اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
زیادہ پرانی بات نہیں۔ 2002 کے الیکشن میں عمران خان میانوالی اور جہانگیر ترین رحیم یار خان سے منتخب ہو کر قومی اسمبلی میں پہنچے۔ عمران خان قومی اسمبلی میں اپنی پارٹی کے واحد رکن تھے۔


جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) کے ٹکٹ پر آئے تھے لیکن انہیں اُن کے سسرال نے کامیاب کرایا تھا کیونکہ اُن کے برادرِ نسبتی مخدوم احمد محمود بی اے کی ڈگری نہ ہونے کے باعث الیکشن نہ لڑ سکے تھے۔

جنرل پرویز مشرف نے تمام تر ریاستی طاقت کو بروئے کار لاتے ہوئے نیب کے ذریعے پیپلز پارٹی میں ایک پیٹریاٹ گروپ بنایا اور اس گروپ کی مدد سے میر ظفر اللہ جمالی وزیراعظم بن گئے۔ سیاسی وفاداریاں بدلنے والا یہ پیٹریاٹ گروپ جمالی صاحب کی کابینہ میں آدھی سے زیادہ اہم وزارتیں لے اُڑا۔

جہانگیر ترین وزارت سے محروم رہے تو اُن کا زیادہ وقت لاہور میں گزرنے لگا۔ پنجاب کے وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی نے اُنہیں اپنا مشیر بنا لیا کیونکہ اس سے پہلے وہ شہباز شریف کے ساتھ بھی ایک ٹاسک فورس کے سربراہ کی حیثیت میں کام کر چکے تھے۔ جمالی صاحب کی جگہ شوکت عزیز وزیراعظم بنے تو جہانگیر ترین کو وزیر صنعت بنایا گیا۔ وزیر صنعت بننے سے پہلے وہ ایک شوگر مل کے مالک تھے۔

وزیر صنعت بننے کے بعد اُنہوں نے دو نئی شوگر ملیں قائم کیں۔ یہ وہ زمانہ تھا جب عمران خان مسلم لیگ (ن) کے ساتھ مل کر جنرل پرویز مشرف کی حکومت پر بہت تنقید کرتے تھے اور جب کبھی جہانگیر ترین کو جیو نیوز کے ٹاک شو کیپٹل ٹاک میں دیکھتے تو مجھ سے پوچھتے، سنا ہے یہ بڑا امیر آدمی ہے؟ میں کہتا، ہاں سنا ہے بڑا امیر آدمی ہے، تو خان صاحب کہتے کہ یہ ایک مافیا ہے جس نے سیاست پر قبضہ کر رکھا ہے تم اس مافیا کو اپنے شو پر نہ بلایا کرو، تمہاری ساکھ خراب ہوتی ہے۔ میں جواب دیتا کہ جناب یہ ترین صاحب یا اُن کے کزن ہمایوں اختر خان کابینہ میں شامل ہیں، مجھے حکومتی نقطہ نظر کے لئے انہی لوگوں کو بلانا پڑتا ہے۔

خان صاحب اثبات میں سر ہلاتے اور کہتے کہ دیکھ لینا میں اس مافیا کو کلین بولڈ کر دوں گا۔ خان صاحب کی یہی باتیں سن کر بہت سے لوگ اُن کے دیوانے بن گئے۔

2007میں پرویز مشرف نے ایمرجنسی لگا کر ہمیں ٹی وی اسکرین سے غائب کر دیا تو ہم سڑکوں پر آ گئے۔ روزانہ کیپٹل ٹاک کسی نہ کسی سڑک پر ہوتا جس میں عمران خان نئے پاکستان کی نوید دیتے اور نوجوان گلے پھاڑ پھاڑ کر عمران خان زندہ باد کے نعرے لگاتے۔

2007کی وکلا تحریک نے عمران خان کی سیاست کو بڑی جلا بخشی لیکن 2008میں عمران خان کے ساتھ دھوکا ہو گیا۔ محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت کے بعد مسلم لیگ (ن) نے تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے ساتھ مل کر الیکشن کا بائیکاٹ کر دیا۔ پیپلز پارٹی بائیکاٹ میں شامل نہ تھی۔ آصف زرداری نے نواز شریف کو بائیکاٹ ختم کرنے پر راضی کر لیا اور عمران خان الیکشن میں حصہ نہ لے سکے۔

عمران خان پارلیمنٹ سے آئوٹ ہو گئے لیکن اُنہوں نے پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں پر تنقید شروع کر دی۔ وہ ایک تیسری سیاسی قوت بننے میں کامیاب ہو گئے۔ جنوری 2011میں جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد تحریک انصاف میں شامل ہوئے تو سنجیدہ حلقوں میں تحریک انصاف کی اہمیت بڑھنے لگی۔

اکتوبر 2011میں تحریک انصاف نے مینارِ پاکستان لاہور کے سائے تلے ایک بڑا جلسہ کیا تو ایک دن جہانگیر ترین نے مجھ سے پوچھا کہ تحریک انصاف کا کیا مستقبل ہے؟

جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) سے مسلم لیگ فنکشنل میں آ چکے تھے اور با اثر سیاستدانوں کا ایک ہم خیال گروپ بنا کر تحریک انصاف پر قبضے کا خواب دیکھ رہے تھے۔ میں نے اُنہیں نہیں بتایا کہ عمران خان نے مجھے اُن کے بارے میں کیا کہا تھا لیکن یہ ضرور کہا کہ تحریک انصاف آپ کے مزاج کی پارٹی نہیں۔

وہ مسکرائے اور کہا کہ عمران خان بڑا محنتی ہے اُسے ڈائریکشن کی ضرورت ہے۔ دسمبر 2011میں جہانگیر ترین نے اویس لغاری، جمال لغاری، غلام سرور خان اور اسحاق خاکوانی وغیرہ کے ساتھ تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کر لی۔ کچھ دن کے بعد امیر مقام کو تحریک انصاف میں لانے کے معاملے پر عمران خان اور اویس لغاری میں بحث ہو گئی۔

عمران خان نے کہا کہ مجھے امیر مقام جیسے لوگوں کی ضرورت نہیں۔ اویس لغاری نے سمجھانے کی کوشش کی۔ خان صاحب نے کہا تمہیں سیاست کا پتا نہیں۔ اویس لغاری نے کہا اگر آپ بُرا نہ منائیں تو ایک بات کہوں۔ خان صاحب نے کہا، بالکل کہو۔ سردار فاروق احمد خان لغاری کے برخوردار نے کہا کہ آپ ایچی سن کالج میں میرے سینئر تھے۔

بڑے احترام سے عرض ہے کہ آپ کا دماغ کنکریٹ سے بھرا ہوا ہے، خدا حافظ۔ اویس لغاری تحریک انصاف چھوڑ گئے، جہانگیر ترین وہیں رہے۔ عمران خان نے اپنی پارٹی میں الیکشن کرایا تو جہانگیر ترین سیکرٹری جنرل بن گئے۔ پارٹی کے پرانے لوگوں نے اس الیکشن میں دھاندلی کی شکایت کی تو عمران خان نے جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد کی سربراہی میں انکوائری ٹربیونل بنا دیا۔ ٹربیونل کے سامنے گواہ اور ثبوت آ گئے کہ پارٹی الیکشن میں دھاندلی ہوئی اور ووٹ خریدے گئے۔

