احتساب کےنعرے کا مقصد اپوزیشن کی گرفتاری کے سوا کچھ نہیں، سہیل وڑائچ

12ehtsadmatlab.jpg

سینئر تجزیہ کار سہیل وڑائچ نے کہا ہے کہ ہمیں پہلے دن سے پتا ہے کہ احتساب کے نعرے کا مقصد اپوزیشن رہنماؤں کی گرفتاری ہے اور کچھ نہیں۔

جیو نیوز کے پروگرام "رپورٹ کارڈ" میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے سہیل وڑائچ نے کہا کہ ہم دیکھتے آرہے ہیں کہ 1985 سے احتساب کے نام پر نعرے لگتے ہیں اور اپوزیشن کے رہنماؤں کو گرفتار کیا جاتا ہے اور جیلوں میں بند کیا جاتا ہے مگر آج تک ایک پیسے کی بھی ریکوری نہیں ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ اصل بات یہ ہے کہ جب تک کرپشن کی روک تھام کیلئے ضروری قانون سازی نہیں ہوگی، جب تک رشوت اور کرپشن کو روکنے کیلئے مناسب اقدامات نہیں کیے جائیں گے تب تک کرپشن کا خاتمہ نہیں ہوسکے گا۔


سینئر صحافی نے کہا کہ دنیا بھر میں ہر سال قانون سازی ہوتی ہے لوگ وقت کے حساب سے قانون سازیاں کرتے ہیں اور کرپشن کی روک تھام کیلئے اقدامات کرتے ہیں، پہلے ان راستوں کی جانچ کی جاتی ہے کہ جہاں سے کرپشن ہوتی ہے پھر ان راستوں کو بند کرنے کیلئے قانون سازی کی جاتی ہے۔

سہیل وڑائچ نے کہا کہ بدقسمتی ہے کہ نعرے تو لگتے ہیں مگر قانون سازی نہیں ہوتی، ان ساڑھے تین سالوں میں دیکھیں یا پہلے کیا کوئی ایسی قانون سازی ہوئی ہے؟ اسی وجہ سے نظام میں کرپشن روز بروز بڑھتی جارہی ہے حتی کے تبادلوں اور تقرریوں پر بھی کرپشن بڑھ گئی ہے، جب تک نظام کا احتساب نہیں ہوگا تب تک کرپشن کے نعرے صرف نعرے ہی رہیں گے۔
 
Advertisement

ranaji

President (40k+ posts)
ابے او کالے خنزیر مثلی میراثی چوڑے اور ک۔۔ر سہیل وڑ آئچ ٹوکرے تیری والدہ کے خصم چور سارے اپوزیشن میں ہی تو بیٹھے ہیں تو اب احتساب اپوزیشن کا ہی ہوگا نہیں تو تیرے جیسے کالے سور میراثی مثلی اور چوڑے کا ہو
 

umer amin

Minister (2k+ posts)
تین سال ہو گئے اس لنگڑی لولی اپوزیشن کو اپنا پچوارہ گھساتے ہوۓ
اب تو گنے چنے حرامی پٹواری جو رہ گئے ہیں فورم پر ان پر بھی ترس انے لگا ہے
اکثر ٹٹی کرتے ہوۓ سوچتا ہوں کہ ان پٹواریوں ، جرنلسٹ اور حرامی ججز سے تو دھندے والی اچھی ہیں
محنت کر کے تو کماتی ہیں
 

Husaink

Chief Minister (5k+ posts)
حیرت ہے کہ اس سینئر دلے کو سینئر صحافی کیوں کہا جاتا ہے
 
Sponsored Link