رسول الله ﷺ نےفرمایا: میرے صحابہ کرام رضوان الله عنھم اجمعین کو برا مت کہو

Status
Not open for further replies.

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
اس فورم پر ایک گستاخ صحابہ کھلم کھلا صحابہ کرام کی گستاخی کر رہا ہے میں نے مناسب سمجھا کہ میں اپنے مسلمان بھائیوں اور بہنوں کو اس فتنہ سے آگاہ کروں تاکہ وہ اس جیسے گستاخ صحابہ کا علمی طور پر سامنا کر سکیں
آپ کے تیسرے بادشاہ جنگ احد میں بھاگ گئے تھے ، کیا کوئی جنگ میں بھاگا شخص مسلمانوں کے لئے رول ماڈل ہو سکتا ہے ؟ ہرگز نہیں اس لئے آپ کے تیسرے بادشاہ ہرگز سابقون الاولون نہیں ہیں
اس کے علاوہ انہوں نے اپنی بادشاہت کے دوران اپنے عزیز و اقارب کو حکومتی عہدے دیے ، اور کرپشن کا بازار گرم کیا
لوگوں کی ان سے نفرت کا یہ عالم تھا کہ جب انہیں مارا گیا تو حضرت علی سمیت کوئی ان کا جنازہ پڑھنے نہ آیا تھا​

صحابہ رضی اللہ عنہ - اگرچہ وہ سب سے اچھے لوگ ہیں - وہ بھی انسان تھے ، اور ان کے مابین ایسا واقع ہوا جو عام طور پر تنازعات اور اختلاف رائے رکھنے والے لوگوں میں پایا جاتا ہے۔ لیکن وہ نیک کام کرنے میں سب سے آگے رہنے والے لوگ تھے ، اور وہ حق کے علم میں بھی سب سے آگے تھے ، اس پر عمل کرنے کے دوران اگر کسی غلطی کا ارتکاب ہو جاتا، جو کہ انسان ہونے کے ناطے ممکن ہے، تو اس غلطی سے رجوح کرنے اور اپنی اصلاح کرنے میں میں بھی بلکل دیر نہیں کرتے تھے۔

وہ تمام لوگ جو یہ سمجھتے ہیں کہ وہ ایک دن اللہ کے سامنے جوابدہ ہونگے ، انہیں چاہیے کہ وہ صحابہ رضی اللہ عنہما کے مابین پیدا ہونے والے اختلافات پر بحث کرنے سے گریز کریں۔ اور ان میں سے ہر ایک کے بارے میں مثبت سوچیں۔

آپ کو ان لوگوں سے بہتر کون ملے گا جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ وقت گزارا ، ان کے ساتھ ہجرت کی ، ان کے ساتھ جہاد کیا ، اور ان کے پیچھے نماز پڑھی؟

اس کو سمجھنا چاہئے - اللہ پاک ہمیں اور آپ کو الجھنوں اور ایسے دلائل سے جو کہ سطحی طور پر قابل احتمال ، لیکن اصل میں غلط ہوں ، چاہے واضح ہوں یا لطیف دونوں ہی سے محفوظ رکھے ، - کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم بہترین نبی کے بہترین ساتھی تھے ، خاص کر چار صحیح ہدایت خلیفہ۔

(Qur'an 9:100) وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَ‌ٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ

اور جو لوگ قدیم میں پہلے ہجرت کرنے والوں اور مدد دینے والو ں میں سے اور وہ لوگ جو نیکی میں ان کی پیروی کرنے والے ہیں الله ان سے راضی ہوئےاوروہ اس سے راضی ہوئےان کے لیے ایسے باغ تیار کیے ہیں جن کے نیچے نہریں بہتی ہیں ان میں ہمیشہ رہیں گے یہ بڑی کامیابی ہے

اللہ تعالیٰ مہاجرین کے بارے میں فرماتے ہیں۔

(Qur'an 59:8) لِلْفُقَرَاءِ الْمُهَاجِرِينَ الَّذِينَ أُخْرِجُوا مِن دِيَارِهِمْ وَأَمْوَالِهِمْ يَبْتَغُونَ فَضْلًا مِّنَ اللَّهِ وَرِضْوَانًا وَيَنصُرُونَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ ۚ أُولَـٰئِكَ هُمُ الصَّادِقُونَ
وہ مال وطن چھوڑنے والے مفلسوں کے لیے بھی ہے جو اپنے گھروں اور مالوں سے نکالے گئے الله کا فضل اس کی رضا مندی چاہتے ہیں اوروہ الله اور اس کے رسول کی مدد کرتے ہیں یہی سچے (مسلمان) ہیں

اور اللہ انصار کے متعلق ارشاد فرماتا ہے

(Qur'an 59:9) وَالَّذِينَ تَبَوَّءُوا الدَّارَ وَالْإِيمَانَ مِن قَبْلِهِمْ يُحِبُّونَ مَنْ هَاجَرَ إِلَيْهِمْ وَلَا يَجِدُونَ فِي صُدُورِهِمْ حَاجَةً مِّمَّا أُوتُوا وَيُؤْثِرُونَ عَلَىٰ أَنفُسِهِمْ وَلَوْ كَانَ بِهِمْ خَصَاصَةٌ ۚ وَمَن يُوقَ شُحَّ نَفْسِهِ فَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ

اور وہ (مال) ان کے لیے بھی ہے کہ جنہوں نے ان سے پہلے (مدینہ میں) گھر اور ایمان حاصل کر رکھا ہے جو ان کے پاس وطن چھوڑ کرآتا ہے اس سے محبت کرتے ہیں اور اپنے سینوں میں اس کی نسبت کوئی خلش نہیں پاتے جو مہاجرین کو دیا جائے اور وہ اپنی جانوں پر ترجیح دیتے ہیں اگرچہ ان پر فاقہ ہو اور جو اپنے نفس کے لالچ سے بچایا جائے پس وہی لوگ کامیاب ہیں

اور اللہ ان مومنین کے بارے میں ارشاد فرماتا ہے جو ان کے بعد آتے ہیں۔

(Qur'an 59:10) وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

وہ کون ہونگے جو قرآن کی واضح آیت رسول الله ﷺ کے اصحاب کے بارے میں سننے کے باوجود ان کے بارے میں اپنی غلیظ زبان کھولتے ہیں - یقینا یہ لوگ وہ ہیں جو ہمارے ہاتھوں میں موجود قرآن کی حقانینت کے قائل ہہیں ہیں اور تقیہ کرتے ہوۓ کہتے ہم تو اس قرآن کو مکمل مانتے ہیں جو رسول الله پر نازل ہوا تھا جبکہ دل میں یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ حضرت عثمان نے قرآن میں تحریف کر دی تھی- أستغفر الله -ان کا یہ عقیدہ ان کی کتابوں سے بلکل عیاں ہے، کلک کریں "پوسٹ نمبر ١٩"

صحابہ کے مابین جو اختلاف رائے اور تنازعات ہیں ان کے بارے میں ، ہمیں اس پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے ، جبکہ اس بات پر یقین کرنا کہ وہ امت میں سے بہترین ہیں اور ان سے محبت کرتے ہیں اور ان کی منظوری دیتے ہیں۔ یہ رائے اہل سنت والجماعت نے بار بار بیان کی ہے۔

‘عمر ابن‘ عبد العزیز رحم اللہ علیہ سے ‘علی اور‘ عثمان ، اور جمل اور صفین کی لڑائوں اور ان میں کیا ہوا اس کے بارے میں پوچھا گیا۔ انہوں نے کہا: یہ لہو ہے کہ اللہ نے مجھے اسے بہانے میں میرا ہاتھ نہیں شامل کیا ، اور میں اس میں (اس کی بات کرکے) اپنی زبان ڈوبانا نہیں چاہتا ہوں۔
الطبقات الکبرا ، 5/394

ایک شخص نے امام احمد ابن حنبل سے پوچھا کہ ‘علی اور معاویہ کے مابین کیا ہوا اور چلا گیا۔ ایک شخص نے کہا کہ وہ بنو ہاشم کا ایک آدمی تھا ۔ امام احمد ابن حنبل اس کی طرف متوجہ ہوے اور کہا: قرآن کی یہ آیت پڑھ
(Qur'an 2:134) تِلْكَ أُمَّةٌ قَدْ خَلَتْ ۖ لَهَا مَا كَسَبَتْ وَلَكُم مَّا كَسَبْتُمْ ۖ وَلَا تُسْأَلُونَ عَمَّا كَانُوا يَعْمَلُونَ