ٹربیونل نے اپنے تحریری فیصلے میں جہانگیر ترین، پرویز خٹک، علیم خان اور نادر لغاری کو پارٹی سے خارج کرنے کی سفارش کی لیکن عمران خان نے اپنے ہی بنائے گئے اس ٹربیونل کی رپورٹ مسترد کر دی۔

سندھ ہائیکورٹ کے سابق چیف جسٹس وجیہ الدین احمد کو اتنا خوار کیا گیا کہ وہ تحریک انصاف چھوڑ گئے۔ 2017میں جہانگیر ترین کو سپریم کورٹ نے نا اہل قرار دیا۔ سپریم کورٹ نے وجیہ الدین احمد کو سچا ثابت کر دیا لیکن عمران خان نے جہانگیر ترین کو گلے لگائے رکھا۔ 2018میں عمران خان وزیراعظم بن گئے تو جہانگیر ترین نے مرکز اور پنجاب میں حکومتیں بنانے میں اہم کردار ادا کیا اور ڈپٹی پرائم منسٹر کا کردار ادا کرنے لگے۔

عمران خان نے اپنے پرنسپل سیکرٹری اعظم خان کے ذریعہ جہانگیر ترین کی سرکاری معاملات میں مداخلت بند کرانے کی کوشش کی تو دونوں کے تعلقات کشیدہ ہو گئے۔ سب سے پہلے جہانگیر ترین کو مسلم لیگ (ق)، ایم کیو ایم اور بی این پی (مینگل) کے ساتھ مذاکرات کرنے والی کمیٹیوں سے نکالا گیا اور پھر واجد ضیا رپورٹ کی روشنی میں اُن کے خلاف کارروائی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔

واجد ضیا رپورٹ وہی کہہ رہی ہے جو وجیہ الدین احمد کہہ رہے تھے۔ آج دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ عمران خان نے وہ کچھ کر دکھایا ہے جو ماضی میں کسی حکمران نے نہیں کیا۔

