حسداوربغض میں مبتلالوگ جاوید چودھری کی کردار کشی کر رہے ہیں،سلیم صافی

6%D8%B3%D8%A7%D9%81%DB%8C.jpg

معروف صحافی سلیم صافی نے کہا ہے کہ افسوس کی بات ہے کہ اس ملک میں کامیاب یا مشہور انسان ہونا جرم بن گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینیئر اینکر سلیم صافی نے کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کی کردار کشی کرنے والوں کی مذمت کرتے ہوئے اپنی ٹوئٹر پوسٹ میں کہا کہ افسوس کہ اس ملک میں کامیاب یامشہورانسان ہوناجرم بن گیاہے، صد افسوس کہ حسداوربغض کی بنیاد پرخوداپنےہم پیشہ لوگ بھی جاوید چودھری کی کردارکشی کررہے ہیں، حقائق عدالتی فیصلےمیں سامنے آجائیں گےلیکن یہ بات سمجھ سے بالاتر ہےکہ صبح کےوقت چار لڑکے شراب پی کر وہ بغیر اسلحہ کے کالج پر حملہ آور ہوئے۔


انہوں نے ایک اور ٹویٹ میں کہا کہ ایف آئی آر میں بوائز سکول لکھا ہے لیکن شوروغل اس بات کاہےکہ لڑکیوں کے سکول میں گھسے،میری معلومات کےمطابق جاوید چودھری نے پولیس سےکوئی رابطہ کیااورنہ عدالت خودگئے، چارملزموں میں صرف ان کےبیٹے کوسنگل آوٹ کرنا اورپھرجاوید چودھری کی بدنامی کےلئےاستعمال کرنا سراسرزیادتی ہے۔

دوسری جانب اینکر پرسن سلیم صافی کو ٹویٹ کے بعد سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ ایک سوشل میڈیا صارف نے طنزیہ انداز میں پوچھا کہ کیا لڑکے کے سکول میں شراب داخل ہونا کوئی جرم نہیں۔



ایک اور صارف نے کہا کہ اگر یہ مدرسے کے طالب علم ہوتے تو آپ تنقید کرنے والوں میں سرفہرست ہوتے اور آپ ضرور علماء کو بدنام کرنے کی کوشش کرتے۔



ڈاکٹر ارشاد فاروقی نامی صارف کا کہنا تھا کہ اپنی صحافی برادری پہ بات آئی اور ظلم محسوس ہو رہا آپ لوگ جو ریاست، سیاستدان، اسٹیبلشمنٹ پتا نہیں کس کس کی پگڑی اچھالتے ہو تب یہ سب کیوں یاد نہیں رہتا؟ عمران کے بھانجےکو بجائے اسکے باپ کے نام سے کہنے کہ وزیراعظم کا بھانجا کہے کے جیو چیختا رہا تب کیوں چپ؟ منافقت کی بجائےحقائق کھیلو۔



خالد فراز نامی صارف نے کہا کہ تو جناب اس سکول کے پرنسپل ڈاکٹر اسد فیض صاحب جھوٹ بول رہے ہیں اور ایف آئی آر میں خواتین اساتذہ کہا ہے نہ کے طالبات اور از راہ کرم کم از کم اپنی برادری کے صحافی کی اولاد کو صیح ثابت کرنے کے لیے استاد جیسے عظیم انسان کو جھوٹا ثابت کر رہے ہو خیر اپ سے گلہ بھی نہیں تربیت کا اثر ہے۔




واضح رہے کہ کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کے بیٹے محمد فیض جاوید کو ماڈل کالج فار بوائز، سیکٹر F-11/3، راجہ مارکیٹ اسلام آباد سے مبینہ طور پر نشے کی حالت میں گرفتار کیا گیا تھا۔

ایف آئی آر کے مطابق یہ واقعہ 12 نومبر 2021 کو مقامی وقت کے مطابق صبح 8:00 بجے پیش آیا، چار افراد نشے کی حالت گرے ٹویوٹا ویگو رجسٹریشن نمبر VE-ICT/016 پر کالج کے احاطے میں زبردستی داخل ہوئے اور ہنگامہ آرائی کی،ایف آئی آر کالج کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر اسد فیض نے مقامی وقت کے مطابق صبح 9:30 بجے ماڈل پولیس اسٹیشن شالیمارسیکٹر F-10/2، اسلام آباد میں درج کرائی تھی، ایف آئی آر میں ملزمان کے خلاف پاکستان پینل کوڈ کی دفعات کے تحت درج کی گئی ہے۔