یہ ایک جماعت تھی جو گزرچکی ان کے لیے ان کے اعمال میں اور تمہارے لیے اور تمہارے اعمال ہیں اور تم سے نہیں پوچھا جائے گا کہ وہ کیا کرتے تھے

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 126

ایک اور موقع پر اسی سوال پر کہ ’علی اور معاویہ کے مابین جو ہوا اس کے بارے میں آپ کیا کہتے ہو؟ امام احمد نے کہا: میں ان کے بارے میں کچھ نہیں کہتا ہوں سوائے اس کے کہ جو بہتر ہو۔

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 164

المیمونی نے کہا: احمد بن حنبل نے مجھ سے کہا: اگر آپ کسی کو صحابی کے بارے میں کسی کو برا بھلا کہتے ہوئے دیکھیں ، تو اس کے اسلام کے بارے میں شبہ کریں۔ الفضل ابن زیاد نے کہا: ایک شخص نے امام احمد بن حمبل سے پوچھا کہ ایک شخص جو کہ معاویہ اور‘ عمرو ابن العاص ’پر تنقید کرتا ہے، کیا اسے رافضی کہا جاسکتا ہے؟ انہوں نے کہا: کوئی صحابہ پر تنقید کرنے کا حوصلہ نہیں کر سکتا سوائے اس کے کہ اس کے دل میں کچھ برائی چھپی ہوئی ہے۔ کوئی بھی صحابہ میں سے کسی پر تنقید نہیں کرسکتا ، سوائے اس کے جو اپنے دل میں کچھ برائیوں کو چھپا رہا ہے۔ حوالہ۔ البداية والنهاية ، 8/139

ابو زرعہ الرازی نے کہا: اگر آپ دیکھتے ہیں کہ کوئی شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابہ میں سے کسی پر تنقید کرتا ہے ، تو جان لو کہ وہ تو ایک گمراہ ہے ، کیونکہ ہمارے نزدیک رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) صحیح ہیں اور قرآن کریم صحیح ہے۔ بلکہ اس قرآن اور سنت کو ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ نے پہنچایا۔ وہ صرف ان لوگوں کی حیثیت کو مجروح کرنا چاہتے ہیں جنھوں نے قرآن اور سنت کی تصدیق کی تاکہ قرآن وسنت کی صداقت کو مجروح کیا جاسکے۔ لیکن یہ زیادہ مناسب ہے کہ ان پر تنقید کی جائے جو کہ صحابہ پر تنقید کرتے ہیں۔ حوالہ۔ الكفاية في علم الرواية ، ص۔ 49

القرطبی نے کہا:کسی صحابی کی طرف جان بوجھ کر غلطی منسوب کرنا جائز نہیں ہے ، کیوں کہ انہوں نے اپنے سارے عمل کو اس بات پر مبنی بنایا جس کو وہ صحیح اور مناسب سمجھتے تھے ، اور ان کا ارادہ اللہ ہی کی رضا تھا۔ وہ ہمارے لئے پیروی کرنے کی تمام مثال ہیں اور اللہ تعالیٰ نے ہمیں ہدایت کی ہے کہ ان کے مابین پائے جانے والے اختلافات پر بحث کرنے سے باز آجائیں ، اور ہمیں صرف ان کا ذکر بہترین طریقے سے کرنا چاہئے ، اس تقدس کی بناء پر جو انہیں رسول اللہ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم ہونے پر ملا ، اور اس وجہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان پر لعن طعن کرنے سے منع کیا ہے۔ مزید یہ کہ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں بتایا ہے کہ وہ ان سے راضی ہے۔ حوالہ۔ تفسیر القرطبی ، 16/321

ابن أبي زيد القيرواني، رحمة الله عليه نے اس بات پر گفتگو کرتے ہوئے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں مسلمان کیا یقین کرنا واجب ہے اور ان کے بارے میں کیا کہنا چاہئے ؟: جو بھی صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا تذکرہ کرنا چاہے اسے چاہئے کہ وہ بہترین پیرا ۓ میں کرے ، اور ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے۔ وہ تمام لوگوں میں سب سے زیادہ اس بات کے مستحق ہیں کہ ان کے قول و فعل کی بہترین ترجمانی کی جا ۓ اور ان کے بارے میں بہترین پیرا ۓ میں سوچا جائے۔ حوالہ۔ "عقيدة أهل السنة والجماعة في الصحابة الكرام" (2/734)

أبو عبد الله بن بطة، رحمة الله عليه نے اہل سنت والجماعت کے عقائد پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: اس کے بعد ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے درمیان پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے باز آنا چاہئے۔ ، کیوں کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ بڑے بڑے واقعات دیکھتے ہیں اور فضیلت حاصل کرنے والے پہلے لوگ تھے۔ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں ہدایت کی ہے کہ ہم ان کے لئے مغفرت کی دعا کریں اور ان سے محبت کے ذریعہ اللہ کے قریب ہوں ۔ وہ جانتا تھا کہ ان میں کیا ہوگا اور وہ لڑیں گے۔ تاہم انھیں باقی انسانیت پر فوقیت دی گئی کیونکہ غلطیاں ، خواہ جان بوجھ کر ہو یا کوئی اور وجہ سے ، ان کے لئے پہلے ہی معاف کردی گئی تھی ، اور صحابہ کرام میں آئندہ پیدا ہونے والے تمام تنازعات کی باوجود، انہیں معاف کردیا گیا ہے۔ "كتاب الشرح والإبانة على أصول السنة والديانة" (ص/268) .

أبو عثمان الصابوني نے سلف اور علمائے حدیث کے عقیدہ پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: ان کا ماننا تھا کہ ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر گفتگو کرنے سے گریز کرنا چاہئے اور ہمیں ایسی کوئی بھی بات کہنے سے پرہیز کرنا چاہئے جو ان پر تنقید ہو۔ ہمیں ان سب کے لئے رحم کی دعا کرنی چاہئے اور ان سب سے محبت کرنا چاہئے۔ "عقيدة السلف وأصحاب الحديث - ضمن مجموعة الرسائل المنيرية" (1/129)

شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے کہا: اہل سنت والجماعت کا ایک بنیادی اصول یہ ہے کہ وہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں بہترین الفاظ میں سوچتے اور بولتے ہیں ، جیسا کہ اللہ نے ان کے بارے میں بیان کیا ہے۔

وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

(سورة الحشر, Al-Hashr, Chapter #59, Verse #10)


اور یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت میں ہے ، جن کا فرمانا ہے : "میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، کیونکہ جس کے ہاتھ سے میری جان ہے ، اگر کوئی تم میں سے احد پہاڑ کے برابر سونا (اللہ کی راہ میں) خرچ کرے تو ان کے دیئے ایک مُد (آدھ کلو) یا آدھے مد کے برابر بھی نہیں ہو سکتا"۔صحیح مسلم،حدیث نمبر:2540

وہ قرآن و سنت میں کہی گئی بات کو قبول کرتے ہیں ، اور ان کی خوبیوں اور مرتبہ پر متفقہ طور پر متفق ہیں۔

ان کا عقیدہ تھا کہ صحابہ میں سے کوئی بھی غلطی سے پاک 'معصوم' نہیں ہے اور نہ ہی وہ بڑے یا معمولی گناہوں کے ارتکاب سے محفوظ تھے ۔ اس کے بجائے یہ ممکن ہے کہ انہوں نے عام طور پر گناہ کیا ہوں ، لیکن انہوں نے نیک اعمال کا بہت بڑا کام کیا اور خوبیاں حاصل کیں جس کے ذریعہ ان کو جو بھی گناہ سرزد ہوا ، انہیں معاف کردیا گیا ، اس حد تک کہ انہیں ایسے برے کاموں کے لئے بھی معاف کردیا گیا جو ان کے بعد آنے والے کسی کو بھی اسطرح معاف نہیں کیا جاۓ گیا ، کیوں کہ انہوں نے اچھے اعمال انجام دیئے جس سے برے اعمال مٹا دیئے گئے-