سوال یہ ہے کہ جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

 
Advertisement
Featured Thumbs
data:image/jpeg;base64,/9j/4AAQSkZJRgABAQAAAQABAAD/2wCEAAkGBwgHBgkIBwgKCgkLDRYPDQwMDRsUFRAWIB0iIiAdHx8kKDQsJCYxJx8fLT0tMTU3Ojo6Iys/RD84QzQ5OjcBCgoKDQwNGg8PGjclHyU3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3Nzc3N//AABEIAHcA1AMBIgACEQEDEQH/xAAbAAACAgMBAAAAAAAAAAAAAAAEBQMGAAECB//EAD0QAAIBAwMBBgIHBwQBBQAAAAECAwAEEQUSITEGEyJBUWFxgRQjMkKRobEHFVJiweHwJCVy0XMWJjQ1sv/EABoBAAIDAQEAAAAAAAAAAAAAAAMEAAECBQb/xAAlEQACAgICAgEEAwAAAAAAAAAAAQIRAyESMQRBIgUTMlEjYXH/2gAMAwEAAhEDEQA/ADSKquvRmXVkiU4LYAPxq2VV9XydfgCkA7kwT8RXnsLpv/B0dWfY61+kIlzcu3AyBwPhVc7U2kVlf3VvACsadATXqhRUMG8qW2jnHtXmXbTB1e9wc8j9KX8DyMmXO+T9DOeEVD4oqZpl2c/+2h+dLqZ9nB/u0Pzru5PwYij0BBRcI8FDIKLiHFcVhjtRXaLitgV0tYIdLXN6M2U//jP6VIorm9/+DP8A8P6VpdoqXRQNLjVry2jfoZFz7jNeosNqDPpivLdNONQtv/Iv616hIfDT2TsXxIHuD/pwPM1tCfo5xjOKjuDlgo8hUV7N9Fsg4PJIAocbvQ3WkQ3d7NbRFvCCqEke9ee67f3t/eN31xIYzgiPdhR5dBVn1KZ57V3Z8Egk+9U+9ISc/D196e8WPy2Bz6QZYtsK4bllFCXqXl5K3cQTTgYUqi5H4027Nab+851MhZbeIeMr5+QA/rV4jjigQRQqEjUYCqOKzkmoZNI3CDnA8jmsb+2UtPbGJR1JFLyxYkndv9a9h1eyS4tHLEJuPGR0rzbX9MmtW7xgMZwGHAPvRsWbnpg8mLitCzTb6a1dzFM8ZI5IAz7VabPUbeUI1xOxZ5k3h2LnCKW4A/mI6VUEKZKkeI8Z9KlidoGDoxGOeDz8qLOCl0CUmi7X+2FpDJdzPHJJDGxkJIHV2wAPTaOlDTFtlw6JqskUkhKgEQoSxx54YjyofS9SR4rdmM0jh5pHKq0jbztVfL09aIeVbQOlzcSPGLyJd8z55Ubz8OfSlmmtBLskTTHVQo0fTiBx9bcszfM7ayo1uzG0ncanfBGkZ/qrEMuSc9SprKm/2Xos+QBk8VVtXYNr8O0g+JOnxFcawl7cyGRr54Y3JCwoeg96QBJbKdZVcvsYMwbzwc0ri8fV3s3tHuJGUhUquO764ryvtftXV7xV6bq9J7O6nBren291bnwkYZSOVI6g15z25VU168CjA46VyfpsXDyZRl2N55XDRVsUz7OcavB8aWZ9KZ9nD/u8BJ4zXo8v4MR9noajmo9S1SHSrQzTc/wgdWqZCpJAIJxnFCa7a21xprfSzhAQAfQ+VceMU5JSCetFXuO31wyFYbRVP8Rehx25vl3FYYwzDk7vzqt38Kw3ssMWSqtgetWrSezcVmofUFSadwG2HlYv6E12F42CroXcpBnZvtreXV93F5bNPEfvwISY/cj0q8XM8UtpKsbhmZDhR1JxVRs7u37820IIQZH1a7Vz8OM/E01j1yyWB7aeRTOhykuMA/Mcg+9ByeLCTtaLUnRWNNVxqdrG6srd4uQwwa9Rm+17VRZL/fPHNId80LhlLchx6fH3Hzqy2+u2V3IItzRTHnu5Bgn4GhZ4NF4lQS5y596A7UuUsLYLwTMoP50d9qQDzBpH26uO7/dkIP2pyT+FZ8dXMNldICuPFYsD5Iapt65eVQPtPwBVu3b7IcZBQjBrjszpGnSxR315iWYcxQ54XBwMj14zTmKXBtlSg50hvYz/ALu0JVW17owgJ04ZvMn1qSz1O7QCS5Re4bzBzgVO4j1C3mjmDZ28p08+PlSqz0QQ7/o8t1hzzE+GXPuD+opdU22xji4qkM55lLMXO5fLz8q877TXjSTMjHwg9M9K9CNqIIVRyMqOma817VjbqUoUYAxmt+Ok5gs7agJSw3gjpW95+VRVma6IkO+ztwy3gt2uLiKO4IQ9wQCTkYyfIdafxvbWxtxNIwjae4cNIS5JXwj3NVns+XF6JFSJii5HeybVByOeOtPI72S3RYZNUsI2ySBFHvblsnz9TS+RbCRZvVr3U7W67uC9ldSobIjUcn2xWqnhtGlnuu9neVklC72ABI2Keg+NbqqRdMCmS8DzTXkgjj2EIN3U+1LTBJy0jeE+poy9nklMkRUFkOCWxkfjQRl2RbXIzWIJ1oM2i7fsrvVha404qd7OZUbyx0NKu3h/9wXnyp3+zW1jWzk1JsmQyd1j+EVX+27htfujnzH6Vysai/qE2v0Gkv4UysJHczuyW8LPt64HSh5FmglIfcjirJY3UljYIIrfiY5Zz974VBrGnyXZSe3Hjxyh4IHrXZjPdNaFHDV2KbbVLy2kEkVzKrAYznNXjR9bGr6X3F0weYKTIFGOB61TU0O5LtG7xKwAJyfX0ppoiSaas6uUYv4cjOQarLCEtrsrG2nsZ6RpFvd9oEupImNvbqXcDoW6IP8APSmv1K30xQuZMEFDk4PufyrWhaqLbS5FAG4yF96n2GK4sCAss0xAMkhYsaltRNRhcguw0O0zmctubq27Boufs1phURhWz8aE/wDUVlZz7HEsrfyLxTODVbacd/gqmPvcEUB8xuKgxFeaBDabe5ncqPJqiuY7a8toUk3boyyDY20+RHP40TqGq2V0zpbTIZB93oTSD6RsuhkgKGTcD1OTVwTlpmM3FL4lqsNRuLa3WNG7wIMbpBub8eKVdqbiS6axnmdSyTKAFGMA5rJJzk7c4PkOlLtWvO9tTGv2UkV/MnIPT4VuGNKVi83aGkD5tlGceVLtJ0k6hbkTu6wFxsI+6RwSP88qLg5thjnH/dFaZp6tZwhXuYiEDCQPkAnk8dKzdWGiroeaZaCxKObhp2I2sSOgxxW7qeVXdoyQT6UHbLLbTYnnWRcHDAbT8xXdzOSmA3BoEuxhPQFLdSncZWBx0weaqOrQPe3kjhAWC4GPWrNOVLHLdeuaFjs4p3dVZlB4buzhjRMUuOwOWPPRXLXRxcllWFyVQFyWxtOPL1pRfwC1u3iQllGCNwwRkZ5q4315p+jQMYmL3jLsCFwSB6kVSpZHmkaWVizuxZj6k9abxOT2+hbKoxVLsN0VUe6USxI6HP2hnoKf2pdLaGH6HLNA9tEcRBVG7POSce1ItJDLJnbx3bkZP8tN1iESW0Ux1KVHEa70k2Iu7gcgg1c+zERjbtqKNO4skUSyFwGmAI4A/pWVrTdKsJYpWltlkImdQzu2cBsDzrVD0a2WS67LadqrLc3cstuXZlzD9/8AGu4v2caIZSrtesRjCmUf9U5j1GJIYi1u6qgHATPI60QdYjHiWNySANzDGPhmklkaVJmXJMB0vspp2kL31lNebsFmUzEr8x0rq/7JaLfXJlmhldmP1knfECizq6iFljhO3ced3OPhj3qCXWGa2CFIUBIGGk8X4YoTacuXsv7mqFuuWOk2Vr/o4QoY7Y8sT09M1VJ2+tRyOvhbHoacdoL6S5lHeIsZQbVVDnAzSGeT6s88gg05iT42bT0Rsj95FvxuYMhqJ1xMQTj6vf8AHaa7uJ87XAPglDChZ5C8g65GV+RoyRLHWmBbfuoHHhZhuP8ADuyRTMaeJLTuhlcc4U9aQWN2N7tMxIdQckdCDxVjik55bgdcCqmmg