ایل پی جی اتارنے کیلئے ٹرمینل حاصل کیا جو عموماً تین ہزار میٹرک ٹن کی حد میں آنے والے جہازوں کو سنبھالنے کی صلاحیت رکھتا ہے؛ یہ پاکستان کا واحد بحری ایل پی جی ٹرمینل ہے۔ یہی ٹرمینل حکومت پاکستان کیخلاف لندن میں عالمی ثالثی عدالت میں 2013ء میں زیر سماعت 750؍ ملین ڈالرز کے معاملے میں مقدمہ کا موضوع تھا۔ ایس ایس جی سی نے دسمبر 2011ء میں ایل پی جی ٹرمینل کی سائٹ پر 400؍ ملین کیوبک فٹ یومیہ (ایم ایم سی ایف ڈی) کا ایل این جی ٹرمینل لگانے کی کوشش کی اور اس مقصد کیلئے ایل پی جی ٹرمینل ریٹرو فٹ پروجیکٹ کے طور پر ٹینڈرز بھی جاری کیے۔ ٹینڈرنگ کے عمل کے نتیجے میں صرف ایک بولی وصول ہوئی جو دبئی میں قائم کمپنی کی جانب سے دی گئی تھی، اس کا نام 4گیس ایشیا تھا، کمپنی نے 0.84؍ ڈالرز میٹرک ملین برٹش تھرمل یونٹ (ایم ایم بی ٹی یو) کا ریٹ دیا۔ بولیوں کی پیشکش اگست 2013ء میں کھولی گئیں لیکن کنٹریکٹ کسی کو نہیں دیا گیا جس کی بنیادی وجہ پی پی آر اے کے قواعد و ضوابط میں وضع کردہ حدود تھیں اور ممکنہ طور پر یہ وجہ بھی تھی کہ 4گیس ایشیا کی ہالینڈ میں قائم اصل کمپنی 4گیس دیوالیہ ہو چکی تھی۔ ایس ایس جی سی ایل کے ایل پی جی ٹرمینل ریٹروفٹ پروجیکٹ پر بولی کے تھوڑا عرصہ بعد ہی 4گیس ایشیا بھی دیوالیہ ہوگئی۔ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کے ٹینڈر پراسیس میں شامل ہونے والے مسابقتی بڈرز کو اجازت تھی کہ وہ کوئی بھی مقام (سائٹ) منتخب کر سکتے تھے، لیکن شرط یہ تھی کہ انہیں پورٹ قاسم اتھارٹی کے طے کردہ معیارات پر پورا اترنا ہوگا۔ پورٹ قاسم اتھارٹی نے ای ای ٹی پی ایل (اینگرو) کو اجازت نامہ / منظوری / لائسنس جاری کیا۔ وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز کا اس معاملے میں کوئی کردار نہیں تھا کیونکہ بولی دینے والا خود ہی تمام قانونی اور ضابطے کے معاملات طے کرنے اور نیلامی کی دستاویزات میں متعین کردہ وقت پر کام مکمل کرنے اور ایل این جی ٹرمینل کے قیام کیلئے مشاورت بشمول فائدہ مند ہونے کی صورت میں ایل پی جی ٹرمینل کو تبدیل کرنے کا ذمہ دار تھا۔ بولی دینے والوں میں سے کسی نے بھی ایل پی جی ٹرمینل کو تبدیل کرنے (کنورژن) کا انتخاب نہیں کیا، شاید اس کی وجہ یہ تھی کہ ایسے کسی بھی کنورژن کے نتیجے میں کوئی مالی فائدہ نہیں تھا۔ سوال: ایل ایس اے کے تحت مختلف مد میں اینگرو کو کی جانے والی مختلف ادائیگیوں پر کس نے مذاکرات کیے؟ آئی ایس جی ایس اور ایس ایس جی سی ایل کے حوالے سے فیصلہ سازی میں آپ کا کیا کردار تھا؟ جواب: ایل این جی سروسز ایگریمنٹ (ایل ایس اے) کے تحت اینگرو ایلنجی ٹرمینل پرائیوٹ لمیٹڈ کو کی جانے والی مختلف ادائیگیوں پر مذاکرات نہیں کیے گئے تھے؛ اس ضمن میں قیمتیں پی پی آر اے کے وضع کردہ دو سطحوں پر مشتمل مسابقتی اور شفاف ٹینڈرنگ پراسیس کے ذریعے حاصل کی گئی تھیں۔ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کے معاملے میں میرا کردار نگرانی کا تھا کیونکہ میں وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز کا وزیر تھا۔ آٗی ایس جی ایس (انٹر اسٹیٹ گیس سسٹمز لمیٹڈ) اور ایس ایس جی سی کی انتظامیہ اور بورڈ آف ڈائریکٹرز نے ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کیلئے ٹینڈرنگ کا عمل قیو-ای -ڈی کنسلٹنگ کمپنی اور دیگر کنسلٹنٹس کے ساتھ مل کر مکمل کیا۔ سوال: 2011ء اور 2012ء میں جب پیپلز پارٹی کی حکومت تھی اس وقت ڈاکٹر عاصم حسین کے دور کے قائم کیے گئے انٹی گریٹڈ سسٹم سے ہٹنے کی وجوہات کیا تھیں؟ جواب: 2005ء میں ق لیگ کی حکومت میں انٹی گریٹڈ مشعال پروجیکٹ اور 2012ء میں پیپلز پارٹی کی حکومت میں تین انٹی گریٹڈ منصوبوں کی ناکامی سے کافی شواہد مل گئے تھے کہ انٹی گریٹڈ پروجیکٹس موزوں نہیں اور یہ پاکستان کی ایل این جی سپلائی چین کی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے مالی لحاظ سے معیاری نہیں۔ ایل این جی سپلائی چین کیلئے واحد موزوں آپشن آزاد / نان انٹی گریٹڈ راستہ اختیار کرنا تھا۔ سوال: ایل این جی کی درآمد اور ایل این جی ٹرمینل ون کے حوالے سے ڈس انٹی گریٹڈ سسٹم / ٹولنگ کے حوالے سے کوئی تحقیق یا فزیبلٹی وغیرہ کرائی گئی تھی؟ اس وقت کے ورکنگ پیپرز فراہم کریں۔ یہ تجاویز کس نے تیار کی تھیں اور کس نے ان کی منظوری دی؟ جواب: یہ پاکستان کے ایل این جی سپلائی چین کے 10؍ سالہ تجربے اور ساتھ ہی 2005ء کے ق لیگ کے انٹی گریٹڈ پروجیکٹ اور 2012ء کے پیپلز پارٹی دور کے تین انٹی گریٹڈ پروجیکٹس کی ناکامی سے واضح تھا کہ انٹی گریٹڈ پروجیکٹس موزوں نہیں۔ یہ واضح تھا کہ صرف آزاد اور نان انٹی گریٹڈ راستہ اختیار کرکے کامیابی سے ساتھ مسئلے کو حل کیا جا سکتا ہے۔ اس بات کا بھی مشاہدہ کیا گیا تھا کہ دنیا میں تقریباً ہر غیر وقف شدہ ایل این جی سپلائی چین آزاد اور نان انٹی گریٹڈ ماڈل پر قائم کی گئی ہے۔ سوال: ڈاکٹر عاصم دور کے انٹی گریٹڈ سسٹمز سے گریز کرتے ہوئے قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو انٹرنیشنل کنسلٹنٹ کے طور پر منتخب کرنے کی کیا وجوہات تھیں، یہی کمپنی ڈاکٹر عاصم کے دور میں ایل این جی ٹرمینل ون کی بولی کیلئے انٹی گریٹڈ سسٹمز کیلئے کنسلٹنٹ تھی۔قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ ایل این جی کے ماہر کنسلٹنٹس ہیں اور ان کے پاس پاکستان میں پہلے سے کام کا تجربہ بھی ہے۔ ان کی صلاحیت پر کوئی شک نہیں تھا کہ وہ پاکستان کو اس کے پہلے این ایل جی ٹرمینل کے قیام میں مطلوبہ سروسز اور تکنیکی معاونت فراہم کریں گے، انہیں یو ایس ایڈ نے منتخب کیا تھا کیونکہ مارکیٹ میں ان کی اچھی ساکھ ہے اور ان کے پاس تجربہ بھی ہے۔ اس کے علاوہ، قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کے پاس پاکستان کا تجربہ مقامی معاملات اور مسائل بالخصوص ایل این جی ٹرمینل سے وابستہ مسائل کو سمجھنے کیلئے اہم تھا، اس سے پروجیکٹ کی بروقت تکمیل میں مدد ملی۔ اس وقت یہ تجربہ بہت ضروری تھا کیونکہ ملک کی سیکورٹی صورتحال اور ایف آئی اے، نیب اور عدلیہ کی مداخلت کی وجہ سے کوئی بھی انٹرنیشنل کنسلٹنٹ پاکستان میں بولی میں حصہ لینے کیلئے تیار نہیں تھا۔ اس کے علاوہ، حکومت کیلئے بغیر تجربے اور ایل این جی ٹرمینل لگانے کیلئے ضروری خدمات کے بغیر پاکستان کیلئے براہِ راست مسابقتی انٹرنیشنل کنسلٹنٹ کی خدمات پی پی آر اے کے طے کردہ ٹینڈر پراسیس کے ذریعے بروقت حاصل کرنا ممکن نہیں ہوتا۔ سوال: قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کون تھے؟ ایل این جی ٹرمینل ون کے بڈنگ پراسیس کیلئے تجاویز قبول کرنے سے قبل کیا آپ نے آزاد ذرائع سےقیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کے متعلق معلومات حاصل کرکے تسلی کر لی تھی؟ اور یہ تسلی کیسے کی گئی؟ ان کنسلٹنٹس کے ایل این جی ٹرمینلز کے حوالے سے سابقہ تجربات بالخصوص انٹی گریٹڈ اور ڈس انٹی گریٹڈ سسٹمز کے حوالے سے مختصر احوال پیش کریں۔ جواب: قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو یو ایس ایڈ نے ای پی پی کے تحت ایل این جی ٹرمینل لگانے میں مدد فراہم کرنے کیلئے منتخب کیا تھا۔ یو ایس ایڈ کے انتخابی عمل نے قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو منتخب کرنے کے معاملے کو کافی ساکھ دی۔ اس کے علاوہ، قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو ایس ایس جی سی نے بھی مسابقتی ٹینڈرنگ پراسیس کے ذریعے تین انٹی گریٹڈ ایل این جی پروجیکٹس اور ایل پی جی ٹرمینل ریٹروفٹ پروجیکٹ کیلئے کنسلٹنٹ منتخب کیا تھا۔ قیو-ای -ڈی کی صلاحیتوں اور تجربے کے حوالے سے تفصیلات ان کی