مزید برآں ، اگر ان میں سے کسی نے گناہ کیا ہے ، تو وہ اس سے توبہ کرلیتا ہے ، یا اچھے اعمال انجام دیئے جس کے سبب سے ان کے لئے معافی ہوگئی چونکہ ان کا شمار اسلام قبول کرنے والے پہلے لوگوں میں ہوتا ہے۔ یہ اصحاب محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شفاعت کے، جس میں سے وہ لوگوں کے سب سے زیادہ، مستحق ہیں ، یا اس دنیا میںاس مصیبت کے سبب جس کا سامنا کرنے کے دوران ان کا خاتمہ ہوا تھا - اگر معاملہ اصل گناہوں کے بارے میں یہ ہے تو پھر ان معاملات میں جہاں ان کے اعمال کی بنیاد ان کا اجتہاد تھا-: اگر ان کا اجتہاد ٹھیک تھا تو ان کو دو ثواب ملیں گے اور اگر ان سے غلطی ہوئی ہے تو ان کا ایک صلہ ہوگا اور غلطی معاف ہوگی۔

نیز ان میں سے بعض نے جو قابل اعتراض اعمال انجام دیئے ہیں ان کی خوبیوں اور فضیلت، جیسے کہ اللہ اور اس کے رسول پر اعتقاد ، اللہ کی خاطر جہاد ، ہجرت، فائدہ مند علم اور نیک اعمال کے مقابلے میں بہت ہی کم اور معمولی بات ہے۔

جو بھی شخص انکی سیرتوں کا علم و بصیرت کے ساتھ مطالعہ کرتا ہے ، اور یہ دیکھتا ہے کہ اللہ نے ان کو جو فضیلت عطا کی ہے ، اس کو یقین ہو جائے گا کہ وہ انبیائے کرام کے بعد بہترین انسان ہیں۔ نہ ان سے پہلے اور نہ ہی کبھی ان بعد میں ان جیسا کوئی ہوگا۔ وہ اس امت کے اشرافیہ ہیں ، جو سب اقوام میں سے بہترین ہیں اور اللہ کے نزدیک ان میں سے سب سے پیارے ہیں۔ حوالہ۔"مجموع الفتاوى" (3/152- 156)

الحافظ ابن حجر نے کہا: اہل سنت متفقہ طور پر اس بات پر متفق ہیں کہ صحابہ میں سے کسی کے بارے میں، ان کے تنازعات کی آڑ میں، کسی بھی قسم کی غیبت کرنے پر اعتراض کرنا واجب ہے ، یہاں تک کہ اگر لوگ جانتے ہیں کہ ان میں سے کون حق میں تھا ، کیوں کہ وہ ان جنگوں میں نہیں لڑتے تھے سوائے اس کی بنا پر کہ انھوں نے اجتہاد کر کے اسے صحیح سمجھا، اور اللہ سبحانہ وتعالی نے اس شخص کو معاف کردیتا ہے جو اپنے اجتہاد میں غلطی کرتا ہے۔ بے شک یہ بات ثابت ہے کہ اسے ایک انعام دیا جائے گا ، اور جو صحیح اجتہاد کرے اسے دو اجر دیئے جائیں گے۔ حوالہ- فتح الباری ، 13/34

اسی طرح کے تبصرے بہت سارے علماء کرام نے بھی دئے ہیں اور اس پر عمل کرنا بھی ضروری ہے ، کیونکہ یہ ہمیں غلطیاں کرنے سے بچایا جائے گا اور یہ انبیاء کرام کے بعد بہترین لوگوں کے حقوق کو تسلیم کرواۓ گا ۔

جہاں تک عثمان اور علی رضی اللہ عنہ کی شہادت کا تعلق ہے ، اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ انھیں غیر قانونی طور پر شہید کیا گیا تھا اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ وہ جنت میں ہوں گے ، اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ جس نے یہ عمل کیا ، یا اس میں کوئی کردار ادا کیا ، یا اس کی منظوری دی ، یا اس کے بارے میں جان لیا اور اس کی تردید نہیں کی ، بدترین طریقوں سے گمراہ ہوئے اور دوسروں کو بھی گمراہ کیا ، اور بدکار آدمی تھا ، جو اس کے سوا کسی اور راستے پر چلتا تھا۔ مومنین؛ اللہ قیامت کے دن ان کے اعمال کا محاسبہ کرے گا اور اللہ سبحانہ وتعالی قیامت کے دن ان کے درمیان فیصلہ کریں گے۔ “

قُلِ اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ أَنتَ تَحْكُمُ بَيْنَ عِبَادِكَ فِي مَا كَانُوا فِيهِ يَخْتَلِفُونَ

کہہ دو اے الله آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے ہر چھپی او رکھلی بات کے جاننے والے تو ہی اپنے بندوں میں فیصلہ کرے گا اس بات میں جس میں وہ اختلاف کر رہے ہیں
(سورة الزمر, Az-Zumar, Chapter #39, Verse #46)

ماخوز
 
Advertisement

Pakistani1947

Minister (2k+ posts)
I have noticed that Engineer Ali Mirza tries to find and highlights the mistakes of Sahabah Karam (رضوان اللہ عنھم اجمعین). Can somebody who have access to him convey this article and request him to be careful while opening his mouth against Sahabah (رضوان اللہ عنھم اجمعین).

Otherwise, I found most of his aqaid are according to Qur'an and Sunnah and he is doing good job to expose Shirk and Biddah, which is wide spread among Muslim.
 

Arshad50

Senator (1k+ posts)
ap ko is ke kis cheez se takleef hoyee hay mere klhyale me alfaz dr saab ne likhe hay os se wo qadyani kese hoa bahut hi zaburdast lafz kahe hay gustakh e sahaba ke lia Allah dr Adamk o is ka dila de Ameen muje nahi pata yahan ko qadyani kon mosalman hay agar sahabaki itni izat karte hay to i respact tham for this act baqi mirza qadyani or on logo par bi Allahki lannat jo sahaba ko galian bakte hay mirza qadyani ke saath wo log jahanmi hay jo amma aysha rz ko ghalat bura kehte hay
 

Arshad50

Senator (1k+ posts)
اس فورم پر ایک گستاخ صحابہ کھلم کھلا صحابہ کرام کی گستاخی کر رہا ہے میں نے مناسب سمجھا کہ میں اپنے مسلمان بھائیوں اور بہنوں کو اس فتنہ سے آگاہ کروں تاکہ وہ اس جیسے گستاخ صحابہ کا علمی طور پر سامنا کر سکیں



صحابہ رضی اللہ عنہ - اگرچہ وہ سب سے اچھے لوگ ہیں - وہ بھی انسان تھے ، اور ان کے مابین ایسا واقع ہوا جو عام طور پر تنازعات اور اختلاف رائے رکھنے والے لوگوں میں پایا جاتا ہے۔ لیکن وہ نیک کام کرنے میں سب سے آگے رہنے والے لوگ تھے ، اور وہ حق کے علم میں بھی سب سے آگے تھے ، اس پر عمل کرنے کے دوران اگر کسی غلطی کا ارتکاب ہو جاتا، جو کہ انسان ہونے کے ناطے ممکن ہے، تو اس غلطی سے رجوح کرنے اور اپنی اصلاح کرنے میں میں بھی بلکل دیر نہیں کرتے تھے۔

وہ تمام لوگ جو یہ سمجھتے ہیں کہ وہ ایک دن اللہ کے سامنے جوابدہ ہونگے ، انہیں چاہیے کہ وہ صحابہ رضی اللہ عنہما کے مابین پیدا ہونے والے اختلافات پر بحث کرنے سے گریز کریں۔ اور ان میں سے ہر ایک کے بارے میں مثبت سوچیں۔

آپ کو ان لوگوں سے بہتر کون ملے گا جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ وقت گزارا ، ان کے ساتھ ہجرت کی ، ان کے ساتھ جہاد کیا ، اور ان کے پیچھے نماز پڑھی؟

اس کو سمجھنا چاہئے - اللہ پاک ہمیں اور آپ کو الجھنوں اور ایسے دلائل سے جو کہ سطحی طور پر قابل احتمال ، لیکن اصل میں غلط ہوں ، چاہے واضح ہوں یا لطیف دونوں ہی سے محفوظ رکھے ، - کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم بہترین نبی کے بہترین ساتھی تھے ، خاص کر چار صحیح ہدایت خلیفہ۔

(Qur'an 9:100) وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَ‌ٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ

اور جو لوگ قدیم میں پہلے ہجرت کرنے والوں اور مدد دینے والو ں میں سے اور وہ لوگ جو نیکی میں ان کی پیروی کرنے والے ہیں الله ان سے راضی ہوئےاوروہ اس سے راضی ہوئےان کے لیے ایسے باغ تیار کیے ہیں جن کے نیچے نہریں بہتی ہیں ان میں ہمیشہ رہیں گے یہ بڑی کامیابی ہے