+KmhFJodzPccrL4fMoox75prf6ZLbdnmigm+sMgXd+ZH60Y+ot3byKh+jR/aY5yf+PqaE1LXLGSzggVyWaTI459s+9ZdsI4xXspclpcxTAbSzcYAznNdGOQ38EbAnhdx9/7VaLy48InjgRJuhyvI+dJrT6y5mnby8IH61qMrYDJBRQRPMY433kYHpSa4UbHd32yOuQCOg9Pyo7UmGxVHIJx8qWyyySQjeAyuQc5+XyoiQFstVs2+Dd18WTimkWrLCGAXC446cUm0895YI27B2j28hVd1Kaa3dTDK6FSfsk80Lhyk0E58Yplxn1EzeEDA9QOtRm5z1HlSjSLoajaO8gCyRkK+PM+RFGbQv3sn4UKUKdBIzbVmS3BZwv9Kh1K3YwbyWGRjg0Zawbn3FRipLu2uL5jb2kbSSeQXk4ql3SNetlAugO8wOPXFQ4xVhv+ymtC/EEdhI8j5IAK+XqegqC77K9obKMz3ukXMMKDLSBQ6ge5UmuglSEJO2Q6a8asoxK6lHUmNCx5xTjeyrAgivWQzRfWTgAKAwxxx+lLrHvCqFbthGUdi0arnw44GRTQr9HiDyzs6NNAymSQEjkZ+FCltm4k9jDfOkrwXMCRmeTCtAXI8R89wrdDpeG13xx6hpu0uzDcxzySeefesrNM3Z6K1we6Gx9oxgkDy86iuHLgKJM58iKFEiBVKvgk85FdK6AFkAIPJwcCuUAJH8UW1m/lwOlKtrzXEgjhjYqM7XPUH05oyS4jj8ZUAL5senwFByPu3MpHecKVIwfwFbjExJivU2HeAICFUbTn1HWl8UM91OltaxNLNIcJGoyWNTRiW5+qjVpJTMYwqjJZj7fOvXOyGhJomlRJJFGL113TyLySTztz6AYHyrpYo/EPypFc0j9mtt9GWTXLiYzFcvDbuFVfbdgk/LFO7fsl2es9u3TIpHX70xMn/wCjVlziNvXd50GyHxY60dRQNtsps2h6VFcy3FvYQxFeoXJUH1Ck4FIL7asruB4TngDpV1v4g0Dqh4Y4/wC6rMmmu2o3L3EmbYsjQrENzEbBnPpzmqzJJB/Hb5FXu31XG63EQUjGxjyR5Ulje7trkzC2QsRzk5FeiSXFxCXFhbxwog+1IcsarNw9m0jzPAe9clmYjHJ60FSdDEsaatgj3btEJJAokI5A9aEVgsa+WB1ptbWLXU4TYQW52nrROvdkb20he7s0M0KjMka8snuB5ir4tbASmm6KpeuXCjPTPzoGTK7VU/dzRbJLdXCQ20Essj8LHGCzMenAHNXTR/2WalfwLcardJpwIAEITvJCPU84X86JFA5MUaO3+3pnrsHHypFfwT3lwsNtE80rOdscakk17bpfYzRdIt1TuZbtlUDfcNn8hx+tL9YSC0R4tLtoLRX4d0jC8fLrWFBxlyJKacaPOez2m3OlzyRajH3UlwoKRkg8DrnHHnT+DTbi/lMVlC8z+ezHA9yelOtNtDe6Td20ULyMpZkONx3Y4P41YOycX0LQ7QzRGGeZBJNG321cjO0j1HTFVLE5ztmo5eMaAdJ7FSbFOqTquPuwnJI9yePwFWzT9NtdOj7uzgSJD12jlvifOpYSz+JvCB/EMGpy/gO3rjg+tGjjjDoFLJKXZzHBHvZwoyRhiR+Vcyxg5XAKdOnBFSElVx0rROBn2rZgqzfs+7OEnZY93ndwkrgDd14zSi+/Zjpsat+6+7jkx4RPGJF/Hg/rV/U4xW2AK9Ky4plptHiN7oWvadcNbPb6euORstndSPUEGsr2rDeXSsrH2zXM8wawnBASOfGOMjn9amXSLhjtMchb0IHn86cI+I0kc/YxhemcVIZJFcSOwO4Y2qfwrkUa4IrN3o9xuO4Mke4hyRypHTjPvS6e3ve7kdYnynhyYyCM+tXB90cwmlKtv4Y+Sny/6orRIjf6oboqTBEu3djhm8h745NGxpuVIpwQD+zfs1Lp2ntf6tEU1GaZmSN+sScAfMgZ+BFXXccK2MH7w9DWmGyT+VvTyNYCr72B4IwwNdRUjB0PGgx50NfSKEKGRUQDLsfIUU7rFFzyfIetVXtHfNHKsPLBfHLjoG8l+VVOXBWbhHk6OtRu45fqYNo2njnH4mq/efvnc8duYgp6KrY/X/OKruq67M0pCMygnIGMU20XU9MTQ8agWn1DvHOwA7sZ8PPkKWVzdyHUlBaQnudO7QX1w8axNHGDgySSryPxz+VHWPZuHTcM+Lm7P3h0T4A/rUkV7fX90O5TcAcRwrwiVbdL0mU7Wum3SD7beXwFHxrfWgWWbrbI+zujR27fSpFLSHoW/pVtjQnaRHGuenFc29uI1BIAwOFohz4R7efpkGiij2A2ukafZX1xe2tnDDcy8SyImC/+Z8utFs+ZACeFGTXR+yc4Hi/vUciBlbeud3Uevp8qyQAu3a5ICErB5YPL+/wpTe6YbuWOIjhmGceQqxxwDPI8Xmak7tUbcOtbVIoF0fSYrKF2QeOT8h6UZJB4x9Y5AH+YrpZuMbTXakEA9c1RDSKFG0DjzrtQA2B0rYFa9TUIalHHzqCQksQOgAFSysVUkAk+lDKxEO7jJ5b41aIEDzIrQOQP+VcxMGEmD9k4riFiZMH1qEJzWVs9ayqohQo5dzsXHHkD6GpHdXtm7zwt9lTjOCOmBWmhVCJZD4c8KOfhRGn2b3k/ekqsf3c9SfPArjQi5OkHbojsbOTUye8k2Ip2uBxj1z71aIY47eBIoVARcAY86G+iQRRAElR584yfepLd4ywhifcpHOegrp48XBf2ClKwt/GhA+NLrlgk2QfC3X8aP7qMEb5GPwqnX11c6ldShHWG2jkZIwBknBx/SpkmsatmoQ5ukO7zUolVsEsccHPC1RdU1HcxQMME5JJ6mn6wxxhVGSx82OawmBJwjqrMx43LmkpZ3J7HceNQPO5ULXDyMcjpT7s/2euNXk7xVZYFODJ0z7Cm+pWViLuKZ4UILDKqdmfbirlp1zaz2kf0LaiBOIwOUHwo+Fxn2YyzlBaItO0eK0jWOCJRjOWx0+fmfem6QCOPEajj2qMyjwt4QTwGHI+ddDLgNEwVvZsim79CT3tmsy7GKqNy+RHUVu2mSfcD1xyKie47ph9JjdDnG5DkZoe8t1n/ANRZSbZQM89DWWQlErT3Hc5VouoYD0P9sUaRQGlkyW6ztH3byksy+/TPzxmjiwq0UbHFZGhZ844HWud3nWluEXgnB9KshOVGNrdT6VB4rc4JyhPHtW45hJkiu3w6+9SyHaNu6VvyoVCUIA5olWDDjFWQ4cggZ6UphaQzXVu56YZSfTmjZRP3uTwPLFLNVuzazQXowyRt3c4xztPn8jzVogfYSlpbhCRnhvyqaHiRm9BS2GRYdWiOfBIuzPkfMUW7MsUgB8ZfAAqEGAQnzrKFhvCkSq+dwHOKyoQocIN33ZaTGSFUAdCD/arTEEtkOOPCBx5D0FZWUj4iW2EyA00iucyksegHkK1b3pEnhAAHAFZWU8jBI165PnSe42LGJAMF5M8fnWVlJ+Y9IZ8b2DPdbZoCRkMWI/D+9B6ndiLULBnXqzcj0AzW6ykopMcZrV4J9Xt2is1EuF7zGQpIHx4rjS+0DQQ2zBNpTkMPX0+FZWUxBLjZnuXF9FusNbh1DAij7uRhkH7uR/SmMMneuGjyj4O8D8/wrKymsUnKNsTzwUZaIxcRzlredyD/ABYzuHvSjXpLnR4RcDgK4XIPUGsrK3IANLXU5DbqpRQ20YNFW0zSqS+M+1ZWVopkpkCDJz8qmeEEkEDOAd1ZWVZAJHMcrRnrnrRAmPlWVlQhG754IwKAvIri2+tt5DsPOCaysqMgvk1i+EZXv2XPHQULPqUUlo8Do7blOSTWVlRFoC0TUWcmxkJLxZeJj6Dy+Wat8ckkwg7seN9xPOMVlZUXRDo27A4Z+fiaysrKhR//2Q==
Last edited by a moderator:

