بدلتا ہے رنگ کامران خان کیسے کیسے

kamran-uturn-1121.jpg


سابق چیف جج رانا شمیم کے بیان حلفی کے بعد کامران خان کی سابق چیف جسٹس ثاقب نثار سے متعلق قلابازیاں۔۔ کچھ عرصہ پہلے ثاقب نثار کی تعریفیں کرتے رہے اور کہتے رہے کہ بہترین انصاف کے دورا میں تحریک انصاف کی کیا ضرورت لیکن گزشتہ روز یوٹرن لیتے رہے

گزشتہ روز سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کا بیان حلفی سامنے آنے کے بعد کامران خان نے کہا کہ ثاقب نثار کوئی فرشتہ نہیں تھے انکے دور کے معاملات سامنے آئیں گے تو ملک میں تہلکہ مچ جائے گا

کامران خان کا کہنا تھا کہ جب جسٹس رانا شمیم مبینہ حلفیہ بیان دیا کہ سابق چیف جسٹس ثا قب نثار نے ہائیکورٹ کے جج کو نواز شریف مریم بی بی کی ضمانت نہ لینے کا حکم دیا ۔

سینئر صحافی کا مزید کہنا تھا کہ تحقیقات ہوگی مگر مجھے اس بابت زرہ برابر شک نہیں کہ ثاقب نثار کوئی فرشتہ نہیں تھے انکے دور کے معاملات سامنے آئیں گے تو ملک میں تہلکہ مچ جائے گا


رات گئے بیان حلفی سامنے آنے کے بعد کامران خان نے پھر ٹویت کیا کہ دھماکہ خیز پیش رفت !جسٹس رانا شمیم کے سنسنی خیز بیان حلفی میں کہا گیا کہ ان کی موجودگی میں چیف جسٹس ثاقب نثار نے اسلام آباد ہائیکورٹ جج جسٹس عامر فاروق کو ٹیلیفون ہدایت دی کہ نواز شریف و مریم نواز کی الیکشن سے پہلے ضمانت نہ لیں اب پتا چلا جسٹس عامر فاروق تواس بینچ کا حصہ ہی نہیں تھے


کچھ سال پہلے کامران خان نے ثاقب نثار کی تعریفوں کے پل باندھتے رہے اور کہتے رہے کہ جس طرح ثاقب نثار کے دور میں انصاف کا بول بالا ہوا ہے اسے تاابد یادرکھا جائے گا۔

کامران خان کا اپنے 3 سال پرانے ٹویٹ میں کہنا تھا کہ عزت ماب چیف جسٹس ثاقب نثار صاحب کے دور میں پاکستان میں جو انصاف کا بول بالا ہوا وہ تا ابد یاد رکھا جاۓ گا ۰ آج پاکستان میں عدالت رات 11:30 بجے ایک سیاستدان کو عمر قید کی سزا سنا رہی ہے ۰ اس شخص کا مخالف سپریم کورٹ سے سر خرو ہوا ، بہترین انصاف کے دور میں تحریک انصاف کی کیا ضرورت


کامران خان کے اس ٹویٹ پر دلچسپ تبصرے ہوئے

 
Advertisement

Resilient

Minister (2k+ posts)
مجھے ان دونوں بیانات میں مماثلت نظر آتی ہے ، حنیف عباسی والے ٹویٹ میں بھی اس نے ثاقب نثار پر طنز ہی کیا تھا کہ شیخ رشید اور حنیف عباسی کے کیسز کے من پسند فیصلے کیلئے عدالت کو کتنا تردد کرنا پڑا اور یہ کہ جب ثاقب نثار موجود ہے تو عمران جیسی کٹھ پتلی کی کیا ضرورت ہے؟؟
 
Sponsored Link