اللہ تعالیٰ مہاجرین کے بارے میں فرماتے ہیں۔

(Qur'an 59:8) لِلْفُقَرَاءِ الْمُهَاجِرِينَ الَّذِينَ أُخْرِجُوا مِن دِيَارِهِمْ وَأَمْوَالِهِمْ يَبْتَغُونَ فَضْلًا مِّنَ اللَّهِ وَرِضْوَانًا وَيَنصُرُونَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ ۚ أُولَـٰئِكَ هُمُ الصَّادِقُونَ
وہ مال وطن چھوڑنے والے مفلسوں کے لیے بھی ہے جو اپنے گھروں اور مالوں سے نکالے گئے الله کا فضل اس کی رضا مندی چاہتے ہیں اوروہ الله اور اس کے رسول کی مدد کرتے ہیں یہی سچے (مسلمان) ہیں

اور اللہ انصار کے متعلق ارشاد فرماتا ہے

(Qur'an 59:9) وَالَّذِينَ تَبَوَّءُوا الدَّارَ وَالْإِيمَانَ مِن قَبْلِهِمْ يُحِبُّونَ مَنْ هَاجَرَ إِلَيْهِمْ وَلَا يَجِدُونَ فِي صُدُورِهِمْ حَاجَةً مِّمَّا أُوتُوا وَيُؤْثِرُونَ عَلَىٰ أَنفُسِهِمْ وَلَوْ كَانَ بِهِمْ خَصَاصَةٌ ۚ وَمَن يُوقَ شُحَّ نَفْسِهِ فَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ

اور وہ (مال) ان کے لیے بھی ہے کہ جنہوں نے ان سے پہلے (مدینہ میں) گھر اور ایمان حاصل کر رکھا ہے جو ان کے پاس وطن چھوڑ کرآتا ہے اس سے محبت کرتے ہیں اور اپنے سینوں میں اس کی نسبت کوئی خلش نہیں پاتے جو مہاجرین کو دیا جائے اور وہ اپنی جانوں پر ترجیح دیتے ہیں اگرچہ ان پر فاقہ ہو اور جو اپنے نفس کے لالچ سے بچایا جائے پس وہی لوگ کامیاب ہیں

اور اللہ ان مومنین کے بارے میں ارشاد فرماتا ہے جو ان کے بعد آتے ہیں۔

(Qur'an 59:10) وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

وہ کون ہونگے جو قرآن کی واضح آیت رسول الله ﷺ کے اصحاب کے بارے میں سننے کے باوجود ان کے بارے میں اپنی غلیظ زبان کھولتے ہیں - یقینا یہ لوگ وہ ہیں جو ہمارے ہاتھوں میں موجود قرآن کی حقانینت کے قائل ہہیں ہیں اور تقیہ کرتے ہوۓ کہتے ہم تو اس قرآن کو مکمل مانتے ہیں جو رسول الله پر نازل ہوا تھا جبکہ دل میں یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ حضرت عثمان نے قرآن میں تحریف کر دی تھی- أستغفر الله -ان کا یہ عقیدہ ان کی کتابوں سے بلکل عیاں ہے، کلک کریں "پوسٹ نمبر ١٩"

صحابہ کے مابین جو اختلاف رائے اور تنازعات ہیں ان کے بارے میں ، ہمیں اس پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے ، جبکہ اس بات پر یقین کرنا کہ وہ امت میں سے بہترین ہیں اور ان سے محبت کرتے ہیں اور ان کی منظوری دیتے ہیں۔ یہ رائے اہل سنت والجماعت نے بار بار بیان کی ہے۔

‘عمر ابن‘ عبد العزیز رحم اللہ علیہ سے ‘علی اور‘ عثمان ، اور جمل اور صفین کی لڑائوں اور ان میں کیا ہوا اس کے بارے میں پوچھا گیا۔ انہوں نے کہا: یہ لہو ہے کہ اللہ نے مجھے اسے بہانے میں میرا ہاتھ نہیں شامل کیا ، اور میں اس میں (اس کی بات کرکے) اپنی زبان ڈوبانا نہیں چاہتا ہوں۔
الطبقات الکبرا ، 5/394

ایک شخص نے امام احمد ابن حنبل سے پوچھا کہ ‘علی اور معاویہ کے مابین کیا ہوا اور چلا گیا۔ ایک شخص نے کہا کہ وہ بنو ہاشم کا ایک آدمی تھا ۔ امام احمد ابن حنبل اس کی طرف متوجہ ہوے اور کہا: قرآن کی یہ آیت پڑھ
(Qur'an 2:134) تِلْكَ أُمَّةٌ قَدْ خَلَتْ ۖ لَهَا مَا كَسَبَتْ وَلَكُم مَّا كَسَبْتُمْ ۖ وَلَا تُسْأَلُونَ عَمَّا كَانُوا يَعْمَلُونَ

یہ ایک جماعت تھی جو گزرچکی ان کے لیے ان کے اعمال میں اور تمہارے لیے اور تمہارے اعمال ہیں اور تم سے نہیں پوچھا جائے گا کہ وہ کیا کرتے تھے

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 126

ایک اور موقع پر اسی سوال پر کہ ’علی اور معاویہ کے مابین جو ہوا اس کے بارے میں آپ کیا کہتے ہو؟ امام احمد نے کہا: میں ان کے بارے میں کچھ نہیں کہتا ہوں سوائے اس کے کہ جو بہتر ہو۔

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 164

المیمونی نے کہا: احمد بن حنبل نے مجھ سے کہا: اگر آپ کسی کو صحابی کے بارے میں کسی کو برا بھلا کہتے ہوئے دیکھیں ، تو اس کے اسلام کے بارے میں شبہ کریں۔ الفضل ابن زیاد نے کہا: ایک شخص نے امام احمد بن حمبل سے پوچھا کہ ایک شخص جو کہ معاویہ اور‘ عمرو ابن العاص ’پر تنقید کرتا ہے، کیا اسے رافضی کہا جاسکتا ہے؟ انہوں نے کہا: کوئی صحابہ پر تنقید کرنے کا حوصلہ نہیں کر سکتا سوائے اس کے کہ اس کے دل میں کچھ برائی چھپی ہوئی ہے۔ کوئی بھی صحابہ میں سے کسی پر تنقید نہیں کرسکتا ، سوائے اس کے جو اپنے دل میں کچھ برائیوں کو چھپا رہا ہے۔ حوالہ۔ البداية والنهاية ، 8/139

ابو زرعہ الرازی نے کہا: اگر آپ دیکھتے ہیں کہ کوئی شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابہ میں سے کسی پر تنقید کرتا ہے ، تو جان لو کہ وہ تو ایک گمراہ ہے ، کیونکہ ہمارے نزدیک رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) صحیح ہیں اور قرآن کریم صحیح ہے۔ بلکہ اس قرآن اور سنت کو ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ نے پہنچایا۔ وہ صرف ان لوگوں کی حیثیت کو مجروح کرنا چاہتے ہیں جنھوں نے قرآن اور سنت کی تصدیق کی تاکہ قرآن وسنت کی صداقت کو مجروح کیا جاسکے۔ لیکن یہ زیادہ مناسب ہے کہ ان پر تنقید کی جائے جو کہ صحابہ پر تنقید کرتے ہیں۔ حوالہ۔ الكفاية في علم الرواية ، ص۔ 49

القرطبی نے کہا:کسی صحابی کی طرف جان بوجھ کر غلطی منسوب کرنا جائز نہیں ہے ، کیوں کہ انہوں نے اپنے سارے عمل کو اس بات پر مبنی بنایا جس کو وہ صحیح اور مناسب سمجھتے تھے ، اور ان کا ارادہ اللہ ہی کی رضا تھا۔ وہ ہمارے لئے پیروی کرنے کی تمام مثال ہیں اور اللہ تعالیٰ نے ہمیں ہدایت کی ہے کہ ان کے مابین پائے جانے والے اختلافات پر بحث کرنے سے باز آجائیں ، اور ہمیں صرف ان کا ذکر بہترین طریقے سے کرنا چاہئے ، اس تقدس کی بناء پر جو انہیں رسول اللہ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم ہونے پر ملا ، اور اس وجہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان پر لعن طعن کرنے سے منع کیا ہے۔ مزید یہ کہ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں بتایا ہے کہ وہ ان سے راضی ہے۔ حوالہ۔ تفسیر القرطبی ، 16/321