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
 

wakeuppakis

Chief Minister (5k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
patwarees aap ko kiya problem hai

PAKISTAN KAY LIYA KISE KA LEHAAZ NAHEE

NO NOOORAY KA HAMIR MIR KAY BAAAP GEO MIR KA

AUR NA JKT jo Guilty hai wo Guilty hi
 

Okara

Chief Minister (5k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
Thanks for supporting JKT and Hamid Mir.
 

Last Gladiator

Politcal Worker (100+ posts)
زیادہ پرانی بات نہیں۔ 2002 کے الیکشن میں عمران خان میانوالی اور جہانگیر ترین رحیم یار خان سے منتخب ہو کر قومی اسمبلی میں پہنچے۔ عمران خان قومی اسمبلی میں اپنی پارٹی کے واحد رکن تھے۔


جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) کے ٹکٹ پر آئے تھے لیکن انہیں اُن کے سسرال نے کامیاب کرایا تھا کیونکہ اُن کے برادرِ نسبتی مخدوم احمد محمود بی اے کی ڈگری نہ ہونے کے باعث الیکشن نہ لڑ سکے تھے۔

جنرل پرویز مشرف نے تمام تر ریاستی طاقت کو بروئے کار لاتے ہوئے نیب کے ذریعے پیپلز پارٹی میں ایک پیٹریاٹ گروپ بنایا اور اس گروپ کی مدد سے میر ظفر اللہ جمالی وزیراعظم بن گئے۔ سیاسی وفاداریاں بدلنے والا یہ پیٹریاٹ گروپ جمالی صاحب کی کابینہ میں آدھی سے زیادہ اہم وزارتیں لے اُڑا۔

جہانگیر ترین وزارت سے محروم رہے تو اُن کا زیادہ وقت لاہور میں گزرنے لگا۔ پنجاب کے وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی نے اُنہیں اپنا مشیر بنا لیا کیونکہ اس سے پہلے وہ شہباز شریف کے ساتھ بھی ایک ٹاسک فورس کے سربراہ کی حیثیت میں کام کر چکے تھے۔ جمالی صاحب کی جگہ شوکت عزیز وزیراعظم بنے تو جہانگیر ترین کو وزیر صنعت بنایا گیا۔ وزیر صنعت بننے سے پہلے وہ ایک شوگر مل کے مالک تھے۔

وزیر صنعت بننے کے بعد اُنہوں نے دو نئی شوگر ملیں قائم کیں۔ یہ وہ زمانہ تھا جب عمران خان مسلم لیگ (ن) کے ساتھ مل کر جنرل پرویز مشرف کی حکومت پر بہت تنقید کرتے تھے اور جب کبھی جہانگیر ترین کو جیو نیوز کے ٹاک شو کیپٹل ٹاک میں دیکھتے تو مجھ سے پوچھتے، سنا ہے یہ بڑا امیر آدمی ہے؟ میں کہتا، ہاں سنا ہے بڑا امیر آدمی ہے، تو خان صاحب کہتے کہ یہ ایک مافیا ہے جس نے سیاست پر قبضہ کر رکھا ہے تم اس مافیا کو اپنے شو پر نہ بلایا کرو، تمہاری ساکھ خراب ہوتی ہے۔ میں جواب دیتا کہ جناب یہ ترین صاحب یا اُن کے کزن ہمایوں اختر خان کابینہ میں شامل ہیں، مجھے حکومتی نقطہ نظر کے لئے انہی لوگوں کو بلانا پڑتا ہے۔

خان صاحب اثبات میں سر ہلاتے اور کہتے کہ دیکھ لینا میں اس مافیا کو کلین بولڈ کر دوں گا۔ خان صاحب کی یہی باتیں سن کر بہت سے لوگ اُن کے دیوانے بن گئے۔

2007میں پرویز مشرف نے ایمرجنسی لگا کر ہمیں ٹی وی اسکرین سے غائب کر دیا تو ہم سڑکوں پر آ گئے۔ روزانہ کیپٹل ٹاک کسی نہ کسی سڑک پر ہوتا جس میں عمران خان نئے پاکستان کی نوید دیتے اور نوجوان گلے پھاڑ پھاڑ کر عمران خان زندہ باد کے نعرے لگاتے۔

2007کی وکلا تحریک نے عمران خان کی سیاست کو بڑی جلا بخشی لیکن 2008میں عمران خان کے ساتھ دھوکا ہو گیا۔ محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت کے بعد مسلم لیگ (ن) نے تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے ساتھ مل کر الیکشن کا بائیکاٹ کر دیا۔ پیپلز پارٹی بائیکاٹ میں شامل نہ تھی۔ آصف زرداری نے نواز شریف کو بائیکاٹ ختم کرنے پر راضی کر لیا اور عمران خان الیکشن میں حصہ نہ لے سکے۔

عمران خان پارلیمنٹ سے آئوٹ ہو گئے لیکن اُنہوں نے پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں پر تنقید شروع کر دی۔ وہ ایک تیسری سیاسی قوت بننے میں کامیاب ہو گئے۔ جنوری 2011میں جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد تحریک انصاف میں شامل ہوئے تو سنجیدہ حلقوں میں تحریک انصاف کی اہمیت بڑھنے لگی۔

اکتوبر 2011میں تحریک انصاف نے مینارِ پاکستان لاہور کے سائے تلے ایک بڑا جلسہ کیا تو ایک دن جہانگیر ترین نے مجھ سے پوچھا کہ تحریک انصاف کا کیا مستقبل ہے؟

جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) سے مسلم لیگ فنکشنل میں آ چکے تھے اور با اثر سیاستدانوں کا ایک ہم خیال گروپ بنا کر تحریک انصاف پر قبضے کا خواب دیکھ رہے تھے۔ میں نے اُنہیں نہیں بتایا کہ عمران خان نے مجھے اُن کے بارے میں کیا کہا تھا لیکن یہ ضرور کہا کہ تحریک انصاف آپ کے مزاج کی پارٹی نہیں۔

وہ مسکرائے اور کہا کہ عمران خان بڑا محنتی ہے اُسے ڈائریکشن کی ضرورت ہے۔ دسمبر 2011میں جہانگیر ترین نے اویس لغاری، جمال لغاری، غلام سرور خان اور اسحاق خاکوانی وغیرہ کے ساتھ تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کر لی۔ کچھ دن کے بعد امیر مقام کو تحریک انصاف میں لانے کے معاملے پر عمران خان اور اویس لغاری میں بحث ہو گئی۔

عمران خان نے کہا کہ مجھے امیر مقام جیسے لوگوں کی ضرورت نہیں۔ اویس لغاری نے سمجھانے کی کوشش کی۔ خان صاحب نے کہا تمہیں سیاست کا پتا نہیں۔ اویس لغاری نے کہا اگر آپ بُرا نہ منائیں تو ایک بات کہوں۔ خان صاحب نے کہا، بالکل کہو۔ سردار فاروق احمد خان لغاری کے برخوردار نے کہا کہ آپ ایچی سن کالج میں میرے سینئر تھے۔

بڑے احترام سے عرض ہے کہ آپ کا دماغ کنکریٹ سے بھرا ہوا ہے، خدا حافظ۔ اویس لغاری تحریک انصاف چھوڑ گئے، جہانگیر ترین وہیں رہے۔ عمران خان نے اپنی پارٹی میں الیکشن کرایا تو جہانگیر ترین سیکرٹری جنرل بن گئے۔ پارٹی کے پرانے لوگوں نے اس الیکشن میں دھاندلی کی شکایت کی تو عمران خان نے جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد کی سربراہی میں انکوائری ٹربیونل بنا دیا۔ ٹربیونل کے سامنے گواہ اور ثبوت آ گئے کہ پارٹی الیکشن میں دھاندلی ہوئی اور ووٹ خریدے گئے۔