بیٹے کی گرفتاری اور واقعے کے حوالے سے جاوید چوہدری کی جانب سے کوئی موقف سامنے نہیں آیا۔
 
Advertisement

hello

Minister (2k+ posts)
جی جی کھوجے کے گواہ ڈڈو بلکہ ٹٹو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جاوید چوہدری عرف جیدا کا بیٹا مسجد میں وضو کرتا پکڑا گیا اور پولیس نے بڑی زیادتی کی اس پر شراب پینے کا الزام لگا دیا وہ عورتیں تو اس شریف زادے کو چھیر رہی تھی لوگوں کو اندازہ ہے جیسا جاوید جیدا ویسی اس کی اولاد
 

arifkarim

Chief Minister (5k+ posts)
اللہ اللہ سب سے بڑا بفض عمران دوسروں پر بغضی ہونے کا الزام لگا رہا ہے 😂
6%D8%B3%D8%A7%D9%81%DB%8C.jpg

معروف صحافی سلیم صافی نے کہا ہے کہ افسوس کی بات ہے کہ اس ملک میں کامیاب یا مشہور انسان ہونا جرم بن گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینیئر اینکر سلیم صافی نے کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کی کردار کشی کرنے والوں کی مذمت کرتے ہوئے اپنی ٹوئٹر پوسٹ میں کہا کہ افسوس کہ اس ملک میں کامیاب یامشہورانسان ہوناجرم بن گیاہے، صد افسوس کہ حسداوربغض کی بنیاد پرخوداپنےہم پیشہ لوگ بھی جاوید چودھری کی کردارکشی کررہے ہیں، حقائق عدالتی فیصلےمیں سامنے آجائیں گےلیکن یہ بات سمجھ سے بالاتر ہےکہ صبح کےوقت چار لڑکے شراب پی کر وہ بغیر اسلحہ کے کالج پر حملہ آور ہوئے۔


انہوں نے ایک اور ٹویٹ میں کہا کہ ایف آئی آر میں بوائز سکول لکھا ہے لیکن شوروغل اس بات کاہےکہ لڑکیوں کے سکول میں گھسے،میری معلومات کےمطابق جاوید چودھری نے پولیس سےکوئی رابطہ کیااورنہ عدالت خودگئے، چارملزموں میں صرف ان کےبیٹے کوسنگل آوٹ کرنا اورپھرجاوید چودھری کی بدنامی کےلئےاستعمال کرنا سراسرزیادتی ہے۔

دوسری جانب اینکر پرسن سلیم صافی کو ٹویٹ کے بعد سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ ایک سوشل میڈیا صارف نے طنزیہ انداز میں پوچھا کہ کیا لڑکے کے سکول میں شراب داخل ہونا کوئی جرم نہیں۔



ایک اور صارف نے کہا کہ اگر یہ مدرسے کے طالب علم ہوتے تو آپ تنقید کرنے والوں میں سرفہرست ہوتے اور آپ ضرور علماء کو بدنام کرنے کی کوشش کرتے۔



ڈاکٹر ارشاد فاروقی نامی صارف کا کہنا تھا کہ اپنی صحافی برادری پہ بات آئی اور ظلم محسوس ہو رہا آپ لوگ جو ریاست، سیاستدان، اسٹیبلشمنٹ پتا نہیں کس کس کی پگڑی اچھالتے ہو تب یہ سب کیوں یاد نہیں رہتا؟ عمران کے بھانجےکو بجائے اسکے باپ کے نام سے کہنے کہ وزیراعظم کا بھانجا کہے کے جیو چیختا رہا تب کیوں چپ؟ منافقت کی بجائےحقائق کھیلو۔



خالد فراز نامی صارف نے کہا کہ تو جناب اس سکول کے پرنسپل ڈاکٹر اسد فیض صاحب جھوٹ بول رہے ہیں اور ایف آئی آر میں خواتین اساتذہ کہا ہے نہ کے طالبات اور از راہ کرم کم از کم اپنی برادری کے صحافی کی اولاد کو صیح ثابت کرنے کے لیے استاد جیسے عظیم انسان کو جھوٹا ثابت کر رہے ہو خیر اپ سے گلہ بھی نہیں تربیت کا اثر ہے۔




واضح رہے کہ کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کے بیٹے محمد فیض جاوید کو ماڈل کالج فار بوائز، سیکٹر F-11/3، راجہ مارکیٹ اسلام آباد سے مبینہ طور پر نشے کی حالت میں گرفتار کیا گیا تھا۔