ابن أبي زيد القيرواني، رحمة الله عليه نے اس بات پر گفتگو کرتے ہوئے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں مسلمان کیا یقین کرنا واجب ہے اور ان کے بارے میں کیا کہنا چاہئے ؟: جو بھی صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا تذکرہ کرنا چاہے اسے چاہئے کہ وہ بہترین پیرا ۓ میں کرے ، اور ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے۔ وہ تمام لوگوں میں سب سے زیادہ اس بات کے مستحق ہیں کہ ان کے قول و فعل کی بہترین ترجمانی کی جا ۓ اور ان کے بارے میں بہترین پیرا ۓ میں سوچا جائے۔ حوالہ۔ "عقيدة أهل السنة والجماعة في الصحابة الكرام" (2/734)

أبو عبد الله بن بطة، رحمة الله عليه نے اہل سنت والجماعت کے عقائد پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: اس کے بعد ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے درمیان پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے باز آنا چاہئے۔ ، کیوں کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ بڑے بڑے واقعات دیکھتے ہیں اور فضیلت حاصل کرنے والے پہلے لوگ تھے۔ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں ہدایت کی ہے کہ ہم ان کے لئے مغفرت کی دعا کریں اور ان سے محبت کے ذریعہ اللہ کے قریب ہوں ۔ وہ جانتا تھا کہ ان میں کیا ہوگا اور وہ لڑیں گے۔ تاہم انھیں باقی انسانیت پر فوقیت دی گئی کیونکہ غلطیاں ، خواہ جان بوجھ کر ہو یا کوئی اور وجہ سے ، ان کے لئے پہلے ہی معاف کردی گئی تھی ، اور صحابہ کرام میں آئندہ پیدا ہونے والے تمام تنازعات کی باوجود، انہیں معاف کردیا گیا ہے۔ "كتاب الشرح والإبانة على أصول السنة والديانة" (ص/268) .

أبو عثمان الصابوني نے سلف اور علمائے حدیث کے عقیدہ پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: ان کا ماننا تھا کہ ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر گفتگو کرنے سے گریز کرنا چاہئے اور ہمیں ایسی کوئی بھی بات کہنے سے پرہیز کرنا چاہئے جو ان پر تنقید ہو۔ ہمیں ان سب کے لئے رحم کی دعا کرنی چاہئے اور ان سب سے محبت کرنا چاہئے۔ "عقيدة السلف وأصحاب الحديث - ضمن مجموعة الرسائل المنيرية" (1/129)

شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے کہا: اہل سنت والجماعت کا ایک بنیادی اصول یہ ہے کہ وہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں بہترین الفاظ میں سوچتے اور بولتے ہیں ، جیسا کہ اللہ نے ان کے بارے میں بیان کیا ہے۔

وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

(سورة الحشر, Al-Hashr, Chapter #59, Verse #10)

اور یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت میں ہے ، جن کا فرمانا ہے : "میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، کیونکہ جس کے ہاتھ سے میری جان ہے ، اگر کوئی تم میں سے احد پہاڑ کے برابر سونا (اللہ کی راہ میں) خرچ کرے تو ان کے دیئے ایک مُد (آدھ کلو) یا آدھے مد کے برابر بھی نہیں ہو سکتا"۔صحیح مسلم،حدیث نمبر:2540

وہ قرآن و سنت میں کہی گئی بات کو قبول کرتے ہیں ، اور ان کی خوبیوں اور مرتبہ پر متفقہ طور پر متفق ہیں۔

ان کا عقیدہ تھا کہ صحابہ میں سے کوئی بھی غلطی سے پاک 'معصوم' نہیں ہے اور نہ ہی وہ بڑے یا معمولی گناہوں کے ارتکاب سے محفوظ تھے ۔ اس کے بجائے یہ ممکن ہے کہ انہوں نے عام طور پر گناہ کیا ہوں ، لیکن انہوں نے نیک اعمال کا بہت بڑا کام کیا اور خوبیاں حاصل کیں جس کے ذریعہ ان کو جو بھی گناہ سرزد ہوا ، انہیں معاف کردیا گیا ، اس حد تک کہ انہیں ایسے برے کاموں کے لئے بھی معاف کردیا گیا جو ان کے بعد آنے والے کسی کو بھی اسطرح معاف نہیں کیا جاۓ گیا ، کیوں کہ انہوں نے اچھے اعمال انجام دیئے جس سے برے اعمال مٹا دیئے گئے-

مزید برآں ، اگر ان میں سے کسی نے گناہ کیا ہے ، تو وہ اس سے توبہ کرلیتا ہے ، یا اچھے اعمال انجام دیئے جس کے سبب سے ان کے لئے معافی ہوگئی چونکہ ان کا شمار اسلام قبول کرنے والے پہلے لوگوں میں ہوتا ہے۔ یہ اصحاب محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شفاعت کے، جس میں سے وہ لوگوں کے سب سے زیادہ، مستحق ہیں ، یا اس دنیا میںاس مصیبت کے سبب جس کا سامنا کرنے کے دوران ان کا خاتمہ ہوا تھا - اگر معاملہ اصل گناہوں کے بارے میں یہ ہے تو پھر ان معاملات میں جہاں ان کے اعمال کی بنیاد ان کا اجتہاد تھا-: اگر ان کا اجتہاد ٹھیک تھا تو ان کو دو ثواب ملیں گے اور اگر ان سے غلطی ہوئی ہے تو ان کا ایک صلہ ہوگا اور غلطی معاف ہوگی۔

نیز ان میں سے بعض نے جو قابل اعتراض اعمال انجام دیئے ہیں ان کی خوبیوں اور فضیلت، جیسے کہ اللہ اور اس کے رسول پر اعتقاد ، اللہ کی خاطر جہاد ، ہجرت، فائدہ مند علم اور نیک اعمال کے مقابلے میں بہت ہی کم اور معمولی بات ہے۔

جو بھی شخص انکی سیرتوں کا علم و بصیرت کے ساتھ مطالعہ کرتا ہے ، اور یہ دیکھتا ہے کہ اللہ نے ان کو جو فضیلت عطا کی ہے ، اس کو یقین ہو جائے گا کہ وہ انبیائے کرام کے بعد بہترین انسان ہیں۔ نہ ان سے پہلے اور نہ ہی کبھی ان بعد میں ان جیسا کوئی ہوگا۔ وہ اس امت کے اشرافیہ ہیں ، جو سب اقوام میں سے بہترین ہیں اور اللہ کے نزدیک ان میں سے سب سے پیارے ہیں۔ حوالہ۔"مجموع الفتاوى" (3/152- 156)

الحافظ ابن حجر نے کہا: اہل سنت متفقہ طور پر اس بات پر متفق ہیں کہ صحابہ میں سے کسی کے بارے میں، ان کے تنازعات کی آڑ میں، کسی بھی قسم کی غیبت کرنے پر اعتراض کرنا واجب ہے ، یہاں تک کہ اگر لوگ جانتے ہیں کہ ان میں سے کون حق میں تھا ، کیوں کہ وہ ان جنگوں میں نہیں لڑتے تھے سوائے اس کی بنا پر کہ انھوں نے اجتہاد کر کے اسے صحیح سمجھا، اور اللہ سبحانہ وتعالی نے اس شخص کو معاف کردیتا ہے جو اپنے اجتہاد میں غلطی کرتا ہے۔ بے شک یہ بات ثابت ہے کہ اسے ایک انعام دیا جائے گا ، اور جو صحیح اجتہاد کرے اسے دو اجر دیئے جائیں گے۔ حوالہ- فتح الباری ، 13/34

اسی طرح کے تبصرے بہت سارے علماء کرام نے بھی دئے ہیں اور اس پر عمل کرنا بھی ضروری ہے ، کیونکہ یہ ہمیں غلطیاں کرنے سے بچایا جائے گا اور یہ انبیاء کرام کے بعد بہترین لوگوں کے حقوق کو تسلیم کرواۓ گا ۔

جہاں تک عثمان اور علی رضی اللہ عنہ کی شہادت کا تعلق ہے ، اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ انھیں غیر قانونی طور پر شہید کیا گیا تھا اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ وہ جنت میں ہوں گے ، اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ جس نے یہ عمل کیا ، یا اس میں کوئی کردار ادا کیا ، یا اس کی منظوری دی ، یا اس کے بارے میں جان لیا اور اس کی تردید نہیں کی ، بدترین طریقوں سے گمراہ ہوئے اور دوسروں کو بھی گمراہ کیا ، اور بدکار آدمی تھا ، جو اس کے سوا کسی اور راستے پر چلتا تھا۔ مومنین؛ اللہ قیامت کے دن ان کے اعمال کا محاسبہ کرے گا اور اللہ سبحانہ وتعالی قیامت کے دن ان کے درمیان فیصلہ کریں گے۔ “