ٹربیونل نے اپنے تحریری فیصلے میں جہانگیر ترین، پرویز خٹک، علیم خان اور نادر لغاری کو پارٹی سے خارج کرنے کی سفارش کی لیکن عمران خان نے اپنے ہی بنائے گئے اس ٹربیونل کی رپورٹ مسترد کر دی۔

سندھ ہائیکورٹ کے سابق چیف جسٹس وجیہ الدین احمد کو اتنا خوار کیا گیا کہ وہ تحریک انصاف چھوڑ گئے۔ 2017میں جہانگیر ترین کو سپریم کورٹ نے نا اہل قرار دیا۔ سپریم کورٹ نے وجیہ الدین احمد کو سچا ثابت کر دیا لیکن عمران خان نے جہانگیر ترین کو گلے لگائے رکھا۔ 2018میں عمران خان وزیراعظم بن گئے تو جہانگیر ترین نے مرکز اور پنجاب میں حکومتیں بنانے میں اہم کردار ادا کیا اور ڈپٹی پرائم منسٹر کا کردار ادا کرنے لگے۔

عمران خان نے اپنے پرنسپل سیکرٹری اعظم خان کے ذریعہ جہانگیر ترین کی سرکاری معاملات میں مداخلت بند کرانے کی کوشش کی تو دونوں کے تعلقات کشیدہ ہو گئے۔ سب سے پہلے جہانگیر ترین کو مسلم لیگ (ق)، ایم کیو ایم اور بی این پی (مینگل) کے ساتھ مذاکرات کرنے والی کمیٹیوں سے نکالا گیا اور پھر واجد ضیا رپورٹ کی روشنی میں اُن کے خلاف کارروائی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔

واجد ضیا رپورٹ وہی کہہ رہی ہے جو وجیہ الدین احمد کہہ رہے تھے۔ آج دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ عمران خان نے وہ کچھ کر دکھایا ہے جو ماضی میں کسی حکمران نے نہیں کیا۔

سوال یہ ہے کہ جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

 

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
Thanks for supporting JKT and Hamid Mir.

یہ صرف حامد میر کی بات نہیں ہے ، لوگوں کو استعمال کرکے چھوڑ دینے کی درجنوں مثالیں موجود ہیں ، ماجد خان سے لیکر جہانگیر ترین تک

چھوڑنا بھی باوقار ہونا چاہیے مگر یہاں جہانگیر ترین کو شہباز گل اور فردوس عاشق جیسے لوگوں سے ذلیل کروایا جا رہا ہے
 

Okara

Chief Minister (5k+ posts)

یہ صرف حامد میر کی بات نہیں ہے ، لوگوں کو استعمال کرکے چھوڑ دینے کی درجنوں مثالیں موجود ہیں ، ماجد خان سے لیکر جہانگیر ترین تک

چھوڑنا بھی باوقار ہونا چاہیے مگر یہاں جہانگیر ترین کو شہباز گل اور فردوس عاشق جیسے لوگوں سے ذلیل کروایا جا رہا ہے
I know the best way to ditch people is to leave friends in jail cell next to you and do a deal and escape.
 

Husaink

Chief Minister (5k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
چلو ایسے ہی سمجھ لو اب آنے والے وقت کی فکر کرو گنجوں کا برا وقت آنے والا ہے خان نے گیند پکڑ لی ہے
 

sensible

Chief Minister (5k+ posts)
جہانگیر ترین اب نون لیگ کے کام کا ہو گیا ہے
🙂 🙂 🙂
پٹوار خانہ پہلے اس کے خلاف پوسٹیں لگا کر روزی کماتا تھا اب اس کے حق میں
 
Last edited:

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
patwarees aap ko kiya problem hai
PAKISTAN KAY LIYA KISE KA LEHAAZ NAHEE
NO NOOORAY KA HAMIR MIR KAY BAAAP GEO MIR KA
AUR NA JKT jo Guilty hai wo Guilty hi
I know the best way to ditch people is to leave friends in jail cell next to you and do a deal and escape.
چلو ایسے ہی سمجھ لو اب آنے والے وقت کی فکر کرو گنجوں کا برا وقت آنے والا ہے خان نے گیند پکڑ لی ہے
جہانگیر ترین اب نون لیگ کے کام کا ہو گیا ہے
🙂 🙂 🙂
پتوار خانا پہلے اس کے خلاف پوسٹیں لگا کر روزی کماتا تھا اب اس کے حق میں


ندیم افضل چن: اوئے مختاریا وڑ جانی دیا کتھے مرگیا ایں....... اے پٹواری پوچھدہ اے "اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

مختارا: او سر جی اس پٹواری نو کوؤ کے زیادہ ٹپوسیاں نہ مارے پندرہ دن ٹہر جاوے، اے سارے پونکے ہن دو رپوٹاں دی مار نیں
 

A.jokhio

Senator (1k+ posts)
زیادہ پرانی بات نہیں۔ 2002 کے الیکشن میں عمران خان میانوالی اور جہانگیر ترین رحیم یار خان سے منتخب ہو کر قومی اسمبلی میں پہنچے۔ عمران خان قومی اسمبلی میں اپنی پارٹی کے واحد رکن تھے۔


جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) کے ٹکٹ پر آئے تھے لیکن انہیں اُن کے سسرال نے کامیاب کرایا تھا کیونکہ اُن کے برادرِ نسبتی مخدوم احمد محمود بی اے کی ڈگری نہ ہونے کے باعث الیکشن نہ لڑ سکے تھے۔

جنرل پرویز مشرف نے تمام تر ریاستی طاقت کو بروئے کار لاتے ہوئے نیب کے ذریعے پیپلز پارٹی میں ایک پیٹریاٹ گروپ بنایا اور اس گروپ کی مدد سے میر ظفر اللہ جمالی وزیراعظم بن گئے۔ سیاسی وفاداریاں بدلنے والا یہ پیٹریاٹ گروپ جمالی صاحب کی کابینہ میں آدھی سے زیادہ اہم وزارتیں لے اُڑا۔

جہانگیر ترین وزارت سے محروم رہے تو اُن کا زیادہ وقت لاہور میں گزرنے لگا۔ پنجاب کے وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی نے اُنہیں اپنا مشیر بنا لیا کیونکہ اس سے پہلے وہ شہباز شریف کے ساتھ بھی ایک ٹاسک فورس کے سربراہ کی حیثیت میں کام کر چکے تھے۔ جمالی صاحب کی جگہ شوکت عزیز وزیراعظم بنے تو جہانگیر ترین کو وزیر صنعت بنایا گیا۔ وزیر صنعت بننے سے پہلے وہ ایک شوگر مل کے مالک تھے۔

وزیر صنعت بننے کے بعد اُنہوں نے دو نئی شوگر ملیں قائم کیں۔ یہ وہ زمانہ تھا جب عمران خان مسلم لیگ (ن) کے ساتھ مل کر جنرل پرویز مشرف کی حکومت پر بہت تنقید کرتے تھے اور جب کبھی جہانگیر ترین کو جیو نیوز کے ٹاک شو کیپٹل ٹاک میں دیکھتے تو مجھ سے پوچھتے، سنا ہے یہ بڑا امیر آدمی ہے؟ میں کہتا، ہاں سنا ہے بڑا امیر آدمی ہے، تو خان صاحب کہتے کہ یہ ایک مافیا ہے جس نے سیاست پر قبضہ کر رکھا ہے تم اس مافیا کو اپنے شو پر نہ بلایا کرو، تمہاری ساکھ خراب ہوتی ہے۔ میں جواب دیتا کہ جناب یہ ترین صاحب یا اُن کے کزن ہمایوں اختر خان کابینہ میں شامل ہیں، مجھے حکومتی نقطہ نظر کے لئے انہی لوگوں کو بلانا پڑتا ہے۔