ویب سائٹ پر موجود ہے۔ قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کے علاوہ، یو ایس ایڈ نے واٹس فارلے اینڈ ولیمز کی خدمات کو بھی منتخب اور فراہم کیا تاکہ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کیلئے قانونی معاونت فراہم کی جا سکے اور ساتھ ہی ای سی آئی ایل، گریناڈا، سیل ہورن، اور سی پورٹ کی خدمات بھی حاصل کیں تاکہ پورٹ قاسم اتھارٹی کو ایل این جی ٹرمینل آپریشنز کیلئے تکنیکی معاونت فراہم کی جا سکے۔ سوال: قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو منتخب کرنے کا طریقہ کار کیا تھا؟ کتنی ادائیگی کی گئی اور کس نے کی؟ جواب: جیسا کہ پہلے بتایا جا چکا ہے کہ قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو یو ایس ایڈ نے اپنے شفاف اور سخت مسابقتی عمل کے ذریعے پاکستان کیلئے اپنی انرجی پالیسی پروگرام (ای پی پی) کے تحت منتخب کیا تھا۔ قیو-ای -ڈی کو کی جانے والی تمام ادائیگیاں یو ایس ایڈ نے ای پی پی کے تحت کیں، حکومت پاکستان کا اس میں کوئی پیسہ شامل نہیں تھا۔ سوال: قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کو ایل این جی ٹرمینل کا انٹرنیشنل کنسلٹنٹ لگانے کی منظوری پاکستان کی جانب سے کس نے دی؟ کیا آپ نے ان کے انٹی گریٹڈ اور ڈس انٹی گریٹڈ سسٹمز کے حوالے سے تجربے کی تصدیق کی؟ اگر ہاں تو مثال پیش کریں۔ اگر جواب نہ ہے تو وجوہات بیان کریں؟ جواب: ایل این جی ٹرمینل کیلئے کنسلٹنٹ کی خدمات کی درخواست وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز نے یو ایس ایڈ کے انرجی پالیسی پروگرام کے تحت دی تھی۔ کنسلٹنٹ کو منتخب کرنے کا عمل یو ایس ایڈ نے کیا جبکہ وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز نے منتخب کیے گئے کنسلٹنٹ یعنی قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کی خدمات قبول کیں۔ یو ایس ایڈ جدید، شفاف اور مسابقتی طریقہ کار اختیار کرتا ہے، بین الاقوامی سطح پر خدمات کے حصول کیلئے اس کے پاس پانچ دہائیوں سے زیادہ کا تجربہ ہے اور وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز کے پاس ایسی کوئی وجہ نہیں تھی کہ وہ قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کے انتخاب کے طریقہ کار پر سوالات اٹھائے کہ آیا وہ کوالیفائیڈ اور تجربہ کار کنسلٹنٹ ہے، یا اس طریقہ کار پر سوالات اٹھائے جائیں جو ہمارے اپنے پی پی آر کے طریقہ کار کے مقابلے میں زیادہ اعلیٰ معیار کا ہے۔ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کی بروقت تکمیل اور عالمی سطح پر دیگر ملکوں کے مقابلے میں کم قیمتوں پر ایل این جی کی ری گیسی فکیشن یو ایس ایڈ کے انتخابی عمل اور قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کی مہارت کا ثبوت ہے۔ سوال: کیا آپ جانتے ہیں کہ 2014ء کے فاسٹ ٹریک ایل این جی پروجیکٹ سے قبل قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ کا ایس ایس جی سی ایل کے ساتھ کام کرنے کا سابقہ تجربہ ہے؟ جواب: جیسا کہ مذکورہ بالا سطور میں بیان کیا گیا ہے، میں یہ جانتا ہوں کہ قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ پاکستان میں ایس ایس جی سی کے تین انٹی گریٹڈ ایل این جی پروجیکٹس اور 2012ء میں ایس ایس جی سی کے ایل پی جی ٹرمینل کے ریٹروفٹ پروجیکٹ کیلئے کام کر چکا ہے۔ مجھے اس حقیقت کا علم اُس وقت ہوا جب قیو-ای -ڈی نے ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ پر کام شروع کر دیا تھا۔ سوال: ایس ایس جی سی ایل کی بجائے آئی ایس جی ایس کو ایل این جی ٹرمینل ون قائم کرنے کا کام کیوں سونپا گیا؟ جواب: ایران پاکستان (آئی پی) گیس پائپ لائن اور ترکمانستان افغانستان پاکستان انڈیا (ٹاپی) گیس پائپ لائن پروجیکٹ کے تحت آئی ایس جی ایس کا بڑے بین الاقوامی گیس امپورٹ ٹھیکوں کی ڈویلپمنٹ اور انہیں فعال بنانے کا تجربہ ایل پی جی ٹرمینل پروجیکٹ کی پروکیورمنٹ کیلئے ڈویلپمنٹ اور اسے فعال بنانے کے معاملے میں استعمال کیا گیا۔ آئی ایس جی ایس 100؍ فیصدی حکومت پاکستان کی کمپنی ہے۔ قیو-ای -ڈی کنسلٹنٹ نے ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کیلئے تکنیکی معاونت فراہم کی تھی۔ بولی کا پورا عمل آئی ایس جی ایس کے سپرد نہیں کیا گیا تھا، آئی ایس جی ایس کو وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز نے مینڈیٹ دیا تھا کہ وہ پروجیکٹ میں رابطہ کاری کا کام کرے۔ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کیلئے ایس ایس جی ایس پروکیورنگ ایجنسی رہی، اور اس کے نمائندوں نے پروجیکٹ کی ہر سطح پر فیصلہ سازی کا کام کیا۔ آئی ایس جی ایس اور ایس ایس جی سی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز نے اس انتظام کی منظوری دی؛ اس کے علاوہ، پی پی آر اے نے اس انتظام پر کوئی سوال نہیں اٹھایا۔ سوال: کیا آپ کو علم ہے کہ ایس ایس جی سی ایل کے پاس کوالیفائیڈ / تجربہ کار انجینئرز موجود تھے؟ میں 2013ء سے 2018ء تک وزیر برائے وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز تھا اور مجھے علم ہے کہ ایس ایس جی سی کے پاس کیا تجربہ اور کیا اہلیت موجود ہے۔ مجھے یہ علم تھا کہ ایس ایس جی سی کے پاس پیچیدہ انٹی گریٹڈ نیچرل گیس امپورٹ پروجیکٹس یا بڑے بین الاقوامی انفرا اسٹرکچر کے ٹھیکوں بالخصوص ٹولنگ فیس کی بنیاد پر چلنے والے پروجیکٹس جیسا کہ یہ ایل این جی پروجیکٹ ہے، کے متعلق تجربہ نہیں تھا۔ سوال: کیا ایس ایس جی سی ایل کو ایل این جی ٹرمینل اور ایل این جی کے حصول وغیرہ کے معاملے میں نیلامی / بولی کے عمل کے حوالے سے مکمل طور پر غیر موثر / نا اہل / نا تجربہ کار سمجھ لیا گیا تھا؟ جواب: ایس ایس جی سی ایل کے پاس مطلوبہ تکنیکی معلومات یا تجربہ نہیں تھا کہ وہ پیچیدہ بین الاقوامی ٹھیکوں پر کام کر سکے یا انہیں شروع کر سکے، بالخصوص ایسے پروجیکٹس جن میں ٹولنگ فیس کی پیچیدگیاں شامل ہوں۔ ایس ایس جی سی کے تکنیکی لحاظ سے محدود ہونے کا معاملہ اس بات سے عیاں تھا کہ وہ مشعال ایل این جی، ایل پی جی ٹرمینل ریٹرو فٹ اور تین انٹی گریٹڈ ایل این جی پروجیکٹس میں ناکام ہو چکی تھی۔ مجھے نہیں معلوم کہ ایس ایس جی نے کوئی آئل یا ایل پی جی ریفائنری قائم کی تھی۔ ایس ایس جی سی کا بنیادی کام گیس پائپ لائنیں ہے اور ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کی تمام گیس پائپ لائنیں ایس ایس جی سی نے بحیثیت ٹھیکے دار بچھائی تھیں۔ سوال: آئی ایس جی ایس کا مینڈیٹ کی تھا اور آیا آئی ایس جی ایس کے پاس ایل این جی کی پروکیورمنٹ کے متعلق کوئی تجربہ تھا؟ جواب: آئی ایس جی ایس (پرائیوٹ) لمیٹڈ؛ جی ایچ پی ایل، ایس ایس جی سی اور ایس این جی پی ایل کی شیئر ہولڈنگ کے ذریعے 100؍ فیصدی حکومت پاکستان کی کمپنی ہے اور اسے ایران پاکستان گیس پائپ لائن پروجیکٹ اور ترکمانستان، افغانستان، پاکستان انڈیا (ٹاپی) گیس پائپ لائن پروجیکٹ پر کام کرنے کا مینڈیٹ دیا گیا ہے۔ کمپنی کے پاس انٹی گریٹڈ اور اَن بنڈلڈ سسٹمز کے تحت اربوں ڈالرز مالیت کے گیس درآمدی پروجیکٹس لگانے کے حوالے سے کافی معلومات اور تجربہ ہے، ڈھانچہ جاتی لحاظ سے یہ پروجیکٹس اَن بنڈلنڈ ایل این جی پروجیکٹ جیسے ہی ہیں، جن میں ٹولنگ فیس شامل ہے، اور جو تعمیر کیے جا رہے تھے۔ پاکستان میں کسی اور سرکاری کمپنی کے پاس اتنی مہارت اور تجربہ نہیں ہے۔ ایران پاکستان گیس پائپ لائن پروجیکٹ اور ترکمانستان، افغانستان، پاکستان انڈیا (ٹاپی) گیس پائپ لائن پروجیکٹ، جن کی سالانہ قدر پانچ ارب ڈالرز ہے، پر مذاکرات اور ان کے معاہدوں پر کامیابی سے دستخط آئی ایس جی ایس کی کامیابی کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔ سوال: ٹولنگ فیس کے حوالے سے ایل این جی سے متعلق پروکیورمنٹ کے معاملات نمٹانے میں مسٹر مبین صولت کا کیا خاص میرٹ تھا؟ خصوصاً ان کی اہلیت، تجربہ / مہارت اور ان کی سابقہ پروکیورمنٹ سرگرمیاں کیا تھیں؟ مسٹر مبین صولت آئی ایس جی ایس کے مینیجنگ ڈائریکٹر تھے، اور ان کی قیادت میں آئی ایس جی ایس نے اربوں ڈالرز مالیت کے گیس امپورٹ پروجیکٹس، جو ڈھانچہ جاتی لحاظ سے یہ پروجیکٹس اَن بنڈلنڈ ایل این جی پروجیکٹ جیسے ہی ہیں، جن میں ٹولنگ فیس شامل ہے، اور جو تعمیر کیے جا رہے تھے، کے حوالے سے ضروری معلومات اور تجربات حاصل کیے۔ سوال: ایل این جی ٹرمینل ایوارڈ کی سرگرمیوں کے متعلق آئی ایس جی ایس اور آئی ایس جی ایس کے بورڈ کی سرگرمیوں کے حوالے سے آپ کا کیا کردار تھا؟ جواب: وفاقی وزیر برائے وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز، وفاقی کابینہ کے رکن، کابینہ کمیٹی برائے توانائی، اور اقتصادی رابطہ کمیٹی کے رکن کی حیثیت سے یہ میری ذمہ داری تھی کہ پاکستان میں توانائی کے بحران کو ختم کرنے میں مدد کروں۔ ایل این جی سپلائی چین کی تعمیر، بشمول ایل این جی کی درآمدی سہولتیں پیدا کرنا توانائی کا بحران حل کرنے کی جانب اہم قدم تھا۔ ایل این جی سپلائی چین کی تیاری، بشمول پاکستان میں ایل این جی کا پہلا ری گیسی فکیشن ٹرمینل تعمیر کرنا میری بنیادی ذمہ داریوں میں شامل تھا۔ آئی ایس جی ایس کا یہ مینڈیٹ اور ذمہ داری تھی کہ وہ حکومت پاکستان کی پالیسی کے مطابق کام کرے۔ یہ میرے کام کرنے کا طریقہ نہیں کہ بورڈ آف ڈائریکٹرز یا وزارت پیٹرولیم اینڈ نیچرل ریسورسز کی کمپنیوں کی انتظامیہ میں مداخلت کروں یا ان سے رابطہ کروں؛ یہ کمپنیاں اپنے مینڈیٹ کے مطابق اور سیکورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان کے قواعد و ضوابط کے مطابق کام کرتی ہیں۔ سوال: آزاد ارکان (شہزاد علی خان اور زبیر موتی والا) کو آئی ایس جی ایس کے بورڈ سے کیوں ہٹایا گیا؟ جواب: مسٹر شہزاد علی خان اور مسٹر زبیر موتی والا آئی ایس جی ایس کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں آزاد ڈائریکٹرز تھے جو اپنے عہدوں پر تین سالہ مدت مکمل کرنے کے بعد اگست 2016ء میں بورڈ سے ریٹائر ہو گئے۔ سوال: ایل این جی ٹرمینل ون کی بولی کے موقع پر آئی ایس جی ایس کے بورڈ کے آزاد ارکان کا تقرر کیوں نہیں کیا گیا؟ جواب: پبلک سیکٹر کمپنیز (کارپوریٹ گورننس) رولز 2013ء کے مطابق آزاد ڈائریکٹرز کو ایل این جی ٹرمینل کی بولی کے وقت نہ صرف مقرر کیا گیا تھا بلکہ وہ کام بھی کر رہے تھے۔ سوال: ایس ایس جی سی ایل کی بجائے بولی کا کام آئی ایس جی ایس کو دینا کہیں ایل این جی ٹرمینل کے متعلق عبوری فیصلوں کے معاملے میں ای ای ٹی پی ایل کو رعایت دینے کیلئے تو نہیں کی گئی تھی اور اس دوران آزاد میمبرز کو بھی باہر رکھا گیا اور ایس ایس جی ایس کی تجربہ کار ٹیم کو بھی نظرانداز کیا گیا؟ جواب: بدقسمتی سے جو الزام عائد کیا گیا ہے اس میں حقائق کی نفی کی گئی ہے؛ ایل این جی ٹرمینل کیلئے ٹولنگ فیس کی سروسز شفاف اور دو مراحل پر مشتمل ٹینڈر پراسیس کے ذریعے حاصل کی گئی تھیں اور یہ ممکن نہیں کہ مسابقتی عمل کے دوران کوئی عبوری فیصلہ کیا جائے۔ مسابقتی ٹینڈر پراسیس میں ایوارڈ کا فیصلہ طے شدہ تکنیکی اور مالی شرائط اور معیارات کے مطابق کیا جاتا ہے۔ آئی ایس جی ایس کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے آزاد ممبرز کو اسی وقت مقرر کیا گیا تھا جب ایل این جی ٹرمینل کے ٹینڈر کا کام ہو رہا تھا؛ اور یہ لوگ کام بھی کر رہے تھے۔ جیسا کہ واضح کیا گیا ہے کہ ایس ایس جی سی ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ کیلئے پروکیورنگ ایجنسی تھی جبکہ آئی ایس جی ایس کو پروجیکٹ میں رابطہ کاری کا مینڈیٹ دیا گیا تھا۔ ایس ایس جی سی روزِ اول سے ہی ٹینڈر کے عمل کا حصہ تھی تاوقتیکہ ایل این جی ٹرمینل پروجیکٹ ایوارڈ ہوگیا اور ایس ایس جی سی کی منظوری کے سوا کوئی قدم نہیں اٹھایا جا سکتا تھا۔ ایل این جی سپلائی چین کی کامیاب تخلیق توانائی بحران کے حل کیلئے خصوصاً پاکستان میں توانائی بحران کیلئے تشویشناک ہے۔ پاکستان میں ہر موثر گیس سے چلنے والے پاور پلانٹ کو قدرتی گیس دستیاب ہے جو غیر موثر اور موحول کی مناسبت سے ناقابل برداشت ایچ ایس ایف او اور ایل ایس ایف او پر انحصار کم کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ، 1200 میگاواٹ کے 4 آر ایل این جی پاور پلانٹس کی پاکستان میں تنصیب کی گئی ہے جو 60 فیصد موثریت پر آج دنیا میں سب سے زیادہ موثر ہیں اور ایچ ایس ایف او اور ایل ایس ایف او پر چلنے والے پاور پلانٹس کے مقابلے میں آدھی قیمت میں توانائی پیدا کرتے ہیں۔ یہ پاور پلانٹس آج پاکستان کی توانائی پیداوار کی گنجائش کیلئے ریڑھ کی ہڈی ہیں۔ پاکستان ایچ ایس ایف او اور ایل ایس ایف او درآمد کرنے والا دنیا کا دوسرا سب سے بڑا درآمد کنندہ تھا جس کی آج کی درآمد صفر ہے۔ توانائی پیداوار کیلئے فیول کی بچت کا تخمینہ سالانہ 2 ارب ڈالرز سے زائد لگایا گیا ہے۔ انڈسٹری کو گیس کی دستیابی 24/7/265 بیسز پر یقنی بنادی گئی ہے؛ اس کا موازنہ سازگار طور پر 2013 میں 33 فیصد سے کم کی دستیابی سے کیا جاتا ہے۔ اس سے برآمدات اور موثریت اور انڈسٹریز سے وابستہ منافع پر مثبت اثر پڑا ہے جس کا نتیجہ تازہ سرمایے کی صورت سامنے آیا ہے۔ سی این جی کی صنعت 24/7/365 بیسز پر گیس کی دستیابی کے ساتھ تازہ دم ہوگئی ہے؛ شٹ ڈاؤنز اور طویل قطاریں اور 2013 کے سی این جی اسٹیشنز پر طویل قطاروں کا خاتمہ ہوا ہے۔ پاکستان 10 لاکھ ایم ٹی یوریا کا درآمد کنندہ تھا جو اب یوریا کا برآمد کنندہ ہوگیا ہے جبکہ پاکستانی کاشتکاروں کیلئے کم قیمتوں اور بہتر دستیابی کو یقینی بنارہا ہے۔ ایل این جی اور ڈومیسٹک گیس کے درمیان سیزنل گیس سویپس کے ذریعے سردیوں میں گھریلو گیس لوڈشیڈنگ کا خاتمہ قیمتوں میں اضافہ کئے بغیر کردیا گیا ہے۔ اضافی گھریلو صارفین کی لامحدود تعداد کیلئے اب گیس دستیاب ہے۔ ایچ ایس ایف او اور ایل ایس ایف او کا استعمال ختم کرنے، توانائی پیداوار میں زیادہ موثریت، کیپٹو توانائی پیداوار میں کمی اور سی این جی کے زیادہ استعمال سے ماحول پر بہت مثبت اثر پڑا ہے۔ ڈومیسٹک گیس درآمد شدہ گیس کی نسبت ہمیشہ سستی رہے گی خواہ پائپ لائن یا ایل این جی؛ ڈومیسٹک گیس ہمارا اثاثہ ہے جسے ہم دوسروں کو پیسے دے کر اپنے لئے زمین سے نکلواتے ہیں، درآمد شدہ پائپ لائن گیسز یا ایل این جی تھرڈ پارٹی اثاثہ ہے جسے وہ زمین سے نکالتے ہیں اور ہم سے پیسے لینے کیلئے ہمیں دیتے ہیں۔ پاکستان کیلئے بدقسمتی سے گھریلو گیس قلیل مقدار میں ہے، ہماری نئی دریافتیں موجودہ گیس کے میدانوں کے قدرتی گھٹاؤ سے مطابقت نہیں رکھ پارہے۔ تیل و گیس کی تلاش امکانی کام ہے؛ پاکستان میں تیل و گیس کی آن شور پر قابل ذکر تلاش کا امکان کم ہے، آف شور اور شیل آئل اور گیس کا امکان موجود ہے لیکن اس کی اقتصادی نتیجہ خیزی زیر غور ہے۔ پاکستان کیلئے چوائس ہے کہ وہ بڑے پیمانے پر ڈومیسٹک آئل اور گیس کی دریافت ہونے کا انتظار کرے یا گیس کی درآمد کرے۔ شعور رکھنے والے ممالک انتظار نہیں کرسکتے، وہ توانائی درآمد کرتے ہیں اور اس کا موثر انداز میں استعمال کرتے ہیں؛ پاکستان نے ایل این جی کے ساتھ یہی کیا ہے۔ متبادل قابل تجدید توانائی کا معالہ، زیادہ تر ہوا اور سولر، جو توانائی کے اسٹوریج میں کسی بھی بڑی تکنیکی پیش رفت کو روک رہا ہے، سادہ ہے؛ یہ مالی طور پر اسی وقت مناسب ہے جب آپ کے پاس کوئی بیسڈ لوڈ حل ہو اور قابل تجدید پیداوار کی مجموعی لاگت ترجیحاً سستے ترین توانائی پیداوار رکازی ایندھن (فاسل فیول) کی لاگت سے کم ہو۔ یو ایف جی کو بہتربنانے کا سوال کچھ یہ ہے کہ یہ ایس ایس جی سی اور ایس این جی پی ایل کیلئے مستقل چیلنج ہے؛ یہ معاشرتی چیلنجز اور پاکستان کے امن و امان اور سلامتی کی صورتحال سے منسلک ہے۔ ان ماحولیاتی اصلاحات کی غیرموجودگی میں حقیقی یو ایف جی کی اصلاحات بہت ہی کم ہوں گی۔ آر ایل این جی کا بڑھتا ہوا استعمال، جیسا کہ آر ایل این جی استعمال کرنے والے ٹرانسمیشن لائنز پر سب سے زیادہ صارفین ہیں اور گیس فراہمی کی مکمل لاگت ادا کرتے ہیں، سسٹم میں قدرتی گیس کی فیصد اور حجم کے طور پر کم یو ایف جی اعداد ظاہر کریں گے؛ تاہم یو ایف جی لاسز کی حقیقت تبدیل نہیں ہوگی اور قابل ذکر سطحوں تک یو ایف جی کم کرنے کیلئے ٹیکنالوجی اور مینجمنٹ میں بھاری سرمایہ کاری کی ضرورت پڑے گی۔