ایف آئی آر کے مطابق یہ واقعہ 12 نومبر 2021 کو مقامی وقت کے مطابق صبح 8:00 بجے پیش آیا، چار افراد نشے کی حالت گرے ٹویوٹا ویگو رجسٹریشن نمبر VE-ICT/016 پر کالج کے احاطے میں زبردستی داخل ہوئے اور ہنگامہ آرائی کی،ایف آئی آر کالج کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر اسد فیض نے مقامی وقت کے مطابق صبح 9:30 بجے ماڈل پولیس اسٹیشن شالیمارسیکٹر F-10/2، اسلام آباد میں درج کرائی تھی، ایف آئی آر میں ملزمان کے خلاف پاکستان پینل کوڈ کی دفعات کے تحت درج کی گئی ہے۔

بیٹے کی گرفتاری اور واقعے کے حوالے سے جاوید چوہدری کی جانب سے کوئی موقف سامنے نہیں آیا۔

جی جی کھوجے کے گواہ ڈڈو بلکہ ٹٹو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جاوید چوہدری عرف جیدا کا بیٹا مسجد میں وضو کرتا پکڑا گیا اور پولیس نے بڑی زیادتی کی اس پر شراب پینے کا الزام لگا دیا وہ عورتیں تو اس شریف زادے کو چھیر رہی تھی لوگوں کو اندازہ ہے جیسا جاوید جیدا ویسی اس کی اولاد
 

Typhoon

Senator (1k+ posts)
Beghairat Saleem Lafafi jab shohrat beghairti kar ke imaan bech ke ho to wo kamyabi nahi hoti.
Do takke ke admi hein dono.
 

Talisman

MPA (400+ posts)
A dark skinned local Pakistani lefafa Television Anchors son was arrested for public intoxication in Lahore.

He speaks with a funny accent, sounds like person choking on a huddee..khhh..khhhukkwaahhh teen..ooohuzzraathh may raa Betah toy harami nikkla..

Son says drinking was part of his family tradition in "THUTTAAHH" house hold.
While the anchor was giving lectures on how to raise children on television, his son was busy buying whiskey, and investing in distillation.

The king of fake news has a vineyard in his back yard..Where all the lefafa Anchors gather to discuss how to spread fake news against Pakistan and PTI, especially against the Pakistani PM IK.

Another famous Lefafa with PM Imran Envy is the host, his name is Saleem coffee, who uses NUSWAAR via his rectum instead of his mouth, prefers vermouth discusses Bilawal and how he would like to sleep with him one day.

Let us pray his criminal offspring who is currently in jail and worried about his izzutt might be looted by a local pedophile.

Let us all send 5 gazillion lanath on all lefafa Anchors in Pakistan.

Pakistan Zindabad.
 

stargazer

Chief Minister (5k+ posts)
Oho 2 number saafi jo retired Major kay kandhon per sawar ho ker sahafat main aya. Vo Saafi jo koran ke ayat bhe sirf us vakt tilawat kerta hai jub Bughzay Imran or Hubbay corruption main us ko suit kertee hain. Vo saafi jo 24/7/365 sirf ghatya ghatya baatain ker kay apnee asleeat caroron logon per khol chuka hai! vo chala hai Sharabi badmaash key tarbeeat ka defence kernay!
jui-f ka Mufti jab gand ker raha tha to us vakt yeh kahan tha!
 

The Sane

Chief Minister (5k+ posts)
6%D8%B3%D8%A7%D9%81%DB%8C.jpg

معروف صحافی سلیم صافی نے کہا ہے کہ افسوس کی بات ہے کہ اس ملک میں کامیاب یا مشہور انسان ہونا جرم بن گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سینیئر اینکر سلیم صافی نے کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کی کردار کشی کرنے والوں کی مذمت کرتے ہوئے اپنی ٹوئٹر پوسٹ میں کہا کہ افسوس کہ اس ملک میں کامیاب یامشہورانسان ہوناجرم بن گیاہے، صد افسوس کہ حسداوربغض کی بنیاد پرخوداپنےہم پیشہ لوگ بھی جاوید چودھری کی کردارکشی کررہے ہیں، حقائق عدالتی فیصلےمیں سامنے آجائیں گےلیکن یہ بات سمجھ سے بالاتر ہےکہ صبح کےوقت چار لڑکے شراب پی کر وہ بغیر اسلحہ کے کالج پر حملہ آور ہوئے۔