خان صاحب اثبات میں سر ہلاتے اور کہتے کہ دیکھ لینا میں اس مافیا کو کلین بولڈ کر دوں گا۔ خان صاحب کی یہی باتیں سن کر بہت سے لوگ اُن کے دیوانے بن گئے۔

2007میں پرویز مشرف نے ایمرجنسی لگا کر ہمیں ٹی وی اسکرین سے غائب کر دیا تو ہم سڑکوں پر آ گئے۔ روزانہ کیپٹل ٹاک کسی نہ کسی سڑک پر ہوتا جس میں عمران خان نئے پاکستان کی نوید دیتے اور نوجوان گلے پھاڑ پھاڑ کر عمران خان زندہ باد کے نعرے لگاتے۔

2007کی وکلا تحریک نے عمران خان کی سیاست کو بڑی جلا بخشی لیکن 2008میں عمران خان کے ساتھ دھوکا ہو گیا۔ محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت کے بعد مسلم لیگ (ن) نے تحریک انصاف اور جماعت اسلامی کے ساتھ مل کر الیکشن کا بائیکاٹ کر دیا۔ پیپلز پارٹی بائیکاٹ میں شامل نہ تھی۔ آصف زرداری نے نواز شریف کو بائیکاٹ ختم کرنے پر راضی کر لیا اور عمران خان الیکشن میں حصہ نہ لے سکے۔

عمران خان پارلیمنٹ سے آئوٹ ہو گئے لیکن اُنہوں نے پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں پر تنقید شروع کر دی۔ وہ ایک تیسری سیاسی قوت بننے میں کامیاب ہو گئے۔ جنوری 2011میں جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد تحریک انصاف میں شامل ہوئے تو سنجیدہ حلقوں میں تحریک انصاف کی اہمیت بڑھنے لگی۔

اکتوبر 2011میں تحریک انصاف نے مینارِ پاکستان لاہور کے سائے تلے ایک بڑا جلسہ کیا تو ایک دن جہانگیر ترین نے مجھ سے پوچھا کہ تحریک انصاف کا کیا مستقبل ہے؟

جہانگیر ترین مسلم لیگ (ق) سے مسلم لیگ فنکشنل میں آ چکے تھے اور با اثر سیاستدانوں کا ایک ہم خیال گروپ بنا کر تحریک انصاف پر قبضے کا خواب دیکھ رہے تھے۔ میں نے اُنہیں نہیں بتایا کہ عمران خان نے مجھے اُن کے بارے میں کیا کہا تھا لیکن یہ ضرور کہا کہ تحریک انصاف آپ کے مزاج کی پارٹی نہیں۔

وہ مسکرائے اور کہا کہ عمران خان بڑا محنتی ہے اُسے ڈائریکشن کی ضرورت ہے۔ دسمبر 2011میں جہانگیر ترین نے اویس لغاری، جمال لغاری، غلام سرور خان اور اسحاق خاکوانی وغیرہ کے ساتھ تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کر لی۔ کچھ دن کے بعد امیر مقام کو تحریک انصاف میں لانے کے معاملے پر عمران خان اور اویس لغاری میں بحث ہو گئی۔

عمران خان نے کہا کہ مجھے امیر مقام جیسے لوگوں کی ضرورت نہیں۔ اویس لغاری نے سمجھانے کی کوشش کی۔ خان صاحب نے کہا تمہیں سیاست کا پتا نہیں۔ اویس لغاری نے کہا اگر آپ بُرا نہ منائیں تو ایک بات کہوں۔ خان صاحب نے کہا، بالکل کہو۔ سردار فاروق احمد خان لغاری کے برخوردار نے کہا کہ آپ ایچی سن کالج میں میرے سینئر تھے۔

بڑے احترام سے عرض ہے کہ آپ کا دماغ کنکریٹ سے بھرا ہوا ہے، خدا حافظ۔ اویس لغاری تحریک انصاف چھوڑ گئے، جہانگیر ترین وہیں رہے۔ عمران خان نے اپنی پارٹی میں الیکشن کرایا تو جہانگیر ترین سیکرٹری جنرل بن گئے۔ پارٹی کے پرانے لوگوں نے اس الیکشن میں دھاندلی کی شکایت کی تو عمران خان نے جسٹس ریٹائرڈ وجیہ الدین احمد کی سربراہی میں انکوائری ٹربیونل بنا دیا۔ ٹربیونل کے سامنے گواہ اور ثبوت آ گئے کہ پارٹی الیکشن میں دھاندلی ہوئی اور ووٹ خریدے گئے۔

ٹربیونل نے اپنے تحریری فیصلے میں جہانگیر ترین، پرویز خٹک، علیم خان اور نادر لغاری کو پارٹی سے خارج کرنے کی سفارش کی لیکن عمران خان نے اپنے ہی بنائے گئے اس ٹربیونل کی رپورٹ مسترد کر دی۔

سندھ ہائیکورٹ کے سابق چیف جسٹس وجیہ الدین احمد کو اتنا خوار کیا گیا کہ وہ تحریک انصاف چھوڑ گئے۔ 2017میں جہانگیر ترین کو سپریم کورٹ نے نا اہل قرار دیا۔ سپریم کورٹ نے وجیہ الدین احمد کو سچا ثابت کر دیا لیکن عمران خان نے جہانگیر ترین کو گلے لگائے رکھا۔ 2018میں عمران خان وزیراعظم بن گئے تو جہانگیر ترین نے مرکز اور پنجاب میں حکومتیں بنانے میں اہم کردار ادا کیا اور ڈپٹی پرائم منسٹر کا کردار ادا کرنے لگے۔

عمران خان نے اپنے پرنسپل سیکرٹری اعظم خان کے ذریعہ جہانگیر ترین کی سرکاری معاملات میں مداخلت بند کرانے کی کوشش کی تو دونوں کے تعلقات کشیدہ ہو گئے۔ سب سے پہلے جہانگیر ترین کو مسلم لیگ (ق)، ایم کیو ایم اور بی این پی (مینگل) کے ساتھ مذاکرات کرنے والی کمیٹیوں سے نکالا گیا اور پھر واجد ضیا رپورٹ کی روشنی میں اُن کے خلاف کارروائی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔

واجد ضیا رپورٹ وہی کہہ رہی ہے جو وجیہ الدین احمد کہہ رہے تھے۔ آج دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ عمران خان نے وہ کچھ کر دکھایا ہے جو ماضی میں کسی حکمران نے نہیں کیا۔

سوال یہ ہے کہ جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

YEH "JANG" APNA Bi JAMALOO PUNN BAND NEHEEN KAREGA...
 