 
Last edited:

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)
(انصار عباسی)
نیب نے شاہد خاقان عباسی سے سوال کیا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ (ایس ایس جی س مینجمنٹ میں بھاری سرمایہ کاری کی ضرورت پڑے گی۔




کیا ہو گیا ہے ایم حفیظ صاحب - کن جاہلوں کو کیا پڑھنے کے لئے دے دیا آپ نے ؟؟؟
میں صبح سے اس آرٹیکل کو دیکھ رہا ہوں - پر پوسٹ کرنے کا نہیں سوچا اس میں موجود انفورمیشن ان باندروں کو کبھی سمجھ نہیں آے گی - نہ ان میں اتنا پڑھنے کا ہوصلہ ہے
 

Allama G

Senator (1k+ posts)
For last 10 years Khaqan Abbassi is dealing with LPG and LNG and not NAB..This is for sure that Abbassi know everything about his business....NAB job is to catch corruption and not know about technical things ..I am surprised the way this article has been posted on siasat.pk...
Read your post again. How stupid someone will be if he doesn't know anything about the technical stuff but still arrest culprits without even knowing the what charges can be applied so he will be surely punished. Some people even saying that he wanted to be arrested and when NAB will not able to prove him guilty, it will affect the credibility of institution.
 

Billo Rani

Senator (1k+ posts)
Read your post again. How stupid someone will be if he doesn't know anything about the technical stuff but still arrest culprits without even knowing the what charges can be applied so he will be surely punished. Some people even saying that he wanted to be arrested and when NAB will not able to prove him guilty, it will affect the credibility of institution.
These baandars don't understand technical stuff either. If they did, they would have been smart about how they hid the looted money. NAB needs to prove if noora and gang personally benefited from this. Don't be surprised and cry when money trails and other relevant evidence surfaces during trial. They were clever at how to run rackets like mafia and assumed they will be in power forever so no one will hold them accountable. They underestimated IK. They were too arrogant and didn't cover their tracks and now must pay for their crimes. They got sloppy in the mechanisms they used to launder and wash the money.

Remember Al Capone was smart too. He was earning $1 million/day over 100 years ago in U.S. Imagine how much that is in today's terms. He thought he was untouchable too and at the end of the day the accountants (tax man) got him. Point is don't mess with the accountants. They will trump LNG/LPG engineers any day.
 

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
کیا ہو گیا ہے ایم حفیظ صاحب - کن جاہلوں کو کیا پڑھنے کے لئے دے دیا آپ نے ؟؟؟
میں صبح سے اس آرٹیکل کو دیکھ رہا ہوں - پر پوسٹ کرنے کا نہیں سوچا اس میں موجود انفورمیشن ان باندروں کو کبھی سمجھ نہیں آے گی - نہ ان میں اتنا پڑھنے کا ہوصلہ ہے

میرے پاس اس کے علاوہ بھی ایک بہت بڑا پلندہ موجود تھا پچھلے دو مہینے سے ، یہ صرف ایک فائل ہے ، ایسی سترہ اور فائلز ہیں . لگانے کا مقصد انہیں یہ سمجھانا ہے شاہد خاقان عباسی نے جتنی تفصیل اور تحمل سے ان کے سوالوں کے جواب دئے ہیں اس کے باوجود نیب نے انہیں گرفتار کرکے مزید کچھ "پوچھنا" تو یہ سراسر بدنیتی لگتی ہے ، عباسی صاحب نے بالکل ٹھیک کہا کہ مجھے نوے دن کا ریمانڈ دے دیں تاکہ ان نیب والوں کو ایل پی جی اور ایل این جی کا فرق صحیح طور پر سمجھا سکوں
 

sensible

Chief Minister (5k+ posts)
کیا ہو گیا ہے ایم حفیظ صاحب - کن جاہلوں کو کیا پڑھنے کے لئے دے دیا آپ نے ؟؟؟
میں صبح سے اس آرٹیکل کو دیکھ رہا ہوں - پر پوسٹ کرنے کا نہیں سوچا اس میں موجود انفورمیشن ان باندروں کو کبھی سمجھ نہیں آے گی - نہ ان میں اتنا پڑھنے کا ہوصلہ ہے
جن باندروں کو دس روپے پر پوسٹ ملنے ہیں وہ باندر اسے پڑھ بھی رہے پوسٹ بھی کر رہے ہیں اور میراثی بھی بنے ہوئے ہیں ایک دوسرے کے بھی اور خاقان عباسی کے بھی اگر خاقان عباسی نے انھیں لاجواب کر دیا تو کیونکہ نیب کا کام بس انویسٹیگیشن ہے وہ ان کو گھر جانے دے گی اور ریفرنس تک بھی فائل نہیں ہو گا اپنے کسی شہری سے اداروں کا پوچھ گچھ کرنا کوئی جرم ہے نہ ظلم ادارے اس کےمجاز ہیں اور ہر شہری ان کا جواب دینے کا پابند اور اس پر تڑپنے اور بندروں کی طرح اچھلنے کی وجہ سمجھ نہیں آتی کے نیب نے بلا لیا تو کیا قیامت آ گئی کیونکہ نیب نے سزا تو دینی نہیں صرف پوچھ گچھ کرنی ہے لیکن باندر یہ بتانا پسند کریں گے کے نیب کا ادارہ تین بار وزارت عظمیٰ رکھنے والوں نے بنایا اس میں کام کرنے والا ایک ایک فرد بھی انہی کا لگایا ہوا ہے چیئرمین سمیت تو اگر یہ لوگ اتنے نالائق جاہل ہیں تو ایسے ادارے باندروں کو تین بار وزارت عظمیٰ کروا گئے ؟ اور اگر ایسا ہی سب اداروں کے ساتھ کیا ہوا تھا تو بندروں کے اور جرائم تو معاف ہو بھی جائیں یہ قابل معافی نہیں .
 