قُلِ اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّ
lهَادَةِ أَنتَ تَحْكُمُ بَيْنَ عِبَادِكَ فِي مَا كَانُوا فِيهِ يَخْتَلِفُونَ
کہہ دو اے الله آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے ہر چھپی او رکھلی بات کے جاننے والے تو ہی اپنے بندوں میں فیصلہ کرے گا اس بات میں جس میں وہ اختلاف کر رہے ہیں
(سورة الزمر, Az-Zumar, Chapter #39, Verse #46)

ماخوز
love you brother lots off love from me to you jzk or doshman e sahaba ke lia ye👢
 

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
ap ko is ke kis cheez se takleef hoyee hay mere klhyale me alfaz dr saab ne likhe hay os se wo qadyani kese hoa bahut hi zaburdast lafz kahe hay gustakh e sahaba ke lia Allah dr Adamk o is ka dila de Ameen muje nahi pata yahan ko qadyani kon mosalman hay agar sahabaki itni izat karte hay to i respact tham for this act baqi mirza qadyani or on logo par bi Allahki lannat jo sahaba ko galian bakte hay mirza qadyani ke saath wo log jahanmi hay jo amma aysha rz ko ghalat bura kehte hay
 

Arshad50

Senator (1k+ posts)
mere bhai zara par sahi se me ne kaha hay zoja e rasool ko jo galian dete naraz nahi hona muje nahi pata yaha kon dr hay kon qadyani hay mene Dr Adan ke alfaz ko izat dee hay ap ne muje koi gali nahi jzk
 
Last edited by a moderator:

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
اس فورم پر ایک گستاخ صحابہ کھلم کھلا صحابہ کرام کی گستاخی کر رہا ہے میں نے مناسب سمجھا کہ میں اپنے مسلمان بھائیوں اور بہنوں کو اس فتنہ سے آگاہ کروں تاکہ وہ اس جیسے گستاخ صحابہ کا علمی طور پر سامنا کر سکیں



صحابہ رضی اللہ عنہ - اگرچہ وہ سب سے اچھے لوگ ہیں - وہ بھی انسان تھے ، اور ان کے مابین ایسا واقع ہوا جو عام طور پر تنازعات اور اختلاف رائے رکھنے والے لوگوں میں پایا جاتا ہے۔ لیکن وہ نیک کام کرنے میں سب سے آگے رہنے والے لوگ تھے ، اور وہ حق کے علم میں بھی سب سے آگے تھے ، اس پر عمل کرنے کے دوران اگر کسی غلطی کا ارتکاب ہو جاتا، جو کہ انسان ہونے کے ناطے ممکن ہے، تو اس غلطی سے رجوح کرنے اور اپنی اصلاح کرنے میں میں بھی بلکل دیر نہیں کرتے تھے۔

وہ تمام لوگ جو یہ سمجھتے ہیں کہ وہ ایک دن اللہ کے سامنے جوابدہ ہونگے ، انہیں چاہیے کہ وہ صحابہ رضی اللہ عنہما کے مابین پیدا ہونے والے اختلافات پر بحث کرنے سے گریز کریں۔ اور ان میں سے ہر ایک کے بارے میں مثبت سوچیں۔

آپ کو ان لوگوں سے بہتر کون ملے گا جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ وقت گزارا ، ان کے ساتھ ہجرت کی ، ان کے ساتھ جہاد کیا ، اور ان کے پیچھے نماز پڑھی؟

اس کو سمجھنا چاہئے - اللہ پاک ہمیں اور آپ کو الجھنوں اور ایسے دلائل سے جو کہ سطحی طور پر قابل احتمال ، لیکن اصل میں غلط ہوں ، چاہے واضح ہوں یا لطیف دونوں ہی سے محفوظ رکھے ، - کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم بہترین نبی کے بہترین ساتھی تھے ، خاص کر چار صحیح ہدایت خلیفہ۔

(Qur'an 9:100) وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَ‌ٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ

اور جو لوگ قدیم میں پہلے ہجرت کرنے والوں اور مدد دینے والو ں میں سے اور وہ لوگ جو نیکی میں ان کی پیروی کرنے والے ہیں الله ان سے راضی ہوئےاوروہ اس سے راضی ہوئےان کے لیے ایسے باغ تیار کیے ہیں جن کے نیچے نہریں بہتی ہیں ان میں ہمیشہ رہیں گے یہ بڑی کامیابی ہے

اللہ تعالیٰ مہاجرین کے بارے میں فرماتے ہیں۔

(Qur'an 59:8) لِلْفُقَرَاءِ الْمُهَاجِرِينَ الَّذِينَ أُخْرِجُوا مِن دِيَارِهِمْ وَأَمْوَالِهِمْ يَبْتَغُونَ فَضْلًا مِّنَ اللَّهِ وَرِضْوَانًا وَيَنصُرُونَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ ۚ أُولَـٰئِكَ هُمُ الصَّادِقُونَ
وہ مال وطن چھوڑنے والے مفلسوں کے لیے بھی ہے جو اپنے گھروں اور مالوں سے نکالے گئے الله کا فضل اس کی رضا مندی چاہتے ہیں اوروہ الله اور اس کے رسول کی مدد کرتے ہیں یہی سچے (مسلمان) ہیں

اور اللہ انصار کے متعلق ارشاد فرماتا ہے

(Qur'an 59:9) وَالَّذِينَ تَبَوَّءُوا الدَّارَ وَالْإِيمَانَ مِن قَبْلِهِمْ يُحِبُّونَ مَنْ هَاجَرَ إِلَيْهِمْ وَلَا يَجِدُونَ فِي صُدُورِهِمْ حَاجَةً مِّمَّا أُوتُوا وَيُؤْثِرُونَ عَلَىٰ أَنفُسِهِمْ وَلَوْ كَانَ بِهِمْ خَصَاصَةٌ ۚ وَمَن يُوقَ شُحَّ نَفْسِهِ فَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ

اور وہ (مال) ان کے لیے بھی ہے کہ جنہوں نے ان سے پہلے (مدینہ میں) گھر اور ایمان حاصل کر رکھا ہے جو ان کے پاس وطن چھوڑ کرآتا ہے اس سے محبت کرتے ہیں اور اپنے سینوں میں اس کی نسبت کوئی خلش نہیں پاتے جو مہاجرین کو دیا جائے اور وہ اپنی جانوں پر ترجیح دیتے ہیں اگرچہ ان پر فاقہ ہو اور جو اپنے نفس کے لالچ سے بچایا جائے پس وہی لوگ کامیاب ہیں

اور اللہ ان مومنین کے بارے میں ارشاد فرماتا ہے جو ان کے بعد آتے ہیں۔

(Qur'an 59:10) وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

وہ کون ہونگے جو قرآن کی واضح آیت رسول الله ﷺ کے اصحاب کے بارے میں سننے کے باوجود ان کے بارے میں اپنی غلیظ زبان کھولتے ہیں - یقینا یہ لوگ وہ ہیں جو ہمارے ہاتھوں میں موجود قرآن کی حقانینت کے قائل ہہیں ہیں اور تقیہ کرتے ہوۓ کہتے ہم تو اس قرآن کو مکمل مانتے ہیں جو رسول الله پر نازل ہوا تھا جبکہ دل میں یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ حضرت عثمان نے قرآن میں تحریف کر دی تھی- أستغفر الله -ان کا یہ عقیدہ ان کی کتابوں سے بلکل عیاں ہے، کلک کریں "پوسٹ نمبر ١٩"

صحابہ کے مابین جو اختلاف رائے اور تنازعات ہیں ان کے بارے میں ، ہمیں اس پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے ، جبکہ اس بات پر یقین کرنا کہ وہ امت میں سے بہترین ہیں اور ان سے محبت کرتے ہیں اور ان کی منظوری دیتے ہیں۔ یہ رائے اہل سنت والجماعت نے بار بار بیان کی ہے۔