4PeaceAndJustice

Councller (250+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
Simple si baat hai. Party ka androoni maamlay per maaf karnay ka haq Imran Khan ko tha magar qaum ko lootnay per woh maaf nahi kar sakta..
 

Munawarkhan

Minister (2k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟

Was not expecting such a bunch of lies and BS from Hamid Mir.

Wajihuddin never said this about JT.
JKT did nothing wrong, he will come out shining from all this mess. Hamid is propagating bunch of lies.

You should actually pray that the hoarders of Sugar & wheat Mafia are caught. Why do propaganda against JKT.
 

mhafeez

Chief Minister (5k+ posts)
Was not expecting such a bunch of lies and BS from Hamid Mir.

Wajihuddin never said this about JT.
JKT did nothing wrong, he will come out shining from all this mess. Hamid is propagating bunch of lies.

You should actually pray that the hoarders of Sugar & wheat Mafia are caught. Why do propaganda against JKT.

 

Eyeaan

Chief Minister (5k+ posts)
حامد میر کو جتنی گالیاں دینی ہیں دیں لیں لیکن اس سوال کا جواب ضرور دیجئے گا :

جب جہانگیر ترین کے بارے میں یہی کچھ وجیہ الدین احمد نے کہا تو آپ نے کارروائی کیوں نہ کی؟ کیا جہانگیر ترین کو جتنا استعمال کرنا تھا کر لیا، اب وہ کسی کام کا نہیں رہا؟
حفیظ صاحب آپ بھی بہت چالاک ہیں ۔۔ وجیہہ صاحب کے اعتراضات سیاسی تھے جو انکے پسندیدہ گروپ کی شکست کے نتیجہ میں تھے ۔۔۔ ظاہر ہے ترین صاحب کے گروپ کی پارٹی میں مقبولیت بھی زیادہ تھی اور تنظیم بھی بہتر ، پیسہ بھی زیادہ اور وجیہ صاحب کے گروپ کی طرح اس پر ایک مخصوص پرانی پارٹی کا ٹھپّہ بھی نہ تھا ( جو انکے گروپ کی شکست کی اہم وجہ تھی ) بہتر ہوتا وہ اپنی ناکامی مان لیتے اور بجائے اپنی ڈفلی بجانے کے پارٹی کے ساتھ چلتے ۔ انکی اپنی مرضی ۔۔ خیر آپنے خود ہی ایک قصہ گھڑ لیا اور پھر اپنے ذاتی مفروضوں پر سوالنامہ بھی تیار کر لیا ۔شاید سیاست بازی تو اچھی کر لی مگر برا کیا ۔۔۔

موجودہ مسلہ (ملک کے اصلی حکمران) بلیک میلر بزنس کارٹیلز کا ہے ۔ شوگر انڈسٹری ایک مثال ہے ۔ شوگر انڈسٹری کا خود سے قیمتوں کا تعین کرنا اور نفع نقصان کا حساب وضع کرنا وغیرہ۔ پرانے سیاسی گرگوں اور بیوروکریسی سے تعاون سے ،چار پانچ دہائیوں سے چل رہا ہے ۔۔ انہون نے اسے اسقدر الجھایا ہوا ہے کہ عام آدمی کو آج بھی سمجھایں تو کچھ پلے نہ پڑے ۔۔ شوگر ہو یا ٹیکسٹائل یا ڈرگز ہر طرف یہی حال ہے۔ کراچی کے انڈسٹریلسٹ کا حال تو سب سے برا ہے مگر ستر سال سے چلا ّ آ رہا ہے ، بیوروکریسی، عدالت اور تاجروں کے نمائندہ پارٹیوں کے گٹھ جوڑ نے اس نطام کو قانونی رنگ دیا ہوا ہے ۔ اب پہلی دفعہ کسی نے سوال اٹھایا ہے کہ کارٹیلز کیا کر رہے ہیں ۔آپ ادھر ادھر کے سوالات کی بجائے اپنے قائدین کو پکڑیں کہ انہی کا کیا دھرا ہے ۔یہ انہی کی پالیسی ہے ۔۔ زرداری جیسے تو اربوں سبسیڈی میں کھا گئے ۔ ابھی سن دس کے سیلاب میں فرٹلاائزر سبسیڈی میں کس نے جیبیں بھریں ۔۔
اسوقت مسلہ ترین صاحب کا نہیں بلکہ بیوروکرسی اور ریگولیٹرز سے کاروباری طبقے کا اثر کم کرنے کا ہے ۔۔ چونکہ آپ لوگ سیاسی۔ نظریاتی اور عملی طور پر اسی پرانی لوٹ مار کے حامی ہیں اور مستقبل میں بھی رہیں گے اس لئے اصلی مسلے کو کم کرنے کو ترین صاحب کو نشانہ بنا رہے ہیں کہ باقی کاروباری کارٹلز کا احتساب نہ ہو ، حکومت کمزور ہو ، کارٹلز نےکن کے بل بوتے حکومت کو دھمکی دی ہے؟ ۔۔ آپ تین ارب کی سبسیڈی پر وویلہ کر رہے ہیں مگر خود بائیس ارب کی سبسیڈی دینے پر ماتم کیوں نہیں کرتے ۔
بیوروکرسی کی تصحیح اور ایک آزاد ریگولیٹر (نیا یا موجودہ ) پر کام ہو گا کہ ان کارٹیلز کا زور توڑا جا سکے مگر اس کام سے نتائج حاصل کرنا آسان نہیں کہ دو چار ماہ میں ہو جائے ۔۔
جرم تو فرانزک رپورٹ کے بعد پچیس اپریل کو معلوم ہو گا ۔۔پچھے پانچ برس میں کس نے کتنی امپورٹ کی؟ اور کیا سنسیڈی قانونی طریقے لی؟، کیا ذخیرہ اندوزی کی؟، کیا ماناپلی میں حصہ لیا؟ ، کیا منی لانڈرنگ کی؟ ۔ اگر ترین صاحب اس طور ملوث ہوئے تو انکا تو حساب ہو گا ہی، مگر چھٹ کوئی پائے نہیں گا ۔ انشااللہ۔۔ آپ اسپر غور کریں کہ اپنے قایدیں کو کیسے بچانا ہے یا پھر فوج وغیرہ کی پرانی داستان سنانی ہے اور جلوس بازی کرنی ہے ۔


بھولیں نہیں ترین صاحب نے حالیہ یوتیلیٹی سٹور کو بیس پچیس کروڑ کی رعایت دی ہے (سبسیڈی پچاس کروڑ تھی) اور وہ سب سے بڑے ٹیکس ادا کرنے والے بھی ہیں ۔ حکومت نے کہا تو وہ رقم واپس جمع کروا دیں گے ۔۔۔ مگر جنہوں نے قانون توڑا ، منی لانڈرنگ کی یا جعلی کاغزات جمع کرو ائے وہ ،تریں صاحب کو نشانہ بنا کر بھی نہیں بچائے جا سکیں گے
[/B] ۔​
 
Sponsored Link

Featured Discussion Latest Blogs اردوخبریں