انہوں نے ایک اور ٹویٹ میں کہا کہ ایف آئی آر میں بوائز سکول لکھا ہے لیکن شوروغل اس بات کاہےکہ لڑکیوں کے سکول میں گھسے،میری معلومات کےمطابق جاوید چودھری نے پولیس سےکوئی رابطہ کیااورنہ عدالت خودگئے، چارملزموں میں صرف ان کےبیٹے کوسنگل آوٹ کرنا اورپھرجاوید چودھری کی بدنامی کےلئےاستعمال کرنا سراسرزیادتی ہے۔

دوسری جانب اینکر پرسن سلیم صافی کو ٹویٹ کے بعد سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ ایک سوشل میڈیا صارف نے طنزیہ انداز میں پوچھا کہ کیا لڑکے کے سکول میں شراب داخل ہونا کوئی جرم نہیں۔



ایک اور صارف نے کہا کہ اگر یہ مدرسے کے طالب علم ہوتے تو آپ تنقید کرنے والوں میں سرفہرست ہوتے اور آپ ضرور علماء کو بدنام کرنے کی کوشش کرتے۔



ڈاکٹر ارشاد فاروقی نامی صارف کا کہنا تھا کہ اپنی صحافی برادری پہ بات آئی اور ظلم محسوس ہو رہا آپ لوگ جو ریاست، سیاستدان، اسٹیبلشمنٹ پتا نہیں کس کس کی پگڑی اچھالتے ہو تب یہ سب کیوں یاد نہیں رہتا؟ عمران کے بھانجےکو بجائے اسکے باپ کے نام سے کہنے کہ وزیراعظم کا بھانجا کہے کے جیو چیختا رہا تب کیوں چپ؟ منافقت کی بجائےحقائق کھیلو۔



خالد فراز نامی صارف نے کہا کہ تو جناب اس سکول کے پرنسپل ڈاکٹر اسد فیض صاحب جھوٹ بول رہے ہیں اور ایف آئی آر میں خواتین اساتذہ کہا ہے نہ کے طالبات اور از راہ کرم کم از کم اپنی برادری کے صحافی کی اولاد کو صیح ثابت کرنے کے لیے استاد جیسے عظیم انسان کو جھوٹا ثابت کر رہے ہو خیر اپ سے گلہ بھی نہیں تربیت کا اثر ہے۔




واضح رہے کہ کالم نگار اور اینکر پرسن جاوید چوہدری کے بیٹے محمد فیض جاوید کو ماڈل کالج فار بوائز، سیکٹر F-11/3، راجہ مارکیٹ اسلام آباد سے مبینہ طور پر نشے کی حالت میں گرفتار کیا گیا تھا۔

ایف آئی آر کے مطابق یہ واقعہ 12 نومبر 2021 کو مقامی وقت کے مطابق صبح 8:00 بجے پیش آیا، چار افراد نشے کی حالت گرے ٹویوٹا ویگو رجسٹریشن نمبر VE-ICT/016 پر کالج کے احاطے میں زبردستی داخل ہوئے اور ہنگامہ آرائی کی،ایف آئی آر کالج کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر اسد فیض نے مقامی وقت کے مطابق صبح 9:30 بجے ماڈل پولیس اسٹیشن شالیمارسیکٹر F-10/2، اسلام آباد میں درج کرائی تھی، ایف آئی آر میں ملزمان کے خلاف پاکستان پینل کوڈ کی دفعات کے تحت درج کی گئی ہے۔

بیٹے کی گرفتاری اور واقعے کے حوالے سے جاوید چوہدری کی جانب سے کوئی موقف سامنے نہیں آیا۔
حسد کیسا، ہماری تو دعا ہے کہ اللہ آپ کی اولاد کو بھی اسی مرتبے پر فائز کرے جس پر اس نے جیدے جونیئر کو کیا ہے۔
 

Ontarianpakistani

MPA (400+ posts)
aik tariqa hai bachne ka. Sare sahafi elan ker deen ke unki ulaadeen unki apni nahin hain balke humsayon ki shararat hain. phir agar woh aise kaam kerte pakre gae to hum aap ka naam nahin leen ge.
 

sensible

Chief Minister (5k+ posts)
Imranophobe is talking about the vices of jealousy and phobias!!!
اس نے اپنی زات خود ہی بیان کر د، کہ یہ سب حسد عمران میں لکھتا ہے
ورنہ جاوید چوہدری اپنی اولاد کا دین و دنیا میں سرپرست اور زمہ دار ہے لوگ اس کا زمہ دار عمران خان کو تو قرار نہیں دے سکتے
 
Sponsored Link