‘عمر ابن‘ عبد العزیز رحم اللہ علیہ سے ‘علی اور‘ عثمان ، اور جمل اور صفین کی لڑائوں اور ان میں کیا ہوا اس کے بارے میں پوچھا گیا۔ انہوں نے کہا: یہ لہو ہے کہ اللہ نے مجھے اسے بہانے میں میرا ہاتھ نہیں شامل کیا ، اور میں اس میں (اس کی بات کرکے) اپنی زبان ڈوبانا نہیں چاہتا ہوں۔
الطبقات الکبرا ، 5/394

ایک شخص نے امام احمد ابن حنبل سے پوچھا کہ ‘علی اور معاویہ کے مابین کیا ہوا اور چلا گیا۔ ایک شخص نے کہا کہ وہ بنو ہاشم کا ایک آدمی تھا ۔ امام احمد ابن حنبل اس کی طرف متوجہ ہوے اور کہا: قرآن کی یہ آیت پڑھ
(Qur'an 2:134) تِلْكَ أُمَّةٌ قَدْ خَلَتْ ۖ لَهَا مَا كَسَبَتْ وَلَكُم مَّا كَسَبْتُمْ ۖ وَلَا تُسْأَلُونَ عَمَّا كَانُوا يَعْمَلُونَ

یہ ایک جماعت تھی جو گزرچکی ان کے لیے ان کے اعمال میں اور تمہارے لیے اور تمہارے اعمال ہیں اور تم سے نہیں پوچھا جائے گا کہ وہ کیا کرتے تھے

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 126

ایک اور موقع پر اسی سوال پر کہ ’علی اور معاویہ کے مابین جو ہوا اس کے بارے میں آپ کیا کہتے ہو؟ امام احمد نے کہا: میں ان کے بارے میں کچھ نہیں کہتا ہوں سوائے اس کے کہ جو بہتر ہو۔

مناقب الامام احمد از ابن الجوزی ، ص۔ 164

المیمونی نے کہا: احمد بن حنبل نے مجھ سے کہا: اگر آپ کسی کو صحابی کے بارے میں کسی کو برا بھلا کہتے ہوئے دیکھیں ، تو اس کے اسلام کے بارے میں شبہ کریں۔ الفضل ابن زیاد نے کہا: ایک شخص نے امام احمد بن حمبل سے پوچھا کہ ایک شخص جو کہ معاویہ اور‘ عمرو ابن العاص ’پر تنقید کرتا ہے، کیا اسے رافضی کہا جاسکتا ہے؟ انہوں نے کہا: کوئی صحابہ پر تنقید کرنے کا حوصلہ نہیں کر سکتا سوائے اس کے کہ اس کے دل میں کچھ برائی چھپی ہوئی ہے۔ کوئی بھی صحابہ میں سے کسی پر تنقید نہیں کرسکتا ، سوائے اس کے جو اپنے دل میں کچھ برائیوں کو چھپا رہا ہے۔ حوالہ۔ البداية والنهاية ، 8/139

ابو زرعہ الرازی نے کہا: اگر آپ دیکھتے ہیں کہ کوئی شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے صحابہ میں سے کسی پر تنقید کرتا ہے ، تو جان لو کہ وہ تو ایک گمراہ ہے ، کیونکہ ہمارے نزدیک رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) صحیح ہیں اور قرآن کریم صحیح ہے۔ بلکہ اس قرآن اور سنت کو ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ نے پہنچایا۔ وہ صرف ان لوگوں کی حیثیت کو مجروح کرنا چاہتے ہیں جنھوں نے قرآن اور سنت کی تصدیق کی تاکہ قرآن وسنت کی صداقت کو مجروح کیا جاسکے۔ لیکن یہ زیادہ مناسب ہے کہ ان پر تنقید کی جائے جو کہ صحابہ پر تنقید کرتے ہیں۔ حوالہ۔ الكفاية في علم الرواية ، ص۔ 49

القرطبی نے کہا:کسی صحابی کی طرف جان بوجھ کر غلطی منسوب کرنا جائز نہیں ہے ، کیوں کہ انہوں نے اپنے سارے عمل کو اس بات پر مبنی بنایا جس کو وہ صحیح اور مناسب سمجھتے تھے ، اور ان کا ارادہ اللہ ہی کی رضا تھا۔ وہ ہمارے لئے پیروی کرنے کی تمام مثال ہیں اور اللہ تعالیٰ نے ہمیں ہدایت کی ہے کہ ان کے مابین پائے جانے والے اختلافات پر بحث کرنے سے باز آجائیں ، اور ہمیں صرف ان کا ذکر بہترین طریقے سے کرنا چاہئے ، اس تقدس کی بناء پر جو انہیں رسول اللہ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم ہونے پر ملا ، اور اس وجہ سے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان پر لعن طعن کرنے سے منع کیا ہے۔ مزید یہ کہ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں بتایا ہے کہ وہ ان سے راضی ہے۔ حوالہ۔ تفسیر القرطبی ، 16/321

ابن أبي زيد القيرواني، رحمة الله عليه نے اس بات پر گفتگو کرتے ہوئے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں مسلمان کیا یقین کرنا واجب ہے اور ان کے بارے میں کیا کہنا چاہئے ؟: جو بھی صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا تذکرہ کرنا چاہے اسے چاہئے کہ وہ بہترین پیرا ۓ میں کرے ، اور ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے گریز کرنا چاہئے۔ وہ تمام لوگوں میں سب سے زیادہ اس بات کے مستحق ہیں کہ ان کے قول و فعل کی بہترین ترجمانی کی جا ۓ اور ان کے بارے میں بہترین پیرا ۓ میں سوچا جائے۔ حوالہ۔ "عقيدة أهل السنة والجماعة في الصحابة الكرام" (2/734)

أبو عبد الله بن بطة، رحمة الله عليه نے اہل سنت والجماعت کے عقائد پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: اس کے بعد ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے درمیان پیدا ہونے والے تنازعات پر بحث کرنے سے باز آنا چاہئے۔ ، کیوں کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ بڑے بڑے واقعات دیکھتے ہیں اور فضیلت حاصل کرنے والے پہلے لوگ تھے۔ اللہ نے انہیں معاف کر دیا ہے اور ہمیں ہدایت کی ہے کہ ہم ان کے لئے مغفرت کی دعا کریں اور ان سے محبت کے ذریعہ اللہ کے قریب ہوں ۔ وہ جانتا تھا کہ ان میں کیا ہوگا اور وہ لڑیں گے۔ تاہم انھیں باقی انسانیت پر فوقیت دی گئی کیونکہ غلطیاں ، خواہ جان بوجھ کر ہو یا کوئی اور وجہ سے ، ان کے لئے پہلے ہی معاف کردی گئی تھی ، اور صحابہ کرام میں آئندہ پیدا ہونے والے تمام تنازعات کی باوجود، انہیں معاف کردیا گیا ہے۔ "كتاب الشرح والإبانة على أصول السنة والديانة" (ص/268) .

أبو عثمان الصابوني نے سلف اور علمائے حدیث کے عقیدہ پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: ان کا ماننا تھا کہ ہمیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے مابین پیدا ہونے والے تنازعات پر گفتگو کرنے سے گریز کرنا چاہئے اور ہمیں ایسی کوئی بھی بات کہنے سے پرہیز کرنا چاہئے جو ان پر تنقید ہو۔ ہمیں ان سب کے لئے رحم کی دعا کرنی چاہئے اور ان سب سے محبت کرنا چاہئے۔ "عقيدة السلف وأصحاب الحديث - ضمن مجموعة الرسائل المنيرية" (1/129)

شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے کہا: اہل سنت والجماعت کا ایک بنیادی اصول یہ ہے کہ وہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے بارے میں بہترین الفاظ میں سوچتے اور بولتے ہیں ، جیسا کہ اللہ نے ان کے بارے میں بیان کیا ہے۔

وَالَّذِينَ جَاءُوا مِن بَعْدِهِمْ يَقُولُونَ رَبَّنَا اغْفِرْ لَنَا وَلِإِخْوَانِنَا الَّذِينَ سَبَقُونَا بِالْإِيمَانِ وَلَا تَجْعَلْ فِي قُلُوبِنَا غِلًّا لِّلَّذِينَ آمَنُوا رَبَّنَا إِنَّكَ رَءُوفٌ رَّحِيمٌ

اور ان کے لیے بھی جو مہاجرین کے بعد آئے (اور) دعا مانگا کرتے ہیں کہ اے ہمارے رب ہمیں اور ہمارےان بھائیوں کو بخش دے جو ہم سے پہلے ایمان لائے ہیں اور ہمارے دلوں میں ایمانداروں کی طرف سے کینہ قائم نہ ہونے پائے اے ہمارے رب بے شک تو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