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
جن باندروں کو دس روپے پر پوسٹ ملنے ہیں وہ باندر اسے پڑھ بھی رہے پوسٹ بھی کر رہے ہیں اور میراثی بھی بنے ہوئے ہیں ایک دوسرے کے بھی اور خاقان عباسی کے بھی اگر خاقان عباسی نے انھیں لاجواب کر دیا تو کیونکہ نیب کا کام بس انویسٹیگیشن ہے وہ ان کو گھر جانے دے گی اور ریفرنس تک بھی فائل نہیں ہو گا اپنے کسی شہری سے اداروں کا پوچھ گچھ کرنا کوئی جرم ہے نہ ظلم ادارے اس کےمجاز ہیں اور ہر شہری ان کا جواب دینے کا پابند اور اس پر تڑپنے اور بندروں کی طرح اچھلنے کی وجہ سمجھ نہیں آتی کے نیب نے بلا لیا تو کیا قیامت آ گئی کیونکہ نیب نے سزا تو دینی نہیں صرف پوچھ گچھ کرنی ہے لیکن باندر یہ بتانا پسند کریں گے کے نیب کا ادارہ تین بار وزارت عظمیٰ رکھنے والوں نے بنایا اس میں کام کرنے والا ایک ایک فرد بھی انہی کا لگایا ہوا ہے چیئرمین سمیت تو اگر یہ لوگ اتنے نالائق جاہل ہیں تو ایسے ادارے باندروں کو تین بار وزارت عظمیٰ کروا گئے ؟ اور اگر ایسا ہی سب اداروں کے ساتھ کیا ہوا تھا تو بندروں کے اور جرائم تو معاف ہو بھی جائیں یہ قابل معافی نہیں .
آپی ، اگر آپ اپنی پوسٹ میں سے گالیاں حذف کردیں تو آپ کے تمام سوالوں کے جواب دئے جاسکتے ہیں
 

Rajarawal111

Chief Minister (5k+ posts)
جن باندروں کو دس روپے پر پوسٹ ملنے ہیں وہ باندر اسے پڑھ بھی رہے پوسٹ بھی کر رہے ہیں اور میراثی بھی بنے ہوئے ہیں ایک دوسرے کے بھی اور خاقان عباسی کے بھی اگر خاقان عباسی نے انھیں لاجواب کر دیا تو کیونکہ نیب کا کام بس انویسٹیگیشن ہے وہ ان کو گھر جانے دے گی اور ریفرنس تک بھی فائل نہیں ہو گا اپنے کسی شہری سے اداروں کا پوچھ گچھ کرنا کوئی جرم ہے نہ ظلم ادارے اس کےمجاز ہیں اور ہر شہری ان کا جواب دینے کا پابند اور اس پر تڑپنے اور بندروں کی طرح اچھلنے کی وجہ سمجھ نہیں آتی کے نیب نے بلا لیا تو کیا قیامت آ گئی کیونکہ نیب نے سزا تو دینی نہیں صرف پوچھ گچھ کرنی ہے لیکن باندر یہ بتانا پسند کریں گے کے نیب کا ادارہ تین بار وزارت عظمیٰ رکھنے والوں نے بنایا اس میں کام کرنے والا ایک ایک فرد بھی انہی کا لگایا ہوا ہے چیئرمین سمیت تو اگر یہ لوگ اتنے نالائق جاہل ہیں تو ایسے ادارے باندروں کو تین بار وزارت عظمیٰ کروا گئے ؟ اور اگر ایسا ہی سب اداروں کے ساتھ کیا ہوا تھا تو بندروں کے اور جرائم تو معاف ہو بھی جائیں یہ قابل معافی نہیں .
Choren ji chorey bhen ji.
Ye aap ke bus ka thread to bilkul hi nheen.
 

Billo Rani

Senator (1k+ posts)
Ansar Abbasi has only reproduce these documents. Authors are Shahid Khaqan Abbasi and NAB.
RAWALPINDI: Prominent member of Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) Shahid Khaqan Abbasi on Thursday excused himself from appearing before National Accountability Bureau Rawalpindi in LNG Terminal case as he is abroad.
Former prime minister Shahid Khaqan was summoned by the bureau in the LNG contract case.
Abbasi has written a letter to NAB, informing the accountability watchdogs that he will not be able to make an appearance before their Rawalpindi office, however, he can come after March 17 on any given day as he will back in Pakistan by that time.
NAB had summoned former premier on March 7 (today) to appear before their Investigation Team (CIT) of the NAB Rawalpindi in LNG Terminal case along with the answers of the questionnaire handed to him.
Earlier, a four-member Investigation Team of NAB Rawalpindi, probing the LNG case had handed over a questionnaire comprising 70 questions to former PM Shahid Khaqan and asked him to submit the reply by February 28.
However, the CIT did not receive the reply yet and now he was sent a reminder letter to appear before the CIT on March 7 along with the reply to the questionnaire.

Source

I highlighted the relevant part for you and will quote it here "the CIT did not receive the reply yet and now he was sent a reminder letter to appear before the CIT...". The questionnaire was 70 questions and responded to before his arrest, then produce the whole thing. How timely these planted questions appear in the hands of Ansar Abbasi right after the arrest.
 

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
اتنی ذہانت تھی تو ایئرپورٹ پر کپڑے کیوں اتروائے۔لمبی تحریروں سے سچ نہیں چھپتا۔

وہ اس کا پرائویٹ ٹور تھا ، عمران خان سمیت ہرپاکستانی اپنے پرائویٹ ٹورز پر فل باڈی سکیننگ سے گزرتے ہیں ، یہ ان کا قانون ہے، پاکستانی وزیر اعظم کیلئے ایسے الزامات بھرتی لگائیں تو ان پر سجتے ہیں پاکستانیوں کو اپنے وزیر اعظم کیلئے ایسے الفاظ استعمال کرتے ہوۓ شرم آنی چاہیے
 
Sponsored Link

Featured Discussions