(سورة الحشر, Al-Hashr, Chapter #59, Verse #10)

اور یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت میں ہے ، جن کا فرمانا ہے : "میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، میرے صحابہ کو گالی نہ دو ، کیونکہ جس کے ہاتھ سے میری جان ہے ، اگر کوئی تم میں سے احد پہاڑ کے برابر سونا (اللہ کی راہ میں) خرچ کرے تو ان کے دیئے ایک مُد (آدھ کلو) یا آدھے مد کے برابر بھی نہیں ہو سکتا"۔صحیح مسلم،حدیث نمبر:2540

وہ قرآن و سنت میں کہی گئی بات کو قبول کرتے ہیں ، اور ان کی خوبیوں اور مرتبہ پر متفقہ طور پر متفق ہیں۔

ان کا عقیدہ تھا کہ صحابہ میں سے کوئی بھی غلطی سے پاک 'معصوم' نہیں ہے اور نہ ہی وہ بڑے یا معمولی گناہوں کے ارتکاب سے محفوظ تھے ۔ اس کے بجائے یہ ممکن ہے کہ انہوں نے عام طور پر گناہ کیا ہوں ، لیکن انہوں نے نیک اعمال کا بہت بڑا کام کیا اور خوبیاں حاصل کیں جس کے ذریعہ ان کو جو بھی گناہ سرزد ہوا ، انہیں معاف کردیا گیا ، اس حد تک کہ انہیں ایسے برے کاموں کے لئے بھی معاف کردیا گیا جو ان کے بعد آنے والے کسی کو بھی اسطرح معاف نہیں کیا جاۓ گیا ، کیوں کہ انہوں نے اچھے اعمال انجام دیئے جس سے برے اعمال مٹا دیئے گئے-

مزید برآں ، اگر ان میں سے کسی نے گناہ کیا ہے ، تو وہ اس سے توبہ کرلیتا ہے ، یا اچھے اعمال انجام دیئے جس کے سبب سے ان کے لئے معافی ہوگئی چونکہ ان کا شمار اسلام قبول کرنے والے پہلے لوگوں میں ہوتا ہے۔ یہ اصحاب محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شفاعت کے، جس میں سے وہ لوگوں کے سب سے زیادہ، مستحق ہیں ، یا اس دنیا میںاس مصیبت کے سبب جس کا سامنا کرنے کے دوران ان کا خاتمہ ہوا تھا - اگر معاملہ اصل گناہوں کے بارے میں یہ ہے تو پھر ان معاملات میں جہاں ان کے اعمال کی بنیاد ان کا اجتہاد تھا-: اگر ان کا اجتہاد ٹھیک تھا تو ان کو دو ثواب ملیں گے اور اگر ان سے غلطی ہوئی ہے تو ان کا ایک صلہ ہوگا اور غلطی معاف ہوگی۔

نیز ان میں سے بعض نے جو قابل اعتراض اعمال انجام دیئے ہیں ان کی خوبیوں اور فضیلت، جیسے کہ اللہ اور اس کے رسول پر اعتقاد ، اللہ کی خاطر جہاد ، ہجرت، فائدہ مند علم اور نیک اعمال کے مقابلے میں بہت ہی کم اور معمولی بات ہے۔

جو بھی شخص انکی سیرتوں کا علم و بصیرت کے ساتھ مطالعہ کرتا ہے ، اور یہ دیکھتا ہے کہ اللہ نے ان کو جو فضیلت عطا کی ہے ، اس کو یقین ہو جائے گا کہ وہ انبیائے کرام کے بعد بہترین انسان ہیں۔ نہ ان سے پہلے اور نہ ہی کبھی ان بعد میں ان جیسا کوئی ہوگا۔ وہ اس امت کے اشرافیہ ہیں ، جو سب اقوام میں سے بہترین ہیں اور اللہ کے نزدیک ان میں سے سب سے پیارے ہیں۔ حوالہ۔"مجموع الفتاوى" (3/152- 156)

الحافظ ابن حجر نے کہا: اہل سنت متفقہ طور پر اس بات پر متفق ہیں کہ صحابہ میں سے کسی کے بارے میں، ان کے تنازعات کی آڑ میں، کسی بھی قسم کی غیبت کرنے پر اعتراض کرنا واجب ہے ، یہاں تک کہ اگر لوگ جانتے ہیں کہ ان میں سے کون حق میں تھا ، کیوں کہ وہ ان جنگوں میں نہیں لڑتے تھے سوائے اس کی بنا پر کہ انھوں نے اجتہاد کر کے اسے صحیح سمجھا، اور اللہ سبحانہ وتعالی نے اس شخص کو معاف کردیتا ہے جو اپنے اجتہاد میں غلطی کرتا ہے۔ بے شک یہ بات ثابت ہے کہ اسے ایک انعام دیا جائے گا ، اور جو صحیح اجتہاد کرے اسے دو اجر دیئے جائیں گے۔ حوالہ- فتح الباری ، 13/34

اسی طرح کے تبصرے بہت سارے علماء کرام نے بھی دئے ہیں اور اس پر عمل کرنا بھی ضروری ہے ، کیونکہ یہ ہمیں غلطیاں کرنے سے بچایا جائے گا اور یہ انبیاء کرام کے بعد بہترین لوگوں کے حقوق کو تسلیم کرواۓ گا ۔

جہاں تک عثمان اور علی رضی اللہ عنہ کی شہادت کا تعلق ہے ، اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ انھیں غیر قانونی طور پر شہید کیا گیا تھا اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ وہ جنت میں ہوں گے ، اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ جس نے یہ عمل کیا ، یا اس میں کوئی کردار ادا کیا ، یا اس کی منظوری دی ، یا اس کے بارے میں جان لیا اور اس کی تردید نہیں کی ، بدترین طریقوں سے گمراہ ہوئے اور دوسروں کو بھی گمراہ کیا ، اور بدکار آدمی تھا ، جو اس کے سوا کسی اور راستے پر چلتا تھا۔ مومنین؛ اللہ قیامت کے دن ان کے اعمال کا محاسبہ کرے گا اور اللہ سبحانہ وتعالی قیامت کے دن ان کے درمیان فیصلہ کریں گے۔ “

قُلِ اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ أَنتَ تَحْكُمُ بَيْنَ عِبَادِكَ فِي مَا كَانُوا فِيهِ يَخْتَلِفُونَ

کہہ دو اے الله آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے ہر چھپی او رکھلی بات کے جاننے والے تو ہی اپنے بندوں میں فیصلہ کرے گا اس بات میں جس میں وہ اختلاف کر رہے ہیں
(سورة الزمر, Az-Zumar, Chapter #39, Verse #46)

ماخوز
Thank you brother for imparting us the true knowledge of our Emaan and reinvigorating our soul. جَزَاكُمُ اللهُ خَيْرًا كَثِيْرًا

أسْتَغْفِرُ اللہَ الَّذِیْ لَا إلٰهَ إلَّا ھُوَ الْحَیُّ الْقَیُّوْمُ وَأتُوْبُ إلَیْهِ
 

Citizen X

Prime Minister (20k+ posts)
ap ko is ke kis cheez se takleef hoyee hay mere klhyale me alfaz dr saab ne likhe hay os se wo qadyani kese hoa bahut hi zaburdast lafz kahe hay gustakh e sahaba ke lia Allah dr Adamk o is ka dila de Ameen muje nahi pata yahan ko qadyani kon mosalman hay agar sahabaki itni izat karte hay to i respact tham for this act baqi mirza qadyani or on logo par bi Allahki lannat jo sahaba ko galian bakte hay mirza qadyani ke saath wo log jahanmi hay jo amma aysha rz ko ghalat bura kehte hay
Bhai saab in logon ke pass koi ilmi daleel nahi hai apni kissi bhi kuffriya harkaton ke liye is liye jawab mein sirf galiyan aur jhootay ilzam. Fikar nahi karo ek do post ke bad aap ko mirzai declare ker diya jaye ga, so feel proud when that happens, that means you have stepped on the right tails.

Also tiny request if you don't mind. Gali galouch se parhaiz karien, zururi nahi ne in ke level per aa ke in ke saath baat ki jaye. Agar kutta bhounk tha hai to bhounk ne do.
 
Status
Not open for further replies.
Sponsored Link

Featured Discussion Latest Blogs اردوخبریں